Jump to content

  • Log in with Facebook Log in with Twitter Log in with Windows Live Log In with Google      Sign In   
  • Create Account

Photo

Kya Hazrat Essa zinda awr Jism sameet asman per uthae gai (Qurani Aayat se )


  • Please log in to reply
35 replies to this topic

#21 Khalil Rana

Khalil Rana

    Madani Member

  • Star Member

  • PipPipPipPipPipPip
  • 921 posts
  • Joined 23-September 06
  • Gender:Male
  • Madhab:Hanafi

Posted 20 April 2008 - 10:26 PM

(bis)

Attached Images

  • 1.jpg
  • 2.jpg
  • 3.jpg
  • 4.jpg
  • 5.jpg
  • 6.jpg
  • 7.jpg

توحید اور شرک کے موضوع پر علّامہ سیّد احمدسعید کاظمی امروہوی علیہ الرحمہ کی بہترین کتاب

 

http://www.mediafire...ed o shirak.pdf

 

 

                          

 


#22 asim10

asim10

    Under Observation

  • Members

  • PipPip
  • 55 posts
  • Joined 03-April 08

Posted 20 April 2008 - 11:33 PM

[quote name='Aamir Malik' date='Apr 15 2008, 09:06 PM' post='20595'[/quote]
tumharee pehlee post main yehee sub kuch tha abb is ko duranay ke kiya zaroorat hay.
aour tum ko in sub batoon ka mukamal jawab mil chuka hay ,wohee batain dubara dhuranay ka matlab hay kay abb tum sirf "khisyani billi khamba nochay "ka midak hoo.
aa oo main tumhain muslmann honay ke dawat daita hoo. phir aghay baat karain ghay. inshallah.

#23 Ubaid-e-Raza

Ubaid-e-Raza

    Junior Member

  • Members

  • PipPipPipPipPipPip
  • 749 posts
  • Joined 02-May 07
  • Gender:Male
  • Location:Bait ul fina
  • Interests:na koi amal hai suna,ne ke qabil
    na moun hai unke dikhanay ke qabil
    lagate hain usko bhi senay se aaqa (salallahualaihi waslam)
    jo hota nahi moun lagane ke qabil
  • Madhab:Hanafi
  • Sheikh:Ameer e Ahlesunnat

Posted 20 April 2008 - 11:50 PM

zabar10st khalil bhai. nice reply. (ja)

http://i29.tinypic.com/tahnx4.gif


#24 Ya Allah Madad

Ya Allah Madad

    Under Observation

  • Under Observation

  • PipPipPipPip
  • 353 posts
  • Joined 06-March 09
  • Gender:Male
  • Location:Karachi
  • Madhab:Not Telling
  • Sheikh:Rasool Allah (SAW)

Posted 09 July 2009 - 03:53 PM

OK SAG E ATTAR


Malik Sahab ye hamare aik dost ka challanging article hay aap logon ke liye ..aaj tak koi qadyani iska jawab nahi day saka:


In the Name of Allah, The Most Compassionate, The Most Merciful, The One and Only.
His Love and Peace be upon Syedna Muhammad, after whom there is no Prophet, and upon his family and Companions. Insha Allah, Masha Allah 
CAN AHMADIS/QADIANIS ANSWER?
by Illias Suttar 

Cash Reward: 10,000,000/ - (approx. US$ 250,000.00) 

Mirza Ghulam Ahmad’s claims of Imam Mahdi and Promised Messiah 
have now been proven conclusively false. 

If anyone can prove the points of this article to be wrong in the Supreme Court of any reputed country like UK, USA, German, Japan, Pakistan, India, Israel, etc., he will receive cash reward of Pak Rs.10,000,000/- (Ten Million).

You can prove my arguments wrong in the supreme court of any country like USA, UK, Israel, India, Pakistan, Germany, France, Italy, etc. 

You can prove my arguments wrong even in my absence!!! 

A Qadiani / Ahmadi judge is also acceptable even in my absence!!! 

The first Qadiani / Ahmadi to make the case against me will get cash reward Rs.25,000/- (Twenty Five Thousand) before the start of the arguments. 

In Pakistani newspapers, I have advertised that if any Qadiani / Ahmadi will come to me for discussions, I will pay Rs. 500/- cash to him. 

If any non-Ahmadi / Qadiani brings an Ahmadi / Qadiani, then he will get Rs.500/- cash for bringing the Ahmadi / Qadiani. 

Introductory Notes 

Alhamdolillah, they have been intellectually defeated. A Prominent Ahmadi, Mr. Ahmad Baksh Channa, a Qadiani Murabbi for years, has embraced Islam along with other several others who witnessed the written debate. 

In the following article, Mirza Ghulam Ahmad Qadiani’s claim of being the Mahdi and the Promised Messiah have been conclusively proven to be wrong, by bringing to light contradiction in his own argument from his books. The particular argument of Mirza Sahib which was claimed to be dazzling like the sun, and according to his followers made his opponents ran way from him like lambs run away from lion, has been proven wrong beyond doubt. Since the fallacy of these claims have been exposed, Mirza Sahib’s claim of being a Nabi or a Prophet also automatically becomes bogus. A True Nabi cannot make false claim. 

This article was originally made public, before 1982. More than 16 years have passed but no one has been able to deny the points of this article or prove the contrary. The points of this article have been twice put to the present IVth "Khalifa", Mirza Tahir Ahmad Qadiani, but he has maintained complete silence. I even went inside the Ahmadiyya Hall, an Ahmadi Center in Magazine Line, Karachi, where I distributed this article in the hall and spoke to those who were coming inside to pray. I attended the funeral of one learned Qadiani. In the graveyard, as well as in the funeral bus while coming back, I explained the article to them. On 4-7-1983, Mr. Rahim Younus Qadiani wrote from Dhaka, Bangladesh, that one learned Ahmadi is going to answer to me. Almost 15 years have passed away, but till now there is no answer. Naseem Ahmad, gave a reply to "Can Ahmadis Answer?" and entitled it, "An Ahmadi Answers". The grandson of the "Khalifa" Mirza Tahir, Mubasshir Ahmad composed it on the computer. However, later on, after nearly 5 hours of discussions, the grandson said that now only he has understood the question. He promised to return with proper reply. He went away never to return again. 

I have had written discussions with many other Qadianis as well. Those who are interested can get copies of such correspondence from me. It is interesting to see how they have expressed views opposite to what Mirza Sahib has written. Many Qadianis have even admitted that Mirza Sahib has made a mistake, but they take the plea that Mirza Sahib was a human being and so he could make a mistake. However, time will make them realize, Insha Allah, that it wasn’t a small mistake. This grave mistake was committed while trying to prove his claims to the office of Imam Mahdi and Promised Messiah. If the arguments put forward to prove his claim have been proven wrong, naturally the claim was also wrong. If one claim is wrong the whole Ahmadiyyat becomes a heap of debris. 

I had offered Rs. One Crore (10,000,000) to any Ahmadi who will defeat me in any Supreme Court. One Ahmadi, Naseem Ahmad of Karachi, accused me that One Crore will not be paid, if I loose the case. He said that, to start the case, Rs.15,000/- cash will be needed. I even offered Rs.15,000/- in advance, which he refused to accept. Did he knew in his heart that he will be a loser? 

The facts mentioned in this article, which have embarrassed Qadianis during the discussions, are taken from the following four books of Mirza Sahib:

Masih Hindustan Mein 

Chasma-e-Masihi 

Anjam-e-Atham 

Kashti-e-Nuh 

An interesting development is that the present "Khalifa" of Qadianis has warned his followers about me. He spoke for more than two hours on their so-called Muslim Television Ahmadiyya and cautioned the Qadianis that a "Fitna" (temptation) is going to come. To save the faith from that "Fitna" (temptation), he reminded his followers of miracles which were to be remembered when facing the "Fitna" (temptation). Mentioning Zia ul Haq’s plane accident, he claimed that this accident happened to Zia ul Haq because of what he had done to the Qadianis. 

Obviously, it is an intellectual defeat for the "Khalifa" and the whole Ahmadiyya Community. Instead of coming up with logical arguments to counteract my proofs, the "Khalifa" has taken refuge in so-called miracles. Miracles or perhaps some Accident? Allah knows best. I am producing this article here with a challenge to all Qadianis / Ahmadis. Try to prove my arguments wrong in a Court of Law and get Pak. Rs.10,000,000/-.
Extract from Daily Newspaper ‘Inqilab’ Karachi, Pakistan of 27th December 1997 in which the reporter gave an interview of an important Ahmadi / Qadiani: 

"Illias Suttar is in such a way after us as if he has nothing else to do. For a long time we gave him no lift thinking that it does not matter if someone keeps on barking. But now it seems as if he will not only bark but will bite us. And we will have to take 14 injections to save our lives. We Qadianis and Ahmadis are so scared of Illias Suttar as if he is a ghost…… Illias Suttar is not wanting any property from us, he is just wanting an answer to his article: 'Can Ahmadis / Qadianis Answer?'"
On 12/12/1997, Chowdhry Mobasshir Ahmadi who is the grandson of the "Khalifa" of Ahmadis / Qadianis said in the presence of 5 or 6 persons in the shop of Mr. Aslam in Qartaba Market, Bahadurabad, Karachi: "Announce on my behalf: I will give a fantastic reply – but there is no time limit". 


On 2/3/1998, I (Illias Suttar) accompanied by Sarwar Rao, Chief Editor, Monthly Newsnet (International), Karachi, went to Al Noor Hall in Gulberg, Karachi, which is the prayer place (mosque) of Ahmadis / Qadianis). I met the Imam Sahib whose name is Mr. Dawood. I asked him to start a case in any supreme court to prove wrong the points of my article. He replied that "We do not recognise the judges of the earth. We have left the decision (on Illias Suttar’s article) in the Hands of the Judge in the sky"! 


In the Name of Allah, The Most Compassionate, The Most Merciful, The One and Only. 
His Love and Peace be upon Syedna Muhammad, after whom there is no Prophet, and upon his family and Companions.
Insha Allah, Masha Allah 

CAN AHMADIS/QADIANIS ANSWER? 

by Illias Suttar 

Cash Reward: 10,000,000/ - (approx. US$ 250000.00) 

Mirza Ghulam Ahmad’s claims of Imam Mahdi and Promised Messiah 
have now been proven conclusively false. 

Cash Reward Rs: 10,000,000/- (approx. US$ 250,000.00) 

Main Article 

Mirza Ghulam Ahmad rejected the fundamental Muslim doctrine of the second coming of Hazrat Isa ibne Maryam. Instead, he claimed that Hazrat Isa had died his natural death and even claimed to have located his grave in Khanyar Street, Srinagar, Kashmir. Mirza Sahib wrote a book "Jesus in India" where he gave a detailed account of what he claimed to have actually happened at the cross. According to him Jesus was put to the cross by the Jews on Friday; Jesus fainted and Jews thought that he had died. He was buried; but three days later, he regained consciousness and came out of the grave. He was 33 years old at that time. He met his disciples and secretly migrated to India, where he died at the age of 120 years. Let us have a look at the following extracts from this book: 
"Hence, I shall prove in this book that Jesus (Peace be upon him) did not die on the cross neither did he go up to the heavens nor it should ever be hoped that he will return to the earth from the heavens; rather, he died at the age of 120 years in Srinagar in Kashmir, and his grave is in the Khanyar Region of Srinagar."
(Maseeh Hindustan Mein, (Jesus in India) Roohani Khazain, vol.15, p.14) 

"Authentic narrations of hadith prove that our holy Prophet (pbuh) said in the person of Jesus two such qualities were combined which were not present in any other prophet. Firstly, he lived his full life, i.e. he was alive for 125 years. Secondly, he toured most of the parts of the world…now it is obvious if he had ascended to heavens at the age of only 33 years, then the tradition of 125 years would not have been correct, neither he could have toured at such a young age of 33. These traditions are not only mentioned in the authentic and ancient books of hadith, but they are so popular among all the sects of Muslims that none can be imagined more famous."
(Maseeh Hindustan Mein {Jesus in India}, Roohani Khazain, vol. 15, pp. 55-56) 

Christian Era (AD) begins with the birth of Hazrat Isa ibne Maryam (Jesus) in 1 AD. Hazrat Isa, according to Mirza Sahib, died at the age of 120 years, meaning 120 AD. Now, let us examine the following extract from "Anjam-e-Atham", written by Mirza Sahib: 
"The Holy Quran clearly says that the Masih was lifted to the heavens after his death. Therefore his descent is symbolic and not real. And in the verse ‘Falamma Tawaffeteni’ it has been clearly manifested that death of Hazrat Isa (pbuh) has already taken place. Because the meaning of the verse is that the Christians will go astray after the death of Hazrat Isa (pbuh) and not during his lifetime. So if we assume that Hazrat Isa (pbuh) is not yet dead, then we will have to agree that the Christians are not yet digressed, and this is absolutely false. Rather the verse is saying that the Christians remained faithful only until the life-time of Hazrat Isa (pbuh). From this it becomes known that corruption had already begun during the time of Disciples. If the period of the Disciples had been such that the Christians had still been on right path, then in this verse Allah would not have linked it with the life-time of Hazrat Isa (pbuh) only, but would have included the life time of the disciples as well. Thus at this juncture a very good point of the period of corruption in Christianity is illustrated and which is that IN TRUTH, during the time of the Disciples themselves, the seeds of SHIRK (associating partner with God) were sown in Christianity.
(Anjam-e-Atham, Roohani Khazain, vol. 11, p.321) 

The important points from the above extracts are:
Mirza Sahib claims to give proof from hadith that Hazrat Isa died at the age of 125. 
He asserts that Christians were on right path only during the life time of Hazrat Isa. 
He states that Hazrat Isa was not made God or son of God during his life time. 
Seeds of SHIRK (Trinity) were sown after the death of Hazrat Isa. During the life time of Hazrat Isa, there was no possibility of such a digression. Mirza Ghulam Ahmed is quoting the verse "Falamma Tawaffeteni" (5:117) from Quran, implying that Allah is guaranteeing protection from such corruption (Shirk i.e. Trinity) during the life of Hazrat Isa only. 
Since Mirza Sahib has stated in his book "Jesus in India" that Hazrat Isa died in 120 AD, the seeds of association of Partners with Allah (i.e. Trinity) could not have been planted before 120 AD. This means that Hazrat Isa was made God and son of God only after the year 120 A.D. Before 120 A.D., not even one single individual could have held the belief that Hazrat Isa is God or son of God. 
Thus, the year of 120 A.D. became a turning point. 


(Chasma-e-Maseehi, Roohani Khazain, vol. 20, p.375) 

"And in the very first instance, he (Paul) implanted the bad seedling of Trinity in Damascus. And this Pauline Trinity started from Damascus. It is towards this that hadith Shareef has hinted that the future Maseeh will descend on the eastern side of Damascus."
(Chasma-e-Maseehi, Roohani Khazain, vol. 20, p.377) 

In this book, Chasma-e-Maseehi, Mirza Sahib has clearly stated that St. Paul was responsible for the doctrine of Holy Trinity and thus turning Hazrat Isa into God. It is a well known fact that St. Paul died in 64 AD or 67 AD. The book ‘The 100’ gives the year of his death as 64 AD. Encyclopaedia of Religion and Ethics says: 
"That he suffered martyrdom at Rome there can be no doubt…the date will lie between A.D. 64 and 67, most probably nearer the former than the later limit."
(Encyclopaedia, vol. 9, p.694) 

Final Arguments
In the book "Jesus in India", according to Mirza Sahib, Hazrat Isa died in 120 AD. 
In the book "Anjam-e-Atham", Mirza Sahib has clearly stated that the seeds of Trinity were not sown until 120 A.D. 
In the book "Anjam-e-Atham", Mirza Sahib has clearly said that St. Paul made Hazrat Isa God. 
Paul died in 64 or 65 A.D. where as Hazrat Isa died in 120 A.D. Therefore Paul died at least 55 years before Hazrat Isa. (Jesus) 
Since Paul must have given the doctrine of Trinity during his life time, this means the Hazrat Isa was made God at least 55 years before his own death. In other words, by 65 A.D. Hazrat Isa was made God/Son of God while he died 55 years later in 120 A.D. 
While he (Jesus) was alive in Kashmir, he was being worshipped as God in Palestine. 
Thus Mirza Sahib’s commentary on the Holy Quran’s verse 5:117 (Falamma Tawaffetenni) in his book "Anjam-e-Atham", that Christians made Hazrat Isa God after the death of Hazrat Isa in 120 A.D., becomes absolutely wrong. 

Is this a small mistake for a man claiming to have been divinely ordained to be Messiah, Mahdi and a Prophet? Such a grievous error? So obviously and utterly wrong! So conclusively wrong! 

On Page 135 of his book "Anjam Atham", Mirza Ghulam Ahmed says: 
"If Jesus is alive in the heavens, then the Christians must be on the right path (on earth)". 

Will the Qadianis / Ahmadis reflect? 
  (Please see point no. 6 above.) 

If Mirza Sahib were alive and this question had been put to him, could he have said: "I am a human being and I can make mistakes"? Mirza Sahib had claimed help of Allah in these arguments. Can Allah be wrong? No! Only the claim of Mirza Sahib is wrong. If he can be wrong in one thing, what proof is there that he is not wrong in other things? The reason for Mirza Saheb's entire exercise of trying to prove that Hazrat Isa (pbuh) had died was to establish his own claim of being the Promised Messiah and Mahdi. His argument was that, since Hazrat Isa has died, he will not return, as that would be against the principles of Allah. Thus, someone else will have to take up the role of Hazrat Isa and that someone is none other than Mirza Sahib himself! However, the above arguments have proven conclusively that Mirza Ghulam could not substantiate his claim of being Imam Mahdi and the Promised Messiah. Therefore, he is neither Imam Mahdi nor the Promised messiah. As a corollary, he is not a Prophet, because a true Prophet will not make a false claim. Q.E.D., Q.E.D., Q.E.D., Q.E.D., Q.E.D. 

Another Interesting Point 

He secretely migrated to India, lived there for 87 more years, and died at the age of 120 in Srinagar, Kashmir. He kept no contact with the people of Palestine for these 87 years. People in Palestine did not know that Hazrat Isa was alive in Kashmir and Hazrat Isa did not know that the people in Palestine had begun to worship him as God and son of God. Therefore, (according to Qadiani claims) in the original land (Palestine) where he was sent as Messenger and where he was made God and son of God, he kept careful watch only till the age of 33 and for the remaining 87 years of his life he kept no watch over them at all! What a glaring mistake (in tafseer)! 

Remember: All this is Mirza Ghulam Ahmad Qadiani’s assertions and we have only his words for them. Will the Qadianis, his followers, kindly clarify the above points or rectify their belief? 

May Allah help them to understand what is right and what is wrong and give them the courage to follow the right path. Ameen. 

All praise to Allah. His Love and Peace be upon His Noble Prophet, Hazrat Muhammad and upon His family and Companions. 


Sir Syed vs Mirza Saheb 

The Qadiyanis are very proud of saying that Mirza Ghulam Ahmad Sahib was the first man after so many years who said that Jesus (Hazrat Isa) (pbuh) did not go to the heavens ,but died on earth in Kashmir. Mr. Nasim Ahmad, who wrote "An Ahmadi Answers", said that Mirza Sahib first came to know from Allah about Hazrat Isa’s natural death on earth in the year 1891. 

Mr. Nasim Ahmad should know that Sir Syed had made a similar claim 9 years before, in the year 1882, in his Tafsir of Quran Majid. 

Sir Syed wrote his Tafsir of Quran Majid in 6 volumes as follows (see page 335 of the book "Sir Syed Ahmad Khan" by Fazal Karim): 

Part 1 in year 1880 

Part 2 in year 1882 

Part 3 in year 1885 

Part 4 in year 1886 

Part 5 in year 1892 

Part 6 in year 1895 

In part no.2, year 1882, in Sura Maida, verse no. 117, Sir Syed layed claim to the death of Hazrat Isa (pbuh). 

9 years later in 1891, Mirza Saheb copied Sir Syed. Is it in good taste that Qadiayanis are boasting today about Mirza Sahib's plagiarism? 

In the name of Allah, The Most Compassionate, The Most Merciful, The One and Only.
His Love and Peace be upon Syedna Muhammad, after whom there is no Prophet, and upon his family and Companions.
Insha Allah, Masha Allah 

CAN AHMADIS/QADIANIS ANSWER? 

by Illias Suttar 

More Contradictions 

I wish Mirza Ghulam Ahmad Sahib were Alive! 

Mirza Ghulam Ahmad of Qadian claimed to be Imam Mahdi and Promised Messiah, Two in One. It is an accepted Muslim doctrine that Hazrat Isa (Jesus) (pbuh) will descend from heavens and will help Imam Mahdi in the propagation of Islam and fill the world with justice. When people asked Mirza Ghulam about Jesus, the son of Mary, Mirza Sahib replied that Jesus will not descend from heavens because he never went to heavens; rather he went to Kashmir, where he died at the age of 120! In support of his claim, Mirza Sahib wrote a book called ‘Messiah in India (Maseeh in Hindustan)’. 

Quran says celibacy not prescribed in Christianity, but Mirza Sahib says the opposite. 

Mirza Sahib says: 
"And just as Injeel has preached celibacy, similarly in Buddha’s teachings it is desired; and just as an earthquake came on putting the Jesus to the cross, similarly it is written that an earthquake came on the death of Buddha. Thus the main reason for all such similarities is that out of good fortune for the Buddhists, Maseeh came to Hindustan and stayed for a long time amongst Buddhists and they received detailed knowledge on his life and his preachings. Consequently it was inevitable that a great part of that teaching and ceremonials should have found its way into Buddhists records for Jesus was respected and taken for the Buddha by the Buddhists These people therefore recorded his sayings in their books and ascribed them to the Buddha."
(Maseeh Hindustan Mein, Roohani Khazain, vol.15, P.78) 

On the other hand, the Holy Quran says (57:27) that monasticism was invented by Christians. Monasticism includes all ways of detaching oneself from mankind, specially state of celibacy: 
"Then We caused Our messengers to follow in their footsteps; and We caused Jesus, son of Mary, to follow, and gave him the Gospel, and placed compassion and mercy in the hearts of those who followed him. But monasticism they invented - We ordained it not for them - only seeking Allah’s pleasure, and they observed it not with right observance. So, We give those of them who believed their reward, but many of them are evil-livers." (al-Quran 57:27) 

But contrary to this verse, Mirza Sahib says that Hazrat Isa (pbuh) preached the doctrine of Chastity and Celibacy. Who is to be believed? The Holy Quran or the word of Mirza Ghulam? 

Hazrat Isa pbuh - Prophet for Bani Israel or Prophet for Buddhists? 

Bagwa Matteyya, whose other name was Maseeh came to this land, because the failure of a prophecy makes that religion bogus."
(Maseeh in Hindustan, Roohani Khazain, vol 15, p.84) 

"Every Buddhist must necessarily profess the belief that five hundred years after the Buddha, the Bagwa (white) Metteyya did appear in their land."
(Maseeh in Hindustan, Roohani Khazain, vol. 15, p.92) 

"There can be no doubt that he came in the colours of Buddha and the Book of Oldenburg with reference to Buddha’s Book, Lkavati Sutta, it is written that the followers of Buddha used to console themselves with the hope of future that they will achieve the fruits of salvation by becoming the follower of Metteyya. i.e. they had confidence that Metteyya will appear among them and they will attain salvation through him, because the words in which Buddha had given them the hope of Metteyya they were clearly proving that his followers will meet Metteyya. Now with this statement of this book, confidence is generated in the heart that God had created means of their guidance from both sides…and no one can doubt that those moral teachings and spiritual ways which were established by Buddha, the teachings of Hazrat Maseeh have regenerated them in this world."
(Maseeh in India, Roohani Khazain vol. 15 pp. 81-82) 

How could Hazrat Isa (pbuh) go to preach among non-Bani Israel on the basis of divine revelation of Buddha? Is this not against our and your faith which states that Hazrat Isa (PBUH) was sent to Bani Israel only? To further clarify that Hazrat Isa (pbuh) went to all Buddhists whether they were Israelites or not, Mirza Sahib quotes Buddha as saying that Hazrat Isa (pbuh) will come from outside to the land of Prophecy, Magadh, in which the people were dark. And Buddha himself was dark. And since all the Buddhists are included in this prophecy, common sense says that non-Israelites are also included, since all Buddhists were not Israelites. 

Another Hypocrisy of Mirza Ghulam Ahmad 


(Maseeh in Hindustan, Roohani Khazain, vol. 15, p.81) 

Gospel of Barnabas and Mirza Ghulam Ahmad’s Ignorance 

Mirza Sahib says: 
"After all that has been stated, it should be kept in mind that the Gospel of Barnabas, which must be available in the British Museum, it is stated that Jesus was not crucified nor did he die on the Cross. Now we can very well say though this book is not included in the Gospels and has been rejected summarily, yet there is no doubt that it is an ancient book and it belongs to the period in which the other Gospels were written. Is it not open to us to regard this ancient book as a book of history of ancient times and make use of it as a book of history?"
(Masseh in Hindustan, Roohani Khazain, vol. 15, p.21) 

Perhaps Mirza Sahib did not read the Gospel of Barnabas himself, for in the Bible of Barnabas, it is clearly mentioned that Hazrat Muhammad (SAAW) will be the last Prophet, and only false Prophets will come after him. Please see the following extract from the Bible of Barnabas: 
"Isa (pbuh) said in that Messenger’s coming who will wipe out all false ideas about me. His religion will spread all over the earth. Sardar Kahin asked: After the coming of the Messenger of God will more Prophets come? Isa(pbuh) said: After him not true Prophet will come. But many false Prophets will come."
(Gospel of Barnabas, Urdu Edition, p. 143) 

"Then the disciples asked: O Master, who is that man who you mention will come to earth? With great happiness Isa (pbuh) replied: He is Muhammad (SAAW), Messenger of Allah. When he will come, just as rain brings out fruits from earth when there has been no rain for a long time, in the same way with the unlimited Mercy and Blessings with which he will come, he will be the cause of many good and virtuous deeds."
(Gospel of Barnabas, p.228, Urdu Version) 

Mirza Sahib admits that the gospel of Barnabas is an ancient historical document, written at the same time as other Gospels. He presents one of its statements to support his claim. But what he didn’t know was that it not only mentions the coming of Hazrat Muhammad (SAAW), but also the finality of his Prophethood or did he? If he had, what right did Mirza Ghulam have to claim that he is a Prophet? Why did he take one statement as a proof and ignored the other one. Perhaps he had never read the Gospel! 

Is Adam (pbuh) still alive? Did Mirza Sahib die at the age of 30? 

"There is another important statement by the Holy Prophet. During his last illness, the Holy Prophet said to his daughter Fatima: ‘Once a year Gabriel used to recite the Quran to me. This year he recited twice. He also told me that every succeeding Prophet has lived up to half the age of his predecessor. He told me that Jesus, son of Mary, lived to 120 years. Therefore, I think, I may live to about 60 years." 


(Invitation to Ahmadiyyat (Da’awat-ul-Ameer), p.17) 

Based on this formula, some of the future prophets (if at all there are some, and there should be at least three of them if you accept the Qadiani interpretation of the verse of Khatme-Nabuwwat) will have following ages:

Mirza Ghulam Ahmed Qadiani ??? 30 years old 

Next assumed prophet 15 years old 

Next assumed prophet 7 and half years old…and so on. 

So according to the extract on page 17 taken from "Invitation to Ahamadiyyat", Hazrat Adam (pbuh) should have lived up to 122880 years. Which means that he is still alive. In fact, even Hazrat Sheesh, Noah, Abrahim and Ismail (pbut) should all be alive now. Furthermore, if Mirza Sahib is a prophet, he should have died at the age of 30 only, that is half the age of the previous Prophet. Did Mirza Sahib become Prophet after his death? Still more interesting, if Prophets will continue to come, then just a few Prophets down the line we would be having one who is a newborn!! This statement of the Holy Prophet (SAAW), if at all authentic, clearly means that there will no Prophet after Hazrat Muhammad (saw), because the next Prophet will have to die at the age of 30 and the next at 15 which means he will not even be an adult.
QURAN WA HADITH KA NAAM LEKAR MUGALTA DENE WALE SIGNUTURE USE KARNE KE JURM ME SIGNUTURE PAR PABANDI AYID HOTI HAI....

#25 Khalil Ahmadi

Khalil Ahmadi
  • Members

  • 4 posts
  • Joined 24-September 13
  • Madhab:Not Telling

Posted 27 September 2013 - 12:02 PM

bismillah.gif



aamir sahib. aap ne koun sa tafseeli jawab dya hay zara wazahat karin kyun k aap ka abhi tak es topic pe koi jawab nein aya. aap ne sirf aik baat kahi thi k



aor es ka jawab mien ne de dya tha koper ki baat waqai yahood ki hay lakin nechy khud mirza ka qoul hay .aap ne es baat ka koi jawab nein dya.




janab tumhari nazar pata nien kahan hay mien ne oper ANJAAM-E-AATHIM ka hawal dya tha jo mirzy ki book hay aor neechy FASALUL KHITAAB ka jo tumhary mirzy k khalifa ki book hay.



janab tum pehly ye sabit karo k tumhara deen islam aor tumhari kitaab quran hay .aor ye tum sabit nien ker sakty.
dosri baat k tum ne topic HAZRAT EESA(as) ka 

https://plus.google....518737423009119

 



#26 Khalil Ahmadi

Khalil Ahmadi
  • Members

  • 4 posts
  • Joined 24-September 13
  • Madhab:Not Telling

Posted 27 September 2013 - 12:05 PM

 
حضرت مسیح موعودعلیہ السلام  بیان فرماتے ہیں:۔
 
       ۔     ’’ہمارے ہادی اور سیّد مولیٰ جناب ختم المرسلین نےمسیح اوّل اور مسیح ثانی میں مابہ الامتیاز قائم کرنے کے لئے۔۔۔۔۔۔ظاہر فرمایا ہے کہ مسیح اوّل اور مسیح ثانی کے حلیہ میں بھی فرق بیّن ہو گا۔چنانچہ مسیح اوّل کا حلیہ جو آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم کو معراج کی رات میں نظر آیا وہ یہ ہے کہ درمیانہ قد اور سرخ رنگ اور گھنگروالے بال اور سینہ کشادہ ہے دیکھو صحیح بخاری صفحہ489 لیکن اسی کتاب میں مسیح ثانی کا حلیہ جناب ممدوح نے یہ فرمایا ہے کہ وہ گندم گوں ہے اور ا س کے بال گھنگر والے نہیں ہیں اور کانوں تک لٹکتے ہیں .اب ہم سوچتے ہیں کہ کیا یہ دونوں ممیز علامتیں جو مسیح اول اورؔ ثانی میں آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم نے بیان فرمائی ہیں کافی طور پریقین نہیں دلاتیں کہ مسیح اول اورؔہے اور مسیح ثانی اور ان دونوں کو ابن مریم کے نام سے پکارنا ایک لطیف استعارہ ہے جو باعتبار مشابہت طبع اور روحانی خاصیت کے استعمال کیا گیا ہے۔‘‘
 
                                                                (صحیح بخاری کتاب الانبیاء باب و اذکرفی الکتاب مریم)
 
                                                                           (توضیح مرام ۔روحانی خزائن جلد 3صفحہ 59)


#27 Khalil Ahmadi

Khalil Ahmadi
  • Members

  • 4 posts
  • Joined 24-September 13
  • Madhab:Not Telling

Posted 27 September 2013 - 12:08 PM

بعض علماء یہ کہتے ہیں کہ نبی کریم ﷺ کو خدا تعالیٰ نے خاتم النبین قرار دیا ہے اور تمام امت کا اس پر اجماع ہے کہ اس کے معنی ہیں ’’ تمام انبیاء کو ختم کرنے والا‘‘ اس میں سے نہ تو کوئی مستثنیٰ ہے اور نہ ہی ان معنوں کی تخصیص جائز ہے بلکہ علماء نے لکھا ہے کہ اس میں سے استثناء کرنا یاتخصیص کرنا کفر ہے اور جو ایسا کرے وہ کافر ہے۔ اس کے جواب میں ہم پوچھتے ہیں کہ پھر:
 
1۔ ان علماء کا کیا فتویٰ ہے سرور کونین سید الثقلین محمد ﷺ کے متعلق جنہوں نے مسلمانوں کو خوشخبری دی کہ آخری زمانہ میں نبی اللہ عیسیٰ کو ان کی اصلاح اور ہدایت کے لئے مبعوث کیا جائے گا۔
 
2۔ ان علماء کا کیا فتویٰ ہے ان تمام صحابہ کرام اور محدثین کے متعلق جنہوں نے نزول مسیح کی احادیث کوروایت کیا اور تواتر سے روایت کیا اور ساتھ ہی یقین ظاہر کیا کہ عیسیٰ علیہ السلام کا آخری زمانہ میں آنا برحق ہے اوروہ نبی اللہ ہوگا۔
 
3۔ ان علماء کا کیا فتویٰ ہے کہ تمام اہل السنت والجماعت کے آئمہ اور مقلدین کے متعلق جو اس اعتقاد پر قائم ہیں کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے نزول کی پیشگوئی یقینی ہے ۔ وہ یقیناًآئیں گے اور اسلام کو دنیا پر غالب کریں گے اور دجالی فتنے کا ازالہ فرمائیں گے۔
 
4۔ ان علماء کا کیا فتوی ہے ان تما م متکلمین اور مفسرین کے متعلق جنہوں نے آیت خاتم النبین کی تفسیر بیا ن کرتے ہوئے ساتھ ہی عیسیٰ علیہ السلام کے آنے کو تسلیم کیا ہے اور لکھاہے کہ وہ متبع شریعت محمدیہ ہو کر آئیں گے اس لئے ان کا آنا ختم نبوت کے منافی نہیں۔
 
5۔ پھر ان علماء کا کیا فتویٰ ہے ان علماء کرام اور آئمہ عظام کے بارے میں جنہوں نے خاتم النبیین کے معنے اور تفسیر ایسی بیان کی ہے جو اس مطلب سے زیادہ اعلیٰ اورمطلب خیز ہے اور وہ امتی نبی کے آنے میں روک بھی نہیں بن سکتی۔۔۔۔
 
6۔ پھر خاتم النبیین کے معنی ’’ تمام انبیاء کو ختم کرنے والا ‘‘ بالکل مبہم ہیں ، سوال یہ ہے کہ جو انبیاء گزر چکے اور وفات پا گئے ہیں انہیں بند یا ختم کرنے کے کیا معنی؟ وہ تو پہلے ہی ختم ہو چکے ہیں اور ایک نبی ( عیسیٰ علیہ السلام) جو عوام کے خیال کے مطابق ابھی زندہ تھے انہیں نہ ختم کر سکے اور نہ ہی ان کا آنا بند ہوا۔
 
7۔ ایک اور سوا ل بھی اس ترجمہ کے متعلق یہ پیدا ہوتا ہے کہ نبی بھیجنا یا نہ بھیجنا کس کا کام ہے۔ خدا تعالیٰ کا یا نبی کریم ﷺ کا؟
 
قرآن کریم (سور ہ الدخان آیت 6) میں فرمایا ’’اِنَّا کُنَّا مُرْسِلِیْنَ‘‘ کہ ہم ہی رسول بھیجتے ہیں۔ پس جب رسول بھیجنا خدا تعالیٰ کے اختیار میں ہے تو بند کرنا یا ختم کرنا بھی اسی کے اختیار میں ہے۔ اس طرح خاتم النبین تو خدا کی صفت قرار پائی۔ وہی مرسل النبیین ہوا اور وہی خاتم النبیین ہوا۔حالانکہ قرآن مجید کی گواہی یہ ہے کہ رسول پاک ﷺ خاتم النبیین ہیں۔
 
8۔ پھر دوسرے انبیاء تو ہمیشہ خواہش کرتے بلکہ دعا مانگتے رہے کہ خدا تعالیٰ ان کے متبعین کو بڑے روحانی درجات عطا فرمائے اور اپنے قرب سے انہیں نوازتا رہے۔ حضرت ابراہیم اور حضرت موسیٰ علیہ السلام کی دعائیں ہمارے سامنے ہیں لیکن نبی کریم ﷺ تشریف لائے تو اعلان ہو گیا کہ میری امت میں سے کسی کو نبوت کا اعلیٰ اور بلند مرتبہ نصیب نہ ہوگا کیا یہی فضیلت ہے جو آپ کو عطا کی گئی، کیا یہی اعلیٰ درجہ ہے جو آ پ کی امت کے حصہ میں آیا؟ پہلی امتوں میں شہداء اور صدیقین کے علاوہ خدا تعالیٰ انبیاء بھی مبعوث فرماتا رہا لیکن اس امت میں شہداء اور صدیقین تو ہونگے مگر کسی فرد کو نبوت کے شرف سے نہ نوازا جائے گا۔ شیخ رشید رضا ’’ من یطع اللہ والرسول فاولٰئک مع الذین انعم اللہ علیھم من النبیین والصدیقین والشھداء والصالحین‘‘ کی تفسیر میں فرماتے ہیں:
 
ترجمہ :۔ کہ یہ چار قسمیں (نبی ، صدیق ، شہید اور صالح) خدا تعالیٰ کے برگزیدہ بندوں میں سے ہیں اور یہ لوگ پہلی تمام امتوں میں موجود تھے اور اس امت میں جو شخص اللہ تعالیٰ اور رسول اللہ ﷺ کی اطاعت کرے گا وہ ان میں سے ہوگا اور قیامت کے دن ان کے ساتھ اٹھایا جائے گا اور چونکہ اللہ تعالیٰ نے نبوت اور رسالت کو ختم کر دیا ہے اس لئے آئندہ ان تین قسموں میں سے کسی ایک قسم تک ہی ترقی ہو سکے گی یعنی صدیق، شہید اور صالح تک۔
 
 (تفسیر القرآن الحکیم جزء 5 صفحہ 247)
 
ہم پوچھتے ہیں کہ پھر امت اسلام کی فضیلت کیا ہوئی؟ پھر کس وجہ سے اس امت کو خیر امت کہا جائے؟ جب ختم نبوت کے یہ معنی لئے جائیں کہ اس امت میں کوئی شخص نبی نہیں ہو سکتا آخر اسے کیوں بہترین امت تسلیم کیا جائے ۔ صرف دعویٰ ہی تو کافی نہیں ہو سکتا۔
 
تفاسیر سے معلوم ہوتا ہے کہ یہودی ، عیسائی بلکہ مجوسی اور عرب لوگ ہمیشہ اپنے دین کو زیادہ اعلیٰ قرار دیتے۔ لکھا ہے:
 
ترجمہ :۔ ’’  مختلف ادیان کے لوگوں نے فخر کرنا شروع کیا۔ یہود نے کہا کہ ہماری کتاب (تورات) سب سے افضل ہے ۔ اللہ نے اس سے تخلیہ میں سرگوشیاں کیں اور کلام کیا، عیسائیوں نے کہا کہ عیسیٰ خاتم النبیین ہے اللہ نے اسے تورات بھی دی اور انجیل بھی، اگر محمد اس کا زمانہ پاتا تو اس کی پیروی کرتا اور ہمارا دین بہتر ہے اور مسلمانوں نے کہا کہ محمدؐ اللہ کے رسول اور خاتم النبین ہیں اور تمام رسولوں کے سردار ہیں‘‘۔
 
(تفسیر الدر المنثور جزء2 صفحہ 226)
 
دیکھا، کیسے ہر مذہب کے پیرو اپنے دین کوافضل اور اعلیٰ قرار دیتے ہیں۔ پس خاتم النبین کے معنی ’’ تمام نبیوں کو ختم کرنے والا‘‘ کئے جائیں تو خود نبی کریم ﷺ کی ہتک اور امت اسلام کی ایک قسم کی ذلت کاموجب ہیں کیونکہ ان معنوں سے لازم آتا ہے کہ نبی کریم ﷺ نے گویا اعلان فرما دیا کہ میری امت میں سے کسی کو نبوت کا اعلیٰ منصب نصیب نہ ہوگا ۔ زیادہ سے زیادہ وہ صدیق کا درجہ حاصل کر سکیں گے اور یہ کوئی ایسادرجہ نہیں جسے دوسری امتوں کے مقابل فخر کے ساتھ پیش کیا جا سکے، کیونکہ دوسری امتوں میں بھی شہید اور صدیق بکثرت ہوئے۔ خدا تعالیٰ فرماتا ہے:
 
’’ والذین آمنو باللہ ورسلہ اولٰئک ھم الصدیقون والشھداء عند ربھم‘‘۔ (الحدید آیت 19)۔ کہ جو لوگ اللہ اور اس کے رسولوں پر ایمان لائے وہ خدا کے نزدیک صدیق اور شہید ہیں‘‘۔
 
ایک دفعہ حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ نے ان لوگوں کو جو ان کے پاس بیٹھے تھے فرمایا: کلکم صدیق و شہید کہ تم میں سے ہر ایک صدیق اور شہید ہے۔
 
حضرت مجاہد سے روایت ہے کہ آپ نے فرمایا: ’’کُلُّ مُؤْمِن صِدِّیْقٌ وَ شَہِیْدٌ‘‘
 
(الدر المنثور الجزء 6 صفحہ 176)
 
کہ ہر مومن صدیق اور شہید ہے۔
 
پس خدارا غور کیجئے کہ خاتم النبین کے یہ معنے حضور ﷺ کی کس شان کا اظہار کرتے ہیں جبکہ دوسرے انبیاء کی امتوں میں کئی تابع نبی مبعوث ہوئے اور آنحضرت ﷺ کا کوئی امتی اس درجہ کو حاصل نہ کر سکا۔
 
9۔ اگر ’’تمام انبیاء کو ختم کرنے والا ‘‘ کا یہ مطلب لیا جائے کہ نبی کریم ﷺ کو خدا تعالیٰ نے جو شریعت کاملہ عطا فرمائی تھی اس کے ذریعہ خدا تعالیٰ نے تما م انبیاء سابقین کی شرائع کو منسوخ کر دیا ہے ۔ اب آئندہ ان شرائع پر عمل کرنا جائز نہیں ہوگا صرف شریعت اسلام ہی کی پیروی ضروری ہوگی اور چونکہ یہ شریعت کامل بھی ہے اور اس کی حفاظت کا وعدہ بھی خدا تعالیٰ نے فرما دیا ہے اس لئے کسی نئی شریعت کے اترنے کا کوئی جواز نہیں ہے۔تو اس مطلب کی رو سے کوئی ایسا نبی تو نہیں آسکتا جو نئی شریعت لائے اور نبی کریم ﷺ کا امتی نہ ہو لیکن ایسا نبی جو اسی شریعت سے فیضیاب ہو اور نبی کریم ﷺ کی اتباع کی برکت سے ہی اس کو نبوت کے منصب پر فائز کیا گیا ہو اسے اسلام اور امت اسلام کے احیاء کے لئے مبعوث کیا گیا ہو آ سکتا ہے اور اس کے آنے میں کوئی شرعی روک نہیں ہے۔


#28 Khalil Ahmadi

Khalil Ahmadi
  • Members

  • 4 posts
  • Joined 24-September 13
  • Madhab:Not Telling

Posted 27 September 2013 - 12:10 PM

          حیاتِ عیسیٰؑ کے قائلین ’’ختم نبوت‘‘کے انکار کے مرتکب ہوتے ہیں
 
’’ہم لفظی اور حقیقی ہر معنی میں آنحضور صلی اﷲ علیہ وسلم کو خاتم النّبییّن تسلیم کرتے ہیں اور بادب اس تلخ حقیقت کی طرف توجہ مبذول کروانے کی جرأت کرتے ہیں کہ مُنکرینِ حدیث کے سوا ہمارے تمام مخالف فرقوں کے علماء آنحضور صلی اﷲ علیہ وسلم کو ان معنوں میں خاتم النبیین تسلیم نہیں کرتے۔ وہ یہ کہنے کے باوجود کہ آنحضور صلی اﷲ علیہ وسلم سب نبیوں کو ختم کرنے والے ہیں یہ متضاد ایمان رکھتے ہیں کہ آنحضور صلی اﷲ علیہ وسلم نعوذ باﷲ حضرت عیسیٰ ؑ بن مریم ؑ کو نہ تو جسمانی لحاظ سے ختم فرما سکے نہ ہی رُوحانی لحاظ سے۔ آپ ؐ کے ظہور کے وقت ایک ہی دوسرا نبی جسمانی لحاظ سے زندہ تھا مگر افسوس وہ آپ ؐ کی زندگی میں ختم نہ ہو سکا آپؐ وفات پاگئے لیکن وہ زندہ رہا اور اَب تو وصالِ نبوی ؐ پر بھی چودہ سَو برس گزرنے کو آئے لیکن ہنوز وہ اسرائیلی نبی زندہ چلا آرہا ہے۔ ذرا انصاف فرمائیے کہ خاتَم کے جسمانی معنوں کے لحاظ سے حیاتِ مسیح ؑ کا عقیدہ رکھنے والوں کے نزدیک دونوں میں سے کون خاتَم ٹھہرا۔
 
 پھر یہی علماء رُوحانی لحاظ سے بھی عملاً مسیح ناصری ؑ ہی کو خاتَم تسلیم کر رہے ہیں کیونکہ یہ ایمان رکھتے ہیں کہ آنحضور صلی اﷲ علیہ وسلم فیض رسانی کے لحاظ سے بھی مسیح ناصری ؑ کی فیض رسانی کو ختم نہ فرما سکے۔ دیگر نبیوں کے فیض تو پہلے ہی ختم ہو چکے تھے اور نجات کی دوسری تمام راہیں بند تھیں۔ ایک مسیح ناصری ؑ زندہ تھے مگر افسوس کہ ان کے فیض کی راہ بندنہ ہو سکی۔ یہی نہیں ان کی فیض رسانی کی قوت تو پہلے سے بھی بہت بڑھ گئی اور اُس وقت جبکہ اُمّتِ محمدیہ آنحضور صلی ا ﷲ علیہ وسلم کی عظیم الشان قوتِ قدسیہ کے باوجود خطرناک رُوحانی بیماریوں میں مُبتلا ہو گئی اور طرح طرح کے رُوحانی عوارض نے اُسے گھیر لیا تو براہِ راست آنحضور صلی اﷲ علیہ وسلم کی قوتِ قُدسیہ تو اِس اُمّتِ مرحومہ کو نہ بچا سکی ہاں بنی اسرائیل کے ایک رسُول کے مسیحی دَموں نے اُسے موت کے چنگل سے نجات دلائی اور ایک نئی رُوحانی زندگی عطا کی۔ اِنَّا ِﷲِ وَاِنَّا اِلَیْہِ رَاجِعُوْنَ۔ کیا صریحاً اِس سے یہ ثابت نہیں ہوتا کہ حیاتِ مسیح ؑ کا عقیدہ رکھنے والے آنحضور صلی اﷲ علیہ وسلم کو افاضۂ  فیض کے لحاظ سے بھی سب نبیوں کا ختم کرنے والا نہیں سمجھتے بلکہ یقین رکھتے ہیں کہ وہ ایک ہی نبی جو اُس وقت زندہ تھا اُس کی فیض رسانی کی قوت کو بھی آپ ؐ ختم نہ فرما سکے بلکہ نعوذ باﷲ وہ اِسرائیلی نبی اِس حال میں فوت ہؤا کہ اُمّتِ محمدیہ کا آخری رُوحانی مُحسن بن چُکا تھا۔
 
 غور فرمائیے! کہ کیا جسمانی اور رُوحانی دونوں معنوں میں حضرت عیسیٰ علیہ السلام کو خاتم النّبییّن تسلیم نہیں کیا جارہا؟ کیا یہ آنحضور صلی اﷲ علیہ وسلم کی صریح گُستاخی نہیں؟ کیا یہ آیت خاتم النّبییّن کی رُوح کو سبوتاژ کرنے کے مترادف نہیں؟ اور پھر بھی یہ دعویٰ ہے کہ احمدی خاتم النّبییّن کے مُنکر اور ہم خاتم النّبییّن کے قائل بلکہ محافظ ہیں۔ کیا دُنیا سے اِنصاف بالکل اُٹھ چکا ہے؟ کیا عقل کے تمام تقاضوں کو بالائے طاق رکھ دیا جائے گا؟ کیا اِس قضئے کو عَدل کے ترازو پر نہیں تولا جائے گا بلکہ محض عددی اکثریت کے زور پر حق و باطل اور اُخروی نجات کے فیصلے ہوں گے؟ خدا نہ کرے کہ ایسا ہو۔ خدا ہر گز نہ کرے کہ ایسا ہو۔ لیکن ایسا اگر ہو تو پھر تقویٰ اﷲ کا دعویٰ کیوں کیا جاتا ہے۔ کیوں نہیں اسے جنگل کا قانون کہا جاتا اور کیوں اِس نااِنصافی کے لئے اﷲ اور رسول ؐ کے مقدّس نام استعمال کئے جاتے ہیں۔ ویرانے کا نام کوئی اچھا سا بھی رکھ لیں ویرانہ ویرانہ ہی رہے گا۔
 
 ہمیں یہ کہا جاتا ہے کہ تم مطلق طور پر آنحضور صلی اﷲ علیہ وسلم کو آخری نبی تسلیم نہیں کرتے اور تاویلیں کر کے ایک اُمّتی اور ظِلّی نبی کے آنے کی راہ نکال لیتے ہو اور اِس طرح ختمِ نبوت کو توڑنے کے مُرتکب ہو جاتے ہو۔
 
 ہم یہ تسلیم کرتے ہیں کہ ایک ایسے اُمّتی نبی کا اُمّتِ محمدیہ ہی میں پیدا ہونا جو آنحضور صلی اﷲ علیہ وسلم کا کامل غلام ہو اور اپنے ہر رُوحانی مرتبے میں سَرتا پا آپؐ ہی کے فیض کا مرہونِ منّت ہو ہر گز آیت خاتم النّبییّن کے مفہوم کے منافی نہیں کیونکہ فانی اور کامل غلام کواپنے آقا سے جُدا نہیں کیا جاسکتا۔ ہم اِس بات کے مکلّف ہیں کہ اپنے اس مؤقف کو قرآنِ حکیم سے، ارشاداتِ نبوی صلی اﷲ علیہ وسلم سے، اقوالِ بزرگانِ اُمّت سے اور محاورہئ عرب سے ثابت کریں اور اِس سلسلہ میں ایک سیر حاصل بحث آئندہ صفحات میں پیش کی جارہی ہے مگر اس سے پہلے ہمیں رخصت دیجئے کہ ہم اُن لوگوں کا کچھ محاسبہ کریں جو ہم پر مُہرِنبوت کو توڑنے کا اِلزام لگاتے ہیں کہ خود ان کے عقیدہ کی حیثیت کیا ہے۔ وہ بظاہر یہ دعویٰ کرتے ہیں کہ وہ آنحضور صلی اﷲعلیہ وسلم کو مطلقاً بلا شرط و بِلا اِستثناء ہر معنٰی میں آخری نبی مانتے ہیں اور آپ ؐ کے بعد کسی قسم کے نبی کی بھی آمد کے قائل نہیں لیکن ساتھ ہی اگر پوچھا جائے تو یہ اقرار کرنے پر بھی مجبور ہو جاتے ہیں کہ ”سوائے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے جو ضرور ایک دن اِس اُمّت میں نازل ہوں گے”۔
 
 جب آپ ان پر یہ جرح کریں کہ ابھی تو آپ نے یہ فرمایا تھا کہ آنحضورؐ مطلقاً، بِلااستثناء ان معنوں میں آخری نبی ہیں کہ آپ ؐ کے بعد کسی قسم کا کوئی نبی نہیں آئے گا تو پھر اَب آپ کو یہ اِستثناء قائم کرنے کا حق کیسے مِل گیا؟ تو اس کے جواب میں اِنتہائی بے معنی اور بے جان تاویل پیش کرتے ہیں کہ وہ چونکہ پہلے نبی تھے اِس لئے ان کا دوبارہ آنا ختمِ نبوت کی مُہر کو توڑنے کا موجب نہیں۔ جب ان سے پوچھا جائے کہ کیا وہ موسوی شریعت ساتھ لے کر آئیں گے؟ تو جواب مِلتا ہے نہیں بلکہ وہ بغیر شریعت کے آئیں گے۔ پھر جب پوچھا جائے کہ اس صورت میں اوامرونواہی کا کیا بنے گا؟ کس بات کی نصیحت فرمائیں گے اور کِس سے روکیں گے تو ارشاد ہوتا ہے کہ پہلے وہ اُمّتِ محمدیہ کے ممبر بنیں گے پھر اس شریعت کے تابع ہو کر نبوت کریں گے۔ مزید سوالات کے جوابات ان کے اختیار میں نہیں کہ آیا مسیح ناصری ؑ کو شریعتِ محمدیہ کی تعلیم علماء دیں گے یا براہِ راست اﷲ تعالیٰ سے وحی کے ذریعہ ان کو قرآن، حدیث اور سُنّت کا عِلم دیا جائے گا لیکن یہ امر تو اس جِرح سے قطعاً ثابت ہو جاتا ہے کہ وہ خود بھی آنحضور صلی اﷲ علیہ وسلم کو مطلقاً آخری نبی نہیں مانتے بلکہ یہ استثناء رکھتے ہیں کہ ایسا نبی جو پُرانا ہو صاحبِ شریعت نہ ہو اُمّتی ہو اور لفظاً لفظاً شریعتِ محمدیہ کا تابع ہو اور اسی کی تعلیم و تدریس کرے مُہرِ نبوت کو توڑے بغیر بعد ظہورِ نبوی صلی اﷲ علیہ وسلم بھی آسکتا ہے۔
 
 ہم اہلِ عقل و دانش اور اہلِ انصاف سے یہ سوال کرنے کا حق رکھتے ہیں کہ کیا ایسا اعتقاد رکھنے والے کے لئے کسی بھی منطق یا انصاف کی رُو سے یہ کہنا جائز ہے کہ آنحضرت صلی اﷲ علیہ وسلم کے بعد کسی قسم کا بھی کوئی نبی نہیں آسکتا۔‘‘
 
(محضرنامہ ۔ صفحہ29تا32)


#29 Tayyib Qadri

Tayyib Qadri

    Ajmeri Member

  • Members

  • PipPipPip
  • 173 posts
  • Joined 05-February 07

Posted 14 September 2015 - 02:36 PM

 اِنَّا قَتَلْنَا الْمَسِيْحَ عِيْسَى ابْنَ مَرْيَمَ رَسُوْلَ اللّٰهِ ۚ وَمَا قَتَلُوْهُ وَمَا صَلَبُوْهُ وَلٰكِنْ شُبِّهَ لَهُمْ ۭ وَاِنَّ الَّذِيْنَ اخْتَلَفُوْا فِيْهِ لَفِيْ شَكٍّ مِّنْهُ ۭ مَا لَهُمْ بِهٖ مِنْ عِلْمٍ اِلَّا اتِّبَاعَ الظَّنِّ ۚ وَمَا قَتَلُوْهُ يَقِيْنًۢا ۔بَلْ رَّفَعَهُ اللّٰهُ اِلَيْهِ ۭوَكَانَ اللّٰهُ عَزِيْزًا حَكِ۔يْمًا اور ان کے اس کہنے پر کہ ہم نے قتل کیا مسیح عیسیٰ مریم کے بیٹے کو جو رسول تھا اللہ کا اور انہوں نے نہ اس کو مارا اور نہ سولی پر چڑھایا لیکن وہی صورت بن گئی ان کے آگے اور جو لوگ اس میں مختلف باتیں کرتے ہیں تو وہ لوگ اس جگہ شبہ میں پڑے ہوئے ہیں کچھ نہیں ان کو اس کی خبر صرف اٹکل پر چل رہے ہیں اور اس کو قتل نہیں کیا بےشک بلکہ اس کو اٹھا لیا اللہ نے اپنی طرف اور اللہ ہے زبردست حکمت والا(سورہ نسا ۔۱۵۷۔۱۵۸)
یہود کا یہ کہنا تھا کہ انہوں نے حضرت عیسیٰ کو قتل کر دیا (نعوذ باللہ) یہاں اللہ پاک نے یہود کہ اس قول کی دو ٹوک الفاظ میں نفی کریدی اور ما قتلوہ اور ما صلبوہ کہ کر ان کے قتل مطلق کی نفی فرما دی اور یہ فرما دیا کہ بل رفعہ اللہ الیہ یعنی ، بلکہ اللہ نے اٹھا الیا اس کو اپنی طرف۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ اللہ نے حضرت عیسیٰ کو موت سے بچا کر اوپر آسمانوں میں اپنی طرف اٹھا لیا ۔ اب یہاں کچھ باتیں سمجھ لیجئے۔
۱۔ بل رفعہ اللہ کی ضمیر اسی طرف راجع ہے جس طرف کہ ما قتلوہ اور ما صلبوہ کی ضمیریں راجع ہیں اور ظاہر ہے کہ ما قتلوہ اور ما صلبوہ کی ضمیر یں حضرت عیسیٰ کے جسم و جسد اطہر کی طرف راجع ہیں۔ روح بلا جسم کی طرف راجع نہیں ہیں۔اس لیے کہ قتل کرنا اور صلیب چڑھانا جسم کا ہی ممکن ہے روح کا قطعا ناممکن ہے۔لہذا بل رفعہ کی ضمیر اسی جسم کی طرف راجع ہوگی جس جسم کی طرف ما قتلوہ اور ما صلبوہ کی ضمیریں راجع ہیں۔ساتھ ہی ساتھ یہ کہ یہود روح کے قتل کے مدعی نہ تھے بلکہ جسم کو وہ قتل کرنا چاہتے تھے اور بل رفعہ اللہ میں اس کی تردید کی گئی لہذا بل رفعہ سے مراد جسم(مع روح) ہی ہو گا نہ کہ صرف روح۔
۲۔ اگر رفع سے رفع روح بمعنی موت مراد ہے تو قتل و صلب کی نفی سےکیا فائدہ؟ کیوں کہ قتل و صلب سے غرض موت ہی ہوتی ہے اور یہاں "بل "کے بعد بصیغہ ماضی" رفعہ" کو لانے میں اس طرف اشارہ ہے کہ تمہارے قتل و صلب سے پہلے ہی ان کو ہم نے اپنی طرف اٹھا لیا۔یہی بات ہے کہ جملہ ائمہ و مفسرین اس بات پر بالکل متفق ہیں آپ کوئی بھی مستند تفسیر اٹھا کر دیکھ لیجئے (کئی ایک کہ تراجم اب نیٹ پر بھی دستیاب ہیں) کہ حضرت عیسیٰ کا یہ رفع ان کی زندگی کی حالت میں ان کے جسد عنصری کے ساتھ ہوا۔مثلا
۱۔ علامہ ابن جریر طبری تفسیر جامع البیان میں اس آیت کے تحت سدی سے بیان کرتے ہیں کہ سیدنا عیسیٰ کو آسمانوں پر اٹھا لیا گیا۔نیز حضرت مجاہد سے روایت کرتے ہیں سیدنا عیسیٰ کو اللہ تعالیٰ نے زندہ اٹھا لیا۔(جامع البیان جز ۶ص ۱۴،۱۵)۲۔علامہ ابن کثیر حضرت مجاہد کی روایت کو یوں نقل فرمایا ہے"یہود نے ایک شخص کو جو مسیح کا شبیہ تھاصلیب پر لٹکایاجبکہ سیدنا عیسیٰ علیہ السلام کو اللہ تعالیٰ نے زندہ آسمانوں پر اٹھالیا۔(ج۳ص۱۲)۳۔اب لفظ رفع کے بارے میں کچھ باتیں سمجھ لیجئے ۔ لفظ رفع قرآن مجید میں مختلف صیغوں کی صورت میں کل ۲۹ دفعہ استعمال ہوا ہے۔ ۱۷ مرتبہ حقیقی اور ۱۲ مرتبہ مجازی معنوں میں ۔ گو کہ رفع کے معنی اٹھانے اور اوپر لے جانے کہ ہیں لیکن وہ رفع کبھی اجسام کا ہوتا ہے کبھی معانی و اعراض کا، کبھی اقوال و افعال کا ہوتا ہے اور کبھی مرتبہ و درجہ کا۔ جہاں رفع اجسام کا ذکر ہو گا وہاں رفع جسمانی مراد ہو گی۔اور جہاں رفع اعمال و درجات کا ذکر ہو گا وہاں رفع معنوی مراد ہو گا۔یعنی جیسی شے ہو گی اس کا رفع بھی اس کے مناسب ہوگا
مثال۱۔ رفع جسمانی
و رفع ابویہ علی العرش (یوسف ۱۰۰) اور اونچا بٹھایا اپنے ماں باپ کو تخت پر۔ ۲۔ رفع ذکر
و رفعنا لک ذکرک۔ اور ہم نے آپ ﷺ کا ذکر بلند کیا۔
۳۔ رفع درجات
ورفعنا بعضھم فوق بعض درجٰت(الزخرف ۳۲) اور بلند کر دیئے درجے بعض کے بعض پر ۔ اب یہاں جیسی شے ہے ویسے ہی اس کے مناسب رفع کی قید ہے جیسا کہ آخر میں خود ذکر و درجے کی قید موجود ہے۔ رفع کی مذکورہ تعریف اور مثالوں سمجھنے کے بعد اب یہ سمجھنا کہ قرآن میں جہاں کہیں رفع آئے گا وہ روحانی یا درجات کا ہی رفع ہوا گا محض ایک جہالت کی بات ہ۔ ۔
 یہ بھی اعتراض کیا ہے کہ اس آیت میں آسمان کا لفظ تو نہیں بلکہ صرف اتنا ہے کہ اللہ پاک نے حضرت عیسیٰ کو اپنی طرف اٹھا لیا تو اس سے یہ لازم نہیں آتا کہ ان کواوپر آسمانوں کی طرف اٹھا یا ہو کیونکہ اللہ پاک تو ہر جگہ موجود ہیں ۔
اس کا جواب یہ ہے کہ یہ بات اچھی طرح سمجھ لی جائے کہ اللہ رب العزت کے لیے فوق و علو ہے ،گو کہ وہ جہت و مکان سے منزہ ہے لیکن انسانی تفہیم کے لیے اور کسی جہت و جگہ کی تکریم کے لیےاس نے اسے اپنی طرف منسوب بھی فرمایا ہے، انہی معنوں میں قرآن میں کہا گیا ہے:
[ءَاَمِنْتُمْ مَّنْ فِي السَّمَاۗءِ اَنْ يَّخْسِفَ بِكُمُ الْاَرْضَ فَاِذَا هِيَ تَمُوْر(سورہ ملک ۱۶)
ترجمہ: کیا تم اس سے ڈرتے نہیں جو آسمان میں ہے کہ وہ تمہیں زمین میں دھنسا دے پس یکایک وہ لرزنے لگے۔
اَمْ اَمِنْتُمْ مَّنْ فِي السَّمَاۗءِ اَنْ يُّرْسِلَ عَلَيْكُمْ حَاصِبًا ۭ فَسَتَعْلَمُوْنَ كَيْفَ نَذِيْر(سورہ ملک ۱۷)
کیا تم اس سے نڈر ہو گئے ہو جو آسمان میں ہے وہ تم پر پتھر برسا دے پھر تمہیں معلوم ہو جائے گا کہ میرا ڈرانا کیسا ہے۔(مرزا بشیر الدین نے ام امنتم من فی السما کا ترجمہ آسمان میں رہنے والی ہستی سے کیا ہے۔تفسیر صغیر ص ۷۶۰)
اسیا ہی آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نزول وحی کے انتظار میں باربار آسمان کی طرف دیکھا کرتےتھے۔ قَدْ نَرٰى تَ۔قَلُّبَ وَجْهِكَ فِي السَّمَاۗءِ(بقرہ ۱۴۴) ترجمہ: بے شک ہم دیکھتے ہیں بار بار اٹھنا تیرے منہ کا آسمان کی طرف۔ 
نیز یہ حدیث بھی ملاحظہ فرمایئے۔
وعن أبي الدرداء قال : سمعت رسول الله صلى الله عليه و سلم يقول : " من أشتكى منكم شيئا أو اشتكاه أخ له فليقل : ربنا الله الذي في السماء تقدس اسمك أمرك في السماء والأرض كما أن رحمتك في السماء فاجعل رحمتك في الأرض اغفر لنا حوبنا وخطايانا أنت رب الطيبين أنزل رحمة من رحمتك وشفاء من شفائك على هذا الوجع . فيبرأ " . رواه أبو داود (بحوالہ مشکوٰۃ حدیث ج۲ نمبر ۳۴)
ترجمہ: حضرت ابودرداء رضی اللہ عنہ راوی ہیں کہ میں نے رسول کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے کہ " تم میں سے جس شخص کو کوئی بیماری ہو یا اس کا کوئی بھائی بیمار ہو تو اسے چاہئے کہ یہ دعا پڑھے۔ ہمارا پروردگار اللہ ہے، ایسا اللہ جو آسمان میں ہے، تیرا نام پاک ہے، تیری حکومت آسمان و زمین (دونوں) میں ہے، جیسی تیری رحمت آسمان میں ہے ویسی ہی تو اپنی رحمت زمین پر نازل فرما، تو ہمارے چھوٹے اور بڑے گناہ بخش دے تو پاکیزہ لوگوں کا پروردگار ہے (یعنی ان کا محب اور کا رساز ہے اور تو اپنی رحمت میں سے (جو ہر چیز پر پھیلی ہوئی ہے رحمت عظیمہ) نازل فرما، اور اس بیماری سے اپنی شفا عنایت فرما " (اس دعا کے پڑھنے سے انشاء اللہ بیمار) اچھا ہو جائے گا۔ ( ابوداؤد )

نیز مزے کی بات یہ ہے کہ خود مرزا غلام احمد قادیانی نے رفعہ اللہ کے معنی آسمان کی طرف اٹھایا جانا لکھے ہیں۔
"رافعک کے معنی یہی معنی ہیں کہ جب حضرت عیسیٰ فوت ہو چکےتو ان کی روح آسمان کی طرف اٹھائی گئی (ازالہ اوہام ص ۲۶۶، خزائن ج۳ص۲۳۴)۔ نیز حضرت مسیح تو انجیل کو ناقص کی ناقص ہی چھوڑ کرآسمانوں پر جا بیٹھے۔(حاشیہ براہیں احمدیہ ص ۳۶۱، خزائن ج۱ ص ۴۳۱)۔نیز مرزا نے مزید لکھا ہے کہ"شریعت نے دو طرفوں کو مانا ہےایک خدا کی طرف اور وہ اونچی ہے جس کا مقام انتہائی عرش ہےاور دوسری طرف شیطان کی اور بہت نیچی ہےاور اس کا انتہا زمین کا پاتال۔غرض یہ کہ تینوں شریعتوں کا متفق علیہم مسئلہ ہےکہ مومن مر کر خدا کی طرف جاتا ہے اور اس کے لیے آسمان کے دروازے کھولے جاتے ہیں۔تحفہ گولڑویہ ص ۱۴)
گویا کہ حضرت عیسیٰ کی نسبت یہ اختلاف نہیں کہ کس طرف اٹھائے گئےقادیانیوں کو بھی تسلیم ہے کہ رفع آسمانوں کی طر ف ہوا یعنی جہت رفع میں کوئی اختلاف نہیں ہاں حالت رفع میں ہے جس کی وضاحت میں نے پہلے ہی کر دی ہے۔چنانچہ بل رفعہ اللہ الیہ یعنی اللہ نے حضرت عیسیٰ کو اپنی طرف اٹھا لیا کہ معنی یہی ہیں کہ اللہ نے آسمان پر اٹھا لیا جیسا کہ  تَعْرُجُ الْمَلَائِكَةُ وَالرُّوحُ إِلَيْهِ (معارج ۴)چڑہیں گے اس کی طرف فرشتے اور روح ۔ (اس کی طرف یعنی اللہ کیطرف) سے مراد یہی ہے کہ آسمان کی طرف چڑھتے ہی



ھے بلبل رنگیں رضا یا طوطی نغمہ سرا

حق یہ کھ واصف ھے تیرا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں


#30 Tayyib Qadri

Tayyib Qadri

    Ajmeri Member

  • Members

  • PipPipPip
  • 173 posts
  • Joined 05-February 07

Posted 14 September 2015 - 02:48 PM

تفوفیتنی ، توفی، وفاۃ وغیرہ یہ سب الفاظ مشتق ہیں وفا سےاور اس لفظ کے لغوی معنی ہیں پورا کرنے کے۔یہ مادہ خواہ کسی شکل و ہیئت میں ظاہر ہو،کمال و اتمام کے معنی کو ضرور لیے ہوئے ہو گا۔وَأَوْفُوا بِعَهْدِي أُوفِ بِعَهْدِكُم (تم میرا عہد پورا کرو میں تمہارا عہد پورا کروں گا۔بقرہ ۴۰)۔
وَأَوْفُوا الْكَيْلَ إِذَا كِلْتُم]ْ(اور ناپ تول کر دو تو پورا ناپو)اسراء۔۳۵۔
يُوْفُوْنَ بِالنَّذْر(پورا کرتے ہیں منت کو)دہر۔۷
وَاِنَّمَا تُوَفَّوْنَ اُجُوْرَكُمْ يَوْمَ الْقِيٰمَة (اور تم کو پورے بدلے ملیں گے قیامت کے دن)۔آل عمران ۔۱۸۵

اور لفظ توفی جو اسی مادہ وفا سے مشتق ہے اس کے حقیقی معنی و اخذ الشئی وافیا کے ہیں، یعنی کسی چیز کو پوارا پورا لے لینا۔یہی وجہ ہے کہ مجازا توفی سے مراد موت بھی لی جاتی ہے اور اس سے مراد ہوتی ہےاتمام عمر یعنی عمر کا پورا ہوجانا اور جس کا نتیجہ موت ہوتی ہے۔
مشہور عربی لغت لسان العرب میں ہے ۔توفي الميت: استيفاء مدته التي وفيت له وعدد أيامه وشھورہ و عوامہ فی الدنیا
یعنی میت کے توفی کے معنی یہ ہیں کہ اس کی مدت حیات کو پورا کرنا اور اس کی دنیوی زندگی کے دنوں اور مہینوں اور سالوں کو پورا کر دینا۔ اردو میں بھی کہا جاتا ہے کہ فلا بزرگ کا وصال یا انتقال ہو گیا اب وصال کے معنی ملنے کے ہیں اور انتقال کے معنی منتقل ہوجانے کے ہیں۔ لیکن کیا وصال اور انتقال ،موت کے علاوہ دیگر معنوں میں استعمال نہیں ہوتے ۔کیا وصال صنم اور انتقال وراثت بھی اردو میں عام نہیں ہیں؟ بالکل ایسے ہی توفی کے مجازی معنی موت کے ہیں لیکن یہ لفظ دیگر معنوں میں بھی خوب استعال ہوتا ہے ۔
خود اگر قرآن مجید پر ہی غور کر لیا جائے تو معلوم ہوگا کہ یہ لفظ دیگر معنیوں میں بھی آیا ہے۔مثلا
آیت نمبر ۱۔ اَللّٰهُ يَتَوَفَّى الْاَنْفُسَ حِيْنَ مَوْتِهَا وَالَّتِيْ لَمْ تَمُتْ فِيْ مَنَامِهَا ۚ فَيُمْسِكُ الَّتِيْ قَضٰى عَلَيْهَا الْمَوْتَ وَيُرْسِلُ الْاُخْرٰٓى اِلٰٓى اَجَلٍ مُّسَمًّى ۭ اِنَّ فِيْ ذٰلِكَ لَاٰيٰتٍ لِّ۔۔قَوْمٍ يَّتَفَكَّرُوْنَ
ترجمہ:اللہ ہی جانوں کو ان کی موت کے وقت قبض کرتا ہے اور ان جانوں کو بھی جن کی موت ان کے سونے کے وقت نہیں آئی پھر ان جانوں کو روک لیتا ہے جن پر موت کا حکم فرما چکا ہے اور باقی جانوں کو ایک میعاد معین تک بھیج دیتا ہے بیشک اس میں ان لوگوں کے لیے نشانیاں ہیں جو غور کرتے ہیں۔
کیا اس آیت شریفہ سے صاف ظاہر نہیں ہورہا کہ توفی ، موت سے الگ کوئی چیز ہے ۔جو کبھی موت کے ساتھ جمع ہوتی ہے اور کبھی نیند کے ساتھ۔اور جن لوگوں کی موت کا حکم نہیں ہوتا توفی کے بعد بھی وہ زندہ رہتے ہیں؟
آیت نمبر۲۔وَهُوَ الَّذِيْ يَتَوَفّٰىكُمْ بِالَّيْلِ
ترجمہ: اور وہ وہی ہے جو تمہیں رات کو اپنے قبضے میں لے لیتا ۔(انعام ۶۰)
غور کیجے کہ اس مقام پر بھی توفی نیند کے معنوںمیں استعمال ہورہا ہے موت کے معنوں میں نہی



ھے بلبل رنگیں رضا یا طوطی نغمہ سرا

حق یہ کھ واصف ھے تیرا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں


#31 Tayyib Qadri

Tayyib Qadri

    Ajmeri Member

  • Members

  • PipPipPip
  • 173 posts
  • Joined 05-February 07

Posted 14 September 2015 - 03:06 PM

إِذْ قَالَ اللَّهُ يَا عِيسَى ابْنَ مَرْيَمَ ءَاَنْتَ قُلْتَ لِلنَّاسِ اتَّخِذُونِي وَأُمِّيَ إِلَٰهَيْنِ مِن دُونِ اللَّهِ ۖ قَالَ سُبْحَانَكَ مَا يَكُونُ لِي أَنْ أَقُولَ مَا لَيْسَ لِي بِحَقٍّ ۚ إِن كُنتُ قُلْتُهُ فَقَدْ عَلِمْتَهُ ۚ تَعْلَمُ مَا فِي نَفْسِي وَلَا أَعْلَمُ مَا فِي نَفْسِكَ ۚ إِنَّكَ أَنتَ عَلَّامُ الْغُيُوبِ۔۱۱۶۔
مَا قُلْتُ لَهُمْ إِلَّا مَا أَمَرْتَنِي بِهِ أَنِ اعْبُدُوا اللَّهَ رَبِّي وَرَبَّكُمْ ۚ وَكُنتُ عَلَيْهِمْ شَهِيدًا مَّا دُمْتُ فِيهِمْ ۖ فَلَمَّا تَوَفَّيْتَنِي كُنتَ أَنتَ
الرَّقِيبَ عَلَيْهِمْ ۚ وَأَنتَ عَلَىٰ كُلِّ شَيْءٍ شَهِيدٌ۔۱۱۷۔
ترجمہ: اور جب کہے گا اللہ اے عیسیٰ مریم کے بیٹے تو نے کہا لوگوں کو کہ ٹھہرا لو مجھ کو اور میری ماں کو دو معبود سوا اللہ کے کہا تو پاک ہے مجھ کو لائق نہیں کہ کہوں ایسی بات جس کا مجھ کو حق نہیں اگر میں نے یہ کہا ہوگا تو تجھ کو ضرور معلوم ہوگا تو جانتا ہے جو میرے جی میں ہے اور میں نہیں جانتا جو تیرے جی میں ہے بیشک تو ہی ہے جاننے والا چھپی باتوں کا ۔میں نے کچھ نہیں کہا ان کو مگر جو تو نےحکم کیا کہ بندگی کرو اللہ کی جو رب ہے میرا اور تمہارا اور میں ان سے خبردار تھا جب تک ان میں رہار

              پوری آیت کا مفہوم تہ و بالا کرنے کی کوشش کی ہے ذار غور کیجئے اس سوال پر جو اللہ پاک بروز قیات حضرت عیسیٰ سے کریں گئے وہ سوال یہ ہے ۔]ءَاَنْتَ قُلْتَ لِلنَّاسِ اتَّخِذُونِي وَأُمِّيَ إِلَٰهَيْنِ مِن دُونِ اللَّهِ (تو نے کہا لوگوں کو کہ ٹھہرا لو مجھ کو اور میری ماں کو دو معبود سوا اللہ) یعنی پوچھا حضرت عیسیٰ سے یہ جا رہا ہے کہ تم نے کہا کہ عیسائیوں سے کہ مجھے اور میری ماں کو معبود بنا لو، یہ سوال نہیں پوچھا جا رہا کہ تم کو ان کے شرک کا علم تھا یا نہیں تھا، اور ان سے یہ بھی نہیں پوچھا جا رہا کہ تم ان کے بگاڑ سے وقف ہو کہ نہیں ہو۔تو جو بات حضرت عیسیٰ سے پوچھی ہی نہیں جارہی اسی بات کے اوپراپنی پوری عمارت کھڑی کر رہے ہیں اور، جانے یہ ہو گا، وہ کہیں گئے، شرک کا علم ہے کہ نہیں ، کیا کیا اناپ شناپ بول جارہے ہیں؟ سوال بس اتنا ہے کہ کیا تم نے عیسائیوں کو میرے سوا معبود بنانے کو کہا تو اس جواب بھی یہی ہے کہ" تو پاک ہے مجھ کو لائق نہیں کہ کہوں ایسی بات جس کا مجھ کو حق نہیں اگر میں نے یہ کہا ہوگا تو تجھ کو ضرور معلوم ہوگا تو جانتا ہے جو میرے جی میں ہے اور میں نہیں جانتا جو تیرے جی میں ہے بیشک تو ہی ہے جاننے والا چھپی باتوں کا" یعنی یہاں اس بات سے براءت ہے حضرت عیسیٰ کی کہ میں نے تو یہ حکم ان کو دیا نہیں اور معبود تو جانتا کہ میں نے ایسا نہیں کیا۔

اب بتائیے اس مکالمے میں یہ ساری باتیں کہاں سے آگئیں کہ شرک حضرت عیسی کے بعد ہوا یا پہلے ہوا وہ اس سے باخبر تھے یا نہیں تھے وغیرہ وغیرہ؟
۲۔ اور اگر یہاں توفی سے مراد موت سے ہی کی جائے کہ حضرت عیسیٰ کو بذریعہ موت اہل فلسطین سے جدائی ہوئی اور بقول ۔ اب آج دنیا پر نظر دوڑا کر دیکھ لیں کہ عیسائی قوم شرک میں کئی صدیوں سے گرفتار ہے۔ جبکہ حضرت عیسیٰ فرماتے ہیں کہ میری قوم میں شرک میری وفات کے بعد شروع ہوا۔ واضع طور پر ثابت ہوتا ہے کہ حضرت عیسیٰ وفات پاچکے ہیں۔ اور اگر وہ اب تک آسمان پر زندہ موجود ہیں تو پھر اس آیت کی رو سے ماننا پڑے گا کہ عیسائی بھی ابھی تک شرک میں گرفتار نہیں ہوئے "تو ایک اور بڑا خرابی قادیانیوں کے لیے ہو جاتی ہے کیوں کہ قادیانیوں کا صرف یہی مذہب نہیں کہ عیسائی توفی مسیح کے بعد بگڑے بلکہ ان کا یہ بھی مذہب ہے کہ حضرت عیسیٰ واقعہ صلیب کے بعد کشمیر چلے آئے اور ۱۲۰ برس تک زندہ رہے(تذکرۃ الشہادتین ص ۲۷۔ خزائن ج ۲۰ ص ۲۹)  اور اس طرح کہ مرزا صاحب یہ بھی لکھتے ہیں کہ انجیل پر ابھی تیس برس بھی نہیں گزرے تھےکہ بجائے خدا کی پرستش کےایک عاجز انسان کی پرستش نے جگہ لے لی یعنی حضرت عیسیٰ خدا بنائے گئے(چشمہ معرفت ص ۲۵۴)
اب اگر حضرت عیسیٰ کشمیر چلے گئے تھے اور ۱۲۰ برس تک زند ہی رہےا ور بقول مرزا کے انجیل کے تیس برس بعد ہی شرک پھیل گیا تب تو حضرت عیسیٰ کو اس شرک علم ہو گیا اب اگر  یہ سوال جواب اس بارے میں تھا کہ حضرت عیسیٰ کو علم شرک تھا کہ نہیں تھا تو اب تو قادیانیوں کے مطابق تو انہیںعلم شرک تھا لہذا وہ کیسے خدا کے سامنے اپنی لا علمی کا اظہار کر سکتے ہیں؟

 

ے



ھے بلبل رنگیں رضا یا طوطی نغمہ سرا

حق یہ کھ واصف ھے تیرا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں


#32 Tayyib Qadri

Tayyib Qadri

    Ajmeri Member

  • Members

  • PipPipPip
  • 173 posts
  • Joined 05-February 07

Posted 14 September 2015 - 03:40 PM

 حدیث میں بیان کردہ دو حلیوں کا جواب

 حلیوں میں تفاوت سے اگر آپ دو عیسیٰ مانتے ہیں پھر آپ کو دو موسیٰ بھی ماننے پریں گئے۔

پہلی حدیث ملاحطہ کیجے

ترجمہ :حضرت موسیٰ گندمی رنگت قد لمبا ، گھونگرالے بال والے تھے جیسے یمن قبیلہ شنوہ کے لوگ (بخاری ج ۱ ص ۴۵۹)

اور کتاب الالنبیا میں ایک اور حدیث ہے۔

ترجمہ: موسیٰ علیہ السلام دبلے سیدھے بال والے تھے جیسے شنوہ کے لوگ۔ (بخاری ج ۱ ص ۴۸۹) ایک اور حدیث میں حضرت موسیٰ گٹھیلے بدن کا کہا گیا ہے۔ 

لیکن درحقیقت ان احادیث میں کوئی اختلاف نہیں ہے یہاں لفظ جعد استعمال ہوا ہے جس کے معنی گٹھلیے جسم کہ ہیں اور یہاں یہی معنی ٹھیک ہیں نہایہ ابن الاثیر میں مجمع البحار کے حوالے سے آیا ہے کہ حدیث میں موسیٰ و عیسی کے لیے جو لفظ جعد کا آیا ہے اس کے منعی بدن کا گٹھیلا ہونا ہے نا کہ بالوں کا گھونگھرالے ہونا۔ ساتھ ہی ایک اور حدیث دیکھیے کہ حضرت عبد اللہ بن عمرو قسم کھا کر کہتے تھے کہ آنحضرت نے حضرت عیسیٰ کی صفت میں احمر( رنگ کا سرخ ہونا) کبھی نہیں فرمایا ۔(بخاری ج ۱ ص ۴۸۹)
اس کا مطلب یہی ہوا کہ حضرت عیسیٰ کا ایک رنگ تھا اور ان بال سیدھے تھے گھونگھرالے نہ تھے اس طرح اب ان حلیوں میں کوئی تضاد باقی نہیں رہتا

 



ھے بلبل رنگیں رضا یا طوطی نغمہ سرا

حق یہ کھ واصف ھے تیرا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں


#33 Tayyib Qadri

Tayyib Qadri

    Ajmeri Member

  • Members

  • PipPipPip
  • 173 posts
  • Joined 05-February 07

Posted 14 September 2015 - 06:06 PM

قد خلت سورہ آل عمران سے قادیانیوں کے استدلال کئ ناکام کوشش

 

Attached Images

  • 144223532097353.jpg
  • 7-B.jpg


ھے بلبل رنگیں رضا یا طوطی نغمہ سرا

حق یہ کھ واصف ھے تیرا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں


#34 Tayyib Qadri

Tayyib Qadri

    Ajmeri Member

  • Members

  • PipPipPip
  • 173 posts
  • Joined 05-February 07

Posted 14 September 2015 - 09:25 PM

حضور اقدس کی اس حدیث سے ہر گز یہ بات ثابت نہیں ہوتی کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی وفات ہوچکی ہے ذرا اس حدیث پر غور کیجئے
إنک لا تدري ما أحدثوا بعدک فأقول کما قال العبد الصالح وکنت عليهم شهيدا ما دمت فيهم فلما توفيتني

یہاں یہ بات صاف ہے کہ یہ ویسا ہی ایک اعتذار ہے جو کہ حضرت عیسیٰ نے رب تعالیٰ کے حضور پیش کیا تھا اور یہاں الفاظ و مفہوم میں کلیتا یکسانی نہیں پائی جاتی کیونکہ کما قال العبد الصالح میں کما پر غور کرنے کی ضرورت ہے یہ جملہ حرف ک کے ساتھ ہے جو کہ تشبیہ کے لیے آیا ہے اس میں دونوں چیزوں کی کلی مطابقت مراد نہیں ہوتی ،جیسا کہ قرآن مجید میں سورہ انبیا میں اللہ پاک نے ارشاد فرمایا ہے كَمَا بَدَاْنَآ اَوَّلَ خَلْقٍ نُّعِيْدُه  (جس طرح ہم نے پہلی بار پیدا کیا تھا دوبارہ بھی پیدا کریں گے) اب ہر انسان کی پیدائش دنیا میں تو مرد و عورت کے ملاپ کے بعد ایک خاص طریقے سے ہوتی ہے تو اگر کما کے لفظ سے کلی مطابقت مقصود ہوتی تو پھر قیامت کے دن اللہ پاک سب کو اسی طرح سے پیدا فرمائیں گے جیسا کہ دنیا میں ہر انسان کی پیدائش ہوئی تھی۔اور ایسا ہے نہیں۔
ایسا مضمون قرآن میں کئی جگہ آیا ہے۔
پھر مرزا نے بھی تشبیہ کے بارے میں لکھا ہے 
"اور یہ ظاہر ہے کہ تشبیہات میں پوری پوری تطبیق کی ضرورت نہیں ہوتی بلکہ بسا اوقات ایک ادنیٰ مماثلت کی وجہ سے بلکہ صرف ایک جزو میں مشارکت کے باعث سے ایک چیز کا نام دوسری چیز پر اطلاق کر دیتے ہیں مثلا ایک بہادر انسان کو کہ دیتے ہیں کہ یہ شیر ہے ۔"(خزائن ج ۳ ص ۱۳۸ حاشیہ)

اس طرح یہ ثابت ہو گیا کہ یہاں اقول کما قال میں حرف تشبیہ ہے جس میں کلی مطابقت ہر گز نہیں بلکہ محض ایک جزو میں موافقت کی بنا پر حرف تشبیہ ذکر کر دیا گیا ہے، وہ ہے اعتذار اور قول۔ گویا نبی پاک صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے یہاں ارشاد فرما یا ہے کہ میں بھی بسلسلہ عذر کہوں گا جیسا حضرت عیسیٰ کہیں گے،کہ عیسیٰ کی قوم میں ان کی عدم موجودگی کی صورت میں خرابیاں پیدا ہو گئیں اس طرح میری امت میں خرابیاں واقع ہو گئیں میری عدم موجودگی میں۔اب یہاں اس سے بحث نہیں کہ غیر موجودگی کس طریقہ سے واقع ہوئی، طبعی وفات سے یا رفع الیٰ السما سے ، مبحوث عنہ فساد قوم ہے نہ کہ کیفیت غیر موجودگی۔

 

Attached Images

  • 144224748516258.jpg


ھے بلبل رنگیں رضا یا طوطی نغمہ سرا

حق یہ کھ واصف ھے تیرا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں


#35 Tayyib Qadri

Tayyib Qadri

    Ajmeri Member

  • Members

  • PipPipPip
  • 173 posts
  • Joined 05-February 07

Posted 16 September 2015 - 03:51 PM

لو كان موسى وعيسى حين كا جواب

Attached Images

  • image.jpg
  • image.jpg


ھے بلبل رنگیں رضا یا طوطی نغمہ سرا

حق یہ کھ واصف ھے تیرا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں


#36 Tayyib Qadri

Tayyib Qadri

    Ajmeri Member

  • Members

  • PipPipPip
  • 173 posts
  • Joined 05-February 07

Posted 25 October 2015 - 01:46 AM

جناب خلیل احمدی صاحب
آپ کے پورے مضمون کا ایک ہی جواب ہے در حقیقت آپ خاتم النبیین ﷺ کا مفہوم درست نہیں سمجھ سکے ۔ خاتم النبیین ﷺ کا مفہوم یہ ہے کہ نبی کریم ﷺ نے آ کر اس دروازہ کو بند کر دیا ہے جس دروازہ سے داخل ہو کر کوئی شخص نبی بنتا تھا اب کوئی بھی اس دروازے سے دوبارہ داخل نہیں ہو سکتا رہی بات حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی تو ان کو نبی مکرم ﷺ سے قبل نبوت عطا ہو چکی اور وہ اس دروازہ سے داخل ہو چکے ہیں اور نبوت کے دروازہ سے جب وہ داخل ہو چکے ہیں اور زندہ ہیں انتقال نہیں فرمائے اوپر سے دروازہ بھی بند ہے اب اس سے مرزا غلام قادیانی یا دیگر مدعیان نبوت داخل نہیں ہو سکتے اور قرب قیامت میں وہی زندہ عیسی ابن مریم علیہ السلام جن کو آسمان پر زندہ اٹھا لیا گیا تو اپنی سابقہ عطا کردہ نبوت کے ساتھ زمین پر نازل ہوں گے ،اور چالیس سال یا اس اس سے کچھ زیادہ عمر مبارک زمین پر گزاریں گے آخر میں طبعی موت سے انتقال فرمائیں گے ۔ اب کوئی بے وقوف ہی ہو گا کہ جو یہ کہے عیسی ابن مریم جب آئیں گے تو ان کو نبوت عطا ہو گی اور پھر خاتم النبیین کا مفہوم ختم ہو گیا ؟ حالانکہ اس بے وقوف کو خاتم النبیین کا مفہوم ہی سمجھ نہیں آیا۔

فضیلت امت محمدیہ
جناب پھر سوال تو یہ بھی ہو سکتا ہے بنی اسرائیل میں تو اللہ نے
تین کتابیں نازل کیں ، صاحب شریعت نبی بھیجے اس کے علاوہ تمام نبی مستقل تھے تو امت محمدیہ کو صرف ایک کتاب اور ایک شریعت اور بقول قادیانی اگر نبوت ہے بھی تو وہ بھی صرف ظلی اور غیر مستقل ۔ بنی اسرائیل میں ایک وقت میں کئی نبی ہوتے تھے لیکن امت محمدیہ میں 1435 سالوں میں بقول قادیانی آیا بھی تو صرف ایک اور وہ بھی ظلی اور غیر مستقل بغیر کتاب اور شریعت کے ۔

Edited by Tayyib Qadri, 25 October 2015 - 03:01 AM.


ھے بلبل رنگیں رضا یا طوطی نغمہ سرا

حق یہ کھ واصف ھے تیرا یہ بھی نہیں وہ بھی نہیں






Similar Topics Collapse

  Topic Forum Started By Stats Last Post Info

 

0 user(s) are reading this topic

0 members, 0 guests, 0 anonymous users