All Activity

This stream auto-updates   

  1. Past hour
  2. قادری سلطانی صاحب عقل مند کے لیے اشارہ ہی کافی ہے ۔ ابھی نجانے آپ کے ساتھ کیا کیا ہو گا ۔ اس لیے بڑھکوں کا فائدہ نہیں ۔ سعیدی صاحب کر جواب لکھنے دیا کریں ۔ البانی والی حدیث پر اپنی جہالت یاد رکھنا کہ کس طرح میں نے آپ کی جہالت کا پردہ فاش کیا َ ----------------------
  3. قادری سلطانی صاحب میں آپ کی اس بات کو سوائے جہالت کے اور کیا کہ سکتا ہوں ، آپ جیسے دو تین جہلاء اگر مذید بریلوی مکتبہ فکر کو اس فورم پر مل جائیں تو کیا ہی بات ہے ۔ میں نے پہلے کہا تھا کہ آپ کو پوسٹیں لگانے کا بہت شوق ہے مگر اس قدر جہالت پسند ہو کہ آپ کو البانی کی کتاب کے نام تک کا نہیں بتا ، جاہل مفتی قادری سلطانی صاحب کتاب کا نام ہی " سلسلہ احادیث صحیحیہ " ہے یعنی جس میں ساری کی ساری احادیث پر صحیح کا حکم ہے ۔ اب راویوں پر ہر حدیث کے نیچے جرح و تعدیل کی جاتی ہے اور ساتھ ہی جرح و تعدیل کے بعد حکم بھی لگا دیا جاتا ہے ۔ اب جرح و تعدیل کیا ہوتی ہے قادری سلطانی صاحب اپنی جہالت کا دروازہ بند کر کے پڑھیں ۔ اس کتاب میں موجود سب احادیث پر البانی کا صحیح حدیث کا حکم ہے ۔ مگر مبغضینِ اہل بیت کو یہ بات اس لیے سمجھ نہیں آتی کہ وہ بدبخت سچ کو جھوٹ میں بدلنے کی کوشش میں ہیں ۔ اب حرامیوں اور لعنیتوں مروانیوں کو آپ صرف اس لیے ضیف ثابت کرنے پر بضد ہو کہ اگر اس حدیث کو صحیح مان لیا جائے تو سب سے پہلے کریم آقاﷺ کے پریشان کن خواب کی تعبیر ہادی و مہدی اور مجتہد معاویہ بن ابوسفیان پر جائے گی جس نے سب سے پہلے مروان لعنتی کو مدینہ کا گورنر بنا کر مسجدِ نبویﷺ میں ممبر رسولﷺ پر بٹھایا اور بندروں کو کریؐ آقاﷺ کے ممبر پر نچوایا ۔ علم جرح وتعدیل میں راویان ِحدیث کی عدالت وثقاہت اور ان کے مراتب پر بحث کی جاتی ہے جرح سے مراد روایانِ حدیث کے وہ عیوب بیان کرنا جن کی وجہ سے ان کی عدالت ساقط ہوجاتی ہے او ران کی روایت کردہ حدیث رد کر دی جاتی ہے تعدیل سے مراد روائ حدیث کے عادل ہونے کے بارے میں بتلانا اور حکم لگانا کہ وہ عادل یاضابط ہے ۔ اور آخری فیصلہ محدث یا محقق کے حکم کا ہوتا ہے جیسا کہ اس حدیث پر البانی کا حکم حدیثِ صحیحیہ کا ہے ۔ مگر جناب قادری سلطانی صاحب آپ تو اس دھن میں ہو کہ اپنا ایمان جاتا ہے یا رہتا ہے کسی طرح بھی ہادی و مہدی اور مجتہد معاویہ بن ابوسفیان کو بچایا جائے اس کے لیے چاہے جتنی بھی جہالت کا اظہار کیوں نہ کرنا پڑے ۔ اب میں البانی کی اسی حدیث پر جس کو اس نے صحیح کہا کچھ اور محدثین و محققین اور کتابیں لگا رہا ہوں ان کو پڑھو اور اپنی اموی اندھی عقیدت پر ماتم کرو اور اپنی جہالت اور کم علمی و کم عقلی پر توجہ دو ، کہ آپ کس قدر ان پڑھ اور جاہل ہو ۔ سب حوالہ جات پر حکم اور اسناد پڑھو اور شرم سے ڈوب مرو جاہل مفتی ۔ قادری سلطانی صاحب پڑھتے جائیں اور اپنی جہالت دور کرتے جائیں ۔ قادری سلطانی صاحب پڑھتے جائیں اور اپنی جہالت دور کرتے جائیں ۔ قادری سلطانی صاحب پڑھتے جائیں اور اپنی جہالت دور کرتے جائیں ۔ قادری سلطانی صاحب پڑھتے جائیں اور اپنی جہالت دور کرتے جائیں ۔ قادری سلطانی صاحب پڑھتے جائیں اور اپنی جہالت دور کرتے جائیں ۔ قادری سلطانی اور نہیں تو اپنے اس بریلوی رضوی مترجم کو ہی پڑھ لیتے ۔ ------------------------------
  4. Today
  5. جاہل کے جاہل ہی رہو گے البانی ہم پر کب سے حجت ہو بیٹھا؟؟اسنے احادیث کے معاملے میں جو ڈنڈی ماری ہے وہ کسی سے ڈھکی چھپی نہیں پھر ایک اور بات کہ سعیدی صاحب نے ایک نہیں جرح کرنے والے اور بھی علماء اسماء الرجال لکھے ہیں اب یہ آپ کا فرض بنتا ہے کہ آپ انکی تعدیل بھی علماء اسماء الرجال سے دکھائیں شاباش
  6. ویسے اسے کہتے ہیں جاہل اعظم ایسے شخص سے بحث کرنا جسے اسماء الرجال کی الف با کا نہیں پتا وہ منہ اٹھا کر بحث کر رہا ہے۔البانی خود اس حدیث پر بات کرتے ہوئے اسکے راوی کو کثیر الاوھام،سوء حفظ کا شکار لکھ رہا ہے اور یہ منہاجی نومولود محقق چوری اور سینہ زوری کرتے ہوئے بغیر کسی دلیل کے اسکی تصحیح کررہا ہے جاؤ جا کے پہلے پڑھو پھر بحث کرو۔۔تمہاری تو چھترول ہونی چاہیے کہ سوشل میڈیا پر ایسا ٹیڈی محقق گند پھیلا رہا ہے جو بالکل کورا ہے
  7. قادری سلطانی صاحب آپ کو پوسٹ لگانے کا شوق کمال ہے ۔ مگر جہالت اس کمال سے بھی چار قدم آگے ہیں ۔ او کم عقل انسان کتاب کا نام ہی پڑھ لیتے کہ البانی نے کس نام سے کتاب لکھی ہے ۔ اور نیچے آپ کو محقق کا حکم نظر نہیں آ رہا مگر آپ پھر بھی راوی پر بات کر رہے ہیں ۔ محققین و محدثین نے حدیث پر حکم کیا لگایا ہے ؟ اور آپ کیا جہلانہ باتیں کر رہے ہیں ۔ افسوس ہے آپ جیسے کم علم محققین و محدثین پر ۔ اور محدثین اور محق کا حکم چھوڑ دیں اور آپ کا حکم مان لیں ، ویسے کہاں کے آپ محقق اور محدث ہیں ؟ بغض اور جہالت نے آپ کی آنکھوں پر جہالت کی پٹی چڑھا کر رکھی ہے اس کا بندوبست فرمائیں اور حدیث حدیث صحیح ہے ۔ افسوس محبان بنو امیہ پر ----------------------------
  8. اسے کہتے ہیں چوری اور پھر سینہ زوری البانی والی کتاب کا سکین دیکھو ننھے محقق اسمیں ہی آپ کے راوی کو ضعیف لکھا ہوا،پھر یہ بھی لکھا ہوا ہے کہ وہ نہ مسلم کا راوی نہ ہی بخاری کا بلکہ کثیر الاوہام ہے سوء الحفظ کا شکار ہے،ویسے بھی حاکم پر تشیعہ کا الزام ہے اسلیے آپ کی پیش کردہ حدیث شریف خود آپ کے سکین سے ہی ضعیف ثابت ہوئی ۔۔اب چیخو چلاؤ پھر ترمذی شریف کی حدیث دیکھ لو اسمیں جو الفاظ جس پر آپ نے شوروغوغا کیا وہ راوی کے الفاظ ہیں نہ حضور سید عالم صلی الله عليه وآلہ وسلم ،اسلیے تمہارے اپنے ہی سکین سے تم پکڑے گئے اب بتاؤ جھوٹ میں بول رہا ہوں یا تم پھر نام و نسب کے حوالے سے تم لاجواب ہو کر بھاگ گئے اس روایت کا جواب تم نہ دے پاۓ فتح القدیر،روح المعانی کی عبارتوں کی سند نہ دے سکے وہاں بھی تمہارا دجل ہر شخص دیکھ سکتا ہے۔اب بتاؤ کہاں کہاں سے بھاگو گے؟؟؟
  9. عقل کے ندھے کو کچھ نظر نہیں آتا ۔ اس لیے آپ کو نظر نہیں آئے گا ۔ سب سے پہلے میں نے البانی سے اس حدیث کو صحیح ثابت کر چکا ہوں ۔ پھر مفتی وسیم اکرم القادری بریلوی نے اس البانی کی تصدیق کرتے ہوئے سب سے آخری حوالہ وہی البانی سے احادیث صحیحہ والا لکھا اور اس کی تصدیق کی پھر سید محمد امیر شاہ قادری گیلانی بریلوی نے اسناد کو خود صحیح لکھا ۔ جو لکھا اک اندھے کو بھی نظر آ جاتا ہے ۔ قادری سلطانی صاحب اس طرح تین محققین نے اس حدیث کی تصدیق کر دی اب آپ چار پیش کر کے یا کم از کم تین ہی پیش کر دیں میں اس کو ضیف مان لوں گا ۔ کیا نظر آنا بھی بند ہو گیا ہے ۔ اس کو میں آپ کی جہالت کہوں یاتعصب اور بغض اس کا فیصلہ قادری سلطانی صاحب آپ خود فرمائیں ۔ ---------------------------
  10. قادری سلطانی جھوٹ بولتے ہیں آپ میں نے جو احادیث پیش کیں وہ بنو امیہ کے بارے میں تھیں ۔ اور ان میں سے جو اسناد کے ساتھ پیش کیں ان پر محدثین اور محققین کا حکم لکھا ہے اگر جناب آپ اس کو نہیں مانتے تو کسی بھی محدث اور محقق کی کتاب آپ پیش کر کے اس کو ثابت کر دو کہ اس ایک نے حکم صحیح کا لکھا اور ان دو نے اس کو ضیف اور شاذ لکھا ۔ ہمت کرو اور ثابت کرو مگر یہ آپ کا لکھا ہوا تو میں کیا کوئی بھی یقین نہیں کرتا جب تک کتاب پیش نی کی جائے ۔ جوغلط بیانی آپ کر رہے ہیں کہ میری اسناد والی روایات کو آپ جناب نے ضیف ثابت کیا ہے تو یہ آپ کی غلط بیانی اور صریحاً جھوٹ ہے جو بار بار آپ بول رہے ہیں ۔ کوئی اک اسناد والی میری پیش کردہ روایت ضیف نہیں ہے ۔ سچے ہو تو ثابت کریں ۔ اور وہ روایت یہاں پیش کر کے اس کو ضیف ثابت کرو ۔ ---------------------------- ------------------------
  11. اسے کہتے ہیں کم علمی کی انتہا جو مصنفین ہیں وہ تو روایت کو لکھ دیتے ہیں یہ علماء اسماء الرجال کا کام ہے کہ سند کی جانچ پڑتال کریں۔ یار کیوں ایسی باتیں کرتےبہوبمجھے توتمہاریبحالت پر ترس آتا ہے
  12. ہم تو منتظر ہیں کہ تم کچھ ایسا پیش کرو جو سچ ہو ہر بار ضعیف شاذ قول پیش کر کے بھاگ جاتے ہو جب تمہاری پکڑ کی جاتی ہے تو کہتے ہو کونسی حدیث کونسی سند پھر اندھے بن بیٹھتےہو
  13. قادری سلطانی صاحب آپ لوگ جھوٹ بولتے ہیں ، کتابوں کی مکمل عبارات سادہ اہل سنت سے چھپاتے اور چوری کر کے اپنے مطلب کی بات عوام کے سامنے پیش کرتے ہو ۔ اسی لیے اھل سنت اب بریلویت سے بھاگ رہے ہیں ۔ اللہ کی قسم میں نے بھی انہیں باتوں کی وجہ سے اس بریلویت سے توبہ کی جو اپنے ہی اھل سنت سے سچی بات چھپاتے ہیں ۔ اب خوب غور کر لو اس سے پہلے میں آپ کی چوری ان سادہ لوگوں کے سامنے لے آوں شرح عقیدہ طحاویہ کی مکمل عبارت اور حوالہ پیش کر دو ۔ جب میں سچ سامنے لاوں گا تو آپ کہیں کہ نہیں رہیں گے ۔ تب تک کریم آقاﷺ کا یہ فرمان بار بار پڑھ لو ۔ قادری سلطانی صاحب حوالہ پیش کر کے اس آگ کی لگام سے بچ جاؤ ۔ ------------------------------------------
  14. جناب سعیدی صاحب آپ کے اعتراض کو بریلوی مفتی نے دیوار پر دے مارا ہے اور اس کو حدیث صحیح قرار دیا ہے ۔ اللہ سے ڈریں حضرت ام المومنین ام سلمہ رضی اللہ عنہ کی روایت کا حیاء کریں ۔ آپ کا اعتراض حافظ ابن حجر عسقلانی نے یہ لکھ کر رد کر دیا ہے کہ ابو عبداللہ الجعدلی پر یہ الزام ہے ۔ اور جناب آپ اپنا یہ جملہ " (کان شدید التشیع) " حافظ ابن حجر عسقلانی کا قول ثابت کرنے پر بڑی بُری طرح جھوٹے اور کذاب ثابت ہو چکے ہیں ۔ کتاب پیش نہ کرنے کی یہی اک وجہ تھی کہ میرے بار بار اصرار کے باوجود آپ لوگ کتابیں پیش نہیں کرتے اور سادہ لوح مسلمانوں کے سامنے کتابیں نہیں رکھتے ۔ اور ان کو گمراہ کرتے ہو ۔ بریلویت کی تباہی کا سبب آپ حضرات کی یہی باتیں بن رہا ہے اور ہر اھل سنت اس سے متنفر ہو رہا ہے ۔ جناب سعیدی صاحب آپ کے ان اعتراضات کی اس وقت تک اک رتی بھی اہمیت نہیں ہے جب تک کہ آپ اس کو ثابت نہ کر دیں ۔ اور عقیدے باتوں سے ثابت نہیں ہوتے جب تک آپ جمہور اہل سنت کی کتابیں پیش نہ کریں ۔ لہذا اس حدیث کو ضیف یا غلط ثابت کرنے کے لی محقین ، محدثین اور علماء اکرام کی کتابیں دیکھانا ہو گی جس پر محققین و محدثین نے حکم لگایا ہو گا ۔ کہ ابو عبداللہ الجدلی غالی شیعہ تھا اور اس کی یہ روایت نہیں لی جائے گی ۔ اور اس طرح یہ جمہور کی بات ہو گی جس طرف جمہور ہوں گے عقیدے وہ ثابت ہوں گے ۔ محض اک دو بندوں کے لکھنے یا تصدیق سے بھی عقیدہ ثابت نہیں ہوتا جب تک کہ جمہور علماء اس کی تصدیق نہ کر دیں ۔ اور کتابیں کیسے پیش کی جاتی ہیں ایسے جیسے آپ یہ کتابیں بریلوی علماء اور محدثین و محققین اور علماء کی دیکھ رہے ہیں ۔ یہ کیا میں سو سو بار اک بات کو لکھتا ہوں اور آپ حضرات میں ہمت نہیں ہوتی کہ لوگوں کو کتاب دیکھا سکیں اس پر سو سو حلیے اور بہانے کیے جاتے ہیں افسوس ہے اس حیلہ سازی پر ۔ کتابیں پڑھیں اور اس روایت کو صحیح مانیں ورنہ آپ کتابیں پیش کریں اور حکم دیکھائیں کہ ابو عبداللہ الجدلی کی یہ روایت قابل قبول اور قابل حجت نہیں ہے ۔ اور یہاں یہ کتاب اس کے غالی شیعہ ہونے کی تصدیق کر رہی ہے ۔ کتاب نمبر:1 کتاب نمبر:2 کتاب نمبر:3 کتاب نمبر:4 کتاب نمبر:5 پنج تن پاک کے نام پر پانچ کتابوں کے حوالہ جات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
  15. Yesterday
  16. جناب سعیدی صاحب آپ پھر بارباروہی بات دھرا رہے ہیں ، آپ کا یہ لکھنا کہ " علی کے پاس جاؤ اور اسے کہو کہ عثمان کے قاتلوں کو ھمارے سپرد کرے۔" آپ کتنے سادہ بنے ہوئے ہیں اور میری پانچ کتابوں کے حوالہ جات ہضم کر گئے صرف یہ لکھ کر کہ بغیر سند کے لکھی ہیں ۔ تو جناب آپ سند سے ثابت فرما دیں کہ معاویہ علیؓ کو قاتل نہیں سمجھتا تھا ، نہیں سمجھتا تو یہ قاتلین کو پناہ دینے اور حوالے کرنے کا مطالبہ کیوں ؟ جب کہ وہ خود قصاص عثمان کو بہانہ بنا کر خلیفہِ راشد کی بیعت کا انکار کر چکا تھا ۔ سند سے ثابت فرما دیں کہ وہ حضرت علیؓ کو قاتل نہیں سمجھتا تھا ۔ اور دوٹوک الفاظ میں لکھیں کہ کیا معاویہ کا حضرت علیؓ سے قصاص کا مطالبہ درست تھا یا غلط تھا ؟ -------------- ----------------------
  17. جناب قاسم علی صاحب 1۔ جب حضرت معاویہ رضی اللہ عنہ نے مولا علی کرم اللہ وجہہ الکریم کے متعلق فرمایا کہ (فاتوا علیا فقولوا لہ یدفع لنا قتلۃ عثمان) علی کے پاس جاؤ اور اسے کہو کہ عثمان کے قاتلوں کو ھمارے سپرد کرے۔ فتح الباری میں ابن حجر عسقلانی نے اسے بسند جید لکھا ھے۔ اس کے مقابلے میں آپ کے حوالوں میں سند جید تو کیا ملنا تھا، سرے سے سند ھی نہیں ملتی۔ اس حوالے سے صاف پتہ چلتا ہے کہ معاویہ رضی اللہ عنہ کے نزدیک قاتلین عثمان اور ہیں ،اور علی اور ھے۔ 2۔ حجر بن عدی کے دعوی اور عمل میں فرق موجود ہے جو اُن کے دعویٰ پر سوالیہ نشان ھے۔ 3۔ بغاوت کی چوتھی قسم لکھا تھا، آپ نہ پڑھیں تو میں کیا کروں؟ 4۔ ایک روایت کے مجہول راوی کی جہالت تو دور کر نہ سکے، اُلٹا اور بے سند روایات پیش کر دیں ۔ چلو شاباش! اب مصنفین سے لے کر معاویہ تک ھر ایک روایت کی سند تلاش کرو اور پیش کرو۔ ایک بات ایک اخبار کی بجائے دس اخباروں میں چھپ جائے مگر اس خبر پر کسی کو سزا نہیں ہو سکتی، اس کے لئے (اسناد صحیحہ والی )گواھیاں درکار ھوتی ھیں ۔
  18. سوہنیا کیہڑی کتاب؟؟اوپر دو سکینز نظر نہیں آرہے کیا؟؟؟یا اندھے ہو چکے ہو؟؟؟شرح عقیدہ طحاویہ کا سکین ہے اسکے علاوہ رافضی کی تعریف کا سکین بھی ہے۔۔۔کسی آئی سپیشلسٹ کو مل لو اگر نظر نہیں آرہے
  19. کتاب لگاؤ قادری سلطانی صاحب او یار اپنی ماری ہوئی بڑھک تو پوری کر ہی دو ۔ اب پچھلے 7 گھنٹے سے کتاب لینے گے تھے یہ کیا آتھا لائے ۔ شاباش کتاب لاو ۔ مرد بنو ، اور ہمت کرو ۔ ----------------
  20. سعیدی صاحب آخر ماجرا کیا ہے آپ لوگ ہمہشہ بات کو کئی معنی پہنا دیتے ہیں َ میں نے آپ سے صرف دو لفظوں میں پوچھا ہے کہ سوال: جناب سعیدی صاحب امیر معاویہ کی چلیں میں بات کو مذید آسان کرتا ہوں یہ خلافت امام حسن سے پہلے شروع ہوئی یا بعد میں شروع ہوئی ؟ چلیں اب صرف پہلے یا بعد میں لکھ دیں ۔ خلافت راشدہ عادلہ عامہ کب شروع ہوئی ؟؟؟ جب بھی شروع ہوئی وہ لکھ دیں ۔ -----------------------------
  21. میں نے حوالہ جات دئیے ہیں تم غلط ثابت کردو چلو شاباش
  22. قادری سلطانی صاحب مکمل کتاب کا ٹائٹل پیج اور حوالہ کا پیج لگائیں یہ کیا جاہلانہ کام کر رہے ہیں ۔ آپ نعرہ لگا کر گئے تھے کہ میں کتاب کا حوالہ لگا رہا ہے ۔ یہ حوالہ ہے ۔ یار اصل کتاب دیکھاؤ لوگوں کو یہ رنگ بازی نہ کرو ۔ شاباش چلیں کتاب پیش کریں ۔
  23. جناب محرم سعیدی صاحب آپ کے پاس جواب نہیں تو نہ لکھیں لیکن بات اصول کی کریں ۔ آپ کا اعتراض تھا کہ حضرت علی قاتلینِ عثمان میں شامل نہیں میں نے ثابت کیا کہ انہیں قتل لکھا گیا ثبوت موجود ہیں َ اس کا جواب کہاں ہے ؟ میں نے حدیث صحیح سے ثابت کیا کہ حضرت حجر بن عدی امیر معاویہ کی بیعت پر تھے ؟ آپ نے بیعت کا انکار کہاں ثابت کیا ، دیکھا دیں َ پھر آپ نے فرمایا کہ حجر بن عدی نے بغاوت کی ؟ میں نے تعریف آپ کے سامنے دو دو بار رکھی اور کہا کہ جس قسم میں شامل ہیں وہ لکھ دیں ۔ جناب سعیدی صاحب آپ نے حجر بن عدی کو کس قسم کی بغاوت میں شامل کیا دیکھا دیں ۔ پھر آپ نے لکھا کہ لعنت والی راوی مجہول ہے ۔ مجہول تھا یا نہیں مگر میں نے نئی پانچ روایات آپ کے سامنے رکھی ہیں ۔ اوپر موجود ہیں ۔ آپ نے ان کے بارے اک لفظ نہیں لکھا ۔ آپ نے کیا وہ پانچوں روایات ردی کی ٹوکری میں پھینک دی ہیں ؟ کسی ایک بات کا آپ نے جواب نہیں لکھا ۔ جناب سعیدی صاحب اگر ترتیب سے جواب لکھیں گے تو ہی بات مذید آگے بڑھ سکتی ہے ۔ -------------------------------------
  24. پھر جناب کہتے ہیں کونسی سند ارے بھولے بادشاہ لگتا ہے تم بغیر پوسٹس دیکھے ہی کاپی پیسٹ کر دیتے ہو جناب نے کل رات کو البانی کی کتاب سے سند بھیجی جس پر ہم نے کلام کیا اور آپ سے سکین سے ہی ثابت کیا کہ یہ حدیث ضعیف ہے لیکن کیا کریں جناب کو شاید نظر میں خرابی ہے جو نظر نہیں آتا پھر ترمذی شریف میں راوی کے الفاظ کو حدیث کہہ دیا کیا ہی علم ہے جناب کا جس پر ہم داد دئیے بغیر تو نہ رہ سکے پھر ایک اور سکین دیا اسمیں بھی یہی کام کیا تھا لیکن یہ باتیں آپ سوشل میڈیا پر میک اپ کر کے تو لوگوں کی آنکھوں میں دھول جھونک سکتے ہیں مگر یہاں نہیں وہاں بھی سننے میں آیا ہے کہ جناب کو اگر کوئی جواب دے تو اسے بلاک کردیتے ہیں
  25. حضور سیدنا غوث الاعظم شاہ جیلانی دستگیر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں حضرت علی رضی اللہ عنہ و کرم اللہ وجہہ الکریم کے وصال اور حضرت سیدنا امام حسن رضی اللہ عنہ کے خلافت سے دستبردار ہونے کے بعد حضرت امیر معاویہ بن ابوسفیان رضی اللہ عنہما کے لیے خلافت صحیحہ ثابت ہے ۔حضرت امام حسن رضی اللہ عنہ نے مصلحت عامہ کے تحت کہ مسلمانوں کو خون ریزی سے بچایا جا سکے خلافت حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے سپرد فرمائی ۔علاوہ ازیں حضور نبی کریم صلی الله عليه وآلہ وسلم کا فرمان بھی آپ کے پیش نظر تھا۔آپ صلی الله عليه وآلہ وسلم نے امام حسن رضی اللہ عنہ کے بارے میں ارشاد فرمایا میرا یہ بیٹا سردار ہے اللہ اسکے ذریعے مسلمانوں کے دو بڑے گروہوں کے درمیان صلح کرادے گا۔لہٰذا حضرت امام حسن کےعقد کی بنا پر حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کی امارت واجب ہو گئی ۔۔۔ غنیۃ الطالبین اردو صفحہ ۲۶۶ اور ۲۶۷ الصواعق المحرقہ میں ہے اور جن لوگوں نے حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کو بادشاہ کہا ہے وہ انہیں ان اجتہادات کی بنا پر کہتے ہیں جنکا ہم نے ذکر کیا ہے جو انکی ولایت کو خلافت سے موسوم کرتے ہیں وہ حضرت امام حسن رضی اللہ عنہ کی دستبرداری اور ارباب حل و عقد کے اتفاق کی وجہ سے انہیں خلیفہ بر حق اور ایسا مطاع کہتے ہیں جسکی اطاعت کی جانی چاہیے جیسا کہ انسے پہلے خلفاءراشدین کی کی جاتی تھی صفحہ ۷۲۵ ،۷۲۷ مفسر قرآن علامہ نبی بخش حلوائی لکھتے ہیں حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کی خلافت کو ہم امارت اسلامیہ قرار دیتے ہیں اور یہ خلافت راشدہ سے متصل ایک امارت ہے النارالحامیہ لمن ذم المعاویہ ص ۱۰۲ کیوں جناب اب بات سمجھ آئی یا پہلے کی طرح پھر ہماری پوسٹس کو پڑھے بغیر بھاگ جاؤ گے اور کہو گے کہ کونسی سند اور کونسا جواب لو جناب رافضی کی تعریف بھی پڑھ لو اور اپنے اوپر غور کر کے دیکھ لو یہ علامت تم میں بدرجہ اتم پائی جاتی ہے
  26. آپ میرا جواب دوبارہ پڑھیں اور غور سے پڑھیں،ان سب باتوں پر کلام ہوچکا ہے۔
  27. لو جناب سکین لو اور سعیدی صاحب کا تازہ جواب بھی پڑھو مزید اس پر لکھتا ہوں ہماری بات میں کوئی فرق نہیں صرف تمہاری نا فہمی کا قصور ہے
  28. جناب والا خلفائے راشدین کے بعد امام حسن کا نام اور پھر امیرمعاویہ کا نام لکھا نظر آ رہا ہوگا۔اسی میں آپ کو اپنے سوال کا جواب مل سکتا تھا۔یہ بات الصواعق المحرقہ،تاریخ الخلفاء،فیض القدیرمناوی میں دیکھیں۔خلافت راشدہ خاصہ میں قطبیتِ کبریٰ بھی شامل تھی۔ اب وہ الگ ہوگئی اور خلافتِ راشدہ عامہ رہ گئی جسے خلافتِ حقہ یا عادلہ یا مملکتِ عادلہ بھی کہا جاتا ہے۔ جناب والا خلفائے راشدین کے بعد امام حسن کا نام اور پھر امیرمعاویہ کا نام لکھا نظر آ رہا ہوگا۔اسی میں آپ کو اپنے سوال کا جواب مل سکتا تھا۔یہ بات الصواعق المحرقہ،تاریخ الخلفاء،فیض القدیرمناوی میں دیکھیں۔خلافت راشدہ خاصہ میں قطبیتِ کبریٰ بھی شامل تھی۔ اب وہ الگ ہوگئی اور خلافتِ راشدہ عامہ رہ گئی جسے خلافتِ حقہ یا عادلہ یا مملکتِ عادلہ بھی کہا جاتا ہے۔
  1. Load more activity