Dr.Ammara

Translating Team (F)
  • Content count

    21
  • Joined

  • Last visited

Community Reputation

0 Neutral

About Dr.Ammara

  • Rank
    Member
  • Birthday 11/17/1989

Contact Methods

  • Website URL
    http://www.englishislam.tk

Profile Information

  • Gender
    Male
  • Interests
    searching and serving the Religion ... my Passion

Previous Fields

  • Madhab
  • Sheikh
    TaajushShariah
  1. http://www.islamimehfil.com/topic/13076-a-platform-to-gather-all-the-potential-translators-on-facebook/
  2. MashALLAH ncie to see more volunteers!! please all the brothers ans sisters invite your friends and fellows to work on. as we need english Islamic lietarure badly. as unfotunately the english literaure available is from those crap wobbbies.and most of our revrted muslims get distracted! may ALLAH Azzawajal accept this try of us all! and help us work sincerely and eagerly. Aameeeeen
  3. The ignorant among us complain to people about Allah, and this is the highest degree of ignorance. If one knew his Lord, he would never complain about Him; and if knew the (reality of) people, he would not complain to them. One of the predecessors saw a man complaining to another man about his poverty and dire necessity, so he said to him, “O you! By Allah, you have done nothing but complain about He who has mercy for you, to someone who has no mercy for you.” A poet said: When you complain to a son of Adam, verily you complain about the Most Merciful, to the one who does not have any pity. On the contrary, a person who is profoundly knowledgeable about Allah complains to Allah alone, and never to the people. He complains about the causes because he knows the verses: “And whatever of misfortune befalls you it is because of what your hands have earned. And He pardons much.” (Qur’an, 42:30) “Whatever of good reaches you, is from Allah but whatever of evil befalls you, is from yourself.” (Qur’an, 4:79) “(What is the matter with you?) When a single disaster smites you, although you smote (your enemies) with one twice as great, you say: ‘From where does this come to us?’ Say (to them), ‘It is from yourselves (because of your evil deeds).’ And Allah has power over all things.” (Qur’an, 3:165) The lowest of people complain about Allah to His creatures, while the highest of people complain about their own-selves to Allah
  4. The Hadith of intention is usually the first in most books of Hadith. Ibn Daqiq Al-Id expounds on it in his explanation of Imam Nawawi’s 40 Hadith. Umar Bin Al-Khattab (may Allah be pleased with him) said: I heard the Messenger of Allah (peace be upon him) say: “Actions are but by intention and every man shall have but that which he intended. Thus he whose migration was for Allah and His messenger, his migration was for Allah and His messenger, and he whose migration was to achieve some worldly benefit or to take some woman in marriage, his migration was for that for which he migrated.” (Al-Bukhari and Muslim) This Hadith is great in its benefit and importance. It has been said that Islam revolves around it. Some scholars said it is one-third of knowledge because actions involve the heart, tongue and limbs. So the intention of the heart is one-third of that. Other scholars said Islam is encompassed in three Ahadith: This one, the Hadith “The Halaal is clear, the Haraam is clear and between them are doubtful matters...,” and the Hadith “Whoever innovates in this religion that which is not from it will have his actions rejected (by Allah).” The word “by” (in the sentence “actions are but by intention”) means that the acceptance and correctness of any action depends upon the intention behind it. An action which is apparently good, such as giving money in charity, will be rejected if the intention behind it is wrong. Giving charity to show off is one such example. The Prophet (peace be upon him) narrated from Allah that if a person performs an act for Allah’s sake and also for the sake of someone else, then Allah will reject the deed entirely and leave the whole of that deed for the partner the person made (with Allah). This shows us how grave the sin of Shirk is – it is the only sin that Allah will never forgive. In the Hadith, the words “shall have” means that the person will be rewarded only for what he intended. If a person did the Hijrah with a wrong intention, then he would not be rewarded with Hijrah (for Allah’s sake). The word “actions” refers to those actions which are part of the Shariah of Islam. Thus, any action of the Shariah – such as Wudhu, Ghusl, Tayammum, Salah, Zakat, fasting, Haj, I’tikaf, or any other act of worship – will not be accepted and rewarded unless it is performed with the correct intention.
  5. Isti’adhah is to say: A’ooudhu billahi min-ash-shaitaan-ir-rajeem. It means, “I seek refuge with Allah from the cursed Satan.” Allah’s refuge is sought from Shaitan to prevent him from affecting our religious or worldly affairs, or hindering us from adhering to what we are commanded, or luring us into what we are prohibited from. Only Allah is able to prevent the evil of Satan from touching the son of Adam. Allah allowed us to be lenient and kind with human devils (sinners and wrongdoers among human beings) because soft nature may refrain such sinners from the evil they are indulging in. However, Allah required us to seek refuge from the evil of Satan because Satan neither accepts bribes nor does kindness affect him, for he is pure evil. Thus, only He Who created Satan is able to stop his evil. This meaning is reiterated in only three verses in the Qur’an. Allah said in Surat Al-A`raf: “Show forgiveness, enjoin what is good, and turn away from the foolish (i.e. don’t punish them).” (Qur’an, 7:199) This verse is about dealing with human beings. Allah then said in the next verse: “And if an evil whisper comes to you from Shaytan, then seek refuge with Allah. Verily, He is All-Hearer, All-Knower.” (Qur’an, 7: 200) Allah also said: “The good deed and the evil deed cannot be equal. Repel (the evil) with one which is better, then verily he, between whom and you there was enmity, (will become) as though he was a close friend. But none is granted it (the above quality) except those who are patient – and none is granted it except the owner of the great portion (of happiness in the Hereafter, i.e. Paradise and of a high moral character) in this world. And if an evil whisper from Shaytan tries to turn you away (from doing good), then seek refuge in Allah. Verily, He is the All-Hearer, the All-Knower.” (Qur’an, 41:34-36) – Ibn Kathir’s Tafsir of Surah Fatihah
  6. No matter how much we write about the Companions of the Prophet (peace be upon him), we cannot fairly describe their merits, virtues and excellence. The best of generations to ever live in this world, they were chosen by Allah to accompany His Last Messenger. They sacrificed their wealth, families and lives defending and propagating the truth. Embracing Islam and then being groomed by the Prophet (peace be upon him) transformed a community that came from the ruthless deserts into a fine people with exceptional character and behavior. The men who would bury their daughters alive turned into fathers who rejoiced at the birth of daughters and who took extra care in bringing them up. The Ahadith that throw light on their lifestyles and virtues are plenty. One such aspect was their unconditional obedience to Allah and His Messenger. Faith was deeply ingrained in their hearts. They knew the Messenger did not instruct them except based on Allah’s revelation. When Urwa Bin Mas’ud came to negotiate with the Prophet (peace be upon him) during the incident that’s popularly known as the Treaty of Hudaibiyah, he witnessed firsthand the attitude of the Companions towards Muhammad (peace be upon him). He went back to the Quraish and gave that powerful description: “O people! By Allah, I have been to the kings and to Caesar, Khosrau (Persian emperor) and An-Najashi, yet I have never seen any of them respected by his courtiers as much as Muhammad is respected by his companions. By Allah, if he spat, the spittle would fall in the hand of one of them (i.e. the Prophet’s companions) who would rub it on his face and skin; if he ordered them, they would carry out his order immediately; if he performed ablution, they would struggle to take the remaining water; and when they spoke, they would lower their voices and would not look at his face constantly out of respect.” (Al-Bukhari, 3/50, no. 891) The Prophet (peace be upon him) did not establish a relationship of a master and disciples. The term Sahabah is not used without meaning. The Sahabah literally lived as the companions of Muhammad (peace be upon him). When a stranger would come to Madina, he would not recognize who the Prophet was if he was sitting in a group, because there were no special seats for him, no elevated chairs that would distinguish him from others, and to be sure no special clothes indicating that he was in fact the ruler of Madina. Despite this humility, the status of the Prophet (peace be upon him) did not diminish. The Companions gave the Prophet his due right and respect. As preceded, the kings of Romans and Persians were not obeyed and followed as the Prophet (peace be upon him) was. For instance, when the law on prohibition of alcohol came down, there was no need of enforcement agencies or security personnel. One man went into the streets announcing the prohibition. The Companions who were drinking alcohol at that time, spit it out from their mouths; Anas (may Allah be pleased with him) who was serving alcohol threw the wine and broke the tumblers; and the streets of Madina overflowed with alcohol because everyone, including the businessmen who traded in alcohol, spilled out their reserves onto the streets. (See Ahmad, 1:53; Ibn Kathir, vol. 3, pg. 258-259) Or consider the legislation of Hijab. Ayesha (may Allah be pleased with her) says that when the verses of Hijab came down the women tore their cloth and covered themselves. (See Al-Bukhari) They would come and go to the masjid unrecognized. Ibn Umar (may Allah be pleased with him) heard the Prophet (peace be upon him) say about assigning a special door for women in the mosque. “It is better if we leave this door for women.” This is all the Prophet said and Ibn Umar never entered through that door till he died. Once the Prophet (peace be upon him) saw men and women together on the road upon their departure from the mosque. He said to the women: “Hold back a bit. You do not have to walk in the middle of the road. You may keep to the sides.” The narrator of the Hadith commented that women after that would come so close to the buildings that their dresses would sometimes cling to the walls.” (Abu Dawood) The narrations are too many to mention. But the vital question is: Why is our attitude so different from that of the Companions? ○ Their faith was deep-rooted. Allah says, “But no, by your Lord, they can have no Faith, until they make you (O Muhammad, peace be upon him) judge in all disputes between them, and find in themselves no resistance against your decisions, and accept (them) with full submission.” (Qur’an, 4:65) ○ They implemented the Qur’an. Allah praises the Sahabah’s eagerness to obey Allah in the Qur’an: “…they say, ‘We hear, and we obey. (We seek) Your forgiveness, our Lord, and to You is the return (of all).’ ” (Qur’an, 2:285) ○ They knew obeying the Prophet would earn them Allah’s love. Say (O Muhammad, peace be upon him, to mankind): “If you (really) love Allah, then follow me, Allah will love you and forgive you your sins. And Allah is Oft-Forgiving, Most Merciful.” (Qur’an, 3:31) May Allah guide us to the Iman of the Companions.
  7. The righteous people of the past would rejoice with the approach of winter. Ibn Rajab Al-Hanbali mentions its virtues in his book Lata’if Al-Ma’arif (pg. 276) Winter is the best season for the believer because Allah strengthens his practice by making worship easy for him. The believer can easily fast during the day without suffering from hunger and thirst. The days are short and cold, and he doesn’t feel the hardship of fasting. As for praying at night, due to winter’s long nights, one can have his share of sleep and then wake up to pray. He can recite the Qur’an that he usually does in a day while having enough time to sleep. So, it becomes possible to fulfill the interests of both – his religion and the comfort of his body. Abdullah Bin Mas’ud said: “Welcome to winter! Blessings descend in it. Its nights are long to pray, and its days are short to fast.” When it was winter, Ubayd Bin Umayr would say: “O people of the Qur’an! Your nights are now long for you to recite. So, recite! Your days are now short for you to fast. So, fast! Night prayer in the winter equals fasting during the day in the summer.” This is why Mu’adh wept on his deathbed. He said: “I weep because I will miss the thirst I felt when I fasted, praying at night during the winter, and sitting knee to knee with the scholars during the gatherings of knowledge.”
  8. Khawlah Bint Hakim narrated that Allah’s Messenger (peace be upon him) said: “Whoever arrives somewhere and says: ‘I seek refuge with Allah’s complete Words from the evil He has Created (A’oodhu bi-Kalimaathillaahi- Ath-Thaammaathi min-Sharri maa Khalaq),’ nothing will harm until he leaves that place.” (Sahih Muslim, no. 2708) In Taysir Al-Aziz Al-Hamid (p. 146), Sulayman Bin Abdullah relates that Al-Qurtubi commented on this by saying: “And this is true and real, and I believe in it due to the textual proof as well as my own experience. Since I heard this narration, I would constantly act upon it and nothing was able to harm me until I left it. One night, I was stung by a scorpion in Al-Mahdiyyah (a province in Tunisia). So, I thought to myself until I realized that I had forgotten to seek refuge using these words.” In Al-Qawl Al-Mufid (1/155), Al-Uthaymeen commented on this Hadith: “This protection is from all human and jinn devils – whether they are visible or invisible – until the person leaves that place. And there is no way that what is described in this narration will not take place, as these are the words of the truthful one who is believed (i.e. the Messenger of Allah)! However, if what is mentioned in this narration does not take place, it is because of a preventative factor and not because of a deficiency in the method itself or the narration. This also applies to anything that the Prophet (peace be upon him) mentioned as a Shar’ee method in which the desired outcome is not achieved. So, this is not because of a fault in the method, and is rather because of the presence of an obstacle that is blocking the desired outcome. For example, reciting ‘Al-Fatihah’ for a sick person is a form of healing. Some people recite it and find that the sick person is not healed. This is not because of a deficiency in this method, and is instead because there is something present that is preventing this method from bringing about its desired effect. Another example is mentioning Allah before having sexual intercourse in order to prevent Satan from harming the future child. Some people will mention Allah and find that Satan still ends up harming the child due to something that is preventing this effect from being achieved. So, you should check yourself to figure out what the obstacle is so that you can remove it and experience the effect of the method.”
  9. waAlaikumusSalam really it helped me..was searching for them since long!! may ALLAH Azzawajal bless you for this!
  10. اللہ تبارک وتعالیٰ اپنے محبوب ومقرب بندوں کو خصوصی انعامات سے نوازتا ہے 'انھیں اپنا قرب خاص عطا فرماتا ہے اور نمایا ںمقام پر فائز فرماتا ہے ۔وہ اپنے محبوب بندوں کی دعائیں بھی قبول کر تا ہے اور انھیں آزمائش میں بھی ڈالتا ہے اور ان کی قوت ایمانی کا امتحان بھی لیتاہے اور انھیں ارفع واعلیٰ مقامات پر فائز بھی کرتا ہے ۔انبیا ئے کرام کو اللہ تعالیٰ نے جس طرح کائنات میںسب سے بلند مراتب پر فائز فرمایا ہے اور اپنے قرب ووصال کی نعمتوں سے نوازا اسی طرح انھیں بڑی کٹھن منزلوں سے بھی گزرنا پڑا۔انھیں بڑی بڑی قربانیوں کا حکم ہو الیکن ان کے مقام بندگی کا یہ اعجاز تھا کہ سر مو حکم ربّی سے انحراف یا تساہل نہیں برتا 'ان کی اطاعت، خشیت اور محبت کا یہی معیار تھا کہ انھوں نے اپنی پوری زندگی اور اس میں موجود جملہ نعمتوں کو اپنے مولا کی رضا کے لئے وقف کئے رکھا حتیٰ کہ اولاد جیسے عزیز ترین متاع کے قربانی کا حکم بھی ملا تو ثابت کردیا کہ یہ بھی اس کی راہ پر قربان کی جاسکتی ہے ۔جملہ انبیا ء کرام اپنی شان بندگی میں یکتا اور بے مثال تھے لیکن سلسلہ انبیا ء میں سید نا ابراہیم علیہ السلام کی داستان عزیمت بہت دلچسپ اور قابل رشک ہے ۔ان کے لئے اللہ کی راہ میں بیٹے کو قربان کر نے کا حکم ایک بہت بڑی آزمائش تھی لیکن سید نا ابراہیم علیہ السلام اس آزمائش میں بھی پورے اترے ۔قرآن کی زبانی ملاحظہ فرمائیے ۔ ''الٰہی مجھے لائق اولاد دے، تو ہم نے اسے خوشخبری سنائی ایک عقلمند لڑکے کی پھر جب وہ اس کے ساتھ کام کے قابل ہوگیا کہا اے میرے بیٹے میں نے خواب دیکھا، میں تجھے ذبح کرتا ہوں، اب تو دیکھ تیری کیا رائے ہے، کہا اے میرے باپ کیجئے جس بات کا آپ کو حکم ہوتا ہے خدا نے چاہا تو قریب ہے کہ آپ مجھے صابر پائیں گے، تو جب ان دونوں نے ہمارے حکم پر گردن رکھی او باپ نے بیٹے کو ماتھے کے بل لٹایا اس وقت کا حال نہ پوچھ، اور ہم نے اسے ندافرمائی کہ اے ابراہیم بے شک تو نے خواب سچ کردکھایا ہم ایسا ہی صلہ دیتے ہیں نیکوں کو، بیشک یہ روشن جانچ تھی اور ہم نے ایک بڑا ذبیحہ اس کے فدیہ میں دیکر اسے بچا لیا۔" ( الصفت پارہ ٢٣، آیت ٩٩تا١٠٧) غور کیا جائے تو یہ مقام حیرت واستعجاب ہے ۔اللہ کا پیغمبر یہ اچھی طرح جانتا ہے کہ آج تک کسی انسان کی قربانی کا حکم نہیں دیا گیا وہ اس پرپس و پیش سے بھی کام لے سکتے تھے اور اس کا قرینہ بھی تھا کیونکہ یہ حکم آپ کو خواب میں دیا گیا لیکن یہ پیغمبر کے ایمان وعمل کی رفعتیں ہیںکہ انھوں نے ایک لمحہ بھی توقف کئے بغیر سارا ماجرا اپنے بیٹے اسماعیل کو سنا یااور انھیں حکم نہیں دیا بلکہ ان سے رائے پوچھی ۔قربان جائیں اس پیغمبر زادے کی ایمانی عظمتوں پر جنہوں نے باپ کے خواب کو اللہ کا حکم سمجھتے ہو ئے سر تسلیم خم کرکے تاریخ انسانیت میں ذبیح اللہ کا منفرد اعزاز حاصل کیا ۔ سیدنا ابراہیم علیہ السلام حضرت اسماعیل علیہ السلام سے مخاطب ہو تے ہیں کہ بیٹا ! میں نے خواب میں دیکھا ہے کہ تجھے اللہ کی راہ میں ذبح کررہا ہوں 'بتا تیری کیا رائے ہے ؟باپ بیٹے دونوں جانتے ہیں کہ پیغمبر کا خواب اللہ کی وحی ہو تا ہے اس لئے اطاعت گزار بیٹا جواب دیتا ہے'' ابا جان !آپ اپنے ربّ کے حکم کی تعمیل کیجئے ۔انشاء اللہ مجھے صبر کرنے والوں میں سے پائیں گے۔ قرآن بتا تا ہے کہ سید نا ابراہیم اپنے لاڈلے بیٹے حضرت اسماعیل کو اللہ کی راہ میں قربان کرنے کے لئے اوندھے منہ لٹا دیتے ہیں اور انھیں ذبح کر نے کے لئے چھری ہاتھ میںلیتے ہیںکہ غیب سے آواز آتی ہے ''ابراہیم تو نے اپنا خواب اللہ کا امر سچا کر دکھایا ۔ہم اسی طرح نیکوکاروں کو جزا دیتے ہیں ـاپنے بیٹے کو اللہ کی راہ میں قربان کر نے کا حکم اللہ کے نبی کی بہت بڑی آزمائش اور بہت بڑا امتحان تھا ۔حضرت سید نا ابراہیم علیہ السلام اس بڑے نازک امتحان میںکامیاب وکامران رہے۔ آسمان سے ایک مینڈھا آتا ہے اور حضرت ابراہیم حضرت اسماعیل کی جگہ اس مینڈھے کو ذبح کر تے ہیں۔ارشاد ہو تا ہے ابراہیم !تمہاری قربانی قبول ہو گئی۔ہم نے اسماعیل کے ذبح کو ایک عظیم ذبح کے ساتھ فدیہ کر دیا ۔یوں سید نا حضرت ابراہیم علیہ السلام کی قربانی بھی بارگاہ خداوندی میں مقبول ومنظور ہو گئی اور ان کے فرزند ارجمند حضرت اسماعیل علیہ السلام کی زندگی بھی بچ گئی ۔ اب ذہن انسانی میں سوال پید اہو تا ہے کہ اگر حضرت اسماعیل علیہ السلام کو بچانا ہی مقصود تھا تو پھران کو اللہ کی راہ میںقربان کرے کا حکم کیوںہو ا؟اور اگر حکم ہو اتھا تو ان کی زندگی کو تحفظ کیو ں دیا گیا ؟اس کی وجہ کیا ہے 'حکم اس لئے ہو اتاکہ سراپائے ایثارو قربانی حضرت ابراہیم کے لخت جگر سے ذبح کی تاریخ کی ابتدا ء ہو جائے کہ راہ حق میں قربانیاں دینے کا آغاز انبیاء کی سنت ہے اور حضرت اسماعیل کو بچایا اس لئے گیا کہ اس عظیم پیغمبر کی نسل پاک میں نبی آخرالزماں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت با سعادت ہو نا تھی ۔اولاد ابراہیم علیہ السلام میں تاجدار کائنات صلی اللہ علیہ وسلم کو تشریف لانا تھا ۔اس لئے حضرت اسماعیل علیہ السلام کے ذبح کو جنت سے لائے گئے مینڈھے کی قربانی کی صورت میں عظیم ذبح کے ساتھ بدلا گیا اور حضرت اسماعیل علیہ السلام محفوظ ومامون رہے۔ حضرت سید نا حضرت اسماعیل علیہ السلام سن بلوغت کو پہنچے تو مکہ معظمہ کی وادی میں اپنے والد بزرگوار حضرت ابراہیم علیہ السلام کے ساتھ تشریف لائے ۔اللہ ربّ العزت کی طرف سے انھیں کعبۃ اللہ کی تعمیر کا حکم ہوایہ ایک بہت بڑا عزاز تھا جو سرور کائنات حضور رحمت عالم صلی اللہ علیہ وسلم کے جد امجد کے حصے میں آیا ۔انہی کی نسل پاک میں مبعوث ہو نے والے پیغمبر اعظم وآخر حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے حصے میں یہ سعادت بھی آئی کہ کعبۃ اللہ کو تین سو ساٹھ بتوں سے پاک کرکے اس پر پرچم توحید لہرایا ۔ حضرت ابراہیم علیہ السلام کی حیات مقدسہ پر ایک نظر ڈالیں تو کار نبوت کی انجام دہی میں انھیں ان گنت مصائب کا سامنا رہا اور آزمائش کے کٹھن مراحل سے گزرنا پڑا ۔اللہ کے اس عظیم پیغمبر نے راہ حق میں آنے والی ان مشکلات کاخندہ پیشانی سے مقابلہ کیا اور ہر آزمائش پر پورا اترے ۔کامیابی نے قدم قدم پر ان کے قدموں کو بوسہ دینے کا اعزاز حاصل کیا ۔چنانچہ قرآن حکیم میں اللہ تعالیٰ نے بار بار سید نا ابراہیم علیہ السلا م کی داستان عزیمت کو شاندار الفاظ میں دہرایا ہے۔ سورہ بقرہ میں ارشاد خداوندی ہے ! اور (وقت یاد کرو)جب ابراہیم کو ان کے ربّ نے کئی باتوں میں آزمایا تو انھوں نے وہ پوری کردیں (اس پر) اللہ نے فرمایا میں تمہیں لوگوں کاپیشوا بناؤں گاانہوں نے عرض کیا (کیا )میری اولاد میں سے بھی ارشاد ہوا (ہاں مگر) میرا وعدہ ظالموں کو نہیں پہنچتا۔ آزمائش کامرحلہ گزر گیا،کامیابی کا نور سید نا حضرت ابراہیم علیہ السلام کی مقدس پیشانی پر چمکنے لگا ۔اس وقت پیغام آیا کہ ابراہیم! ہم نے تیری عبدیت کو پرکھ لیا'ہم نے تیری شان خلیلی کا امتحان لے لیا ۔ہم نے دیکھ لیا کہ تیرے دل میں ہماری محبت کے کتنے سمندر موجزن ہیں ہم نے تیری قربانیوں کا بھی مشاہدہ کیا قدم قدم پر تیرے صبر واستقامت کو دیکھا ۔ہم نے تیرے توکل اور کلمہ شکر ادائیگی کا حسن بھی دیکھا ان تمام آزمائشوں پر پورا اترنے کے بعد اے ابراہیم !اب ایک خوشخبری بھی سن لے ایک مژدہ جانفزا بھی سماعت کروہ یہ کہ میں تجھے نسل بنی آدم کی امامت عطا کرتا ہوں یعنی پوری انسانیت کی امامت اقوام عالم کی امامت ۔ سید نا ابراہیم علیہ السلام نے عرض کیا باری تعالیٰ ! یہ امامت صرف میرے لئے ہے یا میری ذریت اور نسل کے لئے بھی ؟ارشاد ہوا :ہم نے تجھے بھی امامت دی اور یہ امامت تیر ی ذ ریت اور نسل کو بھی عطا کی مگر شرط یہ ہے کہ امامت اس کا مقدر بنے گی جو تیرے نقش قدم پر چلے گا اور صراط مستقیم کو اپنائے گا لیکن جو تیری راہ سے منحرف ہو گا امامت کا حق دار نہیں ہو گا ۔ اس کے بعد تعمیر کعبہ کا حکم ہو ا۔عظیم باپ اور عظیم بیٹا تعمیر کعبہ میں مصروف ہو گئے ایک ایک پتھر لاتے اور کعبہ کی دیواریں تعمیر کرتے ۔دیواریں بلند ہو گئیں 'ایک پتھر عطا ہوا جس پر کھڑے ہو کر تعمیر کاکام ہو رہا تھا ۔جوں جوں دیواریں اونچی ہو رہی تھیں تو ں توں یہ پتھر بھی بلند ہو تا جاتا ۔ حضرت سید نااسماعیل علیہ السلام تعمیر کعبہ میں اپنے والد گرامی کی معاونت فرماتے اورپتھر اٹھا اٹھا کر لاتے ۔دونوں جلیل القدر پیغمبر بارگاہ خداوندی میں ساتھ ساتھ دعا بھی کررہے تھے کہ: اے مولا! ہم تیرے گھر کی تعمیر کررہے ہیں ہماری یہ مشقت قبول فرما ۔یا باری تعالیٰ !ہماری جبینیں تیرے حضور جھکی رہیں، ہمارے سجدوں کو اپنی بارگاہ میں قبول فرما ۔ہماری آل اور ذرّیت سے امت مسلمہ پیدا کر ۔پھر عرض کیا :یاباری تعالیٰ ہم نے تیرے گھر کی دیواریں بلند کی ہیں ہم نے اپنی ذرّیت میں سے امت مسلمہ مانگ لی ہے اے خدا رحیم وکریم حضرت آدم علیہ السلام سے لے کر مجھ تک ہر نبی اپنے زمانے میں نبی آخرالزماںؐ کے ظہور کا اعلا ن کر تا رہا ہے یہ سلسلہ نبوت ورسالت اس مقدس ہستی پر جاکر ختم ہو گا وہ رسول معظم صلی اللہ علیہ وسلم جس کی خاطر تو نے یہ بزم کائنات سجائی۔ کرہ ارض پر ہزارہاانبیاء کو معبوث فرمایا وہ رسول آخر صلی اللہ علیہ وسلم جس کے لئے تونے ملتوں کو پیدا کیا ۔دنیا ئے رنگ وبوکو آراستہ کیا، آبشاروں کو تکلم کا ہنر بخشا، ہواؤں کو چلنے کی خو عطا فرمائی ۔وہ رسول بر حق جس کی خاطر تو نے اپنا جلوہ بے نقاب کیا، جس کی خاطر تونے اپنی مخلوقات کو پردہ عدم سے وجود بخشا، جس کی خاطر تو نے انسانوں کے لئے ہدایت آسمانی کے سلسلے کا آغاز کیا ـاس رسول معظم ؐاور نبی آخر الزماں ؐکا اس کائنات رنگ وبو میںظہور ہو نے والا ہے ۔باری تعالیٰ نے فرمایا: ہاںابراہیم ہمارا وہ محبوب رسول آنے والا ہے بتا تو کیا چاہتا ہے ؟ فرمایا :ربّ کائنات اگر تو تعمیر کعبہ کی ہمیں مزدوری دینا چاہتا ہے اگر تعمیل حکم میں ہمیں کچھ عطا کرنا چاہتا ہے تو اے پروردگار !اپنے اس آخر ی رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو میری اولاد میں مبعوث ہو نے کا شرف عطا فرما ۔میری ذرّیت کونور محمدی صلی اللہ علیہ وسلم کے جلوؤں سے ہمکنار کر دے میری اولاد کو حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی قدم بوسی کی سعادت بخش دے 'مولا مجھے اپنا محبوب صلی اللہ علیہ وسلم دےدے ۔ 1نبوت اور رسالت 2ختم نبوت 3-امّت مسلمہ اپنی ذریت کے لئے مانگ لی ہیں-ابراہیم تو نے میری محبت اور رضا کے لئے میر اگھر تعمیر کیا ہے اور دعا بھی وہ مانگی ہے جسے میں رد نہیں کر سکتا اس لئے ابراہیم جا ہم نے تجھے تیری مزدوری کے صلے میں یہ تینوں چیزیں عطا کیں ۔ پتھر کی عظمت: روایات میں ہے کہ سید نا ابراہیم علیہ ا لسلام نے جس پتھر پر کھڑے ہو کر اپنی نسل میں تاجدار کائنات صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت با سعادت کی دعا مانگی تھی یہ وہی پتھر تھا جس پر کھڑے ہو کر آپ نے تعمیر کعبہ کاکام سر انجام دیا تھا۔اس مقدس پتھر کی عظمت پر جان ودل نثار جس پر کھڑے ہو کر اپنی اولاد میں نبی آخرالزماں صلی اللہ علیہ وسلم کے مبعوث ہو نے کی دعا مانگی جارہی ہے۔ ربّ نے کہا : اے بے جان پتھر تجھے خبر ہے کہ تجھ پر کھڑے ہو کر ابراہیم علیہ السلام نے ہم سے کیا مانگ لیا ہے اس لمحے کو اپنے سینے میں محفوظ کر لے کہ یہ لمحہ قبولیت کا لمحہ ہے ۔اس لمحے ہمارے محبوب صلی اللہ علیہ وسلم کی آمد کا ذکر ہو رہا ہے۔ اس وقت رسول کائنات صلی اللہ علیہ وسلم کی تذکار جلیلہ سے روح کائنات معطر ہے قدرت خداوندی سے پتھر موم ہو گیا اور حضرت ابراہیم علیہ السلام کے قدموں کے نشانات قیامت تک کے لئے اس میں پیوست ہو گئے ۔ اس پتھر کا اعزاز یہ تھا کہ اس پر کھڑے ہو کر اللہ کے ایک جلیل القدر پیغمبر نے اس کے محبوب کا تذکرہ چھیڑ دیا تھا ۔اللہ کے نبی کی نسبت سے وہ پتھر بھی محترم ہو گیا ۔بے شمار پتھروں پر حضرت ابراہیم علیہ السلام کے قدموں کے نشان لگے ہو ئے ہوں گے 'ان گنت پتھروں نے کف پائے ابراہیم علیہ السلام کو بوسہ دینے کا اعزاز حاصل کیا ہو گالیکن امتداد زمانہ کے ساتھ وہ نقوش مٹتے گئے ماہ وسال کی گرد انھیں اپنے دامن میں چھپاتی رہی مگر جس پتھر پر کھڑے ہو کر سید نا ابراہیم علیہ السلام نے طلوع صبح میلاد کی دعا مانگی تھی اللہ سے اس کے محبوب صلی اللہ علیہ وسلم کو مانگاتھا ۔کونین کی دولت کو اپنے دامن میں سمیٹنے کی آرزو کی تھی وہ پتھر حرم اقدس میں مقام ابراہیم پر قیامت تک کے لئے محفوظ کر دیا گیا ۔ فرمایا اس پتھر کو کعبہ کے سامنے گاڑو، اس وقت تک میرے گھر کا طواف کامل نہ ہوگاجب تک طواف کر نے والے اس پتھر کے سامنے میرے حضور سجدہ ریز نہ ہوں گے تاکہ دنیا کو معلوم ہو جا ئے کہ یہ تمام انعامات وکرامات صدقہ ہے اس پتھر کا ۔ دعائے خلیل کی قبولیت : دعائے خلیل کو خلعت قبولیت عطا ہو ئی، کونین کی دولت سید نا ابراہیم علیہ السلام کے دامن طلب میں ڈال دی گئی ۔ ارشاد باری تعالیٰ ہے: جیسا ہم نے تم میں بھیجا ایک رسول تم میں سے کہ تم پر ہماری آیتیںتلاوت فرماتا ہے اور تمہیں پاک کرتا اور کتاب اور پختہ علم سکھاتا ہے اور تمہیں وہ تعلیم فرماتا ہے جس کا تمہیں علم نہ تھا۔ (البقرہ پارہ٢، ١٥١) سید نا ابراہیم علیہ السلام کی حیات مقدسہ میں حضرت اسماعیل علیہ السلام کی قربانی کا واقعہ ایسا واقعہ ہے جس کی وجہ سے انہیں بارگاہ خداوندی سے شرف امامت بھی عطا کیا گیا ۔باپ بیٹے نے تسلیم جاں کا یہ اظہار زبانی کلامی نہیں کیا بلکہ عملاً حکم کی بجا آوری کے لئے بیٹے کی قربانی کی غرض سے حضرت ابراہیم علیہ السلام نے اپنے ہاتھ میں چھری بھی لے لی تھی ۔حضرت اسماعیل علیہ السلام کی زندگی محفوظ رہی کہ ان کی نسل پاک سے نبی آخرالزماں صلی اللہ علیہ وسلم کی ولادت با سعادت ہو نا تھی ۔خدائے بزرگ وبرترنے وفد ینا بذبح عظیم کہہ کر اسماعیل کے ذبح کو ذبح عظیم کا فدیہ قرار دیا ۔فرزند پیغمبر کی قربانی ہو نا بعثت مصطفےٰ کی خاطر موقوف ہو ئی ۔ سنّت ابراہیمی پر عمل کر تے ہو ئے مسلمان اللہ کی راہ میں قربانی پیش کر تے ہیں اس قربانی کا مقصد یہ ہے کہ مسلمان اللہ کی راہ میں اپنی عزیز ترین شے کی قربانی سے بھی دریغ نہ کریں اور ہر امتحان میں ثابت قدم رہیں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات مبارکہ اپنے جد امجد حضرت ابراہیم علیہ السلام وحضرت اسماعیل علیہ السلام کی طرح آزمائشوں اور امتحانوں میں ثابت قدمی سے عبارت ہے۔ امّت مسلمہ کا فرد ہو نے کے ناطے ہم میں سے ہر ایک دین اسلام کی بلندی اور عروج کے لئے اپنی تمام تر کوششوں کو بروئے کار لائے تاکہ لِیُظْھِرَ ہ' عَلَی الْدِّیْنِ کُلِّہ کی عملی تعبیر ممکن ہو سکے اور یہ اسی وقت ممکن ہے جب ہم میں سے ہر کوئی ''قُلْ اِنَّ صَلٰوتِیْ وَنُسُکِیْ وَمَحْیَایَ وَمَمَاتِیْ لِلّٰہِ رَبِّ الْعَالَمِیْن کے مصداق ہو جائے۔