ghulamahmed17

Members
  • Content count

    159
  • Joined

  • Last visited

  • Days Won

    2

ghulamahmed17 last won the day on December 30 2018

ghulamahmed17 had the most liked content!

Community Reputation

-7 Poor

About ghulamahmed17

  • Rank
    Mureed of Molvi Tahir

Profile Information

  • Gender

Previous Fields

  • Madhab
    Ghair Muqallid
  1. Movie_0002_1.mp4 مولا کا معنیٰ آقا کرنے والااھل سنت سے خارج ، بد مذہب اور گمراہ ہے ۔(مفتی اشرف القادری بریلوی )نوٹ : مکمل ویڈیو سنیں ۔ ------------ Movie_0002_1.mp4 https://youtu.be/tZs8-0UblRg?t=30
  2. صابی تو یہ بھی تھے عبدالرحمن بن عدیسؓ : یہ اصحاب بیعت شجرہ میں سے ہیں اور قرطبی کے بقول مصر میں حضرت عثمان ؓکے خلاف بغاوت کرنے والو ں کے لیڈر تھے یہاں تک کہ حضرت عثمانؓ کو قتل کر ڈالا . ﴿استیعاب ۲: ۳۸۳؛ اور صحابی تو یہ بھی ہیں الدارقُطنی کہتے ہیں أَبُو الغَادِيَة، يَسَار بْن سَبع، لَهُ صُحْبَة، رَوَى عَنِ النَّبِيِّ ﷺ، وَهُوَ قَاتِلُ عَمَّارَ بْن يَاسِر، رَحِمَهُ اللهُ، بِصِفِّين. ابوالغادیہ یَسار بن سَبع صحابی تھا، اس نے نبی کریم صل اللہ علیہ وآلہ وسلم سے حدیث بھی روایت کی ہے، وہ عمار بن یاسرؓ کا قاتل تھا جنگِ صِفِّین میں۔ (موسوعة أقوال أبي الحسن الدارقطني: 2/ 724/ 3938 ابن عبدالبر (م463ھ) لکھتے ہیں أَبُو الغَادِيَة الجُهَنِي. أَدْرَكَ النَّبِيَّ ﷺ وَهُوَ غُلَامٌ، وَلَهُ سَمَاع مِنَ النَّبِيّ ﷺ، وَهُوَ قَاتِلُ عَمّارَ بْن يَاسِر. ابوالغادیہ الجُہَنی ، اس نے نبی اکرم ص کو پایا ہے جبکہ یہ نوجوان تھا، اور اس نے نبی پاک ص سے حدیث کی سماعت بھی کی ہے، اور یہ عمار بن یاسرؓ کا قاتل ہے۔ (الاستيعاب لابن عبد البر: 4/ 1725/ 3113) الذہبی (م748ھ) لکھتے ہیں أَبُو الغَادِيَة الجُهَني: يَسَار بْن سَبُع، لَهُ صُحْبَة، وَهُوَ قَاتِلُ عَمَّار. ابوالغادیہ الجُہَنی یَسار بن سَبع صحابی تھا، اور وہ عمار کا قاتل تھا۔ (المقتنى في سرد الكنى لِلذهبي: 2/ 3/ 4885)
  3. : وہابیہ کا چہیتا امام ابن تیمیہ اپنی کتاب منہاج السنہ، ج 4 ص 400 میں اقرار کرتاہے وطائفة وضعوا لمعاوية فضائل ورووا أحاديث عن النبي صلى الله عليه وسلم في ذلك كلها كذب لوگوں کی ایک جماعت نے معاویہ کے فضائل گھڑے اور اس سلسلے میں رسول اللہﷺ سے احادیث بیان کردیں جن میں سے سب جھوٹی ہیں ۔ کیا ابنِ تیمیہ کی یہ بات درست ہے؟
  4. صحیح بخاری حدیث# 2812 حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا خَالِدٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عِكْرِمَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ ابْنَ عَبَّاسٍ قَالَ لَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَلِعَلِيِّ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ:‏‏‏‏ ائْتِيَا أَبَا سَعِيدٍفَاسْمَعَا مِنْ حَدِيثِهِ فَأَتَيْنَاهُ، ‏‏‏‏‏‏وَهُوَ وَأَخُوهُ فِي حَائِطٍ لَهُمَا يَسْقِيَانِهِ فَلَمَّا رَآنَا جَاءَ فَاحْتَبَى وَجَلَسَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ كُنَّا نَنْقُلُ لَبِنَ الْمَسْجِدِ لَبِنَةً لَبِنَةً، ‏‏‏‏‏‏وَكَانَ عَمَّارٌ يَنْقُلُ لَبِنَتَيْنِ لَبِنَتَيْنِ، ‏‏‏‏‏‏فمر بِهِ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏وَمَسَحَ عَنْ رَأْسِهِ الْغُبَارَ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ ""وَيْحَ عَمَّارٍ تَقْتُلُهُ الْفِئَةُ الْبَاغِيَةُ عَمَّارٌ يَدْعُوهُمْ إِلَى اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏وَيَدْعُونَهُ إِلَى النَّارِ"". ابن عباس رضی اللہ عنہما نے ان سے اور ( اپنے صاحبزادے ) علی بن عبداللہ سے فرمایا تم دونوں ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ کی خدمت میں جاؤ اور ان سے احادیث نبوی سنو۔ چنانچہ ہم حاضر ہوئے ‘ اس وقت ابوسعید رضی اللہ عنہ اپنے ( رضاعی ) بھائی کے ساتھ باغ میں تھے اور باغ کو پانی دے رہے تھے ‘ جب آپ نے ہمیں دیکھا تو ( ہمارے پاس ) تشریف لائے اور ( چادر اوڑھ کر ) گوٹ مار کر بیٹھ گئے ‘ اس کے بعد بیان فرمایا ہم مسجد نبوی کی اینٹیں ( ہجرت نبوی کے بعد تعمیر مسجد کیلئے ) ایک ایک کر کے ڈھو رہے تھے لیکن عمار رضی اللہ عنہ دو دو اینٹیں لا رہے تھے ‘ اتنے میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ادھر سے گزرے اور ان کے سر سے غبار کو صاف کیا پھر فرمایا افسوس! عمارؓ کو ایک باغی جماعت مارے گی ‘ یہ تو انہیں اللہ کی ( اطاعت کی ) طرف دعوت دے رہا ہو گا لیکن وہ اسے جہنم کی طرف بلا رہے ہوں گے.. ---------------- ملا علی قاری فرماتے ہیں واستدل به على أحقية خلافة علي، وكون معاوية باغياً لقوله عليه الصلاة والسلام: ويحك يا عمار يقتلك الفئة الباغية(شرح مسند ابی حنیفہ اقتدوا بعد ابی بکر و عمر رضی اللہ عنہما جلد ا ص245) (حدیث عمار) سے استدلال کیا ہے علی رضی اللہ عنہ کی خلافت پر اور معاویہ عنہ باغی ہیں۔ --------------- امام الزرکشی فرماتے ہیں قال الزركشي وهذا الحديث احتج به الرافعي لإطلاق العلماء بأن معاوية ومن معه كانوا باغين ولا خلاف أن عمار كان مع علي رضي الله عنه وقتله أصحاب معاوية.(توضیح الافکار لمعانی تنقیح الانظار جلد 2 ص257 تحت مسالۃ 63 معرفہ الصحابہ) ترجمہ: اس حدیث کا اطلاق علماء نے اس پر کیا ہے کہ معاویہ رضی اللہ عنہ اور جو ان کے ساتھ تھےسب باغی تھے اور یہ اس کے خلاف نہیں کہ عمار رضی اللہ عنہ علی رضی اللہ عنہ کے ساتھ تھے اور معاویہ کے ساتھیوں نے ان کو قتل کیا۔ ----------------- محمد بن إسماعيل الأمير الصنعاني المتوفى: 1182ہجری وقال الإستاذ عبد القاهر البغدادي أجمع فقهاء الحجاز والعراق ممن تكلم في الحديث والرأي منهم مالك والشافعي وأبو حنيفة والأوزاعي والجمهور الأعظم من التكلمين أن عليا عليه السلام مصيب في قتاله لأهل صفين كما أصاب في قتاله أهل الجمل وأن الذين قاتلوه بغاة ظالمين له لحديث عمار واجمعوا على ذلك.(حوالہ ایضا) اس پر اجماع بتایا ہے کہ معاویہ باغی گروہ تھا۔ --------------- ابن کثیر فرماتے ہیں أَخْبَرَ بِهِ الرَّسُولُ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنْ أَنَّهُ تَقْتُلُهُ الْفِئَةُ الْبَاغِيَةُ وَبَانَ بِذَلِكَ أَنَّ عَلِيًّا مُحِقٌّ وَأَنَّ مُعَاوِيَةَ بَاغٍ(البدایہ والنھایہ جلد 7 ص266 باب مقتل عمار بن یاسر رضی اللہ عنہ) ترجمہ: نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے خبر دی کہ (عماررضی اللہ عنہ) کو باغی گروہ قتل کرے گا اس سے یہ ثابت ہے کہ علی رضی اللہ عنہ حق پر تھے اور معاویہ باغی تھے۔ ------------------------------- علامہ شوکانی لکھتے ہیں ]قَوْلُهُ: (أَوْلَاهُمَا بِالْحَقِّ) فِيهِ دَلِيلٌ عَلَى أَنَّ عَلِيًّا وَمَنْ مَعَهُ هُمْ الْمُحِقُّونَ، وَمُعَاوِيَةَ وَمَنْ مَعَهُمْ هُمْ الْمُبْطِلُونَ، وَهَذَا أَمْرٌ لَا يَمْتَرِي فِيهِ مُنْصِفٌ وَلَا يَأْبَاهُ إلَّا مُكَابِرٌ مُتَعَسِّفٌ، وَكَفَى دَلِيلًا عَلَى ذَلِكَ الْحَدِيثُ. وَحَدِيثُ " يَقْتُلُ عَمَّارًا الْفِئَةُ الْبَاغِيَةُ " وَهُوَ فِي الصَّحِيحِ(نیل الاوطار جلد 7 ص 59) ترجمہ: نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان(اولاھما بالحق) اس میں دلیل ہے کہ علی رضی اللہ عنہ اور جو ان کے ساتھ تھے وہ حق پر تھے اور معاویہ باطل پر تھے اور اس میں کسی بھی انصاف کرنے والے کے لئے کوئی شک نہیں ہے اور اس سے صرف ضدی اور ہٹ دھرم ہی انکار کرے گا۔ ----------------------------- امام آلوسی فرماتے ہیں الفئة الباغية كما أمرني الله تعالى- يعني بها معاوية ومن معه الباغي(تفسیر روح المعانی تحت آیت 5 سورہ الحجرات) ترجمہ: معاویہ اور ان کے ساتھ باغی گروہ تھا۔ ------------------------ صدیق حسن خان القنوجی فرماتے ہیں لكان ذلك مفيدا للمطلوب ثم ليس معاوية ممن يصلح لمعارضة علي ولكنه أراد طلب الرياسة والدنيا بين قوم أغتام1 لا يعرفون معروفا ولا ينكرون منكرا فخادعهم بأنه طلب بدم عثمان(الدرر البھیۃ والروضہ الندیۃ کتاب الجھاد و السیر باب فضل جھاد جلد 2 ص 360) ترجمہ: معاویہ نے علی رضی اللہ عنہ کے ساتھ جو تعرض کیا صرف ریاست اور دنیا کی طلب کے لئے اس کے پیچھے نہ معروف تھا اور نہ منکر کو روکنا عثمان رضی اللہ عنہ کے خون کا بھانہ بنا کر سب کو دھوکا دیا تھا۔ ---------------------- علامہ عبدالکریم شہرستانی اور اب پیش ِخدمت ہے اہل ِسنت کے نامور عالم ِدین علامہ عبدالکریم شہرستانی کو اپنی کتاب ملل و النحل، ج 1 ص 103 میں لکھتے ہیں: ولا نقول في حق معاوية وعمرو بن العاص الا أنهما بغيا على الامام الحق فقاتلهم مقاتلة أهل البغي وأما أهل النهروان فهم الشراة المارقون عن الدين بخبر النبي صلى الله عليه وسلم ولقد كان رضي الله عنه على الحق في جميع أحواله يدور الحق معه حيث دار ہم معاویہ اور عمروبن العاص کے متعلق کچھ نہیں کہتے سوائے اس کے کہ انہوں نے امام برحق کے خلاف جنگ کی لہٰذا علی نے ان لوگوں کو باغی تصور کرتے ہوئے ان سے جنگ کی۔ -------------------- شاہ عبدالعزیز محدث دھلیؒ فرماتے ہیں کہ: کل اہلسنت کا اجماع ہے اس بات پر کہ معاویہ بن ابوسفیان شروع امامتِ حضرت امیر رضی اللہ عنہ سے اس وقت کا کہ حضرت امام حسن رضی اللہ عنہ نے اُس کے سپرد کی باغیوں میں سے تھا کہ امامِ وقت کا مطیع نہ تھا، اور جب حضرت امام رضی اللہ عنہ نے اُس کے سپرد کر دی تو بادشاہوں میں سے تھا۔ تحفہ اثنا عشر ص / 285 ------------------------
  5. کیا فرماتے ہیں آپ اس ظالمانہ قتل پر ؟؟؟ -----------
  6. جناب سعیدی صاحب یہاں آپ اپنا فتویٰ پڑھ سکتے ہیں اس کا جواب عرض ہے ۔ جناب سعیدی صاحب حضرت عمرؓ خود حضرت مولی علیؓ کو اپنا آقا،سردار کہہ رہے ہیں اور خود کو مولا علیؓ کا خادم،یا غلام سمجھ رہےہیں تو آپ مولاي کا ترجمہ آقا کرنے پر تفضیلی کا فتویٰ لگا رہے ہیں کیوں ؟ دوسری حدیث جس کا ترجمہ ڈاکٹر صاحب نے آقا کیا ہے اس پر بات اس کے بعد کر لیں گے ۔ میں نے بالکل سیدھی بات کی ہے اور آپ کی پہلی پوسٹ کی پہلی حدیث مبارکہ کا جواب دیا ہے امید ہے آپ بھی اسی طرح سیدھا سا جواب دیں گے ۔
  7. جی ہاں یہ مجھ سے غلطی ہوئی میں برملا اس کا اقرار کرتا ہوں پہلے بھی مجھ سے جہاں غلطی ہوئی میں نے اس کو مانا ہے لیکن شیطان کا لفظ آپ لوگ استعمال کر چکے ہیں ۔ مجدد والی پوسٹ میں پہلا فقرہ پڑھیے
  8. میں نے ان پوسٹوں میں سواے کچھ سخت الفاظ مثلاً جہالت وغیرہ کے کوئی غلط لفظ جو بد زبانی میں شمار ہو استعمال ہرگز نہیں کیا ۔ رہی بات آپ کے دلائل کےکی تو وہ بھی دیکھ لیں اب کتنے پیارے اور اخلاق سے مزیّن اور دل موہ لینے والے دلائل دیتے ہیں ۔ ماشاء اللہ اپنے خوبصورت دلائل کی اک بار پھر یاد تازہ کریں آب کی آخری پوسٹ کا اب "مولیٰ بمعنیٰ آقا یا ماسٹر سے کوئی تعلق نہیں ہے حضرت عمرؓ کا حضرت علیؓ کو اپنا آقا ، غلام یا خادم کہنا یا مولیٰ کا معنیٰ ماستر یا آقا کرنا صحیح ہے کہ نہیں اور اگرصحیح نہیں تو پھر آپ کا فتویٰ سب کے لیے ایک ہی ہونا چاہیے باقی پوسٹ کل لگاؤں گا انشاء اللہ تب تک اپ اپنے اخلاق سے مزّین ماضی کے چند عظیم دلائل دیکھ لیں
  9. جناب سعیدی صاحب آپ کی پوسٹ کے ٹاپک پر آپ کی پہلی پوسٹ جہاں سے بات کا آغاز ہوا جناب آپ نے حضرت علیؓ کو حضرت عمرؓ کا مولیٰ " معنیٰ آقا یا ماسٹر کرنے پر طاہر القادری کو تفضیلی ثابت کرنا تھا ۔۔ کچھ پوسٹوں کے بعد نے آپ یہی معنیٰ کرنے والے کو رافضی وغیرہ تک کا فتویٰ بھی صادر فرمایا ۔۔۔۔۔۔۔۔ تفضیلی ثابت کرنے کے بعد آپ کو طاہر القادری کو رافضی ثابت کرنا تھا ۔ طاہر القادری کو تفضیلی اور رافضی تو کیا ثابت کرنا تھا اب آپ آپنی ہی پوسٹوں سے بھاگ بھاگ کر کبھی کوئی ڈرامہ کرتے ہیں اور کبھی کوئی کہانی گھڑتے ہیں مثلاً ڈاکٹر طاہر القادری صاحب کے جس ترجمہ پر آپ نے تفضیلیو رافضی کا فتویٰ لگایا وہ حدیث حدیث نمبر : 47 عن عمر أنه قال : عليّ مولي من کان رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم مولاه. عن سالم قيل لعمر : إنک تصنع بعليّ شيئا ما تصنعه بأحد من أصحاب رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم، قال : إنه مولاي. حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا : رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم جس کے مولا ہیں علی رضی اللہ عنہ اس کے مولا ہیں۔ حضرت سالم سے روایت ہے کہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ سے پوچھا گیا کہ آپ حضرت علی رضی اللہ عنہ کے ساتھ ایسا (امتیازی) برتاؤ کرتے ہیں جو آپ دیگر صحابہ کرام رضی اللہ عنھم سے (عموماً) نہیں کرتے! (اس پر) حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے (جواباً) فرمایا : وہ (علی) تو میرے مولا (آقا) ہیں۔ 1. محب طبري، الرياض النضره في مناقب العشره، 3 : 128 2. ابن عساکر، تاريخ دمشق الکبير، 45 : 178 جناب سعیدی صاحب میں نے جب آپ کے اپنے گھر کی حدیث کا ترجمہ پیش کیا جس میں ماسٹر اور آقا ترجمہ کر کے حضرت مولیٰ علیؓ کو سب صحابہ اکرام کا آقا اور ماسٹر ہونا ثابت کیا گیا تو بجائے اس کو مان کر شرمندہ اور اپنی جہالت و کم علمی کا اقرار کرنے کے آپ نے یہ پوسٹ لگائی آپ کو یوں من گھڑت کہانی گھڑتے ہوئے ذرا شرم محسوس نہیں ہوئی آپ ہرگز ایسی حرکت کبھی نہ کرتے اگر آپ سے کوئی پوچھنے والا ہوتا ۔ پھر اس فورم کے آپ کرتا دھرتا ہو آپ کی جو مرضی ہو آپ کریں کونسا کسی نے آپ کو سچ بولنے اور لکھنے کا کہنا ہے "اللہم وال من والاہ" اس کا ترجمہ آپ جب پوچھتے اگر طاہر القادری صاحب نے اس حدیث میں حضرت علیؓ کو سب صحابہ اکرام کا آقا یا ماسٹر کہا ہوتا پہلی بات تو یہ ہے کہ طاہر القادری نے ایسا نہیں کہا کیونکہ ڈاکٹر صاحب جو ترجمہ کر رہے ہیں اور جس پر آپ علامہ بن کر اعتراض فرما رہے ہیں اس میں خود حضرت عمرؓ حضرت مولیٰ علیؓ کو اپنا مولیٰ ،آقا یا ماسٹر مان رہے ہیں نہ کہ ڈاکٹر صاحب حضرت علیؓ کو سب صحابہ کا آقا یا ماسٹر کہہ یا لکھ رہے ہیں ، سب صحابہ اور انبیاء کا آقا یا ماسٹر آپ کے اعتراض سے بنتا ہی نہیں ہے اور نہ ہی اس فقرے کے ترجمہ کا "اللہم وال من والاہ" طاہر القادری سے بغض اور حسد ضرور کرو مگر اس قدر جہالت اپنے ہی فورم کے لوگوں کو مت دیکھاؤ اور کچھ ہوش کرو یہ پوسٹ اپنے فورم اسلامی ایجوکیشن فورم پر لگاؤ تاکہ وہ ہی تمہاری جہالت کو لگام دیں ۔تیرے پاس منہ چھُپانے اور سوائے شرمندگی کے اور کچھ نہیں کبھی اجمال کی جنگ لڑتے ہو اور کبھی تفضیل کے جھنڈے لہراتے ہیں ان باتوں کا آپ کے عنوان اور آپ کی پہلی پوسٹ سے دور دور کا تعلق بھی نہیں ۔ سیدھی سی بات ہے کہ آپ کا اعتراض تھا کہ ڈاکٹر صاحب نے مولائی کا ترجمہ آقا یا ماسٹر کیوں کہا؟ کیا ہے اس لیے تفضیلی و رافضی ہیں ۔ میں نے آپ کے اپنے فورم سے مکمل حدیث مبارکہ پیش کردی اور وہ حدیث پیش کی جس میں حضرت عمرؓ حضرت علیؓ کو خود آقا نہیں کہہ رہے بلکہ حضرت علیؓ کو سب صحابہ اکرام کا آقا اور ماسٹر کہا گیا ہے ،اب آپ کر لیں جو کرنا ہے اُن کا ۔۔۔ اور مختصراً میں اتنا کہتا ہوں کہ چپ کر کے اپنے فرم والوں سے معذرت کر لیں۔ دیت والی بات بھی یاد رکھنا
  10. جناب بالکل اس میں جواب نہیں ہے آپ اپنی پہلی پوسٹ کے مطابق جواب عنایت فرمائیں جس طرح آپ نے اپنی پوسٹ لگائی جس طرح آپ جناب نے یہاں اپنے عظیم فتویٰ سے نوازا بالکل اسی طرح اسلامی ایجوکیشن فورم پر اپنا فتویٰ صادر فرمائیں خطاء کے پردے میں نہ چھپے پوری ایک حدیثِ مبارکہ کا ترجمہ ہے پڑھیے اور اپنا خوب صورت پہلے کی طرح کھل کر فتویٰ دیں ۔ اس لیے یہ عام فورم نہیں ہے آپ کے اسی فورم کا حصہ ہے اور یہ خطاء آج کی نہیں 9 ،10 سال سے ہے ۔ اس لیے اپنا صاف اور واضع فتویٰ لگائیں
  11. جناب سعیدی صاحب میں نے ابھی آپ کی پوسٹ سے پہلے پوسٹ لگائی ہے اس کے جواب سے محترم آگاہ فرمائیں نوازش ہو گی ۔
  12. سب سے پہلے ٹاپک تھا"سعیدی نام کا بندہ عالم یا جاہل" اس کے آپ لوگ وہاں سے جوتے اتار کر بھاگ نکلے ۔۔۔۔۔ پھر جناب لوگوں نے ٹاپک کا نام رکھا " Lafz Aqaa ke Maana" وہاں سے جوتے تو جوتے کپڑے بھی چھوڑ کر جناب بھاگے ہیں اور پھر اب صاحبوں کو اس ٹاپک میں لگتا ہے پناہ مل جائے گی ۔۔۔ نہیں ملے گی انشاء اللہ بغضِ علیؓ والے کو خدا کی قسم کبھی پناہ نہیں ملے گی در بدر ہو گا ،ذلیل ہو گا اور خوار ہو گا مگر پناہ نہیں ملے گی ۔۔۔۔۔ وہ جتنا مرضی ہے بھاگ لے ، وہ جتنا چاہے روپ بدل لے ہر گز ہر گز پناہ نہیں ملے گی ۔۔۔۔۔ بھاگتے وقت آپ جانے یا انجانے میں میری پوسٹ بھی پیچھے ہی چھوڑ ائیں ہیں ۔ خیر کوئی بات نہیں آپ نے اچھا کیا جو یہاں چلے آئے اب کچھ تفصیل سے بات ہونا ممکن ہو پائیں گے اور انشاء اللہ " عورت کی دیت " سے بھی بدتر حالت ہو گی ۔ مجھے فقط سب سے پہلے اس سوال کا جواب دیں ۔ میں اصل بات سے کسی صورت نہیں باگھنے دوں گا بس صرف اس کا جواب کیا اسلامی ایجوکیشن فورم اہل سنت کا ایک مستند فورم ہے یا تفضیلی اور رافضی فورم ہے
  13. یہ حق یا وہ سچ لو جی اُردو معنیٰ کی حسرت بھی پوری کر لو ۔۔۔ میرا خیال ہے کہ حضرت سید محمد امیر شاہ قادری گیلانیؒ اھل سنت ہی تھے جو عمر کے آخری ایام میں شاہ احمد نورانیؒ کے لیے دُعا فرما رہے یقیناً شاہ احمد نورانیؒ اک رافضی سے اپنے لیے دُعا نہیں کرا سکتے ۔۔۔ اگر اردو میں اور معنیٰ کی ضرورت ہوئی تو اور حسرت بھی پوری کی جا سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
  14. ہاں جی سعیدی صاحب آج آپ خود اپنے ہی فورم پر موجود حدیث شریف کے ترجمہ کی وجہ سے رافضی ثابت ہو رہے ہیں کیا میں ٹھیک کہہ رہا ہوں نہ آپ نے کب سے اپنے ہی فورم پر صرف ڈاکٹر طاہر القادری کے حسد اور بغض کی وجہ سے اپنے ہی لوگوں کو کس قدر گمراہ کیا ہے ۔ اور اس گمراہی کا نشانہ صرف ڈاکٹر طاہر القادری ہی کی ذات نہیں رہی بلکہ آپ وہ بد نصیب اور بدبخت انسان ہیں جنہوں نے حضرت مولیٰ علیؓ کی ذات سے بھی لوگوں کو گمراہ کیا دیت کے مسئلہ پر بھی ڈاکٹر طاہر القادری کو گمراہ بناتے بناتے آپ خود گمراہ ثابت ہوئے تھے اس لیے کہ ڈاکٹر طاہر القادری نے وہی کچھ کہا تھا جو حکیم الامت مفتی احمد یار خان نعیمیؒ نے کہا تھا ۔ کیا میں درست کہہ رہا ہوں نا ؟ اور آج مولیٰ کے معنیٰ پر بھی ڈاکٹر طاہر القادری کو لوگوں کی نظر میں گمراہ کرتے کرتے آپ خود گمراہ ثابت ہو چکے ہو ۔ کیا میں صحیح کہہ رہا ہوں نا ؟ توبہ کر لو اور حق کی طرف لوٹ جاؤ ڈاکٹر طاہر القادری کی علمی حثیت کو چیلنج کرنا چھوڑ دو ۔ خدا کی اس زمین پر وہ اللہ کا بندہِ خاص ہے اس لیے کہ اس سے اختلاف کرنے والے ، گالیاں دینے والے سب ایک ایک کر کے نگے ہو رہے ہیں ۔۔۔ www islamimehfil. com پر لگائی گئی اپنی پوسٹوں کا موازنہ اپنے ہی فورم پر موجود اپنے ہی لوگوں کیطرف سے لگائی گئی اس پوسٹ سے موازنہ کر کے اپنے ہی لوگوں کو بتائیں کہ سچ اور حق کہاں پر ہے ۔ رافضی آپ ہیں یا رافضی اسلامی ایجوکیشن فورم والے ہیں ۔ جناب محترم سعیدی صاحب آج صرف سچ اور حق بولنے اور لکھنے کے سوا آپ کے پاس کوئی چارہ نہیں ۔۔۔۔ لیجیے اک بار اس حدیث، مبارکہ کا پھر مطالعہ فرمائیں اور اپنی سابقہ پوسٹوں سے مِلائیں اور اپنے ہی لوگوں کو سچ بتائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ Sunan Tirmidhi November 20, 2009/0 Comments/in Hadith's Jirah wal Tadi'l Shu‘bah relates it from Salmah bin Kuhayl: I heard it from Abu Tufayl that Abu Sarihah or Zayd bin Arqam (Shu‘bah has doubts about the narrator) — relates that the Prophet (Peace Be Upon Him) said: One who has me as his master has Ali as his master. [Sunan Tirmidhi Volume 005, Page No. 833, Hadith Number 3713] — Abu Isa Tirmidhi said: This hadith is Hassan – Sahih (i.e Handsome and Sound) — Shu‘bah has related the tradition from Maymum Abu Abdullah, who related it on the authority of Zayd bin Arqam and he has related it from the Holy Prophet (Peace Be Upon Him)
  15. جناب سعیدی صاحب آپ نے جس طرح ٹاپک " عورت کی دیت" میں لفظ "یکساں" کا معنیٰ کیا تھا آج بھی بالکل اُسی طرح لفظ مولیٰ کا معنیٰ کر رہے ہیں ۔ دیکھیں آپ اپنی پوسٹ میں کیا کر رہے ہیں ۔ WWW.islamieducation.com پر موجود لنک جہاں پر یہ حدیث مبارکہ اسی طرح پڑھی اور دیکھی جا سکتی ہے ۔ اس فورم پر موجود لوگوں کےسامنے لا إله إلا الله محمد رسول الله پڑھ کر کہتا ہوں کہ یہی سچ ہے میں اپنی طرف سے نہیں کہہ رہا یہ نیچے وہ حدیث مبارکہ ہے جس کا ترجمہ آپ پڑھ سکتے ہیں Sunan Tirmidhi November 20, 2009/0 Comments/in Hadith's Jirah wal Tadi'l Shu‘bah relates it from Salmah bin Kuhayl: I heard it from Abu Tufayl that Abu Sarihah or Zayd bin Arqam (Shu‘bah has doubts about the narrator) — relates that the Prophet (Peace Be Upon Him) said: One who has me as his master has Ali as his master. [Sunan Tirmidhi Volume 005, Page No. 833, Hadith Number 3713] — Abu Isa Tirmidhi said: This hadith is Hassan – Sahih (i.e Handsome and Sound) — Shu‘bah has related the tradition from Maymum Abu Abdullah, who related it on the authority of Zayd bin Arqam and he has related it from the Holy Prophet (Peace Be Upon Him) کلک کیجے اور لفظ مولیٰ کا معنیٰ ماسٹر خود پڑھیےlink : http://www.islamieducation.com/sunan-tirmidhi/