Jump to content
IslamiMehfil

Search the Community

Showing results for tags 'دفاع سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ'.

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Urdu Forums
    • Urdu Literature
    • Faizan-e-Islam
    • Munazra & Radd-e-Badmazhab
    • Questions & Requests
    • General Discussion
    • Media
    • Islami Sisters
  • English & Arabic Forums
    • English Forums
    • المنتدی الاسلامی باللغۃ العربیہ
  • IslamiMehfil Team & Support
    • Islami Mehfil Specials
  • Arabic Forums

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


AIM


MSN


Website URL


ICQ


Yahoo


Jabber


Skype



Interests


Found 23 results

  1. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام جمال الدين ابو اسحاق ابراھیم بن على بن يوسف فیروز آبادی الشیرازی الشافعى رحمة الله علیہ متوفٰی٤٧٦ھ یہ سلف کے بارے بہت بڑا بول ہے ( یعنی طعن ہے ) ان معترضین کے فساد قول کی دلیل ائمہ کا یہ ارشاد ہے کہ صحابہ کرام رضی الله عنہم کی عدالت ثابت اور نزاھت (طہارت نفسی ) معلوم و معروف ہے ۔ اس لئے ان کی عدالت و نزاہت زائل نہیں ہو سکتی سوائے قطعی دلیل کے ۔ اور اس لئے بھی کہ ان سے کوئی ( مانع عدالت اور ) قابل اعتماد معصیت ظاہر نہ ہوئی ۔ بلاشبہ ان میں جنگیں ہوئیں جن میں وہ متاولین تھے ( یعنی ان کی جنگیں تاویل پر مبنی تھیں ) اسی بناء پ
  2. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو العباس احمد بن محمد بن احمد المقری التلسمانی المالكى رحمة الله علیہ متوفٰی١٠٤١ھ ان میں سے کسی ( بدبخت ) نے شعر پڑھا *فلا تعجبا من عوى خلف ذي علا … لكل علي في الأنام معاويه* میں کہتا ہوں : اس شعر میں صحابہ کرام رضی الله عنہم اجمعین کے ساتھ بے ادبی کا جو معاملہ ہے وہ پوشیدہ نہیں ۔ الله تعالی اس اندلسی شاعر پر رحم فرمائے کہ اس نے رجز کبیر میں کہا ۔ من یکن ۔۔ جو شخص حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ کے بارے قدح کرے ۔ وہ جہنم کے کتوں میں سے ایک بھونکنے والا کتا ہے ۔ حوالہ درج ذیل ہے نفح الطيب من غصن ال
  3. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام محی الدین ابو زکریا احمد بن ابراهيم ابن النحاس الدمشقی رحمة الله علیہ متوفٰی٨١٤ھ کئی ائمہ نے اس پر اجماع نقل کیا کہ جو شخص ام المؤمنین سیدہ عائشہ رضی الله عنہا کو سب و شتم کرے وہ کافر ہے ۔البتہ شیخین ( حضرت ابو بکر و حضرت عمر فاروق ) رضی الله عنہما کو گالی دینے والے کی تکفیر کے بارے علماء کا اختلاف ہے ۔ اسی طرح دیگر اصحاب رسول ﷺ پر لعن طعن کرنے والے کے بارے اختلاف یے ۔ اس مسئلہ میں اقوال ائمہ بہت ہیں ۔ ان اقوال کا حاصل یہ ہے کہ ساب یعنی گالی دینے والے کا معاملہ ارتکابِ کفر اور ارتکابِ گناہ کبیرہ کے درمیان دائر ہے ۔ ہم ال
  4. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ربانی مجدد الف ثانی رحمتہ اللہ علیہ متوفی 1034ھ امام ربّانی مجدد الف ثانی رضی اللہ تعالٰی عنہ فرماتے ہیں امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کی محبت اہلسنت و جماعت کی شرط ہے اور جو شخص یہ محبت نہیں رکھتا اہلسنت سے خارج ہے، اس کا نام خارجی ہے اور جس شخص نے حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کی محبت میں افراط کی طرف کو اختیار کیا اور جس قدر کہ محبت مناسب ہے،اس سے زیادہ اس سے وقوع میں آتی ہے، اور محبت میں غلو کرتا ہے اور حضرت خیر البشر علیہ الصلاۃ و السلام کے اصحاب کو سب و طعن کرتا ہے اور صحابہ و تابعین اور سلف صالحین رضوان اللہ علیہم اجمعین
  5. حضرت سیّدُنا علی کَرَّمَ اللہُ وَجہَہُ الْکریم کی شہادت کی خبر سُن کر آپ نے حضرت سیّدُنا ضرار رضیَ اللہُ عنہ سے فرمایا: میرے سامنے حضرت سیّدُنا علیُّ المرتضیٰ کَرَّمَ اللہُ وَجہَہُ الْکریم کے اوصاف بیان کریں۔ جب حضرت ضرار رضیَ اللہُ عنہ نے حضرت سیّدُنا علی کَرَّمَ اللہُ وَجہَہُ الْکریم کے اوصاف بیان کئے تو آپ رضیَ اللہُ عنہ کی آنکھیں بھر آئیں اور داڑھی مبارک آنسوؤں سے تَر ہو گئی، حاضرین بھی اپنے اوپر قابو نہ رکھ سکے اور رونے لگے۔ بحوالہ حلیۃ الاولیاء،ج1،ص126مختصراً حلیتہ الاولیاء مترجم بنام اللہ والوں کی باتیں ج1 ص174 تا 175
  6. ایک مرتبہ ایک آدمی نے آپ رضیَ اللہُ عنہ سے سخت کلامی کی مگر آپ نے خاموشی اختیار فرمائی، یہ دیکھ کر کسی نے کہا: اگر آپ چاہیں تو اسے عبرت ناک سزا دے سکتے ہیں، فرمایا:مجھے اس بات سے حیا آتی ہے کہ میری رِعایا میں سے کسی کی غلطی کی وجہ سے میرا حِلم (یعنی قوت برداشت) کم ہو حوالہ درج ذیل ہے حلم معاویہ لابن ابی الدنیا، ص22 از ابی بکر عبداللہ بن محمد بن عبید بن سفیان رحمتہ اللہ علیہ متوفی 781ھ
  7. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو الحسن على بن بسام الشنترينى رحمة الله علیہ متوفٰی۵٤٢ھ صلح امام حسن مجتبی رضی اللہ عنہ کے بعد ) تمام مسلمانوں کا کاتبِ وحی ، صہر مصطفٰے ﷺ ( یعنی خسر رسول ﷺ ) ردیفِ حضور ﷺ حضرت معاویہ بن ابی سفیان رضی الله عنہما پر اجماع و اتفاق ہو گیا ۔ پس وہ ضبط امورِ خلافت ، نرمئ حکومت و ولایت جہاد کفار اخذ و وصول غیمت و فئ ، قیام عدل اور بخشش اموال کے اس مقام تک پہنچے جو کسی مسلمان یا ذمی کافر سے پوشیدہ نہیں حوالہ درج ذیل ہے الذخيرة فى محاسن أهل الجزيرة ، لامام ابى الحسن على بن بسام الشنترينى ، تحت " فصل في ذكر وزير الكاتب ابى
  8. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو طالب محمد بن علی بن عطیہ المکی الحارثی رحمة الله علیہ متوفٰی۳٨٦ھ حضرت امام احمد بن حنبل رحمة الله علیہ کا عبید الله بن موسی عبسی کے ہاں بہت زیادہ آنا جانا تھا پھر آپ کو اس کا بدعتی ہونا معلوم ہوا مثلاً آپ سے عرض کی گئی کہ وہ حضرت علی المرتضی رضی الله عنہ کو حضرت عثمان غنی رضی الله عنہ سے افضل مانتا ہے اور یہ بھی عرض کیا گیا کہ اس نے حضرت امیر معاويہ رضی الله عنہ کا تذکرہ غیر موزوں الفاظ میں کیا تو امام احمد بن حنبل رحمة الله علیہ نے اس کے پاس نہ صرف آنا جانا چھوڑ دیا بلکہ اس سے جتنی احادیث حاصل کی تھیں سارہ مسوّدہ چاک
  9. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو القاسم هبة الله بن الحسن بن منصور اللالكائی الطبری الشافعى رحمة الله علیہ متوفٰی٤١٨ه‍ انس بن مالک رضی الله عنہ سے روایت ہے کہ حضرت ام حرام بنت ملحان رضی الله عنہا فرماتی ہیں کہ رسول الله ﷺ ہمارے یہاں آئے اور سو گئے پھر ہنستے ہوئے اٹھے ۔ میں نے کہا : یا رسول الله ﷺ! میرے ماں باپ آپ پر قربان ہوں ، کس چیز نے آپ کو ہنسایا ؟ آپ نے فرمایا : میں نے اپنی امت میں سے ایک جماعت دیکھی جو اس سمندری ( جہاز ) پر سوار تھے ، ایسے لگ رہے تھے جیسے بادشاہ تختوں پر بیٹھے ہوئے ہوں ، میں نے کہا : الله تعالی سے دعا فرما دیجئیے کہ الله تعالی مجھے ب
  10. اس میں روافض کا رد ہے وہ اپنی بدگمانی و بد اعتقادی کے سبب اہل سنت کے بارے میں یہ گمان کرتے ہیں کہ وہ اہل بیت سے بغض رکھتے ہیں ۔ یہ اُن کی بد گمانی ہے اہل حق ( یعنی اہل سنت ) تمام صحابہ اور تمام اہل بیت کی عزت و ناموس کی حفاظت کرتے ہیں ۔ خوارج کی طرح نہیں ہیں جو اہل بیتِ نبوت کے دشمن ہیں اور روافض کی طرح بھی نہیں جو جمہور صحابہ کرام اور اکابر امت سے عداوت رکھتے ہیں ۔ حوالہ درج ذیل ہے مرقاة المفاتيح شرح مشكاة المصابيح ، لامام ابى الحسن على بن سلطان محمد القاري الحنفي ، كتاب المناقب ، تحت " باب مناقب القريش و ذكر القبائل ، جلد 11 ص 135 ، مطبوعة دار الكتب العلمية بيروت ، طبع اول ١٤٢٢ه‍/٢٠٠١
  11. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو القاسم محمد بن احمد بن جُزَیّ الكلبى الغرناطی المالکی رحمة الله علیہ متوفٰی۷٤١ھ جہاں تک حضرت علی المرتضی و حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہما اور دونوں میں سے ہر ایک کا ساتھ دینے والے اصحاب رضی الله عنہم کے درمیان مشاجرت و اختلاف کا تعلق ہے تو زیادہ مناسب یہ ہے کہ اس نزاع کے ذکر سے زبان کو روکا جائے اور ان صحابہ کرام رضی الله عنہم کا ذکر کلمات خیر سے کیا جائے اور ان کیلئے عمدہ تاویل تلاش کی جائے کیونکہ یہ معاملہ اجتہادی تھا اس میں حضرت علی المرتضی رضی الله عنہ اور ان کے ساتھی حق پر تھے کیونکہ انہوں نے اجتہاد کیا اور صحیح فیصلے
  12. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام جمال الدين ابو زكريا يحيى بن يوسف بن یحیی بن منصور الانصاری الصرصری الحنبلی رحمة الله علیہ متوفٰی٦۵٦ھ یہ بھی فضیلت کی دلیل ہے ، کہ میرے عقیدہ کے مطابق ، حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ کا ردیفِ مصطفٰے ﷺ ہونا بھی باعثِ فضیلت ہے اس کی فضیلت ضائع نہ جائے گی ۔ وہ کاتبِ وحی تھے صاحبِ حلم تھے اور ان کی بہن مصطفےٰ کریم ﷺ کے ساتھ جاوداں جنت میں ثمرات جنت سے لطف ہو رہی ہیں ۔ ہر صحابی کیلئے فضیلت ہے جس نے حضور اکرم ﷺ کا دیدار کیا اور اس کی یہ فضیلت دوسروں پر کامیابی و نعمت کے لحاظ سے ایسی ہے کہ اس کی طمع نہیں کی جاسکتی ۔ اور اصحاب ن
  13. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام محمد بن احمد بن سالم بن سليمان السفارينى الحنبلى رحمة الله عليہ متوفٰی۱۱۸۸ھ ناظم رحمه الله و رضی الله عنہ فرماتے ہیں و خالنا معاویہ ) ہمارے ماموں حضرت امیر معاویہ بن ابی سفیان رضی الله عنہما : حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ کو خال المؤمنین کے نام سے موسوم کرنے کی وجہ یہ ہے کہ آپ نبی اکرم ﷺ کی زوجہ محترمہ ام المومنین ام حبیبہ رضی الله عنہا کے بھائی ہیں اس لئے آپ پر خال المومنین کا اطلاق کیا کیونکہ ماں کا بھائی اس کے بیٹے کیلئے ماموں ہوتا ہے ۔ صحیح یہ ہے کہ حضرت ام حبیبہ رضی الله عنہا کا نام رملہ تھا ایک قول یہ ہے کہ ان کا
  14. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو اسحاق جمال الدين محمد بن ابراهيم بن يحيى الكتبى المعروف بالوطواط رحمة الله علیہ متوفٰی۷۱۸ھ حضرت امیر معاویہ بن ابی سفیان رضی الله عنہما بہت زیادہ سخی اصحاب رسول ﷺ میں سے تھے حضرت عبد الله بن عمر رضی الله عنہما فرماتے ہیں : میں نے حضور انور ﷺ کے بعد حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ سے زیادہ سخی نہیں دیکھا ۔ آپ رضی الله عنہ پہلے شخص ہیں جس نے صلہ ( انعام ) میں لاکھوں دیئے ، آپ رضی الله عنہ امام حسن مجتبی ، امام حسین اور حضرت عبد الله بن جعفر رضی الله تعالی عنہم کو عطا کرتے تھے … حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ کی اس عطا ( داد و
  15. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام شمس الدین ابو عبد الله محمد بن احمد بن عثمان الشافعی رحمة الله علیہ متوفی٧٤٨ھ حضرت قتادہ رضی الله عنہ فرماتے ہیں : اگر تم حضرت امیر معاويہ رضی الله عنہ جیسے کام کرنے لگو تو لوگ پکار اٹھیں گے یہ مہدی ہے ۔ احمد بن حواس کہتے ہیں ۔ مجھے ابو ہریرہ المکتب نے بتایا کہ اعمش کے ہاں حضرت عمر بن عبد العزیز رضی الله عنہ اور ان کے عدل و انصاف کا ذکر چل پڑا تو اعمش نے کہا : اگر تم حضرت امیر معاويہ رضی الله عنہ کا عہد خلافت دیکھ لیتے تو پھر کیا ہوتا ؟ لوگوں نے عرض کیا : کیا آپ حضرت امیر معاويہ رضی الله عنہ کی بردباری کے بارے میں فرما ر
  16. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام بدر الدین ابو محمد محمود بن احمد العینی رحمة الله علیہ متوفٰی۸۵۵ھ اہل سنت کا برحق موقف یہ ہے کہ صحابہ کرام رضی الله عنہم کے اختلافات سے کنارہ کشی اختیار کی جائے ، ان سے حسن ظن رکھا جائے اور ان کے لیے عذر تلاش کیا جائے ، اور یہ کہ وہ لوگ مجتہد اور تاويل کرنے والے تھے ، انہوں نے نہ ہی کسی معصیت کا قصد کیا اور نہ ہی دنیا داری کا ۔ حوالہ درج ذیل ہے عمدۃ القاری شرح صحیح بخاری ، لامام بدر الدين ابى محمد محمود بن احمد العينى ، كتاب الإيمان ، تحت " باب " وَاِنۡ طَآئِفَتٰنِ مِنَ الۡمُؤۡمِنِيۡنَ اقۡتَتَلُوۡا فَاَصۡلِحُوۡا بَيۡنَ
  17. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام شهاب الدين احمد بن محمد بن على بنحجر الهيتمى الشافعى رحمة الله علیہ متوفی۹۷٤ھ حضرت امام اعظم ابو حنیفہ رضی الله عنہ سے حضرت علی المرتضی و حضرت امیر معاويہ اور مقتولین صفین رضی الله عنہم کے بارے میں سوال کیا گیا تو آپ نے فرمایا : مجھے خوف معلوم ہوتا ہے کہ الله تعالی کے پاس ایسا جواب لے کر جاؤں جس کے بارے میں مجھ سے سوال ہو اور اگر خاموش رہتا ہوں تو اس سے سوال نہ ہوگا تو جس کیساتھ میں مکلف ہوں اس میں مشغول ہونا زیادہ بہتر ہے ۔ حوالہ درج ذیل ہے الخيرات الحسان فى مناقب الامام الاعظم ابى حنيفة النعمان ، لامام شهاب ال
  18. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از شیخ اکبر امام ابو بکر محی الدین محمد بن علی المعروف ابن عربی رحمة الله علیہ متوفٰی٦٣٨ه‍ کاتبین رسول ﷺ : نبی اکرم ﷺ کیلئے ( وحی و دیگر امور کی ) کتابت کرنے والے اصحاب رضی الله عنہم حسب ذیل ہیں : ١_حضرت عثمان ٢_حضرت علی ٣_حضرت ابی بن کعب ٤_حضرت زید بن ثابت ۵_حضرت معاویہ ٦_حضرت خالد ابن سعید بن العاص ٧_حضرت ابان بن سعید ٨_ حضرت علاء بن الحضرمی ٩_ حضرت حنظلہ بن الربیع ١٠_ حضرت عبد الله بن سعید بن ابی سرح ، حضرت عثمان کے رضاعی بھائی یہ سب اصحاب رضی الله عنہم وحی کے کاتبین تھے ۔ ( دیگر امور کے کاتبین کی تفصیل اس طرح ہے ) حضرت زبیر بن عوا
  19. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام شمس الدین ابو عبد اللہ محمد بن احمد بن عثمان الذہبی رحمة الله علیہ متوفی۷٤٨ه‍ صحیحین میں ہے کہ نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : الله تعالی فرماتا ہے : جو شخص میرے کسی دوست سے دشمنی کرتا ہے میں اسے لڑائی کا چیلنج کرتا ہوں ۔ اور رسول الله ﷺ نے فرمایا : میرے صحابہ کو گالیاں نہ دو اس ذات کی قسم! جس کے قبضہ قدرت میں میری جان ہے اگر تم میں سے کوئی ایک احد پہاڑ کے برابر سونا خرچ کرے تو ان میں سے ایک مد اور اس کے نصف کو نہیں پہنچ سکتا ۔ اور نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : میرے صحابہ کے بارے میں الله تعالی سے ڈرو میرے بعد ان کو نشانہ نہ بنانا پس جس نے ان
  20. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام اكمل الدين محمد بن محمد البابرتى رحمة الله عليہ متوفٰی۷۸٦ھ ہم رسول الله ﷺ کے صحابہ سے محبت کرتے ہیں اور ان میں کسی ایک کی محبت میں افراط نہیں کرتے ، نہ ہی ان میں کسی سے بیزاری کرتے ہیں ۔ ہم ان سے بغض رکھتے ہیں جو ان سے بغض رکھے اور ان کے بارے میں برا ذکر کرے ۔ ہم ان کا ذکر صرف خیر کے ساتھ کرتے ہیں ۔ ان کی محبت دین ہے ، ایمان ہے اور احسان ہے اور ان کے ساتھ بغض کفر ہے نفاق ہے اور سرکشی ہے ۔ ہم ان سے محبت اس لیے کرتے ہیں کہ الله ان سے راضی وہ الله سے راضی ہیں ۔ اور ان کی شان تورات ، انجیل اور قرآن مجید میں اس طرح بیان فرمائی : محم
  21. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از حضرت شیخ عبد الحق محدث دہلوی رحمة الله علیہ متوفی۱۰۵۲ھ تمام صحابہ کرام قطعی طور پر جنتی ہیں اس ( یعنی ان کو جہنمی کہنے ) سے رسول الله ﷺ کی تنقیص شان لازم آتی ہے کیونکہ آپ ﷺ کو پوری انسانیت کی طرف مبعوث فرمایا گیا ان کی راہنمائی فرمانا اور انہیں کفر و ضلالت سے نکالنا آپ ﷺ کی بعثت کا مقصد ہے ، اس سے یہ لازم آئے گا کہ نبی اکرم ﷺ کے صحابہ کرام میں چھ یا سات کے علاوہ سب کے سب ہدایت نہ پا سکے اور نہ ان کا ایمان ہے خاتمہ ہوا ، ایسے کلمات ادا کرنے سے ہم الله تعالی کی پناہ مانگتے ہیں ۔ اس لیے اہل سنت و جماعت کا اجماع ہے کہ ہر مسلمان پر واجب ہ
  22. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو اسحاق ابراھیم بن علی بن یوسف بن عبد الله فیروز آبادی الشیرازی رحمة الله علیہ متوفٰی٤٧٦ه‍ سوال : اگر کہا جائے کہ حضرت علی المرتضی اور حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہما کے درمیان جو اختلاف و نزاع ہوا اس میں حق ان کے ساتھ تھا جو ان دونوں سے تعلق رکھتے تھے ؟ جواب : ان کو جواب دیا جائے گا کہ اس مسئلہ میں علماء کا اختلاف ہے ۔ پس کچھ کہتے ہیں کہ حق حضرت علی المرتضی رضی الله عنہ کے ساتھ تھا کیونکہ نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : علی حق پر ہیں اور حق علی کے ساتھ جہاں پھریں ۔ کچھ علماء فرماتے ہیں : کہ ان دونوں میں سے ہر ایک مجتہد مصیب تھا
  23. عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از پیر سید محمد مقصود علی شاہ بخاری رحمة الله علیہ | متوفٰی١٩٨٨ء پیر سید محمد مقصود علی شاہ بخاری رحمة الله علیہ کی سوانح حیات پر مشتمل کتاب " جمال مقصود " میں درج ہے کہ : ایک مرتبہ آپ رحمة الله علیہ کی مجلس عالیہ میں جنگ جمل کا تذکرہ ہوا آپ نے فرمایا : کہ میرا گزر اس میدان سے ہوا جہاں یہ جنگ لڑی گئی ۔ دوسرے لوگوں کی طرح میرے دل میں بھی خیال آیا کہ یہ جنگ کیوں اور کیسے لڑی گئی؟ ابھی یہ سوچ ہی رہا تھا کہ اچانک بڑی گرج دار آواز مجھے سنائی دی کہ کوئی کہنے والا کہہ رہا ہے " خبر دار اس بارے میں دوبارہ نہ سوچنا ورنہ ایمان کی دولت سے محروم ہو
×
×
  • Create New...