Jump to content
IslamiMehfil

Search the Community

Showing results for tags 'فتنہ الیاس گھمن'.

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Urdu Forums
    • Urdu Literature
    • Faizan-e-Islam
    • Munazra & Radd-e-Badmazhab
    • Questions & Requests
    • General Discussion
    • Media
    • Islami Sisters
  • English & Arabic Forums
    • English Forums
    • المنتدی الاسلامی باللغۃ العربیہ
  • IslamiMehfil Team & Support
    • Islami Mehfil Specials
  • Arabic Forums

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


AIM


MSN


Website URL


ICQ


Yahoo


Jabber


Skype



Interests


Found 7 results

  1. بطورِ ثبوت اصل کتاب کی تصاویر بھی لگا دیں ہیں نیچے موجود ہیں ان کی یہی دینی غیرت تھی کہ پاکستان کے معروف عالم دین الیاس گھمن کی صفائی میں دارالعلوم دیوبند نے اپنا موقف ظاہر کیا اور اعترافات سے مملو الفاظ استعمال کئے تو فوراً ان کا خط دارالعوام پہنچ گیا انہوں نے دارالعوام سے سوال کیا کہ آپ ایک شخص کی تعریف کیسے کر سکتے ہیں جس پر بدعنوانیوں کے الزامات ہیں جس کی سابقہ اہلیہ ( سمیعہ بنت مفتی زین العابدین ) نے ان کی اخلاقی کمزوریوں کا راز فاش کر دیا ہے جو اپنی بیگم کی بچیوں (یعنی اپنی بیٹیوں ) سے خراب رشتے ( یعنی زنا ) میں پکڑا گیا ہے جس پر مولانا ابوبکر غازی پوری نے دوماہی زم زم کے اداریہ میں
  2. نوٹ : تحریر میں موجود حوالہ جات کا اسکین نیچے موجود ہے اب ہم قرآن عظیم کی طرف نظر کرتے ہیں یہ اللہ رب العزت وہ کلام ہے جسے پہاڑ پہ نازل کیا جاتا تو پہاڑ ریزہ ریزہ ہوجاتا اور میں پیش کرتا ہوں پاک کون ہے ناپاک کون ہے آسمان کی طرح بلند کون ہے میں تھانوی کا ایک ترجمہ پیش کرتا ہوں لن تنالوالبر : سورۃ آل عمران : آیت 142 اَمۡ حَسِبۡتُمۡ اَنۡ تَدۡخُلُوا الۡجَنَّۃَ وَ لَمَّا یَعۡلَمِ اللّٰہُ الَّذِیۡنَ جٰہَدُوۡا مِنۡکُمۡ وَ یَعۡلَمَ الصّٰبِرِیۡنَ ﴿۱۴۲﴾ (ترجمہ بیان القرآن (تھانوی : ہاں کیا تم یہ خیال کرتے ہو کہ جنت میں جا داخل ہوگے حالانکہ ہنوز اللہ تعالیٰ نے ان لوگوں کو تو
  3. نوٹ : تحریہ میں موجود حوالہ جات کا اسکین نیچے موجود ہے 2 اعتراض نمبر 2الیاس گھمن کے اسی کتاب صفحہ 61 پہ الزام اعتراض رکھنے کی کوشش کی ہے کہ اعلیٰ حضرت کو علم نہیں تھا بغیر علم کے مجدد تھے یعنی بہترین عالم نہیں لیکن انکے ماننے والے بغیر علم کے لوگ انہیں امام ابو یوسف اور امام محمد رضی اللہ عنہم کا دعویٰ کرتے تھے اور یہ کہتے تھے میں خدا کی قسم کھاکر کہتا ہوں کہ اس فتویٰ کے امام ابو حنیفہ نعمان بن ثابت رضی اللہ عنہ دیکھتے تو یقیناً ان کی آنکھیں ٹھنڈی ہوتی تیں اور اس کے مؤلف کو اپنے اصحاب امام ابو یوسف اور امام محمد کے زمرے میں شمار فرماتے) یہ ہے تمہارا اعتراض گھمن مجھے حیرت ہ
  4. نوٹ : تحریہ میں موجود حوالہ جات کا اسکین نیچے موجود ہے یہ ہے آپ کے تھانوی آپ کے مجدد کے کارنامے تھے ایک ایسا زمانہ آیا پوری امت کو مریض کردیا حوالہ نمبر تین لئجیے بچپن تو بچپن ہے 📗کتاب کا نام ہے مجالس حکیم الامت ص57 لکھنے والا مولانا مفتی شفیع ہے تھانوی کا خلیفہ ہے اس میں آپ کے تھانوی کیا لکھتے ہیں سنیں لکھتے ہیں فرمایا کہ میں نے اپنے لوگوں کو ممانعت کردی تھی کہ تصنیف کے کمرہ میں،جہاں میں تنہا ہوتا ہوں کسی نو عمر لڑکے کو نہ بھیجا کریں مجھے اپنے نفس پر اعتماد نہیں اسکا اثر یہ ہوا کہ خانقاہ کے سب لوگ لڑکوں سے پرہیز اور احتیاط کرنے لگے) تھانوی بڑھاپے کے زمانے میں
  5. نوٹ : تحریر میں موجود حوالوں کا اسکین نیچے موجود ہے میں اعتراضات جوابات پیش کرنے سے پہلے میں مجدد دیوبندیت اشرف تھانوی کی ایک تحقیق پیش کرتا ہوں جب تھانوی کی تحقیق اتنی زبردست ہے تو الیاس گھمن کی تحقیق کتنی زبردست ہوگی کتاب کا نام ہے 📗ملفوظات حکیم جلد 3 صفحہ 255 ملفوظ نمبر 410 تھانوی کہتا ہے ہمارے حضرت مولانا محمد یاقوب صاحب اس اعتقاد کی ایک مثال بیان فرمایا کرتے تھے ہے تو فحش مگر ہے بلکل چسپاں فرمایا کرتے تھے کہ عوام کے عقیدہ کی بلکل ایسی ہی حالت ہے کہ جیسے گدھے کا عضو مخصوص بڑھتا ہے تو بڑھتا ہی چلا جاتا ہے اور جب غائب ہوتو بالکل پتہ ہی نہیں تو اب یہ بات مثل آفتاب روشن
×
×
  • Create New...