Sign in to follow this  
Followers 0
Shizz

Kia Murday Suntay Hain...................

188 posts in this topic

Meray bhai nay aik rivayat Adab ul mufrad se paish ki Bagair taqeeq k sahih hai ya zaeef ... rivayat hai

 

امام بخاری کتاب الادب المفرد می روایت کرتے ہیں ::حضرت عبداﷲ بن عمر رضی اللہ تعالٰی عنہماکا پاؤں سوگیا ، کسی نے کہا انہیں یاد کیجئے جو آپ کو سب سے زیادہ محبوب ہیں۔ حضرت نے باآواز بلند کہا۔

یا محمداہ ! فوراً پاؤں کھل گیا۔

 

(الادب المفرد حدیث ۹۶۴ s ص ۲۵۰)

meray bhai yeh rivayat aur is jasi baki sab rivaton ki tahkreej mai yahan send kar raha hun aur Sanad sahih hai ya zaeef woh b parh lain

 

۔ یہ روایت کتاب الأذکار للنووی میں یوں ذکر ہے :

(بابُ ما يقولُه إذا خَدِرَتْ رِجْلُه)

916 - روينا في كتاب ابن السني عن الهيثم بن حنش قال: " كنَّا عندَ عبد الله بن عمر رضي الله عنهما فخدِرَتْ رجلُه، فقال له رجل: اذكر أحبَّ الناس إليك، فقال: يا محمّدُ (صلى الله عليه وسلم) ، فكأنما نُشِطَ من عِقَال " .

917 - وروينا فيه عن مُجاهد قال: " خَدِرَتْ رِجلُ رجلٍ عند ابن عباس، فقال ابنُ عباس رضي الله عنهما: اذكر أحبَّ الناس إليك، فقال: محمّدٌ (صلى الله عليه وسلم) فذهبَ خَدَرُه .

یعنی امام نووی نے یہ روایت بغیر سند ذکر کی ہے اور ابن السنی کا حوالہ دیا ہے ۔ سادہ سے لفظوں میں یوں سمجھیں کہ اس روایت کا اصل حوالہ امام نووی کی کتاب الأذکار نہیں بلکہ ابن السنی کی کتاب عمل الیوم واللیلۃ ہے ۔

اب ملاحظہ فرمائیں عمل اليوم والليلة سلوك النبي مع ربه عز وجل ومعاشرته مع العباد میں أحمد بن محمد بن إسحاق بن إبراهيم بن أسباط بن عبد الله بن إبراهيم بن بُدَيْح، الدِّيْنَوَريُّ، المعروف بـ «ابن السُّنِّي» (المتوفى: 364هـ) نے اس روایت کو کس سند کے ساتھ ذکر کیا ہے :

فرماتے ہیں : حَدَّثَنَا جَعْفَرُ بْنُ عِيسَى أَبُو أَحْمَدَ، ثنا أَحْمَدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ رَوْحٍ، ثنا سَلَّامُ بْنُ سُلَيْمَانَ، ثنا غِيَاثُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُثْمَانَ بْنِ خَيْثَمٍ، عَنْ مُجَاهِدٍ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا قَالَ: خَدِرَتْ رِجْلُ رَجُلٍ عِنْدَ ابْنِ عَبَّاسٍ، فَقَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ: " اذْكُرْ أَحَبَّ النَّاسِ إِلَيْكَ. فَقَالَ: مُحَمَّدٌ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ. فَذَهَبَ خَدَرَهُ " ۱/۱۴۱(۱۶۹)

اور دوسری روایت یوں نقل کرتے ہیں :

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ خَالِدِ بْنِ مُحَمَّدٍ الْبَرْذَعِيُّ، ثنا حَاجِبُ بْنُ سُلَيْمَانَ، ثنا مُحَمَّدُ بْنُ مُصْعَبٍ، ثنا إِسْرَائِيلُ، عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ، عَنِ الْهَيْثَمِ بْنِ حَنَشٍ، قَالَ: كُنَّا عِنْدَ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا، فَخَدِرَتْ رِجْلُهُ، فَقَالَ لَهُ رَجُلٌ: " اذْكُرْ أَحَبَّ النَّاسِ إِلَيْكَ. فَقَالَ: يَا مُحَمَّدُ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ. قَالَ: فَقَامَ فَكَأَنَّمَا نَشِطَ مِنْ عِقَالٍ ۱/۱۴۱(۱۷۰)

اسی طرح کی ایک اور روایت بھی ابن السنی نے ان دونوں روایات سے قبل ذکر کی ہے :

حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ الْأَنْمَاطِيُّ، وَعَمْرُو بْنُ الْجُنَيْدِ بْنِ عِيسَى، قَالَا: ثنا مُحَمَّدُ بْنُ خِدَاشٍ، ثنا أَبُو بَكْرِ بْنُ عَيَّاشٍ، ثنا أَبُو إِسْحَاقَ السَّبِيعِيُّ، عَنْ أَبِي شُعْبَةَ، قَالَ: كُنْتُ أَمْشِي مَعَ ابْنِ عُمَرَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا، فَخَدِرَتْ رِجْلُهُ، فَجَلَسَ، فَقَالَ لَهُ رَجُلٌ: اذْكُرْ أَحَبَّ النَّاسِ إِلَيْكَ. فَقَالَ: «يَا مُحَمَّدَاهُ فَقَامَ فَمَشَى» ۱/۱۴۱ (۱۶۸)

ان مرویات میں سے پہلی اور تیسری روایت میں ابو اسحاق السبیعی الہمدانی مدلس ہے اور وہ " عن " کا لفظ بول کر روایت کر رہے ہیں اور مدلس کا عنعنہ مردود ہوتا ہے لہذا یہ دونوں روایات ابو اسحاق کے عنعنہ کی وجہ سے ضعیف ہیں ۔

اور دوسری روایت میں غیاث بن ابراہیم کذاب روای ہے ۔ لہذا یہ روایت موضوع یعنی من گھڑت اور جھوٹی ہے ۔

اس وضاحت سے معلوم ہوا کہ ان روایات سے استدلال کرنا قطعا حرام ہے !

ثانیا : یہ روایات موقوف یا مقطوع ہیں اور موقوفات ومقطوعات دین میں حجت نہیں ہیں ۔ لہذا ان سے استدلال کرنا نا جائز ہے ۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

Hadith (Musnad e abi yaalaa ki vol3 pg 379) ko ap log SAHIH HADITH sahih hadith keh rahe hain lekin ye Rivayat sakht Zayeef hai, imam Zahbi iss Rivayat k Raavi Hajjaaj bin Aswad k halaat beyaan kertay huye farmatay hain,

" حجاج بن الاسود.

عن ثابت البنانى.

نكرة.

ما روى عنه فيما أعلم سوى مستلم بن سعيد، فأتى بخبر منكر، عنه، عن

"أنس في أن الانبياء أحياء في قبورهم يصلون.

(Meezaan ul Aitedaal, jild:1, Page:460)

" Hajjaaj Bin Aswad jo k Sabit ul Bannani se munkar Rivayat Beyaan kerta hai, jo mein jaanta hoon uss mein iss ki aur koi Rivayat nahi hai Sivaye uss " Munkar " Rivayat k jo k ye Mustalim Bin Saeed k Hawalay se beyaan kerta hai k " Ambiya Apni Qabron mein Zinda hain, namaaz parhtay hain."

post-2742-0-16148000-1335966873.jpg

post-2742-0-45890400-1335966886.jpg

post-2742-0-85359300-1335966917.jpg

post-2742-0-36576200-1335966929.jpg

post-2742-0-34328500-1335966941.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

koi insan ye dawaah nhi kr sakta k wo apni lathi zameen pr marega or wahan se chashmah phhoot niklayga, koi ye nhi keh sakta k uski lathi sanp bann sakti hai,koi apna hath graibaan mai dalay or wo safaid or chamkeela ho jae aisa bhi namumkin hai,koi ye nhi kahega k usay parindon ki bolian ati hain,ya hawa us k hukm k tabay ho jae or jahan wo jana chahay usay le jae koi apna paaon zameen pr maaray or wahan se pani nikal aye,

koi bewaqoof hi hoga jo isay try krne ki koshish krega ku sb jantay hain ye sb muaajzaat hain jo nabion k sath khas hain nabi (s.A.W)ne murdon ko

sunaya to wo bhi aik moajzah tha agar ap ye sachtay hain k hr koi aisa kr sakta hai to baqi moazat bhi try kr k dekhyega...

 

tafseer to mai ne bhi paish ki thi magar ap ne ye keh kr usay jhutla dia k apki tafseer apko mubarak...mai ye bat pehlay bhi keh chuki hon k agar murday sunat hotay to kafiron ko kabhi in se mushbihat nhi di jati..

hadees jiska ap zikr kr rhay hain us mai to ye kaha gaya hai k murda jane walon ki ahat sunta hai to ye to aik khas halat ka zikar hai aap isay aam ku kr rhay hain, quran mai hai k walidain ki ata,at hm pr farz kr di gai hai magar quran mai hi hme ye bhi pata chalta hai agar walidain shirk ka hukam dain to wahan unki bat nhi maani jae, yani waliden ki ata,at farz hai magar shirk k muamlay mai unki bat na mani jae...isi tarah quran mai hai murday nhi suntay magar hadees mai aik khas halat ka zikar kr dia gaya hai murda jane walon k juton ki ahat sunta hai...

 

ab mere is sawal ka jawab dijye k jang e badar k moqay pr sahaba ne tajjub kyon kia jb k ap k aqeeday k mutabiq murday suntay hain, to kia sahaba karaam ye bat nhi jantay thay jo unho ne tajjub kia, or nabi (S.A.W) ne ye ku kaha k ye sunn rhay hain.. ye kyon nhi kaha k ye suntay hain, is bat se to saaf patya lag rha hai k ye murdon ko sunana sirf usi waqt k lye tha,

ap ne kaha k namaz mai jo nabi S.A.W pr salam bheja jata hai wo usay suntay hain, to kia jawab bhi dete hain? or agar suntay hain to uski hadees bhi bayan krye...

 

 

1) mene kab kaha ke koi insaan lathi mare to pani nikle ga, jitni bhi apne ayat post ki wo sab maojzaat hai, theek hai, mene kab inkaar kiya….

Allah jise chahe usko in sab ka ikhtiyaar de sakta hai… ye to topic hai hi nahi…

 

2) aap ne kaha ke kafiro ko pukarne wala ye moajza hai, (halan ke isko aj tak kisi ne moajza nahi kaha, ye nayi baat hai, opps biddat..) to shizz sahiba ye moajza mere aqa sallal la ho alaihe wassalam ne sab ko dia hai, kese, aese

qabrustan ja kar log kya kehte hai, Assalamo alaikum ya alhe qaboor, lo murdo ko pukarna to aap ka mera, hum sab ka hi moajza hua, kamal ki baat hai…

 

3) aur ha dosri hadees apne khud post ki thi pichli post me, murda qadmo ki awaaz sunta hai. Kiske awaam ki,
ab yaha bhi moajza agaya kya
….. iska jawab hi nahi dia,

 

4) to sabit hua ke murdo ko pukarna moajza nahi…. Sarkar sallal la ho alaihe wassalam ne pukara, yani ke jaiz hai,

 

5) kafiro ko inse mushabihat nahi di, wo ayat kafiro ke bare me hi hai, murdo ke bare me nahi…

 

6) apne kaha ke, “murda jane walon ki ahat sunta hai to ye to aik khas halat ka zikar hai aap isay aam ku kr rhay hain”
yani ke murda sunta hai
, lekin aap to mana karrahi hai, aur sarkar ke ppukarne ko moajza, to yaha kaun sa moajza hai, abhi tak yehi sabit ho raha hai ke murda sunta hai…. Har hadees se.. Alham do lillah…

 

7) aur wese bhi iska jawab qabrustan me ja kar salam karne se ho gaya hai, ok agar khaas halat hoti to salam ka hukm nahi hota… aur khaas halat ka kahi zikr nahi hai, apki apni baat apko mubarak ho…

 

apne jo sawaal kiye unka jawab….

1) zahir hai nahi jante the lekin uske baad jan gaye the ke murde sunte hai…

2) nabi sallal la ho alaihe wassalam ne ye nahi kaha ke”sunrahe hai” balke kaha hai ”sunta hai” dono hadeeso me yehi hai, pichli post dekh le apni, ok

3) “is bat se to saaf patya lag rha hai k ye murdon ko sunana sirf usi waqt k lye tha” bilkul ghalat, musalman murdo ko salam karta hai, jab chahe, app apna dekh le,

4) akhri sawaal apne achcha kiya, ke mere aqa salam sunte hai ya nahi namaz me. Lo hadees “jab namazi ye alfaz kahe ga jo attehiyaat me kahe jate hai to, uska salam zameeno aasman ke har saleh bande ko pohanch jata hai (muslim j1)”

 

murdo ko kisi bhi waqt pukar sakte hai, abhi tak iske against koi daleel nahi ayi hai,, samjhi…

Share this post


Link to post
Share on other sites

gayab insan ko hazir o nazir jan kr pukarna shirk hi hai...

gayab insaan ko pukarna to shirk nahi hai na, iska jawab dede plzzzzz

hazir o nazir to ye hai ke wo banda hamari awaaz sun raha hai, ok

Share this post


Link to post
Share on other sites

Shizz yeh btayn keh yeh raavi kis darjay k mudallas hain jin ke riwayat aap nay mardood likhi hay.

Aap kis kis sanad aur kis kis ravi par jarrah karain ge??

Jazak Allah Toheedi bhai

1.Sharrah Al Shifa

sharalshif.jpg

sharalshif1.jpg

 

2.Tabqat Al Kabeer

tabqaat-sad.jpg

tabqaat-sad1.jpg

 

For Chain(Sanad)

tk.jpg

tahdeebal%20kamaal1.jpg

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

Posted (edited) · Report post

Meray bhai nay aik rivayat Adab ul mufrad se paish ki Bagair taqeeq k sahih hai ya zaeef ... rivayat hai

 

امام بخاری کتاب الادب المفرد می روایت کرتے ہیں ::حضرت عبداﷲ بن عمر رضی اللہ تعالٰی عنہماکا پاؤں سوگیا ، کسی نے کہا انہیں یاد کیجئے جو آپ کو سب سے زیادہ محبوب ہیں۔ حضرت نے باآواز بلند کہا۔

یا محمداہ ! فوراً پاؤں کھل گیا۔

 

(الادب المفرد حدیث ۹۶۴ s ص ۲۵۰)

meray bhai yeh rivayat aur is jasi baki sab rivaton ki tahkreej mai yahan send kar raha hun aur Sanad sahih hai ya zaeef woh b parh lain

 

۔ یہ روایت کتاب الأذکار للنووی میں یوں ذکر ہے :

(بابُ ما يقولُه إذا خَدِرَتْ رِجْلُه)

916 - روينا في كتاب ابن السني عن الهيثم بن حنش قال: " كنَّا عندَ عبد الله بن عمر رضي الله عنهما فخدِرَتْ رجلُه، فقال له رجل: اذكر أحبَّ الناس إليك، فقال: يا محمّدُ (صلى الله عليه وسلم) ، فكأنما نُشِطَ من عِقَال " .

917 - وروينا فيه عن مُجاهد قال: " خَدِرَتْ رِجلُ رجلٍ عند ابن عباس، فقال ابنُ عباس رضي الله عنهما: اذكر أحبَّ الناس إليك، فقال: محمّدٌ (صلى الله عليه وسلم) فذهبَ خَدَرُه .

یعنی امام نووی نے یہ روایت بغیر سند ذکر کی ہے اور ابن السنی کا حوالہ دیا ہے ۔ سادہ سے لفظوں میں یوں سمجھیں کہ اس روایت کا اصل حوالہ امام نووی کی کتاب الأذکار نہیں بلکہ ابن السنی کی کتاب عمل الیوم واللیلۃ ہے ۔

اب ملاحظہ فرمائیں عمل اليوم والليلة سلوك النبي مع ربه عز وجل ومعاشرته مع العباد میں أحمد بن محمد بن إسحاق بن إبراهيم بن أسباط بن عبد الله بن إبراهيم بن بُدَيْح، الدِّيْنَوَريُّ، المعروف بـ «ابن السُّنِّي» (المتوفى: 364هـ) نے اس روایت کو کس سند کے ساتھ ذکر کیا ہے :

فرماتے ہیں : حَدَّثَنَا جَعْفَرُ بْنُ عِيسَى أَبُو أَحْمَدَ، ثنا أَحْمَدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ رَوْحٍ، ثنا سَلَّامُ بْنُ سُلَيْمَانَ، ثنا غِيَاثُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُثْمَانَ بْنِ خَيْثَمٍ، عَنْ مُجَاهِدٍ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا قَالَ: خَدِرَتْ رِجْلُ رَجُلٍ عِنْدَ ابْنِ عَبَّاسٍ، فَقَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ: " اذْكُرْ أَحَبَّ النَّاسِ إِلَيْكَ. فَقَالَ: مُحَمَّدٌ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ. فَذَهَبَ خَدَرَهُ " ۱/۱۴۱(۱۶۹)

اور دوسری روایت یوں نقل کرتے ہیں :

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ خَالِدِ بْنِ مُحَمَّدٍ الْبَرْذَعِيُّ، ثنا حَاجِبُ بْنُ سُلَيْمَانَ، ثنا مُحَمَّدُ بْنُ مُصْعَبٍ، ثنا إِسْرَائِيلُ، عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ، عَنِ الْهَيْثَمِ بْنِ حَنَشٍ، قَالَ: كُنَّا عِنْدَ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا، فَخَدِرَتْ رِجْلُهُ، فَقَالَ لَهُ رَجُلٌ: " اذْكُرْ أَحَبَّ النَّاسِ إِلَيْكَ. فَقَالَ: يَا مُحَمَّدُ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ. قَالَ: فَقَامَ فَكَأَنَّمَا نَشِطَ مِنْ عِقَالٍ ۱/۱۴۱(۱۷۰)

اسی طرح کی ایک اور روایت بھی ابن السنی نے ان دونوں روایات سے قبل ذکر کی ہے :

حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ الْأَنْمَاطِيُّ، وَعَمْرُو بْنُ الْجُنَيْدِ بْنِ عِيسَى، قَالَا: ثنا مُحَمَّدُ بْنُ خِدَاشٍ، ثنا أَبُو بَكْرِ بْنُ عَيَّاشٍ، ثنا أَبُو إِسْحَاقَ السَّبِيعِيُّ، عَنْ أَبِي شُعْبَةَ، قَالَ: كُنْتُ أَمْشِي مَعَ ابْنِ عُمَرَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا، فَخَدِرَتْ رِجْلُهُ، فَجَلَسَ، فَقَالَ لَهُ رَجُلٌ: اذْكُرْ أَحَبَّ النَّاسِ إِلَيْكَ. فَقَالَ: «يَا مُحَمَّدَاهُ فَقَامَ فَمَشَى» ۱/۱۴۱ (۱۶۸)

ان مرویات میں سے پہلی اور تیسری روایت میں ابو اسحاق السبیعی الہمدانی مدلس ہے اور وہ " عن " کا لفظ بول کر روایت کر رہے ہیں اور مدلس کا عنعنہ مردود ہوتا ہے لہذا یہ دونوں روایات ابو اسحاق کے عنعنہ کی وجہ سے ضعیف ہیں ۔

اور دوسری روایت میں غیاث بن ابراہیم کذاب روای ہے ۔ لہذا یہ روایت موضوع یعنی من گھڑت اور جھوٹی ہے ۔

اس وضاحت سے معلوم ہوا کہ ان روایات سے استدلال کرنا قطعا حرام ہے !

ثانیا : یہ روایات موقوف یا مقطوع ہیں اور موقوفات ومقطوعات دین میں حجت نہیں ہیں ۔ لہذا ان سے استدلال کرنا نا جائز ہے ۔

 

Ya Muhammada

 

kashif sahab kamal hai mene kitabul azkar se nahi ADAAB AL MUFRID ka refrence dia hai, wo aap ko nazar nahi aya kya....

 

aur ye imam bukhari ki kitab hai, aur zaif ho nahi sakti, lekin phir bhi is kitab me ye chain of narrator hai.. dekhe

 

 

حدثنا أبو نعيم قال حدثنا سفيان عن أبي إسحاق عن عبد الرحمن بن سعد قال

خدرت رجل بن عمر فقال له رجل اذكر أحب الناس إليك فقال يا محمد

 

 

aur ye sare rawi bukhari ke hi hai, agar koi problem hai in ravio me to batao, phir bukhari se bhi ye ravi nikal kar dikha dege, ok

 

 

shizz sahiba is hadees me sarkar ko pukara aur madad

 

bhi mangi hai, wo bhi Farooq e azam

(raa) ke farzand Hazrat Abdullah (raa) ne....

 

pata chala faut shuda se mangna shirk nahi islami aqeeda hai, sirf musalmano ka....

Edited by Zulfi.Boy

Share this post


Link to post
Share on other sites

Assalam o Alikum.

 

Mera tamam ahle elm hazrat say sawal hai k 'YA MUHAMMAD' or 'YA MUHAMMADA' main kia farq hai?

 

Jazak Allah.

Share this post


Link to post
Share on other sites

Ya Mohammad (saw) to Nabi Kareem ko nida/pukarny ke liye bola jata hai...or Ya Mohammadah ka matlab hai ke "Aey Allah (azw) ke Rasool (saw) humari Madad kijiye...

Share this post


Link to post
Share on other sites

salam toheedi bhai,

 

mujhy tehzibul kamal mein jo Hazrat Abdullah ibn Umar ke "Ya Mohammadah" wali Hadees ka zikr hai ghaliban jild 11 or page 212 par hai darkaar hai...

Share this post


Link to post
Share on other sites

سبحانﷲ

اعتراض 5:۔

وہ کیا ہے جو نہیں ملتا خدا سے

جسے تم مانگتے ہو اولیاء سے !

 

جواب:۔

وہ چندہ ہے جو نہیں ملتا خدا سے

جسے تم مانگتے ہو اغنیا سے

توسل کر نہیں سکتے خدا سے

اسے ہم مانگتے ہیں اولیاء سے

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

As'salamu alaikum WRB,

 

Meray Khayal may Shayad Surah Araaf Ayat 201 ki Tafseer JO kay Tafseer Ibn Kaseer may hai, Sama Mota kay aqeeday may ek daleel ho sakti hai. Is ki sanad ka baray may takhreej Shuda Tafseer Ibn Kaseer (jo kay GM ki web site per hai) bhi kuch nahi kahti. Agar Koi Bhai Is ki sanad jayyd sabit kardain to aur bhi behtar ho ga

post-5170-0-01344700-1338972403.gif

Share this post


Link to post
Share on other sites

حافظ ابن کثیر نے قد ذکرالحافظ ابن عساکر کے لفظوں سے

 

یہ بیان کیا ھے

 

اور اس سے استدلال کیا ھے۔ اور اس سے تائیدی استشہاد

 

تو ھو سکتا ھے۔

 

مگر اس پر بنیاد رکھنا مشکل ھے کیونکہ تاریخ ابن عساکر

 

میں یوں لکھا ھے:۔۔

 

یحیٰ بن أيوب الخزاعي قال سمعت من يذكر أنه كان في زمن عمر

 

یہاں ایک شخص سے ارسال ھو رھا ھے

 

اور منکرین مرسل کو حجت مانیں تو احتجاج درست ھوگا۔

Edited by Saeedi

Share this post


Link to post
Share on other sites

As'salamu alaikum WRB,

 

Is mauzu per Allama Muhammad Ashraf Siyalvi ki kitaab "Jila-ul-Sadoor Fi Sma Ahl-e-Qaboor " yaqeenan behtareen kitab shumar ki Ja sakti hai. Allama nay Quran Majeed say Nafi e Sama per paish ki janay wali aaayat ka mufassil tajziyah kiy a hai. Ye kitab Marfat.com per maujood hai.

Edited by hanafi-hanafi

Share this post


Link to post
Share on other sites

مردوں کی سماعتattachicon.gifJami ul Hadees 18.jpg

 

is hadeeth mai Hazrat Qatada ny frmaia k Murdon ko us waqat Zinda ker dia tha , to unhon ny waqti tor per sun lia .

Hadeeth ka scan ye hy .

 

jald sy jald jawab dain   shukeria  .

 

 

 

post-4572-0-38997400-1372436270_thumb.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

is hadeeth mai Hazrat Qatada ny frmaia k Murdon ko us waqat Zinda ker dia tha , to unhon ny waqti tor per sun lia .

Hadeeth ka scan ye hy .

 

jald sy jald jawab dain   shukeria  .

 

 

 

attachicon.gifg3.jpg

 

 

any reply about this post ?

Share this post


Link to post
Share on other sites

baghair sanad ke wahabi hadees ko man lete hai kya??

 

un k pass is sy barh ker our koi sanad nai hy k ye hadeeth bukhari mai hy .  

Share this post


Link to post
Share on other sites

(bis)

جناب بلیو چپس صاحب

عرض ہے کہ اس حدیث میں نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے کہ اس پروردگار کی قسم جس کے قبضہ قدرت میں میری جان ہے تم اس گفتگو کو جو میں ان سے کررہا ہوں ۔ ان سے زیادہ نہیں سنتے۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان سے تو ان کا سننا ثابت ہے۔

رہی بات حضرت قتادہ کے قول کی، جس سے آپ یہ ثابت کرنا چاہتے ہیں کہ یہ نبی پاک کی خصوصیت تھی تو عرض ہے کہ حضرت قتادہ کی وفات ۱۱۸ھ میں ہوءی ۔ وہ فن حدیث میں علامہ اور حافظ تھے، لیکن فرقہ قدریہ کے خیالات رکھتے تھے، یعنی تقدیر کے منکر تھے ۔دیکھءے تذکرۃ الحفاظ، ان کا قول اہل سنت پر کیسے حجت ہوسکتا ہے ؟  یحییِ بن سعید نے ان کو بدعتی کہا  ۔ دیکھءے تہذہب التہذیب

post-2742-0-56328200-1372572818_thumb.jpg

post-2742-0-39349500-1372572830_thumb.jpg

post-2742-0-09761000-1372572869_thumb.jpg

post-2742-0-46295700-1372572882_thumb.jpg

3 people like this

Share this post


Link to post
Share on other sites

(bis)

جناب بلیو چپس صاحب

عرض ہے کہ اس حدیث میں نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے کہ اس پروردگار کی قسم جس کے قبضہ قدرت میں میری جان ہے تم اس گفتگو کو جو میں ان سے کررہا ہوں ۔ ان سے زیادہ نہیں سنتے۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان سے تو ان کا سننا ثابت ہے۔

رہی بات حضرت قتادہ کے قول کی، جس سے آپ یہ ثابت کرنا چاہتے ہیں کہ یہ نبی پاک کی خصوصیت تھی تو عرض ہے کہ حضرت قتادہ کی وفات ۱۱۸ھ میں ہوءی ۔ وہ فن حدیث میں علامہ اور حافظ تھے، لیکن فرقہ قدریہ کے خیالات رکھتے تھے، یعنی تقدیر کے منکر تھے ۔دیکھءے تذکرۃ الحفاظ، ان کا قول اہل سنت پر کیسے حجت ہوسکتا ہے ؟  یحییِ بن سعید نے ان کو بدعتی کہا  ۔ دیکھءے تہذہب التہذیب

 

 

JazakAllah bhai .

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.