Sign in to follow this  
Followers 0
Muhammad Anwar

Molood E Kaba Kon?

10 posts in this topic

ASSALAM O ALAIKUM.

Kia farmate hain ulama e karam

main ne suna he k molood e kaba Hazzrat HAKEEM BIN HIZAM razi ALLAH anh hain na k HAZRAT ALI

Share this post


Link to post
Share on other sites

IS masla mey ikhtilaf hai Dono taraf ulama e ahle sunnat hain,is liye kisi moqif par b shidat nahi karni chahiye,واللہ اعلم

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

Jin Sahaba e Kiram(RA) ka molood e Kaba honay ka bayan hay wo is shan kay bawajood bhe Mola Syedina Ali (ra) say Afzal nahi.

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

Asslamualaikum

Mawlood  E Kaba kon? book me likha hai Imam Zahbi Alairehma ne Imam Hakim Alairehma ko Sheyi kaha hai 

Imam Hakim k baare me ulma ka kya faisla hai??

Share this post


Link to post
Share on other sites
On 8/1/2017 at 7:21 PM, MunAAm said:

Asslamualaikum

Mawlood  E Kaba kon? book me likha hai Imam Zahbi Alairehma ne Imam Hakim Alairehma ko Sheyi kaha hai 

Imam Hakim k baare me ulma ka kya faisla hai??

Wa Alaikum salam.

Bhai bary bary Aima pe aisi jarah majood hain bhai..
Imam Hakim Rehmatullah Ahl-e-Sunnat k imam thy.. Muhaddis thy.. ilm-e-hadees mein unki khidmaat ko aaj bhi Sunni, Wahabi, deobandi sabhi tasleem karty hain.
Jahan tak Mawlood-e-Kaba ka Masla hy toh Moula Ali Razi Allahu anhu k bary mein Ikhtilaaf hy..Aur jahan tak Imam Hakim Rehmatullah ki ye baat hy toh unki isi baat ko Hazrat Shah Waliullah aur dusry aima karam ne bhi naqal kiya hy..

 

Main yahan un hazrat k dalail bhi likh dyta hun jo Moula Ali (ra) ko mawlood-e-kaba tasleem karty hain..

مولود کعبہ حضرت علی 

حاکم نیشاپوری جو اہل سنت کے بزرگ علما میں شمار ہوتے ہیں اپنی کتاب مستدرک ،ج۳،ص۴۸۳ پر اس حدیث کو باسندو متواتر لکھا ہے :


لکھتے ہیں

” وَقَد تَوَاتِرَتِ الاَخبٰارُ اَنَّ فَاطِمَۃَ بِنتِ اَسَد وَلَدَت اَمِیرَ المُومِنِینَ عَلِی ابنُ اَبِی طَالِبٍ کَرَّمَ اللّٰہُ وَجہَہُ فِی جَو فِ الکَعبَۃ “

”امیر المومنین علی ابن ابی طالب کرم اللہ وجہ ،فاطمہ ابنت اسدکے بطن مبارک سے خانہ کعبہ کے اندر پیدا ہوئے “

دلیل نمبر ۲
:حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی نے اپنی کتاب ” ازالۃ الخفائ“ صفحہ ۲۵۱ پر اس حدیث کو اور واضح طور پر تحریرکیا ہے کہ حضرت علی سے پہلے اور نہ ان کے بعد کسی کو یہ شرف نصیب نہیں ہوا چنانچہ لکھتے ہیں:

” تواتر الاخبار ان فاطمۃ بنت اسد ولدت امیر المومنین علیاً فی جوف الکعبۃ فانہ ولد فی یوم الجمعۃ ثالث عشر من شہر رجب بعد عام الفیل بثلاثین سنۃ فی الکعبۃ و لم یولد فیھا احد سواہ قبلہ ولا بعدہ“

متواتر روایت سے ثابت ہے کہ امیر المومنین علی روز جمعہ تیرہ رجب تیس عام الفیل کو وسط کعبہ میں فاطمہ بنت اسد کے بطن سے پیدا ہوئے اور آپ کے علاوہ نہ آپ سے پہلے اور نہ آپ کے بعد کوئی خانہ کعبہ میں پیدا ہوا

دلیل نمبر ۳
علامہ ابن جوزی حنفی کہتے ہیں کہ حدیث میں وارد ہے :

”جناب فاطمہ بنت اسد خانہ کعبہ کا طواف کررہی تھیں کہ وضع حمل کے آثار ظاہر ہوئے اسی وقت خانہ کعبہ کا دروازہ کھلااورجناب فاطمہ بنت اسد کعبہ کے اندر داخل ہو گئیں ۔اسی جگہ خانہ کعبہ کے اندر حضرت علی پیدا ہوئے۔“ 
(تذکرت الخواص ص ۲۰)

دلیل نمبر ۴
شیخ عبد الحق محدث دہلوی:

حضرت شیخ عبد الحق محدث دہلوی اپنی کتاب ” مدارج النبوہ“ میں تحریر فرماتے ہیں: جناب فاطمہ بنت اسد نے امیر المومنین کا نام حیدر رکھا ،اس لئے کہ معنی کے اعتبار سے باپ (اسد) اور بیٹے کا نام ایک ہی رہے۔ لیکن جناب ابو طالب نےاس نام کو پسند نہیں کیا،یہی وجہ ہے کہ انھوں نے آپ کا نام ” علی 
“ رکھا۔ اور رسول خدا صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے آپ کو ”صدیق “ کہہ کر پکارا اور آپ کی کنیت ” ابو ریحانتین“ رکھی۔ ” امین، شریف، ہادی کے القاب سے آپ کو نوازا۔اس کے بعد عبد الحق بن سیف الدین دہلوی تحریر فرماتے ہیں : ” حضرت علی کی ولادت باسعادت خانہ کعبہ کے اندر ہوئی“ 
(مدارج النبوہ ج۲ ص۵۳۱)

دلیل نمبر ۵

علامہ برہان الدین حلبی شافعی:

علامہ برہان الدین حلبی شافعی نے حضرت علی ابن ابی طالب کی ولادت کے سلسلہ میں کافی طول بحث کی ہے مختصر یہ کہ حضرت علی خانہ کعبہ کے اندر پیداہوئے ۔ اس وقت حضرت رسول مقبول صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی عمرمبارک تیس سال تھی۔ 
(السیرت الحلبیہ ج۱ ص۱۳۹)

دلیل نمبر ۶
۔ علّامہ سعید گجراتی:

علامہ سعید گجراتی 

” خدا یا ! تو بہتر جانتا ہے کہ یہ بہتان دشمنان اہلبیت کی طرف سے ہے۔ دشمنان علی نے اس واقعہ کو گڑھا ہے ۔ جب کہ متواتر روایتیں دلالت کرتی ہیں کہ حضرت علی خانہ کعبہ کے اندر پیدا ہوئے۔ خدایا ! تو مجھے رسول اکرم کی سنت پر باقی رکھ اور ان کے اہلبیت کی دشمنی سے دور رکھ “ 
(الاعلام باعلام مسجد الحرام ص۷۶)

اس کے علاوہ دیوبندی مولوی اشرف 
علی تھانوی نے بھی یہ قول کیا ہے

حضرت عبدالمصطفی اعظمی نے بھی اپنی کتاب کرامات صحابہ کے صفحہ۴۴ پر حضرت علی کی 
ولادت خانہ کعبہ میں ہونے کا قول کیا ہے

شیخ سعدی فرماتے ہیں

کسے را میسر نہ شد ایں سعادت
بکعبہ ولادت بمسجدشہادت

کتاب آل رسول مصنف پیر سید خضر حسین چشتی ص۱۲۸

(۱) مستدرک حاکم نیشاپوری ،ج۳ص۴۸۳۔۵۵۰( حکیم ابن حزام کے شرح میں)و کفایۃ الطالب،ص۲۶۰
۲ کفایۃ الطالب ، ص۴۰۷
۳ ۔الفصول المہمۃ ،ص۳۰
۴ ۔ ازالۃ الخلفاءج۲ص۲۵۱
۵۔ تذکرۃ الخواص ،ص۲۰
۶۔ مناقب ابن مغازلی ،ص ۶، ۷۔الفصول المہمۃ ،ص۳۰
۸۔ محاضرۃ الاوائل ،ص۷۹
۹۔ وسیلۃ النجاۃ ،محمد مبین حنفی ،ص۶۰( چاپ گلشن فیض لکھنو )
۱۰۔ وسیلۃ المآل ،حضرمی شافعی ، ص۲۸۲
۱۱۔ تلخیص مستدرک ج۲ص۴۸۳
۱۲ غالیۃ المواعظ ،ج ۲ص۸۹ و الغدیر ،ج۶ ، ص۲۲
۱۳۔ازاحۃ الخلفاءعن خلافۃ الخلفا
،۱۴۔ مدارج النبوہ ج۲ص۵۳۱
۱۵۔ کفایۃ الطالب ، ص۴۰۷
۱۶۔ نور الابصار ، ص۸۵
۱۷۔ عبقریۃ الامام علی(ع) ،ص۴۳
۱۸ نزھۃ المجالس ،ج۲ص۴۵۴
۱۹ السیرۃ الحلبیۃ ،ج۱ص۱۳۹و ج۳ص۳۶۷
۲۰۔ سیرہ خلفاءج ۸ ص ۲
۲۱۔ وسیلۃ المال ،ص۱۴۵
۲۲۔ ریاض الجنان ،ج۱ص۱۱۱
۲۳الاعلام الا ¾ علام مسجد الحرام خطی بہ نقل علی و کعبہ،ص۷۶
۲۴۔ قصیدہ علویہ ص۶۱

 
شمس الزماں خان جامعی صابری
 
 
Magar Jo Tasleem nahi karty Unka kehna ye hy k Bas Aima karam k Aqwaal hain jinho ne Imam Hakim Rehmatullah ka hawala diya hy..
Jab k Is silsaly mein koi Sahih Hadees naqil nahi ki unho ne aur na hi is pe ijmaa ummat hy.
..

Ye Masla aisa nahi k iski wajah se kisi ko Sunniyat se bahar kardiya jaye ya usy shia kaha jaye..Is bary mein toh khud shia hazrat mein bhi ikhtilaaf hy
 
مشہور شیعه ابن ابی الحدید لکھتا ہے کہ:
واختلف فی مولد علی علیه السلام این کان؟ فکثیر من الشیعة یزعمون انه ولد فی الکعبة والمحدثون لا یعترفون بذٰلک، ویزعمون ان المولود فی الکعبة حکیم بن حزام بن خویلد بن اسد بن عبد العزیٰ بن قصی ۔ (شرح نہج البلاغة لابن ابی الحدید 9:1 القول فی نسب امیر المؤمنین علی علیه السلام، دار الکتاب العربی بغداد)
ترجمه: حضرت علی کرم اللہ وجهہ کی ولادت گاہ کے بارے میں اختلاف ہے ۔ کثیر شیعوں کا خیال ہے کہ آپ کعبه میں متولد ہوئے ہیں لیکن محدثین اس بات کو نہیں مانتے، ان کے نزدیک "مولود فی الکعبة" صرف حکیم بن حزام (حضرت خدیجه رضی اللہ عنہا کے بھتیجے) ہیں ۔.
 
1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.