Sign in to follow this  
Followers 0
WaseemAkmal

Plz, Clear This Fatwa

3 posts in this topic

is qism k jo etrazat keay jatay hein in ka yeh matlab naheen hay keh in sab ko koi saza hi na ho gi, balkeh in ka matlab hay keh in par Sar'yi Had nafiz naheen hogi. Lekin in ko saza di jaye gi aor yeh saza kayi dafa qatal bhi ho skti hay.

 

Yeh book parhain is main baab 2 main is qism k kayi etrazat k jwabat mojood hain

 

Fiqh-Al-Faqeeh:

 

http://www.nafseisla...qhaAlFaqeeh.htm

 

http://www.nafseisla...qhaAlFaqeeh.pdf

 

 

Yeh topic bhi check kijiay.

 

http://www.islamimeh...tanqeedi-jaiza/

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Similar Content

    • By ibne adam
      AOA

      respected brothers i have a question
      meri bv ka nam "ume habiba" h main aksar usy "ume" bulata hn!!

      kya mera usy ume bulana jaiz h? agr nahi to kya mujy koi kafara ada karna pare ga?

      shukriya 
    • By AqeelAhmedWaqas

       
         
       
      فورم پر یا کہیں بھی کوئی فقہی مسئلہ پوچھا جائے تو صرف اسی صورت میں جواب دیں کہ آپ علمائے کرام علیھم الرحمہ سے سن چکے ہوں یا مستند کتابوں میں ٹھیک اور واضح طور پر پڑھ چکے ہوں یا کسی اور طریقے سے مسئلے کا صحیح جواب کامل طور پر جانتے ہوں۔
      ۔۔۔۔۔    بغیر علم کے ہرگز ہرگز جواب مت دیں ، اس سے ایک تو پوچھنے والا صحیح راہنمائی نہیں پا سکے گا اور ساتھ جواب دینے والے کی بھی گرفت ہوگی۔
      ۔۔۔۔۔     آسان ترین حل یہی ہے کہ جب کوئی مسئلہ آتا ہے تو جس جائز ذریعے سے علمائے کرام سے اس کا جواب پوچھ سکتے ہیں ، پوچھ لیں۔ مثلا دارُالافتاء اَہلسنت سے رابطہ کر لیں یا اگر کوئی مستند دینی فقہی کتب موجود ہیں اور آپ میں اتنی لیاقت ہے کہ خود مسئلہ سمجھ لیں گے تو پہلے وہاں سے مسئلہ اچھی طرح دیکھ لیں اور پھر (کسی بھی شک و شبہ کی صورت میں) لازمََا علمائے کرام سے پوچھ لیں کہ واقعی یہی جواب صحیح ہے اور مُفتیٰ بِہٖ ہے یا نہیں تاکہ بعد میں پریشانی نہ ہو اور پوچھنے والے کو بھی غلط فہمی میں مبتلا نہ کریں۔
      ۔۔۔۔۔      نیچے اس حوالے سے چند اہم باتیں دی جا رہی ہیں ، آپ انہیں بغور پڑھیں اور یہ دیکھیں کہ جب مفتیانِ کرام علیھم الرحمہ کیلئے یہ ہدایات لازم ہیں تو عام بندے کو کس قدر احتیاط کرنا لازم ہوگی!۔
       
       

       
       

       
       

       
       

       
       

       
       

       
       

       
       

       
       

       
       

       
       

       
       

    • By Usman Razawi
      دارالافتاء حیدرآباد
      فون نمبر
      0092222621563



      دارالافتاء کنزالایمان کراچی
      فون نمبر
      00922134855174




      دارالافتاء نورالعرفان کراچی
      فون نمبر
      00922132203640



    • By SunniDefender
      Shia k Bary Mai Ulama e Ahle Sunnat ka Fatwa