Sign in to follow this  
Followers 0
Musaffa

اعلیٰ حضرت کے ایک شعر کے مصرعِ اولیٰ پر نعت

1 post in this topic

Posted (edited) · Report post

اعلیٰ حضرت کے ایک شعر کے مصرعِ اولیٰ پر نعت

 

"قبر میں لہرائیں گے تاحشر چشمے نور کے"

از: ڈاکٹر محمد حسین مشاہدؔ رضوی، مالیگاؤںانڈیا

 

صبح طیبہ میں ہوئی بٹتے ہیں صدقے نور کے

صدقے لینے نور کے آے ہیں تارے نور کے

ہیں مرے آقا بنے سارے کے سارے نور کے

ذکر اُن کا جب بھی ہوگا ہوں گے چرچے نور کے

دل میں نظروں میں بسیں طیبہ کی گلیاں نور کی

روح میں بس جائیں طیبہ کے نظارے نور کے

داغِ فرقت نور والے شہر کا اب دیں مٹا

گنگناوں آکے طیبہ میں ترانے نور کے

طلعتِ آقا لحد میں میری جلوہ گر تو ہو

’’قبر میں لہرائیں گے تا حشر چشمے نور کے ‘‘

نوری سُرمہ خاکِ طیبہ کا لگاوں آنکھ میں

اپنی نظروں میں بسالوں میں ستارے نور کے

آپ کے زیرِ قدم ہیں سارے نیچر کے اُصول

پاے اطہر کے بنے پتھر میں نقشے نور کے

چشمۂ تسنیم و کوثر اور بہارِ خُلد بھی

زُلفِ احمد کیلئے ہیں استعارے نور کے

نورِ احمد ہے عیاں سارے جہاں میں بے گماں

جتنے جلوے بھی ہیں دنیا میں ہیں ان کے نور کے

نور والوں کا گھرانا اپنا مارہرہ شریف

جِھلملاتے جیسے پر تَو مصطفیٰ کے نور کے

خاندانِ پاکِ برَکاتِیہَّ کے فیضان سے

پھل رہے ہیں چار جانب ’’ نوری شجرے ‘‘ نور کے

اعلیٰ حضرت کے ’’ قصیدئہ نوریہ ‘‘ کے فیض سے

اے مُشاہدؔ لکّھے میں نے کچھ ترانے نور کے

Edited by Musaffa

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Similar Content

    • By Musaffa
      ظلمتِ قلب و نظر پل میں مٹانے کے لیے
      سبز گنبد کی کرن دل میں بسانے کے لیے
      یاخدا! اِذنِ سفر کردے مُشاہدؔ کو عطا
      شوق سے نعت مدینے میں سنانے کے لیے
    • By Musaffa
      مَیں نے نعت گوئی کا جب سے ذوق پایا ہے
      سر پہ میرے رحمت کا تب سے نوری سایا ہے
      فوجِ غم نے گھیرا جب مجھ کو اے جہاں والو!
      رب نے ذکرِ احمد سے میرا غم مِٹایا ہے
    • By Musaffa
      <p style=" margin: 12px auto 6px auto; font-family: Helvetica,Arial,Sans-serif; font-style: normal; font-variant: normal; font-weight: normal; font-size: 14px; line-height: normal; font-size-adjust: none; font-stretch: normal; -x-system-font: none; display: block;"> <a title="View Tashtirat E Bakhshish on Scribd" href="http://www.scribd.com/doc/93218869" style="text-decoration: underline;" >Tashtirat E Bakhshish</a></p><iframe class="scribd_iframe_embed" src="http://www.scribd.com/embeds/93218869/content?start_page=1&view_mode=scroll" data-auto-height="false" data-aspect-ratio="undefined" scrolling="no" id="doc_60163" width="100%" height="600" frameborder="0"></iframe>
    • By Musaffa
      <p style=" margin: 12px auto 6px auto; font-family: Helvetica,Arial,Sans-serif; font-style: normal; font-variant: normal; font-weight: normal; font-size: 14px; line-height: normal; font-size-adjust: none; font-stretch: normal; -x-system-font: none; display: block;"> <a title="View Lamaat E Bakhshish on Scribd" href="http://www.scribd.com/doc/95019206" style="text-decoration: underline;" >Lamaat E Bakhshish</a></p><iframe class="scribd_iframe_embed" src="http://www.scribd.com/embeds/95019206/content?start_page=1&view_mode=scroll" data-auto-height="false" data-aspect-ratio="undefined" scrolling="no" id="doc_68930" width="100%" height="600" frameborder="0"></iframe>