Sign in to follow this  
Followers 0
SDEOBANDI

Koi Batayega Thanvi Sahab K Tarjuma Quraan Me Kya Galt Hai

4 posts in this topic

1-Thanvi SAHAB wa digar ke tarjuma e quraan paak mein galat nahi AGLAAT hain.

2-Makr aib hai aur Allah paak har aib se paak hai "makr" se muraad khufiya tadbeer bhi ho sakti hai urdu mein na ke chaal ya fareb.

3-Arabi zabaan ek faseeh o baleeg zabaan hai yahi wajah hai ke Ajam se murad goonga hai aur Urdu ,farsi ya digar gair Arabi zabaanen Ajami zabanen hain jo Arabi zabaan ke alfaaz ki kama haqhu tarjumani nahi kar saktin.

4-Alahazrat alaihi rahmah ne Kanzul imaan shareef mein jo urdu tarjuma kiya hai woh aap jaisa sainkdon uloom mein uboor rakhne wali shakhsiyat hi ko mauzun hai.

5-Main apne tamam islami bhaiyon se darkhwast karti hun ke woh zaroor is asaan se sawaal ka sabooton ke saath jawab den warna ye samjhenge ke hamare paas jawab nahi.

Allah meri galtiyon ko muaf kare wallahu a'alamu wa rasooluhu azzawajal wa alaihis salaam.

Share this post


Link to post
Share on other sites

اللہ عزوجل کا قرآن عربی میں ہے اور تھانوی نے ترجمہ اردو میں کیا ہے


عربی زبان میں مکر کن معنی میں استعمال ہوتا ہے یہ ایک الگ بحث مگر ذرا آپ غور فرمائے ہماری زبان اردو میں مکر کیا اچھا لفظ ہے یا برا ؟


مثال کے طور پر اگر میں کہ کہوں کہ تھانوی بڑا مکر کرنے والا یعنی انتہائی مکار تھا تو کسی دیوبندی کو بارخاطر گزرے گا یا نہیں ؟


Share this post


Link to post
Share on other sites

السلام علیکم و رحمۃ اللہ !


یاد رہے کہ ہم اہل سنت و جماعت کو نقصان ان کم علم محققین اور مصنفین سے بھی پہنچا ہے جو چار کتابیں پڑھ کر محقق بنے پھرتے ہیں۔۔۔۔۔۔


 انہی میں سے ایک بات ترجمہ قرآن کے حوالے سے بھی ہے۔۔۔۔۔


اپنے علم کے مطابق چند گزارشات پیش خدمت ہیں ۔اگر کوئی بھائی اختلاف رکھتے ہوں تو ان سے گزارش ہے کہ اپنا موقف بھرپور انداز میں ضرور بیان فرمائیں تاکہ میں اگر غلط ہوں تو میری اصلاح ہو سکے اور اگر میں صحیح ہوں تو یہ ان نام نہاد دلائل یعنی ڈھکوسلوں سے اپنے آپ کو بچائیں کہ اس میں مسلک کی بھی بدنامی ہے اور مخالفین کے لئےمنافع بھی۔


تو عرض ہے کہ قرآن کا لفظی ترجمہ کرنے حوالے سے علماء نے یہ بیان فرمایا ہے کہ لفظی ترجمہ قرآن کا کرنا جائز ہے۔جیسا کہ نائب مفتی اعظم ہند مفتی شریف الحق امجدی علیہ رحمۃ اپنے فتاوٰی (فتاوٰی شارح بخاری جلد۱ صفحہ ۳۶۲)پر بیان فرماتے ہیں کہ 


آیت کریمہ واستغفر لذنبک  کا ترجمہ اس نے ایک حد تک ٹھیک کیا ہے بہت سے مترجمین نے اس آیت میں (ذنب)کا ترجمہ گناہ ہی کیا ہے۔ترجمہ میں کلمات قرآن کا لفظی ترجمہ جائز ہے۔لیکن ترجمہ سے خارج اپنے بیان میں اس کو انھیں الفاظ سے ذکر کرنا ممنوع ہے لیکن چوں کے لفظی ترجمے سے بے پڑھے لکھے عوام کی غلط فہمی کا اندیشہ ہے اس لئے علما ء محتاطین نے ترجمہ میں اس کا لحاظ رکھا اور جو تاویل تھی اس کے مطابق کیا۔


علامہ غلام رسول سعیدی صاحب نے بھی اس مسئلہ پر اپنی کتاب شرح صحیح مسلم ،تبیان القرآن میں کافی تفصیل سے یہ مسئلہ بیان کیا ہے۔


اور خود اعلی حضرت علیہ رحمۃ نے اپنے والد صاحب مولانا نقی علی خان صاحب کی کتاب (احسن الوعاء لاداب الدعا) کے حاشیہ میں واستغفر لذنبک کا ترجمہ گناہ والا کیا ہے اور مولانا نقی علی خان صاحب علیہ رحمہ نے بھی اپنے سورہ الم نشرح کی تفسیر میں سورہ فتح کی آیت کا ترجمہ گناہ والا کیا ہے ۔اور مزید یہ کہ مولانا عبدالقادر صاحب کا ترجمہ گناہ و مکر والا اعلی حضرت علیہ رحمۃ کے دور میں بھی تھا لیکن اعلی حضرت نے اس پر کوئی حکم کفر و گستاخی نہیں لگایا۔


تو مختصر یہ کہ قرآن کا لفظی ترجمہ کرنا یعنی ذنب کا ترجمہ گناہ کرنا،مکر کا ترجمہ مکر کرنا، وغیرھما کفر و گستاخی نہیں ہے۔


 


Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.