IQRAR

Allah Her Jaga Hazir Nazir - Allama Ahmed Saeed Kazmi Or Mufti Ahmed Yar Khan Per Aetaraz

11 posts in this topic

وہابی جاہل ہیں اس لیے ایسے اعتراضات کرتے ہیں۔۔مختصر جواب اس مضمون میں موجود ہے ۔ملاحظہ کیجیے

 

Ans 1.gif

Ans 1.gif002.gif

Ans 1.gif003.gif

6 people like this

Share this post


Link to post
Share on other sites

اقرار صاحب

ہمارا جواب تو آپ نے پڑھ لیا اب آپ سے کہ گزارش ہے کہ

ہمیںبھی دیوبندیوں کے کسی معتبرعالم دین کے حوالہ سے بتایئں

کہ

 

دیوبند کے نزدیک اللہ تعالی ہر جگہ حاضر ناضر و موجود ہے کہ نہیں ؟؟

 

ہم نے دیوبند کے فورم پر ایک دیوبندی سے بار ہا یہ سوال کیا لیکن کوئی جواب نہ آیا مطلب یہ کہ دیوبندی اپنا عقیدہ چھپاتے ہیں اور دوسروں پر خوامخواہ کیچڑ اچھالتے ہیں۔اور یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ دیگر معاملات کی طرح اس معاملے میں بھی دیوبندیوں کے پاس سوائے بے جا اعتراض کرنے کے اور کچھ نہیں۔

اگر کچھ ہے تو سامنے لاو ۔

Edited by Rizwi Attari

Share this post


Link to post
Share on other sites

India

Question: 616

 

فتوی نمبر 156=155/ل(حوالہ 497) میں آپ نے اللہ سبحانہ کے علاوہ کسی دوسرے کے لیے حاضر و ناظر کی صفت کو ثابت کرنا ?غلط اور نادرست? فرمایا ہے، تو کیا میں اس غلط اور نادرست کی تفصیل جان سکتا ہوں؟ کہ آیا غلط اور نادرست سے مراد یہاں ناجائز ہے یا کفر ہے یا شرک ہے؟جب کہ تمام بریلوی اس صفت یعنی حاضر و ناظر اور علم غیب الی یوم القیامة کے قائل ہیں۔ تو کیا سارے بریلوی یہ صفات حضور صلی اللہ علیہ وسلم ابداً ابداً کے لیے مان کر کافر یا مشرک ہوگئے؟ براہ کرم، جواب عنایت فرمائیں۔ والسلام علی من اتبع الہدیٰ

 

Jun 05,2007

Answer: 616

 

(فتوى: 225/ل=225/ل)

 

یہ شرکیہ عقیدہ ہے کیوں کہ حاضر و ناظر بالمعنی المذکور کا اطلاق صرف اللہ ہی پر ہوسکتا ہے غیر اللہ پر نہیں اور اللہ کی صفت مخصوصہ میں سے کسی صفت کو غیر اللہ کیلئے ثابت ماننا شرک کہلاتا ہے کما ھو المذکور في الفوز الکبیر للشاہ ولي اللّہ المحدث الدھلوي.

واللہ تعالیٰ اعلم

دارالافتاء، دارالعلوم دیوبند

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

آپ نے خواہ مخواہ دار الافتاء دیوبند کا فتویٰ پیش کرنے کی تکلیف کی ۔حالانکہ بحث تو یہ ہے کہ حاظر و ناظر کن معنیٰ میں مانا جاتا ہے اور کن میں نہیں؟جبکہ دیوبندی فتویٰ میں اس پر کوئی بات نہیں کی گئی ۔۔۔لہذا اآپ یہ بتائیں کہ

 

(1)

آپ اللہ عزوجل کو حاضر و ناظر کے اصلی و لغوی معنی کے اعتبار سے مانتے ہوجس پر علامہ کاظمی صاحب رحمۃ اللہ علیہ نے بحث فرمائی ہیں؟؟؟؟؟؟؟؟؟یا کن معنی میں مانتے ہو؟

 

(2)

آپ اللہ عزوجل کے حاضر و ناظر ہونے کی تعریف اپنے کسی معتبر اکابر کی کتاب سے بیان کرو ۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

 

 

 

آپ کا یش کردہ فتوی پوچھے گئے سوال کے مطابق نہیں ہے۔

 

برہان بھائی کے سوالات کے جوابات کے ساتھ ساتھ میرے سوال کو بھی غور سے پڑھ کر اس کے مطابق جواب دیں۔

سوال دوبارہ پیش کرتا ہوں۔

 

 

 

دیوبند کے نزدیک اللہ تعالی ہر جگہ حاضر ناضر و موجود ہے کہ نہیں ؟؟

Share this post


Link to post
Share on other sites

agr iqrar sb. ne wo sawal ka jawab diya to umeed hai k 


en ka aitraz khud b khud khatm ho jae ga.


 


(ia)


Share this post


Link to post
Share on other sites

ناحق کے اقرار کو چُپ لگ گئی ہے۔ مہینے گزر گئے اور برھان بھائی کی بات کا جواب نہیں دیا۔ یہ ہے اصل دیوبندیت و وہابیت۔

 

 

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

غیر مقلدین اہلحدیث کے فتاویٰ ستاریہ جلد نمبر ۲ ص ۸۴میں عبد الجبار سلفی نے لکھا کہ'اللہ تعالی کو ہر جگہ ماننا یہ جہمیہ معتزلہ وغیرہ فرق ضالہ کا باطل عقیدہ ہے اللہ تعالیٰ بذاتہ بنفسہ عرش پر مستوی ہے اور صفحہ ۳۷ پر لکھا کہ اللہ تعالیٰ ہرجگہ نہیں عرش پر ہے ۔


1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

مارے پاس دارالسلام والوں کی چھپی ہوئی تقویۃ الایمان موجود ہے اس کے صفحہ 33 پر لکھا ہوا ہے کہ اللہ کو بذاۃ حاظر ناظر سمجھنا شرک ہے ۔اس کے حاشیے میں ہے کہ اللہ تعالی کو بذاۃ حاظر ناظڑ سمجھنا باطل عقیدہ ہے ۔اب اس پر تمام وہابی حضرات کیا عرض کرے گئے۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

Salam alayqum,

Kuch puranay zamanoon kay Ulamah nay lughvi ihtibar say Allah (subhanahu wa ta'ala) say ilfaaz Hadhir Nazir ko bura jana [keun kay jism aur jismaniat sabat karta heh aur dekhnay ko ankh ka mohtaj banata heh aur Allah in say paak heh] aur kuch Ulamah nay taweel kay saath jaiz mana aur kaha kay agar kohi in ilfaaz kay zahiri lughvi mafoom ko dar guzr karay aur woh mana mutayyin karay joh Allah ki shaan kay laykh hen yehni hadhir Allah ki shaan kay layk hona aur nazir baghayr ankh hona aur baghayr sooraj ki roshini mana jahay toh jaiz heh. Hasil yeh heh kay jinoon nay bura jana unoon nay lafzi manoon ki wajah say aur jinoon nay jaiz unoon nay taweel ki waja say.

Abh atay hen Jaa al-Haq ki ibarat ki taraf; Allah (subhanahu wa ta'ala) ko joh HAR JAGA Hadhir Nazir manay woh bila shak o shuba zindeeq balkay Kafir heh.  Magr joh Allah (subhanahu wa ta'ala) ko jaga aur har jaga ki qaid kay baghayr Hadhir Nazir manay woh toh Musalman heh. Bandoon ko ibaraat parnay ki bi samaj nahin aur fatweh Shaykh ul-Islamoon ki shaan kay layk detay hen. Sayyidi Ala Hadrat kay walid e moteram nay joh baat likhi unoon nay lafzi mafoom mein likhi ... keun kay lafzi mafoom mein Allah ko Hazir Nazir manna yeh mana rakhta heh woh jism aur makhlooq mein mojood heh aur qaynaat kay har hissay mein wujud rakhta heh.


 

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.