Sign in to follow this  
Followers 0
mzeeshanimtiaz

Kia Ye Hadees Zaef Ha ? (Hazrat Abu Bakar Siddiqe(رضی اللہ عنہ) Ki Wasiyat...

16 posts in this topic

kia ye hadees zaef ha ???

mafhoom:

Hazrat Abu Bakar Siddiqe(رضی اللہ عنہ) ki Wasiyat k NABI PAK() k sath dafan hone ki ijazat mangna

aur phir NABI PAK() k roza mubarak ka darwaza khula aur ye awaz aana k Habeeb ko Habeeb k haa dakhil kr dw

 

refrences:-

اخرجہ ابن عساکر  فی  تاریخ مدینہ دمشق   436/30

والسیوطی  فی  الخصائص الکبری  492/2

 

 

agr ye hadees zaeef nahi ha tw plz mukamal saboot aur scans k sath meri rehnumayee farmaei

Share this post


Link to post
Share on other sites

sawal kay baad intazar kia kara'in.. bar bar us ko dohra kar posts na karain ..

 

 

jazak Allah

Share this post


Link to post
Share on other sites

(bis)


 


 ابن عساکر نے اپنی تاریخ میں اس روایت کو منکر کہا ہے۔ اس روایت کی سند میں ایک راوی ابو طاہر المقدسی کذاب ہے جس کی وجہ سے یہ روایت قابلِ  اعتبار نہیں۔ دیکھیے الجرح و التعدیل۔


 


post-14461-0-71454000-1373165781_thumb.jpg

post-14461-0-68175600-1373165858_thumb.jpg

post-14461-0-96079000-1373165888_thumb.jpg


_____________________________________________

 


post-14461-0-13412300-1373165904_thumb.jpg

post-14461-0-98386200-1373165924_thumb.jpg

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

Posted (edited) · Report post

حضرت ابوبکرصدیق رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور بارگاہ مصطفی صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہٖ وسلم


 


حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ تعالی عنہاکا بیان ہے کہ حضرت ابوبکرصدیق رضی اللہ تعالی عنہ کی وفات کے بعد بعض لوگوں نے یہ خیال ظاہر کیا کہ آپ رضی اللہ تعالی عنہ کو شہدا ء کے درمیان دفن کردیں اور بعض کہتے تھے کہ آپ رضی اللہ تعالی عنہ کو جنت البقیع میں دفن کیا جائے۔ میں نے کہامیں تو انھیں اپنے حجرے میں اپنے محبوب صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہٖ وسلم کے پاس دفن کروں گی۔ ابھی ہم اس اختلاف میں تھے کہ مجھ پر نیند غالب آگئی میں نے کسی کو یہ کہتے سنا کہ محبوب کو محبوب کی طرف لے آؤ۔ جب میں بیدار ہوئی تو پتا چلا کہ تما م حاضرین نے اس آواز کو سن لیا تھایہاں تک کہ مسجد میں موجودلوگوں نے بھی اس آواز کو گوش ہوش سے سُنا۔


    وفات سے پہلے سید نا صدیق اکبر رضی اللہ تعالی عنہ نے وصیت فرمائی تھی کہ میرے تابوت (جنازہ)کو حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہٖ وسلم کے روضہ انور کے پاس لاکر رکھ دینا اور السلام علیک یارسول اللہ کہہ کر عرض کرنا کہ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہٖ وسلم !ابوبکررضی اللہ تعالیٰ عنہ آپ صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہٖ وسلم کے آستانہ عالیہ پر حاضر ہواہے۔ اگر اجازت ہوئی تو دروازہ کھل جائے گااور مجھے اندرلے جاناورنہ جنت البقیع میں دفن کردینا ۔راوی کا بیان ہے کہ جب حضرت ابوبکرصدیق رضی اللہ تعالی عنہ کی وصیت پر عمل کیا گیا تو ابھی وہ کلمات پایہ اختتام کو نہ پہنچے تھے کہ پردہ اٹھ گیا۔ اور آواز آئی کہ:''حبیب کو حبیب کی طرف لے آؤ''۔


(شواہد النبوۃ،رکن سادس،ص۲۰۰)


 


جائے غور ہے کہ اگر ابوبکر صدیق رضی اللہ تعالیٰ عنہ رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہٖ وسلم کو زندہ نہ جانتے تو ہر گز ایسی وصیت نہ فرماتے کہ روضۂ اقدس کے سامنے میر ا جنازہ رکھ کر اجازت طلب کی جائے۔ حضرت ابوبکرصدیق رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے وصیت کی اور صحابہ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنہم نے اسے عملی جامہ پہنا یا جس سے ثابت ہوتا ہے کہ حضرت صدیق اکبر رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور تمام صحابہ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنہم کاعقیدہ تھا کہ رسول اقدس صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہٖ وسلم بعد وصال بھی قبر انور میں زندہ اور صاحب اختیار و تصرف ہیں۔الحمد للہ عزوجل


 


 


سلام سے دروازہ کھل گیا


 


    جب حضرت امیرالمؤمنین ابو بکر صدیق رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا مقدس جنازہ لے کر لوگ حجرہ منورہ کے پاس پہنچے تو لوگوں نے عرض کیا کہ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا رَسُوْلَ اللہِ ھٰذَا اَبُوْ بَکْرٍ یہ عرض کرتے ہی روضہ منورہ کا بند دروازہ یک دم خود بخود کھل گیا اور تمام حاضرین نے قبر انور سے یہ غیبی آواز سنی : اَدْخِلُوا الْحَبِیْبَ اِلَی الْحَبِیْبِ  (یعنی حبیب کو حبیب کے دربار میں داخل کردو۔


 


(التفسیر الکبیر للرازی ، سورۃ الکھف ، تحت الایۃ : ۹-۱۲، ج۷ ، ص۴۳۳)(تفسیر کبیر،ج۵،ص۴۷۸)


Edited by Najam Mirani
1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

whats wrong with this topic?...i cant see the images.

.جس دن لگای تھی اس دن تو شو ہو رہی تھی ابھی کچھ خرابی ہوئی ہے

Share this post


Link to post
Share on other sites

Posted (edited) · Report post

 

حضرت ابوبکرصدیق رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور بارگاہ مصطفی صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہٖ وسلم

 

(شواہد النبوۃ،رکن سادس،ص۲۰۰)

 

 

(التفسیر الکبیر للرازی ، سورۃ الکھف ، تحت الایۃ : ۹-۱۲، ج۷ ، ص۴۳۳)(تفسیر کبیر،ج۵،ص۴۷۸)

 

 

السلام علیکم

brother tw kia ye hadees zaef nahi ha ???

 

Syed_Muhammad_Ali

ne tw hadees k jo scan pages lagaye hei os se tw ye hi zahir ho raha ha k ye hadees zaef ha

agr ye hadees zaef ha tw ap zaef hadees se apna(mera aqeeda bhi ap wala hi ha) sabit krne ki koshish kyu kr rahe hei.....kia zaef hadees se aqeeda benana jaez ha ? hmari masjido mein molvi hazrat aksar ye hadees sunate hei tw phir agr ye hadees zaef ha tw iss ko bayan kyu kiya jata ha ?...zaef hadees tw sirf fazail amal mein hi mautber ha na

braye meharbani meri confusion dur krei

 

____________________________________________________________________________________________

 

aur

plz plz plz

meri iss post ka bhi jawab de dei....abhi tak meri iss post ka jawab nahi aya :-

 

http://www.islamimehfil.com/topic/21122-hazrat-umer-farooq%D8%B1%D8%B6%DB%8C-%D8%A7%D9%84%D9%84%DB%81-%D8%B9%D9%86%DB%81-ne-dusri-ijazat-kis-se-mangi-thi/

Edited by mzeeshanimtiaz

Share this post


Link to post
Share on other sites

وعلیکم السلام ورحمت اللہ وبرکاتہ

mzeeshanimtiaz bhai deobnadi hazraat is Hadees pak ko zaeef keh kar Hayaat e Nabi ka inkar karte hain , ab aap ki confusion kya hai wo hamen bataiye aur aap ne jo link di hai us se bhi yehi sabit hota hai ke deobnadi hazraat Hayat e Nabi ka inkar kar rahe hain . kya aap ko Hayat e Nabi ke baare mein saboot chahiye ?

Share this post


Link to post
Share on other sites

Posted (edited) · Report post

وعلیکم السلام ورحمت اللہ وبرکاتہ

mzeeshanimtiaz bhai deobnadi hazraat is Hadees pak ko zaeef keh kar Hayaat e Nabi ka inkar karte hain , ab aap ki confusion kya hai wo hamen bataiye aur aap ne jo link di hai us se bhi yehi sabit hota hai ke deobnadi hazraat Hayat e Nabi ka inkar kar rahe hain . kya aap ko Hayat e Nabi ke baare mein saboot chahiye ?

 

ni brother muje Hayat e NABI(ﷺ) pr saboot nahi chahiye

  1. muje iss k mutalik saboot chahiye k ye hadees zaef nahi ha
  2. jo link mei ne apne dusre sawal ka diya ha....os mein muje ye saboot chahiye k Hazrat Umer e Farooq(رضی اللہ عنہ) ne dusri ijazat Hazrat Aysha Sidiqa(رضی اللہ عنہما) se nahi mangi thi bal'k dusri ijazat NABI PAK() se mangi thi

     

Edited by mzeeshanimtiaz

Share this post


Link to post
Share on other sites

agr ye hadees zaef ha tw ap zaef hadees se apna(mera aqeeda bhi ap wala hi ha) sabit krne ki koshish kyu kr rahe hei.....kia zaef hadees se aqeeda benana jaez ha ? hmari masjido mein molvi hazrat aksar ye hadees sunate hei tw phir agr ye hadees zaef ha tw iss ko bayan kyu kiya jata ha ?...zaef hadees tw sirf fazail amal mein hi mautber ha na

braye meharbani meri confusion dur krei

 

 الحمد للہ اہل سنت کا عقیدۂ حیات النبی صلی اللہ علیہ وسلم قوی دلائل سے ثابت ہے۔ یہ روایت حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ کے فضائل کے تعلق سے معتبر ہے جیسا کہ امام سیوطی رحمۃ اللہ علیہ اور امام الرازی رحمۃ اللہ علیہ نے اسے کرامت بتایا ہے۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

 الحمد للہ اہل سنت کا عقیدۂ حیات النبی صلی اللہ علیہ وسلم قوی دلائل سے ثابت ہے۔

 

بیشک

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

 یہ روایت حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ کے فضائل کے تعلق سے معتبر ہے جیسا کہ امام سیوطی رحمۃ اللہ علیہ اور امام الرازی رحمۃ اللہ علیہ نے اسے کرامت بتایا ہے۔

 

muje iss ka refrence aur scan pages bhi fraham kr dei

Share this post


Link to post
Share on other sites

 


 جیسا کہ امام سیوطی رحمۃ اللہ علیہ اور امام الرازی رحمۃ اللہ علیہ نے اسے کرامت بتایا ہے۔

 

 

امام سیوطی رحمۃ اللہ علیہ الخصائص الکبری میں لکھتے ہیں۔

 

هَذَا أَبُو بكر قد اشْتهى أَن يدْفن عِنْد رَسُول الله صلى الله عَلَيْهِ وَسلم وَقد أوصانا فَإِن آذن لنا دَخَلنَا وَإِن لم يُؤذن لنا انصرفنا فنودينا أَن أدخلُوا وكرامة وَسَمعنَا كلَاما وَلم نر أحدا

 

بندے کو یہاں کرامة لفظ سے دھوکہ ہوا۔ یہاں کرامة کے معنی شاید کچھ اور ہیں۔ عربی میں کمزور ہوں اس کے لیے معذرت۔ باقی تفسیر الفخر الرازی میں اسے کرامت کہا گیا ہے۔

 

post-14461-0-83067800-1373274949_thumb.jpg

post-14461-0-65772300-1373274933_thumb.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Similar Content

    • By mzeeshanimtiaz
      Hazrat Umer e Faooq(رضی اللہ عنہ) ne dusri ijazat kis se mangne ki wasiyat ki thi ???
       
      1) NABI PAK (ﷺ) se
      ya phir
      2) Hazrat Aysha Sadiqqa(رضی اللہ عنہما) se
       
      hadees ye ha :-
       

       
       
      aik badmazhab ne iss k mutaliq ye jawab diya ha :-
       
      جناب۔ آقاﷺ سے اگر پوچھا جا رہا ہے تو پھر صیغہ عربی کا مذکر ہونا چاہیئے تھا۔ جبکہ یہاں صیغہ مونث کا استعمال ہوا ہے "فان اذنت" پس اگر وہ اجازت دیں  یعنی حضرت  عائشہ رضی اللہ عنھا۔
      اور اگر آقاﷺ سے پوچھا جارہا ہوتا تو یہ اس طرح ہوتا "فان اذن" اگر آقا اجازت دیں۔
      تصویر کا لنک بھیجا ہے اس میں دیکھو کون سا لفظ استعمال ہوا ہے۔
      اگر دوسری دفعہ آقا سے اجازت لی جا رہی تھی تو پھر حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے مونث کا صیغہ کیوں استعمال کیا حدیث کے اندر؟  آقا کیا نعوذ باللہ وفات کے بعد مونث ہو گئے تھے؟ یا حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کو عربی بھی نہیں آتی تھی اتنی؟
      آپ یہ جواب دو میں بریلویت قبول کرلوں گا آج۔
       

       
       
      iss ka jitni jaldi ho sakei jawab dei