Sign in to follow this  
Followers 0
MunAAm

Mufti Faizaneattar Par Aitraz

4 posts in this topic

Ek Attari Mufti Se Ek Attari

Website

(www.faizaneattar.net ) Pe Sawaal Huwa Ke "Shohar Ek

Mulk Men Ho, Biwi Doosre Men

To Kia Woh Internet Par Web Cam Par Ek Doosre Ko

Barhana

Dekh Sakte Hain? Or Wo Phone

Ya Internet Par Audio Chat Men (Mubashirat) Kar Sakte

Hain??? Jawaab Men Attari Mufti Ne

Sharaee Haddud Paar Karte

Huwe (Faizan e Attar Men

Dooba Huwa) Jawaab Diya Ke Ji

Han Dekh Sakte Hain Ek Doosre

Ko (Web Cam Par Barhana) Jab Ke Koi Doosra Na Dekh Raha Ho.

Or Yunhi Ye Baaten (Yane

Ya Mubashirat) Kar Sakte Hain,

Jab Ke Koi Or Na Sun Raha Ho. Ma'aazAllah, Summa

Ma'aazAllah...! Behayaee Ki

Hadd Hogaee. Miya Biwi Beshak

Ek Doosre Ka Libaas Hain, Lekin

Web Cam Ke Zarye Is Kaam Ki

Ijaazat Dena Musalman Auraton Ki Izzat Ko Sar e Aam Nanga

Karne Ke Baraabar Hai. Ye Baat

Saabit Kar Raha Hoon: 1. Internet Par Jis Bhi Software

Ke Zarye Video Conference Ho,

Wo Conference Un Softwares Ke

Administrators Se Chuppi Na

Hogi, Or Hosakta Hai Ke Har

Conference Ki Recording Bhi Banti Ho. Iske Hackers Ke Liye

Kisi Ke Bhi Computer Men Enter

Ho Kar Uski Activities Dekhna

Aam Si Baat Hai. In Sab Ke

Bawajood "Attari Muftiyon" Ka

Aisa Fatwa Dene Ka Maqsad Musalman Auraton Ki Izzat

Neelam Karna Ke Ilawah Or Kia

Hoga? 2. Phone Call Ya Internet Par

Miyan Biwi Ke (Mubashirat)

Kaise Ho Sakta Hai, Jab Ke Woh

Ek Doosre Se Door Hon?

(Mubashirat) To Ek Sath Hone Se

Hi Mumkin Hai. Is Poochhne Waale Ka Maqsad Yaqeenan

Yahi Hai Ke Woh Miyan Biwi

Apne Hi Haathon Se Apna Munh

Kala Kar Sakte Haain (Yane

Apne Hi Haathon Se Shehwat Ki

Aag Bujha Kar Taskeen De Sakte Hain)? Yaad Rakhen..! Apne

Haathon Se Shahwat Ki Aag

Bujhaane Walon Par Hadees

Shareef Men Lanat Farmaaee

Gaee Hai. Or Unke Baare Men

Sakht Waeeden Hain. Mufti Sahib Ne Is Baat Ki Ijaazat De

Kar Ke Farmaan e Mustafa

Sallallaho Alaihe Wasallam Se

Ikhtilaaf Nahi Kiya? 3. Phir Phone Calls Ya Internet

Par Miya Biwi Ki Aisi Voice

Chatting Karne Men "Leak"

Hone Ke Andeshe Ka Inkaar

Nahi Kiya Ja Sakta. Kiyun Ke Aaj

Kal Zyadah-tar Baat "Cellular Phones" Par Hi Hoti Hai, Land-

Line Buhat Hi Kam Istaimaal Ki

Jaati Hai. Ab Cellular Phones Par

Baat Karne Men "Hawa" (AIR) Hi

"Medium" Hoti Hai, Jis Ke Zarye

Hamari Baat Agle Tak Puhanch Sakti Hai. Or Agar Kissi Baat

Karne Waale Ke Qareeb Hi Koi

Bandah "Radio" Wagherah Sun

Raha Ho To Radio Ki Antenna Se

Wo Aasani Se Un "Signals Ko

Catch Kar Ke" Donon Ke Darmiyan Hone Waali Guftugu

Ko Sun Sakta Hai. Jis Ka Tajurba

Un Logon Ko Zaroor Hoga, Jo

Radio Wagherah Sunte Hain. Lehaza In Sab Baaton Ko

Padhne Ke Baad Thodi Si

Samajh Rakhne Waala Banda

Aasani Se Samajh Jaaega Ke

Aise Kaam Karne Ka Kia Anjaam

Ho Sakta Hai, Or Aise Muftiyon Ka In Baaton Ki Ijaazat Dena

Kitni Badi Jur'at Hai Ke Ek Taraf

To Shari'at Mustafa Salllallaho

Alaihe Wasallam Se Khuli

Baghwat, Or Doosri Taraf

Musalman Auraton Ke Izzat Ki Parwah Na Karna. Allah Hum Sab Ko Aise Fitnon

Se Mahfooz Farmaaye Or Ulama

e HAQ Ka Saaya Hamara Saron

Par Ta Dair Qaaim O Daaim

Rakhe. Aameen Summa

Aameen

Edited by MunAAm Attari

Share this post


Link to post
Share on other sites

aaitaraz karnay walay ko chahay kay sawal tafseeli aur wazah likh kar faizaneattar ask the mufti service par he pochay.

Share this post


Link to post
Share on other sites

معترض نےخوامخواہ بات کو اتنا طول دیا کہ بیچ میں کانفرنس ریکارڈ ہو سکتی ہے، ہیک ہو سکتی ہے وغیرہ وغیرہ۔پہلی بات یہ کہ مفتی صاحب نے صاف کہا کہ اگر کوئی نہ دیکھ رہا ہواور نہ سن رہا ہو تو کر سکتے ہیں۔اور ساتھ انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہ فعل  عجیب ساہے مگر   فی نفسئہ مسئلہ کےجائز ہونے کا ذکر کیا اور ساتھ میں ناجائز ہونے کی صورت بھی بیان کردی ۔معترض کو چاہئے کہ اس کے شرعاً ناجائز ہو نے پر کوئی  دلیل دے۔


 


ویب کیم چیٹ کرنے والےکونسا سوفٹ ویئر استعمال کرتے ہیں، اُس میں کوئی پرائیویسی کی سیکیورٹی ہے یا نہیں۔ یوزرز کا پی سی محفوظ ہے یا نہیں۔ صرف موبائل پر بات کرنے کی صورت ہے یا نہیں۔ یہ سب باتیں تو کرنے والوں پر منحصر ہیں۔ایسے سوفٹ وئیرز بھی موجود ہیں جس میں باقائدہ پرائیویسی ہوتی ہے۔ آپ اپنا سوفٹ وئیر خود بھی پروگرام کرسکتے ہیں۔اپنا سرور سیٹ اپ کر سکتے ہیں۔ یہ کوئی راکٹ سائنس تو نہیں ہے۔ اپنے کمپیوٹرز کو ہیکرز سے سیکیور کرنے کے بیسیوں طریقے ہیں۔ وائس چیٹ کی پرائیویسی  اور ریکارڈنگ سے  بچنے کے طریقے موجود ہیں۔ تو اگر کوئی بندہ ہر طرف سے محتاط ہو  تو اُس کے لئے کیا حکم ہوگا؟ معترض کو چاہئے تھا کہ ناجائز ہونے پر کوئی شرعی دلیل تو پوسٹ کرتا۔


 


آخری اعتراض ہےجو کیا ہے وہ ہے  ہاتھ سے شہوت کی آگ بجھانا۔ تو معترض سے سوال ہے کہ ہاتھ کا کہاں لکھا ہے سوال میں؟ سوال میں صرف اتنا ہے کہ اگر انزال ہوجائے تو۔ کیا ہاتھ استعمال کئے بغیر انزال نہیں ہوسکتا؟ معترض نے ایک جائز مسئلے کو ناجائز ثابت کرنے کے لئےپہلے کمزور عقلی دلائل کا استعمال کیا اور پھر وہ بات بیچ میں لے آیا جس کا سوال و جواب میں ذکر ہی نہیں۔ باقی رہی مشت زنی کی بات۔ تو اس کے ناجائز ہونے سے متعلق بیسیوں سوال بھی فیضان عطار سائیٹ پر موجود ہیں۔ صرف ایک مثال حاضر ہے۔


 


اورمعترض کو لفظ آفیشل کا مطلب نہیں آتا۔ فیضان عطار سائیٹ دعوت اسلامی کی آفیشل ویب سائیٹ نہیں ۔۔البتہ فین سائیٹ کہہ سکتے ہیں۔  


2 people like this

Share this post


Link to post
Share on other sites

سگ عطار بھائی نے بہت اچھا جواب دیا ہے امید ہے کہ معنم صاحب کے اشکالات دور ہو گیے ہوں گے۔ 


یہاں میں ایک اور بات ایڈ کرنا چاہتا ہوں کہ جہاں تک میری معلومانت ہیں ابھی تک لائیو چیٹ کو ٹریک کرنے کے لیے کوئی زریعہ نہیں


ہے  اور یہی وجہ ہے کہ 


۔۔جتنے بھی جرائم پیشہ لوگ ہیں وہ اس طریقہ سے اپنی پلاننگ کرتے ہیں

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.