Jump to content
IslamiMehfil

روضہ رسول کی طرف منہ کر کے ہاتھ اٹھا کر دعا کرنا کس حدیث سے ثابت ہے۔


Recommended Posts

 

روضہ رسول کی طرف منہ کر کے ہاتھ اٹھا کر دعا کرنا کس حدیث سے ثابت ہے؟

 

 

اہل قبورکوبصیغہ خطاب (دعائیہ)سلام وکلام کیا جاتاہے۔(ایک حدیث سے ثابت)۔

 

جس سے خطاب ہوگا منہ اُسی کی طرف ہوگا یا وہابی لوگ اپنے  مخاطب کی طرف پیٹھ کرتے ہیں؟

 

رہ گیاہاتھ اُٹھانا تووہ آدابِ دعا سے ہے۔(دوسری حدیث سے ثابت)۔

 

دوحدیثوں کوملا لیں ،مسئلہ سمجھ آجائے گا۔

 

اگرآپ یہ چاہیں کہ ایک ہی حدیث سے یہ سب ثابت ہوجائے تو عرض

 

ہے کہ  فقط ایک حدیث سے نمازکاطریقہ بھی ثابت نہیں سکتا۔

Link to post
Share on other sites

ترمذی شریف

 

1053 - حَدَّثَنَا أَبُو كُرَيْبٍ قَالَ: حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الصَّلْتِ، عَنْ أَبِي كُدَيْنَةَ، عَنْ قَابُوسَ بْنِ أَبِي ظَبْيَانَ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ

قَالَ: مَرَّ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِقُبُورِ المَدِينَةِ فَأَقْبَلَ عَلَيْهِمْ بِوَجْهِهِ،

فَقَالَ: «السَّلَامُ عَلَيْكُمْ يَا أَهْلَ القُبُورِ، يَغْفِرُ اللَّهُ لَنَا وَلَكُمْ، أَنْتُمْ سَلَفُنَا، وَنَحْنُ بِالأَثَرِ»

وَفِي البَاب عَنْ بُرَيْدَةَ، وَعَائِشَةَ

 

اہل قبورکی طرف منہ کرنااوردعائیہ سلام وکلام فرماناملاحظہ فرمالیاہے۔

 

 

ترمذی شریف

 

3556 - حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ قَالَ: حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي عَدِيٍّ، قَالَ: أََخْبَرَنَا جَعْفَرُ بْنُ مَيْمُونٍ، صَاحِبُ الأَنْمَاطِ عَنْ أَبِي عُثْمَانَ النَّهْدِيِّ،

عَنْ سَلْمَانَ الفَارِسِيِّ

عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، قَالَ: 

«إِنَّ اللَّهَ حَيِيٌّ كَرِيمٌ يَسْتَحْيِي إِذَا رَفَعَ الرَّجُلُ إِلَيْهِ يَدَيْهِ أَنْ يَرُدَّهُمَا صِفْرًا خَائِبَتَيْنِ

 

اللہ حیی وکریم ہے۔اُٹھے ہوئے ہاتھ خالی وبے مراد لوٹانے سے حیافرماتاہے۔

Link to post
Share on other sites

Hazrat Imam Malik (raa) ka aik qaul mujhey yaad aa raha hay k unhoon nay kisi ko rooka tha jo roza rasool (saw) ke taraf haath utha kar dua mangnay ko mana karta tha.  perhaps ko e umvi khalifa tha.

 

saudi arabia main bhee shurtay mana kartay hain.  wo samjhtay hain ham RASOOL PAK (saw) say dua kar rahay hain.  jab bhee pakistaan main qabrarstaan jaatay hain to hamar cehra hamaisha qabar he ke taraf hota hay. ham nay kabhee bhee maghrab ke taraf cehra naheen kia.  qabar hamaisha shumal janoob banti hay. Faut shuda insaan ka qabar main cehra maghrab ke taraf kar k dafnaatay hain.  fatia khaani karnay wala hamaish mashriq ke taraf cehra kar k dua karta hay.  ist of all taa kay qabar main  moujood us ko pehchaan sakay kion k us ko qabar par kharay honay walay ke waja say kuch sakoon sa milta hay.second kaheen parah tha kabhi sir ke taraf ho kar dua na karain.

 

janat ul baqee main qabar ke taraf moon kar k dua maangain to ko e mana naheen karta mgar ROZA RASOOL (saw)  par aisa karain to mana kartay hain.  jahiloon ko samajh naheen aati k ZAA IR wahan bhee ALLAH TAALA say he dua kar raha hota hay.

Link to post
Share on other sites

aik choota sa swaal hay,nabi pak ka ishq sahib say, Quraan e hakim main sura al inaam/ya maida main aik aik ayyat ka tarjama hay.  aur agar jab wo apni janoon par zulam kar baithay thay to tumhari bargah main aatay aur aa kar apnay gunahoon ke maafi mangtay aur rasool bhee un k liee a maghfarit talab karta to ALLAH TAALA ko behtar tauba qabool karnay wala paatay.

 

ab aik gunahgaar aadmi jab roza rasool (saw) par ja kar apni bipta sunaya ga aur maafi talab karay ga to us ka cehra kis taraf ho ga. wo to RASOOL PAK (saw) ke bargah main giria o zaari karnay aay hay to saamnay kharay ho kar he apnay gunahoon ka aitraaf karay ga aur araz karay ga k ALLAH  (azw) ke bargah main us k gunahoon ke bakhsish k liee a dua karain.

 

is ayyat mubarik main buhat saaray masyal aur aqaid pinhaan hain.agar ko e ghaour karay.

 

magar hidyat mutqeen logoon kay liee hay  (QURAAN MAJEED  sura baqra)

Link to post
Share on other sites

مجھے عربی نہیں آتی ترجمہ لکھا کریں ۔میں بحث بھی نہیں کر رہا بلکہ مجھے ایک دیوبندی تنگ کر رہا ہے اس لیے یہاں آپ کی رہنمائی چاہے۔


 


جو پہلی حدیث بیان کی گئی ہے اس میں تو اہل قبور کی طرف منہ کر کے سلام اور ان کے لیے دعا کرنے کا ذکر ہے۔ان کے ذریعے یا ان اہل قبور سے دعا کے لیے کہنے کا ذکر نہیں ہے۔


۔پھر اس میں ہاتھ اٹھانے کا ذکر نہیں ۔اگر آپ کہتے ہیں کہ دعا کے لیے ہاتھ لازمی اٹھاے جاتے ہیں تو بہت سارے مقامات پر دعا تو کی جاتی ہے لیکن ہاتھ نہیں اٹھاے جاتے ۔


 


دوسری حدیث میں اہل قبور کے پاس جا کر ہاتھ اٹھا کر ان کا توسل اختیار کرنے کا ذکر نہیں بلکہ وہاں تو عمومی طور پر دعا کا ذکر ہے ۔


اس لیے آپ کوئی ایسی حدیث بتاہیں جس میں  اہل قبور کے پاس جا کر ہاتھ اٹھا کر ان سے کہا  گیا ہو کہ آپ اللہ کی بارگاہ میں ہماری لیے دعا کر دیں ۔

Link to post
Share on other sites

kissi local samajhdaar molvi sahib/mufti sahib say jaa kar pooch lain.  aap baghair haath utha kar dua kar lia karain.  jab tak mukamal taaleem hasil na kar lain kissi say bhee mazhabi behas na karain.  deobandi tang kar raha hay us ko kissi achay sunni molvi sb kay paas lay ja ain aur apna masla hal kar lain.  jo patta tha aap ko rana khalil sb aur saeedi sb nay samjha dia hay.  is say ziada ko e aur kaun samjha ay ga.

Link to post
Share on other sites

حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم  کا وسیلہ مشہور حدیث نابینا سے ثابت ہے، قبر کی طرف منہ کرنا ترمذی کی حدیث سے ثابت ہے ، دعا کے لئے ہاتھ اٹھانا یہ بھی ترمذی کی حدیث سے ثابت ہے تو کیا اعتراض رہ گیا ؟


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

×
×
  • Create New...