Sign in to follow this  
Followers 0
ziabashir

جناب محمدﷺ کی دعوت توحید اور عرب کے لوگوں کا شرک

126 posts in this topic

 

 گزارش کی تھی کہ کسی ہستی کو الہٰ بنانے کا جو آپ کا نظریہ ہے اس کو ثابت کی جئے

1        واجب الوجود

2      استقلال ذاتی

وہ تو آپ نے ثابت نہیں کیا میں انتظار کر رہا ہوں

الٰہ شرع میں اُسے کہتے ہیں جو مستحق للعبادۃ ہو۔دوسرے علما نے اسے واجب الوجود سے بھی تعبیر کیاہے۔

ملاحظہ ہوں تفسیرکبیرامام رازی وغیرہ۔

کسی غیرمستحق کو عبادت کے لائق ماننا اُسے الٰہ ماننا ہے۔

کسی غیرمستحق کو عبادت کے لائق مانتے ہوئے اُس کی تعظیم کرنا،اظاعت کرنا

سجدہ کرنا،پکارنا،مددمانگنا شرک ہے۔

تقویۃ الایمان میں الٰہ کاترجمہ مالک کیاگیاہے جو غلط ترجمہ ہے۔

استقلال ذاتی ماننا تب ہوتاہے جب باذن اللہ کی قید کے بغیرمانا جائے۔

استقلال ذاتی سے کوئی بھی ایک مکھی پیدانہیں کرسکتامگر

باذن اللہ پرندہ بناکراُڑانے کادعویٰ بھی نبی کررہاہے۔

سورۃ حج:73۔سورۃ ۤل عمران:49۔

جب باذن اللہ کی قیدآتی ہے تو استقلال ذاتی کی نفی ہوتی ہے۔

ورنہ محض من دون اللہ کی حیثیت ہوتی ہے۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

محترم سیدی صاحب قرآن اور حدیث کی دلیل سے ثابت کی جئے 


1        واجب الوجود


2      استقلال ذاتی


3 مستحق عبادت


ان تینوں باتوں سے آپ کی مراد کیاہے اور پھر اس کو ثابت کی جئے اگر آپ سچے ہیں تو 


Edited by ziabashir

Share this post


Link to post
Share on other sites

حدیث یا محمداہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی سند پر اس فورم میں پہلے ہی بحث ہو چکی ہے اس لئے اس پر کلام نہیں کر رہا۔


بہر حال اپنے گرو کی ہی بات مان لو۔۔


al-kalmul-tayyab-ibn-taimmiya1.png


1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

ZIABASHIR SB

 

1.WAJIB UL WUJOOD= JIS KA WUJOOD HAMESHA LAZIM MANA JAI.

 

ISTIQLAL E ZATI= JO APNI SIFAAT K LEAY KISI K IZN KA MUHTAJ NA HO.

 

MUSTAHIQQ E IBADAT= IBADAT K LAIQ.

 

2. AGAR AAP GHAIR ULLAH KO WAJIB UL WUJOOD MAN'NA, YA US K LEAY ISTAQLAL E ZATI MAN'NA, YA USEY LAIQ E IBADAT JAN'NEY KO SHIRK NAHI MANTEY TO HAM SE US K DALAIL MANGEIN WARNA AAP BEHS BARAI BEHS KAR RAHE HAIN.

Share this post


Link to post
Share on other sites

- Wajib ul Wujood - yehni jis ka wojood hona lazim heh [aur nah hona muhaal ho] - yehni Allah.

- Momkin ul Wujood yehni jis ka wojood hona lazim nahin magar wujud ho sakta heh yehni Mukhlooq.

Note: Joh Wajib ul Wujood heh woh kissi ka mohtaaj nahin apnay wojood kay leyeh. Joh Momkin ul wujood [yehni makhlooq] woh Wajib ul Wajoob [yehni Allah] ki mohtaaj heh. Agar kohi Allah kay Wajib ul Wujood honay ka inqaar karay toh qattan Musalman nahin ho sakta.

Istiqlal Zaati, ka inqaar be sarri Kufr heh aur banda Kafir ho jata heh. Aur agar Allah kay wastay Istiqlal Zaati nah manay balkay Atahi manta heh, yehni Allah kee sifaat/khoobiyoon ko kissi ghair kee atah manta heh toh Kafir toh heh hee, haqiqat meh badtreen Kafir heh, yehni Mushrik.

---------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------

Janab aap say maghz mari ka mujjay kohi faida nazr nahin aata. Joh meri baat majaz par mahmool thee aap nay ussay haqiqat leeya. Aap ko bunyadi asool o zawabat ka ilm nahin. Kabi kuch baat haqiqat aur kabi majaz/lughvi meh kahi jaati heh. Aap dekhtay aur suntay hen kay nahin? Suntay/dekhtay hen nah! Allah be dekhta sunta heh kay nahin? Jab dekhnay sunnay ka lafz aap kay leyeh bola jahay ga toh aap ki zaat kay mutabiq samja jahay ga, yehni aankh qaan say dekhna sunna. Aur yahi ilfaaz agar kohi Allah kay leyeh istimal karay, dekhnay sunnay kay toh mafoom meh qaan say suna aur aankh say dekhna murad nah leeh jahay gee. Point yeh heh kay ilfaaz say nahin aqahid say ilfaaz ka mafoom leeya jata heh. Agar aap Allah kay leyeh Sami o Baseer ka lafz istimal karen toh ham aur mafoom lenh gay, aur yahi ilfaz agar insaan kay leyeh istimal karen toh phir usee mafoom meh nahin. Meh nay Dajjal ko malik o mukhtar likha heh aur woh haqiqat meh nahin majaz meh heh. Jistera Isa alayhis salam nay kaha kay meh MURDAY ZINDA KARTA HOON ... murdoon ko zinda karnay kee nisbat apnay say ki magar izn yehni ijazat kee nisbat Allah say ki murdoon ko zinda karnay kee Allah say nisbat nah keeh. Jistera meh aap ko gooma kay tamacha maroon, aur yoon kahoon, kay meh nay aap ko tamacha gooma kar mara, magar kahoon kay ijazat/izn moteram Saeedi Sahib say leeh. Alhasil kabi kohi baat Haqiqat par mahmool hoti heh aur kabi majazi/lughvi mafoom meh.  Aur aap ko is ka ilm hee nahin. Aap nay Quran ki ayaat ko haqiqi mafoom meh leeya aur meri bat joh majaz par mahmool thee ussay haqiqi mafoom par mahmol keeya. Aap ko Tawheed aur Shirk ka ilm hota toh mujjay yeh likhna nah parta. Dosri baat, abh agar kohi Isa alayhis salam kay ilfaaz ko haqiqi mafoom meh leh aur ilzaam deh kay dekho Isa alayhis salam nay toh Allah hona ka dawa keeya. Jistera aap nay meray majazi mafoom meh bolay gahay ilfaaz ko haqiqi meh leeya agar is'see tera Isa alayhis salaam kay ilfaaz ko kohi Christian HAQIQI mafoom meh pesh karay aur kahay kay dekho woh Allah hen keun kay unoon nay murday zinda keeyeh thay toh aap kia jawab denh gay?


Khatam karnay wala thah toh yeh point yaad aa gaya. Mera aur aap ka, aur saray Ambiyah o Awliyah ka [Haqiqat meh] Rabb Allah heh. Abh dekhyeh Quran meh lafz Rabb Yusuf alayhis salaam ek badsha kay leyeh istimal kar rahay hen: "And of the two, to that one whom he consider about to be saved, he said: "Mention me to thy lord." But Satan made him forget to mention him to his lord: and (Joseph) lingered in PRISON a few (more) years." [12:42] Ek Nabi nay lafz Rabb ka itlaq ek insaan kay leyeh keeya, aap us ko Haqiqat par mahmool karen gay aur woh ayaat pesh karen gay jis say auroon kay Rabb honay ka inqar lazam ata heh aur Shirk ka fatwah lagahen gay?

Baqi meh in sha Allah aap ko tafseelan jawab doon ga. Aglay doh din kaam par hoon is leyeh jawab denay meh mushkal hogi. Aap kay leyeh meray yeh articles hen, advice heh kay aap dosray, tesray, aur fourth number par joh article heh ussay zeroor paren aur study karen.
Allah is'see Quran say logoon ko hidayat deta heh aur is'see say gumrah karta heh.

- Tawheed Of Allah (Subhanahu Wa Ta’Ala) Explained Eloquently.

- Principles Which Explain Tawheed And Indicate Shirk.

- Understanding Of Different Types Of Shirk In Islamic Theology.

- Analysis Of Attributes Of Allah (Subhanahu Wa Ta’Ala) To Explain How Shirk Of Attributes Is Warranted.

- Brief Explanation Of Tawheedi Principles With Examples Of Monotheistic And Polytheistic Statements.

- Analysis Of Differing Wahhabi Methodologies Of Determining Exclusivity.

- Critical Analysis Of Ahle Sunnat & Wahhabi Concept Of Exclusivity.

- A Comparative Analysis Of Sunni & Wahhabi: Principles Of Shirk & Exclusivity.

- Prostration As Mark Of Respect Prohibited Due To Being Shirk Or Being Haram.

- Basic Definition Of Worship To Determine Non-Islamic Acts Of Worship.

- Islamic Definition Of Worship For Islamic Acts Of Worship.

Edited by MuhammedAli

Share this post


Link to post
Share on other sites

محترم میری پوری کوشش ہے کہ گفتگو آچھے انداز سے ہو نتیجہ خیز ہومیں نے صاف صاف دلائل کے ساتھ بتا یا شرک کسے کہتے ہیں آپ لوگ نہیں مانتے اب انصاف تو یہ ہے کہ آپ لوگ دلائل سے ثابت کریں جو آپ کہتے ہیں کہ کسی ہستی کے بارے میں کیا ماننا اس کو الہٰ بنا لینا ہے۔


 


آپ لوگ دعوے پے دعوے کرتے جا رہے ہیں دلائل نہیں دیتے مسلہ کیا ہے ؟


آپ لوگوں سےپھر گزارش کرتا ہوں قرآن اور حدیث کی دلیل سے ثابت کی جئے 


1                                             وحدت الوجود 


2                                              استقلال ذاتی


3               لائق عبادت ہونے کا مطلب کیا ہے آپ کے نزدیک


 


آپ لوگ اگر سچے ہیں تو دلائل سے ثابت کیوں نہیں کر دیتے


 جو مجھے سمجھ آئی ہے کہ آپ لوگوں کے نزدیک شرک کیا ہوتا ہے میں وہ بیان کر دیتا ہوں میں کچھ غلط سمجھا ہوں تو اصلاح کر دیجئے گا


1       کسی ہستی کو جب تک وجب الوجود نہ مان جائے تب تک وہ ہستی الہٰ نہیں قرار پائے گی اور شرک نہیں ہو گا 


2                    کسی ہستی کے پاس جو آختیارات ہیں جیسے نفع نقصان وغیرہ کے جب تک وہ ذاتی (اللہ کے دئیے ہوے نہیں یاں اگر اللہ نے دئے تو اب وہ ہستی اللہ کے حکم میں نہیں)نہیں مانے جائے گا تب تک وہ ہستی الہٰ نہیں قرار پائے گی یعنی آپ لوگوں کی طرف سے استقلال ذاتی  کی شرط ہے۔


3              کسی ہستی کو لائق عبادت سمجھ کر اس کی عبادت کرے گا تو ہی وہ ہستی الہٰ قرار پائے گی


اب ان  باتوں کے مطلق میرا موقف سن لی جئے واجب الوجود اور استقلال ذاتی کی شرط آپ لوگوں کی خودساختہ بنائی ہوئی ہے قرآن اور حدیث سے آپ یہ ثابت نہیں کر پائیں گیں


لائق عبادت سے کیا مراد ہے کسی ہستی کے بارے میں کیا ماننا اس کو لائق عبادت ماننا ہے اس چیز کی وضاحت مجھے آپ لوگوں سے مطلوب ہے 

Share this post


Link to post
Share on other sites

آپ نے واجب الوجود اوروحدت الوجود کی اصطلاحات کوگذمڈکردیاہے۔


1


ہم نے واجب الوجود(ازلی ابدی)ماننے کوالٰہ ماننا بتایا۔مگرآپ نے الٰہ ماننے سے واجب الوجودماننا لازم سمجھا۔


آپ نے واجب الوجودماننے کوالٰہ ماننے کی شرط کادرجہ دیا۔وہ الٰہ برحق ماننے کی شرط ضرور ہے۔مطلق معبود


ماننے کی شرط ہرگزنہیں۔اس  کومطلق الٰہ ماننے کی شرط سمجھنا بھی آپ نے غلط سمجھا۔


2


استقلال ذاتی ماننے کامطلب یہ کہ اختیارات کوخداداد نہ مانا جائے یا مقیدباذن اللہ نہ مانا جائے۔آپ نے محض


عطائی نہ مانناہی استقلال ذاتی سمجھا۔یہ بھی آپ غلط سمجھے۔


3


کسی کولائق عبادت سمجھ کراُس کی عبادت کرنے کوآپ نے الٰہ ماننا سمجھا۔یہ بھی آپ غلط سمجھے۔ کسی کو صرف


لائق عبادت سمجھناہی اُس کوالٰہ مانناہے۔عبادت کرنالازمی نہیں جوآپ سمجھے ہیں۔


:excl:


واجب الوجود اور استقلال ذاتی کی شرط آپ لوگوں کی خودساختہ بنائی ہوئی ہے قرآن اور حدیث سے آپ یہ ثابت نہیں کر پائیں گیں


واجب الوجودہونا اوراستقلال ذاتی الٰہ برحق کے لئے لازم ہیں۔توحیدکی اصطلاح کی طرح یہ الفاظ تو نئے ہو سکتے 


مگران کامطلب قرآن وحدیث سے ثابت ہے۔


:excl:


 لائق عبادت سے کیا مراد ہے کسی ہستی کے بارے میں کیا ماننا اس کو لائق عبادت ماننا ہے اس چیز کی وضاحت مجھے آپ لوگوں سے مطلوب ہے


عبادت کے لائق ماننے کامطلب بھی آپ نہیں سمجھ سکتے توبحث کاشوق کیسے ہوا؟


آپ سے پوچھاتھامگرآپ نے جواب نہ دیا۔وہ سوال پھرحاضرہے۔جواب دو


تاکہ ہم بات آگے بڑھائیں۔


AGAR AAP GHAIR ULLAH KO WAJIB UL WUJOOD MAN'NA, YA US K LEAY ISTAQLAL E ZATI MAN'NA, YA USEY LAIQ E IBADAT JAN'NEY KO SHIRK NAHI MANTEY TO HAM SE US K DALAIL MANGEIN WARNA AAP BEHS BARAI BEHS KAR RAHE HAIN.


یعنی اگرآپ غیراللہ کوواجب الوجودماننا،یااُس کے لئے استقلال ذاتی ماننا،یااُسے لائق عبادت جاننے کو


شرک نہیں مانتے توہم سے اُس کے دلائل مانگیں ورنہ آپ بحث برائے بحث کررہے ہیں۔


Edited by Saeedi

Share this post


Link to post
Share on other sites

سیدی صاحب اصلاح کا شکریہ پچھلی پوسٹ میں واجب الوجود لکھنا تھا غلطی سے وحدت الوجود لکھ دیا یہ مجھ سے غلطی ہوئی تھی آپ کا شکر یہ کہ آپ نے صاف لفظوں میں آپنا موقف بیان کیا کسی بھی اختلاف کے وقت فریقین کو ایک دوسرے کو موقف کو صیح طور پر سمجھنا بہت ضروری ہوتا ہے کہ تاکہ اختلاف کا حل ہو سکے


1 واجب الوجود


سیدی صاحب نے لکھا ہم نے واجب الوجود(ازلی ابدی)ماننے کوالٰہ ماننا بتایا۔مگرآپ نے الٰہ ماننے سے واجب الوجودماننا لازم سمجھا۔

آپ نے واجب الوجودماننے کوالٰہ ماننے کی شرط کادرجہ دیا۔وہ الٰہ برحق ماننے کی شرط ضرور ہے۔مطلق معبود

 

ماننے کی شرط ہرگزنہیں۔اس کومطلق الٰہ ماننے کی شرط سمجھنا بھی آپ نے غلط سمجھا۔



جی محترم آپ کی بات سمجھ آ گئی یہ واجب الوجود شرط نہیں کسی ہستی کو الہٰ بنانے کی ۔یعنی کوئی کسی کو واجب الوجود مانے بغیر بھی الہٰ بنا سکتا ہے

یہ شرط نہیں ہے اس لئے میں آپ سے واجب الوجود ثابت کرنے کا مطالبہ نہیں کرتا واجب الوجود پر بات ختم ہوئی۔


2 استقلال ذاتی:


جناب سیدی صاحب نے لکھااستقلال ذاتی ماننے کامطلب یہ کہ اختیارات کوخداداد نہ مانا جائے یا مقیدباذن اللہ نہ مانا جائے۔آپ نے محض

عطائی نہ مانناہی استقلال ذاتی سمجھا۔یہ بھی آپ غلط سمجھے۔



اس بات میں مجھے آپ سے اختلاف ہے میں کوشش کرتا ہوں صاف لفظوں میں اختلاف کو بیان کروں

جو بندہ اللہ کی ذات کا اقرار کرتا ہے کہ اللہ زمین اور آسمان کو تخلیق کرنے والا ہے تمام کاموں کی تدبیر اللہ کر رہاہے تمام چیزوں پر اللہ اختیار رکھتا ہے اس بندے کیلئے تو یہ بات صاف ہے اللہ کے سوا کسی کے پاس جو کمال خوبی اختیار ہے وہ اللہ کا ہی دیا ہوا ہے اللہ کے سوا کسی کے پاس ذاتی کسی چیز کا ہونا ممکن ہی نہیں یعنی استقلال ذاتی ناممکن ہے اور حقیقت بھی یہی ہے۔

اسی بات میں میرا اور آپ کا اختلاف شروع ہوتا ہے میں آپنی پوسٹ میں دلائل کے ساتھ بیان کیا تھا کہ اللہ کے سوا کسی ہستی کے پاس کچھ اختیارات ماننا اس ہستی کو الہٰ بنا لینا ہے

مثال کے طور پر اللہ کے سوا کسی ہستی کے پاس نفع نقصان کا اختیار ماننا اس ہستی کو الہٰ بنا لینا ہے چاہے آپ اللہ کے اذن سے مانیں تب بھی۔

یعنی اللہ کے سوا کسی ہستی کے پاس نفع نقصان کا اختیار ماننا شرک ہے اس کیلئے استقلال ذاتی کی شرط بریلوی لوگوں کی خود ساختہ ہے ۔

اس بات کو تو آپ لوگوں کو بھی اقرار ہے عرب کے لوگ آپنے الہٰ کے پاس جو اختیارات(نفع نقصان کے، مشکل پریشانی دور کرنے کے) مانتے تھے وہ اللہ کے اذن سے مانتے تھے لیکن آپنی استقلال ذاتی کی شرط کی لاج رکھنے کیلئے آپ لوگوں کی طرف سے ایک دعوی آیا کہ عرب کے لوگ آپنے الہٰ کو اللہ کے حکم میں نہیں مانتے تھے کہ جو چاہیں کریں یعنی اللہ سے اختیارات ملنے کے بعد وہ اللہ کے ماتحت نہیں رہے، یہی عرب کے لوگوں کا الہٰ بنا لینا تھا۔

میں شروع سے اب تک آپ سے اسی دعوے کا ثبوت مانگ رہا ہوں اور آپ لوگ قرآن اور حدیث سے ثابت نہیں کرتے۔


اس لیے مخترم سیدی صاحب ، محمد علی صاحب، خلیل رانا صاحب یاں اور بھی جو لوگ ہیں ان سے مودبانہ گزارش ہے کہ وہ عرب کے لوگوں کیلئے استقلال ذاتی ثابت کریں قرآن اور حدیث کی دلیل سے اگر آپ نے یہ کر دیا تو میں مان لوں گا بریلوی مسلک سچا ہے اور اگر آپ نہ کر پائیں تو آپ مان لیں بریلوی مسلک باطل ہے

ہمارے اختلاف کو حل کرنے کا طریقہ میں نے آپ کو بتا دیا ہے

Edited by ziabashir

Share this post


Link to post
Share on other sites

،

 

 اللہ کے سوا کسی ہستی کے پاس کچھ اختیارات ماننا اس ہستی کو الہٰ بنا لینا ہے۔

مثال کے طور پر

اللہ کے سوا کسی ہستی کے پاس نفع نقصان کا اختیار ماننا اس ہستی کو الہٰ بنا لینا ہے چاہے آپ اللہ کے اذن سے مانیں تب بھی۔

 

اس بات کو تو آپ لوگوں کو بھی اقرار ہے

عرب کے لوگ آپنے الہٰ کے پاس جو اختیارات(نفع نقصان کے، مشکل پریشانی دور کرنے کے) مانتے تھے وہ اللہ کے اذن سے مانتے تھے

لیکن

آپنی استقلال ذاتی کی شرط کی لاج رکھنے کیلئے آپ لوگوں کی طرف سے ایک دعوی آیا کہ

عرب کے لوگ آپنے الہٰ کو اللہ کے حکم میں نہیں مانتے تھے کہ جو چاہیں کریں

جناب مشرکین عرب اپنے الٰہوں کے لئے اختیارات( باذن اللہ) کی قیدکے ساتھ مقید نہیں مانتے تھے۔

اورہمارایہ موقف اس بحث میں ایک شرط کی لاج رکھنے کے لئے نہیں بنا۔بلکہ شروع سے ہے۔

آپ کایہ کہناکہ(اس بات کوتوآپ لوگوں کوبھی اقرار ہے)ایک بہت بڑی غلط بیانی ہے اوراس کا

آپ کے پاس مچھرکے برابربھی کوئی ثبوت نہیں۔ورنہ ہم نے کہاں یہ اقرار کیا؟ثبوت دیں۔

ورنہ جھوٹ  اورجھوٹے مذہب سے

توبہ کریں۔

 

 

میں شروع سے اب تک آپ سے اسی دعوے کا ثبوت مانگ رہا ہوں اور آپ لوگ قرآن اور حدیث سے ثابت نہیں کرتے۔۔۔ گزارش ہے کہ وہ عرب کے لوگوں کیلئے استقلال ذاتی ثابت کریں قرآن اور حدیث کی دلیل سے اگر آپ نے یہ کر دیا تو میں مان لوں گا بریلوی مسلک سچا ہے اور اگر آپ نہ کر پائیں تو آپ مان لیں بریلوی مسلک باطل ہے

ہمارے اختلاف کو حل کرنے کا طریقہ میں نے آپ کو بتا دیا ہے

میں جواب دے چکا۔مگرآپ نے نہ سمجھا۔پھرملاحظہ ہو:۔

 

استقلال ذاتی ماننا تب ہوتاہے جب باذن اللہ کی قید کے بغیرمانا جائے۔

استقلال ذاتی سے کوئی بھی ایک مکھی پیدانہیں کرسکتامگر

باذن اللہ پرندہ بناکراُڑانے کادعویٰ بھی نبی کررہاہے۔

سورۃ حج:73۔سورۃ آل عمران:49۔

جب باذن اللہ کی قیدآتی ہے تو استقلال ذاتی کی نفی ہوتی ہے۔

ورنہ محض من دون اللہ کی حیثیت ہوتی ہے۔

 

 

Edited by Saeedi

Share this post


Link to post
Share on other sites

سیدی صاحب میں انتظار کر رہا تھا کہ آپ لوگوں کی طرف سے عرب کے لوگ استقلال ذاتی کے قائل تھے اس بات کا ثبوت آئے لیکن نہیں آ سکا سارے بریلوی علما آکھٹے کر لو پورا  زور لگا لو پھر بھی تم عرب کے لوگوں کے لئے استقلال ذاتی ثابت نہیں کر پاؤ گے
تو آپنے بریلوی مسلک کو باطل مان لو نہیں تو استقلال ذاتی ثابت کر دو عرب کے لوگوں کے لئے ۔

 

سیدی صاحب مجھ پر چھوٹ کی تہمت لگائی 

آپ کایہ کہناکہ(اس بات کوتوآپ لوگوں کوبھی اقرار ہے)ایک بہت بڑی غلط بیانی ہے اوراس کا

آپ کے پاس مچھرکے برابربھی کوئی ثبوت نہیں۔ورنہ ہم نے کہاں یہ اقرار کیا؟ثبوت دیں۔

ورنہ جھوٹ  اورجھوٹے مذہب سے

توبہ کریں۔

 

 

 

سیدی صاحب خلیل رانا صاحب نے اقرار کیاہے اگر آپ نے کچھ کہنا ہے تو ان کو کہیں خلیل رانا صاحب نے لکھا تھا

 

مسلمان مومن انبیاء واولیاء  میں جو بھی اختیارات مانتا ہے وہ اللہ تعالیٰ کی عطاء سے مانتا ہے، جب کہ مشرکین کہتے تھے کہ ہم بھی اللہ کی عطا

 

سے اختیارات مانتے ہیں مگر اللہ نے اب ان کو اپنے حکم میں نہیں رکھا ، اَب یہ جو چاہیں کرسکتے ہیں،مشرکین کا یہی استقلال کا عقیدہ ان کو معبود

 

بناتا ہے، جس کی تردید قرآن کریم میں جگہ جگہ ہے

 

 

سیدی صاحب پہلے خلیل رانا صاحب کو سمجھاو کہ آپ کا مسلک کیا ہے 

Share this post


Link to post
Share on other sites

گفتگو خاصی طویل ہے، اس لیے مکمل تو نہیں پڑھ سکا مگر بنظر غائر دیکھنے سے چند سوالات ذہن میں پیدا ہوئے جن کے جواب کے لیے ضیا بشیر صاحب سے ملتمس ہوں، امید ہے سرفراز فرمائیں گے۔


پوسٹ نمبر 50 میں آپ لکھتے ہیں


 


جب میں کہتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی نفع نقصان کا اختیار نہیں رکھتا اس کا یہ مطلب نہیں اللہ کے سوا کوئی کسی کو نفع یا نقصان نہیں پہنچا سکتا یا کسی کے پاس کوئی اختیار ہی نہیں حکومت طاقت ہی نہیں۔


 


چند سطر بعد مزید لکھتے ہیں


 


کوئی کسی کو فائدہ یا نقصان پہنچا دینے سے نفع نقصان کا مالک نہیں بن جاتا ورنہ فرعون کے پاس اختیار نہیں تھے کیا؟؟  نفع نقصان کا اختیار ہونا اس سے بلند تر شے ہے۔


 


آخری فقرے میں غالباً آپ "اختیار کا مالک" کہنا چاہتے تھے مگر غلطی سے فقط لفظ "اختیار" لکھ دیا کیونکہ ایک ہی وقت میں کسی بات کا اقرار بھی کرنا اور انکار بھی، یہ قابل فہم بات نہیں۔


 


بظاہر معلوم ہوتا ہے کہ آپ کے نزدیک بھی ارتکاب شرک کے لیے محض اختیار ماننا کافی نہیں، بلکہ اس کے لئے ملکیت کا اعتقاد کرنا شرط ہے۔ کیونکہ اگر صرف اختیار تسلیم کر لینا شرک ہوتا، تو آپ فرعون کے حق میں اسے تسلیم کر کے خود شرک کا ارتکاب بھلا کیونکر فرماتے؟ دوسرے لفظوں میں یوں کہہ لیجئے کہ اختیار دو قسم کا ہے۔ ایک وہ جو اللہ تعالیٰ کا عطا کردہ ہو، یعنی باذن اللہ۔ دوسرا وہ جو یا تو بغیر عطا کے مانا جائے، یا پھر حاصل تو بعطائے الٰہی ہو، مگر بعد از حصول کسی صفت میں موصوف کو ایسا تصرف حاصل ہو جائے جو اذن الٰہی کا محتاج نہ رہے۔ کیونکہ حقیقی ملکیت اسی کو کہیں گے جس میں تصرف ذاتی ہو۔


 


تو فرمائیے، جس میں کسی اختیار کے حصول اور اس کے استعمال کے لیے اذن الٰہی کو شرط مانا جائے، ایسے اعتقاد کو آپ شرک کہیں گے یا نہیں؟


دوسرے یہ کہ مشرکین مکہ کا شرک غیر اللہ میں باذن اللہ اختیار ماننا تھا یا پھر من دون اللہ اختیار تسلیم کرنا؟ اگر کہیں کہ ان کے مشرک ہونے کی بنیادی وجہ محض اختیار ماننا تھا، اگرچہ باذن اللہ ہو، تو پھر اتنی وضاحت ضرور فرما دیجئے گا کہ محض اختیار تو خود آپ فرعون کے لیے بھی تسلیم کر رہے ہیں، تو کیا آپ بھی شرک کے مرتکب ثابت ہوئے یا نہیں؟


Edited by Ahmad Lahore
1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

 

سیدی صاحب میں انتظار کر رہا تھا کہ آپ لوگوں کی طرف سے عرب کے لوگ استقلال ذاتی کے قائل تھے اس بات کا ثبوت آئے لیکن نہیں آ سکا سارے بریلوی علما آکھٹے کر لو پورا زور لگا لو پھر بھی تم عرب کے لوگوں کے لئے استقلال ذاتی ثابت نہیں کر پاؤ گے

تو آپنے بریلوی مسلک کو باطل مان لو نہیں تو استقلال ذاتی ثابت کر دو عرب کے لوگوں کے لئے ۔

سیدی صاحب مجھ پر چھوٹ کی تہمت لگائی

آپ کایہ کہناکہ(اس بات کوتوآپ لوگوں کوبھی اقرار ہے)ایک بہت بڑی غلط بیانی ہے اوراس کا

آپ کے پاس مچھرکے برابربھی کوئی ثبوت نہیں۔ورنہ ہم نے کہاں یہ اقرار کیا؟ثبوت دیں۔

ورنہ جھوٹ اورجھوٹے مذہب سے

توبہ کریں۔

سیدی صاحب خلیل رانا صاحب نے اقرار کیاہے اگر آپ نے کچھ کہنا ہے تو ان کو کہیں خلیل رانا صاحب نے لکھا تھا

مسلمان مومن انبیاء واولیاء میں جو بھی اختیارات مانتا ہے وہ اللہ تعالیٰ کی عطاء سے مانتا ہے، جب کہ مشرکین کہتے تھے کہ ہم بھی اللہ کی عطا

سے اختیارات مانتے ہیں مگر اللہ نے اب ان کو اپنے حکم میں نہیں رکھا ، اَب یہ جو چاہیں کرسکتے ہیں،مشرکین کا یہی استقلال کا عقیدہ ان کو معبود

بناتا ہے، جس کی تردید قرآن کریم میں جگہ جگہ ہے

سیدی صاحب پہلے خلیل رانا صاحب کو سمجھاو کہ آپ کا مسلک کیا ہے

Abh Sunni ho jaho meh nay istiqlal zaati ka joh ilzaam lagta thah woh sabat kar deeya heh. Kalma ashadu al la ilahha il allah muhaddur rasoolallah, par loh abh. :) Sunniyoon say guzarish heh kay in ko firqa Basheeriyyah Wahhabiyyah kay nazriat ko Ulamah e Salaf o Khalaf say sabat karnay ka kahen ta-kay behas khatam ho. In sahib say behas kabi khatam nahin honay wali, keun kay Allah aur Rasool khud banay hen is leyeh joh pasand aya ussay ayn Tawheed aur Islam bana lenh gay. Is ka hal yahi heh kay janab ko kaha jahay kay apnay nazriat ko Salaf aur Khalaf waghera say sabat karay. Hadith meh heh kay log ahen gay aur esi baten karen gay joh tumaray baap dada nay nahin suneeh hoon gi. In say kahen kay hamaray baap dada ko chor kar chalen apnay baap dada say sabat kar denh, aur phir un kay aur phir un kay ... matlab doh teen generation meh mutawatir chain ho. In kay Firqa Basheeriyyah ka banda phoot jahay ga. Har banday say ilmi behas ka faida nahin keun kay har banda is qabil nahin aur janab ko bunyadi Tawheed o Shirk kay asool o zawabat be maloom nahin.Meri taraf say aynda shahid hee kohi jawab ho is mozoo par, in janab say behas waqt barbadi heh aur jis kaam meh, meh masroof hoon aur rakhta hoon woh bhot zeroori heh. In say maghz mari kohi faida nahin deh gee apnay damagh kee kichri banani aur waqt barbadi heh.

 

 

 

....

 

Janab yeh mantay hen kay sirf nafa o nuqsan kay ikhtiyar say kohi khuda/Ilah nahin banta, agar mantay toh Dajjal ko Allah maantay, magar nahin mana, jis say yahi sabat hota heh kay nafa o nuqsaan kay ihtiyar say Allah yehni Ilah ka tayyun nahin hota in kay nazdeeq bi. Magar firqa Basheeriyya kay bani ko yeh bi pata nahin kay kesay nafa o nuqsaan kay ikhtiyar maan kar Ilah ka tayyun hota heh. Yehni agar kissi meh Zaati, Haqiqi, Qulli, Azli, Abdi, Daimi, ... kay mafoom meh Nafa o nuqsaan mana jahay toh phir ussay Ilah ka darja deeya gaya. Magar firqa Basheeriyyah Wahhabiyyah kay baani is ko qabool karnay par tiyar nahin aur khud ko yeh bee pata nahin kay kia mantay hen aur kia nahin, kabi nafa o nuqsaan ka ikhtiyar say Allah honay ka tayyun kartay hen aur jab yeh Nafa o Nuqsan ghair meh sabat ho jahay toh, phir ussay Allah be nahin mantay - yehni Dajjal. Alhasil Allah woh heh joh nafa o nuqsaan par ikhtiyar rakhta heh. Magar us'see saans meh dajjal nafa o nuqsaan be deh ga magar Allah nahin. Tum nay toh gooma kar tamacha marnay kee baat kee heh, nahin, nahin, yeh ma taht al asbab nafa o nuqsaan ka ikhtiyar heh, yeh kesay Shirk huwa. Acha firqa Basheeriyyah kay bani, dajjal jissay zinda karay ga woh toh ma fawkal asbab heh, abh bee woh Allah bana kay nahin. Ham musalmanoon nay in ko Tawheed kee wazahat kar deeh thee magar janab ko firqa Basheeriyyah Wahhabiyyah par qaim rehna heh. In janab kay ilm ke darja yeh heh kay abhi taq yeh tayyun nahin kar sakkay kay Ilah ka tayyun kistera hota heh. Ma fawkal asbab nafa o nuqsaan ka ikhtiyar yeh Allah kay leyeh mantay hen, aur agar yahi ghair kay leyeh mana jahay toh yeh Shirk ka fatwah deh maren gay, magar ma fawkal asbab wala nafa aur nuqsaan ka ikhtiyar yeh Dajjal kay leyeh maneh toh phir Shirk ka fatwah gum ho jata heh. In janab meh ilm kam aur deengen marnay ka shawq ziyada heh. Yeh janab aap kay hawalay hen, aap maghz mari karen, meh firqa Basheeriyyah Wahhabiyyah kay bani say haar man leta hoon. lol. Yeh jheet gahay hen, Barelwi'at jhooti ho gahi heh. lol.

Share this post


Link to post
Share on other sites


 

سیدی صاحب میں انتظار کر رہا تھا کہ آپ لوگوں کی طرف سے عرب کے لوگ استقلال ذاتی کے قائل تھے اس بات کا ثبوت آئے لیکن نہیں آ سکا

آپ کوباذن اللہ پرندہ بنانے اورمن دون اللہ مکھی نہ بناسکنے سے استقلال ذاتی کافرق بتایا تھا۔آپ نے

جواب دینے کی بجائے ثبوت نہ آنے کاارشاد فرمادیا۔کبوترکی طرح آنکھیں بند نہ کریں۔

 

 

 اللہ کے سوا کسی ہستی کے پاس کچھ اختیارات ماننا اس ہستی کو الہٰ بنا لینا ہے۔

مثال کے طور پر

اللہ کے سوا کسی ہستی کے پاس نفع نقصان کا اختیار ماننا اس ہستی کو الہٰ بنا لینا ہے چاہے آپ اللہ کے اذن سے مانیں تب بھی۔

 

اس بات کو تو آپ لوگوں کو بھی اقرار ہے

عرب کے لوگ آپنے الہٰ کے پاس جو اختیارات(نفع نقصان کے، مشکل پریشانی دور کرنے کے) مانتے تھے وہ اللہ کے اذن سے مانتے تھے

لیکن

آپنی استقلال ذاتی کی شرط کی لاج رکھنے کیلئے آپ لوگوں کی طرف سے ایک دعوی آیا کہ

عرب کے لوگ آپنے الہٰ کو اللہ کے حکم میں نہیں مانتے تھے کہ جو چاہیں کریں

 

 

 

اورہمارایہ موقف اس بحث میں ایک شرط کی لاج رکھنے کے لئے نہیں بنا۔بلکہ شروع سے ہے۔

آپ کایہ کہناکہ(اس بات کوتوآپ لوگوں کوبھی اقرار ہے)ایک بہت بڑی غلط بیانی ہے اوراس کا

آپ کے پاس مچھرکے برابربھی کوئی ثبوت نہیں۔ورنہ ہم نے کہاں یہ اقرار کیا؟ثبوت دیں۔

ورنہ جھوٹ  اورجھوٹے مذہب سے

توبہ کریں۔

 

 

سیدی صاحب مجھ پر چھوٹ کی تہمت لگائی

سیدی صاحب خلیل رانا صاحب نے اقرار کیاہے اگر آپ نے کچھ کہنا ہے تو ان کو کہیں خلیل رانا صاحب نے لکھا تھا

مسلمان مومن انبیاء واولیاء  میں جو بھی اختیارات مانتا ہے وہ اللہ تعالیٰ کی عطاء سے مانتا ہے، جب کہ مشرکین کہتے تھے کہ ہم بھی اللہ کی عطا

سے اختیارات مانتے ہیں مگر اللہ نے اب ان کو اپنے حکم میں نہیں رکھا ، اَب یہ جو چاہیں کرسکتے ہیں،مشرکین کا یہی استقلال کا عقیدہ ان کو معبود

بناتا ہے، جس کی تردید قرآن کریم میں جگہ جگہ ہے

 

سیدی صاحب پہلے خلیل رانا صاحب کو سمجھاو کہ آپ کا مسلک کیا ہے

آپ نے اپنے جھوٹ کے سچ ہونے پراصرارکیاہے۔حالانکہ خلیل رانا صاحب نے

وہی موقف لکھاہے جوہم نے لکھاہے۔کہ مشرکین اپنے بتوں کے لئے اذن اللہ کے قائل

نہیں تھے۔اللہ نے اب ان کو اپنے حکم میں نہیں رکھا۔کی عبارت خودآپ نے ہی درج کی ہے۔

البتہ آپ کی عبارت ذیل سے ظاہرہوتاہے کہ آپ کے نزدیک مشرکین عرب

اپنے بتوں کے اختیارات باذن اللہ سے مشروط مانتے تھے۔

اس بات کو تو آپ لوگوں کو بھی اقرار ہے

عرب کے لوگ آپنے الہٰ کے پاس جو اختیارات(نفع نقصان کے، مشکل پریشانی دور کرنے کے) مانتے تھے وہ اللہ کے اذن سے مانتے تھے

اس عبارت میں (بھی)کالفظ بتاتاہے کہ یہ آپ کاموقف ہے جس کی تائید آپ ہم

سے تلاش کررہے ہیں۔

 

،

 

 

Edited by Saeedi
1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

Ji Mohammed Ali bhai Jab dajjal murdon ko zinda karega Ya asman se baarish barsayega to Wahabi use khuda maan leinge. Q k wahabi kahete hain ke ye kaam to sirf ALLAH ka hai.

Edited by wasim raza

Share this post


Link to post
Share on other sites

میری پوری کوشش ہے گفتگو الجھے نہ ہم کسی نتیجے پر پہنچ سکیں ایک دوسرے کو الزام دینا بڑا آسان ہے میں نے پوری کوشش کی ہے کسی کا موقف صیح طرح سے بیان کروں اس میں کوئی تبدیلی نہ کروں 

سیدی صاحب اب تو  محمد علی اور خلیل رانا صاحب اقرار کر چکے ہیں عرب کے لوگ آپنے الہٰ کے پاس جو اختیارات مانتے تھے وہ اللہ کے اذن سے مانتے تھے یہاں تک تو سیدی صاحب آپ بھی مان لیجئے آگے جو رانا صاحب نے کہا        مگر اللہ نے اب ان کو اپنے حکم میں نہیں رکھا ، اَب یہ جو چاہیں کرسکتے ہیں،مشرکین کا یہی استقلال کا عقیدہ ان کو معبود بناتا ہے

 

میں نے تو کوشش کی ہے اختلاف ختم ہو جائے اور جو آپ نے دعوی کیا ہے 

 

مگر اللہ نے اب ان کو اپنے حکم میں نہیں رکھا ، اَب یہ جو چاہیں کرسکتے ہیں،مشرکین کا یہی استقلال کا عقیدہ ان کو معبود بناتا ہے

 

اس دعوے کو ثابت کر دیں تو میں مان لوں گا بریلوی مسلک سچا ہے نہیں تو آپ مان لیں بریلوی مسلک باطل ہے یاں آپ مان لیں کہ آپ کا دعوی غلط ہے۔

 

اللہ ہم کو ہر گمراہی سے بچائے آمین 

جو طعنے مارنے ہیں وہ آپ کی مرضی ہے  خلیل رانا صاحب اور باقی لوگ ہماری گفتگو ہی اسی پر ہو رہی ہے کہ کسی ہستی کے بارے میں کیا ماننا اس ہستی کو الہٰ بنانا ہے اسی میں تو میرا اور آپ لوگوں کا اختلاف ہے۔

 

خلیل رانا صاحب کی تان وہی پر ٹوٹتی ہے وہ بتوں کو الہٰ مانتے تھے جناب والا یہی تو میں بتانے کی کوشش کر رہا ہوں قرآن اور حدیث سے کہ انہوں نے کیا مانا کس بات پر قرآن نے ان کو مشرک قرار دیا 

میری پہلی پوسٹ کو دوبارہ غور سے پڑھ لیں دلائل کے ساتھ بتا یا ہے کہ عرب کے لوگوں نے

 

اللہ کے سوا اور ہستیوں کےپاس نفع نقصان کا اختیار مانا  یہی تو ہے ان ہستیوں کو الہٰ بنانا

اللہ کے سوا اور ہستیوں کو مشکل پریشانیاں دور کرنے والی مانا کہ یہ اللہ کی سلطنت میں جیسے مرضی تصرف کر کے ہماری مشکلات کو حل کردیں گی یہی

  تو ہے ان ہستیوں کو الہٰ بنانا     اور ان کو دعوی بھی یہی تھا کہ اللہ نے ان ہستیوں کو نفع نقصان کے اختیارات دئے ہوئے ہیں ان لوگوں نے اللہ پر جھوٹ باندھا

سوچنے کی بات ہے جو کام عرب کے لوگ کریں تو وہ مشرک  وہی کام بریلوی کریں تو آپنا فیصلہ خود کر لو۔

 

خلیل رانا صاحب جو بات مجھ سے منوانا چاہتے ہیں مشرکیں عرب آپنے الہٰ کو اللہ کے برابر سمجھتے تھے بلکل قرآن کی آیت ہے میں کیسے انکار کرسکتا ہوں آیت پہلے نقل کر کے مجھ سے بات منوا لیتے  محترم میں آپ کی طرح نہیں کہ آپنے پاس سے ذاتی اور عطائی کا اصول بنا کر قرآن کا انکار کر دوں جیسے آپ حضرات کرتے ہیں جب آپ کے سامنے قرآن کی وہ آیات نقل کی جائیں جس میں اللہ نے آپنے رسول جناب محمدﷺ نے اعلان کروایا ہے جناب محمد ﷺ بھی آپنے اور تمھارے نفع نقصان کا اختیار نہیں رکھتے۔

 

حق تو اللہ نے آپنے رسول جناب محمدﷺ سے اعلان کروا دیا ہے آپ لوگ نہیں مانتے ہیں 

 

خیر بات ہو رہی تھی عرب کے لوگ آپنے الہٰ کو اللہ کے برابر سمجھتے تھے  محترم خلیل رانا صاحب برابری کئ قسم کی ہوتی ہے مثال کے طور پر کوئی ہندو ہو سکھ ہو مسلمان ہو وہ  پاکستانی ہونے میں برابر ہے اگر وہ پاکستان کا شہری ہے۔ اس طرح اور کئی مثالیں دیں جا سکتی ہیں۔ 

 

 
26.95.  وَجُنُودُ إِبْلِيسَ أَجْمَعُونَ     ٘
26.95.   اور ابلیس کے تمام لشکر (١) بھی وہاں۔
 
26.96.  قَالُوا وَهُمْ فِيهَا يَخْتَصِمُونَ     ٘
26.96.   آپس میں لڑتے جھگڑتے ہوئے کہیں گے۔
 
26.97.  تَاللَّهِ إِن كُنَّا لَفِي ضَلَالٍ مُّبِينٍ     ٘
26.97.   کہ قسم اللہ کی! یقیناً ہم تو کھلی غلطی پر تھے۔
 
26.98.  إِذْ نُسَوِّيكُم بِرَبِّ الْعَالَمِينَ     ٘
26.98.   جبکہ تمہیں رب العالمین کے برابر سمجھ بیٹھے تھے (١)
 

 

چونکہ برابری کئی طرح کی ہوتی ہے جیسے کسی اور ہستی کی عبادت کرنا اس ہستی کو اللہ کے برابر ماننا ہے عبادت کرنے کے لحاظ سے

 اس لئے محترم خلیل رانا صاحب آپ بتائے آپ کیا مطلب نکال رہے ہیں  وہ بتائیے تا کہ ہم قرآن کی باقی آیات سے دکھیں کہ آپ کا نکالا مطلب صیح

ہے کہ نہیں۔

 

 جہاں تک بات ہے احمد لاہوری صاحب کے سوالوں کی محترم میری پہلی پوسٹ کو غور سے پڑھ لیں میں نے کس چیز کو شرک لکھا وہ صاف صاف بتا دیا ہے

 

 

گفتگو خاصی طویل ہے، اس لیے مکمل تو نہیں پڑھ سکا مگر بنظر غائر دیکھنے سے چند سوالات ذہن میں پیدا ہوئے جن کے جواب کے لیے ضیا بشیر صاحب سے ملتمس ہوں، امید ہے سرفراز فرمائیں گے۔

پوسٹ نمبر 50 میں آپ لکھتے ہیں

 

جب میں کہتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی نفع نقصان کا اختیار نہیں رکھتا اس کا یہ مطلب نہیں اللہ کے سوا کوئی کسی کو نفع یا نقصان نہیں پہنچا سکتا یا کسی کے پاس کوئی اختیار ہی نہیں حکومت طاقت ہی نہیں۔

 

چند سطر بعد مزید لکھتے ہیں

 

کوئی کسی کو فائدہ یا نقصان پہنچا دینے سے نفع نقصان کا مالک نہیں بن جاتا ورنہ فرعون کے پاس اختیار نہیں تھے کیا؟؟  نفع نقصان کا اختیار ہونا اس سے بلند تر شے ہے۔

 

آخری فقرے میں غالباً آپ "اختیار کا مالک" کہنا چاہتے تھے مگر غلطی سے فقط لفظ "اختیار" لکھ دیا کیونکہ ایک ہی وقت میں کسی بات کا اقرار بھی کرنا اور انکار بھی، یہ قابل فہم بات نہیں۔

 

بظاہر معلوم ہوتا ہے کہ آپ کے نزدیک بھی ارتکاب شرک کے لیے محض اختیار ماننا کافی نہیں، بلکہ اس کے لئے ملکیت کا اعتقاد کرنا شرط ہے۔ کیونکہ اگر صرف اختیار تسلیم کر لینا شرک ہوتا، تو آپ فرعون کے حق میں اسے تسلیم کر کے خود شرک کا ارتکاب بھلا کیونکر فرماتے؟ دوسرے لفظوں میں یوں کہہ لیجئے کہ اختیار دو قسم کا ہے۔ ایک وہ جو اللہ تعالیٰ کا عطا کردہ ہو، یعنی باذن اللہ۔ دوسرا وہ جو یا تو بغیر عطا کے مانا جائے، یا پھر حاصل تو بعطائے الٰہی ہو، مگر بعد از حصول کسی صفت میں موصوف کو ایسا تصرف حاصل ہو جائے جو اذن الٰہی کا محتاج نہ رہے۔ کیونکہ حقیقی ملکیت اسی کو کہیں گے جس میں تصرف ذاتی ہو۔

 

تو فرمائیے، جس میں کسی اختیار کے حصول اور اس کے استعمال کے لیے اذن الٰہی کو شرط مانا جائے، ایسے اعتقاد کو آپ شرک کہیں گے یا نہیں؟

دوسرے یہ کہ مشرکین مکہ کا شرک غیر اللہ میں باذن اللہ اختیار ماننا تھا یا پھر من دون اللہ اختیار تسلیم کرنا؟ اگر کہیں کہ ان کے مشرک ہونے کی بنیادی وجہ محض اختیار ماننا تھا، اگرچہ باذن اللہ ہو، تو پھر اتنی وضاحت ضرور فرما دیجئے گا کہ محض اختیار تو خود آپ فرعون کے لیے بھی تسلیم کر رہے ہیں، تو کیا آپ بھی شرک کے مرتکب ثابت ہوئے یا نہیں؟

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

جناب! اگر آپ کی پہلی پوسٹ میں احمد لاہوری کے ان سوالات کا جواب ہوتا جو آپ کی پچاسویں پوسٹ پر وارد ہوئے،  تو آپ کو زحمت ہی نہیں دیتا۔ بہرحال، احقاق حق کے دعوے کے باوجود اگر آپ دو ایک مختصر اور سادہ سے سوالات کا جواب دینے سے گریزاں ہیں تو آپ کی مرضی، کوئی زبردستی تھوڑی ہے۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

سیدی صاحب اب تو  محمد علی اور خلیل رانا صاحب اقرار کر چکے ہیں عرب کے لوگ آپنے الہٰ کے پاس جو اختیارات مانتے تھے وہ اللہ کے اذن سے مانتے تھے

جناب  اگرچہ یہ لوگ  ہمارے اہل مسلک کے لئےمعیار نہیں۔تاہم پھربھی آپ ان کی تحریروں

سے بھی اقرار نہیں دکھا سکے۔اور جوچیزآپ نے پیش کی ہے۔وہ الوہیت اورالوہی اختیارات

کی عطاکاقول ہے۔اُن میں باذن اللہ کی قیدکہیں بھی نہیں ہے

جوآپ اُن پرجھوٹ کے طورپرتھوپ رہے ہیں۔

مسلمان جب نبی یاولی کے لئے خداداداختیارمانتاہے تووہ اُس کے ساتھ یہ بھی مانتاہے کہ

یہ اختیار اللہ کے اذن کے بغیر،اللہ کے امرکے بغیر،اللہ کے حکم بغیر استعمال نہیں ہوسکتا،اُس

کے امرکے بغیرپرندہ  بھی پرنہیں مارسکتا۔

 

 

یہاں تک تو سیدی صاحب آپ بھی مان لیجئے آگے جو رانا صاحب نے کہا،مشرکین کا یہی استقلال کا عقیدہ ان کو معبود بناتا ہے

اس دعوے کو ثابت کر دیں تو میں مان لوں گا بریلوی مسلک سچا ہے

مشرکین کااپنے معبودوں کے لئے اُلوہیت اوراُلوہی اختیارماننا اسے استقلال مانناہی توہے۔

آپ اگر مشرکین  کی بے دام وکالت اورنمائندگی  کا شوق پورا کرنےکے لئے

رانا صاحب کی تحریرسے یہ ثابت کرسکتے ہیں کہ

مشرکین اپنے معبودوں کے لئے ایسااختیارمانتے تھے جو

اللہ کاعطاکردہ ہونے کے ساتھ باذن اللہ کی قیدسے مقید ہوتا۔توپیش کروورنہ اپنی غلط فہمی دور کرو۔

ایسےقول  توآپ کے اسماعیل دہلوی کے ہاں ملتےہیں کہ:۔

خواہ یوں سمجھے کہ اللہ نے ان کوایسی قدرت بخشی ہے،ہرطرح شرک ثابت ہوتاہے۔تقویۃ الایمان:15۔

مقبول سے تصرف کونی کاصادرہونااگرچہ امرالٰہی سے ہو۔۔کفرمحض ۔منصب امامت:64۔بحوالہ فتاویٰ

رشیدیہ :206۔تالیفات رشیدیہ:183۔

ہمارے بزرگ لکھ چکے:"تصرفات انبیا ء واولیاء علیہم السلام اوران کے باقی کمالات علمیہ وعملیہ

سب مقید بالعطا وباذن اللہ ہیں"۔الحق المبین: 33

باقی باتیں  اختلاف کی تنقیح ہونے کے بعد ہوں گی۔

 

 

Edited by Saeedi

Share this post


Link to post
Share on other sites

 Meh nay apni post pari toh andaza huwa kay is meh tafseel nah honay kee waja say thori confusion ho sakti heh is leyeh tafseeli tor par wazahat kar raha hoon.
 

Woh Allah meh nafa o nuqsaan waghera kee khoobiyan ayn tawheedi lehaz say mantay thay, yehni Allah haqiqi tor par, zaati tor par, qulli tor par, azli tor par, daimi, bi ghayr izni, ... tor par nafa o nuqsaan par qadir heh. Aur apnay ilahoon kay wojood ko Allah kee ata, bi-izni, limited, restricted, hadis mantay thay aur joh un meh nafa o nuqsan kee khobiyan mantay thay woh un meh atahi, bi-izni, limited, restricted, hadis, lehaz say mantay thay.

Zia Sahib nay likha kay meh nay un kay mowaqif ko mana. Janab ka mowaqif yeh heh kay Mushrik apnay khudahoon kay leyeh nafa o nuqsaan waghera khoobiyon kay TASSARUF KO BI IZNILLAH mantay thay. Magar joh meh nay likha woh yeh heh kay mushrikoon ka aqeedah thah kay un kay buttoon ko khoobiyan deeyeh janay ko Atahi likha, aur yeh likha kay joh khoobiyan ata huween woh bi iznillah huween theen. Meh nay sirf deeyeh janay ata honay kay lehaz say bi iznillah likha heh un khoobiyoon kay tasaruff ko bi iznillah nahin likha. Tasarruf kay context meh mera aqeedah wohi heh joh moteram Khalil Rana sahib aur Saeedi sahib biyan kar rahay hen, kay ek dafa jab un ko bi iznillah atah huween toh phir mushrik mantay thay kay un kay khuda tassaruf meh khud mukhtar hen. Alhasil, kay mushrikeen kay khudahoon ko nafa o nuqsan kee khobiyan atah bi iznillah huween, magar Mushrik yeh mantay thay kay nafa o nuqsaan meh woh khud mukhtar thay.

Edited by MuhammedAli

Share this post


Link to post
Share on other sites

احمد لاہوری صاحب اگر آپ نے پڑھا ہے تو میری بات صاف ہے کیا زرداری کو پاکستان کی حکومت نہیں ملی تھی ؟ آج نواز شریف پاکستان کا حکمران ہے اختیارات کچھ نہ کچھ تو سب کو ملتے ہیں لوگ ایک دوسرے کو نفع نقصان بھی پہنچا دیتے ہیں۔

 

 

میں صاف صاف بتا چکا ہوں اللہ کے سوا کسی کے پاس کونسا اختیار ماننا  شرک ہے 

کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ وہ نفع نقصان کا اختیار رکھتی ہے یہی تو ہے اُس ہستی کو الٰہ بنانا۔

 

کسی ہستی کے بارے میں  سمجھنا کہ وہ ہر مشکل پریشانی دور کر سکتی ہے یہی تو ہے اُس کو الٰہ بنانا۔

 

کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ وہ اللہ کی زمین اور آسمان کی اِس سلطنت میں تصرف کر سکتی ہے یہی تو ہے اُس کو الٰہ بنانا۔

 

 

سیدی صاحب شرک کی وکالت میں نہیں آپ لوگ کر رہے ہیں میں صرف یہ بتا رہاہوں کہ جو آپ کا تصور شرک ہے اس سے تو عرب کے لوگ بھی مشرک ثابت نہیں ہوتے وہ بھی اللہ کے اذن سے اختیارات مانتے تھے وہ بھی اللہ پر جھوٹ باندھتے تھے کہ اللہ نے ہمارے الہٰ کو نفع نقصان اور مشکل

پر یشانیاں دور کرنے کے اختیارات دئے ہیں وہ مانتے  تھے کہ ان کے الہٰ کا مالک بھی اللہ ہے 

 

آگے جو آپ لوگوں کا دعویٰ ہے 

مگر اللہ نے اب ان کو اپنے حکم میں نہیں رکھا ، اَب یہ جو چاہیں کرسکتے ہیں،مشرکین کا یہی استقلال کا عقیدہ ان کو معبود بناتا ہے

 

یہ سرا سرا جھوٹا دعوی ہے اس دعوے کو غلط مان لیں تو پھر آپ عرب کے لوگوں کو بھی مشرک ثابت نہیں کر سکتے 

ادھر ادھر کی باتیں کر رہے ہیں آپ لوگ اس دعوے کو قرآن اور حدیث سے ثابت کیوں نہیں کر دیتے اگرسچے ہو تو

 

آپ کو بات سمجھ نہیں آ رہی اللہ نے کسی ہستی کو نفع نقصان کا اختیار نہیں دیا نہ ود کو نہ سواع کو نہ یغوث کو نہ منات کو نہ عزی کونہ کسی برے کو اور نہ کسی آچھے کو

اللہ نے جناب نوح علیہ اسلام کو بھی نفع نقصان کا اختیار نہیں دیا

 

 

جناب نوح علیہ اسلام  950 سال تبلیغ کی قوم نے بات نہیں مانی  بہت تھوڑے لوگ ایمان لاے۔ آپ نے اللہ سے دعا کی میں بےبس ہوں( مغلوب ہوں) تو میری مدد فرما۔

11.27.  فَقَالَ الْمَلَأُ الَّذِينَ كَفَرُوا مِن قَوْمِهِ مَا نَرَاكَ إِلَّا بَشَرًا مِّثْلَنَا وَمَا نَرَاكَ اتَّبَعَكَ إِلَّا الَّذِينَ هُمْ أَرَاذِلُنَا بَادِيَ الرَّأْيِ وَمَا نَرَىٰ لَكُمْ عَلَيْنَا مِن فَضْلٍ بَلْ نَظُنُّكُمْ كَاذِبِينَ     ٘

11.27.  اس کی قوم کے کافروں کے سرداروں نے جواب دیا کہ ہم تو تجھے اپنے جیسا انسان ہی دیکھتے ہیں (١) اور تیرے تابعداروں کو بھی ہم دیکھتے ہیں کہ یہ لوگ واضح طور پر سوائے نیچ (٢) لوگوں کے (٣) اور کوئی نہیں جو بے سوچے سمجھے (تمہاری پیروی کر رہے ہیں) ہم تو تمہاری کسی قسم کی برتری اپنے اوپر نہیں دیکھ رہے، بلکہ ہم تو تمہیں جھوٹا سمجھ رہے ہیں۔

11.28.  قَالَ يَا قَوْمِ أَرَأَيْتُمْ إِن كُنتُ عَلَىٰ بَيِّنَةٍ مِّن رَّبِّي وَآتَانِي رَحْمَةً مِّنْ عِندِهِ فَعُمِّيَتْ عَلَيْكُمْ أَنُلْزِمُكُمُوهَا وَأَنتُمْ لَهَا كَارِهُونَ     ٘

11.28.  نوح نے کہا میری قوم والو! مجھے بتاؤ تو اگر میں اپنے رب کی طرف سے دلیل پر ہوا اور مجھے اس نے اپنے پاس کی کوئی رحمت عطا کی ہو (١) پھر وہ تمہاری نگاہوں میں (٢) نہ آئی تو کیا یہ زبردستی میں اسے تمہارے گلے منڈھ دوں حالانکہ تم اس سے بیزار ہو (٣)۔

11.29.  وَيَا قَوْمِ لَا أَسْأَلُكُمْ عَلَيْهِ مَالًا ۖ إِنْ أَجْرِيَ إِلَّا عَلَى اللَّهِ ۚ وَمَا أَنَا بِطَارِدِ الَّذِينَ آمَنُوا ۚ إِنَّهُم مُّلَاقُو رَبِّهِمْ وَلَٰكِنِّي أَرَاكُمْ قَوْمًا تَجْهَلُونَ     ٘

11.29.  میری قوم والو! میں تم سے اس پر کوئی مال نہیں مانگتا (١) میرا ثواب تو صرف اللہ تعالٰی کے ہاں ہے نہ میں ایمان داروں کو اپنے پاس سے نکال سکتا ہوں (٢) انہیں اپنے رب سے ملنا ہے لیکن میں دیکھتا ہوں کہ تم لوگ جہالت کر رہے ہو (٣)۔

11.30.  وَيَا قَوْمِ مَن يَنصُرُنِي مِنَ اللَّهِ إِن طَرَدتُّهُمْ ۚ أَفَلَا تَذَكَّرُونَ     ٘

11.30.  میری قوم کے لوگو! اگر میں ان مومنوں کو اپنے پاس سے نکال دوں تو اللہ کے مقابلے میں میری مدد کون کر سکتا ہے (١) کیا تم کچھ بھی نصیحت نہیں پکڑتے۔

11.31.  وَلَا أَقُولُ لَكُمْ عِندِي خَزَائِنُ اللَّهِ وَلَا أَعْلَمُ الْغَيْبَ وَلَا أَقُولُ إِنِّي مَلَكٌ وَلَا أَقُولُ لِلَّذِينَ تَزْدَرِي أَعْيُنُكُمْ لَن يُؤْتِيَهُمُ اللَّهُ خَيْرًا ۖ اللَّهُ أَعْلَمُ بِمَا فِي أَنفُسِهِمْ ۖ إِنِّي إِذًا لَّمِنَ الظَّالِمِينَ     ٘

11.31.  میں تم سے نہیں کہتا کہ میرے پاس اللہ کے خزانے ہیں، میں غیب کا علم بھی نہیں رکھتا، نہ یہ میں کہتا ہوں کہ میں کوئی فرشتہ ہوں، نہ میرا یہ قول ہے کہ جن پر تمہاری نگاہیں ذلت سے پڑ رہی ہیں انہیں اللہ تعالٰی کوئی نعمت دے گا ہی نہیں (١) ان کے دل میں جو ہے اسے اللہ ہی خوب جانتا ہے، اگر میں ایسی بات کہوں تو یقیناً میرا شمار ظالموں میں ہو جائے گا (٢)۔

كَذَّبَتْ قَبْلَهُمْ قَوْمُ نُوحٍ فَكَذَّبُوا عَبْدَنَا وَقَالُوا مَجْنُونٌ وَازْدُجِرَ     ٘

54.9.  ان سے پہلے قوم نوح نے بھی ہمارے بندے کو جھٹلایا تھا اور دیوانہ بتلا کر جھڑک دیا گیا تھا (١)۔

54.10.  فَدَعَا رَبَّهُ أَنِّي مَغْلُوبٌ فَانتَصِرْ     ٘

54.10.  پس اس نے اپنے رب سے دعا کی کہ میں بے بس ہوں تو میری مدد کر۔

 

نوح علیہ اسلام آپنے بیٹے کے نفع نقصان کا اختیار  نہیں رکھتے تھے۔

 

11.42.  وَهِيَ تَجْرِي بِهِمْ فِي مَوْجٍ كَالْجِبَالِ وَنَادَىٰ نُوحٌ ابْنَهُ وَكَانَ فِي مَعْزِلٍ يَا بُنَيَّ ارْكَب مَّعَنَا وَلَا تَكُن مَّعَ الْكَافِرِينَ     ٘

11.42.  وہ کشتی انہیں پہاڑوں جیسی موجوں میں لے کر جا رہی تھی (١) اور نوح (علیہ السلام) نے اپنے لڑکے کو جو ایک کنارے پر تھا، پکار کر کہا کہ اے میرے پیارے بچے ہمارے ساتھ سوار ہو جا اور کافروں میں شامل نہ رہ (٢)۔

11.43.  قَالَ سَآوِي إِلَىٰ جَبَلٍ يَعْصِمُنِي مِنَ الْمَاءِ ۚ قَالَ لَا عَاصِمَ الْيَوْمَ مِنْ أَمْرِ اللَّهِ إِلَّا مَن رَّحِمَ ۚ وَحَالَ بَيْنَهُمَا الْمَوْجُ فَكَانَ مِنَ الْمُغْرَقِينَ     ٘

11.43.  اس نے جواب دیا کہ میں تو کسی بڑے پہاڑ کی طرف پناہ میں آجاؤں گا جو مجھے پانی سے بچا لے گا (١) نوح نے کہا آج اللہ کے امر سے بچانے والا کوئی نہیں، صرف وہی بچیں گے جن پر اللہ کا رحم ہوا۔ اسی وقت ان دونوں کے درمیان موج حائل ہوگئی اور وہ ڈوبنے والوں میں سے ہوگیا (٢)۔

11.44.  وَقِيلَ يَا أَرْضُ ابْلَعِي مَاءَكِ وَيَا سَمَاءُ أَقْلِعِي وَغِيضَ الْمَاءُ وَقُضِيَ الْأَمْرُ وَاسْتَوَتْ عَلَى الْجُودِيِّ ۖ وَقِيلَ بُعْدًا لِّلْقَوْمِ الظَّالِمِينَ     ٘

11.44.  فرما دیا گیا کہ اے زمین اپنے پانی کو نگل جا (١) اور اے آسمان بس کر تھم جا، اسی وقت پانی سکھا دیا گیا اور کام پورا کر دیا گیا (٢) اور کشتی ' جودی ' نامی (٣) پہاڑ پر جا لگی اور فرما دیا گیا کہ ظالم لوگوں پر لعنت نازل ہو (٤)۔

11.45.  وَنَادَىٰ نُوحٌ رَّبَّهُ فَقَالَ رَبِّ إِنَّ ابْنِي مِنْ أَهْلِي وَإِنَّ وَعْدَكَ الْحَقُّ وَأَنتَ أَحْكَمُ الْحَاكِمِينَ     ٘

11.45.  نوح نے اپنے پروردگار کو پکارا اور کہا میرے رب میرا بیٹا تو میرے گھر والوں میں سے ہے، یقیناً تیرا وعدہ بالکل سچا ہے اور تو تمام حاکموں سے بہتر حاکم ہے (١)۔

11.46.  قَالَ يَا نُوحُ إِنَّهُ لَيْسَ مِنْ أَهْلِكَ ۖ إِنَّهُ عَمَلٌ غَيْرُ صَالِحٍ ۖ فَلَا تَسْأَلْنِ مَا لَيْسَ لَكَ بِهِ عِلْمٌ ۖ إِنِّي أَعِظُكَ أَن تَكُونَ مِنَ الْجَاهِلِينَ     ٘

11.46.   اللہ تعالٰی نے فرمایا اے نوح یقیناً وہ تیرے گھرانے سے نہیں ہے (١) اس کے کام بالکل ہی ناشائستہ ہیں (٢) تجھے ہرگز وہ چیز نہ مانگنی چاہیے جس کا تجھے مطلقا علم نہ ہو (٣) میں تجھے نصیحت کرتا ہوں کہ تو جاہلوں میں سے اپنا شمار کرانے سے باز رہے (٤)۔

11.47.  قَالَ رَبِّ إِنِّي أَعُوذُ بِكَ أَنْ أَسْأَلَكَ مَا لَيْسَ لِي بِهِ عِلْمٌ ۖ وَإِلَّا تَغْفِرْ لِي وَتَرْحَمْنِي أَكُن مِّنَ الْخَاسِرِينَ     ٘

11.47.  نوح نے کہا میرے پالنہار میں تیری ہی پناہ چاہتا ہوں اس بات سے کہ تجھ سے وہ مانگوں جس کا مجھے علم ہی نہ ہو اگر تو مجھے نہ بخشے گا اور تو مجھ پر رحم نہ فرمائے گا، تو میں خسارہ پانے والوں میں ہو جاؤنگا (١)۔

 

اللہ نے جناب لوط علیہ اسلام کو نفع نقصان کا اختیار نہیں دیا

 

 

جب فرشتے  لوط علیہ اسلام  کے پاس نوجوانوں کی شکل میں آئے تو آپ پریشان ہو گئے قوم سے مقابلے کی طاقت آپ علیہ اسلام کے پاس نہ تھی کہ آپنے مہمانوں کو بچا سکیں۔

 

11.77.  وَلَمَّا جَاءَتْ رُسُلُنَا لُوطًا سِيءَ بِهِمْ وَضَاقَ بِهِمْ ذَرْعًا وَقَالَ هَٰذَا يَوْمٌ عَصِيبٌ     ٘

11.77.  جب ہمارے بھیجے ہوئے فرشتے لوط کے پاس پہنچے تو وہ ان کی وجہ سے بہت غمگین ہوگئے اور دل ہی دل میں کڑھنے لگے اور کہنے لگے کہ آج کا دن بڑی مصیبت کا دن ہے (١)

11.78.  وَجَاءَهُ قَوْمُهُ يُهْرَعُونَ إِلَيْهِ وَمِن قَبْلُ كَانُوا يَعْمَلُونَ السَّيِّئَاتِ ۚ قَالَ يَا قَوْمِ هَٰؤُلَاءِ بَنَاتِي هُنَّ أَطْهَرُ لَكُمْ ۖ فَاتَّقُوا اللَّهَ وَلَا تُخْزُونِ فِي ضَيْفِي ۖ أَلَيْسَ مِنكُمْ رَجُلٌ رَّشِيدٌ     ٘

11.78.  اور اس کی قوم دوڑتی ہوئی اس کے پاس آپہنچی، وہ تو پہلے ہی سے بدکاریوں میں مبتلا تھی (١) لوط نے کہا اے قوم کے لوگو! یہ میری بیٹیاں جو تمہارے لئے بہت ہی پاکیزہ ہیں (٢) اللہ سے ڈرو اور مجھے میرے مہمانوں کے بارے میں رسوا نہ کرو۔ کیا تم میں ایک بھی بھلا آدمی نہیں (٣)۔

11.79.  قَالُوا لَقَدْ عَلِمْتَ مَا لَنَا فِي بَنَاتِكَ مِنْ حَقٍّ وَإِنَّكَ لَتَعْلَمُ مَا نُرِيدُ     ٘

11.79.  انہوں نے جواب دیا کہ تو بخوبی جانتا ہے کہ ہمیں تو تیری بیٹیوں پر کوئی حق نہیں ہے اور تو اصلی چاہت سے بخوبی واقف ہے (١)

11.80.  قَالَ لَوْ أَنَّ لِي بِكُمْ قُوَّةً أَوْ آوِي إِلَىٰ رُكْنٍ شَدِيدٍ     ٘

11.80.  لوط نے کہا کاش مجھ میں تم سے مقابلہ کرنے کی قوت ہوتی یا میں کسی زبردست کا اسرا پکڑ پاتا (١)۔

11.81.  قَالُوا يَا لُوطُ إِنَّا رُسُلُ رَبِّكَ لَن يَصِلُوا إِلَيْكَ ۖ فَأَسْرِ بِأَهْلِكَ بِقِطْعٍ مِّنَ اللَّيْلِ وَلَا يَلْتَفِتْ مِنكُمْ أَحَدٌ إِلَّا امْرَأَتَكَ ۖ إِنَّهُ مُصِيبُهَا مَا أَصَابَهُمْ ۚ إِنَّ مَوْعِدَهُمُ الصُّبْحُ ۚ أَلَيْسَ الصُّبْحُ بِقَرِيبٍ     ٘

11.81.  اب فرشتوں نے کہا اے لوط! ہم تیرے پروردگار کے بھیجے ہوئے ہیں ناممکن ہے کہ یہ تجھ تک پہنچ جائیں پس تو اپنے گھر والوں کو لے کر کچھ رات رہے نکل کھڑا ہو۔ تم میں سے کسی کو مڑ کر بھی نہ دیکھنا چاہیئے، بجز تیری بیوی کے، اس لئے کہ اسے بھی وہی پہنچنے والا ہے جو ان سب کو پہنچے گا یقیناً ان کے وعدے کا وقت صبح کا ہے، کیا صبح بالکل قریب نہیں (١)

11.82.  فَلَمَّا جَاءَ أَمْرُنَا جَعَلْنَا عَالِيَهَا سَافِلَهَا وَأَمْطَرْنَا عَلَيْهَا حِجَارَةً مِّن سِجِّيلٍ مَّنضُودٍ     ٘

11.82.   پھر جب ہمارا حکم آپہنچا، ہم نے اس بستی کو زیر زبر کر دیا اوپر کا حصہ نیچے کردیا اور ان پر کنکریلے پتھر

 برسائے جو تہ بہ تہ تھے۔

11.83.  مُّسَوَّمَةً عِندَ رَبِّكَ ۖ وَمَا هِيَ مِنَ الظَّالِمِينَ بِبَعِيدٍ     ٘

11.83.  تیرے رب کی طرف سے نشان دار تھے اور وہ ان ظالموں سے کچھ بھی دور نہ تھے (١)

 

اللہ نے جناب عیسیٰ علیہ اسلام کو نفع نقصان کا اختیار نہیں دیا

 

 

 

5.75.  مَا الۡمَسِیۡحُ ابۡنُ مَرۡیَمَ اِلَّا رَسُوۡلٌ ۚ قَدۡ خَلَتۡ مِنۡ قَبۡلِہِ الرُّسُلُ ؕ وَ اُمُّہٗ صِدِّیۡقَۃٌ ؕ کَانَا یَاۡکُلٰنِ الطَّعَامَ ؕ اُنۡظُرۡ کَیۡفَ نُبَیِّنُ لَہُمُ الۡاٰیٰتِ ثُمَّ انۡظُرۡ اَنّٰی یُؤۡفَکُوۡنَ      ٘

5.75.  مسیح ابن مریم سوا پیغمبر ہونے کے اور کچھ بھی نہیں، اس سے پہلے بھی بہت سے پیغمبر ہو چکے ہیں ان کی والدہ ایک راست باز عورت تھیں (١) دونوں ماں بیٹا کھانا کھایا کرتے تھے (۲) آپ دیکھئے کہ کس طرح ہم ان کے سامنے دلیلیں رکھتے ہیں اور پھر غور کیجئے کہ کس طرح وہ پھرے جاتے ہیں۔

 

5.76.  قُلۡ اَتَعۡبُدُوۡنَ مِنۡ دُوۡنِ اللّٰہِ مَا لَا یَمۡلِکُ لَکُمۡ ضَرًّا وَّ لَا نَفۡعًا ؕ وَ اللّٰہُ ہُوَ السَّمِیۡعُ الۡعَلِیۡمُ     ٘

5.76.  آپ کہہ دیجئے کہ تم اللہ کے سوا ان کی عبادت کرتے ہو جو نہ تمہارے کسی نقصان کے مالک ہیں نہ کسی نفع کے۔ اللہ ہی خوب سننے اور پوری طرح جاننے والا ہے (١)۔

 

اللہ نے جناب محمدﷺ کو بھی نفع نقصان کا اختیار نہیں دیا

 

محمد ﷺ مختار کل نہیں، محمدﷺ نفع نقصان کا اختیار نہیں رکھتے، کفار عرب نے آپﷺ کی تکذیب کی آپﷺ کو تکالیف اور پریشانیاں دیں ،ان سب کو دور کرنے کا اختیار محمدﷺ کے پاس نہ تھا انہوں نے صبر کیا آپنے اللہ سے مدد مانگی، صرف اللہ پڑ توکل کیا جو اسباب تھے ان کو اختیار کیا یہاں تک کے کافر سے بھی پناہ لی۔

 

6.162قُلۡ اِنَّ صَلَاتِیۡ وَ نُسُکِیۡ وَ مَحۡیَایَ وَ مَمَاتِیۡ لِلّٰہِ رَبِّ الۡعٰلَمِیۡنَ      ٘

6.162.  آپ فرما دیجئے کہ بالیقین میری نماز اور میری ساری عبادت اور میرا جینا اور میرا مرنا یہ سب خالص اللہ ہی کا ہے جو سارے جہان کا مالک ہے۔

53.1.  وَ النَّجۡمِ اِذَا ہَوٰی ٘

53.1.  قسم ہے ستارے کی جب وہ گرے (١)

53.2.  مَا ضَلَّ صَاحِبُکُمۡ وَ مَا غَوٰی٘

53.2.   کہ تمہارے ساتھی نے نہ راہ گم کی ہے اور نہ ٹیڑھی راہ پر ہے (١)

53.3.  وَ مَا یَنۡطِقُ عَنِ الۡہَوٰی٘

53.3.  اور نہ وہ اپنی خواہش سے کوئی بات کہتے ہیں۔

53.4.  اِنۡ ہُوَ اِلَّا وَحۡیٌ یُّوۡحٰی ٘

53.4.  وہ تو صرف وحی ہے جو اتاری جاتی ہے۔

53.5.  عَلَّمَہٗ شَدِیۡدُ الۡقُوٰی٘

53.5.   اسے پوری طاقت والے فرشتے نے سکھایا۔

69.40.  اِنَّہٗ لَقَوۡلُ رَسُوۡلٍ کَرِیۡمٍ ٘

69.40.   کہ بیشک یہ (قرآن) بزرگ رسول کا قول ہے (١)

69.41.  وَّ مَا ہُوَ بِقَوۡلِ شَاعِرٍ ؕ قَلِیۡلًا مَّا تُؤۡمِنُوۡنَ٘

69.41.  یہ کسی شاعر کا قول نہیں (افسوس) تمہیں بہت کم یقین ہے۔ (۱)

69.42.  وَ لَا بِقَوۡلِ کَاہِنٍ ؕ قَلِیۡلًا مَّا تَذَکَّرُوۡنَ٘

69.42.  نہ کسی کاہن کا قول ہے (افسوس) بہت کم نصیحت لے رہے ہو۔ (۱)

69.43.  تَنۡزِیۡلٌ مِّنۡ رَّبِّ الۡعٰلَمِیۡنَ٘

69.43.  یہ تو رب العالمین کا اتارا ہوا ہے۔

69.44.  وَ لَوۡ تَقَوَّلَ عَلَیۡنَا بَعۡضَ الۡاَقَاوِیۡلِ٘

69.44.  اور اگر یہ ہم پر کوئی بات بنا لیتا (١)

69.45.  لَاَخَذۡنَا مِنۡہُ بِالۡیَمِیۡنِ٘

69.45.  تو البتہ ہم اس کا داہنا ہاتھ پکڑ لیتے (١)

69.6.  ثُمَّ لَقَطَعۡنَا مِنۡہُ الۡوَتِیۡنَ ٘

69.46.  پھر اس کی شہ رگ کاٹ دیتے (١)

69.47.  فَمَا مِنۡکُمۡ مِّنۡ اَحَدٍ عَنۡہُ حٰجِزِیۡنَ٘

69.47.  پھر تم سے کوئی بھی مجھے اس سے روکنے والا نہ ہوتا (١)

69.48.  وَ اِنَّہٗ لَتَذۡکِرَۃٌ لِّلۡمُتَّقِیۡنَ٘

69.48.  یقیناً یہ قرآن پرہیزگاروں کے لئے نصیحت ہے۔

69.49.  وَ اِنَّا لَنَعۡلَمُ اَنَّ مِنۡکُمۡ مُّکَذِّبِیۡنَ٘

69.49.  ہمیں پوری طرح معلوم ہے کہ تم میں سے بعض اس کے جھٹلانے والے ہیں۔

33.  قَدۡ نَعۡلَمُ اِنَّہٗ لَیَحۡزُنُکَ الَّذِیۡ یَقُوۡلُوۡنَ فَاِنَّہُمۡ لَا یُکَذِّبُوۡنَکَ وَ لٰکِنَّ الظّٰلِمِیۡنَ بِاٰیٰتِ اللّٰہِ یَجۡحَدُوۡنَ     ٘

6.33.  ہم خوب جانتے ہیں کہ آپ کو ان کے اقوال مغموم کرتے ہیں، سو یہ لوگ آپ کو جھوٹا نہیں کہتے لیکن یہ ظالم تو اللہ کی آیتوں کا انکار کرتے ہیں (١)۔

6.34.  وَ لَقَدۡ کُذِّبَتۡ رُسُلٌ مِّنۡ قَبۡلِکَ فَصَبَرُوۡا عَلٰی مَا کُذِّبُوۡا وَ اُوۡذُوۡا حَتّٰۤی اَتٰہُمۡ نَصۡرُنَا ۚ وَ لَا مُبَدِّلَ لِکَلِمٰتِ اللّٰہِ ۚ وَ لَقَدۡ جَآءَکَ مِنۡ نَّبَاِی الۡمُرۡسَلِیۡنَ      ٘

6.34.  اور بہت سے پیغمبر جو آپ سے پہلے ہوئے ہیں ان کی بھی تکذیب کی جاچکی ہے سو انہوں نے اس پر صبر ہی کیا، ان کی تکذیب کی گئی اور ان کو ایذائیں پہنچائی گئیں یہاں تک کہ کہ ہماری امداد ان کو پہنچی (٢) اور اللہ کی باتوں کا کوئی بدلنے والا نہیں (٢) اور آپ کے پاس بعض پیغمبروں کی بعض خبریں پہنچ چکی ہیں (٣)۔

6.35.  وَ اِنۡ کَانَ کَبُرَ عَلَیۡکَ اِعۡرَاضُہُمۡ فَاِنِ اسۡتَطَعۡتَ اَنۡ تَبۡتَغِیَ نَفَقًا فِی الۡاَرۡضِ اَوۡ سُلَّمًا فِی السَّمَآءِ فَتَاۡتِیَہُمۡ بِاٰیَۃٍ ؕ وَ لَوۡ شَآءَ اللّٰہُ لَجَمَعَہُمۡ عَلَی الۡہُدٰی فَلَا تَکُوۡنَنَّ مِنَ الۡجٰہِلِیۡنَ      ٘

6.35.  اور اگر ان (کافروں) کی بے توجہی آپ پر گراں گزرتی ہے تو اگر آپ یہ کرسکیں کہ زمین میں کوئی سرنگ تلاش کرکے یا آسمان میں سیڑھی لگا کر انکے پاس کوئی معجزہ لے آئیں تو ایسا کر دیکھیں اور اگر اللہ چاہتا تو خود بھی انکو ہدایت پر اکٹھا کرسکتا تھا (مگر یہ اس کی مشیت نہیں) لہذا آپ نادان مت بنئے۔

صحیح بخاری:جلد دوم:حدیث نمبر 1084 حدیث مرفوع مکررات 15 متفق علیہ 11
حمیدی سفیان بیان اور اسماعیل قیس سے روایت کرتے ہیں کہ حضرت خباب نے فرمایا کہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا آپ صلی اللہ علیہ وسلم اس وقت کعبہ کے سایہ میں اپنی چادر سے تکیہ لگائے بیٹھے تھے چونکہ ہمیں مشرکوں کی طرف سے بہت اذیت پہنچی تھی اس لئے میں نے عرض کیا آپ صلی اللہ علیہ وسلم دعا کیوں نہیں فرماتے آپ صلی اللہ علیہ وسلم یہ سن کر سیدھے بیٹھ گئے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا چہرہ مبارک سرخ ہوگیا پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تم سے پہلے ایسے لوگ تھے کہ ان کی ہڈیوں پر گوشت یا پٹھوں کے نیچے لوہے کی کنگھیاں کی جاتی تھیں (مگر) یہ شدید تکلیف بھی انہیں ان کے دین سے نہیں ہٹاتی تھی اور بعض کے بیچ سر میں آرا رکھ کر دو ٹکڑے کردیئے جاتے تھے پھر بھی انہیں چیز ان کے دین سے نہ ہٹاتی تھی اور واللہ اللہ تعالیٰ اس دین کو کامل کرے گا حتیٰ کہ ایک سوار صنعاء سے حضرموت تک اس طرح بے خوف ہو کر سفر کرے گا کہ اسے اللہ تعالیٰ کے سوا کسی کا ڈر نہیں ہوگا بیان نے یہ الفاظ بھی زیادہ روایت کئے ہیں کہ اپنی بکریوں پر بھیڑیے کا خوف نہ ہوگا۔

2.214.  اَمۡ حَسِبۡتُمۡ اَنۡ تَدۡخُلُوا الۡجَنَّۃَ وَ لَمَّا یَاۡتِکُمۡ مَّثَلُ الَّذِیۡنَ خَلَوۡا مِنۡ قَبۡلِکُمۡ ؕ مَسَّتۡہُمُ الۡبَاۡسَآءُ وَ الضَّرَّآءُ وَ زُلۡزِلُوۡا حَتّٰی یَقُوۡلَ الرَّسُوۡلُ وَ الَّذِیۡنَ اٰمَنُوۡا مَعَہٗ مَتٰی نَصۡرُ اللّٰہِ ؕ اَلَاۤ اِنَّ نَصۡرَ اللّٰہِ قَرِیۡبٌ ٘

2.214.  کیا تم یہ گمان کئے بیٹھے ہو کہ جنت میں چلے جاؤ گے حالانکہ اب تک تم پر وہ حالات نہیں آئے جو تم سے اگلے لوگوں پر آئے تھے (١) انہیں بیماریاں اور مصیبتیں پہنچیں اور وہ یہاں تک جھنجھوڑے گئے کہ رسول اور ان کے ساتھ کے ایمان والے کہنے لگے کہ اللہ کی مدد کب آئے گی؟ سن رکھو کہ اللہ کی مدد قریب ہی ہے۔

16.106.  مَن كَفَرَ بِاللَّهِ مِن بَعْدِ إِيمَانِهِ إِلَّا مَنْ أُكْرِهَ وَقَلْبُهُ مُطْمَئِنٌّ بِالْإِيمَانِ وَلَٰكِن مَّن شَرَحَ بِالْكُفْرِ صَدْرًا فَعَلَيْهِمْ غَضَبٌ مِّنَ اللَّهِ وَلَهُمْ عَذَابٌ عَظِيمٌ     ٘

16.106.  جو شخص اپنے ایمان کے بعد اللہ سے کفر کرے بجز اس کے جس پر جبر کیا جائے اور اس کا دل ایمان پر برقرار ہو (١) مگر جو لوگ کھلے دل سے کفر کریں تو ان پر اللہ کا غضب ہے اور انہی کے لئے بہت بڑا عذاب ہے۔

شان نزول:

حضرت عبداللہ بن عباس فرماتے ہیں کہ یہ آیت عمار بن یاسر کے بارے میں نازل ہوئی مشرکین نے انہیں ان کے والد یاسر اور والدہ سمیہ ، بلا،خباب، اور سالم رضی اللہ عنہم اجمین کو پکڑ لیا حضرت سمیہ کو انہوں نے دو اونٹوں کے درمیان باندھ کر ایک برچھا آپ کی شرمگاہ پر مارا اور آپ سے ان میں ایک نے کہا کہ تو آدمیوں کی وجہ سے اسلام لائی ہے پھر انہیں اور ان کے شوہر حضرت یاسر کو شہید کر دیا گیایہ دونوں اسلام میں سب سے پہلے شہداء ہیں حضرت عمار نے مجبور ہو کر ان کے سامنے اپنی زبان سے ان کی مرضی کے مطابق کہہ دیا نبی کو خبر دی گئی کہ عمار کافر ہوگیا تو آپ نے فرمایا ہرگز نہیں عمار اپنے سر سے پاؤں تک ایمان سے بھرا ہوا ہے اور ایمان اس کے خون اور گوشت میں رچ بس چکا ہے حضرت عمار رسول اللہ کے پاس روتے ہوئے آئے رسول اللہ ان کی آنکھیں پوچھنے لگے اور آپ نے فرمایا ان سے اگر وہ پھر اس طرح کریں تو تو تم پھر ان کے سامنے یہی بات جو تم نے کہی تھی دوہرا دینا اس موقع پر اللہ نے یہ آیت نازل فرمائی۔ (طبری14۔122، مستدرک2۔357)

صحیح بخاری:جلد دوم:حدیث نمبر 1096 حدیث موقوف مکررات 40 متفق علیہ 20
محمد بن کثیر سفیان اسماعیل بن ابی خالد قیس بن ابی حازم حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت کرتے ہیں وہ کہتے ہیں کہ جب سے حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ اسلام لائے ہم برابر غالب رہے۔

صحیح بخاری:جلد دوم:حدیث نمبر 1097 حدیث موقوف مکررات 27 متفق علیہ 11
یحیی بن سلیمان ابن وہب عمر بن محمد ان کے دادا زید بن عبداللہ بن عمر حضرت ابن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت کرتے ہیں وہ فرماتے ہیں کہ اسلام لانے کے بعد حضرت عمر اپنے گھر میں خوفزدہ تھے کہ ان کے پاس عاص بن وائل سہمی ابوعمرو آیا جو ایک ریشمی حلہ اور ایک ریشمی گوٹ کا کرتہ پہنے ہوئے تھا۔ عاص قبیلہ بنو سہم کا تھا اور بنو سہم زمانہ جاہلیت میں ہمارے حلیف تھے تو عاص نے عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے کہا تمہارا کیا حال ہے؟ آپ نے جواب دیا کہ تمہاری قوم کے لوگ کہتے ہیں کہ اگر میں مسلمان ہوگیا تو وہ مجھے قتل کردیں گے اس نے کہا تم پر کسی کا بس نہ چلے گا عاص کے یہ بات کہنے کے بعد حضرت عمر نے کہا میں اب بے خوف ہوں پھر عاص باہر نکلا تو لوگوں کو دیکھا کہ مکہ کی وادی ان سے بھر گئی ہے عاص نے ان سے پوچھا کہاں کا ارادہ ہے؟ انہوں نے کہا ہم عمر بن خطاب کے پاس جا رہے ہیں جو اپنے دین سے پھر گیا ہے عاص نے کہا ان پر تمہارا بس نہیں چلے گا (یہ سن کر) سب لوگ واپس ہو گئے۔

صحیح مسلم:جلد اول:حدیث نمبر 1924 حدیث مرفوع مکررات 23 متفق علیہ 5
احمد بن جعفر معقری، نضر بن محمد، عکرمہ بن عمار، شداد بن عبد اللہ، ابوعمار، یحیی بن ابی کثیر، ابوامامہ، واثلہ، انس، عمرو بن عبسہ فرماتے ہیں کہ زمانہ جاہلیت میں خیال کرتا تھا کہ لوگ گمراہی میں مبتلا ہیں اور وہ کسی راستے پر نہیں ہیں اور وہ سب لوگ بتوں کی پوجا پاٹ کرتے ہیں میں نے ایک آدمی کے بارے میں سنا کہ وہ مکہ میں بہت سی خبریں بیان کرتا ہے تو میں اپنی سواری پر بیٹھا اور ان کی خدمت میں حاضر ہوا یہ تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہیں اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم چھپ کر رہ رہے ہیں کیونکہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی قوم آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر مسلط تھی پھر میں نے ایک طریقہ اختیار کیا جس کے مطابق میں مکہ میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تک پہنچ گیا اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے میں نے عرض کیا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کون ہیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا میں نبی ہوں، میں نے عرض کیا نبی کسے کہتے ہیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا مجھے اللہ تعالیٰ نے بھیجا ہے، میں نے عرض کیا کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو کس چیز کا پیغام دے کر بھیجا ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ نے مجھے یہ پیغام دے کر بھیجا ہے کہ صلہ رحمی کرنا اور بتوں کو توڑنا اور یہ کہ اللہ تعالیٰ کو ایک ماننا اس کے ساتھ کسی کو شریک نہ بنانا میں نے عرض کیا کہ اس مسئلہ میں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ اور کون ہے؟ آپ نے فرمایا کہ ایک آزاد اور ایک غلام راوی نے کہا کہ اس وقت آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ حضرت ابوبکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ اور حضرت بلال رضی اللہ تعالیٰ عنہ تھے جو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر ایمان لے آئے تھے میں نے عرض کیا کہ میں بھی آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی پیروی کرتا ہوں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ اس وقت تم اس کی طاقت نہیں رکھتے کیا تم میرا اور لوگوں کا حال نہیں دیکھتے اس وقت تم اپنے گھر جاؤ پھر جب سنو کہ میں ظاہر (غالب) ہوگیا ہوں تو پھر میرے پاس آنا وہ کہتے ہیں کہ میں اپنے گھر کی طرف چلا گیا اور رسول اللہ مدینہ منورہ میں آگئے تو میں اپنے گھر والوں میں ہی تھا اور لوگوں سے خبریں لیتا رہتا تھا اور پوچھتا رہتا تھا یہاں تک کہ مدینہ منورہ والوں سے میری طرف کچھ آدمی آئے تو میں نے ان سے کہا کہ اس طرح کے جو آدمی مدینہ منورہ میں آئے ہیں وہ کیسے ہیں تو انہوں نے کہا کہ لوگ ان کی طرف دوڑ رہے ہیں ان کی قوم کے لوگ انہیں قتل کرنا چاہتے ہیں لیکن وہ اس کی طاقت نہیں رکھتے تو میں مدینہ منورہ میں آیا اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوا اور عرض کیا اے اللہ کے رسول کیا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم مجھے پہچانتے ہیں آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہاں تم تو وہی ہو جس نے مجھ سے مکہ میں ملاقات کی تھی میں نے عرض کیا جی ہاں پھر عرض کیا اے اللہ کے نبی اللہ نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو جو کچھ سکھایا ہے مجھے اس کی خبر دیجئے

11.12.  فَلَعَلَّکَ تَارِکٌۢ بَعۡضَ مَا یُوۡحٰۤی اِلَیۡکَ وَ ضَآئِقٌۢ بِہٖ صَدۡرُکَ اَنۡ یَّقُوۡلُوۡا لَوۡ لَاۤ اُنۡزِلَ عَلَیۡہِ کَنۡزٌ اَوۡ جَآءَ مَعَہٗ مَلَکٌ ؕ اِنَّمَاۤ اَنۡتَ نَذِیۡرٌ ؕ وَ اللّٰہُ عَلٰی کُلِّ شَیۡءٍ وَّکِیۡلٌ      ٘

11.12.  پس شاید کہ آپ اس وحی کے کسی حصے کو چھوڑ دینے والے ہیں جو آپ کی طرف نازل کی جاتی ہے اور اس سے آپ کا دل تنگ ہے، صرف ان کی اس بات پر کہ اس پر کوئی خزانہ کیوں نہیں اترا؟ یا اس کے ساتھ فرشتہ ہی آتا، سن لیجئے! آپ تو صرف ڈرانے والے ہی ہیں (١) اور ہرچیز کا ذمہ دار اللہ تعالٰی ہے۔

10.20.  وَ یَقُوۡلُوۡنَ لَوۡ لَاۤ اُنۡزِلَ عَلَیۡہِ اٰیَۃٌ مِّنۡ رَّبِّہٖ ۚ فَقُلۡ اِنَّمَا الۡغَیۡبُ لِلّٰہِ فَانۡتَظِرُوۡا ۚ اِنِّیۡ مَعَکُمۡ مِّنَ الۡمُنۡتَظِرِیۡنَ      ٘

10.20.  اور یہ لوگ یوں کہتے ہیں کہ ان پر ان کے رب کی جانب سے کوئی نشانی کیوں نہیں نازل ہوتی؟ (١) سو آپ انہیں فرما دیجئے کہ غیب کی خبر صرف اللہ کو ہے (٢) سو تم بھی منتظر رہو میں بھی تمہارے ساتھ منتظر ہوں۔

10.48.  وَ یَقُوۡلُوۡنَ مَتٰی ہٰذَا الۡوَعۡدُ اِنۡ کُنۡتُمۡ صٰدِقِیۡنَ      ٘

10.48.  اور یہ لوگ کہتے ہیں کہ یہ وعدہ کب ہوگا؟ اگر تم سچے ہو۔

10.49.  قُلۡ لَّاۤ اَمۡلِکُ لِنَفۡسِیۡ ضَرًّا وَّ لَا نَفۡعًا اِلَّا مَا شَآءَ اللّٰہُ ؕ لِکُلِّ اُمَّۃٍ اَجَلٌ ؕ اِذَا جَآءَ اَجَلُہُمۡ فَلَا یَسۡتَاۡخِرُوۡنَ سَاعَۃً وَّ لَا یَسۡتَقۡدِمُوۡنَ      ٘

10.49.  آپ فرما دیجئے کہ میں اپنی ذات کے لئے تو کسی نفع کا اور کسی ضرر کا اختیار رکھتا ہی نہیں مگر جتنا اللہ کو منظور ہو، ہر امت کے لئے ایک معین وقت ہے جب ان کا وہ معین وقت آپہنچتا ہے تو ایک گھڑی نہ پیچھے ہٹ سکتے ہیں اور نہ اگے سرک سکتے ہیں (١)۔

10.109.  وَ اتَّبِعۡ مَا یُوۡحٰۤی اِلَیۡکَ وَ اصۡبِرۡ حَتّٰی یَحۡکُمَ اللّٰہُ ۚۖ وَ ہُوَ خَیۡرُ الۡحٰکِمِیۡنَ     ٘

10.109.  اور آپ اس کی پیروی کرتے رہیے جو کچھ آپ کے پاس وحی بھیجی جاتی ہے اور صبر کیجئے (!) یہاں تک کہ اللہ فیصلہ کر دے اور وہ سب فیصلہ کرنے والوں میں اچھا ہے (٢)۔

7.187.  یَسۡـَٔلُوۡنَکَ عَنِ السَّاعَۃِ اَیَّانَ مُرۡسٰہَا ؕ قُلۡ اِنَّمَا عِلۡمُہَا عِنۡدَ رَبِّیۡ ۚ لَا یُجَلِّیۡہَا لِوَقۡتِہَاۤ اِلَّا ہُوَ ؕۘؔ ثَقُلَتۡ فِی السَّمٰوٰتِ وَ الۡاَرۡضِ ؕ لَا تَاۡتِیۡکُمۡ اِلَّا بَغۡتَۃً ؕ یَسۡـَٔلُوۡنَکَ کَاَنَّکَ حَفِیٌّ عَنۡہَا ؕ قُلۡ اِنَّمَا عِلۡمُہَا عِنۡدَ اللّٰہِ وَ لٰکِنَّ اَکۡثَرَ النَّاسِ لَا یَعۡلَمُوۡنَ      ٘

7.187.  یہ لوگ آپ سے قیامت (١) کے متعلق سوال کرتے ہیں کہ اس کا وقوع کب ہوگا (٢) آپ فرما دیجئے اس کا علم صرف میرے رب ہی کے پاس ہے (٣) اس کے وقت پر اس کو سوائے اللہ کے کوئی ظاہر نہ کرے گا وہ آسمانوں اور زمین میں بڑا بھاری (حادثہ) ہوگا (٤) وہ تم پر محض اچانک آپڑے گی۔ وہ آپ اس طرح پوچھتے ہیں جیسے گویا آپ اس کی تحقیقات کر چکے ہیں (٥) آپ فرما دیجئے کہ اس کا علم خاص اللہ ہی کے پاس ہے۔ لیکن اکثر لوگ نہیں جانتے۔

7.188.  قُلۡ لَّاۤ اَمۡلِکُ لِنَفۡسِیۡ نَفۡعًا وَّ لَا ضَرًّا اِلَّا مَا شَآءَ اللّٰہُ ؕ وَ لَوۡ کُنۡتُ اَعۡلَمُ الۡغَیۡبَ لَاسۡتَکۡثَرۡتُ مِنَ الۡخَیۡرِۚۖۛ وَ مَا مَسَّنِیَ السُّوۡٓءُ ۚۛ اِنۡ اَنَا اِلَّا نَذِیۡرٌ وَّ بَشِیۡرٌ لِّقَوۡمٍ یُّؤۡمِنُوۡنَ      ٘

7.188.  آپ فرما دیجئے کہ میں خود اپنی ذات خاص کے لئے کسی نفع کا اختیار نہیں رکھتا اور نہ کسی ضرر کا، مگر اتنا ہی کہ جتنا اللہ نے چاہا اور اگر میں غیب کی باتیں جانتا ہوتا تو میں بہت منافع حاصل کرلیتا اور کوئی نقصان مجھے نہ پہنچتا میں تو محض ڈرانے والا اور بشارت دینے والا ہوں ان لوگوں کو جو ایمان رکھتے ہیں۔

3.128.  لَیۡسَ لَکَ مِنَ الۡاَمۡرِ شَیۡءٌ اَوۡ یَتُوۡبَ عَلَیۡہِمۡ اَوۡ یُعَذِّبَہُمۡ فَاِنَّہُمۡ ظٰلِمُوۡنَ      ٘

3.128.  (اے پیغمبر صلی اللہ علیہ وسلم) اس کام میں تمہارا کچھ اختیار نہیں (اب دو صورتیں ہیں) یا اللہ  ان کے حال پر مہربانی کر کے یا انہیں عذاب دے کہ یہ ظالم لوگ ہیں.

 3.129وَ لِلّٰہِ مَا فِی السَّمٰوٰتِ وَ مَا فِی الۡاَرۡضِ ؕ یَغۡفِرُ لِمَنۡ یَّشَآءُ وَ یُعَذِّبُ مَنۡ یَّشَآءُ ؕ وَ اللّٰہُ غَفُوۡرٌ رَّحِیۡمٌ ٘

اور جو کچھ آسمانوں میں ہے اور جو کچھ زمین میں ہے سب اللہ ہی کا ہے وہ جسے چاہے بخش دے اور جسے چاہے عذاب کرے اور اللہ بخشنے والا مہربان ہے

صحیح بخاری:جلد دوم:حدیث نمبر 1703    حدیث متواتر حدیث مرفوع        مکررات 5

 حبان بن موسی، عبد اللہ، معمر، زہری، سالم، حضرت ابن عمر سے روایت کرتے ہیں کہ فجر کی نماز کی دوسری رکعت کے رکوع کے بعد ربنا لک الحمد کہہ کر آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اللَّهُمَّ الْعَنْ فُلَانًا وَفُلَانًا وَفُلَانًا، اے اللہ! لعنت بھیج فلاں، فلاں اور فلاں پر راوی کہتا ہے کہ میں نے اپنے کان سے سنا کہ اس وقت یہ آیت (لَيْسَ لَكَ مِنَ الْاَمْرِ شَيْءٌ اَوْ يَتُوْبَ عَلَيْھِمْ الخ) 3۔ آل عمران : 128) اللہ نے نازل فرمائی کہ اے رسول! آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اختیار میں کچھ نہیں اللہ چاہے گا تو ان پر مہربانی فرمائے گا یا عذاب دے گا تحقیق وہ ظالم ہیں اس حدیث کو اسحاق بن راشد نے بھی زہری سے روایت کیا ہے۔

صحیح بخاری:جلد دوم:حدیث نمبر 331 حدیث مرفوع مکررات 13 متفق علیہ 8
محمد بن بشار ابن عدی و سہل سعید قتادہ انس سے روایت کرتے ہیں کہ رسالت مآب صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس رعل ذکوان عصیہ اور بنو لحیان نے یہ دعویٰ کرکے کہ وہ اسلام لا چکے ہیں آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے اپنی قوم کے لئے امداد کی درخواست کی تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ستر انصار ان کی امداد کے لئے ان کے حوالہ کئے انس نے کہا کہ ہم ان انصاریوں کو قراء کہتے تھے یہ لوگ دن کو لکڑیاں جمع کرتے اور رات بھر نماز پڑھتے چنانچہ وہ عابد و زاہد ستر قراء ان کے ساتھ روانہ ہوئے اور مقام بیرمعونہ میں پہنچ کر ان لوگوں نے ان انصاریوں سے بے وفائی کی اور سب کو شہید کردیا تو رسالت مآب صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک مہینہ تک قنوت میں رعل ذکوان اور بنو لحیان کے لئے بد دعا کی قتادہ نے کہا کہ اس نے بیان کیا ہے کہ مسلمان کی شان میں ایک عرصہ تک یہ آیت پڑھتے رہے کہ آگاہ ہو جاؤ اور ہماری قوم کو یہ خبر پہنچا دو کہ ہم اپنے رب سے مل گئے ہیں وہ ہم سے راضی ہوگیا اور ہم اس سے راضی ہیں پھر یہ بعد میں منسوخ ہو گئی۔

6.71.  قُلۡ اَنَدۡعُوۡا مِنۡ دُوۡنِ اللّٰہِ مَا لَا یَنۡفَعُنَا وَ لَا یَضُرُّنَا وَ نُرَدُّ عَلٰۤی اَعۡقَابِنَا بَعۡدَ اِذۡ ہَدٰىنَا اللّٰہُ کَالَّذِی اسۡتَہۡوَتۡہُ الشَّیٰطِیۡنُ فِی الۡاَرۡضِ حَیۡرَانَ ۪ لَہٗۤ اَصۡحٰبٌ یَّدۡعُوۡنَہٗۤ اِلَی الۡہُدَی ائۡتِنَا ؕ قُلۡ اِنَّ ہُدَی اللّٰہِ ہُوَ الۡہُدٰی ؕ وَ اُمِرۡنَا لِنُسۡلِمَ لِرَبِّ الۡعٰلَمِیۡنَ      ٘

6.71.  آپ کہہ دیجئے کہ ہم اللہ تعالٰی کے سوا ایسی چیز کو پکاریں کہ وہ نہ ہم کو نفع پہنچائے اور نہ ہم کو نقصان پہنچائے کیا ہم الٹے پھر جائیں اسکے بعد کہ ہم کو اللہ تعالٰی نے ہدایت کر دی ہے، جیسے کوئی شخص ہو کہ اس کو شیطان نے کہیں جنگل میں بے راہ کر دیا ہو اور وہ بھٹکتا پھرتا ہو اس کے ساتھی بھی ہوں کہ ہمارے پاس آ(١)۔ آپ کہہ دیجئے کہ یقینی بات ہے کہ راہ راست وہ خاص اللہ ہی کی راہ ہے (٢) اور ہم کو یہ حکم ہوا ہے کہ ہم پروردگار عالم کے مطیع ہوجائیں۔

10.106وَ لَا تَدۡعُ مِنۡ دُوۡنِ اللّٰہِ مَا لَا یَنۡفَعُکَ وَ لَا یَضُرُّکَ ۚ فَاِنۡ فَعَلۡتَ فَاِنَّکَ اِذًا مِّنَ الظّٰلِمِیۡنَ      ٘

10.106.  اور اللہ کو چھوڑ کر ایسی چیز کو نہ پکارنا جو نہ تمہارا کچھ بھلا کر سکے اور نہ کچھ بگاڑ سکے۔ اگر ایسا کرو گے تو ظالموں میں ہو جاؤ گے۔

10.107.  وَ اِنۡ یَّمۡسَسۡکَ اللّٰہُ بِضُرٍّ فَلَا کَاشِفَ لَہٗۤ اِلَّا ہُوَ ۚ وَ اِنۡ یُّرِدۡکَ بِخَیۡرٍ فَلَا رَآدَّ لِفَضۡلِہٖ ؕ یُصِیۡبُ بِہٖ مَنۡ یَّشَآءُ مِنۡ عِبَادِہٖ ؕ وَ ہُوَ الۡغَفُوۡرُ الرَّحِیۡمُ      ٘

10.107.  اور اگر اللہ تم کو کوئی تکلیف پہنچائے تو بجز اس کے اور کوئی اس کو دور کرنے والا نہیں ہے اور اگر وہ تم کو کوئی خیر پہنچانا چاہیے تو اس کے فضل کا کوئی ہٹانے والا نہیں (١) وہ اپنا فضل اپنے بندوں میں سے جس پر چاہے نچھاور کر دے اور وہ بڑی مغفرت بڑی رحمت والا ہے۔

صحیح مسلم:جلد سوم:حدیث نمبر 91         حدیث مرفوع     مکررات 3 متفق علیہ 1 بدون مکرر

 ہناد بن سری، ابن مبارک، عکرمہ بن عمار، سماک حنفی، ابن عباس، حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ بن خطاب رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے غزوہ بدر کے دن مشرکین کی طرف دیکھا تو وہ ایک ہزار تھے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ تین سو انیس تھے اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے قبلہ کی طرف منہ فرما کر اپنے ہاتھوں کو اٹھایا اور اپنے رب سے پکار پکار کر دعا مانگنا شروع کر دی اے اللہ! میرے لئے اپنے کئے ہوئے وعدہ کو پورا فرمایا اے اللہ! اپنے وعدہ کے مطابق عطا فرما اے اللہ! اگر اہل اسلام کی یہ جماعت ہلاک ہوگئی تو زمین پر تیری عبادت نہ کی جائے گی آپ صلی اللہ علیہ وسلم برابر اپنے رب سے ہاتھ دراز کئے قبلہ کی طرف منہ کر کے دعا مانگتے رہے یہاں تک کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی چادر مبارک آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے شانہ سے گر پڑی پس حضرت ابوبکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ آئے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی چادر کو اٹھایا اور اسے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے کندھے پر ڈالا پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیچھے سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے لپٹ گئے اور عرض کیا اے اللہ کے نبی آپ کی اپنے رب سے دعا کافی ہو چکی عنقریب وہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے اپنے کئے ہوئے وعدے کو پورا کرے گا اللہ رب العزت نے یہ آیت نازل فرمائی (اِذْ تَسْتَغِيْثُوْنَ رَبَّكُمْ فَاسْتَجَابَ لَكُمْ اَنِّىْ مُمِدُّكُمْ بِاَلْفٍ مِّنَ الْمَلٰۗىِٕكَةِ مُرْدِفِيْنَ    ۝) 8۔ الانفال : 9) جب تم اپنے رب سے فریاد کر رہے تھے تو اس نے تمہاری دعا قبول کی کہ میں تمہاری مدد ایک ہزار لگاتار فرشتوں سے کروں گا پس اللہ نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی فرشتوں کے ذریعہ امداد فرمائی حضرت ابوزمیل نے کہا حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے یہ حدیث اس دن بیان کی جب مسلمانوں میں ایک آدمی مشرکین میں سے آدمی کے پیچھے دوڑ رہا تھا جو اس سے آگے تھا اچانک اس نے اوپر سے ایک کوڑے کی ضرب لگنے کی آواز سنی اور یہ بھی سنا کہ کوئی گھوڑ سوار یہ کہہ رہا ہے اے حیزوم آگے بڑھ پس اس نے اپنے آگے مشرک کی طرف دیکھا کہ وہ چت گرا پڑا ہے جب اس کی طرف غور سے دیکھا تو اس کا ناک زخم زدہ تھا اور اس کا چہرہ پھٹ چکا تھا پس اس انصاری نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہو کر آپ صلی اللہ علیہ وسلم یہ واقعہ بیان کیا آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تو نے سچ کہا یہ مدد تیسرے آسمان سے آئی تھی پس اس دن ستر آدمی مارے گئے اور ستر قید ہوئے ابوزمیل نے کہا کہ حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے کہا جب قیدیوں کو گرفتار کر لیا تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت ابوبکر و عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے فرمایا تم ان قیدیوں کے بارے میں کیا رائے رکھتے ہو حضرت ابوبکر نے عرض کیا اے اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم وہ ہمارے چچا زاد اور خاندان کے لوگ ہیں میری رائے یہ ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم ان سے فدیہ وصول کر لیں اس سے ہمیں کفار کے خلاف طاقت حاصل ہو جائے گی اور ہو سکتا ہے کہ اللہ انہیں اسلام لانے کی ہدایت عطا فرما دیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اے ابن خطاب آپ کی کیا رائے ہے میں نے عرض کیا نہیں اللہ کی قسم اے اللہ کے رسول میری وہ رائے نہیں جو حضرت ابوبکر کی رائے ہے بلکہ میری رائے یہ ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم انہیں ہمارے سپرد کر دیں تاکہ ہم ان کی گردنیں اڑا دیں عقیل کو حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے سپرد کریں اور اپنے رشتہ داروں میں سے ایک کا نام لیا تاکہ میں اس کی گردن مار دوں کیونکہ یہ کفر کے پیشوا اور سردار ہیں پس رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم حضرت ابوبکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی رائے کی طرف مائل ہوئے اور میری رائے کی طرف مائل نہ ہوئے جب آئندہ روز میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوا تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور ابوبکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ دونوں بیٹھے ہوئے تھے میں نے عرض کیا اے اللہ کے رسول مجھے بتائیں تو سہی کس چیز نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے دوست کو رلا دیا پس اگر میں رو سکا تو میں بھی روؤں گا اور اگر مجھے رونا نہ آیا تو میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم دونوں کے رونے کی وجہ سے رونے کی صورت ہی اختیار کرلوں گا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا میں اس وجہ سے رو رہا ہوں جو مجھے تمہارے ساتھیوں سے فدیہ لینے کی وجہ سے پیش آیا ہے تحقیق مجھ پر ان کا عذاب پیش کیا گیا جو اس درخت سے بھی زیادہ قریب تھا اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے قربیی درخت سے بھی اور اللہ رب العزت نے یہ آیت نازل فرمائی (مَا کَانَ لِنَبِيٍّ أَنْ يَکُونَ لَهُ) یہ بات نبی کی شان کے مناسب نہیں ہے کہ اس کے قبضے میں قیدی رہیں (کافروں کو قتل کر کے) زمین میں کثرت سے خون (نہ) بہائے۔ سے اللہ عزوجل کے قول پس کھاؤ جو مال غنیمت تمہیں ملا ہے پس اللہ نے صحابہ کے لئے غنیمت حلال کر دی۔

8.67.  مَا كَانَ لِنَبِيٍّ اَنْ يَّكُوْنَ لَهٗٓ اَسْرٰي حَتّٰي يُثْخِنَ فِي الْاَرْضِ  ۭتُرِيْدُوْنَ عَرَضَ الدُّنْيَا  ڰ وَاللّٰهُ يُرِيْدُ الْاٰخِرَةَ    ۭوَاللّٰهُ عَزِيْزٌ حَكِيْمٌ           ٘

8.67.  نبی کے لئے یہ مناسب نہیں تھا کہ اس کے پاس جنگی قیدی آتے تاآنکہ زمین (میدان جنگ) میں کافروں کو اچھی طرح قتل نہ کردیا جاتا۔ تم دنیا کامال چاہتے ہو جبکہ اللہ (تمہارے لیے) آخرت چاہتا ہے۔ اور اللہ ہی غالب اور حکمت والا ہے

8.68.  لَوْلَا كِتٰبٌ مِّنَ اللّٰهِ سَبَقَ لَمَسَّكُمْ فِــيْمَآ اَخَذْتُمْ عَذَابٌ عَظِيْمٌ      ٘

8.68.  اگر پہلے ہی سے اللہ کی طرف سے بات لکھی ہوئی نہ ہوتی (١) تو جو کچھ تم نے لے لیا ہے اس بارے میں تمہیں کوئی بڑی سزا ہوتی۔

8.69.  فَكُلُوْا مِمَّا غَنِمْتُمْ حَلٰلًا طَيِّبًا    ڮ وَّاتَّقُوا اللّٰهَ   ۭاِنَّ اللّٰهَ غَفُوْرٌ رَّحِيْمٌ      ٘

8.69.  پس جو کچھ حلال اور پاکیزہ غنیمت تم نے حاصل کی ہے، خوب کھاؤ پیو (١) اور اللہ سے ڈرتے رہو، یقیناً اللہ غفور و رحیم ہے۔

صحیح بخاری:جلد سوم:حدیث نمبر 2348    حدیث مرفوع      مکررات  7   متفق علیہ 3

 خلاد بن یحیی، عمر بن ذر، ذر، سعید بن جبیر، حضرت ابن عباس حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما فرماتے ہیں کہ آنحضرت نے فرمایا کہ اے جبرائیل علیہ السلام! تمہیں کون سی چیز اس بات سے روکتی ہے کہ تم ہمارے پاس اس سے زیادہ آؤ جتنا تم آیا کرتے ہو، تو یہ آیت نازل ہوئی کہ ہم صرف تمہارے رب کے حکم سے اترتے ہیں جو ہمارے سامنے اور ہمارے پیچھے ہے اسی کیلئے ہے یہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے سوال کا جواب تھا۔

19.64.  وَ مَا نَتَنَزَّلُ اِلَّا بِاَمۡرِ رَبِّکَ ۚ لَہٗ مَا بَیۡنَ اَیۡدِیۡنَا وَ مَا خَلۡفَنَا وَ مَا بَیۡنَ ذٰلِکَ ۚ وَ مَا کَانَ رَبُّکَ نَسِیًّا      ٘

19.64.  ہم بغیر تیرے رب کے حکم کے اتر نہیں سکتے (١) ہمارے آگے پیچھے اور ان کے درمیان کی کل چیزیں اس کی ملکیت میں ہیں، تیرا پروردگار بھولنے والا نہیں۔

35.22.  وَ مَا یَسۡتَوِی الۡاَحۡیَآءُ وَ لَا الۡاَمۡوَاتُ ؕ اِنَّ اللّٰہَ یُسۡمِعُ مَنۡ یَّشَآءُ ۚ وَ مَاۤ اَنۡتَ بِمُسۡمِعٍ مَّنۡ فِی الۡقُبُوۡرِ      ٘

35.22.  اور زندہ اور مردے برابر نہیں ہو سکتے (١) اللہ تعالٰی جس کو چاہتا ہے سنا دیتا ہے (٢) اور آپ ان کو نہیں سنا سکتے جو قبروں میں ہیں۔ (۳)

35.23.  اِنۡ اَنۡتَ اِلَّا نَذِیۡرٌ      ٘

35.23.   آپ تو صرف ڈرانے والے ہیں۔

35.24.  اِنَّاۤ اَرۡسَلۡنٰکَ بِالۡحَقِّ بَشِیۡرًا وَّ نَذِیۡرًا ؕ وَ اِنۡ مِّنۡ اُمَّۃٍ اِلَّا خَلَا فِیۡہَا نَذِیۡرٌ      ٘

35.24.  ہم نے ہی آپ کو حق دے کر خوشخبری سنانے والا اور ڈر سنانے والا بنا کر بھیجا ہے اور کوئی امت ایسی نہیں ہوئی جس میں کوئی ڈر سنانے والا نہ گزرا ہو۔

39.65.  وَ لَقَدۡ اُوۡحِیَ اِلَیۡکَ وَ اِلَی الَّذِیۡنَ مِنۡ قَبۡلِکَ ۚ لَئِنۡ اَشۡرَکۡتَ لَیَحۡبَطَنَّ عَمَلُکَ وَ لَتَکُوۡنَنَّ مِنَ الۡخٰسِرِیۡنَ     ٘

39.65.  یقیناً تیری طرف بھی اور تجھ سے پہلے (کے تمام نبیوں) کی طرف بھی وحی کی گئی ہے کہ اگر تو نے شرک کیا تو بلاشبہ تیرا عمل ضائع ہو جائے گا اور بالیقین تو زیاں کاروں میں سے ہو جائے گا (١)

39.66.  بَلِ اللّٰہَ فَاعۡبُدۡ وَ کُنۡ مِّنَ الشّٰکِرِیۡنَ      ٘

39.66.  بلکہ اللہ ہی کی عبادت کر (١) اور شکر کرنے والوں میں سے ہو جا۔

39.67.  وَ مَا قَدَرُوا اللّٰہَ حَقَّ قَدۡرِہٖ ٭ۖ وَ الۡاَرۡضُ جَمِیۡعًا قَبۡضَتُہٗ یَوۡمَ الۡقِیٰمَۃِ وَ السَّمٰوٰتُ مَطۡوِیّٰتٌۢ بِیَمِیۡنِہٖ ؕ سُبۡحٰنَہٗ وَ تَعٰلٰی عَمَّا یُشۡرِکُوۡنَ      ٘

39.67.  اور ان لوگوں نے جیسی قدر اللہ تعالٰی کی کرنی چاہیے تھی نہیں کی ساری زمین قیامت کے دن اس کی مٹھی میں ہوگی اور تمام آسمان اس کے داہنے ہاتھ میں لپیٹے ہوئے ہوں گے (١) وہ پاک اور برتر ہے ہر اس چیز سے جسے لوگ اس کا شریک بنائیں۔

72.18.  وَّ اَنَّ الۡمَسٰجِدَ لِلّٰہِ فَلَا تَدۡعُوۡا مَعَ اللّٰہِ اَحَدًا     ٘

72.18.  اور یہ مسجدیں صرف اللہ ہی کے لئے خاص ہیں پس اللہ تعالٰی کے ساتھ کسی اور کو نہ پکارو۔ (۱)

72.19.  وَّ اَنَّہٗ لَمَّا قَامَ عَبۡدُ اللّٰہِ یَدۡعُوۡہُ کَادُوۡا یَکُوۡنُوۡنَ عَلَیۡہِ لِبَدًا     ٘

72.19.  اور جب اللہ کا بندہ اس کی عبادت کے لئے کھڑا ہوا تو قریب تھا کہ وہ بھیڑ کی بھیڑ بن کر اس پر پل پڑیں

72.20.  قُلۡ اِنَّمَاۤ اَدۡعُوۡا رَبِّیۡ وَ لَاۤ اُشۡرِکُ بِہٖۤ اَحَدًا     ٘

72.20.  آپ کہہ دیجئے کہ میں تو صرف اپنے رب ہی کو پکارتا ہوں اور اس کے ساتھ کسی کو شریک نہیں کرتا۔

72.21.  قُلۡ اِنِّیۡ لَاۤ اَمۡلِکُ لَکُمۡ ضَرًّا وَّ لَا رَشَدًا    ٘

72.21.  کہہ دیجئے کہ مجھے تمہارے کسی نفع نقصان کا اختیار نہیں۔ (۱)

72.22.  قُلۡ اِنِّیۡ لَنۡ یُّجِیۡرَنِیۡ مِنَ اللّٰہِ اَحَدٌ ۬ۙ وَّ لَنۡ اَجِدَ مِنۡ دُوۡنِہٖ مُلۡتَحَدًا     ٘

72.22.  کہہ دیجئے کہ مجھے ہرگز کوئی اللہ سے بچا نہیں سکتا (١) اور میں ہرگز اس کے سوا کوئی جائے پناہ بھی نہیں پا سکتا۔

72.23.  اِلَّا بَلٰغًا مِّنَ اللّٰہِ وَ رِسٰلٰتِہٖ ؕ وَ مَنۡ یَّعۡصِ اللّٰہَ وَ رَسُوۡلَہٗ فَاِنَّ لَہٗ نَارَ جَہَنَّمَ خٰلِدِیۡنَ فِیۡہَاۤ اَبَدًا     ٘

72.23.  البتہ میرا کام اللہ کی بات اور اس کے پیغامات (لوگوں کو) پہنچا دینا ہے (اب) جو بھی اللہ اور اس کے رسول کی نہ مانے گا اس کے لئے جہنم کی آگ ہے جس میں ایسے لوگ ہمیشہ رہیں گے۔

صحیح مسلم:جلد سوم:حدیث نمبر 237       حدیث مرفوع     مکررات 5 متفق علیہ 5 

 زہیر بن حرب، اسماعیل بن ابراہیم، ابوحیان، ابی زرعة، ابوہریرہ، حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک دن ہمارے درمیان کھڑے ہوئے اور مال غنیمت میں خیانت کا ذکر فرمایا اور اس کی مذمت بیان کی اور اس کو بڑا معاملہ قرار دیا پھر فرمایا میں تم میں سے کسی کو قیامت کے دن اس حال میں آتا ہوا نہ پاؤں کہ اس کی گردن پر اونٹ سوار ہوگا جو بڑبڑا رہا ہوگا اور وہ کہے گا اے اللہ کے رسول میری مدد کریں تو میں کہوں گا میں تیرے لئے کسی چیز کا مالک نہیں ہوں تحقیق میں تجھے پہنچا چکا میں تم میں کسی کو اس حال میں نہ پاؤں گا کہ وہ قیامت کے دن اس حال میں آئے گا کہ اس کی گردن پر سوار گھوڑا ہنہناتا ہوگا وہ کہے گا اے اللہ کے رسول میری مدد کریں میں کہوں گا میں تیرے معاملہ میں کسی چیز کا مالک نہیں ہوں تحقیق میں تجھ تک پہنچا چکا ہوں میں تم سے کسی کو اس حال میں نہ پاؤں کہ وہ قیامت کے دن اس طرح آئے کہ اس کی گردن پر سوار بکری منمنا رہی ہو وہ کہے گا اے اللہ کے رسول میری مدد کریں میں کہوں گا کہ میں تیرے معاملہ میں کسی چیز کا مالک نہیں ہوں تحقیق میں تجھے پیغام حق پہنچا چکا ہوں میں تم سے کسی کو نہ پاؤں کہ وہ قیامت کے دن اس طرح آئے کہ اس کی گردن پر چیخنے والی کوئی جان ہو تو وہ کہے گا اے اللہ کے رسول میری مدد کریں میں کہوں گا میں تیرے معاملہ میں کسی چیز کا مالک نہیں ہوں تحقیق میں پیغام حق پہنچا چکا ہوں میں تم سے کسی کو نہ پاؤں کہ وہ قیامت کے دن اس طرح آئے کہ اس کی گردن پر لدے ہوئے کپڑے حرکت کر رہے ہوں تو وہ کہے گا اے اللہ کے رسول میری مدد کریں میں کہوں گا میں تیرے لئے کسی چیز کا مالک نہیں ہوں میں تجھے پیغام حق پہنچا چکا ہوں میں تم میں سے کسی کو اس حال میں نہ پاؤں کہ وہ قیامت کے دن آئے اور اس کی گردن پر سونا چاندی لدا ہوا ہوگا وہ کہے گا اے اللہ کے رسول میری مدد کریں میں کہوں گا میں تیرے لئے کسی چیز کا مالک نہیں ہوں میں تجھے اللہ کے احکام پہنچا چکا ہوں۔

 

مسند احمد:جلد دوم:حدیث نمبر 2         حدیث مرفوع       

 حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ ایک آدمی نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے کہا " جو اللہ چاہے اور جو آپ چاہیں " نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کیا تو مجھے اور اللہ کو برابر کر رہا ہے؟ یوں کہو جو اللہ تنہا چاہے۔

 

کچھ بات سمجھ میں آئی کہ نہیں

Share this post


Link to post
Share on other sites

جی محترم! میں نے بالکل پڑھا تھا، اور تبھی سوال بھی کیا کیونکہ آپ کی بات اتنی صاف ہے نہیں جتنی آپ نے سمجھی۔ اور پھر احمد لاہوری کے مختصر سوالات کو تو آپ نے چھوا تک نہیں، بلکہ اپنی گزشتہ بات کو دہرا دینے پر اکتفا کیا۔


ابھی دیکھ لیجئے، پہلے تو آپ زرداری و نواز شریف کی مثال دیتے ہوئے لکھتے ہیں


اختیارات کچھ نہ کچھ تو سب کو ملتے ہیں لوگ ایک دوسرے کو نفع نقصان بھی پہنچا دیتے ہیں۔


مگر دو ہی سطر بعد یہ بھی فرما دیا کہ


کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ وہ نفع نقصان کا اختیار رکھتی ہے یہی تو ہے اُس ہستی کو الٰہ بنانا۔


یعنی بقول شاعر، کچھ نہ سمجھے   خدا کرے کوئی


(پہلا مصرعہ عمداً ترک کر رہا ہوں، مبادا آپ برا مان جائیں)۔


 


بہرکیف، آپ کا دعوی عجیب و غریب ہے۔ ایک طرف آپ کہتے ہیں کہ کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ وہ نفع نقصان کا اختیار رکھتی ہے، یہ اس ہستی کو الٰہ ماننا ہے، یعنی اس کی الوہیت کا اقرار کرنا۔ مگر ساتھ ہی آپ کا یہ بھی فرمانا ہے کہ اختیارات کچھ نہ کچھ تو سب کو ملتے ہیں، اور لوگ ایک دوسرے کو نفع نقصان بھی پہنچاتے ہیں۔ تو کیا آپ کے ان دو فرامین کو ملانے سے یہ مفہوم نہیں بنتا کہ کچھ نہ کچھ الوہیت سب ہی کو ملتی ہے؟ ضرور یہی مفہوم بنتا ہے۔ تو کیا یہی ہے وہ شاندار عقیدہ جسے منوانے کے لیے یہ سارا زور قلم ہے؟


فرمائیے! آپ کی اپنی سمجھ میں کچھ آیا، یا اب بھی نہیں؟؟

2 people like this

Share this post


Link to post
Share on other sites

 احمد لاہوری صاحب میں کوشش کرتا ہوں وضاحت کی آگر چہ پہلے بھی کر چکا ہوں


 


کوئی کسی کو نقصان پہنچائے یا نفع اس سے وہ نفع نقصان کا اختیار نہیں رکھتا نفع نقصان کا اختیار ہونا اس سے بلند تر چیز ہے۔


فرعون نے بنی اسرائیل پر ظلم کئے کفار عرب نے جناب محمدﷺ پر ظلم کئے ، آج کافر مسلمانوں پر ظلم کر رہے قتل کر رہے ہیں اس کا یہ مطلب نہیں کہ فرعون نفع نقصان کا مالک تھا یاں کفار عرب نفع نقصان کے مالک تھے یاں آج کل امریکہ یاں روس نفع نقصان کے مالک ہیں


 


 اللہ کا بنایا ہوا نظام ہے ایک دوسرے کے ذریعے ہم آزمائے جاتے ہیں کل قیامت کو ہمیں ہر بات کا حساب دینا ہے ۔ احمد لاہوری صاحب کیا آپ فرعون کو امریکہ کو نفع نقصان کا مالک مانتے ہیں؟؟


 


میں نے پہلے بھی لکھا تھا اور اب دوبارہ لکھ رہا ہوں بات سمجھ لی جئے


 


 


 کسی ہستی کا نفع نقصان کا اختیار رکھنے کا یاں محتار کل ہونے کا  مطلب ہے اب وہ ہر نفع کو دے سکے ہر نقصان سے بچا سکے کوئ بھی کسی بھی قسم کا ہو، زرق نہیں مل رہا   بیٹا چاہیے، کسی بھی بیمارئ سے جسے مرضی نجات دہ دے، ہر مشکل پریشانی کو دور کر سکےیاں کسی کو کسی بھی مشکل پریشانی میں ڈال سکے، جو نعمت چاہے دے جو نعمت چاہے روک لے  عرض ہے  کہ   پورا  اختیار  کسی کو جو چاہے دے کسی بھی سے جو چاہے روک لے۔ اللہ کی سلطنت میں جیسے چاہے تصرف کر سکے۔


 


محترم یہ بات میں آپ کو بتانے کی کوشش کر رہا ہوں کہ کسی ہستی کے بارے میں یہ سمجھنا جو 


میں نے اوپر بیان کیں ہیں یہ اس ہستی کو الہٰ بنانا ہے اللہ کے سوا کوئی الہٰ نہیں اللہ کے سوا ایسی کوئی ہستی نہیں جس کا حکم ارادہ 


زمین اور آسمان کی اس سلطنت میں نافذ ہو اللہ آپنے اختیارات میں کسی کو شریک نہیں کرتا ۔


Edited by ziabashir

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.