Jump to content
IslamiMehfil

جناب محمدﷺ کی دعوت توحید اور عرب کے لوگوں کا شرک


Recommended Posts

ضیاء بشیر صاحب

غیرمتعلقہ آیات پیش کرنے کی بجائے

کوئی ایک آیت ایسی بھی لکھ دو جس سے یہ پتہ چلے کہ مشرکین اپنے  معبودوں

کے لئے نفع نقصان پہچانے کااختیارباذن اللہ مانتے تھے۔

امام راغب اصفہانی نے المفردات میں لکھاہے:۔

وقوله لَيْسَ لَهُمْ مِنْ دُونِهِ وَلِيٌّ وَلا شَفِيعٌ [الأنعام/ 51] ،

وَما لَكُمْ مِنْ دُونِ اللَّهِ مِنْ وَلِيٍّ وَلا نَصِيرٍ «(سورۃ عنکبوت:22)»

أي:
ليس لهم من يواليهم من دون أمر الله.

وقوله:
قُلْ أَنَدْعُوا مِنْ دُونِ اللَّهِ ما لا يَنْفَعُنا وَلا يَضُرُّنا [الأنعام/ 71] ، مثله


امام راغب اصفہانی نے من دون اللہ ولی وشفیع ونصیرونافع وضار

کومن دون امراللہ کے معنی میں لکھ کریہ واضح کردیا کہ مشرکین اپنے معبودوں کے لئے

اللہ کے امرکے بغیرولی وشفیع ونصیرونافع وضارکی صفات مانتے تھے۔

سورۃ الشوریٰ:21۔

أَمْ لَهُمْ شُرَكاءُ شَرَعُوا لَهُمْ مِنَ الدِّينِ ما لَمْ يَأْذَنْ بِهِ اللَّهُ

 

ضیاء بشیر صاحب !اب آپ ہی بتائیں

کہ آپ نے مشرکین کے لئے اللہ کااذن وامرکہاں سے تلاش کرلیاہے؟

لہٰذا آپ

 

کوئی ایک آیت ایسی بھی لکھ دو جس سے یہ پتہ چلے کہ مشرکین اپنے  معبودوں

کے لئے نفع نقصان پہچانے کااختیار،باذن اللہ (بامراللہ) مانتے تھے۔

تاکہ آپ مشرکین کے متعلق اترنے والی ان آیات کو اہل سنت پر چسپاں کرنے

کاشوق پوراکرسکیں۔

Edited by Saeedi
  • Like 2
Link to post
Share on other sites
  • Replies 126
  • Created
  • Last Reply

Top Posters In This Topic

Top Posters In This Topic

Popular Posts

ہمارے مبلغِ توحید کہاں تو چومکھی لڑ رہے تھے، دنیا بھر کے بریلوی علما کو جواب کے لیے للکار رہے تھے، فلک شگاف نعرے لگا رہے تھے، اور کہاں یہ صورتحال کہ اپنے بھاری بھرکم دلائل کے انبار کے انبار چھوڑ کر خا

السلام علیکم معزز قارئین کرام ! فتنوں کا دور ہے اور یہ فتنے کوئی نئے نہیں ہیں بلکہ صحابہ کرام کے دور سے ہی شروع ہوگئے تھے امام بخاری علیہ رحمہ نے اپنی صحیح میں حضرت عبداللہ ابن عمر رضی اللہ عنہ کا قول

Posted Images

جی محترم! دوبارہ وضاحت کی کوشش فرمانے کا بہت شکریہ، مگر اس کا کیا کیجئے کہ اب بھی ڈھاک کے وہی تین پات۔


آپ اس بارے متذبذب ہیں، یا پھر بیان مدعا کے لیے الفاظ کا درست چناؤ نہیں کر پاتے، خدا ہی بہتر جانتا ہے۔ نتیجہ مگر یہ کہ بس الجھاؤ ہی الجھاؤ، سلجھاؤ کچھ نہیں۔ اسی ایک لفظ اختیار کو لیجئے، کبھی آپ فرماتے ہیں کہ تھوڑا بہت اختیار تو سب کو حاصل ہوتا ہے، مگر ساتھ ہی اختیار کے اعتقاد کو شرک قرار دیتے ہیں، اب ایسے میں آپ کی وضاحتوں سے کیا نتیجہ اخذ کیا جائے؟ اس تازہ ترین وضاحت کی کوشش میں آپ نے لکھا


 


کوئی کسی کو نقصان پہنچائے یا نفع، اس سے وہ نفع نقصان کا اختیار نہیں رکھتا نفع نقصان کا اختیار ہونا اس سے بلند تر چیز ہے۔


 


اس کے بعد مختلف مثالیں دے کر آپ لکھتے ہیں کہ ہم ایک دوسرے کے ذریعے آزمائے جاتے ہیں اور کل قیامت کو ہمیں ہر بات کا حساب دینا ہے۔ تو جناب من! جزا و سزا، حساب و کتاب کیا ان اعمال میں ہو گا جن کے کرنے یا نہ کرنے کا ہمیں اختیار ہی نہیں، یا پھر ایسی باتوں پر گناہ و ثواب دیا جائے گا جن کے کر گزرنے یا چھوڑ دینے کا ہمیں اختیار و طاقت دیے گئے؟ آج تک تو یہی سنا تھا کہ گناہ ایسے برے اعمال پر مرتب ہوتا ہے جو اپنے ارادے اور اختیار کے ساتھ کیے جائیں، مگر ہو سکتا ہے میری معلومات ناقص ہوں۔ اور یہ جو آپ نے اوپر ظلم کا تذکرہ کیا، شرعی لحاظ سے کیا ظلم کی ایک تعریف غیر کی ملکیت میں بےجا تصرف نہیں؟ اگر ہاں، تو پھر یہ بھی آپ ہی بتا دیجئے کہ اس تصرف اور ملکیت کو کس کھاتے میں ڈالا جائے؟


احمد لاہوری کی کیا مجال ہے جناب کہ امریکہ یا فرعون کو نفع نقصان کا مالک مانے۔ مگر امریکہ اور فرعون کے لیے ظلم کا اختیار تو آپ بھی مانتے ہیں، اگرچہ تھوڑا بہت سہی، جس کا آپ اظہار بھی کر چکے۔ ایسے میں یہ بات روز روشن کی طرح عیاں نہیں ہو جاتی کہ خود آپ کے نزدیک محض اختیار ماننا غلط نہیں، بلکہ اسے بعض دیگر شرائط کے ساتھ مقید ماننا۔ اگرچہ اس بات کا اظہار کرنے میں آپ کو تردد ہو۔


مزید برآں، ملکیت بھی حقیقی، نہ کہ مجازی۔ جس طرح آپ نے امریکہ اور فرعون کی عام فہم دنیاوی مثالیں اپنی وضاحت کے حق میں پیش کیں، یہ عاجز بھی عرض کرتا ہے کہ روزمرہ مشاہدے کے مطابق بڑے بڑے ٹھیٹھ موحدین کو دیکھا گیا جو اپنے گھر، گاڑی اور دیگر املاک کے معاملے میں بڑے طمطراق کے ساتھ ملکیت کے خانے میں اپنا اسم مبارک لکھوایا کرتے ہیں، مگر اس دعوی ملکیت کے باوجود ان کی توحید پر رتی بھر آنچ نہیں آنے پاتی۔ تو کیا یہی نہیں کہا جائے گا کہ ان کے نزدیک یہ ملکیت مجازی ہوتی ہے، حقیقی مالک ان اشیا کا وہ اللہ تعالیٰ ہی کو سمجھتے ہیں۔ یہ مثال اس لیے عرض کی گئی کہ کہیں آپ اس کم علم سے ملکیت حقیقی اور ملکیت مجازی کے الفاظ قرآن حکیم سے دکھانے کا مطالبہ نہ فرما دیں۔


تو جناب، مسٔلہ گھوم کر پھر وہیں آ گیا کہ غیر اللہ میں اختیار، ملکیت، تصرف وغیرہ کا اعتقاد اگر شرک ہے  تو پھر ہر حال میں ہونا چاہئے، بغیر کسی استثنیٰ کے۔ اور اگر اس میں کوئی استثنیٰ ہے، تو اس کی نشاندہی مکمل وضاحت کے ساتھ ہونی چاہئے۔ چونکہ صفت الوہیت کا غیر اللہ میں رائی برابر تسلیم کرنا بھی شرک صریح ہے، لہذا یہ تھوڑ اختیار اور زیادہ اختیار کی تقسیم آپ کو کارآمد نہیں۔ نہ ہی مطلق لفظ ملکیت یا تصرف آپ کو مفید، بلکہ ان تمام کی ایسی جامع تعریف جو جواز اور عدم جواز میں فرق کو واضح اور ثابت کرے۔ ورنہ تو آپ اپنے استرے سے اپنا ہی سر مونڈتے رہیں گے، مطلب یہ کہ خود اپنے ہی فتووں کی زد میں  آتے رہیں گے۔

Link to post
Share on other sites

 

 



احمد لاہوری صاحب میں کوشش کرتا ہوں وضاحت کی آگر چہ پہلے بھی کر چکا ہوں
کوئی کسی کو نقصان پہنچائے یا نفع اس سے وہ نفع نقصان کا اختیار نہیں رکھتا نفع نقصان کا اختیار ہونا اس سے بلند تر چیز ہے۔
فرعون نے بنی اسرائیل پر ظلم کئے کفار عرب نے جناب محمدﷺ پر ظلم کئے ، آج کافر مسلمانوں پر ظلم کر رہے قتل کر رہے ہیں اس کا یہ مطلب نہیں کہ فرعون نفع نقصان کا مالک تھا یاں کفار عرب نفع نقصان کے مالک تھے یاں آج کل امریکہ یاں روس نفع نقصان کے مالک ہیں
اللہ کا بنایا ہوا نظام ہے ایک دوسرے کے ذریعے ہم آزمائے جاتے ہیں کل قیامت کو ہمیں ہر بات کا حساب دینا ہے ۔ احمد لاہوری صاحب کیا آپ فرعون کو امریکہ کو نفع نقصان کا مالک مانتے ہیں؟؟


Janab aap ko meh post 38 meh ikhtiyar kay point par wazahat kar aya thah:

 

Dosri baat janab, joh jis par qudrat rakhta heh woh us par ikhtiyar rakhta heh. Agar aap kay pass chalnay kee quwat aur chal saktay hen toh phir aap kay pass donoon par ikhtiyar heh. Misaal kay tor par, idol chalnay, pakrnay, sunnay samajnay par qadir aur qudrat nahin rakhta is leyeh kaha jahay ga kay kuch karnay par ikhtiyar nahin rakhta. Aap nay mujay kaha kay meh nay aap ko tanay maray is ko likhnay par aap qadir aur quwat rakhtay thay aur yeh aap kay ikhtiyar meh thah kay aap is ko likhen aur aap nay likha. Jab yeh bunyad samja deeh toh, abhi Tawheedi pehlo be samja doon. Allah ta'ala nay aap ko jis par tasarruf ki qudrat bakshi, yehni joh kaam aap kar saktay hen aur insaani quwat say bahir nahin, us par aap ko Allah nay ikhtiyar deeya heh, aap Allah kay deeyeh huway ikhtiyar say chaltay hen, agar Allah aap ko ikhtiyar nah deta toh aap kabi chal na saktay. Agar dekhnay ka ikhtiyar Allah aap ko nah deta to kabi nah dekh saktay aur sari dunya kay doctor aap ko dekha nah saktay. Allah nay aap kee rooh ko yehni aap ko aap kay jism par ikhtiyar deeya heh aur aap kee rooh/aap mutkhar hen jism par, aap joh karen is jism kay saath. Agar aap ko Allah jism ko istimal karnay ka ikhtiyar nah deta toh aap kuch nah kar saktay. Aap ka har amal ikhtiyar e bari ta'ala kay hokam say hota heh. Kissi insaaf pasand banday say poochen ja kar kay mujjay ya aap ko ikhtiyar ka matlab maloom nahin, joh woh kahay sach heh.



Agar aap meray biyan karda mafoom say ittifaq nahin kartay toh lught kee kitab say meray mafoom kee tardeed kar denh aur agar chahtay hen kay meh ikhtiyar/mukhtar ka mafoom Urdu aur Arabi ki kutub say sabat karoon toh mang lenh, online dictionaries say nikal kar deh doon ga. Aap bila waja ek baat ko pakr kar beth gahay hen.

[Nechay wali post apni post 38 kay quote keeyeh huway material kay taeed meh likhi heh.]
 

 

@ZiaBashir

Aap kay mazhab kay mutabiq agar kissi kay mutaliq yeh nazria rakha jahay kay us nay [ma fawq al asbab] kohi cheez banahi toh woh Allah ka Shareek heh yehni Ilah. Is ayaat meh Allah nay farmaya heh: "Thy Lord does create and choose as He pleases: no right/authority (i.e.yakhtaru) have they (in the matter): Glory to Allah. and far is He above the partners they ascribe (to Him)!" [Ref:28:68] Yehni jin ko woh Allah ka shareek banatay hen un kay pass kohi [ma fawq al asbab aur ma taht al asbab ka] ikhtiyar nahin. Abh agar kohi [ma fawq al asbab] kohi cheez banahay ya murda zinda karay, ya asman say barish barsahay, toh phir us ka [ma fawq al asbab ka] ikhtiyar sabat ho jahay ga aur joh aap ka dawah heh kay kissi kay pass kohi [ma fawq al asbab ka] ikhtiyar nahin woh be batal o mardood ho jahay ga.

Abh Dajjal ka murday zinda karna, badaloon say barish barsana, Isa alayhis salaam ka murdoon ko zinda karna, nabeenoon ko nazr dena, matti kay parindoon meh phoonk kar jaan bakshna, Ibrahim (alayhis salaam) ka zinda paridoon ka kameema bana kar paharoon par rakhna aur pukarna aur un ka urh kar ana, Nabi e kareem (sallallahu alayhi wa aalihi was'sallam) ka chand ko shak karna, ungliyoon say paani ka chashma jari hona, lubab mubarak say karwa paani ka meetha ho jana, musallay par khara ho kar jannat aur dozakh ko dekna, yeh sab ma fawq al asbab meh ata heh.

Alhasil, joh kaam Mushrikoon kay idol-gods nahin kar saktay aur nah qudrat o ikhtiyar rakhtay hen un par jin ka pichlay paragraph meh zikr guzra heh woh wohi kaam kartay nazr atay hen aur jab wohi kaam kartay hen toh phir jis par mushrikoon kay idols ikhtiyar nahin rakhtay us par pichlay para graph walay ikhtiyar rakhtay hen.

------------------------------------------

Mera aap ko advice heh kay aap jawab par jawab mat denh thora aap sabr kar lenh, ek/haftay guzrnay denh, abhi kafi confusion hogi, phir dosri dafa phir ghor say paryeh ga.

Link to post
Share on other sites

وسیم صاحب کی پوسٹ کا بندہ کیا جواب دے جواب میں سلام کرنا ہی بہتر ہے اللہ آپ کو دین کی سمجھ دے آمین۔


احمد لاہوری صاحب شائد واقعی الفاظ کا چناؤ غلط ہے میری طرف سے ایک کوشش اور کرتا ہوں احمد صاحب آپ نے لکھا


احمد لاہوری کی کیا مجال ہے جناب کہ امریکہ یا فرعون کو نفع نقصان کا مالک مانے۔ مگر امریکہ اور فرعون کے لیے ظلم کا اختیار تو آپ بھی مانتے ہیں، اگرچہ تھوڑا بہت سہی، جس کا آپ اظہار بھی کر چکے۔ ایسے میں یہ بات روز روشن کی طرح عیاں نہیں ہو جاتی کہ خود آپ کے نزدیک محض اختیار ماننا غلط نہیں، بلکہ اسے بعض دیگر شرائط کے ساتھ مقید ماننا۔ اگرچہ اس بات کا اظہار کرنے میں آپ کو تردد ہو۔


 


جی جناب آپ فرعون اور امریکہ کو نفع نقصان کا مالک نہیں مانتے اگر چہ انہوں نے نقصان پہنچایا


 


نفع نقصان کا اختیار ہونے سے میری مراد نفع نقصان کا مالک ہونا ہے


 


 


 


 کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ اب وہ ہر نفع کو دے سکے ہر نقصان سے بچا سکے کوئ بھی کسی بھی قسم کا ہو، زرق نہیں مل رہا   بیٹا چاہیے، کسی بھی بیمارئ سے


 


جسے مرضی نجات دہ دے، ہر مشکل پریشانی کو دور کر سکےیاں کسی کو کسی بھی مشکل پریشانی میں ڈال سکے، جو نعمت چاہے دے جو نعمت چاہے روک لے  عرض


 


 ہے  کہ   پورا  اختیار  کسی کو جو چاہے دے کسی بھی سے جو چاہے روک لے۔ اللہ کی سلطنت میں جیسے چاہے تصرف کر سکے یہ ہے اس ہستی کو الہٰ بنانا۔


 


 


امید ہے میرا موقف آپ کو سمجھ آ گیا ہے کہ میں کس چیز کوالہٰ بنانا کہہ رہا ہوں


 


سیدی صاحب کیا کہنے آپ کے میں آپ کی طرح بغیر دلیل کے دعوے کرنے کا کام نہیں کرتا عرب کے لوگ آپنے الہٰ کے پاس اختیارات اللہ کے اذن سے 


 


مانتے تھے یعنی وہ مانتے تھے کہ ان کے الہٰ کا مالک بھی اللہ ہے یہ سب میں نے آپنی سب سے پہلی پوسٹ میں دلیل کے ساتھ بیان کیا ہے وہ دوبارہ پڑھ لیں 


 


 


 

Link to post
Share on other sites

اللہ ہم کو ہر گمراہی سے بچا لے قرآن کی صاف آیات اور صاف احادیث نقل کر دیں کہ جناب نوح علیہ اسلام جناب لوط علیہ اسلام جناب عیسیٰ علیہ اسلام جناب محمدﷺ بھی نفع نقصان کا اختیار نہیں رکھتے اور آپ لوگ ہیں کہ مان لینے کو تیار نہیں۔ میرا موقف بلکل صاف بیان کر دیا ہے میں نے

 

 

 

 کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ اب وہ ہر نفع کو دے سکے ہر نقصان سے بچا سکے کوئ بھی کسی بھی قسم کا ہو، زرق نہیں مل رہا   بیٹا چاہیے، کسی بھی بیمارئ سے

 

جسے مرضی نجات دہ دے، ہر مشکل پریشانی کو دور کر سکےیاں کسی کو کسی بھی مشکل پریشانی میں ڈال سکے، جو نعمت چاہے دے جو نعمت چاہے روک لے  عرض

 

 ہے  کہ   پورا  اختیار  کسی کو جو چاہے دے کسی بھی سے جو چاہے روک لے۔ اللہ کی سلطنت میں جیسے چاہے تصرف کر سکے یہ ہے اس ہستی کو الہٰ بنانا۔

 

آپ لوگوں کو اس بات میں کوئی اختلاف ہے تا بیان کی جئے تاکہ گفتگو نتیجہ خیز ہو

 

 

 

 

 

  اللہ آپ کو سمجھ دے دین کی اللہ سے دعا ہے اللہ ہم کو ہر گمراہی سے بچالے آمین

Link to post
Share on other sites

 

 

جی محترم! دوبارہ وضاحت کی کوشش فرمانے کا بہت شکریہ، مگر اس کا کیا کیجئے کہ اب بھی ڈھاک کے وہی تین پات۔

آپ اس بارے متذبذب ہیں، یا پھر بیان مدعا کے لیے الفاظ کا درست چناؤ نہیں کر پاتے، خدا ہی بہتر جانتا ہے۔ نتیجہ مگر یہ کہ بس الجھاؤ ہی الجھاؤ، سلجھاؤ کچھ نہیں۔ اسی ایک لفظ اختیار کو لیجئے، کبھی آپ فرماتے ہیں کہ تھوڑا بہت اختیار تو سب کو حاصل ہوتا ہے، مگر ساتھ ہی اختیار کے اعتقاد کو شرک قرار دیتے ہیں، اب ایسے میں آپ کی وضاحتوں سے کیا نتیجہ اخذ کیا جائے؟ اس تازہ ترین وضاحت کی کوشش میں آپ نے لکھا

Salam alayqum,

 

Moteram baee, baat ilfaaz kay chunaho kee nahin baat Tawheed ko joh samajnay aur Shirk ko samajnay kay leyeh joh asool o zawabat hen hamara is baee ko nahin pata. Mera ek Somalian Wahhabi say Ilm e Ghayb kay mozoo par munazra huwa ... us nay tehreer likh kar deeh kay Allah kay Nabi kay pass kohi bilqul ratti bar be Ilm e Ghayb nahin [jistera Sadiq Kohati nay Maulana Abdul Tawab Siddiqi walay munazray meh likha thah]. Us kee taqreer pehli thee, us nay woh tamam ayaat pesh keen jin say Allah ka Aalim Ul Ghayb hona sabat hota heh aur jin meh bazahir RasoolAllah kay ilm e ghayb ki nafi hoti heh [wala aalimul ghayb ...]. Aur yeh kar beth gaya kay is say sabat huwa kay RasoolAllah kay pass kohi ilm e ghayb nahin. Meri taqreer meh khadam nay isbat kee ayaat pesh keen [... illa manir tada manir rasool] aur chand ek Ahadith. Woh aya us nay apni taqreer meh takhsees ki kay in ayaat meh ghayb say murad wahi heh ... meh nay apni taqreer meh kaha kay agar joh tum nay Tafsir kee heh agar sirf is'see Tafsir ko leeya jahay aur baqiyoon ko na mana jahay toh phir is ka matlab yeh hoga kay Allah sirf wohi ilm e ghayb yehni wahi ka ghayb hee janta heh aur baqiyoon ka ilm Allah ko nahin. Saath apnay mowaqif par dalahil ko doraya aur mutliq aur muqayyid aur jawami al kalim kee behas biyan ki.

 

Wahhabi mukhlis thah is leyeh us nay Ilm e ghayb e nabi (sallallahu alayhi wa aalihi was'sallam) ka iqrar keeya. Meh samja 2 gantoon kee maghz-mari kamyab huwi magar agay wala mamla ajeeb thah. Abh woh kehnay laga kay jab ham yeh ayaat paren gay toh Ilm e ghayb ka inqaar ka aqeedah karen gay aur yeh paren gay toh iqrar ka aqeedah rakhen gay. Yehni thah aur nahin be thah donoon contradictory batoon ka zikr hoga. Meh nay poocha yeh kia heh? Kehnay laga zahir heh Quran meh contradiction nahin, is leyeh ilm e Ghayb heh be aur nahin bi. Meh nay poocha 1 + 1 = 2 ka ilm jissay ho kia us kay is ilm ka iqrar aur tardeed aqal wala kesay kar sakta heh? Ya phir mantay ho kay ilm e ghayb heh ya mantay ho kay nahin, donoon ko beyak waqt kesay man saktay ho? Phir kehnay laga kay Allah nay Ilm e ghayb ki nafi is waja say keeh keun kay joh logh Shirk kartay thay woh ilm e Ghayb e RasoolAllah(sallallahu alayhi wa aalihi was'sallam say un ko khuda nah bana lenh, is leyeh mushrikoon [yehni Sunniyoon] kay muqabileh meh ham nafi karen gay takay Mushrik sachay nah hoon aur Tawheed e Ilm e ghayb ka zikr karen gay magar muwahidoon meh ham donoon ka zikr karen gay. Meh nay kaha janab ek baat toh meh samja kay tadbeer kay tehat baat biyan karna magar muwahidoon RasoolAllah (sallallahu alayhi wa aalihi was'sallam) ka ilm ghayb jannay aur nah jannay ka zikr kesay karo gay? Phir kehnay laga kay Ilm ghayb kay zikr wali ayaat mansookh hen, aur nafi wali ayaat ka hokam qaim heh, is leyeh ham nafi wala aqeedah rakhtay hen. Meh nay kaha acha chalo bil farz ayaat mansookh ho gaheen, yeh bataho kay jab mansookh shuda ayaat nazil huween theen us kay baad kohi ilm e ghayb ata huwa, kehnay laga zahir baat heh kay huwa hoga, meh nay kaha toh mansookh honay say pehlay taq ilm e ghayb milta raha, kehnay laga han. Meh nay poocha ayaat kay mansookh honay say woh joh ayaat kay nazil honay say leh kar mansookh honay kay darmiyan joh ilm e ghayb atah hota raha woh ghayb ho gaya mansookh honay kay baad? ... Aakhar meh taqriban 5 gantoon kee behas kay baad janab nay hands up keeya, aur sirf surrender nahin slender ho gaya. Kehnay laga tum say behas kar kay mujjay khatra par gaya heh kay shahid meh murtid nah ho jahoon. Meh nay bot koshish kee kay kissi tara taweel karoon magar yeh Quran meh contradiction heh aur Allah contradict nahin karta. Meray dil meh abh shuba par gaya heh kay yeh Quran gara toh nahin gaya. Lamba kissa mukhtasar ... janab ko Tawheed kay bunyadi asool nahin maloom thah, yehni zaati, atahi, qulli, baaz, haqiqi majazi, bi izni, bi ghayr izni, ... is waja say kabi kohi scud missile marta kabi kuch aur jab meh nay ussay yeh asool explain keeyeh aur un ki application kee ayaat par toh us ki phir blood circulation phir dobara chali. Meh nay ussay English meh apnay article thay woh deeyeh, aur samjaya. Itni maghz mari kay bad kuch hasal huwa, magar haftay kay bad phir message aya kay woh phir is'see mozoo par munazra karna chahta heh, meh nay message likh behja, meh munazra haar gaya hoon, woh jheet gaya, us kay dalahil na qabil e tardeed hen meh shakast tasleem karta hoon, jaan churwahi bewaqoof say.

 

ZiaBashir baee ko be yahi problem heh, Tawheed kay bunyadi asool o zawabat ka ilm nahin in ko, jis waja say ek sans meh; agar is ko makhlooq kay leyeh mana jahay toh makhlooq ilah ban jati heh, aur phir dosray jumlay meh wohi baat makhlooq kay leyeh sabat kartay hen aur Ilah nahin banta. Abh yeh kahen gay kay meh nay in ko tana mara heh, halan kay haq yahi heh kay janab ko nahin pata, aur agar pata hota toh joh kichri pakki heh woh nah pakti. Baee, mera mashwara heh kay aap hamaray asool o zawabat seekhen aur phir in ko azma kar dekh lenh. Yaqeen karen jistera ham aap kay asooloon kay mutabiq ham aap par Quran o Hadith say ihtiraz warid kartay hen aap hamaray asool o zawabat par Quran o hadith kee rooh say ham par kohi ihtiraz warid nah kar pahen gay. Meh Wahhabi aur Deobandi reh chooka hoon, aur meh aap ko ba hasiyat e sahib e tarjurba keh raha hoon. Agar aap kay asool o zawabat Quran o Hadith kay mutabiq hotay toh meh kabi bi Sunni nah hota.

 

 

 

 

 

 

کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ اب وہ ہر نفع کو دے سکے ہر نقصان سے بچا سکے کوئ بھی کسی بھی قسم کا ہو، زرق نہیں مل رہا بیٹا چاہیے،

کسی بھی بیمارئ سے جسے مرضی نجات دہ دے، ہر مشکل پریشانی کو دور کر سکےیاں کسی کو کسی بھی مشکل پریشانی میں ڈال سکے، جو نعمت چاہے دے جو نعمت چاہے روک لے عرض

ہے کہ پورا اختیار کسی کو جو چاہے دے کسی بھی سے جو چاہے روک لے۔ اللہ کی سلطنت میں جیسے چاہے تصرف کر سکے یہ ہے اس ہستی کو الہٰ بنانا۔

Salam alayqum,

 

Khadam nay lafz 'har'/'kissi bi' ko 'qull' kay mafoom meh samja, yehni Allah kay jesa 'qull', jis mafoom meh Allah kay leyeh har/ every/ qulli/ ka lafz bola jata heh. Meh nay aap ki likhi huway ko ba-ghor para aur Ahle Sunnat kay asool o zawabat kay mutabiq paya. Agar kissi makhlooq kay mutaliq yeh nazria rakha jahay kay woh qulli tor par nafa nuqsaan raziq mushkal kusha ... par qadir heh toh phir us ko Ilah ka darja deeya gaya. Yehni meri taraf say joh aap nay likha heh aur jis mafoom meh khadam nay samja aur apnay ilfaaz meh biyan keeya, us mafoom meh aap ka point bilqul darust heh.

 

ZiaBashir baee, meh English meh ek article likh raha hoon kay Ahle Sunnat kay mutabiq makhlooq kistera darja e Ilah par faiz hoti heh. Aap ko chand ghalt fehmiyan hen aur hamaray asool o zawabat say la ilmi ki bina aap behas kar rahay hen, meh nahin samajta kay aap ko tafseelan Ahle Sunnat kay nazriat ka ilm ho jahay toh aap phir ihtiraz ya inqar karen gay ... sirf thora sabr karen, meh likh raha hoon. Joh aap say behas chali heh is say meh nay idea lay kar ek article likhna shoron keeya huwa heh. Chand gantay lagen gay, pesh e khidmat kar doon ga. Agar aap ko English nahin aati toh batayeh ga, Urdu meh tarjuma shoroon kar doon.

 

Allah ta'ala aap ko aur hammeh haq baat samajnay qabool karnay kee towfeeq deh, aur hamara aur aap ka khatma imaan e kamil par ho, ameen rabil alameen.

 

 

امید ہے میرا موقف آپ کو سمجھ آ گیا ہے کہ میں کس چیز کوالہٰ بنانا کہہ رہا ہوں

 

سیدی صاحب کیا کہنے آپ کے میں آپ کی طرح بغیر دلیل کے دعوے کرنے کا کام نہیں کرتا عرب کے لوگ آپنے الہٰ کے پاس اختیارات اللہ کے اذن سے

 

مانتے تھے یعنی وہ مانتے تھے کہ ان کے الہٰ کا مالک بھی اللہ ہے یہ سب میں نے آپنی سب سے پہلی پوسٹ میں دلیل کے ساتھ بیان کیا ہے وہ دوبارہ پڑھ لیں

Aap ki murad yeh heh; mushrik apnay khudahoon kay ikhtiyarat kay tasarruf ko bi iznillah mantay thay, ya aap mantay hen kay ikhtiyaraat ka ata hona bi iznillah heh, ya aap mantay hen kay iktiyarat ka ata hona aur un meh tassaruf karna Mushrik apnay khudahoon meh bi iznillah mantay thay. thori wazahat kar denh.

  • Like 1
Link to post
Share on other sites

چلئے ضیا بشیر صاحب! دھند چھٹنا شروع تو ہوئی، یونہی چلا تو امید ہے منظر مزید واضح ہوتا جائے گا۔ مگر کسی پیش کردہ اشکال کے جواب کے لیے کوئی گزشتہ پوسٹ پڑھنے کا نہ کہئے گا، کیا خبر اس پوسٹ میں آپ نے الفاظ کا چناؤ درست نہ کیا ہو اور معاملہ پھر سے اٹک جائے۔


 


آپ نے تازہ ترین موقف میں تسلیم کیا کہ الٰہ وہ ہوتا ہے جو نفع نقصان کا مالک ہو۔ اس کے بعد آپ نے ان امور کی طویل فہرست دی ہے جن کے غیر اللہ کے حق میں تسلیم کرنے سے اس کا الٰہ ماننا لازم آتا ہے۔ حالانکہ اس تکلف کی ضرورت نہیں تھی، کیونکہ جب مالک ہونا تسلیم کر لیا، پھر اس کے بعد مزید کس بات کی گنجائش باقی رہی؟


مثال کے طور پر ایک شخص کے بارے میں یہ کہا جائے کہ وہ معمولی بخار کا اعلاج کرنے میں مہارت رکھتا ہے، مگر اس کے لیے وہ اذن الٰہی کا محتاج نہیں، بلکہ شفایابی پر بالذات قادر ہے، تو اسے غالباً آپ بھی شرک ہی کہیں گے۔ خود آپ کی اپنی تحریر کی روشنی میں یوں بھی کہہ سکتے ہیں کہ فرعون اور امریکہ کو جو اختیار حاصل ہے اس کا ماننا شرک اس لیے نہیں کہ وہاں اختیار کا مالک ہونا نہیں پایا گیا۔ لیکن اسی اختیار کو اگر اذن الٰہی کے تحت نہ مانا جائے تو ایسی صورت میں فرعون اور امریکہ کا نفع نقصان پر اختیار کا مالک ہونا لازم آئے گا اور یہ شرک ہو گا۔


گویا الٰہ وہ ہوتا ہے جو اختیار کا مالک ہو۔ جو کسی کے اذن کا محتاج ہو وہ مالک نہیں ہو گا اور یوں الٰہ بھی نہیں کہلائے گا۔ اس لحاظ سے بعطائے الٰہی کتنا بھی اختیار مانا جائے، جب تک تحت اذن الٰہی رہے گا، حقیقی ملکیت ثابت نہ ہو گی، اور یوں شرک بھی لازم نہ آ سکے گا۔ بالفاظ دیگر


 


اگر کہا جائے کہ الٰہ ماننے کے لیے ذاتی قدرت و اختیار کا پایا جانا ضروری نہیں، تو پھر ذات باری تعالیٰ کے لیے بھی ذاتی قدرت و اختیار کا ماننا ضروری نہ رہا، کہ یہ صفت الوہیت ہی نہیں۔ اور اگر ذات باری تعالیٰ کے لیے ذاتی قدرت اور اختیار کا مالک ہونا  لازم مانا جائے تو پھر غیر اللہ کے لیے اللہ تعالیٰ کی طرف سے عطا کردہ غیر مستقل اختیار تسلیم کرنا شرک نہیں ہو گا، کہ جب ملکیت نہیں پائی جا رہی تو شرکت و برابری کیسی؟


 


اور اگر یوں کہا جائے کہ اختیار کا غیر کے اذن کے تحت ہونا الٰہ ہونے سے مانع نہیں، تو اس سے لازم آئے گا کہ ذات باری تعالیٰ کی قدرت و اختیار کا غیر کے اذن کے تحت ہونا بھی ممنوع نہ ہو۔ بصورت دیگر اگر کہا جائے کہ الٰہ ہونے کے لیے اختیار کا کسی کے اذن و منشا کے تحت نہ ہونا لازم ہے، ایسے میں کسی غیر اللہ کے اختیار کو تحت اذن الٰہی ماننے سے شرک ثابت نہ ہو گا، کہ شرط مفقود ہوئی۔


 


تو فرمائیے


کیا آپ اللہ تعالیٰ کی قدرت و اختیار کو کسی کا عطا کردہ سمجھتے ہیں؟ اگر نہیں، تو کسی غیر اللہ میں غیر مستقل اور اللہ تعالیٰ کا عطا کردہ اختیار ماننے سے شرکت و برابری کیسے ثابت ہو گی؟


کیا آپ قدرت و اختیار الٰہی کو غیر کے اذن کے تحت مانتے ہیں؟ اگر نہیں تو غیر اللہ کا اختیار جو تحت اذن الٰہی ہو، اس کے ماننے سے باری تعالیٰ سے شراکت و برابری کیونکر ہو گی؟


 


امید ہے سوال آپ کی سمجھ میں آ گئے ہوں گے اور آپ سوچ سمجھ کر ان کے تسلی بخش جوابات عنایت کریں گے۔


Edited by Ahmad Lahore
Link to post
Share on other sites

وعلیکم السلام محمد علی بھائی!


صومالین صاحب کے ساتھ آپ کا تجربہ کافی تلخ رہا اور افسوس کہ نتیجہ بھی کچھ نہ نکلا۔ آپ نے مگر اپنا دینی فریضہ ادا کیا جس کے لیے اللہ تعالیٰ آپ کو جزائے خیر عطا فرمائے۔


جہاں تک موجودہ موضوع کا تعلق ہے، ضیا بشیر صاحب کے موقف میں موجود چند تضادات کی نشاندہی میں نے کی تھی، جس پر انہوں نے اتنا تو تسلیم کر لیا کہ ان کی جانب سے الفاظ کا چناؤ صحیح نہیں تھا۔ مزید اشکالات، جو اصولی نوعیت کے ہیں، کا کیا جواب دیا جاتا ہے، دیکھتے ہیں۔


Edited by Ahmad Lahore
Link to post
Share on other sites

@ZiaBashir

Magar abhi moteram Khalil Rana kee upload huwi kitab par raha thah aur guzri huwi behas kay mutaliq thora mawad milla toh socha pesh e khidmat kar doon. Baee, meh aap par kohi tana kashi nahin kar raha, sirf apni jammat kay mowaqif kee wazahat kar raha hoon takay aap hamaray Maslak kay nazriyat ko samjen. Dosri waja yeh heh kay ek Deobandi Sahib nay mujjay private meh message behja thah kay tum Barelwi jab panstay ho toh taweelen karnay lagtay ho. Khadam nay post 49 meh Dajjal ko [atahi, baaz, hadis, bi izni, majazi ...] malik o mukhtar likha us par janab nay apni post 50 meh:

 

 

وہ تو آپ نے ثابت نہیں کیا میں انتظار کر رہا ہوں کہ آپ لوگ ان اوپر بیان کی گئی دو باتوں کو ثابت کریں ۔ مجھ کو واقعی آپ حیران کرتے جا  رہے ہو  آپ کی باتیں پڑھ کر پتا چلا کہ آپ مانتے ہیں کہ دجال  زندگی اور موت کا مالک ہے

 

 

Aap kay is comment par khadam nay tafseeli wazahat post 50 meh kee thee. Aur wazia keeya thah kay Malikiat Haqiqi aur Majazi type kee heh aur meri Malikiat Majazi murad thee Dajjal kay baray meh Haqiqi nahin. Zeroorat nahin thee kay mazeed aur tafseel biyan karoon. Magar socha kay private message walay Deobandi ko sharminda kar hee doon. Malikiat Haqiqi aur Malikiat Majazi ka zikr meh nay bot pehlay keeya thah: Mushrik Kaun? RadiatingAli [yehni khadam] ki post 61 meh zikr heh.Jis say kam say kam yeh toh sabat ho jahay ga kay yeh Malikiat Haqiqi/Majazi ka aqeedah abhi gara nahin thah jaan churwanay kee khatir balkay purana heh.

 

Wesay joh material Kitab say hasil huwa pesh karta hoon:

post-14098-0-52926600-1416889455_thumb.jpg
post-14098-0-18022000-1416889384_thumb.jpg
post-14098-0-25804500-1416889468_thumb.jpg

Mazeed yeh add karta hoon kay, Ahle Sunnat kay munazir nay meray moqif ko biyan keeya heh, meh nay Malikiat kay Haqiqi/Majazi kay pehloo ko biyaan keeya unoon nay Malikiat par Zaat/Atahi  biyaan keeya. Khadam aur Hazrat Mualana nay sirf ihtisaran ek asool kay tehat wazahat kee thee magar haqiqat meh Allah kee har ek khoobi [misaal kay tor par Malik o Mukhtar o Raziq o Al Hayy, Rahman,Rauf,Raheem ...] Zaati, Qulli, Haqiqi, Bi Ghayr Izni, Qadeem, Daimi, Istiqlali ... kay mafoom meh heh aur agar kissi ko in asool o zawabat kay tehat Malik o Mukhtar ... mana jahay toh phir us ko Ilah kay darjay par faiz keeya gaya heh.

Aur makhlooq ka Atahi, Baaz, Majazi, Bi Izni, Hadis, Mumkin Ul Fana, Mohtaj, kay asool o zawabat kay mutabiq malik o mukhtar, Rauf o Raheem[1] hona har giz deen e Islam kay khilaf nahin aur man'nay meh harj nahin, balkay Hazrat Maulana nay RasoolAllah (sallallahu alayhi wa aalihi was'sallam) ko Malik, Maulvi Ghulam Ullah Khan kee pesh karda ayat say sabat kar deeya heh.Moteram Zia Bashir baee, RasoolAllah (sallallahu alayhi wa aalihi was'sallam) Quran ke ayat say Malik sabat hotay hen.

Footnote:

- [1] "Now hath come unto you an Messenger from amongst yourselves: it grieves him that ye should perish: ardently anxious is he over you: to the Believers is he most Rauf and Raheem." [Ref: 9:128]

Edited by MuhammedAli
Link to post
Share on other sites

Note:

Allah ki har khoobi/sift Zaati, Qulli, Haqiqi, Bi Ghayr Izni, Qadeem, Daimi, Istiqlali kay mafoom meh heh.

Ilah Ka Tayyun:

Kissi bi makhlooq ko zaat ya kissi be khoobi ko
Zaati, Qulli, Haqiqi, Bi Ghayr Izni, Qadeem, Daimi, Istiqlali ... mafoom kay mutabiq man-na us ko Ilah bana heh.

Ihtiraz:

Abh is par aap ka ihtiraz heh kay agar yeh darust heh toh phir Mushrikeen bi Mushrik nahin keun kay woh Allah kee Atah say tamam khoobiyan apnay khudahoon say mantay thay.

Wazahat:

Is par wazahat yeh heh kay chalen bil farz ham aap ki baat ko haq tasleem kar letay hen, magar is ka aap bi inqar nahin kar saktay kay unoon nay Ilah maan kar khoobiyan Atahi maneeh hen. Hamaray asool o zawabat kay mutabiq sirf makhlooq Ilah man-na hi Shirk akbar kay lazam honay kay leyeh kafi heh. Is leyeh khoobiyoon kay zaati ya atahi honay ka nazria rakhnay say un kay Mushrik honay meh farq nahin parray ga. Haqiqat yeh heh kay Mushrik apnay khudahoon kay leyeh khoobiyan Atahi mantay thay, magar un khoobiyoon kay tasarruf meh apnay khudahoon ko Allah ka mohtaj nahin mantay thay balkay khud mukhtar mantay thay, aur yeh khud mukhtari ka nazria un kay Shirk kee dosri waja banta thah, pehli waja makhlooq meh say kissi ko Ilah maan lena hee Shirk heh.

Note:

Yeh sirf do asool biyaan keeyeh hen jab tafseelan biyan karoon ga toh phir aap ko andaza hoga kay behas bila waja lambi huwi. Aap nay material post keeya ham nay be ihtiraz kar deeya aur behas say behas chalti rahi. Halan kay meh samajta hoon kay hamari ghalti heh kay yeh behas itni lambi huwi. Ham ko sirf apnay asool o zawabat pesh karna chahyeh thay jin say Ilah ka tayyun hota ho aur aap kay asool o zawabat par nuqs kartay aur phir un ko apnay asool o zawabat say door kartay toh shahid panch chay posts meh behas khatam ho jati. Joh ghalti muj say pehlay huwi meh us kay izalay kay leyeh laga hoon aur tafseelan asool o zawabat likh raha hoon aur aap say guzarish he kay thori mehnay par kay joh meray english article hen jin ka link peecha pesh keeya thah un meh say jin kay mutaliq hidayat kee thee woh paren us waqt taq mera article complete ho jahay ga aur aap Ilah kay tayyun wala article parh kar sara mamla samj jahen gay. Meh nahin samajta aap phir kohi ihtiraz ya behas karen gay aur agar huwi bi toh teen char posts kay exchange meh khatam ho jahay gee. Thora sabr karen in sha Allah article complete honay wala heh.

Edited by MuhammedAli
Link to post
Share on other sites

محمد علی صاحب آپ کی دعا کا شکریہ اللہ ہم کو حق سمجھنے اور مان لینے کی توفیق دے آمین۔ آپ کی پوسٹ پڑھ کر دل کو خوشی ہوئی آپ کی پوسٹ سے لگ رہا کہ آپ فیصلہ دلیل پر کرتے ہیں ۔ پھر آپ نے ذکر کیا علم غیب پر گفتگو اور کافی عجیب بات کی ایک وہابی کے بارے میں خیر یہ میرا موضوع نہیں۔

آپ نے لکھا

ZiaBashir baee ko be yahi problem heh, Tawheed kay bunyadi asool o zawabat ka ilm nahin in ko, jis waja say ek sans meh; agar is ko makhlooq kay leyeh mana jahay toh makhlooq ilah ban jati heh, aur phir dosray jumlay meh wohi baat makhlooq kay leyeh sabat kartay hen aur Ilah nahin banta. Abh yeh kahen gay kay meh nay in ko tana mara heh, halan kay haq yahi heh kay janab ko nahin pata, aur agar pata hota toh joh kichri pakki heh woh nah pakti. Baee, mera mashwara heh kay aap hamaray asool o zawabat seekhen aur phir in ko azma kar dekh lenh. Yaqeen karen jistera ham aap kay asooloon kay mutabiq ham aap par Quran o Hadith say ihtiraz warid kartay hen aap hamaray asool o zawabat par Quran o hadith kee rooh say ham par kohi ihtiraz warid nah kar pahen gay. Meh Wahhabi aur Deobandi reh chooka hoon, aur meh aap ko ba hasiyat e sahib e tarjurba keh raha hoon. Agar aap kay asool o zawabat Quran o Hadith kay mutabiq hotay toh meh kabi bi Sunni nah hota.

محمد علی صاحب اصول و ضوابط کی بات کی آپ نے محترم یہ بات ذہن مین رکھ لیجئے جو بھی اصول آپ بنائیں پہلے اس اصول کو قرآن اور حدیث کی دلیل سے ثابت کریں پھر اس اصول کو استعمال کریں نہ کہ یہ اصول بغیر دلیل کے استعمال کریں۔ آپ دیوبندی اور وہابی میں رہ چکے ہیں اور آپ کو ان کے اصول غلط لگے اور آپنے خیال میں آپ ان کے اصولوں پر اعتراض کر رہے ہیں مجھ پر بھی کئے آپ نے کچھ کی وضاحت میں کر چکا ہوں۔

محمدعلی صاحب آپ نے لکھا:

Salam alayqum,

Khadam nay lafz 'har'/'kissi bi' ko 'qull' kay mafoom meh samja, yehni Allah kay jesa 'qull', jis mafoom meh Allah kay leyeh har/ every/ qulli/ ka lafz bola jata heh. Meh nay aap ki likhi huway ko ba-ghor para aur Ahle Sunnat kay asool o zawabat kay mutabiq paya. Agar kissi makhlooq kay mutaliq yeh nazria rakha jahay kay woh qulli tor par nafa nuqsaan raziq mushkal kusha ... par qadir heh toh phir us ko Ilah ka darja deeya gaya. Yehni meri taraf say joh aap nay likha heh aur jis mafoom meh khadam nay samja aur apnay ilfaaz meh biyan keeya, us mafoom meh aap ka point bilqul darust heh.

وعلیکم اسلام:

آپ کا جواب پڑھ کر خوشی ہوئی آپ نے مان لیا کہ

Agar kissi makhlooq kay mutaliq yeh nazria rakha jahay kay woh qulli tor par nafa nuqsaan raziq mushkal kusha ... par qadir heh toh phir us ko Ilah ka darja deeya gaya. Yehni meri taraf say joh aap nay likha heh aur jis mafoom meh khadam nay samja aur apnay ilfaaz meh biyan keeya, us mafoom meh aap ka point bilqul darust heh.

محترم محمد علی صاحب یہی بات حق ہے جو آپ نے مان لی  اب میرا آپ سے سوال ہے کہ جناب کیا بریلوی  اللہ کے سوا کسی اور ہستی کے پاس مکمل نفع نقصان کا اختیار مانتے ہیں؟

بریلوی اللہ کے سوا کسی ہستی کے بارے میں مانتے ہیں کہ وہ اللہ کی سلطنت میں جیسے چاہے تصرف کر سکے جو چاہے کسی کو دے جو چاہے کسی سے روک لے؟

آپ کا مسلک ہے آپ بتا دیجئے ۔

جہاں تک آپ نے بات کی حقیقی اور مجازی ملکیت کی وہ تو سیدھی بات ہے اس سے کون انکار کر سکتا ہے اللہ ہر چیز کا مالک ہے ہمارے پاس جو ملکیت و اختیار ہے وہ عارضی ہے اس کو مجازی کہہ لو لیکن یہ غلط ہے کہ حقیقی اور مجازی کی تقسیم کر کے مخلوق کے پاس وہ اختیار مان لو جو صرف اللہ کے لئے خاص ہیں جیسے نفع نقصان کا مالک ہونا اور زندگی موت کا ما لک ہونا۔

پھر محمد علی صاحب آپ نے آپنے مسلک کے اصول بتائے اور ان پر اعتراض کے جوابات بھی دئے آپ نے لکھا:

Note:

Allah ki har khoobi/sift Zaati, Qulli, Haqiqi, Bi Ghayr Izni, Qadeem, Daimi, Istiqlali kay mafoom meh heh.

Ilah Ka Tayyun:


Kissi bi makhlooq ko zaat ya kissi be khoobi ko 
Zaati, Qulli, Haqiqi, Bi Ghayr Izni, Qadeem, Daimi, Istiqlali ... mafoom kay mutabiq man-na us ko Ilah bana heh.

Ihtiraz:

Abh is par aap ka ihtiraz heh kay agar yeh darust heh toh phir Mushrikeen bi Mushrik nahin keun kay woh Allah kee Atah say tamam khoobiyan apnay khudahoon say mantay thay.
 

محمد علی صاحب بریلوی مسلک کے کیا اصول ہیں یہ میں آچھی طرح جانتا ہوں میں بھی بریلوی مسلک میں ہی پیدا ہوا ہوں بچپن سے یہی سن کر بڑا ہوا ہوں کہ احمد رضا خان مجدد دین و ملت ہیں۔

میں نے آپنی پوسٹ کا آغاز ہی ایسا کیا تھا کہ بریلوی خودساختہ اصولوں کا باطل ہونا ظاہر ہو جائے آپ نے بھی وہی بات دہرا دی جو خلیل رانا صاحب نے میری پوسٹ کے جواب میں کہی تھی اور ابھی تک ثابت نہیں کر پائے۔

کسی ہستی کو الہٰ ماننے کیلئے  آپ نے اصول بیان کیا ہے جو واجب الوجود اور پھر وہی استقلال ذاتی کا ہی ہے الفاظ تھوڑے بڑھا دئے ہیں۔

کسی ہستی کو الہٰ بنانے کیلئے واجب الوجود کی شرط نہیں اس لئے میں نے اس پر بات چھوڑ دی ۔

محترم اوپر آپ نے اقرار کیا ہے

     Agar kissi makhlooq kay mutaliq yeh nazria rakha jahay kay woh qulli tor par nafa nuqsaan raziq mushkal kusha ... par qadir heh toh phir us ko Ilah ka darja deeya gaya. Yehni meri taraf say joh aap nay likha heh aur jis mafoom meh khadam nay samja aur apnay ilfaaz meh biyan keeya, us mafoom meh aap ka point bilqul darust heh.

محترم بتا دیجئے کسی ہستی کے پاس کلی نفع نقصان کا اختیار ماننا اس کو الہٰ بنا نا ہے کہ نہیں چاہے ماننے والا اس ہستی کے پاس اللہ کے اذن سے اختیار مانے۔ اور بریلوی اللہ کے سوا کس ہستی کے پاس کلی نفع نقصان کا اختیار مانتے ہیں اللہ کے اذن سے؟؟؟؟

 

اور خودی آپ نے اعتراض بھی نقل کر دیا اور واقعی یہ اعتراض آپ کےاصول کو باطل ثا بت کر رہا ہے

اور جو وضاحت آپ نے کی کمال ہی کر دیا کہتے ہیں وہ ان کا الہٰ مان کر ان کے پاس اللہ کے اذن سے اختیارات مانتے تھے جھگڑا ہی ختم ہوا  اللہ  الٹی سمجھ سے بچائے الہٰ ماننا ہے کیا اسی پر تو گفتگو ہے یہ ہم ایک دوسرے کو بتانے کی کوشش کر رہے ہیں  محترم فرق پڑتا ہے وہ اللہ کے اذن سے اختیارات مانتے تھے اس سے آپ کے اصول پر وہ مشرک ثابت نہیں ہوتے اور آپ کی وضاحت بلکل بیکار ہے میرے دوست ایک دم سے کسی ہستی کے بارے میں کہیں گے کہ یہ اب ہمارا الہٰ ہے نہیں پہلے آپ اس میں کچھ مانیں گیں تو وہ الہٰ بنے گی کیا مانیں گیں یہ ہمارا موضوع ہے ۔

Wazahat:

Is par wazahat yeh heh kay chalen bil farz ham aap ki baat ko haq tasleem kar letay hen, magar is ka aap bi inqar nahin kar saktay kay unoon nay Ilah maan kar khoobiyan Atahi maneeh hen. Hamaray asool o zawabat kay mutabiq sirf makhlooq Ilah man-na hi Shirk akbar kay lazam honay kay leyeh kafi heh. Is leyeh khoobiyoon kay zaati ya atahi honay ka nazria rakhnay say un kay Mushrik honay meh farq nahin parray ga. Haqiqat yeh heh kay Mushrik apnay khudahoon kay leyeh khoobiyan Atahi mantay thay, magar un khoobiyoon kay tasarruf meh apnay khudahoon ko Allah ka mohtaj nahin mantay thay balkay khud mukhtar mantay thay, aur yeh khud mukhtari ka nazria un kay Shirk kee dosri waja banta thah, pehli waja makhlooq meh say kissi ko Ilah maan lena hee Shirk heh.

اسی طرح کا اصول  بغیر دلیل کے احمد لاہوری نے بھی پیش کیا

بالفاظ دیگر

 

اگر کہا جائے کہ الٰہ ماننے کے لیے ذاتی قدرت و اختیار کا پایا جانا ضروری نہیں، تو پھر ذات باری تعالیٰ کے لیے بھی ذاتی قدرت و اختیار کا ماننا ضروری نہ رہا، کہ یہ صفت الوہیت ہی نہیں۔ اور اگر ذات باری تعالیٰ کے لیے ذاتی قدرت اور اختیار کا مالک ہونا  لازم مانا جائے تو پھر غیر اللہ کے لیے اللہ تعالیٰ کی طرف سے عطا کردہ غیر مستقل اختیار تسلیم کرنا شرک نہیں ہو گا، کہ جب ملکیت نہیں پائی جا رہی تو شرکت و برابری کیسی؟

 

اور اگر یوں کہا جائے کہ اختیار کا غیر کے اذن کے تحت ہونا الٰہ ہونے سے مانع نہیں، تو اس سے لازم آئے گا کہ ذات باری تعالیٰ کی قدرت و اختیار کا غیر کے اذن کے تحت ہونا بھی ممنوع نہ ہو۔ بصورت دیگر اگر کہا جائے کہ الٰہ ہونے کے لیے اختیار کا کسی کے اذن و منشا کے تحت نہ ہونا لازم ہے، ایسے میں کسی غیر اللہ کے اختیار کو تحت اذن الٰہی ماننے سے شرک ثابت نہ ہو گا، کہ شرط مفقود ہوئی۔

 

تو فرمائیے

کیا آپ اللہ تعالیٰ کی قدرت و اختیار کو کسی کا عطا کردہ سمجھتے ہیں؟ اگر نہیں، تو کسی غیر اللہ میں غیر مستقل اور اللہ تعالیٰ کا عطا کردہ اختیار ماننے سے شرکت و برابری کیسے ثابت ہو گی؟

کیا آپ قدرت و اختیار الٰہی کو غیر کے اذن کے تحت مانتے ہیں؟ اگر نہیں تو غیر اللہ کا اختیار جو تحت اذن الٰہی ہو، اس کے ماننے سے باری تعالیٰ سے شراکت و برابری کیونکر ہو گی؟

 

آپنے پاس سے اصول بنا لینے کا ایک مسلہ ہے ایک تو آپ وہ ثابت نہیں کر پاتے دوسرا ایسی مثال مل جاتی ہے جس پہ وہ اصول کام نہیں کرتا اور اس کا باطل ہونا ظاہر ہو جاتا ہے۔

احمد لاہوری کا مسلہ یہ ہے کہ وہ الہٰ ہونے کو اللہ ہونے پر قیاس کر رہے ہیں یعنی جو اللہ کے لئے مانتے ہو بلکل وہی کسی اور کے لئے مانو تو شرک ہو گا وہ ہستی الہٰ قرار پائے گی۔

شرک کی ایک قسم نہیں کئی قسمیں ہیں الہٰ کا مفہوم بڑھا وسیع ہے۔

میں اب صرف الہٰ بنانے کی ایک صورت پر بات کر رہا ہوں کسی ہستی کو نفع نقصان کا مالک سمجھنا اس کو الہٰ بنانا ہے ۔ یہ کام کیا تھا عرب کے لوگوں نے پر نہ تو وہ ان کو واجب الوجود مانتے تھے اور نہ ان کے اختیارات ذاتی مانتے تھے ۔ عرب کے لوگوں کو اللہ اکبر کا اقرار تھا بڑی مصیبت میں وہ صرف اللہ کو پکارتے تھے یعنی اللہ کے سوا کسی کو نفع نقصان کا مالک ماننا شرک ہے جو شرطیں اور اصول بریلوی لوگوں نے آپنی عقل سے بنائے ہیں وہ باطل ہیں  عرب کے لوگوں کا شرک بھی ان بریلوی اصولوں پر شرک ثابت نہیں ہوتا ۔

کچھ دلائل دوبارہ نقل کر دوں  احمد لاہوری صاحب کیلئے

 

1۔   مشرکینِ مکہ کے عقائد اللہ کے بارے میں

مشرکین: ہمارے الہٰ کے پاس جو اختیار ہے وہ اللہ کا دیا ہوا ہے۔ ہمارے الٰہوں کا مالک اللہ ہے۔

23.84.  قُلۡ لِّمَنِ الۡاَرۡضُ وَ مَنۡ فِیۡہَاۤ اِنۡ کُنۡتُمۡ تَعۡلَمُوۡنَ      ٘

23.84.  پوچھیے تو سہی کہ زمین اور اس کی کل چیزیں کس کی ہیں؟ بتلاؤ اگر جانتے ہو۔

23.85.  سَیَقُوۡلُوۡنَ لِلّٰہِ ؕ قُلۡ اَفَلَا تَذَکَّرُوۡنَ      ٘

23.85.  فوراً جواب دیں گے کہ اللہ کی، کہہ دیجئے کہ پھر تم نصیحت کیوں نہیں حاصل کرتے۔

23.86.  قُلۡ مَنۡ رَّبُّ السَّمٰوٰتِ السَّبۡعِ وَ رَبُّ الۡعَرۡشِ الۡعَظِیۡمِ      ٘

23.86.  دریافت کیجئے کہ ساتوں آسمانوں کا اور بہت با عظمت عرش کا رب کون ہے؟

23.87.  سَیَقُوۡلُوۡنَ لِلّٰہِ ؕ قُلۡ اَفَلَا تَتَّقُوۡنَ     ٘

23.87.   وہ لوگ جواب دیں گے کہ اللہ ہی ہے۔ کہہ دیجئے کہ پھر تم کیوں نہیں ڈرتے (١)۔

23.88.  قُلۡ مَنۡۢ بِیَدِہٖ مَلَکُوۡتُ کُلِّ شَیۡءٍ وَّ ہُوَ یُجِیۡرُ وَ لَا یُجَارُ عَلَیۡہِ اِنۡ کُنۡتُمۡ تَعۡلَمُوۡنَ     ٘

23.88.  پوچھئے کہ تمام چیزوں کا اختیار کس کے ہاتھ میں ہے؟ جو پناہ دیتا ہے (١) اور جس کے مقابلے میں کوئی پناہ نہیں دیا جاتا (٢) اگر تم جانتے ہو تو بتلاؤ؟

23.89.  سَیَقُوۡلُوۡنَ لِلّٰہِ ؕ قُلۡ فَاَنّٰی تُسۡحَرُوۡنَ      ٘

23.89.   یہی جواب دیں گے کہ اللہ ہی ہے۔ کہہ دیجئے پھر تم کدھر جادو کر دیئے جاتے ہو (١)

23.90.  بَلۡ اَتَیۡنٰہُمۡ بِالۡحَقِّ وَ اِنَّہُمۡ لَکٰذِبُوۡنَ      ٘

23.90.  حق یہ ہے کہ ہم نے انہیں حق پہنچا دیا ہے اور یہ بیشک جھوٹے ہیں۔

29.61.  وَ لَئِنۡ سَاَلۡتَہُمۡ مَّنۡ خَلَقَ السَّمٰوٰتِ وَ الۡاَرۡضَ وَ سَخَّرَ الشَّمۡسَ وَ الۡقَمَرَ لَیَقُوۡلُنَّ اللّٰہُ ۚ فَاَنّٰی یُؤۡفَکُوۡنَ      ٘

29.61.  اور اگر آپ ان سے دریافت کریں کہ زمین و آسمان کا خالق اور سورج اور چاند کو کام میں لگانے والا کون ہے؟ تو ان کا جواب یہی ہوگا کہ اللہ تعالیٰ(١) پھر کدھر الٹے جا رہے ہیں (٢)

29.62.  اَللّٰہُ یَبۡسُطُ الرِّزۡقَ لِمَنۡ یَّشَآءُ مِنۡ عِبَادِہٖ وَ یَقۡدِرُ لَہٗ ؕ اِنَّ اللّٰہَ بِکُلِّ شَیۡءٍ عَلِیۡمٌ      ٘

29.62.  اللہ تعالٰی اپنے بندوں میں سے جسے چاہے فراخ روزی دیتا ہے اور جسے چاہے تنگ (١) یقیناً اللہ تعالٰی ہرچیز کا جاننے والا ہے (٢)۔

29.63.  وَ لَئِنۡ سَاَلۡتَہُمۡ مَّنۡ نَّزَّلَ مِنَ السَّمَآءِ مَآءً فَاَحۡیَا بِہِ الۡاَرۡضَ مِنۡۢ بَعۡدِ مَوۡتِہَا لَیَقُوۡلُنَّ اللّٰہُ ؕ قُلِ الۡحَمۡدُ لِلّٰہِ ؕ بَلۡ اَکۡثَرُہُمۡ لَا یَعۡقِلُوۡنَ     ٘

29.63.  اور اگر آپ ان سے سوال کریں کہ آسمان سے پانی اتار کر زمین کو اس کی موت کے بعد زندہ کس نے کیا؟ تو یقیناً ان کا جواب یہی ہوگا اللہ تعالٰی نے۔ آپ کہہ دیجئے کہ ہر تعریف اللہ ہی کے لئے سزاوار ہے، بلکہ ان میں اکثر بے عقل ہیں (١)۔

31.32.   وَ اِذَا غَشِیَہُمۡ مَّوۡجٌ کَالظُّلَلِ دَعَوُا اللّٰہَ مُخۡلِصِیۡنَ لَہُ الدِّیۡنَ ۬ۚ فَلَمَّا نَجّٰہُمۡ اِلَی الۡبَرِّ فَمِنۡہُمۡ مُّقۡتَصِدٌ ؕ وَ مَا یَجۡحَدُ بِاٰیٰتِنَاۤ اِلَّا کُلُّ خَتَّارٍ کَفُوۡرٍ      ٘

31.32.  اور جب سمندر پر موجیں سائبانوں کی طرح چھا جاتی ہیں تو وہ (نہایت) خلوص کے ساتھ اعتقاد کر کے اللہ تعالٰی ہی کو پکارتے ہیں (١) پھر جب وہ (باری تعالیٰ) انہیں نجات دے کر خشکی کی طرف پہنچاتا ہے تو کچھ ان میں سے اعتدال پر رہتے ہیں (۲) اور ہماری آیتوں کا انکار صرف وہی کرتے ہیں جو بدعہد اور ناشکرے ہوں۔ (۳)

39.38.  وَ لَئِنۡ سَاَلۡتَہُمۡ مَّنۡ خَلَقَ السَّمٰوٰتِ وَ الۡاَرۡضَ لَیَقُوۡلُنَّ اللّٰہُ ؕ قُلۡ اَفَرَءَیۡتُمۡ مَّا تَدۡعُوۡنَ مِنۡ دُوۡنِ اللّٰہِ اِنۡ اَرَادَنِیَ اللّٰہُ بِضُرٍّ ہَلۡ ہُنَّ کٰشِفٰتُ ضُرِّہٖۤ اَوۡ اَرَادَنِیۡ بِرَحۡمَۃٍ ہَلۡ ہُنَّ مُمۡسِکٰتُ رَحۡمَتِہٖ ؕ قُلۡ حَسۡبِیَ اللّٰہُ ؕ عَلَیۡہِ یَتَوَکَّلُ الۡمُتَوَکِّلُوۡنَ      ٘

39.38.  اگر آپ ان سے پوچھیں کہ آسمان و زمین کو کس نے پیدا کیا ہے؟ تو یقیناً وہ یہی جواب دیں گے کہ اللہ نے۔ آپ ان سے کہئے کہ اچھا یہ تو بتاؤ جنہیں تم اللہ کے سوا پکارتے ہو اگر اللہ تعالٰی مجھے نقصان پہنچانا چاہے تو کیا یہ اس کے نقصان کو ہٹا سکتے ہیں؟ یا اللہ تعالٰی مجھ پر مہربانی کا ارادہ کرے تو کیا یہ اس کی مہربانی کو روک سکتے ہیں؟ آپ کہہ دیں کہ اللہ مجھے کافی ہے (١) توکل کرنے والے اسی پر توکل کرتے ہیں (٢)۔

10.31.  قُلۡ مَنۡ یَّرۡزُقُکُمۡ مِّنَ السَّمَآءِ وَ الۡاَرۡضِ اَمَّنۡ یَّمۡلِکُ السَّمۡعَ وَ الۡاَبۡصَارَ وَ مَنۡ یُّخۡرِجُ الۡحَیَّ مِنَ الۡمَیِّتِ وَ یُخۡرِجُ الۡمَیِّتَ مِنَ الۡحَیِّ وَ مَنۡ یُّدَبِّرُ الۡاَمۡرَ ؕ فَسَیَقُوۡلُوۡنَ اللّٰہُ ۚ فَقُلۡ اَفَلَا تَتَّقُوۡنَ      ٘

10.31.  آپ کہئے کہ وہ کون ہے جو تم کو آسمان اور زمین سے رزق پہنچاتا ہے یا وہ کون ہے جو کانوں اور آنکھوں پر پورا اختیار رکھتا ہے اور وہ کون ہے جو زندہ کو مردہ سے نکالتا ہے اور مردہ کو زندہ سے نکالتا ہے اور وہ کون ہے جو تمام کاموں کی تدبیر کرتا ہے؟ ضرور وہ یہی کہیں گے کہ ' اللہ ' (١) تو ان سے کہیئے کہ پھر کیوں نہیں ڈرتے۔

 

صحیح مسلم:جلد دوم:حدیث نمبر 321 حدیث مرفوع مکررات 0 متفق علیہ 0
عباس بن عبدالعظیم، نضر بن محمد یمامی، عکرمہ یعنی ابن عمار، ابوزمیل، حضرت ابن عباس رضی اللہ تعالیٰ عنہما سے روایت ہے فرماتے ہیں کہ مشرکین کہتے تھے لیبک لا شریک تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ارشاد فرماتے ہلاکت ہو تمہارے لئے اس سے آگے نہ کہو مگر مشرکین کہتے
  مگر ایک شریک۔ اے  اللہ تو اس کا مالک ہے اور اس کے مملوک کا بھی، یہ کہتے اور بیت اللہ کا طواف کرتے۔

 

محترم میں چاہتا ہوں کہ ہماری گفتگو کا فیصلہ ہو میں پھر گزارش کر دیتا ہوں یہ ذاتی اور عطائی کی تقسیم کااصول قرآن اور حدیث سے ثابت کر دیں میں مان لوں گا بریلوی مسلک سچا ہے لیکن آپ یہ کر نہیں پائیں گیں۔ ثابت کرنے کا مطالبہ کرتے اتنی لمبی گفتگو ہو چکی ہے خلیل رانا صاحب تو غائب ہو چکے دعوی کرنے کے بعد اللہ ان کو عافیت دے شائد کہیں مصروف ہوں گے۔

 

اللہ ہم کو ہر گمراہی سے بچا لے آمین

Link to post
Share on other sites

Salam alayqum,

Janab meh ziyada baq baq nahin karoon ga keun kay ya aap bad damagh hen ya meh. Mozooh sulajnay kee taraf aya thah magar aap ki adat - uljaho sab kuch aur suljaho kuch nahin, phir wazia ho rahi heh. Aap sochtay nahin sirf likhtay hen thora socha karen phir likha karen. Janab kohi bi musalman aur muwahid hamaray asool o zawabat ka inqar nahin karay ga, agar karta heh toh do wojoohat hen, ek ussay joh techinical ilfaz istimal huway un ka lafzi aur shar'ri mafoom nahin maloom, dosra Kafir ya Mushrik heh.

-------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------


Chalen bilfarz hamaray asool o zawabat sabat nahin aur sar'ri tor par Quran o Hadith kay khilaaf hen, bil farz heh. Meh nay joh yeh likha thah:

 

Khadam nay lafz 'har' aur 'kissi bi' ko 'qull' kay mafoom meh samja, yehni Allah kay jesa 'qull', jis mafoom meh Allah kay leyeh har/ every/ qulli/ ka lafz bola jata heh. Meh nay aap ki likhi huway ko ba-ghor para aur Ahle Sunnat kay asool o zawabat kay mutabiq paya. Agar kissi makhlooq kay mutaliq yeh nazria rakha jahay kay woh qulli tor par nafa nuqsaan raziq mushkal kusha ... par qadir heh toh phir us ko Ilah ka darja deeya gaya. Yehni meri taraf say joh aap nay likha heh aur jis mafoom meh khadam nay samja aur apnay ilfaaz meh biyan keeya, us mafoom meh aap ka point bilqul darust heh.



Joh point khadam nay likha, kay darust heh, in asooloon meh say ek kay tehat darust thah: Zaati, Qulli, Haqiqi, Bi Ghayr Izni, Qadeem, Daimi, Istiqlali ... Agar aap nahin par sakkay ko blue/neela rang mila kar dekh lenh kay meh nay kia likha heh.

Aap nay likha:


محمد علی صاحب اصول و ضوابط کی بات کی آپ نے محترم یہ بات ذہن مین رکھ لیجئے جو بھی اصول آپ بنائیں پہلے اس اصول کو قرآن اور حدیث کی دلیل سے ثابت کریں پھر اس اصول کو استعمال کریں نہ کہ یہ اصول بغیر دلیل کے استعمال کریں۔ آپ دیوبندی اور وہابی میں رہ چکے ہیں اور آپ کو ان کے اصول غلط لگے اور آپنے خیال میں آپ ان کے اصولوں پر اعتراض کر رہے ہیں مجھ پر بھی کئے آپ نے کچھ کی وضاحت میں کر چکا ہوں۔



Janab jab hamara asool qulli wala sabat nahin aur aap nay Ahle sunnat kay tamam asooloon ko khud sakhta likha aur batal hona be likha:


میں نے آپنی پوسٹ کا آغاز ہی ایسا کیا تھا کہ بریلوی خودساختہ اصولوں کا باطل ہونا ظاہر ہو جائے



Janab jab qulli ka asool khudsakhta aur batal ho gaya toh joh aap nay, har yehni qulli, kissi bi yenni qulli, pura yehni qulli kee rat lagahi heh toh phir aap ka is qulli ko istimal karna kesay jaiz aur darust ho gaya?

-------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------

Aap nay likha kay meh nay aap kee baat maan leeh heh:


وعلیکم اسلام
آپ کا جواب پڑھ کر خوشی ہوئی آپ نے مان لیا



Abh meh aap ko haqiqat batata hoon, awal aap nay hamaray asool kay mutabiq apnay mowaqif ko badla heh. Janab, aap toh sirf nafa o nuqsaan ... Ilah kay tayyun kay leyeh tehratay a'hay hen, abhi jab aap nay 'har' aur 'kissi bi' kay ilfaaz kay saath Qulli lehaz say taweel ki aur hamaray asool o zawabat kay tehat taweel kee toh khadam nay tasdeeq kee mohar lagahi. Magar Allah ka shukr agar meh wazhat nah karta kay aap ka lafz 'har' aur 'kissi bi' hamaray asool kay lafz qulli kay mafoom meh istimal huwa heh toh aap nay jheet janay kee biglen bajani thee. Yeh dekhyeh aap ki post number 1 meh aap nay 'har' aur 'kissi bi' ka zikr nahin keeya thah:


کسی بندے کے بارے میں یہ کہنا کہ اللہ نے اسے نفع نقصان کا اختیار دیا ہے یہ اللہ پہ جھوٹ بولنا ہے۔

کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ وہ نفع نقصان کا اختیار رکھتی ہے یہی تو ہے اُس ہستی کو الٰہ بنانا۔

کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ وہ ہر مشکل پریشانی دور کر سکتی ہے یہی تو ہے اُس کو الٰہ بنانا۔

کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ وہ اللہ کی زمین اور آسمان کی اِس سلطنت میں تصرف کر سکتی ہے یہی تو ہے اُس کو الٰہ بنانا۔

کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ وہ رزق دینے والی ہے(یعنی رزق کی تقسیم اس کے ذمے ہے جو چاہے کسی کو دے ) بیٹا بیٹی دینے والی ہے یہی تو ہے اس کو الہٰ بنانا۔

کسی ہستی کو اللہ کی ذات کا حصہ، جز(بیٹا،بیٹی) سمجھنا یہی تو ہے اُس ہستی کو الٰہ بنانا۔

کسی ہستی کی عبادت(کسی بھی قسم کی) کرنا یہی تو ہے اُس ہستی کو الٰہ بنانا۔

کسی ہستی کے بارے میں یہ سمجھنا کہ وہ مختارِ کل ہے یہی تو ہے اُس ہستی کو الٰہ بنانا۔




Magar jab hamaray ihtirazat warid huway aur sabat huway toh aap nay har aur kissi bi yehni Qulli kay mafoom ka izafa keeya:


کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ اب وہ ہر نفع کو دے سکے ہر نقصان سے بچا سکے کوئ بھی کسی بھی قسم کا ہو، زرق نہیں مل رہا بیٹا چاہیے،

کسی بھی بیمارئ سے جسے مرضی نجات دہ دے، ہر مشکل پریشانی کو دور کر سکےیاں کسی کو کسی بھی مشکل پریشانی میں ڈال سکے، جو نعمت چاہے دے جو نعمت چاہے روک لے عرض


ہے کہ پورا اختیار کسی کو جو چاہے دے کسی بھی سے جو چاہے روک لے۔ اللہ کی سلطنت میں جیسے چاہے تصرف کر سکے یہ ہے اس ہستی کو الہٰ بنانا۔




Aur jab yeh har, aur kissi bi aur pura yehni qulli phir khadam nay taeed aur tasdeeq kee.Note kar lenh aap kee pehli post say leh kar post 82 taq kissi meh be qulli wali tafseel nahin thee is leyeh ham aap ka rad kartay rahay, aur jab aap nay ek qadam seedhi janab rakha toh meh nay us qadam kay seedhay honay kee taeed kee. Alhasil jab aap nay apnay ghalat asooloon ko Ahle Sunnat kay asool kay saath likha toh khadam nay taeed kee. Idhar ham nay aap ki nahin maneeh, aap nay Tawheed kee taraf pesh qadmi kee toh us ko saraha heh.

Ek Mushrik joh Allah ta'ala kee zaat o sifaat o a'afaal ko zaati, qulli, bi ghayr izni, qadeemi ... nahin manta. Us Mushrik nay chand khoobiyoon ko qulli asool kay mutabiq likha. Joh qulli asool us mushrik kay mutabiq batal aur khud-sakhta heh, toh phir woh Muwahid ko kesay kehta heh kay tum nay meray mowaqif kee taeed ki? Jis asool ko aap khud nahin mantay aur batal aur mardood samajtay hen magar meh us asool ko manta hoon toh agar aap meray asool kay mutabiq ek baat likhen aur meh taeed karoon toh kia meh nay aap kay asool ko mana ya aap nay meray?


-------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------------


Aap ki bemari kay ilaaj kay leyeh joh likha he pesh ke khidmat heh:

Polytheistic Beliefs Which Elevate A Creation To Status Of God.
Link to post
Share on other sites

ضیا بشیر صاحب! آپ نے لکھا


اسی طرح کا اصول  بغیر دلیل کے احمد لاہوری نے بھی پیش کیا۔


معاف کیجئے گا، میں نے کب، کہاں اور کون سا اصول لکھ دیا؟ میں تو بس آپ کی مبلغانہ کاوشوں سے مستفید ہونے کی ناکام کوشش میں ہوں۔ ہاں، اپنی عادت کے مطابق آپ کے پیش کردہ نظریے پر چند اشکالات ضرور پیش کیے، جن کی نوعیت اصولی ہے، مگر یہ کہنا کہ میں نے اپنی طرف سے ابھی تک باقاعدہ طور پر کوئی اصول بلا دلیل پیش کیا، اگر غلط بیانی نہیں تو غلط فہمی ہے،اور غلط فہمی نہیں تو غلط بیانی۔ میرے کسی سوال کے سمجھنے میں البتہ مشکل ہو رہی ہو تو ضرور بتائیے، لیکن انہیں نظر انداز کرنا مناسب نہیں، خاص طور پر جب کہ شوق تبلیغ بھی آپ ہی کو چرایا ہے۔


 


اس کے بعد آپ نے ایک عجیب بات لکھی کہ


احمد لاہوری کا مسلہ یہ ہے کہ وہ الہٰ ہونے کو اللہ ہونے پر قیاس کر رہے ہیں یعنی جو اللہ کے لئے مانتے ہو بالکل وہی کسی اور کے لئے مانو تو شرک ہو گا وہ ہستی الہٰ قرار پائے گی۔


اس میں بیچارے احمد لاہوری کا قصور نہیں، کیونکہ اس نے توحید کا جو سبق پڑھا اور سیکھا اس کی بنیاد کلمہ مبارکہ لا الٰہ الاللہ پر ہے۔ یعنی کوئی الٰہ نہیں، مگر اللہ۔ ایسے میں احمد لاہوری الٰہ ہونے کو اللہ ہونے پر قیاس نہ کرے تو بتائیے کس پر کرے؟ ہو سکتا ہے آپ کی نظر میں کچھ اور بھی ایسی ہستیاں ہوں جن پر قیاس کرتے ہوئے یا جن کو معیار بناتے ہوئے آپ کسی کی الوہیت بارے فیصلہ کرتے ہوں، احمد لاہوری کے نزدیک اللہ تعالیٰ کی بس ایک ہی ہستی ایسی ہے جو الٰہ ہے، اور اسی کی ذات و صفات ہیں جن سے برابری یا شراکت ممتنع بالذات ہے، اور انہی تمام یا ان میں سے بعض یا پھر کسی ایک کی برابری کا عقیدہ باری تعالیٰ کے ساتھ شرک ہو سکتا ہے۔ احمد لاہوری تو یہ زرّیں اصول سمجھنے ہی سے قاصر ہے کہ ذات و صفات میں برابری کسی اور سے ثابت کی جائے یا قیاس اللہ کے سوا کسی اور پر کیا جائے اور شرک باری تعالیٰ سے ثابت ہو جائے۔ ایسی اعلیٰ فہمی آنجناب کو مبارک، احمد لاہوری اس سے جاہل ہی بھلا۔


اس کے بعد آپ نے پرانی باتوں کو دہرایا ہے، اور اپنے دلائل کو ایک مرتبہ پھر سے پیش کر دیا ہے۔


گزارش یہ ہے کہ اگر آپ کے نزدیک کسی بات کو دہراتے رہنے سے اس کی اہمیت یا تاثیر میں اضافہ ہو جاتا ہے، تو مجھے اس بات سے اتفاق نہیں۔ مثال کے طور پر آپ نے جن دلائل کو یہاں دہرایا ہے، انہیں مزید دس، بیس یا پچاس مرتبہ اور بھی لکھ دیں، کوئی فائدہ نہیں۔ وجہ یہ کہ کسی شے کو اپنے تئیں دلیل سمجھنے، اور اپنے کسی دعوے کے حق میں اس کے واقعتا دلیل ہونے میں فرق ہوتا ہے۔ آپ کا قرآن پاک کی آیات مقدسہ یا احادیث مبارکہ نقل کر دینا کافی نہیں، بلکہ اہمیت اس بات کی ہے کہ آپ ان سے استنباط کیا کر رہے ہیں۔ یوں تو خوارج نے بھی اپنے دعوے کے حق میں قرآن کی آیت ہی بطور دلیل پیش کی تھی، مگر امیر المومنین جناب  علی المرتضی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے وضاحت فرما دی کہ انہوں نے اس سے مراد غلط لی۔ یعنی ان کا استنباط غلط تھا۔ آپ کا استنباط درست ہے یا نہیں، اس کا فیصلہ بڑا آسان ہے، وہ یوں کہ میرے پیش کئے گئے سوالات کا تسلی بخش جواب عنایت فرما دیجئے۔ دودھ کا دودھ، پانی کا پانی ہوتے دیر نہیں لگے گی، ان شا اللہ۔


آخر میں آپ نے جو لکھا کہ


محترم میں چاہتا ہوں کہ ہماری گفتگو کا فیصلہ ہو میں پھر گزارش کر دیتا ہوں یہ ذاتی اور عطائی کی تقسیم کااصول قرآن اور حدیث سے ثابت کر دیں میں مان لوں گا بریلوی مسلک سچا ہے لیکن آپ یہ کر نہیں پائیں گیں۔


کمال ہے۔ اوپر تو آپ کہہ رہے تھے کہ


جہاں تک آپ نے بات کی حقیقی اور مجازی ملکیت کی وہ تو سیدھی بات ہے اس سے کون انکار کر سکتا ہے اللہ ہر چیز کا مالک ہے ہمارے پاس جو ملکیت و اختیار ہے وہ عارضی ہے اس کو مجازی کہہ لو۔


اگر وہ سیدھی بات تھی، تو یہاں کون سی ٹیڑھی بات ہے جو یوں متردد ہو رہے ہیں؟ دوسروں سے کیا پوچھتے ہیں جناب، اپنے دل سے فتویٰ لیجئے۔ کیا آپ اللہ تعالیٰ کی صفات کو اس کی ذاتی نہیں سمجھتے؟ دوسری طرف مخلوق کو جو صفات حاصل ہیں وہ اللہ تعالیٰ کی عطا کردہ سمجھتے ہیں یا پھر ان مخلوقات کی اپنی ذاتی؟ ایمان کی رمق بھی سینے میں اگر باقی ہو تو  کسی لمبی چوڑی تفصیل کی حاجت نہیں، نہ ہی اس سوال کا جواب ڈھونڈنے کے لیے کہیں جانا پڑتا ہے، ہر مسلمان کا قلب بلکہ خود اس کے حق میں گواہی دیتا ہے۔ آپ بھی ایک کوشش کر دیکھئے، ایمان اگر موجود ہے تو مایوسی نہیں ہو گی۔ بالفرض اس کے باوجود بھی تردّد باقی رہے، تو صراحت کے ساتھ صرف اتنا لکھ دیجئے کہ آپ کے نزدیک اللہ تعالیٰ کی صفات اس کی ذاتی نہیں بلکہ غیر کی عطا کردہ ہیں، اور مخلوقات کی جملہ صفات ان کی اپنی ذاتی ہیں، تاکہ خلاصی ہو اور مزید گفتگو سے پرہیز کیا جائے۔


اپنے گزشتہ پوچھے گئے سوالات کے جوابات کے لیے آج بھی منتظر ہوں۔


Edited by Ahmad Lahore
  • Like 1
Link to post
Share on other sites

 

ضیا بشیر صاحب! آپ نے لکھا

...

 

 

Hazrat in par irtad ka hokam lazam ata heh aur janab bazahir Mushrik hen kohi musalman Allah ki zaat, sifaat a'afaal kay Allah kay apnay honay, yehni Zaati honay aur kissi ghayr ki taraf say nah honay ka inqaar nahin karay ga, is ko batal tehrata heh Kafir, balkay badtreen Kafir heh, agar musalman thah toh murtad huwa aur essay ka qatal karna sharah meh jaiz aur sawab heh. In ki Takfir bi meray feham kay mutabiq jaiz ho chooki heh.

Edited by MuhammedAli
Link to post
Share on other sites

محترم جناب محمد علی صاحب


جہاں تک تعلق ہے اللہ تعالیٰ کی صفات کو ذاتی نہ ماننے کے قول پر لزوم کفر کا، اس میں کوئی شبہ نہیں اور میں اس بارے میں آپ سے کلّی طور پر متفق ہوں۔ مگر التزام کفر؟؟؟


نہ یہ میرا منصب نہ ہی مجھے اس کی جرات۔ پھر التزام بھی ایسی شخصیت پر جس کے بارے میں تجربہ شاہد کہ اسے درست طریقے سے اپنا موقف بیان کرنے کی مکمل اہلیت تک حاصل نہیں اور وہ خود اس بات کا اظہار بھی کر چکا۔


مثلاً کہاں تو آغاذ میں مطلق اختیار ماننا ہی الوہیت کا اقرار ٹھہرا تھا، اور وہ بھی یہی تو ہے کسی کو الٰہ بنانا جیسے تاکیدی الفاظ کے ساتھ۔ معمولی جرح کے بعد یہ مکمل اختیار بنا، ہر طرح کا، ہر شے کا، ہر شخص پر اختیار میں تبدیل ہوا، پھر اختیار کا مالک ہونا تک پہنچا، یہاں تک کہ بالآخر ملکیت بھی حقیقی لازم ہوئی نہ کہ مجازی۔


جب معاملہ یہ ہو، حکم التزام کیا آسان کام ہے؟ بلکہ میں تو بعد از اتمام حجت بھی خود کو اس بات کا اہل نہیں سمجھتا اور بیان حکم کو اہل علم ہی پر چھوڑنے کا قائل ہوں۔ اللہ تعالیٰ سب کو دولت ایمان سے سرفراز فرمائے اور اپنے فضل سے اس کی حفاظت بھی فرمائے۔

Link to post
Share on other sites

محمد علی صاحب نے حق مان لینے کے بعد بھی انکار ہی کا فیصلہ کیا ہے تو ان کی مرضی 

 

محمد علی اور رانا خلیل صاحب نے مان لیا تھا کہ عرب کے لوگ آپنے الہٰ کے پاس احتیارات اللہ کے اذن سے سمجھتے تھے اس بات کو باقی لوگ سیدی  صاحب نے نہیں مانا اب  خلیل رانا صاحب آپنی مانی ہوئ بات سے انکار کر کے سیدی صاحب سے مل گئے ہیں خلیل صاحب آپ نے آپنے دعوے کا ثبوت پیش کرنا تھا وہ کر دیں اور منوا  لیں بریلوی مسلک سچاہے کیوں نہیں ثابت کر دیتے؟؟؟

خلیل صاحب آپ نے لکھا تھا

مسلمان مومن انبیاء واولیاء  میں جو بھی اختیارات مانتا ہے وہ اللہ تعالیٰ کی عطاء سے مانتا ہے، جب کہ مشرکین کہتے تھے کہ ہم بھی اللہ کی عطا

سے اختیارات مانتے ہیں مگر اللہ نے اب ان کو اپنے حکم میں نہیں رکھا ، اَب یہ جو چاہیں کرسکتے ہیں،مشرکین کا یہی استقلال کا عقیدہ ان کو معبود

بناتا ہے، جس کی تردید قرآن کریم میں جگہ جگہ ہے۔

 

میرا موقف پہلی پوسٹ سے لے کر ابھی تک وہی ہے تبدیل نہیں ہوا گفتگو کا فیصلہ ہو اس لئے پچھلی کئی پوسٹوں سے میں شرک کی ایک صورت اللہ کے

سوا کسی اور ہستی کو نفع نقصان کا مالک مان لینا پر بات کر رہا تھا۔

یہ لکھا تھا میں نے پہلی پوسٹ میں

کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ وہ نفع نقصان کا اختیار رکھتی ہے یہی تو ہے اُس ہستی کو الٰہ بنانا۔

  اسی بات کی وضاحت کی میں نے پوسٹ نمبر 82 

نفع نقصان کا اختیار ہونے سے میری مراد نفع نقصان کا مالک ہونا ہے

 

 

 

 کسی ہستی کے بارے میں سمجھنا کہ اب وہ ہر نفع کو دے سکے ہر نقصان سے بچا سکے کوئ بھی کسی بھی قسم کا ہو، زرق نہیں مل رہا   بیٹا چاہیے، کسی بھی بیمارئ سے

 

جسے مرضی نجات دہ دے، ہر مشکل پریشانی کو دور کر سکےیاں کسی کو کسی بھی مشکل پریشانی میں ڈال سکے، جو نعمت چاہے دے جو نعمت چاہے روک لے  عرض

 

 ہے  کہ   پورا  اختیار  کسی کو جو چاہے دے کسی بھی سے جو چاہے روک لے۔ اللہ کی سلطنت میں جیسے چاہے تصرف کر سکے یہ ہے اس ہستی کو الہٰ بنانا۔

 

 

امید ہے میرا موقف آپ کو سمجھ آ گیا ہے کہ میں کس چیز کوالہٰ بنانا کہہ رہا ہوں

میرا موقف تبدیل ہر گز نہیں ہوا آپ نے اگر غلط سمجھا تو میرا کیا قصور

آپ لوگوں کی طرف سے آپنے نام نہاد اصولوں کا ثبوت نہیں آتا بلا وجہ بات کو آپ لمبی کر رہے ہیں ثابت کر دیں مخلوقات کیلئے ذاتی اور عطائی کا اصول اور منوا لیں بریلوی مسلک سچا ہے بغیر ثابت کئے آپ ادھر ادھر کی بات کرتے جا رہے ہیں

 

افسوس مجھے ذیادہ محمد علی صاحب پر ہے خود مان لینے کے بعد کے 

Agar kissi makhlooq kay mutaliq yeh nazria rakha jahay kay woh qulli tor par nafa nuqsaan raziq mushkal kusha ... par qadir heh toh phir us ko Ilah ka darja deeya gaya. Yehni meri taraf say joh aap nay likha heh aur jis mafoom meh khadam nay samja aur apnay ilfaaz meh biyan keeya, us mafoom meh aap ka point bilqul darust heh.

 

محترم محمد علی صاحب یہی بات حق ہے جو آپ نے مان لی  اب میرا آپ سے سوال ہے کہ جناب کیا بریلوی  اللہ

 

کے سوا کسی اور ہستی کے پاس مکمل نفع نقصان کا اختیار مانتے ہیں؟

 

 

بریلوی اللہ کے سوا کسی ہستی کے بارے میں مانتے ہیں کہ وہ اللہ کی سلطنت میں جیسے چاہے تصرف کر سکے جو

 

چاہے کسی کو دے جو چاہے کسی سے روک لے؟

 

آپ کا مسلک ہے آپ بتا دیجئے ۔

 

آپ نے سوالوں کا جواب نہیں دیا کیوں ؟؟ کس چیز کی پردہ داری ہے محمد علی آپ

 

 

جہاں تک بات ہے اللہ کی صفات کی اللہ کو اُن تمام صفات میں (جو قرآن حدیث سے ثابت ہیں) یکتا بے مثال اور لا شریک مانتا ہوں

 

 

میں نے یہ نہیں لکھا اللہ کے اختیارات ذاتی نہیں مجھ پر تہمت نہ لگا ئیں۔

 

میری بات بلکل صاٖف ہے

 

 

احمد لاہوری کا مسلہ یہ ہے کہ وہ الہٰ ہونے کو اللہ ہونے پر قیاس کر رہے ہیں یعنی جو اللہ کے لئے مانتے ہو بلکل وہی

 

کسی اور کے لئے مانو تو شرک ہو گا وہ ہستی الہٰ قرار پائے گی۔

 

 

میں کیا کہہ سکتا ہوں آپ کو بلکل وہی کا لفظ کا کیا مطلب ہے آپ کو نہی پتا ؟

 

اللہ کے سوا کسی کو الہٰ بنانے کیلئے لازمی نہیں وہ تمام صفات اس ہستی میں مانی جائیں جو اللہ کے لئے ہیں۔

 

اتنی سی بات آپ لوگوں کو سمجھ نہیں آتی

 

اس لئے لوگوں میں پھر کہہ دیتا ہوں کہ آپ آپنے بنائے خودساختہ اصول استقلال ذاتی کو الہٰ ہونے کی شرط ثابت

 

کر دیں اور مجھ سے منوا  لیں بریلوی مسلک سچا ہےبلا وجہ بات کو لمبی نا کریں ثبوت دیں جو آپ کو پہلے دینا چاہیے تھا 

 

اللہ ہم کو حق مان لینے کی توفیق دے آمین

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

Link to post
Share on other sites

 

محمد علی صاحب نے حق مان لینے کے بعد بھی انکار ہی کا فیصلہ کیا ہے تو ان کی مرضی 

 

 

Muj par jhoot thomp kar tummeh ratti bar, bilqul, thori si be sharam aahi ya imaan ki ammi yehni aya ko us tara door phenkta heh jistera khanzeer ko musalman? Jhootay par Allah ki lanat. Itnay nangay jhoot bolay joh tumari Wahhabiat kay shaan kay layk hen. Agar tum itnay nangay jhoot nah boltay toh shahid mujjay shak hota kay tum Wahhabi nahin ho magar tumaray nangay jhoot sabat kar rahay hen kay tum kin kay chashm aur handera ho - Jhoot meh tum nay Khalil Ahmad Saharanpuri ka maat deeh, nahin shahid Saharanpuri ko abhi nahin pawnch pahay us ko sirf Dajjal aur Iblees hee pawnch saktay hen.

 

Apnay jhooton say tum nay sabat kar deeya kay tumara behas karna haq samajnay kay leyeh heh. Tumaray jhoot aur muj say ghalat bateh mansoob kar kay tum nay apna behroopiyah pan zahir kar deeya heh - tum abh sirf apni ana, naaq, aur izzat kay wastay behas meh paray ho, is leyeh Islami asool o zawabat ko maan kar un kay mutabiq taweel kar kay bi hammeeh say apni manwa rahay ho.

 

Wama alayna ilal balaghul mubeen.

Edited by MuhammedAli
Link to post
Share on other sites

جناب ضیا بشیر صاحب!


آپ نے جو کچھ لکھا، اگر یہ مذاق ہے تو نہایت ہی بے تکّا، لطافت جس میں نام کو نہیں، اور اگر آپ واقعی سنجیدہ ہیں، تو معاف کیجئے گا یہ کوئی بڑی ہی پرمزاح قسم کی سنجیدگی ہے۔ یعنی پہلے تو آپ کہہ رہے تھے


 


محترم میں چاہتا ہوں کہ ہماری گفتگو کا فیصلہ ہو میں پھر گزارش کر دیتا ہوں یہ ذاتی اور عطائی کی تقسیم کااصول قرآن اور حدیث سے ثابت کر دیں میں مان لوں گا بریلوی مسلک سچا ہے لیکن آپ یہ کر نہیں پائیں گیں۔


 


لیکن اب فرماتے ہیں


 


میں نے یہ نہیں لکھا اللہ کے اختیارات ذاتی نہیں مجھ پر تہمت نہ لگا ئیں۔


ناطقہ سر بگریباں ہے اسے کیا کہیے۔


ارے حضرت! جب آپ اپنے منہ سے اللہ کے اختیارات کو ذاتی مان رہے ہیں تو پھر ذاتی عطائی کی تقسیم کے اصول کا مطالبہ دوسروں سے کرنے کا کیا مطلب ہوا بھلا؟ یا پھر صورتحال یوں ہے کہ آپ اللہ تعالیٰ کے اختیارات کو ذاتی تو مانتے ہیں مگر کسی اصول کے تحت نہیں۔


تو کیا بےاصولی کے تحت؟؟؟


جیسا کہ عرض کیا، اگر آپ مزاح فرما رہے ہیں تو نہایت ہی بےتکا اور بے روح قسم کا، اور اگر سنجیدہ ہیں تو یہ سنجیدگی عجیب مضحکہ خیز ہے۔


مزید آپ نے اس ناچیز کو مخاطب کرتے ہوئے لکھا


 


اللہ کے سوا کسی کو الہٰ بنانے کیلئے لازمی نہیں وہ تمام صفات اس ہستی میں مانی جائیں جو اللہ کے لئے ہیں۔


اتنی سی بات آپ لوگوں کو سمجھ نہیں آتی۔


 


حالانکہ میں نے تو بڑے واضح الفاظ میں عرض کیا تھا کہ


احمد لاہوری کے نزدیک اللہ تعالیٰ کی بس ایک ہی ہستی ایسی ہے جو الٰہ ہے، اور اسی کی ذات و صفات ہیں جن سے برابری یا شراکت ممتنع بالذات ہے، اور انہی تمام یا ان میں سے بعض یا پھر کسی ایک کی برابری کا عقیدہ باری تعالیٰ کے ساتھ شرک ہو سکتا ہے۔


 


اس کے باوجود اگر آپ کہیں کہ بات میری سمجھ میں نہیں آئی، تو کیا کیا جائے۔ چلیں چھوڑیں جناب، آپ ٹھیک کہہ رہے ہوں گے، مان لیتے ہیں کہ سمجھنے میں ہم سے ہی غلطی ہو گئی، اب ہم کوئی آپ کی طرح ضدی تھوڑے ہی ہیں کہ خوامخواہ ہر بات پر اڑ جائیں۔


لیکن عالی مرتبت! دوسروں پر تو آپ خوب گرج برس رہے ہیں کہ آپ کے سوالوں کے جواب نہیں دیے جا رہے، میرے سوالات کا کیا، جو آج بھی آپ کی نظر کرم کے منتظر ہیں؟ ان کے جواب دینے میں کوئی حرج ہے کیا؟ اور ہاں، اس بات سے بےفکر ہو جائیے کہ میں کسی مسلک کو سچا ثابت کرنے کی کوشش میں ہوں، کیونکہ میرے نزدیک کسی مسلک کے سچا ہونے کے لیے آپ کی سند تصدیق کی سرے سے کوئی حاجت ہی نہیں۔ میں تو فی الحال صرف اس نظریے کی جانچ پرکھ میں مشغول ہوں جسے لے کر آپ تشریف لائے اور میدان مباحثہ میں اندھا دھند چھلانگ دے ماری۔

Link to post
Share on other sites

 محمد علی صاحب معذرت کرتا ہوں آپ سے اگر کوئی بات بری لگی ہو جہاں تک بات ہے کہ میں نے آپ پر جھوٹ باندھا محترم آپ نے خود تسلیم کیا ہے


Agar kissi makhlooq kay mutaliq yeh nazria rakha jahay kay woh qulli tor par nafa nuqsaan raziq mushkal kusha ... par qadir heh toh phir us ko Ilah ka darja deeya gaya. Yehni meri taraf say joh aap nay likha heh aur jis mafoom meh khadam nay samja aur apnay ilfaaz meh biyan keeya, us mafoom meh aap ka point bilqul darust heh.


 

میرے سوالات کا جواب تو دے دیجئے 


 


کیا بریلوی جناب محمدﷺ کے پاس مکمل نفع نقصان کا اختیار نہیں مانتے ؟


 


کیا بریلوی جناب محمدﷺ کے بارے میں نہیں مانتے کہ وہ اللہ کی سلطنت میں جیسے چاہیں تصرف کریں؟


 


اب اگر مانتے ہیں تو محمد علی صاحب آپ کے اقرار کے مطابق یہ شرک ہوا کہ نہیں؟؟


Edited by ziabashir
Link to post
Share on other sites

محترم جناب محمد علی صاحب

Hazrat khadam nay Zia ki Takfir nahin kee, sirf hokam e sharah bataya thah:

 

Hazrat in par irtad ka hokam lazam ata heh aur janab bazahir Mushrik hen. Kohi musalman Allah ki zaat, sifaat a'afaal kay Allah kay apnay honay, yehni Zaati honay aur kissi ghayr ki taraf say nah honay ka inqaar nahin karay ga, is ko batal tehrata heh Kafir, balkay badtreen Kafir heh, agar musalman thah toh murtad huwa aur essay ka qatal karna sharah meh jaiz aur sawab heh. In ki Takfir bi meray feham kay mutabiq jaiz ho chooki heh.

 

Meh nay bee lazoom e Kufr ka likha heh agar iltizam e kufr ka hokam deta toh ilfaaz kuch istera hotay:

 

Hazrat in par irtad ka hokam lazam ho chuka heh aur janab haqiqat meh Mushrik hen. Kohi musalman Allah ki zaat, sifaat a'afaal kay Allah kay apnay honay, yehni Zaati honay aur kissi ghayr ki taraf say nah honay ka inqaar nahin karay ga, is ko batal tehrata heh Kafir, balkay badtreen Kafir heh, agar musalman thah toh murtad huwa aur is ka qatal karna sharah meh jaiz aur sawab heh. In ki Takfir bi meray feham kay mutabiq jaiz ho chooki heh.

 

Sirf Sharah ka hokam bataya heh lagaya nahin. Jab lagaya toh naam aur waldiat kay zikr kay saath aur wazia ilfaaz kay saath karoon ga. Aur jahan taq mujjay ilm heh sar'ri kufr meh kissi Mufti say rujoo karna zeroori nahin. Kafi arsa pehlay ek banda bazahir Sunni thah magar Thanvi ki ibarat ka difa aur us ka iman sabat karta thah aur Nanotavi ki Kufriat ko tassawuff aur Sufiat ka ala darja batata thah, khadam nay us ki Takfir ki, qafi arsa behas chali. Ek meray mukhlis baee ko shikwa thah kay khadam ka fatwah denay ka haq nahin is leyeh takfir na jaiz heh. Meh aur meray woh baee Bradford, UK meh ek jayyid Aalim kee khidmat meh hazir huway aur masla biyan keeya. Syed sahib nay farmaya kay fatwah un points par leeya jata heh jin ka banday ko ilm nah ho aur jin masail par maharat rakhta ho aur Kufr wazia ho toh Takfir meh kohi harj nahin aur banda kar sakta heh. Yeh janab jin say ham maghz mari kar rahay hen in ka damaghi tawazoh bi kharab heh aur Tawheed aur Shirk kay bunyadi asool bi in ko pata nahin. Jab mujjay yeh pata heh toh meh is bad damagh ki keun Takfir karoon.

Link to post
Share on other sites

وضاحت فرمانے کا بہت شکریہ محمد علی صاحب۔ میرا مقصود بھی بنیادی طور پر اپنی ذات کی طرف سے اظہار عجز کرنا تھا، نہ کہ آپ پر اعتراض۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔


Edited by Ahmad Lahore
Link to post
Share on other sites

محمد علی صاحب سوالات کا جواب تو آپ نے دیا نہیں وہ تو دے دیں

کیا بریلوی جناب محمدﷺ کے پاس مکمل نفع نقصان کا اختیار نہیں مانتے ؟

 

کیا بریلوی جناب محمدﷺ کے بارے میں نہیں مانتے کہ وہ اللہ کی سلطنت میں جیسے چاہیں تصرف کریں؟

 

اب اگر مانتے ہیں تو محمد علی صاحب آپ کے اقرار کے مطابق یہ شرک ہوا کہ نہیں؟؟

 

Agar kissi makhlooq kay mutaliq yeh nazria rakha jahay kay woh qulli tor par nafa nuqsaan raziq mushkal kusha ... par qadir heh toh phir us ko Ilah ka darja deeya gaya. Yehni meri taraf say joh aap nay likha heh aur jis mafoom meh khadam nay samja aur apnay ilfaaz meh biyan keeya, us mafoom meh aap ka point bilqul darust heh.

Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.


×
×
  • Create New...