Sign in to follow this  
Followers 0
Ghulam.e.Ahmed

نہار منہ پانی کی ممانعت میں حدیث

7 posts in this topic

السّلام و علیکم


ایک ایس ایم ایس آیا جس میں ایک حدیث کوٹ کی گئی تھی (مفہوم) نہار منہ پانی پینا بہت نقصان دِہ ہے اور اس سے منع فرمایا گیا ہے۔


برائے مہربانی اِس سلسلے میں میری مدد فرمائیں کیونکہ بہت سے حکماء اور ڈاکٹر حضرات صبح نہار منہ پانی پینے کو بہت فائدہ مند بتاتے ہیں۔


کیا یہ حدیث غلط لکھی گئی ہے یا مفہوم و معنیٰ میں کچھ فرق ہے کہ میں سمجھنے سےقاصر ہوں۔


جزاک اللہ


۔


 


Share this post


Link to post
Share on other sites

ایک طب کی کتاب میں ، میں نے بھی یہ ہی پڑھا تھا لیکن اسمیں حدیث کا حوالہ موجود نہیں تھا


Share this post


Link to post
Share on other sites

Posted (edited) · Report post

 

السّلام و علیکم

ایک ایس ایم ایس آیا جس میں ایک حدیث کوٹ کی گئی تھی (مفہوم) نہار منہ پانی پینا بہت نقصان دِہ ہے اور اس سے منع فرمایا گیا ہے۔

برائے مہربانی اِس سلسلے میں میری مدد فرمائیں کیونکہ بہت سے حکماء اور ڈاکٹر حضرات صبح نہار منہ پانی پینے کو بہت فائدہ مند بتاتے ہیں۔

کیا یہ حدیث غلط لکھی گئی ہے یا مفہوم و معنیٰ میں کچھ فرق ہے کہ میں سمجھنے سےقاصر ہوں۔

جزاک اللہ

۔

 

 

وَ عَلَیکُمُ السَّلام و رَحمۃُ اللہِ و بَرَکاتُہ

جَناب غلامِ اَحمَد بھائی صاحِب!۔

یہ حدیث موجود ہے طَبرانی کی مُعجَم الاَوسَط وغیرہ میں۔

دارُالافتا اہلِ سُنت و جَماعت سے ناچیز نے اس حوالے سے بَذریعہ فون سُوال پوچھا۔

سُنی مُفتی صاحِب نے جوابََا ارشاد فرمایا (مفہوم)۔

۔"یہ حدیث ضَعیف ہے (بَلحاظِ سنَد) ، اگر کوئی اس کی رُو سے نہار مُنہ پانی بطورِ احتیاط نہیں پیتا تو کوئی حَرَج نہیں ہے۔ مگر اِسکی بنیاد پر نہار مُنہ پانی پینا حرام قرار نہیں دیا جا سکتا"۔

Edited by AqeelAhmedWaqas
2 people like this

Share this post


Link to post
Share on other sites

mobile companies nay log hire kie ay hu ay hain. jo  apni taraf say bahut saari ahadees quote kar rahay hain. khaas tour par bahut saaray say aqwaal HAZRAT ALI (raa) say mansoob. Mufti akmal sahib Q TV farmaatay hain k tasdeeq k baghair aisay SMS aagay forward na karain.

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

وَ عَلَیکُمُ السَّلام و رَحمۃُ اللہِ و بَرَکاتُہ

جَناب غلامِ اَحمَد بھائی صاحِب!۔

یہ حدیث موجود ہے طَبرانی کی مُعجَم الاَوسَط وغیرہ میں۔

دارُالافتا اہلِ سُنت و جَماعت سے ناچیز نے اس حوالے سے بَذریعہ فون سُوال پوچھا۔

سُنی مُفتی صاحِب نے جوابََا ارشاد فرمایا (مفہوم)۔

۔"یہ حدیث ضَعیف ہے (بَلحاظِ سنَد) ، اگر کوئی اس کی رُو سے نہار مُنہ پانی بطورِ احتیاط نہیں پیتا تو کوئی حَرَج نہیں ہے۔ مگر اِسکی بنیاد پر نہار مُنہ پانی پینا حرام قرار نہیں دیا جا سکتا"۔

 

جزاک اللہ عقیل احمد وقاص بھائی

آپ کی مدد کے لیئے بے حد مشکور ہوں۔

کافی دنوں سے آن لائن نہ ہوسکا اس لیئے دیکھ نہیں پایا۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.