Sign in to follow this  
Followers 0
kashmeerkhan

تفسیر ابن عباس پر وہابی اعتراض اور اعلیحضرت کا فتوی؟؟

5 posts in this topic

وہابی نسلوں نے اپنے محدث فورم پر تفسیر ابن عباس پر جرح بھی کی ہے اور امام اہلسنت احمد رضا خان علیہ الرحمۃ الحنان کا فتوی پیش کیا ہے۔

مجھے تین باتیں جاننی ہیں::۔

جو جرح کی گئی ہے اس حوالے سے وہ درست ہے یا نہیں؟

میرے اعلیحضرت رحمۃ اللہ علیہ کا جو حوالہ دیا ہے کیا واقعی ایسا فتوی موجود ہے یا نہیں اور میرے سید امام اہلسنت علیہ الرحمہ کا کیا فیصلہ ہے اس حوالے سے؟

کیا اس تفسیر ابن عباس سے استدلال کرنا جائز ہے یا نہیں؟؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

کلبی اور ابی صالح کے متعلق علم الجراح والتعدیل سے یوں تو بہت کچھ نقل کیا جاسکتا ہے، مگر بریلویہ کو ان کے امام احمد رضا خان بریلوی صاحب کا ہی قول پیش کرنےپر ہی اکتفاء کرتے ہیں، دیکھئے کہ بریلویہ کے امام احمد رضا خان بریلوی اس ''تفسیر ابن عباس'' کے متعلق کیا فرماتے ہیں:

یہ تفسیر کہ منسوب بسید نا ابن عباس رضی اللہ تعالٰی عنہما ہے نہ اُن کی کتاب ہے نہ اُن سے ثابت یہ بسند محمد بن مروان عن الکلبی عن ابی صالح مروی ہے اور ائمہ دین اس سند کو فرماتے ہیں کہ یہ سلسلہ کذب ہے تفسیر اتقان شریف میں ہے:

واوھی طرقہ طریق الکلبی عن ابی صالح عن ابن عباس فان انضم الٰی ذلک روایۃ محمد بن مروان اسدی الصغیر فھی سلسلۃ الکذب ۔۱؂

اس کے طُرق میں سے کمزور ترین طریق کلبی کا ابوصالح سے اور اس کا ابن عباس رضی اللہ تعالٰی عنہما سے روایت کرنا اگر اس کے ساتھ محمد بن مروان اسدی کی روایت مل جائے تو کذب کا سلسلہ ہے ۔(ت)

ملاحظہ فرمائیں: صفحہ 396 جلد 29 فتاوی رضویہ - احمد رضا خان بریلوی – رضا فاؤنڈیشن، لاہور

Edited by kashmeerkhan

Share this post


Link to post
Share on other sites

Agar Ala Hazrat nay esa sanad kay mutaliq farmaya heh toh darust heh. Abh Tafsir ka sahih aur ghalat honay ka masla. Shahid waqia hee Ibn Abbas (radiallah ta'ala anhu) ki Tafsir nah ho magar tabeerat e ayat ko ummat kay Ulamah nay qabool farmaya heh. Aur hamari daleel tafsir ka matan hota heh na kay Ibn Abbas radiallah ta'ala anhu ki zaat. Kissi Tafsir ka kisi say mansoob hona aur haqiqat meh us ki tafsir nah hona ayaat ki tafsir ko batil nahin karti. Joh Tafasir Ibn Abbas say mansoob shuda hen wohi Tafasir Ummat kay baqi Ulamah say be sabat hen. Baqi is ko Tafsir Ibn Abbas is waja say kaha jata heh keun kay yeh mashoor issee name say heh. Jistera deoband kay uqabir meh Thanvi, Gangohi, Dehalvi, Nanotavi, Ambethvi, ko bataya jata heh, halan kay haqiqat meh Deoband kay uqabir Ulamah toh Ismail Dehalvi aur us kay shagird hen, yeh Thanvi, Gangohi tabqa saania kay uqabir meh atay hen. Magar keun kay yahi mashoor hen is waja say ineeh ko uqabir ka rutba deeya gaya. Maslak e Ahle Sunnat, dunya kay tamam mumalik meh paya jata heh, aur Ibnul Wahhab say pehlay be qaim aur daim thah ... magar abh Ahle Sunnat ko Barelwiat say mansoob kia gaya heh is leyeh urf meh Ahle Sunnat ki pechaan Barelwi ban gaya. Matlab joh jistera mashoor huwa aur awaam meh istimal huwa us ko issee tera  bataya jata heh. Haqaiq kuch be hoon.

Edited by MuhammedAli

Share this post


Link to post
Share on other sites

Agar Ala Hazrat nay esa sanad kay mutaliq farmaya heh toh darust heh. Abh Tafsir ka sahih aur ghalat honay ka masla. Shahid waqia hee Ibn Abbas (radiallah ta'ala anhu) ki Tafsir nah ho magar tabeerat e ayat ko ummat kay Ulamah nay qabool farmaya heh. Aur hamari daleel tafsir ka matan hota heh na kay Ibn Abbas radiallah ta'ala anhu ki zaat. Kissi Tafsir ka kisi say mansoob hona aur haqiqat meh us ki tafsir nah hona ayaat ki tafsir ko batil nahin karti. Joh Tafasir Ibn Abbas say mansoob shuda hen wohi Tafasir Ummat kay baqi Ulamah say be sabat hen. Baqi is ko Tafsir Ibn Abbas is waja say kaha jata heh keun kay yeh mashoor issee name say heh. Jistera deoband kay uqabir meh Thanvi, Gangohi, Dehalvi, Nanotavi, Ambethvi, ko bataya jata heh, halan kay haqiqat meh Deoband kay uqabir Ulamah toh Ismail Dehalvi aur us kay shagird hen, yeh Thanvi, Gangohi tabqa saania kay uqabir meh atay hen. Magar keun kay yahi mashoor hen is waja say ineeh ko uqabir ka rutba deeya gaya. Maslak e Ahle Sunnat, dunya kay tamam mumalik meh paya jata heh, aur Ibnul Wahhab say pehlay be qaim aur daim thah ... magar abh Ahle Sunnat ko Barelwiat say mansoob kia gaya heh is leyeh urf meh Ahle Sunnat ki pechaan Barelwi ban gaya. Matlab joh jistera mashoor huwa aur awaam meh istimal huwa us ko issee tera  bataya jata heh. Haqaiq kuch be hoon.

میرے بھائی۔ بتانے کا شکریہ، مگر میرے سوال تو ویسے ہی رہ گئے۔
 
مجھے تین باتیں جاننی ہیں::۔
 
جو جرح کی گئی ہے اس حوالے سے وہ درست ہے یا نہیں؟
میرے اعلیحضرت رحمۃ اللہ علیہ کا جو حوالہ دیا ہے کیا واقعی ایسا فتوی موجود ہے یا نہیں اور میرے سید امام اہلسنت علیہ الرحمہ کا کیا فیصلہ ہے اس حوالے سے؟
کیا اس تفسیر ابن عباس سے استدلال کرنا جائز ہے یا نہیں؟؟
جہاں تک استدلال کا آپ نے بتایا تو یہ درست ہے کہ جب اس تفسیر کا قول دیگر مفسرین کے ہاں مل جائے گا تو وہ معتبر ہوگا۔۔۔ لیکن جو باتیں اس تفسیری متن میں ایسی آئیں جو دیگر مفسرین کے ہاں نہیں ملتی، اصل مسئلہ اب اٹھے گا کیونکہ اس صورت  میں صرف سند تفسیر سے ہی فیصلہ ہوگا۔۔۔ کوئی ایسی بات اس تفسیر میں آئے جسے قبول کرنے میں کوئی شرعی رکاوٹ نہ ہو تو بھی قابل قبول ہوگی، اس وجہ سے کہ فی نفسہ وہ درست بات ہے، اگر ہم کہیں اسی تفسیر میں مذکور ہونے کی وجہ سے ہے تو پھر دوبارہ سند تفسیر کا مسئلہ شروع۔۔۔۔۔ اس لیے میرے سوالوں کا تحقیقی جواب ہو جائے تو مہربانی

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.