Sign in to follow this  
Followers 0
RAZVI TALWAR

Bade Wisal Gairullah Se Madad Mangna

273 posts in this topic

۷)مشہور محدث بزارؒ نے اعمش عن ابی صالح کی سندوالی روایت کے بارے میں فرمایا:

’’اور ہو سکتا ہے کہ اعمش نے اسے غیر ثقہ سے لے کر تدلیس کر دی ہو تو سند بظاہر صحیح بن گئی اور میرے نزدیک اس حدیث کی کوئی اصل نہیں۔‘‘

[فتح الباری:ج۸ص۴۶۲]

 

ye bat khud Imam Bazar k khilaf hai q k khud unhnoy اعمش عن ابی صالح  ki sanad ko bhat jaga rewait kia hai main yahan sirf aik rewait naqal kr deta hon apni is bat k saboot k liye

 

 حَدَّثَنا يحيى بن داود حَدَّثَنا أبو معاوية عَنِ الأَعْمَشِ عَنْ أَبِي صَالِحٍ عَنْ أَبِي هريرة رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قال الله عز وجل أنا عند ظن عبدي بي وأنا معه إذا ذكرني فإن ذكرني في نفسه ذكرته في نفسي وإن ذكرني في ملأ ذكرته في ملأ خير منهم.

 

المسند البزار رقم 9142

Share this post


Link to post
Share on other sites

۵)حافظ ابن القطان الفاسیؒنے اعمش عن ابی صالح کی سند والی روایت کے بارے میں فرمایا:

’’اور اعمش کی عن والی روایت انقطاع کا نشانہ ہے کیونکہ وہ مدلس تھے۔‘‘

[بیان الوہم و الایہام:ج۲ ص۴۳۵]

 

Khud Imam Ibne Qatan se apni is bat ka jawab jis hadis per unhony itraz kia phir us ki agy ja kr tasahih bi ki ye lo

 

وَذكر من طَرِيق الدَّارَقُطْنِيّ عَن أبي هُرَيْرَة، قَالَ رَسُول الله - صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّم َ -: " إِذا قَالَ: {غير المغضوب عَلَيْهِم وَلَا الضَّالّين} فأنصتوا ".
قَالَ الدَّارَقُطْنِيّ: حَدثنَا مُحَمَّد بن عُثْمَان بن ثَابت الصيدلاني، وَأَبُو سهل ابْن زِيَاد، قَالَا: حَدثنَا مُحَمَّد بن يُونُس، حَدثنَا عَمْرو بن عَاصِم، حَدثنَا مُعْتَمر قَالَ: سَمِعت أبي يحدث عَن الْأَعْمَش، عَن أبي صَالح، عَن أبي هُرَيْرَة، فَذكره.

 ثمَّ قَالَ: الصَّحِيح الْمَعْرُوف، " إِذْ قَالَ الإِمَام: {غير المغضوب عَلَيْهِم وَلَا الضَّالّين} فَقولُوا: آمين "

 

بیان الوہم و الایہام رقم1115 اور 1116

 

.

Share this post


Link to post
Share on other sites

چنانچہ امام ابن حبان ؒ نے فرمایا:



’’وہ مدلس راوی جو ثقہ عادل ہیںہم ان کی صرف ان روایات سے حجت پکڑتے ہیں جن میں وہ سماع کی تصریح کریںمثلاًسفیان ثوری، الاعمش اورا بواسحاق وغیرہ جو کہ زبر دست ثقہ امام تھے۔‘‘
[صحیح ابن حبان(الاحسان):ج۱ص۹۰]​

 

 

ye bat khud Imam Ibne Hibban k khilaf hai q k unhony bi bhat se ahdis li hain apni sahih main اعمش عن ابی صالح ki sanad hai lehza ye qool bi saqit hai



أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ إِسْحَاقَ الْأَنْمَاطِيُّ الزَّاهِدُ قَالَ حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ قَالَ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ خَازِمٍ عَنِ الْأَعْمَشِ عَنْ أَبِي صَالِحٍ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وسلم: "من سَلَكَ طَرِيقًا يَطْلُبُ فِيهِ عِلْمًا سَهَّلَ اللَّهُ بِهِ طَرِيقًا مِنْ طُرُقِ الْجَنَّةِ وَمَنْ أَبْطَأَ بِهِ عَمَلُهُ لَمْ يُسْرِعْ بِهِ نسبه"

صحیح ابن حبان رقم 84



۶)اعمش عن ابی صالح کی سند والی روایت کے بارے میں حافظ ابن الجوزیؒ نے کہا:



’’یہ حدیث صحیح نہیں۔‘‘

[العلل المتناہیہ:ج۱ص۴۳۷]​

 

Ibne Jouzi ki jarah waisy bi qabool ni q k wo mushadid aur ghair muhtat muhadis tha us ny bhat si sahih ahdis ko mauzu kaha bhat se muhadiseen ny is ki is kitab per tanqeed ki




۴)اعمش عن ابی صالح والی سند پرجرح کرتے ہوئے امام ابو الفضل محمد الہروی الشہید(متوفی۳۱۷ھ) نے کہا:


’’اعمش تدلیس کرنے والے تھے، وہ بعض اوقات غیر ثقہ سے روایت لیتے تھے۔‘‘
[علل الاحادیث فی کتاب الصحیح لمسلم:ص۱۳۸]​

 

ye dekho apna jhot kia likha hai Allama Harwi ki kitab main kam az kam sahih tarh se bi perh lia kro



وَوجدت فِيهِ حَدِيث الْأَعْمَش عَن أبي صَالح عَن أبي هُرَيْرَة عَن النَّبِي صلى الله عَلَيْهِ وَسلم
من نفس عَن مُؤمن كربَة الحَدِيث
قَالَ أَبُو الْفضل
وَهُوَ حَدِيث رَوَاهُ الْخلق عَن الْأَعْمَش عَن أبي صَالح فَلم يذكر الْخَبَر فِي إِسْنَاده غير أبي أُسَامَة فَإِنَّهُ قَالَ فِيهِ عَن الْأَعْمَش قَالَ حَدثنَا أَبُو صَالح
وَرَوَاهُ أَسْبَاط بن مُحَمَّد عَن الْأَعْمَش عَن بعض أَصْحَابه عَن أبي صَالح عَن أبي هُرَيْرَة


علل الاحادیث فی کتاب الصحیح لمسلم رقم 35



وہابی تمہاری ہی دیئےگئے حوالہ جات سے ہی تمہارا رد ثابت کیا ہے اگر اور تمہارے پاس دلائل ہیں تو لاؤ ہم تمہارا انتظار کررہے ہیں۔



Imam Abu Hatim Razi ki tehqiq dekho wo kia kehty hain
 

 

قَالَ أَبِي: رَوَاهُ شُعَيب بْنُ خَالِدٍ ، ومحمد ابن عَيَّاش العامريُّ ، وسُفْيانُ الثوريُّ من رواية النُّعْمان بن عبد السَّلام
عنه، فقالوا كلُّهم: عَنِ الأَعْمَشِ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، عَنْ أَبِي هريرة، عن النبيِّ (ص) ... هَذَا الحديثَ.
قَالَ أَبِي: الصَّحيحُ عندي موقوفٌ.

علل الحدیث لابن ابی حاتم رقم 384



Imam Darqutani ki tehqiq perho kia likha hai unhony

 

وَسُئِلَ عَنْ حَدِيثِ أَبِي صَالِحٍ، عَنْ أَبِي هريرة، عن النبي صلى الله عليه وسلم: لَا يَزْنِي الزَّانِي ... الْحَدِيثَ.
فَقَالَ: يَرْوِيهِ أَصْحَابُ الْأَعْمَشِ، عَنِ الْأَعْمَشِ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ.
وَرَوَاهُ أَبُو بَكْرِ بْنُ عَيَّاشٍ، عَنِ الْأَعْمَشِ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ.
وَالصَّحِيحُ حَدِيثُ أَبِي هُرَيْرَةَ.

۔۔۔۔۔۔۔۔۔


وَرَوَاهُ مُطَرِّفُ بْنُ وَاصِلٍ، عَنِ الْأَعْمَشِ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ مَرْفُوعًا.
وَخَالَفَهُ يَحْيَى بْنُ يَمَانٍ رَوَاهُ، عَنِ الْأَعْمَشِ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، عَنْ جَابِرٍ.
وَالصَّحِيحُ عَنِ الْأَعْمَشِ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ مَوْقُوفٌ.


علل الدارقطنی رقم1487

Share this post


Link to post
Share on other sites

Imam Ibne Malqan ki tehqiq perho

 

وَخَالف أَبُو حَاتِم الرَّازِيّ فِي حَدِيث أبي هُرَيْرَة، قَالَ ابْنه فِي «علله» : سَأَلته عَن حَدِيث رَوَاهُ (عَفَّان) عَن أبي عوَانَة، عَن الْأَعْمَش، عَن أبي صَالح، عَن أبي هُرَيْرَة مَرْفُوعا: «أَكثر عَذَاب الْقَبْر فِي الْبَوْل» فَقَالَ أبي: هَذَا حَدِيث بَاطِل. قَالَ ابْنه: يَعْنِي: مَرْفُوعا.

وَالْحق مَا قَالَه الْحَاكِم والضياء الْمَقْدِسِي، فَإِن إِسْنَاده حسن؛ بل صَحِيح كَمَا ذَكرْنَاهُ بِطرقِهِ.

 

البدرالمنیر 325/2

 

 

استہزاء ، تحقیر اور طعن وتشنیع. اسکے علاوہ کیا ہے؟

hahahahahahah wahabi ko such hazam ni hota is liye jab jawab ni hota ye darama kr k bhag jaty hain ye tm wahabion ki purani adat hai

Share this post


Link to post
Share on other sites

استہزاء ، تحقیر اور طعن وتشنیع. اسکے علاوہ کیا ہے؟

Uper ilmi Jawab diya ja Chuka hy..

Agar Apk Pass isk rad mein koi daleel hy pesh krain.. warna Apka Khamosh rehna hi behtar hy.

Baqi ap logon ka Sahi Ahadees pe jarah karna, Muhadseen pe bohtaab bandhna..

ye Jahliyat hi hy, aisy admi ko jahil hi kahain gy..

 

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

Imam Asqalani ki tehqiq perho aur ankhain kholo wahabi

 

حَدِيثُ أَبِي هُرَيْرَةَ: «إذَا تَوَضَّأْتُمْ فَابْدَءُوا بِمَيَامِنِكُمْ» أَحْمَدُ وَأَبُو دَاوُد وَابْنُ مَاجَهْ وَابْنُ خُزَيْمَةَ وَابْنُ حِبَّانَ وَالْبَيْهَقِيُّ كُلُّهُمْ مِنْ طَرِيقِ زُهَيْرٍ، عَنْ الْأَعْمَشِ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، عَنْهُ. زَادَ ابْنُ حِبَّانَ وَالْبَيْهَقِيُّ وَالطَّبَرَانِيُّ: «إذَا لَبِسْتُمْ» قَالَ ابْنُ دَقِيقِ الْعِيدِ: هُوَ حَقِيقٌ بِأَنْ يُصَحَّحَ، وَلِلنَّسَائِيِّ وَالتِّرْمِذِيِّ، مِنْ حَدِيثِ أَبِي هُرَيْرَةَ: «أَنَّ النَّبِيَّ - صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ - كَانَ إذَا لَبِسَ قَمِيصًا بَدَأَ بِمَيَامِنِهِ» .

 

التلخیص الخبیر رقم20

 

 

Imam Tirmizi ki tehqiq perho

 

حَدَّثَنَا هَنَّادٌ، قَالَ: حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ، عَنِ الأَعْمَشِ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: التَّسْبِيحُ لِلرِّجَالِ، وَالتَّصْفِيقُ لِلنِّسَاءِ.

وَفِي البَابِ عَنْ عَلِيٍّ، وَسَهْلِ بْنِ سَعْدٍ، وَجَابِرٍ، وَأَبِي سَعِيدٍ، وَابْنِ عُمَرَ.

قَالَ عَلِيٌّ: كُنْتُ إِذَا اسْتَأْذَنْتُ عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَهُوَ يُصَلِّي سَبَّحَ.

حَدِيثُ أَبِي هُرَيْرَةَ حَدِيثٌ حَسَنٌ صَحِيحٌ.

وَالعَمَلُ عَلَيْهِ عِنْدَ أَهْلِ العِلْمِ.

جامع الترمذی رقم369

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

 



Jahil wahabi ye sanad khud Sahih Muslim main mojod hain

وحَدَّثَنِي حَجَّاجُ بْنُ الشَّاعِرِ، وَالْقَاسِمُ بْنُ زَكَرِيَّاءَ، قَالَا: حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُوسَى، عَنْ شَيْبَانَ، عَنِ الْأَعْمَشِ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، وَأَبِي سُفْيَانَ، عَنْ جَابِرٍ، قَالَ: قَالَ النُّعْمَانُ بْنُ قَوْقَلٍ: يَا رَسُولَ اللهِ، بِمِثْلِهِ، وَزَادَا فِيهِ، وَلَمْ أَزِدْ عَلَى ذَلِكَ شَيْئًا


صحیح مسلم رقم 15

As salam ua likum
Agr ap haq pr hota to pyare nabi ﷺ ki sunnat pr amal kr k zaban sa acha alfaz nikata...phr bhe dua ha ALLAH ap ko samujh ata kra or nabi ﷺ ka suche follow krna wala bna da. ap ki la ilmi pr afsos ho rha ha oper di dalil ka ya jwab ha.


صحیحین میں مدلسین کی روایات

 

یہ بات بالکل واضح ہے کہ مدلسین کی معنعن روایات ضعیف ہی سمجھی جاتی ہیں جب تک سماع کی تصریح نہ مل جائے۔یہ بات خود مخالفین کو بھی تسلیم ہے مگر جب اپنے غلط و مردود عقائد و اعمال پر کو ئی صحیح روایت نہیں ملتی تو الٹے سیدھے بہانے بنانے لگتے ہیں۔ صحیحین یعنی صحیح بخاری و مسلم میں مدلسین کی معنعن روایات کا بہانہ بھی انہیں میں سے ایک ہے۔
صحیحین میں زیادہ تر مدلسین کی روایات اصول و شواہد میں موجود ہیں۔ ابو محمد عبدالکریم الحلبی اپنی کتاب ’’القدس المعلمیٰ‘‘ میں فرماتے ہیں:

’’اکثر علماء کہتے ہیں کہ صحیحین کی معنعن روایات سماع کے قائم مقام ہیں۔‘‘
[التبصرۃ و التذکرۃ للعراقی:ج۱ص۱۸۶]​
معلوم ہوا کہ صحیح بخاری و صحیح مسلم میں مدلسین کی معنعن روایات سماع کے قائم مقام ہیں اور زیادہ تر علماء کا مئوقف یہی ہے۔
امام نوویؒ لکھتے ہیں:

’’جو کچھ صحیحین میں مدلسین سے معنعن مذکور ہے وہ دوسری اسانید میں مصرح بالسماع موجود ہے۔‘‘
[تقریب النووی مع تدریب الراوی:ج۱ص۲۳۰]​
یعنی صحیحین کے مدلس راویوں کی عن والی روایات میں سماع کی تصریح یا متابعت صحیحین میں ہی یا دوسری کتب حدیث میں ثابت ہے۔ نیز دیکھئے النکت علی ابن الصلاح للحافط ابن حجر عسقلانی (ج۲ص۶۳۶)

 

 


 

جاہل وہابی اعمش عن ابی صالح والی بہت سی اسناد تو خود صحیح مسلم میں بھی موجود ہیں۔

لو پڑھواور دیکھو اپنی جہالت

وحَدَّثَنِي حَجَّاجُ بْنُ الشَّاعِرِ، وَالْقَاسِمُ بْنُ زَكَرِيَّاءَ، قَالَا: حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللهِ بْنُ مُوسَى، عَنْ شَيْبَانَ، عَنِ الْأَعْمَشِ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، وَأَبِي سُفْيَانَ، عَنْ جَابِرٍ، قَالَ: قَالَ النُّعْمَانُ بْنُ قَوْقَلٍ: يَا رَسُولَ اللهِ، بِمِثْلِهِ، وَزَادَا فِيهِ، وَلَمْ أَزِدْ عَلَى ذَلِكَ شَيْئًا


صحیح مسلم رقم15

الخ۔


Is ka jwab da dia ha... in dia hoa references sa to ya sabit ho rha ha k ap ka ilam mujh sa bhe kam ha.... ap kya jwab do ga mujha.


Ap ka dia hoa references ko ma zror check kro ga.... agr ap suche hoa to zror qabol kro ga ap ki bat ko lakin arz ha k jase zaban ka istimal ap log krta ho us k bad yakin ni ata k ap log suche or haq wala bhe ho skta ho... sahi bukari or muslim ma majod ahadees ki jo bat ki wo to completely dhoka dena ki try ki ha ap na... shihan ma majod ahdees mudallis ravi ki is lia sahi ha kyo k un ki samma ki tasrih sabit hota ha.... Mudallis ravi ha har har hadees zaeef ni hote... sirf wo hadees zaeef hote ha jis ma samma ki tasrih sabit na ho agr sabit ho jay to wo sahi ho jate ha.... ap k dia references bhe isi qabil sa ho ga lakin phr bhe ma varify kro ga or haq ko qabol kro ga...JAZAK ALLAH for reply

Share this post


Link to post
Share on other sites

Uper ilmi Jawab diya ja Chuka hy..

Agar Apk Pass isk rad mein koi daleel hy pesh krain.. warna Apka Khamosh rehna hi behtar hy.

Baqi ap logon ka Sahi Ahadees pe jarah karna, Muhadseen pe bohtaab bandhna..

ye Jahliyat hi hy, aisy admi ko jahil hi kahain gy..

 

علمی جواب؟؟؟

اللہ اکبر!

کیا یہی آپ کی علمیت ہے؟؟؟

بات بات پر طعن وتشنیع؟؟؟

ستم بالائے ستم تو یہ کہ صحیحین کی معنعن روایات پر اعتراض ؟؟؟

حالانکہ یہ ایک عام فہم مسئلہ ہے

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

مولانا صفدر صاحب لکھتے ہیں:-

 

’’ محدثین کا اتفاق ہے کہ مدلس راوی کی تدلیس صحیحین میں کسی طرح بھی مضر نہیں ۔ چنانچہ امام نووی ؒ لکھتے ہیں کہ صحیح بخاری و مسلم میں جو تدلیس واقع ہو ۔ وہ دوسرے دلائل سے سماعت پر محمول ہے ‘‘ الخ ( الحسن الکلام جلد ۱ ‘ ص ۲۰۰‘ ط ۲)

 

اسی صفحہ کے حاشیہ میں مزید لکھتے ہیں۔

 

’’ صحیحین کی تدلیس کے مضرنہ ہونے کا یہ قاعدہ امام نووی ؒ و ثطلانی ؒ کے علاوہ علامہ سخاوی ؒ نے فتح المغیث میں امام سیوطی ؒ نے تدریب الراوی میں اور محدث عبدالقادر القرشی نے الجو اہر المضیئہ ‘جلد ۲ ‘ ص ۴۲۹‘‘میں اور نواب صاحب نے ہدایۃ السائل میں پوری صراحت اور وضاحت کے ساتھ بیان کیا ہے ‘‘۔

 

امام نوویؒ لکھتے ہیں: ''جو کچھ صحیحین میں مدلسین سے معنعن مذکور ہے وہ دوسری اسانید میں مصرح بالسماع موجود ہے۔'' [تقریب النووی مع تدریب الراوی:ج١ص٢٣٠]

 

یعنی صحیحین کے مدلس راویوں کی عن والی روایات میں سماع کی تصریح یا متابعت صحیحین میں ہی یا دوسری کتب حدیث میں ثابت ہے۔ نیز دیکھئے النکت علی ابن الصلاح للحافط ابن حجر عسقلانی(ج٢ص٦٣٦)

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

Imam Tirmizi ki tehqiq perho

 

حَدَّثَنَا هَنَّادٌ، قَالَ: حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ، عَنِ الأَعْمَشِ، عَنْ أَبِي صَالِحٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: التَّسْبِيحُ لِلرِّجَالِ، وَالتَّصْفِيقُ لِلنِّسَاءِ.

وَفِي البَابِ عَنْ عَلِيٍّ، وَسَهْلِ بْنِ سَعْدٍ، وَجَابِرٍ، وَأَبِي سَعِيدٍ، وَابْنِ عُمَرَ.

قَالَ عَلِيٌّ: كُنْتُ إِذَا اسْتَأْذَنْتُ عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَهُوَ يُصَلِّي سَبَّحَ.

حَدِيثُ أَبِي هُرَيْرَةَ حَدِيثٌ حَسَنٌ صَحِيحٌ.

وَالعَمَلُ عَلَيْهِ عِنْدَ أَهْلِ العِلْمِ.

جامع الترمذی رقم369

 

wesa mujha abhe tk complete jwab ni mila....ya to ap ko bhe ilam ha

 

مولانا صفدر صاحب لکھتے ہیں:-

 

’’ محدثین کا اتفاق ہے کہ مدلس راوی کی تدلیس صحیحین میں کسی طرح بھی مضر نہیں ۔ چنانچہ امام نووی ؒ لکھتے ہیں کہ صحیح بخاری و مسلم میں جو تدلیس واقع ہو ۔ وہ دوسرے دلائل سے سماعت پر محمول ہے ‘‘ الخ ( الحسن الکلام جلد ۱ ‘ ص ۲۰۰‘ ط ۲)

 

اسی صفحہ کے حاشیہ میں مزید لکھتے ہیں۔

 

’’ صحیحین کی تدلیس کے مضرنہ ہونے کا یہ قاعدہ امام نووی ؒ و ثطلانی ؒ کے علاوہ علامہ سخاوی ؒ نے فتح المغیث میں امام سیوطی ؒ نے تدریب الراوی میں اور محدث عبدالقادر القرشی نے الجو اہر المضیئہ ‘جلد ۲ ‘ ص ۴۲۹‘‘میں اور نواب صاحب نے ہدایۃ السائل میں پوری صراحت اور وضاحت کے ساتھ بیان کیا ہے ‘‘۔

 

امام نوویؒ لکھتے ہیں: ''جو کچھ صحیحین میں مدلسین سے معنعن مذکور ہے وہ دوسری اسانید میں مصرح بالسماع موجود ہے۔'' [تقریب النووی مع تدریب الراوی:ج١ص٢٣٠]

 

یعنی صحیحین کے مدلس راویوں کی عن والی روایات میں سماع کی تصریح یا متابعت صحیحین میں ہی یا دوسری کتب حدیث میں ثابت ہے۔ نیز دیکھئے النکت علی ابن الصلاح للحافط ابن حجر عسقلانی(ج٢ص٦٣٦)

 

Is lia to mana kaha k inho na jo reference dia wo bina dakha qabol ni kia ja skta... kyo k sahi muslim ka name la k chakr dena ki try ki ha... sb kahta ha k sahi bukari or muslim ma mudallis ravi ki عن wale rivayat ma samma sabit ha... jo reference inho na baki hadees ma dia us ma bhe sama sabit ho ga mera khyal... baki In Sha ALLAH is pr thora ahle ilam sa malomat lena para ge

 

 

وہابی تمہاری ہی دیئےگئے حوالہ جات سے ہی تمہارا رد ثابت کیا ہے اگر اور تمہارے پاس دلائل ہیں تو لاؤ ہم تمہارا انتظار کررہے ہیں۔

Mera bhay tamam ka jwab kesa ho gay btay ap? zra detail sa dakha

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

Mera bhay tamam ka jwab kesa ho gay btay ap? zra detail sa dakha

Arbi Tumhy ati nahi aur na asool-e-hadees aur Chaly Ahadees pe jarah copy_Paste karny..

 

Aur apny Forum pe ja k Apny Mullaon se Madad mang rahy ho..Aur jawabaat mang rahy ho..

aur hmain kehty ho k jawaba nahi diya.. :P

chalo jab apk Muhaqiq koi jawab dy dain toh hmain aak btana phir..

http://forum.mohaddis.com/threads/%D9%88%D8%B3%DB%8C%D9%84%DB%92-%DA%A9%DB%92-%D8%A8%D8%A7%D8%B1%DB%92-%D9%85%D8%A7%D9%84%DA%A9-%D8%A7%D9%84%D8%AF%D8%A7%D8%B1-%D9%88%D8%A7%D9%84%DB%8C-%D8%B1%D9%88%D8%A7%DB%8C%D8%AA-%DA%A9%DB%8C-%D8%AD%D9%82%DB%8C%D9%82%D8%AA.297/page-10

 

 

علمی جواب؟؟؟

اللہ اکبر!

کیا یہی آپ کی علمیت ہے؟؟؟

بات بات پر طعن وتشنیع؟؟؟

ستم بالائے ستم تو یہ کہ صحیحین کی معنعن روایات پر اعتراض ؟؟؟

حالانکہ یہ ایک عام فہم مسئلہ ہے

Ye Rafziyon ki Tarha Taqiya kar k meethy ban k aur Muhadseen aur azmat-e-Rasool (saw) pe Bakwas karna..

Kamal hy phir bhi ikhlaakh ki umeed rakhty hain Victorian Ahlehadees..

 

 

مولانا صفدر صاحب لکھتے ہیں:-

 

’’ محدثین کا اتفاق ہے کہ مدلس راوی کی تدلیس صحیحین میں کسی طرح بھی مضر نہیں ۔ چنانچہ امام نووی ؒ لکھتے ہیں کہ صحیح بخاری و مسلم میں جو تدلیس واقع ہو ۔ وہ دوسرے دلائل سے سماعت پر محمول ہے ‘‘ الخ ( الحسن الکلام جلد ۱ ‘ ص ۲۰۰‘ ط ۲)

 

اسی صفحہ کے حاشیہ میں مزید لکھتے ہیں۔

 

’’ صحیحین کی تدلیس کے مضرنہ ہونے کا یہ قاعدہ امام نووی ؒ و ثطلانی ؒ کے علاوہ علامہ سخاوی ؒ نے فتح المغیث میں امام سیوطی ؒ نے تدریب الراوی میں اور محدث عبدالقادر القرشی نے الجو اہر المضیئہ ‘جلد ۲ ‘ ص ۴۲۹‘‘میں اور نواب صاحب نے ہدایۃ السائل میں پوری صراحت اور وضاحت کے ساتھ بیان کیا ہے ‘‘۔

Deobando ko apna bhai tum loag apni kitabon mein likho aur unk Hawaly hmary khilaaf pesh karo..

Kuch toh sharam karo..

Ghair_Muqaldeen aur Deobandi bhai Bhai.. :)

http://www.islamimehfil.com/index.php?app=core&module=attach&section=attach&attach_rel_module=post&attach_id=77599

 

http://www.islamimehfil.com/index.php?app=core&module=attach&section=attach&attach_rel_module=post&attach_id=77600

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

 



Arbi Tumhy ati nahi aur na asool-e-hadees aur Chaly Ahadees pe jarah copy_Paste karny..

Aur apny Forum pe ja k Apny Mullaon se Madad mang rahy ho..Aur jawabaat mang rahy ho..
aur hmain kehty ho k jawaba nahi diya.. :P
chalo jab apk Muhaqiq koi jawab dy dain toh hmain aak btana phir..
http://forum.mohaddis.com/threads/%D9%88%D8%B3%DB%8C%D9%84%DB%92-%DA%A9%DB%92-%D8%A8%D8%A7%D8%B1%DB%92-%D9%85%D8%A7%D9%84%DA%A9-%D8%A7%D9%84%D8%AF%D8%A7%D8%B1-%D9%88%D8%A7%D9%84%DB%8C-%D8%B1%D9%88%D8%A7%DB%8C%D8%AA-%DA%A9%DB%8C-%D8%AD%D9%82%DB%8C%D9%82%D8%AA.297/page-10

As salam ua likum
mana to saf likha tha k ma ahle ilam sa is k bara ma help lo ga... mana kb kaha jnb k ma apne tahqiq pash kro ga... ???? kya mana ya dawa kia kahin pa?????????????? kya mana likha ni k kuch reference ka jwab pta kro ga or kuch references tumhara bilkul la ilmi wala ha us k bara ma ni pocha mana kise sa kyo k un ka mujha bhe pta ha k chakr dia ha tum na


post-18331-0-26438400-1483896054_thumb.png
post-18331-0-10910400-1483896061_thumb.png
post-18331-0-36343500-1483896066_thumb.png
post-18331-0-91732100-1483896071_thumb.png
post-18331-0-20042300-1483896077_thumb.png
post-18331-0-94916900-1483896081_thumb.png



Is forum ka bralvi bhe ajeb ha. 1 aam admi in k pass aa k in ki dalil poch k verify na kra balka ankha band kr k kabol kra(jnb bralvi ikhlaqi tor pr itna gira hoa hota ha k in ki bat bina tahqiq k kabol ni ho skte. in ka ikhlaq in ki zaban sa zahir ha). ma tehqiq kr rha ho or jo sahi ho ga wo kabol kro ga..................... han agr zaban is trha ki gandi he rakhhi to phr ALLAH k hukam pr amal krta hoa AS SALAM UA LIKUM kah k alwida la lo ga ap logo sa.

Share this post


Link to post
Share on other sites

Ye Rafziyon ki Tarha Taqiya kar k meethy ban k aur Muhadseen aur azmat-e-Rasool  (saw)  pe Bakwas karna..

Kamal hy phir bhi ikhlaakh ki umeed rakhty hain Victorian Ahlehadees..

 

 

Deobando ko apna bhai tum loag apni kitabon mein likho aur unk Hawaly hmary khilaaf pesh karo..

Kuch toh sharam karo.. Ghair_Muqaldeen aur Deobandi bhai Bhai.. :)

http://www.islamimehfil.com/index.php?app=core&module=attach&section=attach&attach_rel_module=post&attach_id=77599

 

http://www.islamimehfil.com/index.php?app=core&module=attach&section=attach&attach_rel_module=post&attach_id=77600

حد ہے یار. میں تو کچھ سیکھنے آیا تھا. لیکن آپ ہیں کہ عالم الغیب بنے بیٹھے ہیں. آپ کو اسوہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم بتاؤ تو آپکو مرچی لگتی ہے. اور طعن وتشنیع شروع. .

لہذا مجھے معاف کریں کہ میں نے کمنٹ کیا. کیونکہ علمی بات اگر سب وشتم اور طعن و تشنیع ہے تو ایسے علم سے اللہ کی پناہ

Share this post


Link to post
Share on other sites

ref : zubair ali zai

post-18331-0-36676000-1483897145_thumb.png

post-18331-0-73622900-1483897150_thumb.png

post-18331-0-39358700-1483897156_thumb.png

post-18331-0-19126700-1483897162_thumb.png

post-18331-0-21738200-1483897141_thumb.png

 

 

حد ہے یار. میں تو کچھ سیکھنے آیا تھا. لیکن آپ ہیں کہ عالم الغیب بنے بیٹھے ہیں. آپ کو اسوہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم بتاؤ تو آپکو مرچی لگتی ہے. اور طعن وتشنیع شروع. .

لہذا مجھے معاف کریں کہ میں نے کمنٹ کیا. کیونکہ علمی بات اگر سب وشتم اور طعن و تشنیع ہے تو ایسے علم سے اللہ کی پناہ

same feelings here...

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

Is forum ka bralvi bhe ajeb ha. 1 aam admi in k pass aa k in ki dalil poch k verify na kra balka ankha band kr k kabol kra(jnb bralvi ikhlaqi tor pr itna gira hoa hota ha k in ki bat bina tahqiq k kabol ni ho skte. in ka ikhlaq in ki zaban sa zahir ha). ma tehqiq kr rha ho or jo sahi ho ga wo kabol kro ga..................... han agr zaban is trha ki gandi he rakhhi to phr ALLAH k hukam pr amal krta hoa AS SALAM UA LIKUM kah k alwida la lo ga ap logo sa.

Kamal hy Agar Ahl-e-Najd ko Unki Jahalat ki wajah se Keh Jahil keh diya jaye toh unhy ya apko Najdi Ya Wahabi keh k pukara jaye toh apko ye gali legti hy.. :P

 

itni hi ap ikhilaakh ki baat kar rahy toh Is sary thread mein apny kiya kya hy..

Ap khud daikh lo..

 

 

 

Is forum ka bralvi bhe ajeb ha. 1 aam admi in k pass aa k in ki dalil poch k verify na kra balka ankha band kr k kabol kra(jnb bralvi ikhlaqi tor pr itna gira hoa hota ha k in ki bat bina tahqiq k kabol ni ho skte. in ka ikhlaq in ki zaban sa zahir ha). ma tehqiq kr rha ho or jo sahi ho ga wo kabol kro ga..................... han agr zaban is trha ki gandi he rakhhi to phr ALLAH k hukam pr amal krta hoa AS SALAM UA LIKUM kah k alwida la lo ga ap logo sa.

Wahabi Ka Taqiya-

(jnb bralvi ikhlaqi tor pr itna gira hoa hota ha k in ki bat bina tahqiq k kabol ni ho skte.

Hmain Tehqeeq karny ka dars deny wala wahabi apny Najdi mulla Zubair zai ki kis Qadr andhi taqleed kar raha hy..

Wah Wahabi teri munafqat..

 

 

Khair Intizar karo thora..

Apko inka Jawab mil jaye ga.. aur Apny Mudallis k tabqon ki bhi baat ki hy ye bhi yad rakhna..

Share this post


Link to post
Share on other sites

لگتا ہے وہابی یہاں اخلاقیات کا سبق پڑھنے آئے ہوئے ہیں اس لئے بات بات پر طعن و تشنیع کا رونا رو رہے ہیں۔ یہاں پر ہم صرف وہابی وغیرہ کہہ کر پکار رہے ہیں۔ تمہارے فورمز پر تو مشرک سے نیچے بات نہیں ہوتی۔ اس لئے یہ اخلاقیات کا رونا یہاں بند کرو۔۔ اور بھٹی آن لائن اتنی معصومیت سے کہتا ہے کہ میں عام سا بندہ ہوں۔ دلیل پوچھنے آیا ہوں۔۔ پہلی بات تو یہ کہ سوال اپنے وہابیہ کے بیس بیس صفحات کاپی پیسٹ کر کے نہیں پوچھے جاتے۔ سوال پوچھنے کا ڈھنگ تمہیں نہیں آتا۔ دوسری بات یہ کہ خلیل رانا صاحب نے جن آیات کا حوالہ دیا۔ اس کے جواب میں لکھا کہ یہ فضول باتیں ہیں۔ تمہارے نزدیک قرآن کی آیات فضول باتیں ہیں۔۔ نعوذ باللہ۔۔ اور اوپر سے لکھتے ہو کہ یہ بکواس ہے۔۔ بکواس تو تم کر رہے ہو۔۔ بجائے پوائنٹ ٹو پوائنٹ بحث کرنے کے خلط مبحث کرتے ہو اور چالیس چالیس پیجز کاپی پیسٹ کر دیتے ہو۔۔ شرم کرو۔۔ لگتا ہے نئے نئے وہابی ہوئے ہو۔۔ اس لئے کچھ زیادہ جوش چڑھا ہوا ہے۔ فکر نہ کرو۔۔ دو چار لتڑ تمہیں پڑیں گے تو  پھر ہوش ٹھکانے آئیں گے۔ ابھی یہ رونا بند کرو اور کاپی پیسٹ بھی بند کرو۔ اگر فورمز پر ایسے اختلافی ٹاپکس پر بات کرنے کا شوق ہے تو پہلے خود سے لکھنا سیکھو، مخالف کی بات کو بھی صحیح طرح پڑھو ،جو پوچھا جائے اس کا جواب دو اور اپنا موقف اور دلیل پیش کرو۔۔ اگر ایسا نہیں کرسکتے تو دفع ہوجائو اپنے گندے فورمز پر۔۔ جو بکواس اور زبیر علی زئی کی تشہیر کرنی ہے وہاں جا کر کرو۔ یہ فورم بحث برائے بحث کے لئے نہیں ہے۔


2 people like this

Share this post


Link to post
Share on other sites

مشرک سے نیچے بات بالکل ہوتی ہے. لیکن تعصب کی وجہ سے لوگوں کو نظر نہیں آتا.

شرک کرنے والے کو مشرک کہنا قرآن و حدیث سے ثابت ہے. لہذا اعتراض ہم پر کرنے کے بجائے قرآن و حدیث پر کرو

Share this post


Link to post
Share on other sites

As salam ua likum
Agr ap haq pr hota to pyare nabi ﷺ ki sunnat pr amal kr k zaban sa acha alfaz nikata...phr bhe dua ha ALLAH ap ko samujh ata kra or nabi ﷺ ka suche follow krna wala bna da. ap ki la ilmi pr afsos ho rha ha oper di dalil ka ya jwab ha.


صحیحین میں مدلسین کی روایات

 

یہ بات بالکل واضح ہے کہ مدلسین کی معنعن روایات ضعیف ہی سمجھی جاتی ہیں جب تک سماع کی تصریح نہ مل جائے۔یہ بات خود مخالفین کو بھی تسلیم ہے مگر جب اپنے غلط و مردود عقائد و اعمال پر کو ئی صحیح روایت نہیں ملتی تو الٹے سیدھے بہانے بنانے لگتے ہیں۔ صحیحین یعنی صحیح بخاری و مسلم میں مدلسین کی معنعن روایات کا بہانہ بھی انہیں میں سے ایک ہے۔
صحیحین میں زیادہ تر مدلسین کی روایات اصول و شواہد میں موجود ہیں۔ ابو محمد عبدالکریم الحلبی اپنی کتاب ’’القدس المعلمیٰ‘‘ میں فرماتے ہیں:

’’اکثر علماء کہتے ہیں کہ صحیحین کی معنعن روایات سماع کے قائم مقام ہیں۔‘‘
[التبصرۃ و التذکرۃ للعراقی:ج۱ص۱۸۶]​
معلوم ہوا کہ صحیح بخاری و صحیح مسلم میں مدلسین کی معنعن روایات سماع کے قائم مقام ہیں اور زیادہ تر علماء کا مئوقف یہی ہے۔
امام نوویؒ لکھتے ہیں:

’’جو کچھ صحیحین میں مدلسین سے معنعن مذکور ہے وہ دوسری اسانید میں مصرح بالسماع موجود ہے۔‘‘
[تقریب النووی مع تدریب الراوی:ج۱ص۲۳۰]​
یعنی صحیحین کے مدلس راویوں کی عن والی روایات میں سماع کی تصریح یا متابعت صحیحین میں ہی یا دوسری کتب حدیث میں ثابت ہے۔ نیز دیکھئے النکت علی ابن الصلاح للحافط ابن حجر عسقلانی (ج۲ص۶۳۶)

 

Is ka jwab da dia ha... in dia hoa references sa to ya sabit ho rha ha k ap ka ilam mujh sa bhe kam ha.... ap kya jwab do ga mujha.


Ap ka dia hoa references ko ma zror check kro ga.... agr ap suche hoa to zror qabol kro ga ap ki bat ko lakin arz ha k jase zaban ka istimal ap log krta ho us k bad yakin ni ata k ap log suche or haq wala bhe ho skta ho... sahi bukari or muslim ma majod ahadees ki jo bat ki wo to completely dhoka dena ki try ki ha ap na... shihan ma majod ahdees mudallis ravi ki is lia sahi ha kyo k un ki samma ki tasrih sabit hota ha.... Mudallis ravi ha har har hadees zaeef ni hote... sirf wo hadees zaeef hote ha jis ma samma ki tasrih sabit na ho agr sabit ho jay to wo sahi ho jate ha.... ap k dia references bhe isi qabil sa ho ga lakin phr bhe ma varify kro ga or haq ko qabol kro ga...JAZAK ALLAH for reply 

 

 

 

Check kro apni jahalat sahiheen main mudaliseen ki rewait k bary main Imam Subki aur Imam Asqalani ka nazariya...ye sub tmhri zubair zai ki jahalat wali copy paste ka hm ny kab ka radd kr chuky hain beta g

 

Beta g ye sirf Hussan-e-Zan hai wrna haqiqat se is ka koi taluq ni hai 

post-18262-0-50206600-1483945799_thumb.jpg

Edited by Raza Asqalani

Share this post


Link to post
Share on other sites

As salam ua likum
Agr ap haq pr hota to pyare nabi ﷺ ki sunnat pr amal kr k zaban sa acha alfaz nikata...phr bhe dua ha ALLAH ap ko samujh ata kra or nabi ﷺ ka suche follow krna wala bna da. ap ki la ilmi pr afsos ho rha ha oper di dalil ka ya jwab ha.


صحیحین میں مدلسین کی روایات

 

یہ بات بالکل واضح ہے کہ مدلسین کی معنعن روایات ضعیف ہی سمجھی جاتی ہیں جب تک سماع کی تصریح نہ مل جائے۔یہ بات خود مخالفین کو بھی تسلیم ہے مگر جب اپنے غلط و مردود عقائد و اعمال پر کو ئی صحیح روایت نہیں ملتی تو الٹے سیدھے بہانے بنانے لگتے ہیں۔ صحیحین یعنی صحیح بخاری و مسلم میں مدلسین کی معنعن روایات کا بہانہ بھی انہیں میں سے ایک ہے۔
صحیحین میں زیادہ تر مدلسین کی روایات اصول و شواہد میں موجود ہیں۔ ابو محمد عبدالکریم الحلبی اپنی کتاب ’’القدس المعلمیٰ‘‘ میں فرماتے ہیں:

’’اکثر علماء کہتے ہیں کہ صحیحین کی معنعن روایات سماع کے قائم مقام ہیں۔‘‘
[التبصرۃ و التذکرۃ للعراقی:ج۱ص۱۸۶]​
معلوم ہوا کہ صحیح بخاری و صحیح مسلم میں مدلسین کی معنعن روایات سماع کے قائم مقام ہیں اور زیادہ تر علماء کا مئوقف یہی ہے۔
امام نوویؒ لکھتے ہیں:

’’جو کچھ صحیحین میں مدلسین سے معنعن مذکور ہے وہ دوسری اسانید میں مصرح بالسماع موجود ہے۔‘‘
[تقریب النووی مع تدریب الراوی:ج۱ص۲۳۰]​
یعنی صحیحین کے مدلس راویوں کی عن والی روایات میں سماع کی تصریح یا متابعت صحیحین میں ہی یا دوسری کتب حدیث میں ثابت ہے۔ نیز دیکھئے النکت علی ابن الصلاح للحافط ابن حجر عسقلانی (ج۲ص۶۳۶)

 

Is ka jwab da dia ha... in dia hoa references sa to ya sabit ho rha ha k ap ka ilam mujh sa bhe kam ha.... ap kya jwab do ga mujha.


Ap ka dia hoa references ko ma zror check kro ga.... agr ap suche hoa to zror qabol kro ga ap ki bat ko lakin arz ha k jase zaban ka istimal ap log krta ho us k bad yakin ni ata k ap log suche or haq wala bhe ho skta ho... sahi bukari or muslim ma majod ahadees ki jo bat ki wo to completely dhoka dena ki try ki ha ap na... shihan ma majod ahdees mudallis ravi ki is lia sahi ha kyo k un ki samma ki tasrih sabit hota ha.... Mudallis ravi ha har har hadees zaeef ni hote... sirf wo hadees zaeef hote ha jis ma samma ki tasrih sabit na ho agr sabit ho jay to wo sahi ho jate ha.... ap k dia references bhe isi qabil sa ho ga lakin phr bhe ma varify kro ga or haq ko qabol kro ga...JAZAK ALLAH for reply 

 

 

Ye dawa hi tmhra batil hai perho Imam Ibne Marhahil ka nazariya khud unhony is dawa ko batil qarar dy dia aur kaha ye dawa bina dalil k hai lo dekho 

post-18262-0-81786800-1483946786_thumb.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Tum wahabion ki ye jahalat hai jab koi hadis wahabi mazhab se match ho rahi hoti ho to koi asool se us ko sahih krny ki koshish krty ho jaisy zubair zai ny kia hai ye dekhopost-18262-0-30899100-1483947968_thumb.jpg

 

 

 

Phir jab aur hadis jo wahabi Mazhab k sath match kr rahi ho to phir apny purany hi asool ki dhachiya ura dety ho aur new asool bana laty ho..Ye dekho khud tmhry wahabi mullan sanabili yazidi ny zubair zai k uper waly asool ka radd kr dia haipost-18262-0-58698800-1483948178_thumb.jpg

 

 

Ab betao Sahiheen ahdis ki dhachiyan to tm wahabion ny urai howi hai phir ye asool waly daway tmhry sub batil hai asal main ye tm wahabion ki muafiqat ki nishani kabi kia kehty kabi kia....

Share this post


Link to post
Share on other sites

   اب تم میں سے کون سا وہابی سچا ہے زبیر زئی یا سنابلی یزیدی؟؟


 زبیر زئی تو خود ہمارے سنی آئمہ حدیث کی اندھی تقلید کرتا ہے


اور سنابلی نے تو صحیحین کے اختلاط شدہ رواۃ کی دھچیاں اڑا دی ہیں۔


پھر تم وہابی بخاری اور مسلم کی سب احادیث کو صحیح کس منہ سے کہتے ہو جب کہ تم کو اس اصول کے بھی قائل نہیں۔


Edited by Raza Asqalani

Share this post


Link to post
Share on other sites

 بھٹی صاحب تمہارے ان نجدی محققوں کاہم نے  کب کا رد کر چکے ہیں جس سے تم ہمارے دلائل کا جواب پوچھ رہے ہو 

جب تمہارا وہابی محقق ہمارے دلائل کا جواب دے دے تو پھر آکر بات کرنا۔ ابھی تم بچے ہو اور بچوں کو علم والی بات جلدی سمجھ نہیں آتی۔

یہ ہے لنک تم اور تمہارے وہابی محقق کی بے بسی کا ثبوت

 

 

 

http://*******************************************************************************************

 

mod edit: badmazhab sites ke link allowed nahi hai. please follow forum rules.

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.