Sign in to follow this  
Followers 0
RAZVI TALWAR

Bade Wisal Gairullah Se Madad Mangna

273 posts in this topic

YAHA k bada munazir sahib apna forum k siwa bahas krna k lia tyar ni ha... is lia un ki bat ko kabol kr k yaha bahas krna k lia bhe tyar ho gay ha ibn dawood bhay... agr unho na kaha k sharait muhaddis forum pa discuss kr leta ha to ya bhe qabol ni munazir a raza khaniat ko... jnb shriat waha pr he discuss kr la or bahas yaha ho jay ge... umeed ha MUNZAIR A JAHMIA sahib himmat sa kam la ga... 

Share this post


Link to post
Share on other sites

YAHA k bada munazir sahib apna forum k siwa bahas krna k lia tyar ni ha... is lia un ki bat ko kabol kr k yaha bahas krna k lia bhe tyar ho gay ha ibn dawood bhay... agr unho na kaha k sharait muhaddis forum pa discuss kr leta ha to ya bhe qabol ni munazir a raza khaniat ko... jnb shriat waha pr he discuss kr la or bahas yaha ho jay ge... umeed ha MUNZAIR A JAHMIA sahib himmat sa kam la ga... 

Kamal mantiq hy Wahabi hazrat ki..

Sharait wahan pe tai karo aur behas yahan karo..

O janab Jab Apk Shaikh sahib yahan Aak Munazra karny k liye tyar ho gye hain toh yahan aak Hi sharait bhi tai kar lain..

Ta k Jab behas ho toh is forum k sab logon ko Maloom ho..

K behas kis mozu k bary mein aur Shairait wagyra kiya hain..

Baqi Apk Shaikh ne Is hadees pe bhi apny Aitraaz nahi bejhy hain..

Phir ap khud hi batao k bagh kon raha hy..

 

Aur janab Apk forum pe Apk apny hazraat hazrat k liye alag asool hain wo Sunni Ulma ko Khulam Khulla Tanqeed bhi kar sakty..

Per Agar Sunni Wahan Ap logon ko Wahabi Ya Ghair_Muqallid hi keh dain toh ap laog naraz ho jaty hain..

jab apk forum pe dohra mayar istamal kiya jaye toh wahan behas kun karty ham..

post-16996-0-12694800-1484735027_thumb.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Andhy ko andheery main barri door ki sooji

 

hm to kab se keh rahy hain a jao a jao monday se comments mojod hain likin bhatti aur salfi ka shiekh zahir ni howa ye hai is ka sabootattachicon.gifbhatti ka radd.jpg

 

 

As salam ua likum

Jnb ap ko khola bulaya gya ha..himmat kra dara mat

Bhatti sahib dekho apny munazir ka hal kitani bar keh chuka hon likin tmhry munazir ghair hazir hain abi takpost-18262-0-72083100-1484735084_thumb.jpgpost-18262-0-29397300-1484735109_thumb.jpgpost-18262-0-27952200-1484735133_thumb.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

YA Abdul qadir jilani mare madad kr...

Ya abdul qadir jilani mera beta zinda kr da...

Ya abdul qadir jilani tera siwa mera koy sahara ni ha...

AA mera data sahib mujh a karam kra...

Mujha beta mera peer sahib na dia ha...

ya aqeeda ha ap logo k or us pa dalil kon se da rha ho? dalil wo da jo in aqaid pa pore utra....

jin sa sabit ho abdul qadir jilani murdo ko zinda kra skta tha .... jin sa sabit ho k Lahore pa data sahib na saya kia hoa ha...

dalil wo da jin sa sabit ho k MURGA k badla beta mil jata ha...

or wo dalil da jis sa sabit ho k BARRE k nicha khara hona sa pta chla jata ha BAAR gira sir pa to beta ho ga agr PATTA gira to bati ho ge... 

ya ha aqeeda ap logo ki awam k or dalil ma sabot kya da rha ho tum log?

ye Loag Behas Krain gy sunniyon se.. :P 

Sahi kaha tha uper aik sunni bhai ne k bhatti lagta hy tum abhi naye naye wahabi howy ho..

 

 

Hadees aur ilmi btain karna tumhy zaib nahi dyta hy..

Baqi Fazool behas mein Apna aur dusron ka waqt mat barbad karo..

Share this post


Link to post
Share on other sites

YAHA k bada munazir sahib apna forum k siwa bahas krna k lia tyar ni ha... is lia un ki bat ko kabol kr k yaha bahas krna k lia bhe tyar ho gay ha ibn dawood bhay... agr unho na kaha k sharait muhaddis forum pa discuss kr leta ha to ya bhe qabol ni munazir a raza khaniat ko... jnb shriat waha pr he discuss kr la or bahas yaha ho jay ge... umeed ha MUNZAIR A JAHMIA sahib himmat sa kam la ga... 

 

Bhatti tm waqi jahil ho ager hm ye bat kerty jo tm ny likha hai to is ko tm ghair akhalaqi kehty..

baqi tmhry munazir main itna dum ni yahan a kr behs kry us ny to purany sawalat k jawab bi ni dekhy jo abi tak us per qarz hain jo tm ny muhadis forum per dalay howy hain..

Share this post


Link to post
Share on other sites

اچھا خوش فہمی کتنی ہے ان موصوف کو اپنے چیلنج دینے کی اور خود کو جو بلا رہے ہیں محدث فورم پر وہ بکرے کے کپورے سمجھ کر ہضم کر گئے اور باتیں دم کی کر رہے ہیں

Share this post


Link to post
Share on other sites

عربی پڑھنے سے قاصر ہو جناب تو یہ لو آپ کے لئے اور آسانی کردی

 

 

 

 

 

 

 

مشہور صوفی عالم علی جعفری یہاں امام ابن حجر﷫ کے حوالے سے بیان کرتا ہے کہ انہوں نے فتح الباری کی جلد دوم، کتاب الاستسقاء میں ذکر کیا ہے ... اور اسی طرح اس حدیث کو ائمہ بیہقی، حاکم اور ابن خزیمۃ﷭ نے صحیح سند سے روایت کیا ہے ... کہ 

 

أن بلال بن الحارث المزني ، وهو من أصحاب المصطفى، جاء إلى قبر رسول الله ، في سنة مقحطة في عهد عمر ، ووقف على القبر الشريف ، وقال يا رسول الله! استسق لأمتك ، فإنهم قد هلكوا ، فأُتي الرجل في المنام ، فقيل له: إيت عمر فأقرئه السلام ، وأخبره أنكم مسقون، وقل له: عليك الكيس ، عليك الكيس ، فأتى عمرَ فأخبره ، فبكى عمر ثم قال: يا رب لا آلوا إلا ما عجزت عنه

کہ

’’بلال بن حارث مزنی جو صحابہ کرام میں سے ہیں زمانہ خلافتِ عمر میں قحط کے موقع پر نبی کریم ﷺ کی قبر مبارک پر آئے اور عرض کیا کہ اے اللہ کے رسولﷺ! اپنی امت کیلئے بارش کی دُعا کیجئے کیونکہ لوگ تو قحط کی وجہ سے ہلاک ہو رہے ہیں، تو انہیں رات خواب میں نبی کریمﷺ آئے اور کہا کہ عمر کے پاس جاؤ، انہیں میرا سلام کہو اور انہیں خبر دو کہ عنقریب بارش ہوگی اور انہیں کہو کہ ذمہ داری کا ثبوت دو، تو انہوں نے سیدنا عمر کے پاس آکر سارا ماجرہ سنایا تو وہ رو پڑے اور کہا کہ اے اللہ! میں تو کوئی کوتاہی نہیں کرتا الا یہ کہ میں عاجز آجاؤں۔‘‘

 

↩نمبر ایک

یہ روایت مستدرک حاکم اور صحیح ابن خزیمہ بلکہ امام حاکم اور ابن خزیمہ﷭ کی کسی کتاب میں موجود نہیں، اور نہ ہی کسی نے ان دونوں میں سے کسی ایک سے اسے نقل کیا ہے۔

 

↩نمبر دو

فتح الباری میں یہ الفاظ نہیں جو اس صوفی علی جفری نے نقل کیے ہیں، بلکہ وہاں موجود اصل الفاظ یہ ہیں:

قال الحافظ ابن حجر رحمه الله: وروى ابن أبي شيبة بإسناد صحيح من رواية أبي صالح السمان عن مالك الدار ، وكان خازنَ عمر ، قال: أصاب الناسَ قحط في زمن عمر ، فجاء رجل إلى قبر النبيﷺ، فقال: يا رسول الله استسق لامتك فإنهم قد هلكوا ، فأُتي الرجل في المنام ، فقيل له: ائت عمر .. الحديث ، وقد روى سيف ، في الفتوح ، أن الذي رأى المنام المذكور ، هو بلال بن الحارث المزني ، أحد الصحابة.

کہ 

’’امام ابن حجر﷫ فرماتے ہیں کہ اس حدیث کو ابن ابی شیبہ﷫ نے ابو صالح السمان کی صحیح روایت سے مالک الدار سے روایت کیا ہے جو (یعنی مالک الدار) سیدنا عمر﷜ کے خازن تھے، کہ انہوں نے کہا کہ: سیدنا عمر﷜ کے زمانے میں قحط پڑ گیا تو ایک شخص نبی کریمﷺ کی قبر پر آیا اور کہا: اے اللہ کے رسول! اپنی امت کیلئے بارش کی دُعا کیجئے کہ وہ تو ہلاک ہوگئے، تو اس آدمی سے پاس (نبی کریمﷺ) خواب میں تشریف لائے، اور کہا کہ عمر کے پاس جاؤ ... الیٰ آخر الحدیث! (ابن حجر﷫ فرماتے ہیں کہ) سیف نے ’فتوح‘ میں روایت کیا ہے کہ جس شخص نے یہ خواب دیکھا تھا وہ بلال بن حارث المزنی ایک صحابی تھے۔‘‘

 

حقیقت یہ ہے کہ یہ حدیث ابن مصنف ابن ابی شیبہ: 31993 میں ان الفاظ کے ساتھ موجود ہے:

حدثنا أبو معاوية عن الأعمش عن أبي صالح عن مالك الدار ... وكان خازنَ عمر على الطعام ... قال: أصاب الناس قحط في زمن عمر ، فجاء رجل إلى قبر النبيﷺ، فقال: يا رسول الله استسق لأمتك ، فإنهم قد هلكوا ، فأُتي الرجل في المنام ، فقيل له: إيت عمر فأقرئه السلام ، وأخبره أنكم مسقون، وقل له: عليك الكيس ، عليك الكيس ، فأتى عمرَ فأخبره ، فبكى عمر ثم قال: يا رب لا آلوا إلا ما عجزت عنه

 

جبکہ امام بیہقی﷫ نے دلائل النبوۃ 7؍47 میں أبو معاوية عن الأعمش عن أبي صالح عن مالك الدار کے طریق سے روایت کیا ہے۔

اس سند میں کئی خرابیاں ہیں:

 

↩1. اعمش معروف مدلّس ہیں، اور ان کا ابو صالح سے عنعنہ ہے، اور کہیں بھی سماع کی تصریح نہیں، گویا یہ روایت منقطع ہے، جیسا کہ اصولِ حدیث میں معروف ہے۔

 

↩2. حافظ ابن حجر﷫ نے اس روایت کے متعلّق کہا ہے (روى ابن أبي شيبة بإسناد صحيح من رواية أبي صالح السمان عن مالك الدار) گویا انہوں نے اس روایت کی سند کو ابو صالح السمان تک صحیح قرار دیا ہے، کامل سند کو صحیح قرار نہیں دیا، کیونکہ انہوں نے اپنی عادت کے مطابق مطلقا یہ نہیں کہا کہ یہ روایت صحیح ہے۔ اور ایسا علماء اس وقت کرتے ہیں جب ان کے سامنے بعض راویوں کے حالات واضح نہ ہوں، خصوصاً حافظ ابن حجر﷫ جو تراجم الرواۃ کے امام ہیں (جنہوں نے تراجم الرجال پر کئی عظیم الشان کتب تحریر کی ہیں)، وہ مالک الدار سے واقف نہیں، انہوں نے مالک الدار کے حالات اپنی کسی کتاب میں بیان نہیں کیے اور اسی طرح امام بخاری﷫ نے اپنی کتاب ’تاریخ‘ میں اور امام ابن ابی حاتم﷫ نے ’جرح وتعدیل‘ میں کسی امام جرح وتعدیل سے مالک الدار کی توثیق نقل نہیں کی حالانکہ یہ دونوں ائمہ کرام اکثر راویوں کے حالات سے واقف ہیں۔ حافظ منذری﷫ ... جو متاخرین میں سے ہیں ... اپنی کتاب ’ترغیب وترہیب‘ 2 ؍ 29 میں مالک الدار کے متعلق فرماتے ہیں کہ میں انہیں نہیں جانتا۔ (خلاصہ یہ ہے کہ مالک الدار مجہول راوی ہے۔)

 

↩3. اگر بالفرض ’مالک الدار‘ کو ثقہ ثبت فرض کر لیا جائے تب بھی مالک الدار اسے ایک (مجہول) شخص سے روایت کرتے ہیں جو نبی کریمﷺ کی قبر پر آیا، اور علم اصول حدیث کے مطابق اس طرح بھی یہ حدیث منقطع بنتی ہے، کیونکہ اس میں قبر پر آنے والا شخص مجہول ہے۔

جہاں تک اس بات کا تعلّق ہے کہ قبر پر آنے والا شخص بلال بن حارث صحابی تھے تو یہ بالکل غلط ہے کیونکہ اس کی تصریح صرف سیف بن عمر سے مروی ہے جو بذاتِ خود غیر ثقہ راوی ہے، گویا اس روایت پر موجود دیگر کئی جرحوں میں سے ایک جرح سیف بن عمر کے حوالے سے بھی ہے۔ اور اگر علمائے جرح وتعدیل کے اقوال سیف بن عمر کے متعلّق جان لیے جائیں تو یہ ایک جرح ہی اس روایت کو ردّ کرنے کیلئے کافی ہے، جو حسبِ ذیل ہیں:

قال الحافظ الذهبي في ميزان الاعتدال٣؍٣٥٣ في ترجمة سيف بن عمر: إن يحيى بن معين ، قال فيه: فِلسٌ خيرٌ منه ، وقال أبو داود: ليس بشيء ، وقال أبو حاتم: متروك ، وقال ابن حبان: اتهم بالزندقة ، وقال ابن عدي: عامة حديثه منكر ، وقال مكحول البيروتي: كان سيف يضع الحديث ، وقد اتهم بالزندقة. 

وقال ابن الجوزي في كتابه ، الضعفاء والمتروكين ٢؍٣٥ رقم: ١٥٩٤: سيف بن عمر الضبي، قال يحيى بن معين: ضعيف الحديث ، فِلسٌ خير منه ، وقال أبو حاتم الرازي: متروك الحديث ، وقال النسائي والدارقطني: ضعيف ، وقال ابن حبان: يروي الموضوعات عن الأثبات ، وقال إنه يضع الحديث. اھ. ومن أراد مراجعة سند سيف بن عمر ، فليراجع ، تاريخ الطبري ٢؍٥٠٨ والبداية والنهاية٧ ؍ ١٠٤

 

امام ابن حجر کی تصحیح پر امام البانی﷫ اور شیخ ابن باز﷫ کا تعاقب

 

امام البانی﷫ نے ’توسل‘ ص132 میں کہا ہے:

لا حجة فيها ، لأن مدارها على رجل لم يسمَّ فهو مجهول أيضا ، وتسميته بلالا في رواية سيف لا يساوي شيئا ، لأن سيفا هذا هو ابن عمر التميمي ، متفق على ضعفه عند المحدثين بل قال ابن حبان فيه : يروي الموضوعات عن الأثبات وقالوا : إنه كان يضع الحديث ، فمن كان هذا شأنه لا تُقبل روايته ولا كرامة لاسيما عند المخالفة .ا.هـ. 

 

کہ ’’اس روایت سے حجت نہیں لی جا سکتی، کیونکہ اس کا دار ومدار ایک ایسے آدمی پر ہے جس کا نام نہیں لیا گیا اور وہ مجہول بھی ہے، اور ’سیف‘ کی روایت میں اس کا نام بلال ہونے کی کوئی حیثیت نہیں، کیونکہ یہ سیف بن عمر تمیمی ہے جس کے باتفاق المحدثین ضعیف راوی ہے، بلکہ ابن حبان نے تو اس متعلّق کہا ہے کہ ’’یہ ثقہ راویوں سے موضوع روایتیں بیان کرتا تھا، اور محدثین کہتے ہیں کہ یہ حدیثیں گھڑا کرتا تھا۔‘‘ ایسے شخص کی تو عام روایت ہی قبول نہیں، کجا یہ ہے کہ صحیح حدیثوں کے بالمقابل اس کی روایت قبول کی جائے۔‘‘

 

شیخ ابن باز﷫ نے فتح الباری پر تعلیق 2؍575 میں حافظ ابن حجر﷫ کے اس کلام پر تعاقب کرتے ہوئے فرمایا:

 

هذا الأثر على فرض صحته كما قال الشارح ليس بحجة على جواز الاستسقاء بالنبي صلى الله عليه وسلم بعد وفاته لأن السائل مجهول ولأن عمل الصحابة رضي الله عنهم على خلافه وهم أعلم الناس بالشرع ولم يأت أحد منهم إلى قبره يسأله السقيا ولا غيرها بل عدل عمر عنه لما وقع الجدب إلى الاستسقاء بالعباس ولم يُنكر ذلك عليه أحد من الصحابة فعُلم أن ذلك هو الحق وأن ما فعله هذا الرجل منكر ووسيلة إلى الشرك بل قد جعله بعض أهل العلم من أنواع الشرك .

وأما تسمية السائل في رواية سيف المذكور بلال بن الحارث ففي صحة ذلك نظر ، ولم يذكر الشارح سند سيف ، وعلى تقدير صحته عنه لا حجة فيه ، لأن عمل كبار الصحابة يخالفه وهم أعلم بالرسول وشريعته من غيرهم والله أعلم .ا.هـ.

 

کہ اس روایت کو ابن حجر کے کہنے کے مطابق اگر بالفرض صحیح بھی تسلیم کر لیا جائے تب بھی اس میں نبی کریمﷺ سے وفات کے بعد بارش کی دُعا کا تقاضا کرنے کے جواز کی کوئی دلیل نہیں، کیونکہ نبی کریم ﷺ کی قبر پر آکر سوال کرنے والا شخص مجہول ہے، اور صحابہ کرام﷢ کا عمل بھی اس کے بالکل مخالف ہے، اور وہ سب سے زیادہ شریعت کو جاننے والے تھے، اور ان میں کبھی کوئی نہ نبی کریمﷺ کی قبر مبارک پر استسقاء کیلئے آیا نہ کسی اور کی قبر پر، بلکہ قحط کے موقع پر سیدنا عمر﷜ نے تو اس کے اُلٹ سیدنا عباس بن عبد المطلب﷜ سے دُعا کرائی تھی اور اس کی مخالفت کسی صحابی نے نہیں کی، پس ثابت ہوا کہ یہی حق ہے، اور اس مجہول شخص کا عمل منکر اور وسیلۂ شرک ہے، بلکہ بعض علماء تو اسے شرک کی ایک قسم قرار دیتے ہیں۔

 

جہاں تک سیف مذکور کی روایت اس شخص کا نام بلال بن حارث (صحابی) ذکر کیا گیا ہے تو یہ صحیح نہیں، نہ ہی ابن حجر﷫ نے ’سیف‘ کی سند ذکر کی ہے، اور اگر بالفرض اسے بھی صحیح تسلیم کر لیا جائے تب بھی اس روایت سے دلیل نہیں پکڑی جا سکتی کیونکہ کبار صحابہ (سیدنا عمر، ومعاویہ بن ابی سفیان﷢ وغیرہما) کا عمل اس کے مخالف ہے اوروہ نبی کریمﷺ اور ان کی شریعت کو دوسروں کی نسبت زیادہ بہتر جانتے تھے۔ واللہ اعلم!

 

↩4. اگر کوئی یہ کہے کہ امام ابن حجر﷫ نے مالک الدار کے متعلّق کہا ہے کہ (له إدراك) کہ ’’انہوں نے نبی کریمﷺ کا زمانہ پایا ہے۔‘‘ تو واضح رہے کہ ابن حجر نے الاصابہ فی تمییز الصحابہ میں مالک الدار کو تیسری قسم میں شمار کیا ہے، اور یہ قسم مخضرمین (جنہوں نے جاہلیت اور اسلام دونوں کا زمانہ پایا، لیکن انہوں نے نبی کریمﷺ کو نہیں دیکھا، خواہ وہ آپ کے زمانے میں مسلمان ہوگئے ہوں یا بعد میں مسلمان ہوئے ہوں) کے ساتھ خاص ہے۔ اور مخضرم حضرات اصول حدیث کے مطابق بالاتفاق صحابہ میں شمار نہیں کیے جاتے۔

 

↩5. اس روایت کے متن میں نکارت ہے۔

 

↩6. اس روایت کے ضعیف ہونے کی ایک بڑی علت یہ بھی ہے کہ نبی کریمﷺ کی قبر مبارک خلافتِ عمر میں ام المؤمنین سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کے حجرہ مبارک میں تھی، حتیٰ کہ بعد میں یزید بن الولید نے اسے مسجد نبوی میں شامل کر دیا تھا، تو خلافتِ عمر میں ایک غیر محرم شخص سیدۃ عائشہ کے حجرہ میں کیسے داخل ہو سکتا تھا؟؟؟

حافظ ابن کثیر﷫ کا اس حدیث کو بیان کرنا اور صحیح کہنا

واضح رہے کہ امام ابن کثیر﷫ نے بھی اس حدیث کو امام بیہقی سے دلائل النبوۃ سے ذکر کیا ہے، لیکن اس روایت میں درج ذیل علل ہیں:

 

1. اعمش کا عنعنہ، اور اعمش مدلس ہیں، اور ابن کثیر﷫ کے نزدیک اعمش مدلسین کے دوسرے طبقہ میں شامل ہیں۔ 

در اصل امام ابن کثیر﷫ کے اس حدیث کو صحیح کہنے کی بنیادی وجہ ان کا طرزِ عمل: ’کبار مجہول تابعین کو ثقہ قرار دینا‘ ہے، جیسا کہ ان کا یہ طریقہ کار ان کی تفسیر میں معروف ہے۔ چونکہ مالک الدار مجہول ہیں، لہٰذا ان کا تاریخ وفات بھی معلوم نہیں۔

 

2. ابو صالح السمان ... جن کا اصل نام ذکوان ہے ... کا مالک الدار سے سماع اور ادراک ثابت نہیں، کیونکہ مالک الدار کی تاریخ وفات کا علم نہیں، اور اس پر مستزاد کہ ابو صالح کا مالک سے عنعنہ ہے۔ سماع کی صراحت بھی نہیں۔

 

یہ حدیث مشہور احادیث (سیدنا عمر ومعاویہ بن سفیان﷢) کے خلاف ہے۔

 

یہ قرض بھی آپ لوگوں کے سر ہے

 

:)

Share this post


Link to post
Share on other sites

Mudallis k hawalay say ap ke har bat ka jawab diya ja chuka laikan ap hazraat copy paste say baz nahi aa rahay.

Ham ya Ghous al madad kahain to shirk aur tum Ya qazi e shoqan madad e kaho to jaiz.Munafqat ke had hoti hay.Copy paste band karo

post-2632-0-68846100-1484755105_thumb.jpg

post-2632-0-20963700-1484755127_thumb.jpg

post-2632-0-55024700-1484755146_thumb.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Bhatti tm waqi jahil ho ager hm ye bat kerty jo tm ny likha hai to is ko tm ghair akhalaqi kehty..

baqi tmhry munazir main itna dum ni yahan a kr behs kry us ny to purany sawalat k jawab bi ni dekhy jo abi tak us per qarz hain jo tm ny muhadis forum per dalay howy hain..

Dakha mera bhay dukh hoa ha dakh k. Ap log bar bar galt alqab use krta ho tb ap logo ko khyal ni ata. Mana jesa he use kia ap na high light kr dia. Sirf ya he maqsad tha mera.

Share this post


Link to post
Share on other sites

Bhatti tm waqi jahil ho ager hm ye bat kerty jo tm ny likha hai to is ko tm ghair akhalaqi kehty..

baqi tmhry munazir main itna dum ni yahan a kr behs kry us ny to purany sawalat k jawab bi ni dekhy jo abi tak us per qarz hain jo tm ny muhadis forum per dalay howy hain..

Dakha mera bhay dukh hoa ha dakh k jab mana galt ilqab use kia tumhara lia. Lakin khud tum log thaqta ni dosro ko bura bhala kahta hoa. Sirf ya maqsad tha mera

Share this post


Link to post
Share on other sites

Ma saf saf dakh rha ho raza sahib ka farar. Aj akhir qadri rana sahib himmat kr k ay ha aga. Lakin raza sahib abhe tk 9/2/11 He ha... qadri rana na himmat ki raza ka farar dakh k.

Share this post


Link to post
Share on other sites

سگ مدینہ کاپی پیسٹ کا ناکام بہانہ بنا کر تسلیاں نہ دو اپنے دل کو خود کونسے مصنف یا مولف ہو؟

Share this post


Link to post
Share on other sites

درباروں پہ گھلے آسمان پہ عورتوں کو ننگا غسل کرانے والے۔ جنہے کلمہ نہیں آتا ایسے لوگوں کو پیر بنانے والے ۔ جو اپنے درد دور نا کر سکے اسکو حاجت روا بنانے والے دوسروں کو جاہل کہتے ہیں۔واہ

Share this post


Link to post
Share on other sites

بھٹی صاحب میں نے کہا تھا صرف اعمش کی تدلیس پر یہ بھنگڑے ڈال رہے ہیں باقی علتیں انکی سمجھ دانی سے باہر ہیں اس لئے نہ لنکس کا جواب دیا جو علتیں لنکس میں ہیں نہ محدث فورم میں جتنا اس روایت پر ضعف ہے اسکا جواب دیا اور نہ ہی اس کتاب کا جو انکو میں نے پہلے دی تھی

 

 

:)

Edited by Adeel Khan

Share this post


Link to post
Share on other sites

زندگی موت کا اختیار پیروں کو دینے والے دوسروں کو بدمزہب کہتے ہو شرم کہا مر گئی ہے۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

بھٹی صاحب میں نے کہا تھا صرف اعمش کی تدلیس پر یہ بھنگڑے ڈال رہے ہیں باقی علتیں انکی سمجھ دانی سے باہر ہیں اس لئے نہ لنکس کا جواب دیا جو علتیں لنکس میں ہیں نہ محدث فورم میں جتنا ضعف ہے اسکا جواب دیا اور نہ ہی اس کتاب کا جو انکو میں نے پہلے دی تھی

 

 

:)

دیکھ کیا سمجھ ہے ہی نہیں رضا صاحب تو فرار ہو گئے رانا صاحب آئیں ہے ہمت کرکے

Share this post


Link to post
Share on other sites

اور یہ اپنے اصولوں کا خود خون کر رہے ہیں ان سے پوچھو ذرا روایت کی تحقیق کے اصول کیا ہیں انکی فقہ حنفی میں اور امام ابوحنیفہ رحمتہ اللہ کے کیا اصول تھے یا اصول سے ہی ناواقف تھے

 

نعرہ ایک امام کی پیروی کا اور اصول کسی اور کے

 

اسی لئے کہا تھا کہیں کی اینٹ کہیں کا روڑا بھان مٹی نے کنبہ جوڑا

Share this post


Link to post
Share on other sites

Ya la ap k lia ap ka imam.... ab in k fatwa pa amal kra or apna aqeeda ki dalil k lia MATWATIR HADEES pash kra ..... agr ni kr skta to bhe bta da

post-18331-0-04639900-1484766078_thumb.png

Share this post


Link to post
Share on other sites


حقیقت یہ ہے کہ یہ حدیث ابن مصنف ابن ابی شیبہ: 31993 میں ان الفاظ کے ساتھ موجود ہے:
حدثنا أبو معاوية عن الأعمش عن أبي صالح عن مالك الدار ... وكان خازنَ عمر على الطعام ... قال: أصاب الناس قحط في زمن عمر ، فجاء رجل إلى قبر النبيﷺ، فقال: يا رسول الله استسق لأمتك ، فإنهم قد هلكوا ، فأُتي الرجل في المنام ، فقيل له: إيت عمر فأقرئه السلام ، وأخبره أنكم مسقون، وقل له: عليك الكيس ، عليك الكيس ، فأتى عمرَ فأخبره ، فبكى عمر ثم قال: يا رب لا آلوا إلا ما عجزت عنه

جبکہ امام بیہقی﷫ نے دلائل النبوۃ 7؍47 میں أبو معاوية عن الأعمش عن أبي صالح عن مالك الدار کے طریق سے روایت کیا ہے۔
اس سند میں کئی خرابیاں ہیں:


↩1. اعمش معروف مدلّس ہیں، اور ان کا ابو صالح سے عنعنہ ہے، اور کہیں بھی سماع کی تصریح نہیں، گویا یہ روایت منقطع ہے، جیسا کہ اصولِ حدیث میں معروف ہے۔

 

 

 

 

 

Khud Imam Behqi se is tadlees ka jawab uper dy chuka hon bhatti ka phir bi hm yahan khud ghair muqalidon se sabit kr dety hain is tadlees ka jawab

 

وقد أعله البيهقى تبعا لغيره [1] بالانقطاع فقال: " قال الإمام أحمد: وهذا الحديث لم يسمعه سهيل من أبيه , إنما سمعه من الأعمش ".

ثم أخرج من طريق محمد بن جعفر , والطبرانى فى " الصغير " (ص 123) من طريق روح بن القاسم والطحاوى عنهما كلاهما عن سهيل بن أبى صالح عن الأعمش عن أبى صالح به.

قلت: وليس فى هذه الرواية ما ينفى أن يكون سهيل قد سمع الحديث من أبيه , فإنه ثقة كثير الرواية عن أبيه , لا سيما وهو لم يعرف بالتدليس , فروايته عنه محمولة على الاتصال كما هو مقرر فى الأصول , ولامانع من أن يكون سمعه من الأعمش عن أبيه , ثم عن أبيه مباشرة , شأنه فى ذلك شأن الأعمش فى روايته عن أبى صالح.

إرواء الغليل في تخريج أحاديث منار السبيل

المؤلف: محمد ناصر الدين الألباني (المتوفى: 1420هـ)

رقم الحدیث 216

 

 

 

 

 

أخرجه الترمذي (2 / 95) وأحمد (2 / 336) من طريق عبد العزيز ابن مسلم عن

الأعمش عن أبي صالح عن أبي هريرة قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم.

وقال الترمذي: " حديث حسن غريب صحيح ". قلت: وإسناده صحيح على شرط الشيخين

سلسلة الأحاديث الصحيحة للبانی

 

رقم512

 

 

الأولى: عند ابن ماجه (2 / 380) : حدثنا علي بن محمد حدثنا أبو معاوية عن

الأعمش عن أبي صالح عن أبي هريرة مرفوعا.

وهذا إسناد رجاله ثقات رجال الشيخين غير علي بن محمد وهو ابن إسحاق الطنافسي

وهو ثقة، فهو إسناد صحيح إن كان الأعمش سمعه من أبي صالح، فقد وصف بالتدليس

، ومع ذلك أخرج له الشيخان في " الصحيحين " بالعنعنة كثيرا من الأحاديث بهذا

الإسناد!

سلسلة الأحاديث الصحيحة للبانی

رقم الحدیث 719

 

 

فقد رواه ابن أبي شيبة في "المصنف " (12/134) عن ابن نمير عن الأعمش عن أبي صالح عن رجل من أصحاب النبي - صلى الله عليه وسلم - قال:

أتى جبريل النبي - صلى الله عليه وسلم - فقال: بشر خديجة ببيت في الجنة من قصب، لا صخب فيه ولا نصب.

وهذا إسناد صحيح، وعنعنة الأعمش عن أبي صالح لا تضر؛ لأنه أكثر عنه؛ كما قال الإمام الذهبي.

وابهام الصحابي غير ضار- أيضاً -؛ إذ كلهم- رضي الله عنهم- عدول.

سلسلة الأحاديث الصحيحة للبانی

رقم الحدیث 3608 طرق 5

Share this post


Link to post
Share on other sites

دیکھ کیا سمجھ ہے ہی نہیں رضا صاحب تو فرار ہو گئے رانا صاحب آئیں ہے ہمت کرکے

Farar kon hai wo sub samany hai phir purani copy paste shuro kr di hai jis ka uper radd kr aye hain

Share this post


Link to post
Share on other sites


حقیقت یہ ہے کہ یہ حدیث ابن مصنف ابن ابی شیبہ: 31993 میں ان الفاظ کے ساتھ موجود ہے:
حدثنا أبو معاوية عن الأعمش عن أبي صالح عن مالك الدار ... وكان خازنَ عمر على الطعام ... قال: أصاب الناس قحط في زمن عمر ، فجاء رجل إلى قبر النبيﷺ، فقال: يا رسول الله استسق لأمتك ، فإنهم قد هلكوا ، فأُتي الرجل في المنام ، فقيل له: إيت عمر فأقرئه السلام ، وأخبره أنكم مسقون، وقل له: عليك الكيس ، عليك الكيس ، فأتى عمرَ فأخبره ، فبكى عمر ثم قال: يا رب لا آلوا إلا ما عجزت عنه

جبکہ امام بیہقی﷫ نے دلائل النبوۃ 7؍47 میں أبو معاوية عن الأعمش عن أبي صالح عن مالك الدار کے طریق سے روایت کیا ہے۔
اس سند میں کئی خرابیاں ہیں:


↩1. اعمش معروف مدلّس ہیں، اور ان کا ابو صالح سے عنعنہ ہے، اور کہیں بھی سماع کی تصریح نہیں، گویا یہ روایت منقطع ہے، جیسا کہ اصولِ حدیث میں معروف ہے

 

Is ka jawab khud ghair muqalidon se jis khud zubair zai ka radd likha hai  lo perho bhatti salfi

post-18262-0-66434300-1484803852_thumb.jpgpost-18262-0-54682700-1484803887_thumb.jpgpost-18262-0-38241000-1484803917_thumb.jpgpost-18262-0-66434300-1484803852_thumb.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

بھٹی صاحب میں نے کہا تھا صرف اعمش کی تدلیس پر یہ بھنگڑے ڈال رہے ہیں باقی علتیں انکی سمجھ دانی سے باہر ہیں اس لئے نہ لنکس کا جواب دیا جو علتیں لنکس میں ہیں نہ محدث فورم میں جتنا اس روایت پر ضعف ہے اسکا جواب دیا اور نہ ہی اس کتاب کا جو انکو میں نے پہلے دی تھی

 

 

:)

beta sub ka radd subit kr dain gy khud tmhri kitabon se phir dhodh ka doodh pani ka pani ho jaye ga zara sabir rakho aik aik bat ka radd krain gy tmhra

Share this post


Link to post
Share on other sites

کہ اس روایت کو ابن حجر کے کہنے کے مطابق اگر بالفرض صحیح بھی تسلیم کر لیا جائے تب بھی اس میں نبی کریم سے وفات کے بعد بارش کی دُعا کا تقاضا کرنے کے جواز کی کوئی دلیل نہیں، کیونکہ نبی کریم کی قبر پر آکر سوال کرنے والا شخص مجہول ہے، اور صحابہ کرام﷢ کا عمل بھی اس کے بالکل مخالف ہے، اور وہ سب سے زیادہ شریعت کو جاننے والے تھے، اور ان میں کبھی کوئی نہ نبی کریم کی قبر مبارک پر استسقاء کیلئے آیا نہ کسی اور کی قبر پر، بلکہ قحط کے موقع پر سیدنا عمر﷜ نے تو اس کے اُلٹ سیدنا عباس بن عبد المطلب﷜ سے دُعا کرائی تھی اور اس کی مخالفت کسی صحابی نے نہیں کی، پس ثابت ہوا کہ یہی حق ہے، اور اس مجہول شخص کا عمل منکر اور وسیلۂ شرک ہے، بلکہ بعض علماء تو اسے شرک کی ایک قسم قرار دیتے ہیں

 

 

Is ka jawab khud Ghair Muqalid Wahid-uz-Zaman se

post-18262-0-65596400-1484805289_thumb.jpg

 

Wahid-uz-Zaman k ghair muqalid hony ki gawahi khud zubair zai k ustad Irshad Asar se lo perh lo bhatti aur salfi

post-18262-0-64845300-1484805439_thumb.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.