Sign in to follow this  
Followers 0
Shadab Ashrafi

TAWASSUL PER WAHABIYON KO USI K IMAM MOHAMMAD BIN ALI SHOKANI KA JAWAB

1 post in this topic

 

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِيْمِ

 

الصــلوة والسلام عليك يارسول الله ﷺ

 

Wahabiyon k Taraf Se Hamesha Tawassul Per Aitraz Pesh Kiya Jata Hai Jahan Yeh Log Quran-e-Pak Ki Chand Ayatein Pesh Karte Hain Or Sada Dil Musalmano Ko Padh Kar Zahir Karte Hain k Suno/Padho/Dekho ALLAH ﷻ Ka Farman Hai:

 

1) ما نعبد هم الا ليقربونا إلى الله زلفى.

ترجمہ کنزالایمان:

کہتے ہیں ہم تو انہیں صرف اتنی بات کے لئے پوجتے ہیں کہ ہمیں اللہ کے پاس نزدیک کردیں.

》سورہ زمر، آیت 3.

 

2) فلا تدعوا مع الله احدا".

ترجمہ:

تو اللہ کے سوا کسی کی بندگی نہ کرو.

》سورہ جن، آیت 18.

 

3) له دعوة الحق والذين يدعون من دونه لا يستجيبون لهم بشىء.

ترجمہ:

اسی کا پکارنا سچا ہے اور اس کے سوا جن کو پکارتے ہیں وہ ان کی کچھ بھی نہیں سنتے.

》سورہ رعد، آیت 14.

 

4) وما ادريك ما يوم الدين ثم مآ ادريك ما يوم الدين يوم لا تملك نفس لنفس شىء"اوالأمر يوم ء ذلله.

ترجمہ:

اور تو کیا جانے کیسا انصاف کا دن ہے، پھر تو کیا جانے کیسا انصاف کا دن ہے جس دن کوئ جان کسی جان کا کچھ اختیار نہ رکھےگی اور سارا حکم اس دن اللہ کا ہے.

》سورہ انفطار، آیت 19.

 

5) ليس لك من الأمر شىء.

ترجمہ:

یہ بات تمہارے ہاتھ نہیں.

》سوره آل عمران، آيت 128.

 

6) قل لا املک لنفسی نفعا" ولا ضرا".

ترجمہ:

تم فرماو میں اپنے جان کے بھلے برے کا خود مختار نہیں.

》سورہ اعراف، آیت 188

 

In Ayaton Ko Suna Kar Wahabi Dhoka Dete Hain

Hum Isi Ayaton Per Hi  Wahabiyon Ko Jawab Usi k Peshwa Or Imam Allama Shokani Se De Rahe Hain Jahan Shokani Ne Wahabiyon k Batil Aitrazaat Ka Behtareen Jawab Diya Hai:

 

#القول الثاني- أن التوسل به -صلى الله عليه و آله وسلم- يكون في حياته و بعد موته، وفي حضرته و مغيبه. ولا يخفاك أنه قد ثبت التوسل به - صلى الله عليه و آله وسلم - في حياته، وثبت التوسل بغيره من الأحياء بعد موته بإجماع الصحابة سكوتيا لعدم إنكار أحد منهم على عمر - رضى الله عنه - في توسله بالعباس - رضى الله عنه -

 

ترجمہ:

#دوسرا قول: حضور نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی ذات سے توسل نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی حیات، ان کے انتقال کے بعد، ان کی موجودگی، ان کی عدم موجودگی ہر طرح سے جائز ہے- کیونکہ یہ بات ہر شخص پر ظاہر باہر ہے کہ جس طرح نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی حیات میں ان کی ذات سے توسل ثابت ہے اسی طرح ان کے انتقال کے بعد بھی صحابہ کرام کے اجماع سکوتی کے ذریعہ ان کی ذات سے توسل کرنا ثابت ہے، کیونکہ جب حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے حضرت عباس رضی اللہ عنہ سے توسل کیا تھا تو کسی بھی صحابی نے ان کے اس توسل کا انکار نہیں کیا-

 

أن ما يورده المانعون من التوسل إلى الله بالأنبياء [5] والصلحاء من نحو قوله تعالى:} ما نعبدهم إلا ليقربونا إلى الله زلفى {([الزمر:3].)، ونحو قوله تعالى: فلا تدعوا مع الله أحدا ([الجن18:].) ونحو قوله تعالى: {له دعوة الحق والذين يدعون من دونه لا يستجيبون لهم بشيء} ([الرعد14:]) ليس بوارد بل هو من الاستدلال على محل النزاع بما هو أجنبى عنه؛ فإن قوله: {ما نعبدهم إلا ليقربونا إلى الله زلفى} ([الزمر3:]) مصرح بأنهم عبدوهم لذلك، والمتوسل بالعالم مثلا لم يعبده بل علم أن له مزية عند الله بحمله العلم فتوسل به لذلك،

 

ترجمہ:

انبیائے کرام علیہم الصلاة والسلام اور صلحائے کرام رحمہم اللہ سے توسل کے مخالفین بعض آیات کریمہ سے توسل کو جائز قرار دینے والوں پر اعتراضات کرتے ہیں اور وہ آیتیں یہ ہیں

اللہ تعالی ارشاد فرماتے ہے:

ما نعبدهم إلا ليقربونا إلى الله زلفى [کہتے ہیں ہم تو انہیں صرف اتنی بات کے لئے پوجتے ہیں کہ یہ ہمیں اللہ کے پاس نزدیک کر دیں، سورہ الزمر3:]

اور دوسری جگہ ارشاد فرماتا ہے:

[فلا تدعوا مع الله أحدا، سورہ الجن18:]

تو اللہ کے سوا کسی کی بندگی نہ کرو [سورہ الجن18:]

ایک جگہ اور ارشاد فرماتا ہے:

له دعوة الحق والذين يدعون من دونه لا يستجيبون لهم بشيء[اسی کا پکارنا سچا ہے اور اس کے سوا جن کو پکارتے ہیں وہ ان کی کچھ بھی نہیں سنتے،سورہ الرعد14:].

مگر ان اعتراضات کی کوئ حیثیت ہی نہیں کیونکہ مذکورہ بالا بیان سے واضح ہو گیا کہ ان آیتوں سے ان پر اعتراضات وارد ہی نہیں ہوتے بلکہ ان آیتوں کا زیر بحث مسئلہ سے کوئ تعلق ہی نہیں کیونکہ اللہ تعالی کا قول ہے:

ما نعبدهم إلا ليقربونا إلى الله زلفى [کہتے ہیں ہم تو انہیں صرف اتنی بات کے لئے پوجتے ہیں کہ یہ ہمیں اللہ کے پاس نزدیک کردیں، سورہ الزمر3:]

 

اس امر پر صراحت کے ساتھ دلالت کرتا ہے کہ اس آیت سے وہ لوگ مراد ہیں جنہوں نے اللہ تعالی سے تقرب کے لئے اصنام کی عبادت کی تھی، اور مثلا عالم سے توسل کرنے والا اس کی عبادت نہیں کرتا البتہ چونکہ اسے معلوم ہوتا ہے کہ عالم دین اپنے علم کی وجہ سے اللہ تعالی کے نزدیک مکرم و مقبول ہوتا ہے اس لئے وہ اس عالم دین سے توسل کرتا ہے.

 

 وكذلك قوله: {فلا تدعوا مع الله أحدا} ([الجن18:]) فإنه نهي عن أن يدعى مع الله غيره، كأن يقول: بالله ويا فلان، والمتوسل بالعالم مثلا لم يدع إلا الله وإنما وقع منه التوسل إليه بعمل صالح عمله بعض عباده كما توسل الثلاثة الذين انطبقت عليهم الصخرة بصالح أعمالهم، وكذلك قوله: {والذين يدعون من دونه} ([الرعد14:]) الآية، فإن هؤلاء دعوا من لا يستجيب لهم، ولم يدعوا ربهم الذي يستجيب لهم، والمتوسل بالعالم مثلا لم يدع إلا الله ولم يدع غيره دونه، ولا دعا غيره معه.

 

ترجمہ:

اسی طرح اللہ تعالی کا قول: فلا تدعوا مع الله أحدا[تو اللہ کے سوا کسی کی بندگی نہ کرو، سورہ الجن18:]

اللہ کے ساتھ کسی اورکو صنم کرکے پکارنے کی ممانعت پر دلالت کرتا ہے مثلا کوئ کہے: یا اللہ و یا فلان، اور مثلا عالم سے توسل کرنے والا صرف اللہ کو ہی پکارتا ہے، اس کے ساتھ کسی اور کو نہیں پکارتا، وہ تو صرف بعض بندوں کے عمل صالح کے ذریعہ اللہ تعالی کی طرف توسل کرتا ہے جیسا کے ان تینوں نے جن کے سامنے چٹان گر گئ تھی اپنے اعمال صالحہ کے ذریعہ توسل کیا تھا، اسی طرح اللہ تعالی کا یہ قول: والذين يدعون من دونه [اسی کا پکارنا سچا ہے اور اس کے سوا جن کو پکارتے ہیں وہ ان کی کچھ بھی نہیں سنتے، سورہ الرعد14:] اس آیت سے وہ افراد مراد ہیں جنہوں نے ایسے لوگوں کو بلایا جو دعا قبول کرنے کی صلاحیت ہی نہیں رکھتے، اور اپنے رب تعالی کو نہیں پکارا جو ہر ایک کی سنتا ہے اور دعا قبول کرتا ہے، اس لئے ان کی دعا قبول نہیں ہوئ-

اور رہی بات عالم دین سے توسل کرنے کی وہ تو صرف اللہ تعالی کو ہی پکارتا ہے اس کے سوا کسی اور کو یا اس کے ساتھ کسی اور شخص کو نہیں پکارتا، اور دونوں کے درمیان فرق واضح ہے. 

 

وإذا عرفت هذا لم يخف عليك دفع ما يورده المانعون للتوسل من الأدلة الخارجة عن محل النزاع خروجا زائدا على ما ذكرناه، كاستدلالهم بقوله تعالى: {وما أدراك ما يوم الدين ثم ما أدراك ما يوم الدين يوم لا تملك نفس لنفس شيئا والأمر يومئذ لله} ([الانفطار 19:]) فإن هذه الآية الشريفة ليس فيها إلا أنه تعالى المتفرد بالأمر في يوم الدين، وأنه ليس لغيره من الأمر شيء، ولا يملك لغيره من الأمر شيئا، والمتوسل بنبي من الأنبياء أو عالم من العلماء هو لا يعتقد أن لمن توسل به مشاركة لله -جل جلاله- في أمر يوم الدين، ومن اعتقد هذا لعبد سواء كان نبيا أو غير نبي فهو في ضلال مبين.

 

ترجمہ:

ان بعض آیتوں کے ذریعہ جو محل نزاع سے خارج ہیں توسل کرنے والوں پر اعتراض کرتے ہیں، نیز وہ اللہ تعالی کے اس قول سے بھی اعتراض کرتے ہیں: وما أدراك ما يوم الدين ثم ما أدراك ما يوم الدين يوم لا تملك نفس لنفس شيئا والأمر يومئذ لله [اور تو کیا جانے کیسا انصاف کا دن، پھر تو کیا جانے کیسا انصاف کا دن جس دن کوئ جان کسی جان کا کچھ اختیار نہ رکھے گی اور سارا حکم اس دن اللہ کا ہے، سورہ انفطار 19.] یہ آیت محل نزاع سے خارج ہے، کیونکہ اللہ تعالی کا یہ فرمان صرف اس بات پر دلالت کرتا ہے کہ اللہ تعالی ہی قیامت کے دن سارے امور کا مالک ہے اس کے کوئ دوسرا مالک و مختار نہیں اور نبی یا کسی عالم سے توسل کرنے والا اس بات کا ہر گز اعتقاد نہیں رکھتا وہ نبی یا عالم قیامت کے دن اللہ تعالی کے اختیار میں شریک ہے جس نے بھی اس طرح کا اعتقاد کسی نبی یا کسی اور بندے کے حق میں رکھا تو یقینا" وہ گمراہ اور بھٹکا ہوا ہے.

 

وهكذا الاستدلال على منع التوسل بقوله: {ليس لك من الأمر شيء ([آل عمران 128:])،} قل لا أملك لنفسي نفعا ولا ضرا {([الاراف 188:]) فإن هاتين الآيتين مصرحتان بأنه ليس لرسول الله صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّمَ من أمر الله شيء، وأنه لا يملك لنفسه نفعا ولا ضرا، فكيف يملكه لغيره وليس فيهما منع التوسل به أو بغيره من الأنبياء، أو الأولياء، أو العلماء.

وقد جعل الله لرسوله صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّمَ المقام المحمود مقام الشفاعة العظمى، وأرشد الخلق إلى أن يسألوه ذلك ويطلبوه منه، وقاله له: " 

سل تعطه، واشفع تشفع " وقيد ذلك في كتابه العزيز بأن الشفاعة لا تكون إلا بإذنه، (لقوله تعالی: (ولا تنفع الشفاعة عنده إلا لمن أذن له) [سبأ: 23]) ولا تكون إلا لمن ارضى. ولعله يأتي تحقيق هذا المقام إن شاء الله.

 

ترجمہ:

 

اسی طرح توسل سے روکنے کے لئے مانعین اس آیت سے بھی استدلال کرتے ہیں اللہ تعالی ارشاد فرماتا ہے: ليس لك من الأمر شيء [یہ بات تمہارے ہاتھ نہیں، سورہ آل عمران 128:] اور اس آیت سے بھی استدلال کرتے ہیں قل لا أملك لنفسي نفعا ولا ضرا [تم فرماءو میں اپنی جان کے بھلے برے کا خود مختار نہیں، سورہ اعراف 188: ] یہ دونوں آیتیں بھی محل نزاع سے خارج ہیں کیونکہ پہلی آیت اس بات پر صرف اس بات پر دلالت کرتی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم اللہ تعالی کے کسی حکم کے مالک نہیں اور دوسری آیت اس بات پر دلالت کرتی ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم اپنے نفس کو نفع و ضرر پہونچانے کے مالک نہیں تو پھر دوسروں ان دونوں آیتوں میں کوئ ایسی بات نہیں جو انبیاء، اولیاء اور علماء سے توسل کرنے کی ممانعت پر دلالت کرتی ہو اس لئے ان آیتوں کو استدلال میں ذکر کرنا بے جا ہے- حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم اللہ تعالی کی عطا سے بہت ساری چیزوں کے مالک ہیں اللہ جل شانہ نے حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم کے لئے مقام محمود اور مقام شفاعت عظمی تیار کیا اور مخلوق کو حکم بھی دیا کہ وہ اس سے حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم کی شفاعت طلب کرین- اللہ تعالی نے حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم سے فرمایا: سل تعط واشفع تشفع [اے میرے محبوب مانگو دیا جائےگا اور شفاعت کرو تمہاری شفاعت قبول کی جائےگی] نیز قرآن کریم میں اللہ تعالی نے واضح کر دیا ہے کہ شفاعت کا حق اسی کو ہے حاصل ہوگا جس کو وہ اجازت دے گا اور جس سے وہ راضی ہوگا.

 

وهذا الاستدلال على منع التوسل بقوله صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّمَ لما نزل قوله تعالى:} وأنذر عشيرتك الأقربين {([الشعراء 214:].)، " يا فلان ابن فلان لا أملك لك من الله شيئا، يا فلانة بنت فلان لا أملك لك من الله شيئا، يا بني فلان لا أملك لكم من الله شيئا" (أخرجه البخارى رقم 4771، و مسلم رقم 206/351، و الترمزى رقم 3185، و النسائ رقم 248/6) من حدیث أبى هريرة)، فإن هذا ليس فيه إلا أنه -صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّمَ- لا يستطيع نفع من أراد الله ضره، ولا ضر من أراد الله نفعه، وأنه لا يملك لأحد من قرابته فضلا عن غيرهم شيئا من الله، وهذا معلوم لكل مسلم، وليس فيه أنه لا يتوسل به إلى الله فإن ذلك هو طلب الأمر ممن له الأمر والنهي، وإنما أراد الطالب أن يقدم بين يدي طلبته ما يكون سببا للإجابة ممن هو المتفرد بالعطاء والمنع، وهو مالك يوم الدين.

 

ترجمہ:

اسی طرح توسل سے منع کرنے والے اللہ تعالی کے فرمان: وأنذر عشيرتك الأقربين {([الشعراء 214:].) کے نزول کے بعد حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے جو فرمایا تھا اس کے ذریعہ توسل کے عدم جواز پر استدلال کرتے ہیں، حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے اس وقت فرمایا تھا:

يا فلان ابن فلان لا أملك لك من الله شيئا، يا فلانة بنت فلان لا أملك لك من الله شيئا، يا بني فلان لا أملك لكم من الله شيئا" (اے فلاں ابن فلاں اور اے فلانہ بنت فلاں میں تیرے لئے اللہ کی جانب سے کسی چیز کا مالک نہیں) حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم کا یہ فرمان بھی محل نزاع سے خارج ہے کیونکہ اس قول میں صرف اس بات کی صراحت ہے کہ حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم اس شخص کو نفع نہیں پہونچا سکتے جس کو اللہ تعالی نے ضرر دینے کا ارادہ کر لیا ہو یا اس کے بر عکس، اور یہ کہ آپ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم اللہ تعالی کی جانب سے اپنے قریبی لوگوں کے معاملات کے مالک نہیں چہ جائے کہ دوسرے لوگوں کے مالک ہوں اور یہ تو ہر مسلم کو معلوم ہے مگر حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم کے اس فرمان میں آپ صلی اللہ تعالی علیہ وسلم کے ذریعہ توسل کی ممانعت نہیں کیونکہ توسل میں مسئلہ سے حل کے لئے اسی سے طلب کرنا ہے جو اس کا مالک ہے ہاں اتنا ضرور ہے کہ طلب کرنے والے نے اللہ تعالی کی بارگاہ میں اپنے مطلوب کو حاصل کرنے کے لئے ایسی چیز پیش کی ہے جو ہر چیز کے مالک و مختار اللہ جل شانہ کی بارگاہ میں مقبول ہونے کا سبب ہے.

 

》الفتح الربانى من فتاوى امام شوكانى، صفحہ 314 سے 318.

Screenshot_2017-10-25-16-28-07-1.png

Screenshot_2017-10-25-16-25-33.png

Screenshot_2017-10-25-16-26-04.png

Screenshot_2017-10-25-16-26-26.png

Screenshot_2017-10-17-20-10-51.png

Screenshot_2017-10-17-20-13-35.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Similar Content

    • By Rehman Crlf
      Maa Ayesha r.a frmati hen- Nabi saw k bimari k waqt aapne frmya - ALLAH lanat kre yahud or nasra pr, in logo n apne ambiya ki qabro ko ibadatgah (masjid) bana diya h.
      📚(Sahih Muslim 1080)
      Ab dekhte hai ki yhe kitaben Mazar ke bare me kya khti hai- Maa Ayesha r.a kehti h ki nabi saw k marzul mout k waqt umme habiba or umme salama n ek church ki khubsurati ki tarif ki, tb aap saw n frmyaa- jb yahud or nasara m koi naik shaksh mar jata tha to y log uski Qabr per masjid yani ibadat gah bna dete the or uski sajawat krte.yhe log qayamat ke din ALLAH k samne sbse badtreen makhlooq honge.
      📚(Sahih Muslim 1076)
       
       
    • By Ahmed Ali Khan
      اس حدیث کی سند کی بارے میں معلوم کرنا ہیں 

    • By Shadab Ashrafi
      ⏩ILM-E-SAHABA
      OR
      WAHABIYON KI TAHREEF⏪
       
      Wahabiyon k Bahut Hi Motabar Imam
       
      Hafiz Ibn Kasir Ne Apni Tafsir Ibn Kasir Me Surah Anfal Ki Ayat
       
      أُولَٰئِكَ هُمُ الْمُؤْمِنُونَ حَقًّا
       
      Ki Tafsir Karte Huwe Ek Hadees Naqal Ki Hai k
       
      Hazrat Haris Bin Malik Ansari رضي الله تعالٰی عنه Farmate Hain k Main NABI-E-KARIM ﷺ Ki Bargah-e-Aqdas Me Hazir Huwa To
       
      NABI-E-KARIM ﷺ Ne Farmaya Aye Haris Tum Ne Subah Kis Hal Me Ki...???
       
      Main Ne Arz Kiya YA RASOOL ALLAH ﷺ Main Ne Ek Sachche Or Haqiqi Momin Ki Hasiyat Se Subah Ki
       
      NABI-E-KARIM ﷺ Ne Farmaya Gaur Kar Lo Kiya Kah Rahe Ho, Har Cheez Ki Ek Haqiqat Hoti Hai Batao Tumhare Iman Ki Haqiqat Kya Hai...???
       
      Main Arzguzar Huwa YA RASOOL ALLAH ﷺ
      Main Ne Duniya Se Tark-e-Ta'luq Kar Liya,
      Raat Ko Jag Kar Ibadat Karta Hoon
      Or
      Din Ko Roza Rakh Kar Pyas Bardasht Karta Hoon
       
      Main Apne RAB k Arsh Ko Numaya Taur Per Dekh Raha Hoon
      Goya k Main Ahle Jannat Ko Ek Dusre Se Molaqatein Karte Dekh Raha Hoon
      Or
      Ahle Naar Ko Jahannam Me Bilbilate Huwe Dekh Raha Hoon
       
      NABI-E-KARIM ﷺ Ne Farmaya Aye Haris Tum Ne Haqiqat-e-Iman Ko Pa Liya Is Per Karband Rahna.
      Is Alfaz Ko 3 Martaba Farmaya.
      ➡ TAFSIR IBN KASIR, JILD 4, SAFA 12-13.
       
      NABI-E-KARIM ﷺ k ILm Per Tanz Karne Walo Is Hadees Se To SAHABI-E-RASOOL Ka ILm-e-Gaib Sabit Ho Raha Hai
      Woh Bhi Aisa ILm k Zameen Per Baithe Huwe Arsh Ko Dekh Rahe Hain
      Or To Or Jannati Abhi Jannat Me Gaye Nahi Hain Magar Advance Me Hi Jannati Ko Jannat Me Tahalte Firte Or Apas Me Molaqatein Karte Huwe Dekh Rahe Hain Or Jahannami Ko Bhi Jahannam Me Chikhte Chillate Huwe Dekh Rahe Hain
      Ise Bayan Bhi NABI-E-KARIM ﷺ k Samne Kar Rahe Hain Or NABI-E-KARIM ﷺ Ne Bhi Hazrat Haris Bin Malik Ansari رضي الله تعالٰی عنه Ki Is Baat Ko Yeh Farma Kar Tasdiq Farma Di k Aye Haris Tum Ne Haqiqat-e-Iman Ko Pa Liya.
       
      Is Hadees Se SAHABI-E-RASOOL Ka ILm-e-Gaib Sabit Hota Hai Is Liye Wahabiyon Ne Tafsir Ibn Kasir Ko English Me Translate Karte Huwe Is Hadees Ko Hi Nikal Diya
       
      Kyun k Yeh Hadees In Iman k Looteron Or Hadees k Choron k Aqeedey k Khelaf Hai
      Or Agar Yeh Is Hadees Ka English Version Me Tarjama Karte To Inhe SAHABI-E-RASOOL k ILm-e-Gaib Ko Tasleem Karna Padta
      Isi Liye Ahle Iblees Ne Tafsir Ibn Kasir k English Version Me Tahreef Kar Di.




    • By Shadab Ashrafi
      Hadees Sharif Ki Books Ka Arbic Aur Urdu Link Chahiye Jis Me Mishkat Sharif, Darmi Sharif Or Deegar Sabhi Ahadees Ki Kitab Maujud Ho