فقیرقادری

Imam ibn 'Abideen Shami ka Ibn taymiyah ko Shaykhul islam kehna ?

7 posts in this topic

السلام علیکم

میرا یہ سوال ہے کہ علامہ ابن عابدین شامی رحمہ اللہ نے ابن تیمیہ کو شیخ الاسلام کیوں کہا ؟

مکمل عبارت

مکمل عبارت : (قَوْلُهُ وَيُؤَدَّبُ الذِّمِّيُّ وَيُعَاقَبُ إلَخْ) أَطْلَقَهُ فَشَمَلَ تَأْدِيبَهُ وَعَاقَبَهُ بِالْقَتْلِ، إذَا اعْتَادَهُ، وَأَعْلَنَ بِهِ كَمَا يَأْتِي، وَيَدُلُّ عَلَيْهِ مَا قَدَّمْنَاهُ آنِفًا عَنْ حَافِظِ الدِّينِ النَّسَفِيِّ، وَتَقَدَّمَ فِي بَابِ التَّعْزِيرِ أَنَّهُ يُقْتَلُ الْمُكَابِرُ بِالظُّلْمِ وَقُطَّاعُ الطَّرِيقِ وَالْمُكَّاسُ وَجَمِيعُ الظَّلَمَةِ وَجَمِيعُ الْكَبَائِرِ، وَأَنَّهُ أَفْتَى النَّاصِحِيُّ بِقَتْلِ كُلِّ مُؤْذٍ. وَرَأَيْت فِي كِتَابِ الصَّارِمِ الْمَسْلُولِ لِشَيْخِ الْإِسْلَامِ ابْنِ تَيْمِيَّةَ الْحَنْبَلِيِّ مَا نَصُّهُ: وَأَمَّا أَبُو حَنِيفَةَ وَأَصْحَابُهُ فَقَالُوا: لَا يُنْتَقَضُ الْعَهْدُ بِالسَّبِّ، وَلَا يُقْتَلُ الذِّمِّيُّ بِذَلِكَ لَكِنْ يُعَزَّرُ عَلَى إظْهَارِ ذَلِكَ كَمَا يُعَزَّرُ عَلَى إظْهَارِ الْمُنْكَرَاتِ الَّتِي لَيْسَ لَهُمْ فِعْلُهَا مِنْ إظْهَارِ۔۔

(رد المحتار،کتاب الجہاد،مَطْلَبٌ فِيمَا يُنْتَقَضُ بِهِ عَهْدُ الذِّمِّيِّ وَمَا لَا يُنْتَقَضُ)

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

Quote

 

میرا یہ سوال ہے کہ علامہ ابن عابدین شامی رحمہ اللہ نے ابن تیمیہ کو شیخ الاسلام کیوں کہا ؟

مکمل عبارت

مکمل عبارت : (قَوْلُهُ وَيُؤَدَّبُ الذِّمِّيُّ وَيُعَاقَبُ إلَخْ) أَطْلَقَهُ فَشَمَلَ تَأْدِيبَهُ وَعَاقَبَهُ بِالْقَتْلِ، إذَا اعْتَادَهُ، وَأَعْلَنَ بِهِ كَمَا يَأْتِي، وَيَدُلُّ عَلَيْهِ مَا قَدَّمْنَاهُ آنِفًا عَنْ حَافِظِ الدِّينِ النَّسَفِيِّ، وَتَقَدَّمَ فِي بَابِ التَّعْزِيرِ أَنَّهُ يُقْتَلُ الْمُكَابِرُ بِالظُّلْمِ وَقُطَّاعُ الطَّرِيقِ وَالْمُكَّاسُ وَجَمِيعُ الظَّلَمَةِ وَجَمِيعُ الْكَبَائِرِ، وَأَنَّهُ أَفْتَى النَّاصِحِيُّ بِقَتْلِ كُلِّ مُؤْذٍ. وَرَأَيْت فِي كِتَابِ الصَّارِمِ الْمَسْلُولِ لِشَيْخِ الْإِسْلَامِ ابْنِ تَيْمِيَّةَ الْحَنْبَلِيِّ مَا نَصُّهُ: وَأَمَّا أَبُو حَنِيفَةَ وَأَصْحَابُهُ فَقَالُوا: لَا يُنْتَقَضُ الْعَهْدُ بِالسَّبِّ، وَلَا يُقْتَلُ الذِّمِّيُّ بِذَلِكَ لَكِنْ يُعَزَّرُ عَلَى إظْهَارِ ذَلِكَ كَمَا يُعَزَّرُ عَلَى إظْهَارِ الْمُنْكَرَاتِ الَّتِي لَيْسَ لَهُمْ فِعْلُهَا مِنْ إظْهَارِ۔۔

(رد المحتار،کتاب الجہاد،مَطْلَبٌ فِيمَا يُنْتَقَضُ بِهِ عَهْدُ الذِّمِّيِّ وَمَا لَا يُنْتَقَضُ)


 

 اس لیے کہ  علامہ ابن عابدین شامی رحمہ اللہ آج کے دور میں نہیں تھے 

Share this post


Link to post
Share on other sites
18 minutes ago, baber said:

 

 اس لیے کہ  علامہ ابن عابدین شامی رحمہ اللہ آج کے دور میں نہیں تھے 

کیا مطلب؟

Share this post


Link to post
Share on other sites

Posted (edited) · Report post

Quote

کیا مطلب؟

فقیر قادری صاحب مطلب یہ کہ انہوں نے  " ابن تیمیہ " پر فتویٰ نہیں لگایا   آج آپ کے دور میں ہوتے تو یقیناً فتویٰ لگاتے جبکہ ابن عابدینؒ  نے علمی  اختلاف کے باوجود ابن         تیمیہ کی علمی حثیت کو مانا اور " شیخ الاسلام " لکھا اور صرف ابن عابدینؒ نے ہی نہیں اور اھل سنت کے جید  علماء نے بھی

ابن تیمیہ   

کی تعریف کی ہے ۔۔۔۔۔ 

ویسے فقیر قادری صاحب آپ کیا چاہتے ہیں کہ وہ کیا لکھتے ؟ 

 


 ملا علی قاری حنفی نے ابن تیمیہ و ابن قیم کے بارے میں لکھا

’’(ترجمہ) وہ دونوں (ابن تیمیہ و ابن القیم) اہل ِ سنت و الجماعت کے اکابر میں سے اور اس اُمت کے اولیاء میں سے تھے۔‘‘

(جمع الوسائل فی شرح الشمائل ج۱ص۲۰۷)

علامہ سیوطی نے ا مام ابن تیمیہ کی زبردست تعریف و توصیف کرتے ہوئے کہ

’’ابن تیمیۃ الشیخ الامام العلامۃ الحافظ الناقد الفقیہ المجتہدالبارع، شیخ الاسلام۔۔۔‘‘

(طبقات الحفاظ للسیوطی ص۵۲۰)

پیر مہر علی شاہؒ  بھی امام ابن تیمیہ و امام ابن قیم کے بارےمیں لکھتے ہیں 

’’ان کے متبحر عالم اور خادم اسلام ہونے میں کلام نہیں۔‘‘

(مہر منیر ص۱۴۲)

پیر نصیر الدین نصیرؒ نے لکھا: ’’امام ابن تیمیہ کے ساتھ اختلاف کے باوجود بھی میرے جد اعلیٰ حضرت گولڑوی علیہ الرحمۃ نے اُن کے لئے دعائیہ الفاظ غفر اللہ لہ اور اُن کے نام کے ساتھ شیخ کا لفظ تحریر فرمایا۔‘‘

 (لطمۃ الغیب علی ازالۃ الریب ص۲۸۴)

 

Edited by baber

Share this post


Link to post
Share on other sites

شیر ربانی میاں شیر محمد شرقپوریؒ کے خلیفہ صاحبزادہ محمد عمر ؒنے لکھا

’’امام السنۃ ابن تیمیہؒ اور ابن قیمؒ .

 (توحید ص۱۶۴)

عبدالحکیم شرف قادریؒ نے لکھا

’’ابن قیم جوزی علیہ الرحمۃ‘‘

(عظمتوں کے پاسباں ص۳۵۵)

Share this post


Link to post
Share on other sites

baber bhai main aapki is baat se agree nhi karta k mulla ali qari ne ibn taimmiya ko Allah k wali qarar diya. jahan jahan Sunni imamon ne ibn taimmiya ko shaikh ul islam likha wo uske ilm ki waja se likha lekin tha wo bara khabees insan. aap se guzarish hai k mulla ali qari wali baat ki arabic yahan dalen

Share this post


Link to post
Share on other sites

Baber Saab Ummat kay un jayyid Ulamah ka kia keren gay jinnoon nay Ibn Taymiyyah lanatulillah ko Kafir tehraya ... Agar tareefi kalamat say woh acha sabat ho jata heh toh Kufr aur Kafir ka hukum jari karnay waloon ki waja say Kafir sabat ho jahay ga? Ummat mein jamhoor Ulamah nay kam say kam Ibn Taymiyyah ko Biddati mana aur minority say kuch esay huway jinoon nay ussay Kafir aur kuch nay ussay acha jana ... Maulviyoon ki batoon par jahen toh phir Imam Bukhari (rahimullah) ki maan kar Imam Abu Hanifah (rahimullah) ko gumrah maneh gay? Har giz nahin. Jinoon nay Ibn Taymiyyah ki tareef ki unoon nay Husn e Zann ya phir Kufriat ko dekha nah aur us kay waseeh Ilm say mutasir huway. Jinoon nay Kafir aur gumrah tehraya unoon nay Ibn Taymiyyah ki talimat ... Allah ka arsh par ana ... haath, pahoon, ... tajseem ki bina par hukum Kufr lagaya joh is ki kutub say sabat hen. Agar Maulviyoon aur bandoon ki tareef say faislay honay lagay toh phir Mirza Qadiyani ki tareef mein Deobandiyon aur Wahhabiyoon kay iqwal mil jahen gay. Har kohi joh kuch kissi kay mutaliq janta heh us kay mutabiq ra'i rakhta heh. Aur jinoon nay Kufriat ko jan kar bi acha jana woh us kay Kufr mein useeh jesay shamil hen. 

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.