ghulamahmed17

کیا خلفہِ راشد سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے فضائل جھوٹ ہیں؟

207 posts in this topic

Posted (edited) · Report post

Picture7.thumb.png.8a27deb2a88cb132beabf4797e94b0d0.png

 

ppp.png.454cbfaafe383b5d308efe5c595ba54c.png

Picture4ppkm.thumb.png.ad185938724f7039007b670e5d5f4b04.png

 

Picture289kk.thumb.png.a00adad4386fafd4a2d7dc292b432d3b.png

 

Picture3mm.thumb.png.32f13aa1cf1a16006ea486be7df30b2f.png

 

Picture2yyyk.thumb.png.39319215a169ce3b5eb9b79b2dd168a1.png

 

 جناب رضا عسقلانی صاحب اب امام ذہبی کا لکھا ہوا دار قطنی کا قول

صحیح ثابت ہو گیا ۔ لہذا آپ بھی اس کو صحیح تسلیم کر لیں ۔

Picture7233.thumb.png.69ce953ec4e5ca0514130b4fb8638cb6.png

 

Picture6ddf.thumb.png.d870abec93587871ab9e8a73050dd69a.png

----------------------------------------------------

Edited by ghulamahmed17

Share this post


Link to post
Share on other sites

بار بار ایک ہی بات کو پوسٹ کرنے اے اصولاً تو آپ کی پوسٹ کو ہائیڈ کر دینا چاہیے لیکن ہم اہل علم کے لیے آپ کی بوکھلاہٹ میں پوسٹ کی ہوئی تحریر جوں کی توں ہی رہنے دیں گے

Share this post


Link to post
Share on other sites
Quote

 

 

 

Quote

بار بار ایک ہی بات کو پوسٹ کرنے اے اصولاً تو آپ کی پوسٹ کو ہائیڈ کر دینا چاہیے لیکن ہم اہل علم کے لیے آپ کی بوکھلاہٹ میں پوسٹ کی ہوئی تحریر جوں کی توں ہی رہنے دیں گے

 

 ہر وقت فضول بڑھکیں مارنے سے بہت بہتر ہوتا

کہ آپ جناب  امام دارِ قطنی کے قول

کو ضعیف ثابت کر کے پھر لوگوں کے سامنے خوب نعرے بازی کرتے ۔

----------------------------

Share this post


Link to post
Share on other sites

اور ہر بار کاپی پیسٹ کرنے سے بہتر ہوتا تو کہ رجوع کر لیتے

Share this post


Link to post
Share on other sites
4 hours ago, ghulamahmed17 said:

ppp.png.454cbfaafe383b5d308efe5c595ba54c.png

 

ارے جناب میرے اس جملہ پر غور کرتے تو یہ سکرین شارٹ نہ دیتے میں نے تو کہا ہے قاتل ہونے کی کوئی صحیح روایت موجود نہیں اگر موجود ہیں جس میں قاتل کے نام کی تصریح ہو تو پیش کریں ۔

اور جناب نے ابھی تک ایک بھی صحیح روایت پیش نہیں کی جس میں قاتل کے نام کی تصریح ہو۔

5dbee9fe0bee4_qatilwalirewait.jpg.190a43841211a284c37eb94973862613.jpg

 

Share this post


Link to post
Share on other sites
4 hours ago, ghulamahmed17 said:

 

Picture4ppkm.thumb.png.ad185938724f7039007b670e5d5f4b04.png

 

Picture289kk.thumb.png.a00adad4386fafd4a2d7dc292b432d3b.png

 

Picture3mm.thumb.png.32f13aa1cf1a16006ea486be7df30b2f.png

 

Picture2yyyk.thumb.png.39319215a169ce3b5eb9b79b2dd168a1.png

 

 جناب رضا عسقلانی صاحب اب امام ذہبی کا لکھا ہوا دار قطنی کا قول

صحیح ثابت ہو گیا

سب اقوال امام دارقطنی سے ہیں تو ایک ہی مستقل جواب دیتا ہوں۔

ارے یار نقل مارنے کے لیے بھی عقل کی ضرورت ہوتی ہے خود لکھ رہے ہو امام دارقطنی 306 ہجری میں پیدا ہوئے ہیں پھر بنا کسی دلیل سے ان سے حضرت ابوالغادیہ کو قاتل ثابت کرنے پر تلے ہوئے ہو جب جنگ صفین 37 ہجری میں ہوئی یعنی امام دارقطنی کی پیدائش سے 271 سال پہلے جنگ صفین ہوگی تھی تو امام دارقطنی نے جس دلیل پر قاتل کہا؟

اگر اجتہاد سے کہا ہے تو یہ ان کا تسامح ہے کیونکہ اسلام میں اجتہاد سے قاتل ثابت نہیں کیے جاتے بلکہ دو مردوں یا چار عورتوں کی شرعی گواہی پیش کی جاتی ہے پھر جا کر فیصلہ ہوتا ہے قتل ہونے کا؟؟

دوسری بات یہ ہے کہ امام دارقطنی نے اس بارے میں کوئی دلیل یا روایت پیش نہیں کی اس لیے بنا دلیل کے ہم کیسے مان لیں؟

اگر سند سے دیکھا جائے تو 271 سال کا فاصلہ ہے تو ان کو کیسے پتہ چلا کیونکہ وہ خود جنگ صفین کے عینی شاہد تو نہیں تھے پھر کیسے قاتل کہا؟؟

امید ہے جناب اس بارے میں ضرور جواب دیں گے کہ اسلام میں قتل کے ثبوت کے لیے کیا پیش کرنا پڑتا اور کیا بنا سند کے کسی کو قاتل ثابت کیا جا سکتا ہے اسلامی شرعی عدالت میں؟؟

306.thumb.jpg.3f4afc469ec5fc802048e13d38419493.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites
4 hours ago, ghulamahmed17 said:

 

 جناب رضا عسقلانی صاحب اب امام ذہبی کا لکھا ہوا دار قطنی کا قول

صحیح ثابت ہو گیا ۔ لہذا آپ بھی اس کو صحیح تسلیم کر لیں ۔

 

امام دارقطنی کا قول اس وقت صحیح ہو گا جب اس کی کوئی دلیل ہو گی ورنہ 271 سال کے فاصلے بعد کسی کے بارے میں بنا کسی دلیل کے قاتل کہہ دینے سے کوئی قاتل نہیں ہو جاتا نہ ہی وہ شرعی طور پر قاتل ثابت ہوتا ہے ورنہ ایسے بے اسناد اقوال صحابہ اور اہل بیت رضی اللہ عنہم کے خلاف کتب میں بھرے پڑے ہیں  اس لیے بنا دلیل کے ایسے اقوال کو ماننا بھی اصول حدیث کی روشنی میں درست نہیں۔

جب ثقہ تابعین کی مرسل روایات امام دارقطنی کے اصول سے ماننا درست نہیں تو خود امام دارقطنی کا بے سند قول جنگ صفین کے بارے میں ماننا کیسے درست ہو سکتا ہے؟؟

اس لئے اس قول کی دلیل چاہیے صحیح سند کے ساتھ ۔ 

4 hours ago, ghulamahmed17 said:

 

Picture7233.thumb.png.69ce953ec4e5ca0514130b4fb8638cb6.png

 

Picture6ddf.thumb.png.d870abec93587871ab9e8a73050dd69a.png

ان تمام باتوں کا رد میں پہلے کر چکا ہوں جن کا جناب نے جواب نہیں دیا بس وہی پرانے پوسٹر چپکائے جارہے ہیں اور کچھ نہیں ہے جناب کے پاس۔

اس لیے ہم بھی جناب کے اصول سے وہی پوسڑ چپکا دیتے ہیں

darqutani.thumb.jpg.25eb549e9b075bcfec7ffc1c2ab6bc77.jpgshoaib.thumb.jpg.3f3ea2d4e0a7c2c2603f028c2377115f.jpg

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

جناب نے اصول کے مطابق کوئی بھی صحیح سند ایسی روایت پیش نہیں کی جس سے واضح ہو کہ قاتل حضرت ابوالغادیہ ہے۔

باقی جو بھی قاتل ہونے کی باتیں ہیں سب ضعیف و موضوع روایت کی بنیاد پر بنے ہوئے ہیں  اس لئے جن ائمہ نے بنا کسی تحقیق سے حضرت ابوالغادیہ کو قاتل کہا یہ ان کا تسامح ہے ورنہ تحقیق کے میدان میں ایسی کوئی بات صحیح سند سے ثابت نہیں۔

اللہ عزوجل ائمہ حدیث کی مغفرت فرمائے۔

آمین

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

رافضی اب لاجواب ہوچکا ہے اسکے پاس اب سواۓ کاپی پیسٹ کے اور کچھ نہیں۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

باقی جو بھی قاتل ہونے کی باتیں ہیں سب ضعیف و موضوع روایت کی بنیاد پر بنے ہوئے ہیں  اس لئے جن ائمہ نے بنا کسی تحقیق سے حضرت ابوالغادیہ کو قاتل کہا یہ ان کا تسامح ہے ورنہ تحقیق کے میدان میں ایسی کوئی بات صحیح سند سے ثابت نہیں۔

اللہ عزوجل ائمہ حدیث کی مغفرت فرمائے۔

 

 

4p.thumb.png.c06467fc51ebfddbbe0e092bb4b406e8.png

 

 

2p.thumb.png.52f0a1b7927b4a7c6904885b73248db1.png

 

Picture1hhm.png.f031894f63046451f0fbc1563f800d4e.png

 

3p.thumb.png.e57fb5db3f0a26dd7ab44b3d05111173.png

 

حدیثِ صحیح

 

--------------

اُردو ترجمہ میں پڑھیے

Picture3kl.thumb.png.ae0a1ebb0c464fdd4a3d39d6d5fdf103.png

 

 

Picture3.thumb.png.b42dabd205dfbdec4ab95bf4407c4930.png

--------------------------

 

Picture145.thumb.png.525d9d57b594d8226e7a65d9d953041e.png

 

 

حدیثِ صحیح

----------------------------------------

 

قادری سلطانی صاحب کو   اک بڑی بڑھک لگاتے ہوئے  پڑھیے ۔

 

5dbf9c0de7322_qadrisultani0.png.27263ce593542e83b02e1e49a4a9e359.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

رافضی میاں اپنے پوسٹ کردہ سکینز ایک بار پھر دیکھ لو دھیان سے تم اپنے ہی پیش کردہ سکینز سے پکڑے جاؤ گے

Share this post


Link to post
Share on other sites
11 hours ago, ghulamahmed17 said:

 

4p.thumb.png.c06467fc51ebfddbbe0e092bb4b406e8.png

 

 

2p.thumb.png.52f0a1b7927b4a7c6904885b73248db1.png

 

Picture1hhm.png.f031894f63046451f0fbc1563f800d4e.png

 

3p.thumb.png.e57fb5db3f0a26dd7ab44b3d05111173.png

 

حدیثِ صحیح

 

 

ارے جناب حیرت ہوتی ہے جس کا جواب ہم پہلے دے آتے ہیں پھر وہی پوسٹ کر دیتے ہیں۔

خیر چلیں اس روایت کی حقیقت بتاتے ہیں۔

(اول)

شعیب الارنووط  نے جس حدیث کو صحیح کہا وہ اس کے روایت کے علاوہ ہے کیونکہ وہ اور طرق سے ثابت ہے اور وہ حدیث یہ ہے:

إن دماءكم وأموالكم وأعراضكم حرام عليكم.۔۔الخ

(صحیح بخاری  رقم 467 ، صحیح مسلم ج5 ص 108)

اس لئے یہ حدیث تو ثابت ہے باقی جو اس نے اور متن کی روایت پر  "اسنادہ حسن"  کا حکم لگایا ہے وہ تحقیقا درست نہیں کیونکہ اس روایت کی مکمل اسناد جمع کی جائے تو اس کی سند میں عبدالاعلی بن عبداللہ بن عامر ایک مجہول راوی ہے جو یہ قصہ بیان کرتا ہے۔

تفصیل یہ ہے:

حدثنا عبد الله قال حدثني أبو موسى العنزي محمد بن المثنى قال حدثنا محمد بن أبي عدي عن ابن عون عن كلثوم بن جبر قال كنا بواسط القصب عند عبد الأعلى بن عبد الله بن عامر قال فإذا عنده رجل يقال له أبو الغادية استسقى ماء فأتي بإناء مفضض فأبى أن يشرب وذكر النبي صلى الله عليه وسلم فذكر هذا الحديث لا ترجعوا بعدي كفارا أو ضلالا شك ابن أبي عدي يضرب بعضكم رقاب بعض فإذا رجل يسب فلانا فقلت والله لئن أمكنني الله منك في كتيبة فلما كان يوم صفين إذا أنا به وعليه درع قال ففطنت إلى الفرجة في جربان الدرع فطعنته فقتلته فإذا هو عمار بن ياسر قال قلت وأي يد كفتاه يكره أن يشرب في إناء مفضض وقد قتل عمار بن ياسر

(زوائد المسند احمد رقم 16257)

حَدَّثَنَا إبراهيم بن حجاج حَدَّثَنَا مرثد بن عامر الهنائي حَدَّثَنَا كلثوم بن جبر قال كنا بواسط القصب في منزل عنبسة بن سَعِيد القرشي وفينا عَبْد الأعلى بن عَبْد الله بن عامر في أناس إذ جاء إذن القوم فقال إن قاتل عمار بالباب قال فكره بعض القوم فقال أدخلوه فدخل فإذا شيخ طوال يجر مقطعات له فسلم ثم قال لقد أدركت النبي صلى الله عليه وسلم وإني لأنفع أهلي وأرد عليهم الغنم قال فقال بعض القوم يا أبا غادية كيف كان أمر عمار قال كنا نعد عمارا فينا حنانا حتى إذا كان يوم صفين استقبلني يقود الكتيبة رجلا فاختلف أنا وهو ضربتين فبدرته ضربة فكب لوجهه ثم اتبعته بالسيف فقتلته قال أَبُو بكر واسم أبي غادية ياسر بن سبع مدني

(الاحاد والمثانی للشیبانی رقم 275)

حدثنا علي بن عبد العزيز وأبو مسلم الكشي قالا ثنا مسلم بن إبراهيم ثنا ربيعة بن كلثوم ثنا أبي قال كنت بواسط القصب عند عبد الأعلى بن عبد الله بن عامر فقال: « الآذان هذا أبو غادية الجهني فقال عبد الأعلى أدخلوه فدخل وعليه مقطعات له رجل طول ضرب من الرجال كأنه ليس من هذه الأمة فلما أن قعد قال بايعت رسول الله صلى الله عليه وسلم فقلت يمينك قال نعم خطبنا يوم العقبة فقال « يأيها الناس ألا إن دماءكم وأموالكم عليكم حرام كحرمة يومكم هذا في شهركم هذا في بلدكم هذا ألا هل بلغت؟ قالوا نعم قال: اللهم اشهد. قال « لا ترجعوا بعدي كفارا يضرب بعضكم رقاب بعض قال: وكنا نعد عمار بن ياسر من خيارنا قال فلما كان يوم صفين أقبل يمشي أول الكتيبة راجلا حتى إذا كان من الصفين طعن رجلا في ركبته بالرمح فعثر فانكفأ المغفر عنه فضربه فإذا هو رأس عمار قال يقول مولى لنا أي كفتاه قال فلم أر رجلا أبين ضلالة عندي منه إنه سمع النبي صلى الله عليه وسلم ما سمع ثم قتل عماراً"

)المعجم الکبیر للطبرانی ج 22 ص 363 رقم 912)

قال ثنا أحمد بن داود المكي ثنا يحيى بن عمر الليثي ثنا عبد الله بن كلثوم بن جبر قال سمعت أبي قال كنا عند عنبسة بن سعيد فركبت يوما إلى الحجاج فأتاه رجل يقال له أبو غادية الجهني يقول وشهدت خطبته يوم العقبة « إن دماءكم وأموالكم عليكم حرام كحرمة يومكم هذا في شهركم هذا في بلدكم هذا ألا لا ترجعوا بعدي كفاراً يضرب بعضكم رقاب بعض حتى إذا كان يوم أحيط بعثمان سمعت رجلا وهو يقول « ألا لا تقتل هذا فنظرت إليه فإذا هو عمار فلولا من كان من خلفه من أصحابه لوطنت بطنه فقلت: اللهم إن تشاء أن يلقينيه فلما كان يوم صفين إذا أنا برجل شر يقود كتيبة راجلا فنظرت إلى الدرع فانكسف عن ركبته فأطعنه فإذا هو عمار»

(المعجم الکبیر للطبرانی ج 22 ص 363 رقم 913)

وقال يعقوب بن شيبة في مسند عمار حدثنا : مسلم بن إبراهيم ، حدثنا : ربيعة بن كلثوم بن جبر ، حدثنا : أبي قال : كنت بواسط القصب عند عبد الأعلي بن عبد الله بن عامر فقال : الإذن هذا أبو الغادية الجهني فقال : أدخلوه فدخل رجل عليه مقطعات فإذا رجل ضرب من الرجال كأنه ليس من رجال هذه الأمة ، فلما إن قعد قال : بايعت رسول الله (ص) قلت : بيمينك ، قال : نعم .

قال : وخطبنا يوم العقبة فقال : يا أيها الناس إن دماءكم وأموالكم عليكم حرام الحديث ، وقال في خبره وكنا نعد عمار بن ياسر فينا حنانا فوالله إني لفي مسجد قباء إذ هو يقول : إن معقلاً فعل كذا يعني عثمان ، قال : فوالله لو وجدت عليه أعواناً وطئته حتى أقتله ، فلما إن كان يوم صفين أقبل يمشي أول الكتيبة راجلاً حتى إذا كان بين الصفين طعن الرجل في ركبته بالرمح وعثر فانكفأ المغفر عنه فضربه فإذا رأسه قال : فكانوا يتعجبون منه أنه سمع إن دماءكم وأموالكم حرام ثم يقتل عماراً.

(الاصابۃ لابن حجر ج7 ص 258)

وحدثني : عمرو بن محمد الناقد ، حدثني : عفان بن مسلم ، حدثنا : ربيعة بن كلثوم بن جبر : أخبرني : أبي قال : كنت بواسط القصب عند عبد الأعلي بن عبد الله بن عامر بن كريز ، فقال : الإذن : أبو الغادية بالباب. فأذن له ، فدخل رجل ضرب من الرجال كأنه ليس من هذه الأمة ، فلما قعد قال : بايعت رسول الله (ص). قلت : بيمينك هذه ؟ ، قال : نعم ، وذكر حديثاً، عن النبي (ص) وقال : كنا نعد عمار بن ياسر فينا حناناً فبينا أنا في مسجد قباء إذا هو يقول : إن نعثل هذا فعل وفعل ، فقلت : لو أجد عليه أعواناً لوطئته حتى أقتله وقلت : اللهم إن تشأ تمكنني من عمار ، فلما كان يوم صفين أقبل في أول الكتيبة حتى إذا كان بين الصفين طعنه رجل في ركبته بالرمح فعثر فإنكشف المغفر عنه فضربته فإذا راس عمار بالأرض أو كما قالفلم أر رجلاً أبين ضلالة من أبي غادية إنه سمع من النبي (ص) في عمار ما سمع ثم قتله ، قال : ودعا بماء فأتي به في كوز زجاج فلم يشربه فأتي بماء في خزف فشربه. 

(انساب الاشراف للبلاذری)

 ساری تخریج اسناد پیش کر دی ہے اور ساتھ سرخ کلر سے نشان دہی کر دی ہے اس لئے شعیب الارنووط صاحب کا اس روایت کو اسنادہ حسن کہنا اصول درست نہیں۔

اور عبدالاعلی بن عبداللہ بن عامر کی توثیق سوائے امام ابن حبان کے کسی نے نہیں کی اور امام ابن حبان مجہولین کی توثیق میں متساہل ہیں اس لئے ان کا منفرد ہونا قبول نہیں۔

اس کے علاوہ امام بخاری نے اس کا ذکر کیا ہے لیکن توثیق نہیں کی۔

 عبد الأعلى بن عبد الله بن عامر بن كريز القرشي عن عبد الله بن الحارث روى عنه خالد الحذاء نسبه عمرو بن الأصبغ هو البصري

(تاریخ الکبیر للبخاری رقم 1742)

 امام ابن ابی حاتم نے اسکا ذکر تو کیا ہے لیکن اس کی توثیق نہیں کی ہے۔

(الجرح والتعدیل ج6 ص 276)

اس کے علاوہ اس روایت کا متن بھی منکر ہے کیونکہ کسی کا قتل کرنا کفر نہیں ہے  اور اس روایت میں کفر بتایا ہے اور یہ بات کئی صحیح احادیث کے خلاف ہے۔

اور اس کے علاوہ یہ قرآن کی آیت کے بھی خلاف ہے کیونکہ بیعت رضوان کے صحابہ پر اللہ راضی ہو چکا ہے 

لَقَدْ رَضِیَ اللَّہُ عَنِ الْمُؤْمِنِیْنَ اِذْ یُبَایِعُونَکَ تَحْتَ الشَّجَرَةِ فَعَلِمَ مَا فِیْ قُلُوبِہِمْ فَأَنزَلَ السَّکِیْنَةَ عَلَیْہِمْ وَأَثَابَہُمْ فَتْحاً قَرِیْباً (الفتح : ۱۸)

اس لئے قرآن آیت حق ہے کیونکہ جس سے اللہ راضی ہو جاتا ہے اسے جہنم چھو نہیں سکتی ہے اور قرآن کی آیت نص قطعی ہے جس کا مقابلہ کوئی نہیں کر سکتا۔

 

 

 

 

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites
12 hours ago, ghulamahmed17 said:

اُردو ترجمہ میں پڑھیے

Picture3kl.thumb.png.ae0a1ebb0c464fdd4a3d39d6d5fdf103.png

 

 

Picture3.thumb.png.b42dabd205dfbdec4ab95bf4407c4930.png

 

ارے جناب محدثین کا اسلوب بھی یہ دیکھ لیا کرو کیونکہ بعض محدثین حدیث کو مختصر اور بعض مفصل بیان کرتے ہیں۔

لیکن مسنداحمد کی روایت میں متن میں لفظ "قال" ہے جس کا نہ ترجمہ کیا گیا اور نہ ہی یہ بتایا گیا کہ یہ "قال" کس نے کہا ہے؟؟

آیا یہ کلثوم بن جبر نے کہا ہے یا عبدالاعلی بن عبداللہ بن عامر نے کہا ہے؟؟

اس بات کی مسنداحمد میں تصریح نہیں اس لیے ہم نے اس کی مکمل اسناد جمع کر کے پتہ چلایا کہ یہ "قال" عبدالاعلی بن عبداللہ بن عامر نے کہا ہے یہ کلثوم بن جبر نے نہیں کہااس لئے ترجمہ کرنے والے نے غلط ترجمہ کیا اور اس "قال" کو کلثوم بن جبر کی طرف منسوب کر دیا جو کہ درست نہیں۔

جب کہ امام طبرانی کی روایت میں قال کہنے والے بندے کی تصریح موجود ہے اس لئے واضح ہو گیا کہ اس بات کو بیان کرنے والا عبدالاعلی بن عبداللہ بن عامر ہے جو کہ مجہول ہے۔

امام طبرانی کی روایت کی ہے:

حدثنا علي بن عبد العزيز وأبو مسلم الكشي قالا ثنا مسلم بن إبراهيم ثنا ربيعة بن كلثوم ثنا أبي قال كنت بواسط القصب عند عبد الأعلى بن عبد الله بن عامر فقال: « الآذان هذا أبو غادية الجهني فقال عبد الأعلى أدخلوه فدخل وعليه مقطعات له رجل طول ضرب من الرجال كأنه ليس من هذه الأمة فلما أن قعد قال بايعت رسول الله صلى الله عليه وسلم فقلت يمينك قال نعم خطبنا يوم العقبة فقال « يأيها الناس ألا إن دماءكم وأموالكم عليكم حرام كحرمة يومكم هذا في شهركم هذا في بلدكم هذا ألا هل بلغت؟ قالوا نعم قال: اللهم اشهد. قال « لا ترجعوا بعدي كفارا يضرب بعضكم رقاب بعض قال: وكنا نعد عمار بن ياسر من خيارنا قال فلما كان يوم صفين أقبل يمشي أول الكتيبة راجلا حتى إذا كان من الصفين طعن رجلا في ركبته بالرمح فعثر فانكفأ المغفر عنه فضربه فإذا هو رأس عمار قال يقول مولى لنا أي كفتاه قال فلم أر رجلا أبين ضلالة عندي منه إنه سمع النبي صلى الله عليه وسلم ما سمع ثم قتل عماراً"

)المعجم الکبیر للطبرانی ج 22 ص 363 رقم 912)

tar.thumb.jpg.d55013ef1cb5b4f5e97658458ea5ba1d.jpg

 

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites
12 hours ago, ghulamahmed17 said:

Picture145.thumb.png.525d9d57b594d8226e7a65d9d953041e.png

 

 

حدیثِ صحیح

----------------------------------------

 

اس روایت کا مکمل اسنادی جواب اوپر مکمل چکا ہے باقی جناب کی یہاں ایک ترجمہ کی غلطی دیکھانی تھی وہ یہ کہ یہاں قال کلثوم بن جبر کا نہیں بلکہ عبدالاعلی بن عبداللہ بن عامر کا ہے جو کہ مجہول ہے اور امام طبرانی کی سند میں اس بات کی تصریح ہے۔

حدثنا علي بن عبد العزيز وأبو مسلم الكشي قالا ثنا مسلم بن إبراهيم ثنا ربيعة بن كلثوم ثنا أبي قال كنت بواسط القصب عند عبد الأعلى بن عبد الله بن عامر فقال: « الآذان هذا أبو غادية الجهني فقال عبد الأعلى أدخلوه فدخل وعليه مقطعات له رجل طول ضرب من الرجال كأنه ليس من هذه الأمة فلما أن قعد قال بايعت رسول الله صلى الله عليه وسلم فقلت يمينك قال نعم خطبنا يوم العقبة فقال « يأيها الناس ألا إن دماءكم وأموالكم عليكم حرام كحرمة يومكم هذا في شهركم هذا في بلدكم هذا ألا هل بلغت؟ قالوا نعم قال: اللهم اشهد. قال « لا ترجعوا بعدي كفارا يضرب بعضكم رقاب بعض قال: وكنا نعد عمار بن ياسر من خيارنا قال فلما كان يوم صفين أقبل يمشي أول الكتيبة راجلا حتى إذا كان من الصفين طعن رجلا في ركبته بالرمح فعثر فانكفأ المغفر عنه فضربه فإذا هو رأس عمار قال يقول مولى لنا أي كفتاه قال فلم أر رجلا أبين ضلالة عندي منه إنه سمع النبي صلى الله عليه وسلم ما سمع ثم قتل عماراً"

)المعجم الکبیر للطبرانی ج 22 ص 363 رقم 912)

tar.thumb.jpg.c2bab60d7aece324fe137f067566c19c.jpg

 

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites
12 hours ago, ghulamahmed17 said:

Picture145.thumb.png.525d9d57b594d8226e7a65d9d953041e.png

 

 

حدیثِ صحیح

----------------------------------------

 

اس روایت کا مکمل اسنادی جواب اوپر مکمل چکا ہے باقی جناب کی یہاں ایک ترجمہ کی غلطی دیکھانی تھی وہ یہ کہ یہاں قال کلثوم بن جبر کا نہیں بلکہ عبدالاعلی بن عبداللہ بن عامر کا ہے جو کہ مجہول ہے اور امام طبرانی کی سند میں اس بات کی تصریح ہے۔

حدثنا علي بن عبد العزيز وأبو مسلم الكشي قالا ثنا مسلم بن إبراهيم ثنا ربيعة بن كلثوم ثنا أبي قال كنت بواسط القصب عند عبد الأعلى بن عبد الله بن عامر فقال: « الآذان هذا أبو غادية الجهني فقال عبد الأعلى أدخلوه فدخل وعليه مقطعات له رجل طول ضرب من الرجال كأنه ليس من هذه الأمة فلما أن قعد قال بايعت رسول الله صلى الله عليه وسلم فقلت يمينك قال نعم خطبنا يوم العقبة فقال « يأيها الناس ألا إن دماءكم وأموالكم عليكم حرام كحرمة يومكم هذا في شهركم هذا في بلدكم هذا ألا هل بلغت؟ قالوا نعم قال: اللهم اشهد. قال « لا ترجعوا بعدي كفارا يضرب بعضكم رقاب بعض قال: وكنا نعد عمار بن ياسر من خيارنا قال فلما كان يوم صفين أقبل يمشي أول الكتيبة راجلا حتى إذا كان من الصفين طعن رجلا في ركبته بالرمح فعثر فانكفأ المغفر عنه فضربه فإذا هو رأس عمار قال يقول مولى لنا أي كفتاه قال فلم أر رجلا أبين ضلالة عندي منه إنه سمع النبي صلى الله عليه وسلم ما سمع ثم قتل عماراً"

)المعجم الکبیر للطبرانی ج 22 ص 363 رقم 912)

tar.thumb.jpg.c2bab60d7aece324fe137f067566c19c.jpg

 

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

ارے مزے کی بات یہ ہے اس ضعیف روایت میں خود  حضرت ابوالغادیہ کے قصد قتل کا روایت میں ذکر ہی نہیں ہے بلکہ افسوس کا ذکر ہے۔

اور جو قتل خطاء میں ہو جاتے ہیں ان کے بارے میں قرآن فرماتا ہے۔

﴿وَما كانَ لِمُؤمِنٍ أَن يَقتُلَ مُؤمِنًا إِلّا خَطَـًٔا وَمَن قَتَلَ مُؤمِنًا خَطَـًٔا فَتَحريرُ رَقَبَةٍ مُؤمِنَةٍ وَدِيَةٌ مُسَلَّمَةٌ إِلىٰ أَهلِهِ إِلّا أَن يَصَّدَّقوا فَإِن كانَ مِن قَومٍ عَدُوٍّ لَكُم وَهُوَ مُؤمِنٌ فَتَحريرُ رَقَبَةٍ مُؤمِنَةٍ وَإِن كانَ مِن قَومٍ بَينَكُم وَبَينَهُم ميثـٰقٌ فَدِيَةٌ مُسَلَّمَةٌ إِلىٰ أَهلِهِ وَتَحريرُ رَقَبَةٍ مُؤمِنَةٍ فَمَن لَم يَجِد فَصِيامُ شَهرَينِ مُتَتابِعَينِ تَوبَةً مِنَ اللَّهِ وَكانَ اللَّهُ عَليمًا حَكيمًا ﴿٩٢ وَمَن يَقتُل مُؤمِنًا مُتَعَمِّدًا فَجَزاؤُهُ جَهَنَّمُ خـٰلِدًا فيها وَغَضِبَ اللَّهُ عَلَيهِ وَلَعَنَهُ وَأَعَدَّ لَهُ عَذابًا عَظيمًا ﴿٩٣﴾... سورة النساء

"کسی مومن کو دوسرے مومن کا قتل کر دینا زیبا نہیں مگر غلطی سے ہو جائے (تو اور بات ہے)، جو شخص کسی مسلمان کو بلا قصد مار ڈالے، اس پر ایک مسلمان غلام کی گردن آزاد کرنا اور مقتول کے عزیزوں کو خون بہا پہنچانا ہے۔ ہاں یہ اور بات ہے کہ وه لوگ بطور صدقہ معاف کر دیں اور اگر مقتول تمہاری دشمن قوم کا ہو اور ہو وه مسلمان، تو صرف ایک مومن غلام کی گردن آزاد کرنی لازمی ہے۔ اور اگر مقتول اس قوم سے ہو کہ تم میں اور ان میں عہد و پیماں ہے تو خون بہا لازم ہے، جو اس کے کنبے والوں کو پہنچایا جائے اور ایک مسلمان غلام کا آزاد کرنا بھی (ضروری ہے)، پس جو نہ پائے اس کے ذمے دو مہینے کے لگاتار روزے ہیں، اللہ تعالیٰ سے بخشوانے کے لئےاور اللہ تعالیٰ بخوبی جاننے والا اور حکمت والا ہے"

اب جناب بتائیں جناب کی ضعیف روایت سے بھی حضرت ابوالغادیہ (معاذاللہ ) جہنمی نہیں بنتے کیونکہ روایت میں قصدا قتل کا ذکر ہی نہیں  اور قصدا قتل نہ کرنے بارے میں اوپر قرآن کی آیت موجود ہے۔

اس کے علاوہ بیعت رضوان کے صحابہ سے اللہ پہلے سے راضی ہے تو پھر کچھ بچا ہی نہیں ہے بحث پر۔

لَقَدْ رَضِیَ اللَّہُ عَنِ الْمُؤْمِنِیْنَ اِذْ یُبَایِعُونَکَ تَحْتَ الشَّجَرَةِ فَعَلِمَ مَا فِیْ قُلُوبِہِمْ فَأَنزَلَ السَّکِیْنَةَ عَلَیْہِمْ وَأَثَابَہُمْ فَتْحاً قَرِیْباً (الفتح : ۱۸)

اور حضرت ابوالغادیہ بیعت رضوان کے صحابہ میں سے ہیں اس لئے ان کی جنت پکی ہے۔

اس کے علاوہ ضعیف روایت میں حضرت ابوالغادیہ کے افسوس کے الفاظ ہیں اور احادیث میں افسوس و ندامت کو بھی توبہ میں شمار کیا گیا ہے اب کچھ بچا ہی نہیں ہے۔

اس لئے صحابہ کو چھوڑ  تم اپنی آخرت کی فکر کرو۔

tar.jpg.337945ab52a08b121d077acb37e9d559.jpg

 

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

ماشاءاللہ جناب بہت خوب زبردست

Share this post


Link to post
Share on other sites
Quote

ارے مزے کی بات یہ ہے اس ضعیف روایت میں خود  حضرت ابوالغادیہ کے قصد قتل کا روایت میں ذکر ہی نہیں ہے بلکہ افسوس کا ذکر ہے۔

 

0001.png.1fa5862554b7c7af5edb86de7fb55d8c.png

 

0002.png.04bec5a70eda2dc6fd87563dad654f83.png

001.thumb.png.77d4826dca55ae388132796d3134e642.png

002.thumb.png.8da15c61c2f67c9fb9b3dfee256ff97a.png

 

 

003.thumb.png.1db332d9741832641fff67b793c091a8.png

004.thumb.png.b716999c98abbc7e32d5886a15d97de4.png

 

005.png.e8fbc3138fbb85391856e08ce4bd5ea6.png

 

006.thumb.png.14af54a67d890c5d4ad7851d685ca881.png

007.thumb.png.1ad79b08a8fecf038174f96d951ffd80.png

 

اُمید کی جاتی ہے کہ جناب محترم رضا عسقلانی صاحب  اس روایت پر

پر محدثین و محققین کی آراء کا رد

کتب اھلِ سنت کی روشنی میں ہی پیش فرمائیں گے ۔

------------------------------------------------

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

غلام احمد منہاجی رافضی صاحب کیا آپ کو الہام ہوا ہے کہ میں نے عسقلانی صاحب کو نشاندہی کروائی ہے؟اگر یہ بات جھوٹ ہے تو جھوٹوں پر اللہ کی لعنت ہو

اور باقی دوبارہ کاپی پیسٹ کر دی ہے جسکا جواب متعدد بار دیا جا چکا ہے اب اگر دوبارہ ایسی پوسٹ آئی تو ڈیلیٹ کر دی جاۓ گی کیوں کہ آپ لاجواب ہو چکے ہیں

Share this post


Link to post
Share on other sites
On 11/5/2019 at 11:00 AM, ghulamahmed17 said:

0001.png.1fa5862554b7c7af5edb86de7fb55d8c.png

 

5dc2ed1ae9a63_.thumb.jpg.33cd0b2a4be5f244cd31a14aaed07fee.jpg

On 11/5/2019 at 11:00 AM, ghulamahmed17 said:
Quote

ارے مزے کی بات یہ ہے اس ضعیف روایت میں خود  حضرت ابوالغادیہ کے قصد قتل کا روایت میں ذکر ہی نہیں ہے بلکہ افسوس کا ذکر ہے۔

 

0001.png.1fa5862554b7c7af5edb86de7fb55d8c.png

 

0002.png.04bec5a70eda2dc6fd87563dad654f83.png

5dc2ed91f2eec_.thumb.jpg.70f28a7b68725b3aa5939fd334ee32f0.jpg

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites
On 11/5/2019 at 11:00 AM, ghulamahmed17 said:

001.thumb.png.77d4826dca55ae388132796d3134e642.png

002.thumb.png.8da15c61c2f67c9fb9b3dfee256ff97a.png

 

شعیب الارنووط عقیدتا سلفی تھا اور آج کل کے زمانے سے تھا تو اس کا رد بھی سلفی اور آج کے زمانے پیش کر دیتے ہیں ۔

ارشاد الحق  کی یہ عبارت جناب کے لئے قابل عبرت ہے جس میں اس نے مثالیں دیں ہیں کہ کسی روایت کی تصحیح کرنے سے اگر اس میں کوئی ضعیف راوی ہے تو وہ روایت صحیح نہیں ہو جاتیں۔

اس لئے شعیب الارنووط اور احمد شاکر کی تحسین سے روایت حقیقت میں حسن نہیں بن جاتی کیونکہ اس میں ایک مجہول راوی ہے اس لئے وہ ضعیف ہے۔

asari.jpg.979c8460859665050549eb3491cfdee8.jpg

 

On 11/5/2019 at 11:00 AM, ghulamahmed17 said:

 

003.thumb.png.1db332d9741832641fff67b793c091a8.png

004.thumb.png.b716999c98abbc7e32d5886a15d97de4.png

 

اس روایت کی مکمل تحقیق اوپر موجود ہے جس میں واضح موجود ہے کہ اس میں ایک مجہول راوی ہے اس لیے اب مزید جواب دینے کی ضرورت نہیں ہے یہاں۔ اس لئے جناب دوبارہ دوبارہ پوسٹر لگا کر ہمارا وقت ضائع نہ کریں اگر جواب دینا ہے تو ہمارے اوپر کی پیش کردہ اسناد کا جواب دیں ورنہ آپ کے دوبارہ سے پوسٹر چپکانے کے ہم جواب دہ نہیں۔

اصل بات یہ ہے کہ آپ کے پاس کوئی دلائل رہ نہیں اس لئے دوبارہ پھر وہی پوسٹر چیکا رہے ہیں جس کا اوپر جواب دے گیا ہے پہلے سے۔

 

 

Share this post


Link to post
Share on other sites
On 11/5/2019 at 11:00 AM, ghulamahmed17 said:

007.thumb.png.1ad79b08a8fecf038174f96d951ffd80.png

 

اُمید کی جاتی ہے کہ جناب محترم رضا عسقلانی صاحب  اس روایت پر

پر محدثین و محققین کی آراء کا رد

کتب اھلِ سنت کی روشنی میں ہی پیش فرمائیں گے ۔

------------------------------------------------

 

 

اس روایت کا اوپر تحقیقی اور اصولی جواب دیا جا چکا ہے اس کے علاوہ تصحیح کے حوالے سے خود سلفیوں کے گھر سے محدث ارشاد اثری سے بھی اوپر جواب  دیا جا چکا ہے۔

ارے جناب جب علماء اہل سنت اس روایت کی تصحیح کرتے تو اس کا جواب علماء اہل سنت کے اصولوں سے دیتے اس لئے اس کی تصحیح سلفیوں نے کی اس لئے اس کا جواب بھی سلفی علماء سے دی ہے۔

باقی علامہ سندھی نے اپنی بات کی کوئی صحیح سند روایت پیش نہیں کی انہوں نے بھی تسامحات کی پیروی کی اور خود تحقیق نہیں فرمائے۔ اس لئے بے اسناد باتیں ویسے بھی مردود ہوتی ہیں اس لئے علامہ سندھی کی بات بے سند ہے اور بنا دلیل کے ہیں۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.