1 post in this topic

نبی پاکﷺ اپنی قبر مبارک میں اپنی امت کے اعمال پر مطلع ہوتے ہیں اس مشہور روایت کی تحقیق!

 

امام البزار اپنی مسند میں اپنی سند سے روایت بیان کرتے ہیں

 

حَدَّثَنَا يُوسُفُ بْنُ مُوسَى، قَالَ: نا عَبْدُ الْمَجِيدِ بْنُ عَبْدِ الْعَزِيزِ بْنِ أَبِي رَوَّادَ، عَنْ سُفْيَانَ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ السَّائِبِ، عَنْ زَاذَانَ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ حَيَاتِي خَيْرٌ لَكُمْ تُحَدِّثُونَ وَنُحَدِّثُ لَكُمْ، وَوَفَاتِي خَيْرٌ لَكُمْ تُعْرَضُ عَلَيَّ أَعْمَالُكُمْ [ص:309]، فَمَا رَأَيْتُ مِنَ خَيْرٍ حَمِدْتُ اللَّهَ عَلَيْهِ، وَمَا رَأَيْتُ مِنَ شَرٍّ اسْتَغْفَرْتُ اللَّهَ لَكُمْ

 

ترجمہ:حضرت عبداللہ  بن مسعودؓ فرماتے ہیں کہ نبی پاک ﷺنے فرمایا کہ  میری حیات بھی تمہارے لیے بہتر ہے اور میری وفات بھی تمہارے لیے بہتر ہے تمہارے اعمال مجھ پر پیش کیے جاتے ہیں اگر نیک اعمال ہوں تو میں اللہ کا شکر ادا کرتا ہوں اور اگر برے ہوں تو میں تمہارے لیے مغفرت طلب کرتا ہوں 

 

اس روایت  پر متعدد متفقہ جید محدثین کی توثیق درج ذیل ہے

۱۔امام ابن عراقیؒ

  اس روایت کو نقل کرنے سے پہلے لکھتےہیں : وروی ابو بکر البزار فی مسندہ باسناد جید  عن  اب مسعود ؓقال  رسولﷺ بلخ۔۔۔۔

(کتاب طرح التثریب فی شرح التقریب امام ین الدین ابی الفضل  عبدالرحیم بن الحسین االعراق ،  ص ۲۹۶)

 

۲۔ امام جلال الدین سیوطیؒ

امام سیوطی اسی روایت کے بارے فرماتے ہیں اوخرج البزار بسند صحیح  من حدیث ابن مسعود مثله

(الخصائص الکبریٰ  ص ۴۹۱)

 

۳۔ امام  ہیثمیؒ

امام الحافظ نور الدین علی بن ابو بکر الہیثمی مجمع الزوائد میں اس روایت کو نقل کرنے سے پہلے ایک باب قائم کرتے ہیں :

(باب مایحصل لا مته ﷺمن استغفار بعد وفاتة)     یعنی نبی پاکﷺ کا بعد از وصال استغفار کرنا اپنی امت کے لیے 

پھر اس روایت کو حضرت عبداللہ بن مسعودؓ سے روایت نقل کر کے فرماتے ہیں رواہالبزار ورجالہ رجال الصحیح

(مجمع الزوائد ص ۹۳)

 

۴۔امام سمہودیؒ

امام سمہودی اس روایت کو نققل کرنے سے پہلے فرماتے ہیں: الحدییث وللبزار برجال الصحیح عن ابن مسعود بلخ۔۔۔

(خلاصہ الوافا با خبار دارالمصطفیٰﷺ ص ۳۵۳)

 

اتنے بڑے جید محدثین کی تائید حاصل ہونے پر اس روایت کے رجال کی تحقیق کرنے کی ضرورت نہیں پڑتی لیکن ہم اس کی سند پر تحقیق پیش کر کے  ان جید محدثین کی تائید کرینگے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سند کی تحقیق!

سند کا پہلا راوی : يُوسُفُ بْنُ مُوسَى ،    یہ امام بخاری سمیت صحاح ستہ کے اماموں کے شیخ ہیں

امام ابن ابی حاتم انکا ترجمہ یوں نقل کرتے ہیں:

969 - يوسف بن موسى القطان الكوفى، وأصله اهوازي روى عن جرير بن عبد الحميد وحكام بن سلم ومهران بن ابى عمر العطار وأبي زهير عبد الرحمن بن مغراء وسلمة بن الفضل وعبد الله بن ادريس ومحمد بن فضيل ووكيع وعبد الله بن نمير روى عنه أبي وأبو زرعة.

نا عبد الرحمن قال سألت أبي عنه فقال: هو صدوق

(الجرح والتعديل لا ابن ابی حاتم برقم ۹۶۹)

امام ابن ابی حاتم فرماتے ہیں  کہ ان سے میرے والد اور امام ابو زرعہؒ نے روایت کیا ہے اور میرے والد (امام ابی حاتمؒ) فرماتے ہیں یہ صدوق تھے

 

امام خطیب بغدادیؒ انکے بارے میں فرماتے ہیں : وكان ثقة

(تاریخ بغداد ج۱۶، ص ۴۵۴)

مختصر یہ صحیح بخاری کا راوی ہے متفقہ ثقہ ہے

 

 

سند کا دوسرا راوی: عَبْدُ الْمَجِيدِ بْنُ عَبْدِ الْعَزِيزِ بْنِ أَبِي رَوَّادَ

 

 

340 - عبد المجيد بن عبد العزيز بن أبي رواد أبو عبد الحميد المكى مولى الازد روى عن معمر وابن جريج سمعت أبى يقول ذلك، نا عبد الرحمن قال قرئ على العباس بن محمد الدوري قال سمعت يحيى بن معين يقول ابن علية عرض كتب ابن جريج على عبد المجيد بن عبد العزيز بن ابى رواد فأصلحها له

فقلت ليحيى ما كنت اظن ان عبد المجيد هكذا قال يحيى كان اعلم الناس بحديث ابن جريج ولكن لم يكن يبذل نفسه للحديث، نا عبد الرحمن قال قرئ على العباس قال سمعت يحيى بن معين وسئل عن عبد المجيد بن عبد العزيز بن ابى رواد فقال ثقة (نا عبد الرحمن أنا عبد الله بن أحمد بن محمد بن حنبل فيما كتب إلى قال سئل يحيى بن معين وانا اسمع - عبد المجيد بن عبد العزيز بن ابى رواد فقال ثقة - 3) ليس به بأس نا عبد الرحمن قال سألت أبي عنه فقال ليس بالقوى يكتب حديثه كان الحميدى يتكلم فيه.

 

(الجرح والتعدیل لا ابن  ابی حاتم برقم ۳۴۰)

امام ابن ابی حاتم امام یحییٰ بن معین سے بیان کرتے ہیں کہ عبدالمجید  صالح تھا پھر فرمایا  دو مرتببہ اسکوثقہ کہہ کر توثیق کی ہے

اسکے بعد ابن ابی حاتم بیان کرتے ہیں کے میرے والد انکو لیس بالقوی قرار دیتے اور اسکی حدیث لکھی جائے  اور اس میں کمزوری ہے

یاد رہے امام ابن معین الحنفیؒ امام ابو حاتم وغیرہ سے بڑے محدث اور متشدد تھے تو انکی توثیق راجع قرار پائے گی

 

3435- عبد المجيد بن عبد العزيز بن أبي رواد عن أبيه وابن جريج وأيمن بن نابل وعنه كثير بن عبيد والزبير بن بكار قال أحمد ثقة يغلو في الارجاء وقال أبو حاتم ليس بالقوي توفي 206 م

(الکاشف امام ذھبی )

امام ذھبی فرماتے ہیں اسکو امام احمد نے ثقہ فرمایا اور یہ مرجئی تھا اور ابو حاتم نے اسکے قوی ہونے کی نفی کی ہے

 

اسکے علاوہ امام ذھبی کے نزدیک یہ راوی معتبر اور صدوق ہے جیسا کہ وہ اس راوی کو اپنی کتاب : ذكر أسماء من تكلم فيه وهو موثق

میں زکر کیا ہے اور اس کتاب کے مقدمے مین انہوں نے لکھا ہے کہ اس میں ان راویان کے نام ہے جو صدوق اور حسن الحدیث ہیں لیکن ان پر  جروحات بھی ہیں (لیکن راجع یہی ہے  کہ وہ راوی صدوق  و حسن الحدیث ہیں )

220 - عبد المجيد بن عبد العزيز بن أبي رواد المدني (م على) :

ثقة مرجىء داعية غمزه ابن حبان

 نیز اسکے علاوہ امام ذھبی میزان الاعتدال میں بھی اسکی توثیق فرماتے ہوئے کھتے ہیں :

5183 - عبد المجيد بن عبد العزيز [م، عو] بن أبي رواد.

صدوق مرجئ كابيه.

کہ عبدالمجید صدوق ہے اور مرجئی ہے

 

امام ابن حجر عسقلانیؒ نے بھی اسکی توثیق فرمائی ہے لسان المیزان میں وہ صیغہ (هـ) استعمال کرتے ہوئے اسکی توثیق کی طرف فیصلہ دیاہے

1706 - م4 , (هـ) عبد المجيد بن عبد العزيز بن أبي رواد (2: 648/ 5183).

=========

[مفتاح رموز الأسماء التي حذف ابن حجر ترجمتها من الميزان اكتفاءً بذكرها في تهذيب الكمال]

رموز التهذيب: (خ م س ق د ت ع 4 خت بخ ف فق سي خد ل تم مد كن قد عس)، ثم (صح) أو (هـ):

- (صح): ممن تكلم فيه بلا حجة.

- (هـ): مختلف فيه والعمل على توثيقه.

-ومن عدا ذلك: ضعيف على اختلاف مراتب الضعف.

(لسان المیزان  برقم ۱۷۰۶)

 

اسکے علاوہ امام ابن حجر نے تقریب میں بھی اسکو صدوق یخطی قرار دیا ہے اور ابن حبان کا اس پر جرح کرنے کو باطل قرار دیا ہے

4160- عبد المجيد ابن عبد العزيز ابن أبي رواد بفتح الراء وتشديد الواو صدوق يخطىء وكان مرجئا أفرط ابن حبان فقال متروك من التاسعة مات سنة ست ومائتين م

(تقریب التہذیب  بررقم ۵ؤ۴۱۶۰)

یعنی عبدالمجید صدوق درجے کا ہے اور یخطی ہے اور ابن حبان نے اس پر متروک کی جرح کر کے حد سے تجاوز کیا

اسکی توثیق مندرجہ زیل اماموں نے کی ہے

۱۔امام ابن معین (متشدد)

۲۔امام احمد بن حنبل

۳۔ امام نسائی (متشدد)

۴۔ امام ابو داود

۵۔ امام  نسائی

۶۔ امام ذھبی

۷۔ امام ابن حجر

نیز یہ راوی طبقہ ثالثہ کا  مدلس راوی ہے جسکی روایت عن کے ساتھ ضعیف ہوتی ہے لیکن اسکی شاہد موجود ہے جسکو امام سیوطی نے الخصائص الکبرہ میں با سند صحیح نقل کیا ہے جو کہ مرسل ہے تو اسکی تدلیس والا اعتراض یہاں بےضرر ہے  جیسا کہ اس روایت کی دوسری مرسل سند ایسے ہے

 

حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ حَرْبٍ ، قَالَ : ثنا حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ ، قَالَ : ثنا غَالِبٌ الْقَطَّانُ ، عَنْ بَكْرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ الْمُزَنِيِّ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : حَيَاتِي خَيْرٌ لَكُمْ ، تُحَدِّثُونَ وَيُحَدَّثُ لَكُمْ ، فَإِذَا أَنَا مُتُّ كَانَتْ وَفَاتِي خَيْرًا لَكُمْ ، تُعْرَضُ عَلَيَّ أَعْمَالُكُمْ ، فَإِنْ رَأَيْتُ خَيْرًا حَمِدْتُ اللَّهَ ، وَإِنْ رَأَيْتُ غَيْرَ ذَلِكَ اسْتَغْفَرْتُ اللَّهَ لَكُمْ .

ترجمہ : حضرت بکر بن عبدللہ المزنی سے روایت ہے،رسول الله صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : 'میری حیات بهی تمہارے لئے بہتر ہے کہ تم حدیثیں بیان کرتے ہو اور تمہارے لئے حدیثیں (دین کے احکام)بیان کیے جاتے ہیں، اور میری وفات بھی تمہارے لئے بہتر ہے کہ تمہارے اعمال مجھ پر پیش کیے جاتے ہیں ، تمہارا جو نیک عمل دیکھتا ہوں اس پر الله کا شکر ادا کرتا ہوں،اور اگر برے اعمال پاتا ہوں تو تمہارے لئے اللہ سے مغفرت کی دعا کرتا ہوں ۔

(الراوي : بكر بن عبد الله المزني المحدث : الألباني - المصدر: فضل الصلاة - صفحة 26 خلاصة الدرجة : جيدة رجالها رجال مسلم . المحدث : محمد ابن عبد الهادي - المصدر: الصارم المنكي صفحة 329
خلاصة الدرجة : مرسل إسناده صحيح ) السيوطي - المصدر: الخصائص الكبرى الصفحة أو الرقم: ٢/٤٩١ خلاصة الدرجة: إسناده صحيح ۔)

امام ابن سعد نے بھی مرسل روایت کی  ایک اور بے غبار  سند بیان کی ہے

أخبرنا يونس بن محمد المؤدب، أخبرنا حماد بن زيد، عن غالب، عن بكر بن عبد الله، قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: «حياتي خير لكم، تحدثون ويحدث لكم، فإذا أنا مت كانت وفاتي خيرا لكم، تعرض علي أعمالكم، فإذا رأيت خيرا حمدت الله، وإن رأيت شرا استغفرت الله لكم»

(طبقات ابن سعد  ج ۲ ص ۱۹۴)     

امید ہے جناب کو اب تدلیس والے اعتراض کا کافی و شافی جواب مل گیا ہے

 

 

 

سند کا تیسرا راوی :سفیان الثوری

یہ متفقہ ثقہ اور امیر المومنین فی حدیث ہیں  امام ذھبی انکا تعارف یوں کرواتے ہیں

هو شيخ الإسلام، إمام الحفاظ، سيد العلماء العاملين في زمانه، أبو عبد الله الثوري، الكوفي، المجتهد، مصنف كتاب (الجامع) .

(سیر  اعلام النبلاء  برقم 82)

سند کا چوتھا راوی : عبداللہ بن سائب الکندی

303 - عبد الله بن السائب الكندي روى عن زاذان وعبد الله (6) ابن معقل وعبد الله بن قتادة المحاربي روى عنه الشيباني أبو إسحاق والأعمش وسفيان الثوري وأبو سنان [الشيباني - 7] سمعت أبي يقول ذلك.

نا عبد الرحمن قال ذكره أبي عن إسحاق بن منصور عن يحيى بن معين أنه قال: عبد الله بن السائب ثقة.

نا عبد الرحمن قال سمعت أبي يقول: عبد الله بن السائب الذي يروى عنه زاذان ثقة.

(الجرح والتعدیل لا ابن ابی حاتم )

 

891 - عبد الله بن السَّائِب الكندى ثِقَة

(الثقات امام عجلی )

الغرض یہ متفقہ ثقہ امام ہیں

 

سند کا پانچواں راوی: زاذان أبو عمر1

450- زاذان أبو عمر1: سمع من عبد الله بن مسعود، ثقة.

(الثقات  عجلی )

 

417 - زَاذَان ثِقَة كَانَ يتَغَنَّى ثمَّ تَابَ

(تاریخ الثقات ابن شاھین)

 

1603- زاذان أبو عمر الكندي مولاهم الضرير البزاز عن علي وابن مسعود ويقال سمع عمر وعنه عمرو بن مرة والمنهال بن عمرو ثقة توفي 82 م

(امام ذھبی الکاشف)

 

4556- زاذان أبو عمر الكندي مولاهم سمع: علي بن أبي طالب، وعبد الله بن مسعود، وعبد الله بن عمر.

روى عنه: ذكوان أبو صالح، وعبد الله بن السائب، وعمرو بن مرة، وغيرهم.

وكان ثقة

(تاریخ بغداد  امام خطیب)

 

1976- زاذان أبو عمر الكندي البزاز ويكنى أبا عبد الله أيضا صدوق يرسل وفيه شيعية من الثانية مات سنة اثنتين وثمانين بخ م 4

(تقریب التہذیب امام ابن حجر)

اما م ابن حجر کہتے ہین کہ یہ صدوق ہے شیعت کا عنصر پایا جاتا تھا اس میں اور ارسال بھی کرتا تھا

 

امام  ذھبی انکا ترجمہ یوں بیان کرتے ہیں :

470- زاذان 1: "م،

أبو عمر الكندي، مولاهم، الكوفي، البزاز، الضرير، أحد العلماء الكبار. ولد: في حياة النبي صلى الله عليه وسلم وشهد خطبة عمر بالجابية. وكان ثقة، صادقا، روى جماعة أحاديث.

(سیر اعلام النبلاء)

زاذان یہ ابو عمر ہیں اور علماء میں سے تھے یہ نبی پاک کی زندگی میں پیدا ہوئے اور وہ ثقہ صدوق تھے

 

سند کے پانچوے راوی خود صحابی رسولﷺ  حضرت عبداللہ بن مسعود ؓ ہیں

 

اس تحقیق سے معلووم ہوا کے اسکی سند صحیح ہے اور محدثین کی  ایک جماعت نے اس حدیث کی تصحیح کی ہے

 

 

 

 

دعاگو: خادم الحدیث رانا اسد الطحاوی الحنفی البریلوی  )

 

 

 

 

Untitled.png

بھ.png

فھف.png

مسند البزار.png

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.