Jump to content

Talaq ki iddat


Afsheen

Recommended Posts

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ:

یہ ذہن نشین فرما لیں کہ محض شوہر سے دور  رہنا،ازدواجی رشتہ قائم نہ کرنا طلاق کا موجب نہیں اگرچہ چار ماہ گزر جائیں،جب تک شوہر صراحتا یا دلالتا طلاق نہ دے تب تک اس کے طلاق دیئے بغیر محض دور رہنے سے طلاق واقع نہیں ہوتی بھلے برسوں دور رہیں،جبکہ اور کوئی شرعی وجہ مثل ایلاوغیرہ نہ پائی جائے۔

صورتِ مسئولہ میں چوںکہ شوہر نے عورت کو طلاق دے دی ہے تو ایسی صورت میں عدت اس دن سے شروع ہو گی جس دن  شوہر نے طلاق دی  اس سے قبل بھلے 4 ماہ دور رہے ہوں،وہ ایام عدت میں شمار نہیں ہوں گے ایامِ عدت طلاق کے بعد ہی شروع ہوتے ہیں۔

جہاں تک عدت کا تعلق ہے تو اس میں ہمیں وضاحت درکار ہے کہ جس عورت کو طلاق ہوئی وہ عورت مدخولہ ہے یا غیر مدخولہ، حاملہ ہے یا غیر حاملہ،حیض آتا ہے یا حیض نہیں آتا کیوںکہ ہر صورت میں عدتِ طلاق مختلف ہوتی ہے۔

واللہ اعلم بالصواب 

Link to comment
Share on other sites

  • 1 month later...

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
  • Recently Browsing   0 members

    • No registered users viewing this page.
×
×
  • Create New...