Afsheen

Talaq ki iddat

3 posts in this topic

Aoa, Mera question ye Hai k. Aise surat Mai talaq ki iddat kya Hai jo aurat apne shohar se 4 month dur ho or koi taluk na go darmiyan. Or shohar usy divorce de de tu uski iddat kb se start ho gi. 

Share this post


Link to post
Share on other sites

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ:

یہ ذہن نشین فرما لیں کہ محض شوہر سے دور  رہنا،ازدواجی رشتہ قائم نہ کرنا طلاق کا موجب نہیں اگرچہ چار ماہ گزر جائیں،جب تک شوہر صراحتا یا دلالتا طلاق نہ دے تب تک اس کے طلاق دیئے بغیر محض دور رہنے سے طلاق واقع نہیں ہوتی بھلے برسوں دور رہیں،جبکہ اور کوئی شرعی وجہ مثل ایلاوغیرہ نہ پائی جائے۔

صورتِ مسئولہ میں چوںکہ شوہر نے عورت کو طلاق دے دی ہے تو ایسی صورت میں عدت اس دن سے شروع ہو گی جس دن  شوہر نے طلاق دی  اس سے قبل بھلے 4 ماہ دور رہے ہوں،وہ ایام عدت میں شمار نہیں ہوں گے ایامِ عدت طلاق کے بعد ہی شروع ہوتے ہیں۔

جہاں تک عدت کا تعلق ہے تو اس میں ہمیں وضاحت درکار ہے کہ جس عورت کو طلاق ہوئی وہ عورت مدخولہ ہے یا غیر مدخولہ، حاملہ ہے یا غیر حاملہ،حیض آتا ہے یا حیض نہیں آتا کیوںکہ ہر صورت میں عدتِ طلاق مختلف ہوتی ہے۔

واللہ اعلم بالصواب 

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.