Rameez Mulla

Rameez Mulla ہجرت کرنا کیسا

2 posts in this topic

Ek shahar se ya ek gaon se dusre shahar me hijrat karna islam me kaisa hai ? Khwa wo ilam hasil karna ho ya rozgar k liye

Share this post


Link to post
Share on other sites

انما الاعمال بالنيات وانما لکل امرء ما نوی اس حدیث کی روشنی میں ہجرت کا مفہوم بڑا وسیع ہے، انسان کسی بھی غرض و غایت کے لیے ایک جگہ سے دوسری جگہ ہجرت کر سکتا ہے۔ ہجرت اگر اللہ و رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے لیے اور دین اسلام کی سربلندی کے لیے کی جائے تو دنیا و آخرت میں اجرو ثواب ہے۔ اس کے علاوہ معاشی آسودگی، روزگار اور دیگر سہولیات کے لیے ہجرت کرنا جائز ہے۔ وانما لکل امرء ما نوی انسان جس غرض و غایت کے لیے ہجرت کرے گا وہ مقاصد اس کو مل جائیں گے اور اس کا معاملہ اس کی نیت کے ساتھ ہے ۔ گویا انسان ہجرت کسی بھی مقصد کے لیے کر سکتا ہے

البتہ اس کا اجر و ثواب اس کی نیت کے ساتھ معلق ہے۔

COPIED.........

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.