Jump to content
اسلامی محفل
Sign in to follow this  
Mureed-e-Attar

Quran perhne mein ghalti

Recommended Posts

مرید عطار۔۔۔

آپ نے بہت اہم موضوع پر قلم اٹھایا۔۔ ماشآءاللہ۔۔۔

قارئین پہ یہ بھی تو واضح فرمائیے کہ۔۔۔۔

 

اگر کوئی ولاالضآلین کو والاالدآلین۔۔۔ یعنی ضآد کے بجائے دآل کو موٹا کرکے پڑھے تو۔۔۔

۔1۔۔ اس کا تلاوت کرنا کیسا ہے۔۔

۔2۔۔ نماز میں کیا فرق پڑے گا۔۔

 

بینوا توجروا۔۔ بیان فرمایئے اجر دیئے جاؤگے۔۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

اگر کوئی ولاالضآلین کو والاالدآلین۔۔۔ یعنی ضآد کے بجائے دآل کو موٹا کرکے پڑھے تو۔۔۔

۔1۔۔ اس کا تلاوت کرنا کیسا ہے۔۔

۔2۔۔ نماز میں کیا فرق پڑے گا۔۔

 

بینوا توجروا۔۔ بیان فرمایئے اجر دیئے جاؤگے۔۔

 

 

 

 

آپ نے جو سوال کیا ہے بھائی اس کا جواب دینے کی کوشش کر رہا ہوں۔

بھائی قرآن کو غلط تلفظ کرنا بےشک غلط ہے۔اور ان غلطیوں سے ایمان جانے کا بھی اندیشہ ہے۔جیسے۔۔۔

post-1375-1193679545.gif

post-1375-1193679564.gif سورۃ فاتح کی اس آیت کو اگر

ایسے پڑھ دیں تو بندہ دائرہ اسلام سے خارج ہو جاتا ہے۔

صرف " ّ" نہ پڑھنے سے۔ لحن خفی سخت قبیح ہے۔

اسی طرح

post-1375-1193679581.gif

معنی: پھر بے شک ضرور اس دن تم سے نعمتوں سے پرسش ہوگی

اس آیت میں ل کو زیادہ کھینچ کے پڑھ دیں تواس کے معنی "پھر بے شک ضرور اس دن تم سے نعمتوں سے پرسش نہ ہوگی" ہوجائیں گے اور بندہ دائرہ اسلام سے خارج ہو جائے گا۔ کیونکہ لَ کے معنی "نہ" کے ہیں۔

 

اِس آیت میں صرف کھینچنے پر بندہ دائرہ اسلام سے خارج ہے تو اگر "ض" کو "د" پڑھیں گے تو۔۔۔۔۔۔

 

اللہ کرے کہ آپ کے سوالات کا جواب آپ کو مل گایا ہو۔

آپ کی دعواؤں کا طلب گار

Edited by Sag-e-Attar

Share this post


Link to post
Share on other sites

(salam)

۔۔ اگر ایاک پر تشدید نہ کی تو مطلب کیا بنے گا؟ (ja)

(bis)

(wasalam)

اگر ایاک پر تشدید نہ کی تو اس کا معنی ہاں سے نہ کے ہو جائیں گے- اس آیت کا معنی ہے"ہم تجھی کو پوجیں اور تجھی سے مدد چاہیں" تو اگر ایاک پر تشدید نہ کی تو اس کا مفہوم یہ ہو جائے گا کہ "ہم تجھی کو نہ پوجیں اور تجھی سے مدد نہ چاہیں"۔

Edited by Sag-e-Attar

Share this post


Link to post
Share on other sites

(salam)

اگر ایاک پر تشدید نہ کی تو اس کا معنی ہاں سے نہ کے ہو جائیں گے- اس آیت کا معنی ہے"ہم تجھی کو پوجیں اور تجھی سے مدد چاہیں" تو اگر ایاک پر تشدید نہ کی تو اس کا مطلب ہو جائے گا کہ "ہم تجھی کو نہ پوجیں اور تجھی سے مدد نہ چاہیں

madina!!!

kia ap is baat ko mazeed clear karengay?

kis tarah se is kay manay ye hoay arabi qawaid ki roo se?

ap baraye madina is ka hawala bhi bayan kerdain

mujhay ummeed hay ap uljhan door farmaingay

jazakallah

wassalam ma'al ikram

Share this post


Link to post
Share on other sites

(salam)

Mohtaram Mureed-e-Attar Brother.. Bara-e-Karam Is Bat Ka Hawala Post Ker Dein. Kin Qawaid Ki Ro Sey Yahan Mani "Na" Mein Badal Jayen Gey.. Aap Ki Taraf Sey Jawab Ka Intezar Hai..

Wasalam Ma'Al Ikram

Share this post


Link to post
Share on other sites

salam.gif
Mureed-e-Attar bhayi.. Aapki Taraf Sey Hawala Ka Intezar Hai Mager Aap Ney Abhi Tak Post Nhin Kiya.. Bara-e-Karam Is Baat Ka Hawala Post Ker Dein.. Kiyon Key Aap Ney Woh Hukm Bayan Kiya Hai Jis Ko Bayan Kertey Howay Barey Barey Mufti Kayi Bar Sochtey Hain Aur Is Hukm Key Tu Aisay Masail Hain Key Aam Aadmi Perhey Tu Sir Chakra Jaye..

Main Ney Khud Apney Tor Per Iski Malomat Ki Hain.. 3 Madani Ulema-e-Karam Ney Fermaya Hai Key Yahan Maani Nafi Mein Nhin Badley Ga..
Abu Anwaar Raza Maulana Muhammad Faraz Madani, Maulana Abdul Qayoom Madani, Maulana Muhammad Rizwan Madani..

Is Liye Aap Hawala Zaror Post Kerein Takey Malom Hoo Key Kis Qaidey Ki Roo Sey Yahan Maana Badal Jaye Ga.
Wasalam Ma'Al Ikram

Share this post


Link to post
Share on other sites

(salam)

Bhai main ne Apni masjid k IMAM se is bare men pocha tha unhon ne bataya tha k mani nafi men ho jain ge.Is bare men jab umm-e-anwar ne pocha to mujhe un k pass jana tha but wo derasal ijtema ki masrofiyat thin. is leye un(IMAM SAHAB) se mulaqat nahi hoi.main kal bhi gaya tha un k pass but wo abhi tak wapis nahi i hain.INSHALLAH wo jese ain ge main un se poch ker post keron ga. Ap log plz saber karain main zaroor is ka ans pata ker k bataon ga. Ho sakta hai k mere sune men ya un k batane men galti ho gai ho.INSHALLAH bahoot jald confirm ker k batata hon.

Share this post


Link to post
Share on other sites

(salam)

Sag-e-Attar bhai main ne is ka ans "Mufti Asif Abdullah sahab" se pocha hai to unhon ne ye bataya hai k ager tajdeed koi jan bojh ker hatai ga to daira-e-Islam se kharij ho jai ga. but is k meaning "na" k nahi bante. Han jo samajh ae is k meaning to us se ye pata chala k tajdeed k bagair perhne se Allah ki teraf jo ibadat ka ishara hai wo khatam ho jai ga.yani "ہم تجھی کو پوجیں " to yahan تجھ yani Allah k leye istemal ho raha hai to تجھ yahan khatam ho jai ga.to isi leye is k meaning change ho jain ge or jan bojh ker perhne wala daira-e-islam se kharij ho jai ga.

 

to jo samjh aya to wo ye aya k is k meaning to nahi but jahan tak meri aqal kehti hai mafhoom yehi bane ga k hum khas Allah ki ibadat nahi kerte.

 

Wahan main ne meaning likh diye wo mujh se galti ho gai.Ager app logon ne galti pakar li thi to foran us ki islah ker dete. khair ager is men koi islah hai to plz meri islah fermaiye ga. Q k main koi Mufti ya Alim to hon nahi poch poch ker hi likhta hon.may be unhon ne mujhe mafhoom bataya ho or main meaning samajh betha.app ne is per nazar-e-sani ki bahoot bahoot shukriya.

 

mujhe ager ho sake to ye bata dejye ga k main ne wahan meaning use kia hai to is terah likh dene se daira-e-islam se kharij hone ka khadsha hai ya nahi?????

Share this post


Link to post
Share on other sites

(wasalam)

Pyarey Bhayi Kiya Mufti Sahib Ney Yahi Kaha Key IYYAKA Ki Tashdeed Tujh Ki Jaga Hai.. Ager Hat Gayi Tu Kafir Ho Jaye Ga?

 

Mujhey Jo Malom Howa Hai Us Key Mutabiq.. IYYAKA Mein Tashdeed (yani 2 Yaa) ki Wajah Sirf Khasosiat Ka Izhar Kerna Hai.. Yani Khas Teri Ebadat Kertey Hain.. Is Tashdeed Key Zameer Sey Allah (azw) Ki Taraf Khas Nisbat Kerna Hai.. Ager Hat Gayi Tu Tujh ya Tu Phir Bhi Baqi Rahay Ga.. Sirf Khas Mein Kami Aajaye Gi.. Aur Jahan Tak Jaan Bojh Ker Perhney Ki Baat Hai.. Wahan Tu Masla Samajh Mein Aaraha Hai.. Key Ager Koi Matlab Jantey Howay Bhi Allah (azw) Ki Azmat Key Liye Mojod Zameer Hata Dey Ga Tu Hukm Lagey Ga... Mager Yahan Tu Awaam Ka Yeh Haal Hai Key Tashdeed Tu Door Tajweed Ka Bhi Nhin Pata Key Kiya Cheez Hoti Hai.. Urdu Wali Alif Bey Tey Perhtey Hain.. Aur Kahan Meanings...

 

Aap Ki Mufti Sahib Sey Dobarah Mulaqat Hoo Tu Phir Poch Lejiye Ga Key Kiya Tashdeed Key Hatney Sey Lafz Tujh ya Tu Hi Khatam Ho Jaye Ga Ya Sirf Khasiat?

 

Wasalam Ma'Al Ikram

Share this post


Link to post
Share on other sites

(salam)

pyaray mohtaram islami bhai!

mazkoora mas alay per kafi taweel hamari baat chal chuki hay

baat ye hay meray bhai k zabani poochi hoi baton se behter hay k tehreeri hawalay k sath baat naqal ki jaye k sharai masail mein zara si be ahtiati insan ko kahan se kahan ponhchadeti hay.

mazkooray mas alay per main bahar e shariat ka aik page attech ker raha hoon jis se zahir to yehi hota hay k mas ala e mazkoor se yani iyyaka ko iyaka parhnay se koi musalman daira e islam se kharij nahi hota ap is page ka print out ker k mohtaram mufti asif abdullah sahib madda zilluhul ali ki khidmat men paishker k mas ala deryaft karen yaqeenan wo mufti sahib hain hamaray ser k taj hain un se arz karen k hamari uljhan ko door farmain or hamari islah farmain:

post-1061-1194394788.gif

 

post-1061-1194394806.gif

madina!

is masalay k baray mein sahib e bahar e shariat (ra) farmatay hain k tashdeed ko takhfeef se parhna yani tashdeed ko hatadenay se bhi namaz fasid nahi hogi to daira e islam se kharij hojana to bohat door ki baat hay.

is k ilawa jahan tak meri naqis maloomat hain arabi qawaid ki roo se ka ki zameer lafz too k liye istimal hoti hay ager ye zameer hatadi jaye bilfarz phir to manon men fasad ajayega k idabat ki nisbat jo mabood ki taraf ki jarahi hay wo khatam hojayegi, baharhal ye meri naqis maloomat hain ap is silsilsy men mufti asif sahib se jald rabta farmain ham un k qadmon ki khak hain yaqeenan wohi ziada behter rehnumai farmasaktay hain.

yahan forum per is taweel behes ka maqsad kisi ki dil azari nahi bal k hamara asal maqsad apni or sari dunya k logon ki islah ki koshish kerna hay neez tamam members is baat ka khas khayal rakhain k suni sunai baton ko yahan naqal na karen bal k tehreeri hawala jat k sath naql karen.

ummeed hay ap naraz nahi hongay.

wassalam o alaikum warahmatullah

Edited by ABU ANWAAR RAZA

Share this post


Link to post
Share on other sites
1. iyyaka ko iyaka parhnay se koi musalman daira e islam se kharij nahi hota ap is page ka print out ker k mohtaram mufti asif abdullah sahib madda zilluhul ali ki khidmat men paishker k mas ala deryaft karen.

2. tashdeed ko takhfeef se parhna yani tashdeed ko hatadenay se bhi namaz fasid nahi hogi to daira e islam se kharij hojana to bohat door ki baat hay.

پیارے ابو انوار۔۔۔ صاحبِ بہار شریعت کی مراد معاذ اللہ یہ نہیں کہ تمام تشدید کو تخفیف پڑھنے سے نماز ہوجاتی ہے۔۔۔ انہوں نے باقاعدہ نشاندہی فرمائی ہے کہ ان ان جگہوں پر تخفیف کی چھوٹ ہے۔۔ وہ بھی اس صورت میں کہ تشدید لاکھ کوشش کے باوجود ادا نہ کر پاتا ہو۔۔۔ ورنہ تشدید صحیح پڑھنے پہ قدرت رکھنے کے باوجود جان بوجھ کر اگر تخفیف کی تو یہ قرآن میں تحریف کرنا کہلائے گی۔۔۔ جو کہ حرام ہے۔۔

لیکن بہر حال ہمارے پیارے مرید عطار کو مفتی صاحب سے دوبارہ ملاقات کرنی چاہیئے۔۔۔ انہوں نے اوپر صریح غلطی کی ہے۔۔ تو میرے خیال میں۔۔ اس سے انکی سماعت پہ تو بھروسہ نہیں کیا جاسکتا۔۔ البتہ مفتی صاحب کی علمی قابلیت کو الزام ٹھہرانا کسی طور درست نہیں۔۔۔

Edited by Qaseem

Share this post


Link to post
Share on other sites

پیارے ابو انوار۔۔۔ صاحبِ بہار شریعت کی مراد معاذ اللہ یہ نہیں کہ تمام تشدید کو تخفیف پڑھنے سے نماز ہوجاتی ہے۔۔۔ انہوں نے باقاعدہ نشاندہی فرمائی ہے کہ ان ان جگہوں پر تخفیف کی چھوٹ ہے۔۔ وہ بھی اس صورت میں کہ تشدید لاکھ کوشش کے باوجود ادا نہ کر پاتا ہو۔۔۔ ورنہ تشدید صحیح پڑھنے پہ قدرت رکھنے کے باوجود جان بوجھ کر اگر تخفیف کی تو یہ قرآن میں تحریف کرنا کہلائے گی۔۔۔ جو کہ حرام ہے۔۔

 

 

اسلام و علیکم،

 

پیارے بھا ئی ، ابو انوار رضا بھائی نے تشدید کے جو تخفیف کرنے کا لکھا ہے اُس سے معلوم ہورہا ہے کہ انہوں نے مندرجہ بالا حوالہ جات کے بارے میں ہی فرمایا ہے۔ مزید وہاں درج ہے کہ معنی فاسد ہونے پر نماز کا دارومدار ہے۔ اور آگے لکھاہے کہ تشدید نہ کی تو نماز ہوجائے گی۔ کوشش و قدرت کے متعلق آپ نے فرمایا اس کی وضاحت فرما دیں۔

 

 

 

جہاں تک قدرت رکھنے کے باوجود جان بوجھ کر پڑھنے کی بات ہے تو اُس پر تو واقعی مفتیان کرام حکم بیان فرمائیں گے۔ البتہ یہاں توآج کل حُفاظ مصلح جو سناتے ہیں وہ بھی جلدی میں یہ غلطی کر جاتے ہونگے۔ مگر اُن کی یہ غلطی جان بوجھ کر تو نہیں کہلائے گی۔ البتہ اتنا تیز قرآن پاک پڑھنا جائز نہیں۔ جان بوجھ کر تو غالباً وہی غلطی کہلائے گی کہ معنی بھی پتہ ہوں اور تشدیدپڑھنا بھی یاد ہو پھر بھی چھوڑ دے۔

 

 

 

بے شک مفتیان کرام ہمارے سروں کے تاج ہیں۔ اسلئے ابوانوار رضا محمد فراز عطاری مدنی صاحب نے دوبارہ معلوم کرنے کا لکھا ہے۔ اور اُن کی علمی قابلیت کا بھی اعتراف کیا ہے۔

 

 

 

میں نے جامعۃ المدینہ ڈی آئی خان کے صدر المدرس مولانا محمد شعیب شاہ عطاری مدنی صاحب سے یہی مسئلہ معلوم کیا ہے۔ انہوں‌نے بھی یہی فرمایا کہ تشدید خاص تیری کیلئے آیا ہے۔ تشدید نہ پڑھی تو تیری یا تجھ نہیں‌ ہٹے گا۔ اور اگر ہٹے گا یا معنی کچھ کا کچھ ہو جائے تو اس کیلئے عربی لغت سے دلیل چاہیے۔ اور اگر بالفرض ہٹ جائے تو معنیٰ بنے گا۔ عبادت کرتے ہیں اور مدد چاہتے ہیں۔ تو پھر بھی یہاں نسبت تو اللہ عزوجل کی طرف رہے گی۔ ہاں اگر جان بوجھ کر غلط پڑھتا ہے تو پھر گناہگار ہے۔

 

 

 

میرے محترم اسلامی محفل کے ممبرز، یہاں اس مسئلے پر کسی کی دل آزاری یا توہین کرنا مقصود نہیں ہے۔ بلکہ اصل مسئلہ کا حل جاننا مقصود ہے۔ اور ظاہر ہے ہم سیکھنے آئے ہیں۔ اور اپنے مدنی مقصد کے مطابق سب سے پہلے اپنی اصلاح کرنی ہے۔

 

 

 

اور بالفرض‌علمائے کرام میں معنیٰ پر اختلاف آئے یا حکم میں اختلاف آئے تو یہ کوئی نئی بات نہیں ہے۔ اور نہ ہی اس میں کسی کی علمیت پر حرف آئے گا۔ ظاہر ہے وہ عالم ہیں اور دلیلِ شرعی رکھتے ہیں۔ امیر اہلسنت دامت برکاتھم عالیہ سے سوال پوچھا گیا کہ کیا ایسا ہوسکتا ہے کہ ایک جملہ کو ایک مفتی کفر کہے اور دوسرا نہ کہے؟ تو آپ نے فرمایا بالکل ہوتا ہے ایسا۔۔۔۔ تفصیلی جواب کفریہ کلمات کے مدنی مزاکروں میں ہے۔‌

 

والسلام مع الاکرام

 

Edited by Sag-e-Attar

Share this post


Link to post
Share on other sites

تشدید صحیح پڑھنے پہ قدرت رکھنے کے باوجود جان بوجھ کر اگر تخفیف کی تو یہ قرآن میں تحریف کرنا کہلائے گی۔۔۔ جو کہ حرام ہے۔۔

ولاحول ولا قوۃ الا باللہ۔۔

سب سے پہلے تو میں مذکورہ قول میں جو حرام کا حکم معاذاللہ میں نے لگادیا ہے۔۔ میں اس سے رجوع کرتا ہوں۔۔۔ اور ان تمام ممبران یا گیسٹ قارئین سے جنہوں نے اسے پڑھا۔۔۔ ان سب سے معافی چاہتا ہوں۔۔ امید قوی ہے کہ سب معاف فرمادینگے۔۔۔

رجوع اس بنا پر کررہا ہوں کہ مجھے کتابوں سے اس حکم کی دلیل مل نہ سکی۔۔۔ اور چونکہ میری اگلی پوسٹ سے واضح ہوجائے گا کہ یہ حکم تو دراصل ہلکا تھا۔۔۔ کیونکہ جان بوجھکر قرآن کو غلط پڑھنے سے کم تر درجہ پہ سیدی اعلیحضرت نے حرام کا حکم لگایا ہے۔۔۔ تو خود جان بوجھکر غلط پڑھنے کا حکم تو اس سے بھی سخت ہوگا۔۔ جو کہ مجھے کتابوں میں مل نہیں رہا۔۔۔

برائے مدینہ اگر کسی بھائی کو جان بوجھکر غلط پڑھنے کا حکم معلوم ہو تو ضرور نقل فرمائے۔۔۔

یہاں تو آج کل حُفاظ مصلح جو سناتے ہیں وہ بھی جلدی میں یہ غلطی کر جاتے ہونگے۔ مگر اُن کی یہ غلطی جان بوجھ کر تو نہیں کہلائے گی۔ البتہ اتنا تیز قرآن پاک پڑھنا جائز نہیں۔

ارے دیوانے۔۔ ایک بات تو بولو۔۔ ایک طرف آپ کہتے ہوکہ جلدی میں غلطی نہیں کہلائے گی۔۔ دوسری طرف کہتے ہو کہ یہ جائز بھی نہیں۔۔۔ یہ جائز نہیں تبھی تو غلطی ہے۔۔ اور وہ بھی لحن جلی۔۔ یعنی بڑی غلطی۔۔۔ جو کہ حرام ہے۔۔۔ کہ حرف کو حرف سے بدل دیا۔۔۔ حرکت کو حرکت سے بدل دیا۔۔ ساکن کو متحرک۔۔ یا متحرک کو ساکن کردیا۔۔ کسی حرف کو بڑھا گھٹا دیا۔۔۔ مشدد کو مخفف۔۔ یا مخفف کو مشدد پڑھ دیا۔۔ مد لازم اور مد متصل میں قصر یعنی ایک الف سے زیادہ نہیں کھینچا۔۔ یہ سب بڑی غلطیاں ہیں۔۔۔ چاہے حافظ کرے یا غیر حافظ۔۔۔ چاہے تیز پڑھے یا آہستہ۔۔۔ معذرت کے ساتھ۔۔ ایڈمن۔۔۔ ناراض نہیں ہونا۔۔۔

رہ گیا جان بوجھ کر پڑھنے مسئلہ تو کوئی بھائی یا بہن اسکا حکم نقل فرمادے تو مدینہ مدینہ۔۔۔

Edited by Qaseem

Share this post


Link to post
Share on other sites

قرآن عظیم کو درست پڑھنا۔۔۔ یعنی علم التجوید کے قواعد کا لحاظ رکھتے ہوئے پڑھنا کتنا ضروری ہے۔۔۔ جامعۃ المدینہ کے معلم مولانا محمد ہاشم عطاری المدنی کی تحریرکردہ کتاب بنام نصاب التجوید جسے المدینۃ العلمیہ نے پیش کیا ہے۔۔۔ اس کے مندرجہ ذیل چند ضروری نکات پڑھکر اسکا اندازہ ان شآءاللہ آپ بآسانی لگا سکیں گے۔۔ اور ہمارے ایڈمن بھی اپنے سوالات کے جوابات اپنی کوشش سے ان شآءاللہ ڈھونڈ سکیں گے۔۔۔

علم التجوید کی تعریف۔۔

علم التجوید اس علم کا نام ہے جس میں حروف کے مخارج اور انکی صفات کی تصحیح و تحسین یعنی صحیح اور خوبصورت کرنے کے بارے میں بحث کی جاتی ہے۔۔

علم التجوید کا حکم۔۔

اس علم کے فقط حاصل کرنے کا حکم یہ ہے کہ۔۔ تفصیل سے یہ علم حاصل کرنا فرض کفایۃ ہے۔۔ یعنی گلی محلہ میں سے کسی ایک کا بھی تفصیل سے حاصل کرلینا سب سے فرض ساقط کردے گا ورنہ سب گنہگار ہوئے۔۔

اور رہی تلاوت کی بات۔۔ تو قرآن پاک کو نازل شدہ طریقے کے موافق۔۔ تجوید کے ساتھ پڑھنا فرض ِعین ہے۔۔۔

فرمان اعلیحضرت۔۔۔

چنانچہ سیدی اعلیحضرت امام احمد رضا خان فرماتے ہیں۔۔۔

اتنی تجوید سیکھنا۔۔ کہ ہر حرف دوسرے حرف سے صحیح ممتاز ہو۔۔ فرض عین ہے۔۔۔ بغیر اسکے نماز قطعًا باطل ہے۔۔۔ عوام بےچاروں کو جانے دیجئے خواص کہلانے والوں کو دیکھئے۔۔ کہ کتنے اس فرض پر عامل ہیں۔۔ میں نے اپنی آنکھوں سے دیکھا۔۔ اور کانوں سے سنا۔۔ کتنے علماء کو، مفتیوں کو، مُدرّسوں کو، مصنفوں کو۔۔۔ کہ۔۔

۔1۔۔ قل ھو اللہ احد۔۔ میں۔۔ احد۔۔ کو۔۔ اھد۔۔ پڑھتے ہیں، اور۔۔

۔2۔۔ سورۃ المنافقون میں۔۔ یحسَبون کلّ صیحۃٍ علیھم۔۔۔ میں۔۔ یعسِبون۔۔ پڑھتے ہیں۔۔

۔3۔۔ ھم العدوّ فاحذرھم۔۔۔ کی جگہ۔۔ فاعذرھم۔۔۔ پڑھتے ہیں۔۔

۔4۔۔ وھوالعزیز۔۔۔ کی جگہ۔۔۔ ھوالعذیذ۔۔۔ پڑھتے ہیں۔۔۔

۔5۔۔ بلکہ ایک صاحب کو۔۔ الحمد شریف میں۔۔ صراط الذین۔۔۔ کی جگہ۔۔ صراط الظین۔۔۔ پڑھتے سنا۔۔

کس کس کی شکایت کی جائے۔۔ یہ حال اکابر کا ہے۔۔ پھر عوام بےچاروں کی کیا گنتی۔۔۔ کیا شریعت ان کی بے پروائیوں کے سبب اپنے احکام منسوخ فرمادے گی۔۔ نہیں نہیں۔۔ ان ِالحُکمُ الا ِللہ۔۔۔ ترجمہ کنزالایمان۔۔ حکم نہیں مگر اللہ کا۔۔

ولا حول ولا قوۃ الا باللہ العلی العظیم۔۔۔ واللہ سبحانہ وتعالٰی اعلم۔۔۔

۔۔۔۔فتاوٰی رضویہ، ج۔3، ص۔253، مطبوعہ رضا فاؤنڈیشن، لاھور۔۔۔۔

فرمان صدرالشریعہ صاحب بہارشریعت۔۔۔

صدرالشریعہ مولانا مفتی امجد علی اعظمی فرماتے ہیں۔۔

جس سے صحیح حروف ادا نہیں ہوتے اس کے لئے تھوڑی دیر مشق کرلینا کافی نہیں۔۔۔ بلکہ لازم ہے کہ۔۔

۔1۔۔ انہیں سیکھنے کے لئے رات دن پوری کوشش کرے۔۔ اور اگر صحیح پڑھنے والوں کے پیچھے نماز پڑھ سکتا ہے تو فرض ہے کہ ان کے پیچھے نماز پڑھے۔۔

۔2۔۔ یا وہ آیتیں پڑھے جن کے حروف صحیح ادا کرسکتا ہو۔۔۔

اور یہ دونوں صورتیں ناممکن ہو تو زمانہء کوشش۔۔ یعنی دن رات سیکھنے کی کوشش کے زمانے میں اسکی اپنی نماز ہوجائے گی۔۔۔

آج کل کافی لوگ اس مرض میں مبتلاء ہیں۔۔ نہ انہیں قرآن صحیح پڑھنا آتا ہے۔۔ نہ سیکھنے کی کوشش کرتے ہیں۔۔ یاد رکھیں اس طرح نمازیں برباد ہوتی ہیں۔۔۔

۔۔۔۔بہارشریعت، حصہ۔3، ص۔214، مطبوعہ شبیر برادرز، لاھور۔۔۔۔

فرمان امیراہلسنت۔۔۔

شیخ طریقت امیراہلسنت مولانا الیاس عطار قادری صاحب فرماتے ہیں۔۔۔

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیوں۔۔۔ واقعی وہ مسلمان بڑا بد نصیب ہے جو درست قرآن شریف پڑھنا نہیں سیکھتا۔۔۔

۔۔۔۔رسائل عطاریہ حصہ۔1، ص۔81، مطبوعہ مکتبۃ المدینہ، کراچی۔۔۔۔

اب ذرا لحن یعنی تلاوت میں غلطی کا بیان بھی دیکھ لیا جائے۔۔ جسکے اصطلاحی معنٰی یہ ہیں کہ۔۔ علم التجوید کے خلاف پڑھنا۔۔۔ یا قرآن کریم کی مروجہ سترہ۔17۔ قراتوں سے الگ ہوجانا۔۔۔ یا عربوں کے لہجے سے ہٹ جانا۔۔۔

لحن کی دو۔2۔ اقسام ہیں۔۔

۔1۔ لحن جلی۔۔ یعنی بڑی اور ظاہر غلطی۔۔۔ اس سے معنی فاسد ہوجاتے ہیں۔۔ اور یہ حرام ہے۔۔

۔2۔ لحن خفی۔۔ یعنی چھوٹی اور پوشیدہ غلطی۔۔۔ اس سے معنی فاسد نہیں ہوتے۔۔ مگر مکروہ و ناپسندیدہ غلطی ہے۔۔ شرعًا اس سے بچنا مستحب ہے۔۔

لحن جلی کا حکم۔۔۔

سیدی اعلیحضرت فتاوٰی بزازیہ کے حوالے سے فرماتے ہیں۔۔۔

انّ اللحن حرام بلا خلاف۔۔۔۔ یعنی بےشک لحن جلی حرام ہے اس میں کسی کو اختلاف نہیں۔۔۔

۔۔۔۔فتاوٰی رضویہ، ص۔262، ج۔6، مطبوعہ رضا فاؤنڈیشن، لاھور۔۔۔۔

چنانچہ نماز میں لحن جلی ہوئی تو نماز بھی یقینا فاسد ہو گئی۔۔۔

لحن جلی کی صورتیں۔۔۔

اس کی ۔6۔ صورتوں میں سے پانچویں ملاحظہ ہو۔۔

۔5۔ مخفف کو مشدد۔۔ اور مشدد کو مخفف پڑھنا لحن جلی ہے۔۔ جیسے۔۔

کذ َبَ۔۔۔ کو۔۔ کذ َّبَ۔۔۔ پڑھنا۔۔ یا۔۔۔

صدَّقَ۔۔۔ کو۔۔ صد َقَ۔۔۔ پڑھنا۔

نیز۔۔ ابی لھبٍ وّ تبَّ۔۔۔ میں۔۔ وَ تبَّ۔۔ کو وقف میں خیال نہ کرنے سے۔۔ وَ تب۔۔ ہوجاتا ہے، جوکہ لحن جلی ہے۔۔

________________________

Edited by Qaseem

Share this post


Link to post
Share on other sites

<span style="line-height: 150%">

]اسلام و علیکم،

سب سے پہلے میں یہ لکھنا چاہوں گا کہ ٹاپک کا رُخ بدل گیا ہے۔ جس مسئلے کے حل کے لئے جواب مانگا گیا تھا اُس پر بات نہیں ہو رہی۔ مسئلہ ہے ۔۔ ایاک

 

ایڈمن۔۔۔ ناراض نہیں ہونا۔۔۔

 

شرعی مسئلے پر ناراضگی کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔اور مجھے پہلے اپنی اصلاح کی کوشش کرنی ہے۔ انشاء اللہ عزوجل

 

دیوانے۔۔ ایک بات تو بولو۔۔ ایک طرف آپ کہتے ہوکہ جلدی میں غلطی نہیں کہلائے گی۔۔ دوسری طرف کہتے ہو کہ یہ جائز بھی نہیں۔۔۔ یہ جائز نہیں تبھی تو غلطی ہے۔۔ اور وہ بھی لحن جلی۔۔ یعنی بڑی غلطی۔۔۔ جو کہ حرام ہے۔۔۔

 

آپ میری بات کو نہیں سمجھے۔۔ میرا مطلب تھا کہ حُفاظ غلطی کر جائیں گے۔۔ یعنی غلطی تو وہ کریں گے مگر اُن کی یہ غلطی جان بوجھ کر نہیں کہلائی جا سکتی۔۔ اور ایسی غلطی کو جان پر کر کہنے کا حکم تو کوئی مفتی صاحب بھی نہیں لگائیں گے۔ کیونکہ جان بوجھ کر غلطی کا معاملہ دل کے ساتھ ہے اور دل کے حال پر حکم نہیں لگایا جاتا۔

 

آپ نے تجوید پر جواب تحریر فرمایا۔۔ معلومات میں اضافہ ہوا۔۔جزاک اللہ خیرا۔۔ مجھے اُس مضمون سے کوئی بھی اختلاف نہیں ہے۔۔ البتہ ایک بات آپ نے لکھی ہے جو اقتباس میں بھی موجود ہے۔ کہ لحن جلی ۔۔ یعنی بڑی غلطی۔۔ جوکہ حرام ہے۔۔ تو دیگر مشدد الفاظ پر بحث نہیں ہو رہی۔ بات ہورہی تھی ایاک پر کہ اس کواسی طرح مخفف پڑھا گیا تو کیا حکم ہوگا؟ یعنی بوجہ لحن جلی ۔۔ ایاک کو تخفیف سے پڑھا تو نماز فاسد ہو گئی۔۔ کیونکہ یہی بات نصاب التجوید میں موجود ہے۔ جب کہ صدرالشریعہ بدرالطریقہ حضرت علامہ مولانا مفتی امجد علی اعظمی علیہ رحمۃ القوی فرماتے ہیں کہ ایَّاک کو ایاک پڑھا تو نماز ہو جائے گی۔ یعنی یہاں لحن جلی نہیں ہے۔

 

اور اگر لحن جلی ہے اور نماز فاسد ہو جائیگی تو آپ اس کی دلیل کوئی تحریری فتوٰی پوسٹ کر دیں۔ جوکہ ایاک کی بحث پر ہو ۔۔ ہر مشدد لفظ پر نہیں۔ پھر ہمیں یہ معلوم ہو جائے گا کہ مسئلہ اختلافی ہے۔ بعض علماء کے نزدیک نماز ہوجاتی ہے بعض علماء کے نزدیک نہیں ہوتی۔

 

مزید ایک حکم بھی تحریر کیا گیا تھا کہ یہ کفر ہے۔ اور اس حکم میں انجان یا جان بوجھ کر پڑھنے کا بھی ذکر نہیں ہے۔ اب کفر کا دارومدار تو معنیٰ پر ہے۔ تو اس کہ متعلق بھی اگر کوئی فتوٰی پوسٹ کر دیں کہ جان بوجھ کر پرھا تو کفر ہوگا یا دونوں صورتوں میں کفر ہوگا۔۔۔ تو مسئلہ مکمل حل ہوجائے گا۔

</span>

Share this post


Link to post
Share on other sites

آپ میری بات کو نہیں سمجھے۔۔ میرا مطلب تھا کہ حُفاظ غلطی کر جائیں گے۔۔ یعنی غلطی تو وہ کریں گے مگر اُن کی یہ غلطی جان بوجھ کر نہیں کہلائی جا سکتی۔۔ اور ایسی غلطی کو جان پر کر کہنے کا حکم تو کوئی مفتی صاحب بھی نہیں لگائیں گے۔ کیونکہ جان بوجھ کر غلطی کا معاملہ دل کے ساتھ ہے اور دل کے حال پر حکم نہیں لگایا جاتا۔

السلام علیکم۔۔ کون کس کی بات کو کتنا سمجھا۔۔ یہ تو اللہ بہتر جانتا ہے۔۔ اور آپکی اس بات سے ٪100 متفق ہوں کہ شریعت ظاہر پہ حکم لگاتی ہے۔۔ باطن پہ نہیں۔۔ لیکن آپ حفاظ کی بات کرتے ہیں تو سنیں۔۔ ایک شخص جسے پہلے ناظرہ پڑھایا گیا۔۔ باربار اسے سمجھایا گیا کہ یہ قرآن عظیم ہے۔۔ اسے پڑھنے کے یہ آداب ہیں۔۔ بیٹا آہستہ پڑھا کرو۔۔ تیز پڑھنے سے الفاظ صحیح ادا نہ ہونے کا احتمال رہتا ہے۔۔ ناظرہ سے لیکر حفظ مکمل ہونے تک۔۔ اس پر درست ادائیگی کی ذمہ داریوں میں بتدریج اضافہ ہوتا جاتا ہے۔۔ تو دیوانے ہونا تو یہ چاہیئے کہ وہ ذمہ داریوں کو احسن طریق پہ نبھائے۔۔ لیکن سبقی منزل سنانے میں تو درکنار۔۔ تراویح کی جماعت کے لئے امام کے درجے پہ فائز ہوکر بھی۔۔ قربانی کے پہلے دن کے قصائی کی طرح۔۔ محض اپنا وقت بچانے کے لئے۔۔ معاذاللہ اگر ایسی صریح غلطیاں کرے۔۔ تو کیا پھر بھی ایسے پہ کھلی اور جان بوجھکرغلطی کا حکم نہیں لگےگا۔۔۔ آیا کیا وہ دل میں پڑھ رہا ہے۔۔ یا مقتدی بےچارے بہرے ہیں۔۔ جو یہ دل کا معاملہ ہے۔۔

نیز یہ حکم اسی وقت لگے گا جب اس کے پڑھنے میں وہ ۔6۔ صورتیں نہ بنیں۔۔ کہ جنکی چھوٹ صدرالشریعہ نے قراءت میں غلطی ہوجانے کے بیان میں واضح فرمادی ہیں۔۔ تو اگر وہ صورتیں بنیں تو اب لحن خفی ہوگی۔۔ جس سے معنیٰ تو فاسد نہ ہونگے۔۔ البتہ یہ فعل بھی بہت قبیح ہے۔۔ جیساکہ اسی بیان میں بتایا گیا ہے۔۔۔ دیکھئے ابو انوار صاحب کی پوسٹ۔۔۔ اب یہ نہیں کہئے گا کہ آپ سمجھے نہیں میرا مطلب کچھ اور تھا۔۔

ایک بات آپ نے لکھی ہے جو اقتباس میں بھی موجود ہے۔ کہ لحن جلی ۔۔ یعنی بڑی غلطی۔۔ جوکہ حرام ہے۔۔ تو دیگر مشدد الفاظ پر بحث نہیں ہو رہی۔ بات ہورہی تھی ایاک پر کہ اس کواسی طرح مخفف پڑھا گیا تو کیا حکم ہوگا؟ یعنی بوجہ لحن جلی ۔۔ ایاک کو تخفیف سے پڑھا تو نماز فاسد ہو گئی۔۔ کیونکہ یہی بات نصاب التجوید میں موجود ہے۔ جب کہ صدرالشریعہ بدرالطریقہ حضرت علامہ مولانا مفتی امجد علی اعظمی علیہ رحمۃ القوی فرماتے ہیں کہ ایَّاک کو ایاک پڑھا تو نماز ہو جائے گی۔ یعنی یہاں لحن جلی نہیں ہے۔

ایاک۔۔ ان ہی صورتوں میں سے ایک ہے۔۔ کہ جنہیں آپ ابو انوار صاحب کی پوسٹ میں دیکھ سکتے ہیں کہ صدرالشیعہ نے انہیں بیان فرمایا ہے۔۔۔ دراصل۔۔ ایاک۔۔ کی تشدید کی تخفیف معنٰی فاسد نہیں کرتی۔۔ چنانچہ یہ لحن جلی نہیں ہوئی۔۔ بلکہ لحن خفی ہوئی۔۔۔ اب آپ کے ذہن میں ایک اور سوال اٹھ سکتا ہے کہ مشدد کو مخفف۔۔ یا مخفف کو مشدد کرنا تو لحن جلی ہوتی ہے۔۔ تو صدرالشریعہ نے پھر علم التجوید کے قواعد سے آخر اختلاف کیوں فرمایا۔۔۔ تو گھبرانے کی کوئی بات نہیں ہے دیوانے۔۔ اس کا جواب بھی نیچے ہی دیا جائے گا۔۔ ان شآءاللہ۔۔

اور اگر لحن جلی ہے اور نماز فاسد ہو جائیگی تو آپ اس کی دلیل کوئی تحریری فتوٰی پوسٹ کر دیں۔ جوکہ ایاک کی بحث پر ہو ۔۔ ہر مشدد لفظ پر نہیں۔ پھر ہمیں یہ معلوم ہو جائے گا کہ مسئلہ اختلافی ہے۔ بعض علماء کے نزدیک نماز ہوجاتی ہے بعض علماء کے نزدیک نہیں ہوتی۔

جیساکہ اوپر ہی بتایا گیا ہے کہ۔۔ یہ لحن جلی نہیں۔۔ لہٰذا خفی ہے تو نماز بھی فاسد نہ ہوئی۔۔ اور مجھے تحریری فتوٰی نہ تو چاہیئے۔۔ اور نہ ہی پوسٹ کروں گا۔۔ جسے سمجھ نہیں وہ خود ہی فتوٰی لے۔۔ مجھ پر تو الحمد للہ یہ واضح ہوچکا ہے کہ۔۔ ایاک۔۔ کوئی اختلافی مسئلہ نہیں۔۔ یہ صدرالشریعہ کی بیان کردہ وہ شاذ و نادر صورتوں میں سے ایک ہے۔۔ جنکے لئے قواعد توڑاجانا جائز ہے۔۔ اب اس بات کی دلیل مجھ کم علم سے مت مانگئے۔۔ کسی مفتی صاحب کو کیا تکلیف دیجئے گا۔۔۔ درس نظامی کے سال اول کے سات آٹھ ماہ پڑھے ہوئے کسی سمجھدار طالبعلم سے ہی پوچھ لیجئے گا۔۔ کہ شاذ صورتیں کیا ہوتی ہیں۔۔

بہر حال پتہ یہ چلا دیوانے۔۔۔ کہ وہ صورتیں شاذ ہیں۔۔ اور مصنف کتاب نصاب التجوید نے یہ شاذ صورتیں طالبعلم کی ذہنی سطح کو دیکھتے ہوئے۔۔ نقل فرمانے کو مناسب نہ سمجھا۔۔ کہ بچے کا ذہن کہیں الجھن کا شکار نہ ہو جائے۔۔ چنانچہ ان صورتوں کو اگلے درجے کی بڑی اور مفصّل کتاب میں سمجھانے کا مصنف نے قصد فرما لیا ہوگا۔۔ لہذا نصاب التجوید اور صدرالشریعہ میں کوئی اختلاف نہیں۔۔۔ یہ ہماری اپنی کم علمی ہے جسے ہم اختلاف سمجھ رہے ہیں۔۔۔ واللہ تعالٰی اعلم۔۔

مزید ایک حکم بھی تحریر کیا گیا تھا کہ یہ کفر ہے۔ اور اس حکم میں انجان یا جان بوجھ کر پڑھنے کا بھی ذکر نہیں ہے۔ اب کفر کا دارومدار تو معنیٰ پر ہے۔ تو اس کہ متعلق بھی اگر کوئی فتوٰی پوسٹ کر دیں کہ جان بوجھ کر پرھا تو کفر ہوگا یا دونوں صورتوں میں کفر ہوگا۔۔۔ تو مسئلہ مکمل حل ہوجائے گا۔

اس ٹوپک کے پچلھے صفحے پر ایک سے بیس تک میں سے۔۔ میری جتنی بھی پوسٹ ہیں۔۔ ان میں کہیں بھی میں نے معاذاللہ کفر کا حکم کسی مسئلے پر نہیں لگایا۔۔۔ قارئین چیک کرسکتے ہیں۔۔۔ میں اس پر مزید بحث نہیں کرنا چاہتا۔۔ میرے خیال میں مسئلہ پہلے ہی واضح ہو گیا تھا۔۔ اس کو غیر ضروری طور پر طول دیا گیا۔۔ پھر کہتا ہوں کہ۔۔۔ مجھ پر یہ مسئلہ الحمدللہ واضح ہے۔۔ اگر کسی کو اب بھی کوئی مسئلہ درپیش ہے۔۔ تو قرآن عظیم کی آیۃ مبارکہ۔۔ فاسئلوا اھل الذکر ان کنتم لا تعلمون۔۔۔ یعنی۔۔۔ اہل علم سے پوچھو اگر تم نہیں جانتے ہو۔۔ کی رو سے یہاں بیٹھکر فتووں کا مطالبہ کرنے سے بہتر ہے کہ۔۔ خود محنت کرکے علماء سے پوچھا جائے۔۔

والسلام مع الکرام

Edited by Qaseem

Share this post


Link to post
Share on other sites

لحن جلی نہیں۔۔ لہٰذا خفی ہے تو نماز بھی فاسد نہ ہوئی

جزاک اللہ قسیم بھائی۔ شروع سے صرف یہی بات پوچھی گئی تھی اگر جواب پہلے مل جاتا تو بات لمبی نہ ہوتی۔ جب نماز ہی فاسد نہ ہوئی تو کفر کا تو سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔۔۔شاید آپ نے ٹاپک پورا چیک نہیں کیا ۔اور ابوانوار بھائی کی پوسٹ سے یہ سمجھا کہ ہم تشدید کو تخفیف پڑھنے کو جائز کہہ رہے ہیں۔ معاذ اللہ

 

ہم مرید عطار بھائی کی پوسٹ میں بیان کیے ہوئے مسئلہ کفر اور معنی \"نہ\" میں بدلنے پر پوچھ رہے تھا۔ کہ اُن کے پاس شاید اپنے بیان کردہ مؤقف پر کوئی دلیل ہو۔

 

کسی نے بھی تشدید کو تخفیف کرنے کو جائز نہیں لکھا۔ بلکہ سب مسئلہ کفر اور نماز ہونے نہ ہونے پر بات کر رہے تھے۔

 

اس لئے میرے تمام ممبرز یہ بات نوٹ فرما لیں کہ برائے مدینہ اسلامی محفل پر کوئی بھی شرعی مسئلہ بیان کریں بحوالہ پوسٹ کیا کریں۔۔۔ اپنی ذاتی رائے یا سنی سنائی بات پوسٹ نہ کیا کریں۔

 

والسلام مع الاکرام

Share this post


Link to post
Share on other sites
Guest
This topic is now closed to further replies.
Sign in to follow this  

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

×
×
  • Create New...