Jump to content
IslamiMehfil

حضرت دانیال عليه السلام والی حدیث سے حیات الانبیاء(عليه السلام)کاثبوت


Recommended Posts

حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کا عقیدہ
سیّدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے فرمایا
وَالْـأَرْضُ لَا تَأْکُلُ الْـأَنْبِیَائَ
ترجمہ : "اورزمین نبیوں (کے جسموں) کو نہیں کھاتی"
سندہ صحیح
[مصنّف ابن أبي شيبة: 27/13]

مکمل حدیث یہ ہے
سیّدنا انس بن مالک رضی الله عنه سے روایت ہے :
’’جب صحابہ کرام نے تستر کو فتح کیا، تو وہاں تابوت میں ایک شخص کا جسم دیکھا، ان کی ناک ہمارے ایک ہاتھ کے برابر تھی۔وہاں کے لوگ اس تابوت کے وسیلے سے غلبہ و بارش طلب کیا کرتے تھے۔ سیّدنا ابو موسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ نے امیر المومنین سیّدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کی طرف خط لکھ کر سارا واقعہ بیان کیا۔سیّدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ نے جواب میں لکھا کہ یہ اللہ تعالیٰ کے نبیوں میں سے ایک نبی ہیں۔نہ آگ نبی کو کھاتی ہے نہ زمین۔ پھر فرمایا:تم اور تمہارے ساتھی کوئی ایسی جگہ دیکھو جس کا تم دونوں کے علاوہ کسی کو علم نہ ہو، وہاں اس تابوت کو دفن کر دو۔سیّدنا انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں:میں اور سیّدنا ابو موسیٰ اشعری رضی اللہ عنہما گئے اور انہیں دفن کر دیا۔‘‘

دوسری احادیث میں موجود کہ وہ الله کے نبی حضرت دانیال عليه السلام تھے۔

اس صحیح  حدیث  کو غیر مقلد وھابی زبیر علی زئی  اپنے دعوی ( کہ انبیاء کے جسموں کو مٹی نہیں کھاتی) کی دلیل کے طور پیش کیا۔
(فضائل درود وسلام : صفحہ 66)
اسی طرح غیر مقلد ظہیر امن پوری نے بھی اسکا صحیح ہونا تسلیم کیا۔
(وفات النبی : صفحہ 171)

تابعی ابو عالیہ رحمتہ الله کا عقیدہ
حضرت دانیال عليه السلام والا واقعہ مخلتلف الفاظ کے ساتھ تابعی ابو عالیہ رحمتہ الله سے بھی مروی ہے۔
مشہور تابعی،ابو العالیہ رحمه الله بیان کرتے ہیں:
’’ہم نے جب تستر شہر کو فتح کیا،تو ہرمزان کے بیت المال میں ایک چارپائی دیکھی،جس پر ایک فوت شدہ شخص پڑا تھا۔اس کے سر کے پاس ایک کتاب پڑی تھی۔ہم نے وہ کتاب اٹھالی اور اسے سیّدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کی خدمت میں لے گئے۔انہوں نے کعب احبار تابعی رحمہ اللہ کو بلایا، جنہوں نے اس کتاب کا عربی میں ترجمہ کر دیا۔میں عربوں میں پہلا شخص تھا،جس نے اس کتاب کو پڑھا۔میں اس کتاب کو یوں پڑھ رہا تھا گویا کہ قرآن کو پڑھ رہا ہوں۔
ابو العالیہ رحمہ اللہ کے شاگرد کہتے ہیں:میں نے ان سے پوچھا:اس کتاب میں کیا لکھاتھا؟انہوں نے فرمایا:اس میں امت ِمحمدیہ کی سیرت،معاملات،دین، تمہارے لہجے اور بعد کے حالات پر روشنی ڈالی گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں (ابو العالیہ کے شاگرد) نے کہا:کیا ان کے جسم میں کوئی تبدیلی آئی تھی؟ انہوں نے فرمایا:بس گدی سے چند بال گرے تھے،کیونکہ انبیاء ِ کرام کے اجسام میں نہ زمین تصرف کرتی ہے، نہ درندے اسے کھاتے ہیں۔‘‘

[السیرۃ لابن إسحاق : 66، 67، طبع دار الفکر، دلائل النبوّۃ للبیہقي : 382/1]-وسندہ حسن
غیر مقلد ظہیر امن پوری نے اس حدیث کو مختصر لکھ کے اسے حسن کہا۔

 

1.jpg

 

2.png

 

3.png

 

Post 6.1.png

Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Similar Content

    • By mzeeshanimtiaz
      mei ne google plus Anbiya ki hayat k mutalik aik post ki thi tw aik shaks se meri debate start ho gayee........
      mei ne Hayat-e Anbiya par "Ibn-e Maja" wali hadees 'google plus' par post ki hui thi
       
      *Ibn-e Maja* ki hadees ye thi:
      be'shek ALLAH ne zameen par haram farma diya ha k ANBIYA k jismo ko khaye. ALLAH k NABI zinda hei aor un ko rozi di jati ha
      (Ibn-e Maja, jild 2, hadis 1637)
      Mulla Ali Qari likhte hei k iss hadees ki isnaad(اسناد) sahi hei aur ye hadees bohat issnado(اسنادوں) se mukhtalif ilfaz k sath manqool ha

      (Marqat ,,jild 3,, page 242)
       
      tw iss ka jawab muje ye mila k:
      janab is ki sanad sahi hai mager is mian inqta hai matlab ravi sub sahi hai mager do ke darmaiyan mulaqat nahi hai is liye is ki sand ko sahi kaha hai hadees ko nahi sanad sahi hona alag baat hai aur hadees sahi hona alag hai
       
      (mei ne aik Aalim se sunna tha k Ibn-e Maja ki is hadees par koi gubar nahi ha aor na hi aaj tak iss hadees k khilaf kisi muaddis ne kuch kaha ha)
       
      lehaza mei ne us se refrence manga k tum kis base par iss hadees par aetraz kr rahe ho tw os ne ye refrence diya ha:
       
      Ap ne kabhi muqadmah ibn sallah parha hai usool hadees ki mustanad kitab mian se aik hai aur is ki ibarat pesh kar raha hoon.
      " قولهم‏:‏ ‏(‏هذا حديث صحيح الإسناد، أو حسن الإسناد‏)‏ دون قولهم‏:‏ ‏(‏هذا حديث صحيح أو حديث حسن‏)‏ لأنه قد يقال‏:‏ هذا حديث صحيح الإسناد، ولا يصح، لكونه شاذاً أو معللاً‏."
      tarjumah: jab hadees sahi aur hasan ke bajae ye kaha jata hai ke is ki asnad sahi hai ya is ki asnad hasan hai to wo hadees sahi nahi hoti, ya to wo shaz hai ya is mian ilat hai.
      aur hafiz ibn hajar framate hain.
      لأنه لا يلزم من كون رجاله ثقات أن يكون صحيحا لأن الأعمش مدلس(تلخیص الحبیر جلد ٣ رقم ١١٨١)
      ابن حجر فرماتے ہیں " یہ لازم نہیں کہ راوی ثقات ہوں تو حدیث صحيح ہوگی
      tu janab main ne apni tarf se nahi muhdeseen ke usool ke mutabiq is hadees mian inqta kaha hai ab as ke anqta ki bhi daleel pesh kar deta hoon.
      ''
      اس روایت کی سند میں انقطاع موجود ہے عبادہ بن نسی کی روایات ابودرداء سے مرسل بیان ہوئی ہیں امام العلائی نے عبادہ بن نسی کی ابودردء سے اکثر روایات کو مرسل قرار دیا ہے (جامع التحصیل فی احکام مراسیل ص٢٠٦ ترجمہ ٣٣٤) اور زید بن ا یمن نے عبادہ بن نسی سے فقط یہی روایت بیان کی ہے چنانچہ حافظ ابن حجر فرماتے ہیں ''رجالہ ثقات لکن قال البخاری زید بن ایمن عن عبادة بن نسی مرسل( تھذیب التھذیب جلد ٣ ترجمہ٢١٩٠) اس کے رجال ثقه ہیں مگر امام بخاری فرماتے ہیں زید بن ایمن کی روایت عبادہ سے مرسل ہوتی ہے. اس بنا پر یہ روایت ضعیف ہے یہ روایت دیگر اسناد سے بھی مروی ہے مگر اس میں ان الفاظ کا اضافہ( فنبی اللہ حی یرزق)نہیں ہے یہ الفاظ اسی سند سے نقل ہوئے ہیں اور یہ سند ضعیف ہے وگرنہ باقی روایت صحیح سند سے ثابت ہے
      ye is riwayat ki puri tahqeeq hai hawale ke sath is ko chek kareen aur apna atminan kar leen
       
      mei ne Sahi Muslim ki ye Ahadees paish ki
       
      1) HAZOOR AKRAM(ﷺ) ne farmaya k Meraj ki raat mei surakh teely k pas HAZRAT MOOSA (ﷺ) k qareeb se guzra wo khare ho kr namaz adda kr rahe thy
      [Muslim, bab Alfazail 160]
       
      2) HAZOOR AKRAM(ﷺ) ne farmaya k mei ne AMBIYA KRAM ki jamat ko dekha. OON mein HAZRAT IBRAHIM(ﷺ) bhi thy. Jab namaz ka waqat kareeb aya tw MEI ne INN tmam ki amamat fermayee
      [Muslim, bab Al Iman 287]
       
      3) Meraj ki raat HAZOOR AKRAM(ﷺ) ne HAZRAT MOOSA(ﷺ) ko ahram bandhe dekha aur aap buland awaz se Talbhee parh rahe thy
      [Muslim, bab Al Iman 268]
       
      4) Meraj ki raat HAZOOR ESSA(ﷺ) ne HAZRAT MOOSA(ﷺ) ko surkh oontni pr soof ka juba pahne dekha aur wo bhi Talbhee parh rahe thy
      [Muslim, bab Al Iman 268]
       
      tw os ne ye jawab diya:
       
      حافظ ابن حجر فرماتے ہیں '' اختلف فی حال الانبیاء عند لقی النبی ۖ ایاھم لیلة الاسراء ھل اسری باجسادھم ملاقاة النبی ۖ تلک اللیلة او ان ارواحھم مستقرة فی الاماکن التی لقیھم النبی ۖ و ارواحھم مشکلة بشکل اجسادھم کما جز بہ ابو الوفاء بن عقیل ، واختار الاول بعض شیوخنا واحتج بما ثبت فی مسلم عن ''انس ان النبیۖ قال رایتُ موسیٰ لیلة اسری بی قائما یصلی فی قبرہ '' فدل علی انہ اسری بہ لما مہر بہ ۔قلتُ : ولیس ذلک بلازم بل یجوز ان یکون لروحة اتصال بجسدہ فی الارض فلذلک یتمکن من الصلاة و روحہ فی مستقرہ فی السمائ( بخاری فتح باری جلد ٨ کتاب مناقب الانصار باب معراج تحت رقم ٣٨٨٨)'' اس بات میں اختلاف ہے کہ نبیۖ نے کس حال میں اسری کی رات انبیاء سے ملاقات کی تھی کیا وہ اپنے اجساد مبارکہ کے ساتھ نبیۖ سے ملے تھے یا ان کی ارواح نے ان کے اجساد مبارکہ کی شکل اختیار کی تھی جیسا کہ ابو وفاء بن عقیل نے بیان کیا ہے مگر پہلی بات کو ہمارے بعض شیوخ نے اختیار کیا ہے اور اس کی دلیل ہے ''انس سے روایت ہے نبی ۖ فرماتے ہیں کہ میں نے موسیٰ کو ان کی قبر میں نماز پڑھتے ہوئے دیکھا ہے '' میں کہتا ہیں : اس سے یہ لازم نہیں آتا ہے بلکہ روح کا اتصال جسد کے ساتھ فقط نماز کے لئے ہو ا ہو کیونکہ(نیک) ارواح کا ٹھکانہ آسمان ہے ''
      to hafiz ibn hajar ne yahi farmaya hai ke naak rooh ka asal thikana asman hai aur serf namz ke liye anbiya ki arwah ko jism mian dakhil kia gaya ho ga
       
      mei ne Ibn-e Hajar ki ye ibarat paish ki:
      Imam Ibn Hajar al-Asqalani (Allah have mercy on him) states in his monumental commentary of Sahih al-Bukhari i.e. Fath al-Bari: "When the living of the martyrs is proven from the text of the Qur’an, then this is also proven from a analogical point of view. And the Prophets are superior then the martyrs"

      [Fath al-Bari, Volume 006: Page No. 379]
       
      tw os ne ye jawab diya:
       
      hafiz ibn hajar ki puri ibarat pash hai ap ne adhi baat naqal ki hai,
       
      '' قلت و اذاثبت انہم احیاء من حیث النقل فانہ یقویہ من حیث النظر کون الشھداء احیاء بنص القرآن والانبیاء افضلا من الشھداء ( (فتح الباری کتاب الاحادیث الانبیاء تحت رقم ٣٤٤٧ ص٤٠٦)میں کہتا ہوں کہ بے شک جو نقل ہوا ہے وہ یقیناََ قوی نظر ہے کہ شہداء کی حیات نص قرآنی سے ثابت ہے کہ انبیاء شہداء سے بھی افضل ہیں'' اس کے بعد انہوں نے''رد اللہ علی روحی'' والی روایت کو نقل کیا اور اس کے بعد فرماتے ہیں'' وراوتہ ثقات ووجہ الاشکال فیہ ان ظاھرہ ان عودالروح الی الجسد یقتضی انفصالھا عنہ وھو الموت وقد اجاب العلماء عن ذلک باجوبة''(حوالہ ایضاََ) '' اس کے رواة ثقہ ہیں اور اس کے اشکال کی جو وجہ ہے یہ کہ ظاہر طور پر یہ (کہاگیا ہے ) اس میں روح کو لوٹایا جائے گاجو یہ تقاضہ کرتا ہیں کہ یہ انفصا ل وصال کا ہے اور یقیناََ علماء نے اس کے جواب دیئے ہیں'' اس کے بعد پانچ جواب نقل کیے ہیں جو اس کے بارے میں دیئے گئے ہیں اور آخر میں وہ فرماتے ہیں کہ '' اجیب بان الامور الاخرة لا تدرک بالعقل و احوال البرزخ اشبہ باحوال الاخرة''میں مانتا ہوں کہ آخرت کے احوال کا ادراک عقل سے نہیں ہوسکتا ہے اوربرز خ کے احوال آخرت کے مشابہ ہیں''
      to hafaz ibn hajar ke qool se wazeh hai ke ye barzakhi mamalat hai aur shaheed ki hayat ko duniyawi hayat na samjha jaye
       
      لأنه بعد موته وإن كان حيا فهي حياة أخروية لا تشبه الحياة الدنيا، والله أعلم.
      tarjumah : an ki moot ke baad an ki zindagi akhravi zindagi hai as ko duniya ki zindagi ke mushabhe na samjha jaye
      (fath albari tahtal raqm 4042)
      anbiya aur shahda ki hayat barzakhi aur akhravi hai dunyavi nahi hai is liye an se madad mangna bhi jaiz nahi hai
       
      (os ne meri har baat ka jawab diya ha....lekin common ye ha k Ibn-e Hajar hi k hawale se tamam jawabat diye hei........kia Amam Ibn-e Hajar ANBIYA ki haqeeqi hayat k qayal nahi thy ??????)
       
      aor phir os ne apne likhe hue aik article (jo hamariwebdotcom mei likha hua ha) ka link bhi share kiya ha jis ki pictures mei neeche post kr raha hn
       
      lahaza jo portion men ne red kiya ha aor jo mei neeche ye pictures post kr raha hn muje iss ka mudalal jawab dijiye
      aor ye jawabat jitni jaldi ho sake de dei
       
       

×
×
  • Create New...