Jump to content
IslamiMehfil

الیاس گھمن دیوبندی کا اپنی بیٹیوں سے زنا - اپنے گھر سے نقاب کشائی


Recommended Posts

بطورِ ثبوت اصل کتاب کی تصاویر بھی لگا دیں ہیں نیچے موجود ہیں

ان کی یہی دینی غیرت تھی کہ پاکستان کے معروف عالم دین الیاس گھمن کی صفائی میں دارالعلوم دیوبند نے اپنا موقف ظاہر کیا اور اعترافات سے مملو الفاظ استعمال کئے تو فوراً ان کا خط دارالعوام پہنچ گیا انہوں نے دارالعوام سے سوال کیا کہ آپ ایک شخص کی تعریف کیسے کر سکتے ہیں جس پر بدعنوانیوں کے الزامات ہیں جس کی سابقہ اہلیہ ( سمیعہ بنت مفتی زین العابدین ) نے ان کی اخلاقی کمزوریوں کا راز فاش کر دیا ہے جو اپنی بیگم کی بچیوں (یعنی اپنی بیٹیوں ) سے خراب رشتے ( یعنی زنا ) میں پکڑا گیا ہے جس پر مولانا ابوبکر غازی پوری نے دوماہی زم زم کے اداریہ میں اپنے ساتھ ہوئی مالی خورد برد کا انکشاف کیا جس پر سعودیہ وغیرہ میں غیر قانونی چندہ خوری کا الزام ہے مرحوم نے دارالعوام کو وہ سارے کاغذات بھی ارسال کئے جن سے مولانا گھمن کی شخصیت مجروح ثابت ہو رہی تھی مرحوم کے اس خط نے دارالعوام کو متنبہ کر دیا دارالعوام کی طرف سے مولانا کے نام ایک خط جاری ہوا جس میں ایشیاء کی عظیم ترین درس گاہ نے اپنی غلطی کا اعتراف کیا اور صاف اعلان کیا کہ مولانا گھمن سے متعلق پرانی تحریر عاجلانہ قدم تھا 

 تذکرہ شیخ الکل مولانا سلیم اللہ خان صفحہ 300 تا 301 ادارۃ الرشید کراچی علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن کراچی 

TAZKIRA-SHAYKH-UL-KUL-MAULANA-SALEEM-ULLAH-KHAN_0000.jpg

20210527_100732.jpg

Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

  • Similar Content

    • By محمد حسن عطاری
      جألحق_پر_اعتراض,حاضر_و_ناظر_کی_بحث_الیاس_گھمن_کا_ارتداد.pdf
    • By محمد حسن عطاری
      قبروں_پر_پھول_ڈالنے_پر_الیاس_گھمن_کی_تردید.pdf
    • By محمد حسن عطاری
      نوٹ : تحریر میں موجود حوالہ جات کا اسکین نیچے موجود ہے

      اب ہم قرآن عظیم کی طرف نظر کرتے ہیں یہ اللہ رب العزت وہ کلام ہے جسے پہاڑ پہ نازل کیا جاتا تو پہاڑ ریزہ ریزہ ہوجاتا اور میں پیش کرتا ہوں پاک کون ہے ناپاک کون ہے آسمان کی طرح بلند کون ہے میں تھانوی  کا ایک ترجمہ پیش کرتا ہوں لن تنالوالبر :  سورۃ آل عمران : آیت 142
      اَمۡ حَسِبۡتُمۡ اَنۡ تَدۡخُلُوا الۡجَنَّۃَ وَ لَمَّا یَعۡلَمِ اللّٰہُ الَّذِیۡنَ جٰہَدُوۡا مِنۡکُمۡ وَ یَعۡلَمَ الصّٰبِرِیۡنَ ﴿۱۴۲﴾
      (ترجمہ بیان القرآن (تھانوی : 
       ہاں کیا تم یہ خیال کرتے ہو کہ جنت میں جا داخل ہوگے حالانکہ ہنوز اللہ تعالیٰ نے ان لوگوں کو تو دیکھا ہی نہیں جنہوں نے تم میں سے جہاد کیا ہو اور نہ ان کو دیکھا جو ثابت قدم رہے۔ (142) 
      سنیں اللہ تعالیٰ سمیع بصیر ہے اللہ تعالیٰ دل کے خطرات کو جانتا ہے لیکن تھانوی  کا یہ عقیدہ ہے کہ نہیں اللہ تعالیٰ نے ان لوگوں کو تو دیکھا ہی نہیں جنہوں نے تم سے جہاد کیا ہو اور نہ ان کو دیکھا جو ثابت قدم رہے یہ ہے تھانوی کا علم تحریف گھمن یہ ہے تمہارا  مجدد جس نے جو ترجمہ کیا ہے اس ترجمہ سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ یہ تو  اللہ تعالیٰ کے علم کے بھی قائل نہیں ہے
      اب آو گھمن  جس حدیث شریف پہ تم نے اعتراض کیا ہے کہ اعلی حضرت نے ایسا ترجمہ کیا ہے ایسا ترجمہ نہیں کرنا چاہئیے تھا جو تمہیں کہنا تھا آپ نے اپنے بدنام زمانہ کتاب میں کہا
      اب آئیے میں دکھاتا ہوں مرزا قادیانی کے بعد مسلمہ کذاب کے بعد ایک پیدا ہورہا تھا لیکن اعلیحضرت نے ایسا نیزہ مارا وہ مرگیا لیکن آگے نہ بڑھ سکا میرے کہنے کا مطلب ہے نانوتوی نے تحذیر الناس میں ختم نبوت پہ ڈاکا ڈالا لیکن میرے رضا نے ایسا نیزہ مارا وہ وہیں دفن ہوگیا
      📗کتاب کا نام ہے معارف الاکابرص232 تھانوی  لکھتا ہے نانوتوی کے بارے میں یہ  وہ قاسم نانوتوی ہے جس نے تحذیر الناس میں لکھا کہ سید عالم نور مجسم صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد بھی کوئی نبی آجائے تو ختم نبوت میں کوئی فرق نہیں آئے گا چور دروازہ کھول رہا تھا اپنے لئے لیکن بازی مار لے گیا مرزا قادیانی
      تھانوی  لکھتا ہے جس وقت آپ قطب عالم حضرت گنگوہی کے ہمراہ حج کو جارہے تھے ایک گروہ حضرت گنگوہی کے پاس آیا کہ ہم بھی آپ کے ہمراہ چلیں گے آپ نے پوچھا ذرادراہ بھی ہے انہوں نے کہا نہیں ایسے ہی توکل پر چلیں گے مولانا گنگوہی نے فرمایا بڑے آئے توکل کرنے والے جاؤ اپنا کام کرو حضرت نانوتوی سے اجازت چاہی تو آپ نے اجازت دے دی راستے میں جو کچھ ملتا سب ان لوگوں کو دےدیتے ساتھیوں نے عرض کیا آپ تو سب ہی دےدیتے ہیں کچھ تو اپنے پاس رکھتے فرمایا(انما انا قاسم واللہ یعطی)
      گھمن  تم تو اعتراض کررہے تھے اعلیحضرت نے ترجمہ غلط کیا جو نبی انما انا قاسم واللہ یعطی اللہ دیتا ہے میں ہی بانٹتا ہوں اپنے لئیے استعمال کررہے ہیں
      اس پورے حدیث کو نانوتوی نے اپنے اوپر فٹ کرلیا کس نے قاسم نانوتوی نے ساتھیوں نے جب عرض کیا آپ سب بانٹ دیتے ہو کچھ تو اپنے پاس رکھتے تو نانوتوی کہتا ہے انما انا قاسم واللہ یعطی یعنی اللہ تعالیٰ دیتا ہے نانوتوی بانٹتا ہے مولوی گھمن تم تو اعلیحضرت پہ ترجمہ کا اعتراض کررہے تھے جو تمہارا اعتراض باطل تھا لیکن تمہارا مولوی چور دروازہ کھول رہا تھا جو نبی اپنے لئیے لفظ استعمال کریں اسے تمہارا مولوی قاسم نانوتوی اپنے لئیے استعمال کررہا ہے مولوی گھمن یہ بتاؤ قرآن کے ترجمے میں کس نے تحریف کی اور حدیث کو خود اپنے اوپر کون لاگو کررہا ہے جو میرے کریم آقا اپنے لئیے فرمائیں اسے تمہارا مولوی اپنے لئیے فٹ کرے کون ہوا گستاخ کون ہوا تحریف کرنے والا
      ناظرین کرام آپ فیصلہ کریں
      یہ رضا کے نیزے کی مار ہے
       




    • By محمد حسن عطاری
      نوٹ : تحریہ میں موجود حوالہ جات کا اسکین نیچے موجود ہے
       
       2 اعتراض نمبر 
      2الیاس گھمن کے اسی کتاب صفحہ 61 پہ الزام اعتراض رکھنے کی کوشش کی ہے کہ اعلیٰ حضرت کو علم نہیں تھا بغیر علم کے مجدد تھے یعنی بہترین عالم نہیں لیکن انکے ماننے والے بغیر علم کے لوگ انہیں امام ابو یوسف اور امام محمد رضی اللہ عنہم کا دعویٰ کرتے تھے اور یہ کہتے تھے میں خدا کی قسم کھاکر کہتا ہوں کہ اس فتویٰ کے امام ابو حنیفہ نعمان بن ثابت رضی اللہ عنہ دیکھتے تو یقیناً ان کی آنکھیں ٹھنڈی ہوتی تیں اور اس کے مؤلف کو اپنے اصحاب امام ابو یوسف اور امام محمد کے زمرے میں شمار فرماتے)
      یہ ہے تمہارا اعتراض گھمن مجھے حیرت ہے بقولِ تمہارے اعلیحضرت علیہ الرحمہ کے پاس علم ہی نہیں تھا اور انکے خلاف کتاب پہ کتاب لکھ رہے ہو اس کا مطلب ہے اعلیحضرت نے جو نیزہ مارا ہے اس کی تپش تمہیں برداشت نہیں ہوتی خیر یہ تو بات ہے میں ذرا تحقیقی جواب پیش کردوں اعلیحضرت کے علم لے تعلق سے صرف میں اتنا کہنا چاہتا ہوں پوری ذریت دیوبندیت کو چیلنج اعلیحضرت نے فتویٰ رضویہ شریف جلد ایک میں خطبہ لکھا ہے عربی میں ایسا  خطبہ اپ کے پوری زریت میں کسی نے لکھا ہے تو دکھا دیں اگر لکھا ہے جس میں اعلیٰ حضرت نے 80 کتابوں کا حوالہ 80 کتابوں کے نام  اعلیحضرت نے اس طرح سجا کر لکھا ہے اگر کوئی عاشق وہ خطبہ پڑھے گا ایک طرف اللہ عزوجل کے حمد بھی کرے گا محبوب دو عالم کے ثناء بھی کرےگا اولیاء عظام کے ذکر بھی کرے گا  ایسا خطبہ اعلیحضرت رضی اللہ عنہ نے فتویٰ رضویہ شریف جلد ایک میں لکھا ہے گھمن پڑھ لو گھمن یہ تمہارا  اعتراض تھا گھمن  اعلیحضرت نے جس طرف قلم چلایا ہے اس طرف اعلیحضرت کا کوئی ثانی نہیں ملتا تمنے اعتراض کیا کہ اعلیحضرت کے پاس علم نہیں تھا لیکن انکے لوگ امام ابو یوسف امام محمد کے برابری سمجھتے تھے
      لیکن تمہیں اپنے گھر کی خبر نہیں ہے مجمع میں انکے لوگ لواطت کرتے تھے خود گنگوہی نانوتوی بیچ مجمع میں سوکر ایک دوسرے کے ساتھ اپنے دل کے بھڑاس کو مٹاتے تھے یہ دونوں تمہارے ہی مولوی ہیں ان دونوں نے جو مجمع میں نہیں کیا وہ خواب میں کرلیا تذکرۃ الرشید  جلد 2 میں رشید احمد کہتا ہے میں نے ایک بار خواب دیکھا تھا کہ مولوی قاس صاحب دلہن کی صورت میں ہیں میرا انسے نکاح ہوا ہے اور دونوں کو وہی فائدہ ایک دونوں سے ہوا جو شوہر بیوی سے ہوتا ہے)
      گھمن  یہ دونوں تمہارے ہی  مولوی ہے انہوں نے جو مجمع میں نہیں کیا وہ خواب میں کرلیا
      الیاس گھمن کا تیسرا اعتراض یہ ہے کہ اعلی حضرت نے حدیث شریف میں چھیڑ چھاڑ کی
      اسی کتاب فرقہ بریلویت پاک ہند کا تحقیقی جائزہ میں عنوان دیتے ہیں حدیث رسول صلی اللہ علیہ السلام میں عجب کارستانی صرف ایک مثال قرآن پاک کی طرح احادیث میں بھی احمد رضا نے یہ ہی کام کیا ہے ہم صرف یہاں پہ ایک مثال نقل کرتے ہیں یہ الیاس گھمن اعلیحضرت پہ اعتراض قائم کررہے ہیں حدیث نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے انما انا قاسم واللہ یعطی ملفوظات مولوی احمد رضا جلد اول ص23 پر فاضل بریلوی نے اس حدیث کا یہ ترجمہ کیا میں بانٹنے والا ہوں اللہ عزوجل عطاء فرماتا ہے اور اسی ملفوظات جلد چہارم ص71 پر اسی حدیث کا جناب نے یہ یہ ترجمہ فرمایا انما انا قاسم واللہ یعطی جز اس نیست کہ میں ہی بانٹنے والا ہوں اللہ دیتا ہے 📗فرقہ بریلویت پاک ہند کا تحقیقی جائزہ ص185
      الیاس گھمن نے یہ اعتراض کرنا چاہی ہے کہ اعلی حضرت نے قرآن مجید میں چھیڑ چھاڑ احادیث میں تحریف کی ہے اوراپنا مقصد اپنا منشا پانے کی کوشش کی ہے گھمن صاحب یہ آپ کا اعتراض ہے؟
      لیکن آئیے دوستوں ہم دیکھتے ہیں پاک کون ہے غلیظ کون ہے دودھ کون ہے شراب کون ہے
      یہ تھا گھمن کا جاہلانہ اعتراض تھا



    • By محمد حسن عطاری
      نوٹ : تحریہ میں موجود حوالہ جات کا اسکین نیچے موجود ہے

      یہ ہے آپ کے تھانوی آپ کے مجدد کے کارنامے تھے ایک ایسا زمانہ آیا پوری امت کو مریض کردیا
      حوالہ نمبر تین لئجیے بچپن تو بچپن ہے 📗کتاب کا نام ہے مجالس
      حکیم الامت ص57 لکھنے والا مولانا مفتی شفیع  ہے تھانوی  کا خلیفہ ہے اس میں آپ کے تھانوی  کیا لکھتے ہیں
       سنیں لکھتے ہیں فرمایا کہ میں نے اپنے لوگوں کو ممانعت کردی تھی کہ تصنیف کے کمرہ میں،جہاں میں تنہا ہوتا ہوں کسی نو عمر لڑکے کو نہ بھیجا کریں مجھے اپنے نفس پر اعتماد نہیں اسکا اثر یہ ہوا کہ خانقاہ کے سب لوگ لڑکوں سے پرہیز اور احتیاط کرنے لگے) 
      تھانوی  بڑھاپے کے زمانے میں اتنا رنگ باز تھا اسکو اپنے نفس پہ خود اعتماد نہیں تھاکہ سختی سے منع کردیا تھا کہ میرے کمرے میں کسی کو نہ بھیجا جائے یہ ہیں آپ کے تھانوی مجدد
      یہی نہیں آپ قاسم العلوم ولخیرات کو لے لئجیے کیا گل کھلاتے تھے کتاب کا نام📗 حکایت اولیاء عرف ارواح ثلاثہ حکایت نمبر ہے 304 لوطی محل میں کیا ہوتا ہے آپ کو معلوم ہونا چاہیئے کیا فرماتے ہیں  فرمایا کہ ایک دفعہ گنگوہ کی خانقاہ میں مجمع تھا حضرت گنگوہی اور حضرت نانوتوی کے مرید اور شاگرد سب جمع تھے اور یہ دونوں حضرات بھی وہیں مجمع میں تشریف فرما تھے کہ حضرت گنگوہی نے حضرت نانوتوی سے محبت بھرے آمیز لہجہ میں فرمایا کہ یہاں ذرا  لیٹ جاؤ حضرت نانوتوی کچھ شرما سے گئے مگر حضرت نے پھر فرمایا تو بہت ادب کے ساتھ چت لیٹ گئے حضرت بھی اسی چارپائی پر لیٹ گئے اور مولانا کی طرف کو کروٹ لےکر اپنا ہاتھ انکے سینے پر رکھ دیا جیسے کوئی عاشق صادق اپنے قلب کو تسکین دیا کرتا ہے مولانا ہر چند فرماتے ہیں کہ میاں کیا کررہے ہو یہ لوگ کیا کہیں گے حضرت نے فرمایا لوگ کہیں تو کہنے دو)
      گھمن کسی پہ جاہلانہ اعتراضات کرنے سے پہلے اپنے گھر کی حقیقت بھی دیکھ لیا کرو
      مزید اسی ارواح ثلاثہ میں تمہارے قاسم العلوم ولخیرات 
        کیا کرتے تھے آپ کے نانوتوی جی وہ سنیں یہ کہتے تھے کہ حافظ انوارالحق کے بیٹھک میں مجھ سے بلایا سب کرتب بھی دیکھے مولانا بچوں سے ہنستے بولتے بھی تھے اور جلال الدین صاحب زادہ مولانا محمود یاقوب صاحب اس وقت بلکل بچے تھے بڑی ہنسی کیا کرتے تھے کبھی ٹوپی اتارتے کبھی قمر بند کھول دیا کرتے تھے)
      گھمن آپ کے مولوی قمربند کیوں  کھول دیتے تھے یہ آپ کے قطب الإرشاد قاسم العلوم ولخیرات ہیں تو مولوی صاحب اعلیحضرت پہ اعتراض کرنے سے پہلے اپنے لوطی محل کو دیکھ لیتے اس کو مد نظر رکھتے یہ ہوا آپ کے ایک اعتراض کا جواب





×
×
  • Create New...