Jump to content

شیخ الاسلام حافظ ابن تیمیہ رحمہ اللہ اور مسئلہ تقلید


Aquib Rizvi

Recommended Posts

  • 9 months later...

ابن تیمیہ وہابی کے نام کے ساتھ آپ نے دعائیہ کلمات استعمال کیے جبکہ ابن تیمیہ وہابی ہے ضال مضل ہے۔ تصویر آپ نے علامہ خادم حسین رضوی صاحب کی لگائی ہوئی ہے کچھ خدا کا خوف کریں۔

آپ کا تعلق اہلسنت سے ہے یا کسی اور سے ؟

Ibn e tammyah ko gumrah kehne ki kia waja ha jnab ...is bare me bata den?
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابن تیمیہ گمراہ و بدمذھب ہے۔
ابن تیمیہ کا اصل نام احمد،اس کی کنیت ابو العباس اور مشہور ابن تیمیہ ہے،661ھ میں پیدا ہوا اور قلعهٔ دمشق میں بحالت قید 20 ذی قعدہ 728ھ میں انتقال ہوا۔
    ابن تیمہ نے مسلمانوں کے اجماعی عقائدواعمال سے ہٹ کرایک نئی راہ ڈالی جس کے باعث اس کے ہم عصراوربعد میں انے والے بڑے بڑے علماء کرام رحمہم اللہ تعالیٰ میں سے بعض نے اس کی تکفیرکی ،بعض نے گمراہ کہااوربعض نے بدعتی کے نام سے موسوم کیا۔چنانچہ، امام جلال الدین سیوطی شافعی رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ فرماتے ہیں:''میں نے ابن تیمیہ کا انجام یہ دیکھا کہ اس کو ذلیل کیا گیا اوراس کی برائی بیان کی گئی اور حق وباطل سے اس کی تضلیل اور تکفیر ہوئی اور وہ ان خرافات میں پڑنے سے پہلے اپنی زندگی ہی میں سلف(بڑے بڑے علماء) کے نزدیک (اپنے علم کے باعث) منوروروشن تھا ۔ پھر وہ (ابن تیمیہ) غلط اور بدعتی مسائل کی وجہ سے لوگوں کے نزدیک اندھیرے والا اور گرہن والا غبار آلودہ ہوگیا۔اور اپنے اعداء اور مخالفین کے نزدیک دجال،افاک (بڑا بہتان تراش) کافر ہو گیا اور عاقلوں،فاضلوں کے گروہوں کی نظر میں فاضل محقق بارع(ماہر) بدعتی ہوگیا۔''
    حضرت ملاعلی قاری حنفی رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ فرماتے ہیں:(نام کے) حنبلیوں میں سے ابن تیمیہ نے تفریط ( کوتاہی اور کمی) کی ہے (معاذاللہ عزوجل) اس طرح کہ''روضۂ رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی زیارت کو حرام کہا۔'' جیسا کہ اس کے غیر نے (یعنی اس کے مخالف اور رد کرنے والے نے) زیادتی کی حد سے بڑھا کر اس طرح کہا کہ زیارت شریف کا قربت ہونا یہ ضروریات دین سے معلوم ہے۔اور اس کے منکرپرحکمِ کفرہے۔    
    پھرملاعلی قاری علیہ رحمۃ اللہ الباری فیصلہ کرتے ہوئے فرماتے ہیں:''امیدہے کہ یہ دوسرا(یعنی منکرزیارت پرکفرکافتویٰ دینے والا)صواب(صحیح ہونے )کے زیادہ قریب ہے کیونکہ اس چیزکوحرام کہناجوباجماع واتفاق علماء مستحب ہو(جیسے مسئلہ زیارت)وہ کفرہے،کیونکہ اس معاملہ میں یہ تحریم مباح(یعنی مباح کوحرام کہنے ) سے بڑھ کرہے۔جب مباح کوحرام کہناکفرہے تومستحب کوحرام کہنابطریق اولیٰ کفرہوگا۔''
(شرح الشفالعلامہ القاری،ج3،ص514،علی ھامش نسیم الریاض۔شواھد الحق ص147)
ابن تیمہ کے بعض من گھڑت عقائدومسائل :
٭۔۔۔۔۔۔اللہ تعالیٰ کا جسم ہے٭۔۔۔۔۔۔اللہ تعالیٰ نقل مکانی کرتا ہے٭۔۔۔۔۔۔اللہ تعالیٰ عرش کے برابر ہے نہ اس سے بڑا نہ چھوٹا،حالانکہ اللہ تعالیٰ اس بہتان شنیع اور کفر قبیح سے پاک ہے۔اس کے متبع ذلیل ہوئے اور اس کے معتقد خائب وخاسر ہوئے ٭۔۔۔۔۔۔ دوزخ فنا ہوجائے گی ٭۔۔۔۔۔۔انبیاء علیہم السلام غیر معصوم ہیں ٭۔۔۔۔۔۔ حضور نبی پاک صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم کا عند اللہ کوئی مقام نہیں ان کا وسیلہ جائز نہیں ٭۔۔۔۔۔۔ روضۂ رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سفرِ زیارت کرنا گناہ ہے اور اس سفر میں نماز قصر نہ پڑھی جائے گی ٭۔۔۔۔۔۔ کوئی حائضہ کو طلاق دے تو واقع نہ ہوگی ٭۔۔۔۔۔۔اگر کوئی شخص عمد ا نماز ترک کردے تو اس پرقضا ضروری نہیں ٭۔۔۔۔۔۔ حائضہ کو طواف کعبہ جائز ہے اور اس پر کوئی کفارہ بھی نہیں ٭۔۔۔۔۔۔ تین طلاقیں ایک ہی ہوگی حالانکہ اپنے دعوی سے پہلے اس نے اس کے خلاف (اُمت محمدیہ کا) اجماع نقل کیا ،ان کے علاوہ بھی ابن تیمیہ کی خرافات ہیں اللہ عزوجل مسلمانوں کوان کے شرسے بچائے (اٰمین )
(فتاوی حدیثیہ ،ص 99،تا 101،مطبوعہ حلبی مصر)(ملخصًاازتعارف چندمفسرین محدثین مؤرخین کا،ص58۔59اور88تا90)

 

 

Link to comment
Share on other sites

Ibn Taymiyyah aik khalas Khariji khalis shaytan thah jissay Tawheed aur Shirk kia hen aur kin bunyadaat qaim aur nafi hoteen hen un ka ilm nahin thah. Is Shaytan nay Istighathah ko Shirk tehraya, ahle kalma ki Takfir ki, sirf Tawheed aur shirk ka ilm nah honay ki waja say. 

Banda ki yahi samaj heh, jissay Tawheed aur Shirk ka pata nahin Kafir heh.  Bilkhasoos wo jo auroon ko Kafir kahay aur khud ilmi okaat yeh ho keh sahih Taheed aur Shirk ka bi pata nah ho. Lehaza mein nay ibn Taymiyyah aur jo is ki taleem par chalay ahle kufr aur ibn taymiyyah ko Kafir hi samajta hoon.

Aisay Kafir ko  Shaykh ul Islam likhna jaiz nahin. Agar kafir nahin toh gumra zeroor heh. Balkeh Khariji yaqeenan heh. Keun kay Musalman Ilahiyyah/rububiiyah kay izhar par Shirk ka hukm jari kartay hen. Magr kharijiyun nay sift Hakim ki bunyad par Hazrat Ali aur ashab ko Shirk ka ilzam deeya. Aur kaha Allah Hakim heh tum nay mkhlooq ko Hakim maan kar Shirk keeya. Yehni jistera baghayra  ilahiyyah/rububiyya kay ibn taymiyyah aur wahhabi Shirk ka ilzam detay hen issi tara Kharijiyun nay deeya. Sabat huwa Ibn Taymiiyah fehm Tawheed/shirk mein Kharijiyun jaisa thah. Aur yahi fehm sab Kharijiyun ko apas mein jorta heh.  Aur Khariji  Kafir hen. 

Edited by MuhammedAli
Link to comment
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
×
×
  • Create New...