Jump to content
IslamiMehfil

Recommended Posts

Asalam o Alaykum wa rehmatullahe wa barakatuhu wa magfiratuhu,

 

I am in need of a reference (with scanned page) from Book called "Rasm al-Mufti" by al-Imam Muhammad Amin ibn 'Abidin.

 

Could someone help please.

 

Basit Mahmood Qadri Razavi

[email protected]

 

(wasalam)

 

Basit tum bhi kasam se hadd kartay ho! Reference kis cheez ka chahiye woh tu batatay! Let me explain;

 

My jigri friend Basit wants a reference of Rasm-ul-Mufti which says something like this;

 

There is a principle in this book which says that it is possible that writing can be similar or tone can be similar or even signature can be similar but the reader must believe that the fatwa is from the mufti whose name is written there.

 

 

Iss kitab Rasm-ul-Mufti mein Muftiyan-e-Kiram ka aik usool bayan kiya gaya hai ke even agar Muhar ya Tehreer ya Signature mein kisi ko shakk ho ya iss ka imkaan ho ke fatwa asal Mufti ka nahi balkay man'gharat ya jhoota hai tu bhi agar aisay kisi fatwa per kisi Mufti ka naam darj ho tu parhnay walay ko yaqeen kar lena chahiye ke Fatwa asal hai.

 

I am not sure if I explained it properly or not... so Basit khud thora tafseel se likh do yaha... Mein Sagg-e-Attar bhai ko msg bhi kar diya (ia) koi na koi jawab tu aye ga hi!

Link to post
Share on other sites

السلام علیکم،

بالکل یہ بات درست ہے۔

 

فقہائے کرام فرماتے ہیں۔ الخط یشبہ الخط لا یعتد بہ

لیکن اگر صرف یہی اصول لے لیا جائے تو پھر مفتی کے ہر فتوے پر یہ احتمال جاری ہو سکتا ہے کہ الخط یشبہ الخط لا یعتد بہ۔ تو کیا مفتی کا پوریٰ فتاویٰ ناقابل اعتماد سمجھا جائے گا۔

تو اس میں فقہائے کرام کا قائدہ ہے کہ الخط یشبہ الخط لا یعتد بہ یہ اس صورت میں ہے کہ جب محرر منکر ہوجائے اور کہے کہ یہ تحریر میری نہیں ہے۔ اگر محرر منکر نہیں ہوتا تو پھر یہ خط اُسی کا ہے۔ مثلاً کسی نے اپنی زوجہ کو تین تلاق لکھ کر دیدیں اور بعد میں منکر ہوگیا۔ تو اگر جھوٹ بولے گا تو اُس کا وبال اُسی پر ہوگا۔مفتی اسے قسم دلوا کر کہہ دے کہ اگر یہ اپنی قسم میں سچا ہے تو اس کی بیوی اس کے لئے حلال ہے۔

 

پس تحریر اُسی کی ہوگی۔ ہاں مگر محرر منکر ہوجائے۔ اور جھوٹ بولے گا تو گناہگار ہوگا۔

 

اور اگر ایسا فتویٰ کہ مفتی زندہ ہے اور متنازعہ فیہ صورت میں اُس کی طرف سے انکار نہیں پایا گیا تو یہ اسی کا فتویٰ ہے۔ دنیا سے چلے جانے کے بعد اب پیچے کوئی یہ قائدہ بیان کرے الخط یشبہ الخط لا یعتد بہ تو اُس کی بات کا اعتبار نہ کیا جائے گا۔ اور نہ ہی قائدہ لاگو ہوگا۔

Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

×
×
  • Create New...