Jump to content
IslamiMehfil

عقیدہ توُسّل حق ھے۔


Recommended Posts

  • Replies 229
  • Created
  • Last Reply

Top Posters In This Topic

Top Posters In This Topic

Popular Posts

Anwar sahib aap sahaba karam ko momin taswar kertay hain k nahi?Aap   jub is dunya say tashreef lay gay to jub Sahaba karam ko masla paish aata tha to woh ijtahaad nahi kertay thay?......Un ko is aya

Posted Images

(bis)

(saw)

 

Readers dekh sakte hein ke agar inka aqeedah aur mazkoora tashree abu hanifa (ra) se sabit hoti to ye kab ka jawab day chuke hotay na ke fazool 46 sawal ka jawab maangte..ye aap logonka ka bohot purana tareeqa hay ke jab jawab na hoto fazool sawalaat kardo aur bajaey jawab dayne ke apne sawalon ke jawab ka israar karte raho aur asal masle se tawajjah hatao...bohot ache ;)

Link to post
Share on other sites

Wahabi Najdio Ager himmat hay to Ali Razwi ka challenge qbool kro aor apna aik hejra saamnay lao

takay Dhoodh ka Dhoodh aor Paani Ka Paani hojae

 

 

Sunni bhaion se guzarish hay k jab tak koi Wahabi challenge qbool na kray , us ki kisi bat ka jwab na dea jae..kionkay in ka maqsad behs brae behs k elawa kuch nhin hay..........

 

wrna challenge qbool na kr letay?????????

Link to post
Share on other sites

Jee meh nay socha thah kay kohi challenge qabool keray ga, kohi ek halali hoga joh mera challenge qabool keray ga phir jab us nay yeh mutalba keeya doraan e munazirah: "Imam Abu Hanifah say Tawassul sahih, mutawatir sanad say sabat kero." toh phir meh us ko jawab doon ga aur la'jawab bee keroon ga. Wesay Razavi say toh Wahabiat kay maulviyoon ka wudu toot'h jata heh, yeh toh chotay chotay chunny munnay murghi kay bachoon kee tera bachay hen Razavi kay challenge ko qabool kesay kertay. :lol: Abh meh jawab likhta hoon kohi ahay aur jawab deh.

 

Wahabiat kee jahalat, abh agar Imam e Azam Abu Hanifah nay Tawheed per kohi kitaab nahin likhi, toh is ka matlab yeh nahin kay woh Tawheed ko mantay nahin thay, Khatam e Nabuwat per kitaab nahin likhi toh is ka matlab yeh nahin kay woh mantay nahin thay, aur nah hee RAsooolAllah kay Shahid honay per kitab likhi to is ka matlab yeh nahin kay woh mantay nahin thay ... Aur nah hee is ka yeh matlab heh kay kitabeh likhi nahin aur sahih sanad kay saath un ka RasoolAllah ko aakhiri Nabi man;na sabat nahin heh to is ka matlab yeh heh kay woh RAsoolallah ko akhiri nabi nahin mantay thay.

 

Agar kohi kehta heh kay falan ka esa aqeedah sabat keren toh tab hee sabat hoga kay woh esa aqeedah rakhta heh toh woh bilqul jahil heh, keyun kay meh challenge deh ker keh sakta hoon kay Hazrat Um ul Momineen Salamah ka aqeedah e Tawheed kohi Wahabi sabat ker deh, agar kohi daleel nah millay toh kia aap yeh kahen gay kay un ka aqeedah e Tawheed nahin thah?

 

Jahil Wahabiyoon ko maloom hona chahyeh kay Um e Salamah ka aqeedah e Tawheed sabat nah be ho toh kohi un kay muwahid honay ka munkir nahin ho sakta, aur Imam Abu Hanifah Rahimullah Alayhi Tallah nay agar kohi kitab Tawassul per nahin likhi ya unoon nay zeroori nah samji toh is ka matlab yeh nahin kay woh munkir thay. Yeh Musalam asool heh aur kohi be ba shahoor aadmi inqaar nahin keray ga kay agar kissi fard ka kissi aqeedeh per silence sabat ho yehni nah us kee taheed sabat ho toh matlab yeh nahin leeya jahay ga kay us ka aqeedah nahin thah. Balkay sakoot ko nah tardeed meh aur nah hee Taheed meh leeya ja sakta heh. Abh agar Imam Abu Hanifah nay kuch tawassul per nahin likha toh is ka matlab yeh nahin kay woh mantay nahin thay, aur yeh assumption bee nahn lee jaa sakti kay woh mantay thay, jab black board per kuch likha hee nahin, toh perh ker batahen kia, Imam Abu Hanifah kee nah tardeed aur nah taheed black board kay blank honay per daleel heh.

 

Dosri asooli baat Fiqha meh ham Imam e Aazam Abu Hanifah Rahimullah kay Muqallid hen aqahid meh nahin, ham ko Allah kay ek honay, wahda'hu la shareek honay, be misl o misaal honay meh Imam Abu Hanifah kee rehnumahi kee zeroorat nahin, keyun kay in masail per Quran wazia heh aur Imam e Azam Mujtahid thay, aur joh un ka Ijtihad Quran o Sunnat say sabat huwa, yeh hamara Fiqh heh. Aqahid meh Taqleed nahin kee jaati, keyun kay yeh ho hee nahin sakta kay ek Aalim Quran har ek Aqeedeh per kuch likha, Quran o Hadith meh itnay aqahid kay points hen kay maulvi likhtay likhtay mar saktay hen magar aqahid ka tafseel complete nahin ho sakti.

 

Dosri baat jin points per Imam Abu Hanifah nay Ijtihaad keeya, aur apnay Ijtihaad ko Quran o Sunnat say sabat keeya ham us ko tasleem kertay hen, Imam kay Ijtihad joh Fiqhi masail aur joh Fiqhi masail per nahin thay sab ko mantay hen, magar jis jis issue per un kee rehnumahi hasal heh ham kertay hen, aur jin per un ka sakoot heh ham directly Quran o Hadith say rajooh kertay hen, un ka kissi aqeedeh per sakoot ka matlab yeh nahin kay ham Quran o Ahadith kay un aqahid kay munkir ho jahen joh Imam e Azam kay Ijtihad say sabat nahin hen.

 

Abh agar meh kissi Karachi jana heh aur meh us kee rehnumahi kay wastay us ko rasta batlahoon aur meh us ko Islamabad say Lahore ka rasta naqshay per dekhahoon, aur woh naqshay ko saath leh ker meray dekha hay huway rastay per chal peray, aur jab woh Lahore puncha toh is ka kia matlab hoga kay woh dobara naqshay say rajooh nahin ker sakta, jee nahin ker sakta heh meh nay ussay rasta Islamabad say Lahore taq bataya, joh meh nay nahin bataya abh woh ya khud naqsha khol ker baaqi rasta dekh sakta heh ya kissi aur say maloom ker sakta heh. Is'see tera jahan taq Imam e Azam Abu Hanifah Rahimullah Alayhi Tallah nay Siraat e Mustaqeem, seeday rastay ko Quran o Hadith say dekhaya ham chalay, jahan taq un kee guidance Quran o Hadith say milti heh ham chaltay hen abh Siraat e Mustaqeem ko jahan taq bataya Quran o Hadith say ham chaltay rahay us rastay per gamazaan rahay, joh nihsandaee kee Sirat e Mustaqeem kee Quran o Hadith say ham us per chaltay rahay, aur jahan per unoon nay kuch nah bataya, ham nay Quran o Hadith kholay aur Siraat e Mustaqeem per bartay chalay gahay, Imam e Azam Abu Hanifah Rahimullah Alayhi Tallah nay Sirat e Mustaqeem ka rasta bataya ham chaltay rahay, jab un ka bataya huwa rastay kee hadood say agay punchay toh ham nay Quran O Hadith ko samnay rakh ker khud tehqeeq shoroon ker deeh, jab taq Imam Abu Hanifah ba'hasiyat e ustad guide kertay rahay Quran o Hadith per, ham nay un kee guidance ko qabool keeya un kay shagird banay, un kay muqallid banay, jab ustaad nay kissi maslay per kuch nah bataya ham nay khud Quran o Hadith per tehqeeq ker leeh.

 

Alhasal yeh heh kay Imam e Azam Abu Hanifah Rahimullah Alayhi Tallah nay agar Tawassul per kuch likha nahin toh is ka matlab yeh nahin kay ham Sirat e Mustaqeem per chalna band ker denh, balkay unoon nay thoray say Sirat e Mustaqeem kee nishandaee kee thee, ham ba'asaani say us Siraat e Mustaqeem per chalay, agay Imam nay kuch nahin bataya Quran o Hadith say toh ham nay khud tehqeeq shoroon ker deeh. Aur alhamdulillah khadam nay Quran o Hadith say Tawasul ko sabat keeya heh, joh la jawab raha, aur inshallah Najdi'at kay leyeh ta qiyamat taq la jawab rahay ga. B)

 

Muhammed Ali Razavi B)

Link to post
Share on other sites

Ya Allah, Wahabiat Meh Ek Gherat Mand Ko Peda Ker Deh,

Joh Razavi Kay Saath Munazirah Keray, Ya Allah, Tooh

Kissi Ek Meh Hee Thori See Gherat Peda Ker Deh, Taqay

Jhootay Besat Hoon, Aur Jis Zillat, Ka Munafiqeen Ka

Tooh Nay Wada Farmaya Heh Woh In Najdiyoon KO MIllay.

 

Ameen, Suma'ameen!! :) Sab Sunni bolo Aameen!!

 

Muhammed Ali Razavi

Link to post
Share on other sites

Ya Allah, Wahabiat Meh Ek Gherat Mand Ko Peda Ker Deh,

Joh Razavi Kay Saath Munazirah Keray, Ya Allah, Tooh

Kissi Ek Meh Hee Thori See Gherat Peda Ker Deh, Taqay

Jhootay Besat Hoon, Aur Jis Zillat, Ka Munafiqeen Ka

Tooh Nay Wada Farmaya Heh Woh In Najdiyoon KO MIllay.

 

Ameen, Suma'ameen!! :) Sab Sunni bolo Aameen!!

 

Muhammed Ali Razavi

 

wah Razavi bhai...........kamal kr dea aapne......Allah pak aap ko mazeed ilm-e-nafe ata farmae aor isitrah badmazhabon ko dalail k aaray se cheertay rehnay ki tofeeq ata farmae.....Aameen

 

wahabi to pehlay hi dar k maray bhaagay huay hain aor uooper se aapne in k khabasat bhray saron per mazeed jootay barsanay shuroo kr deay hain....aapne to inhain aesa nanga kia k in ko kaheen ka nhi chora

 

ab gae honge aap k suwalat k jwabat k ki jga khanian likhwanay apnay kisi GHAIRULLAH k pass :lol:

Link to post
Share on other sites

بسم اللہ الرحمن الرحیم

صرف یااللہ سبحانہ تعالی مدد

انماالمشرکون نجس (سورہ توبہ)

پوسٹ نمبر ۱۱۶ کا جواب

قارءین دیکھ سکتے ہیں کہ بریلویت کس طرح داءیں باءیں جاءپناہ تلاش کررہی ہے لیکن آج نہ ہی ان کے لیے یارسول اللہ مدد کامشرکانہ نعرہ کارآمد ثابت ہورہا ہے نہ یاغوث المدد کامشرکانہ عقیدہ انکے لیے سہارہ ہو رہا ہے اور نہ ہی عطار لگا بیڑا پار کا مشرکانہ نعرہ یاد آرہا ہے۔

 

السلام علیک ایہاانبی کے حوالے سے میرا جواب ذیل میں آءے گا۔

میں نے اپنی پوسٹ نمبر ۱۱۱میں سوال نمبر ایک کا جواب مانگا تھا جو کہ نہیں آیا لہذا ایک بار پھر دھراتا ہوں۔

سوال نمبر ایک ؛ احمد رضا کے ترجمے میں دیکھاجاسکتا ہے کہ لفظ ”اے مومنو” ترجمہ میں نہیں ہے جبکہ سعیدی نے ترجمہ کرتے ہوءے ”اے مومنو” سے ترجمہ شروع کیا لہذا سب سے پہلے ترجمہ کیا گیا لفظ ”اےمومنو” عربی متن میں دکھاءیں کہ کہاں لکھا ہےمذکورہ آیت میں؟

سوال نمبر دو کا جواب بھی نہیں آیا لہذا ایک بار پھر دھراتا ہوں۔

آپ اس آیت سورہ نساء ۶۴ کا فہم اپنے امام ابوحنیفہ رح سے ثابت کریں کہ انہوں نے اس آیت کو اسی طرح سمجھا جس طرح آپ سمجھ رہے ہیں۔ کیونکہ حلقہ مقلدین میں آپکے فہم کی کوءی اہمیت نہیں آپ ایک گمنام مقلد ہیں اور پابند ہیں اپنے امام کی تقلید کے؟

سورہ نساء آیت نمبر ۶۴ بھی ذہن میں رہے اور وہ بھی ترجمہ احمد رضا کا بحوالہ کنزالایمان ”اور ہم نے کوءی رسول نہ بھیجا مگر اس لیے کہ اللہ کے حکم سے اسکی اطاعت کی جاءے اور جب وہ اپنی جانوں پر ظلم کریں تو اے محبوب تمھارے حضور حاضرہوں اور پھر اللہ سے معافی چاہیں اور رسول ان کی شفاعت فرماءے تو ضرور اللہ کو بہت توبہ قبول کرنیوالا مہربان پاءیں۔

سوال نمبر تین کا جواب بھی نہیں آیا لہذا ایک بار پھر دھراتا ہوں؛

بریلوی مشرکین حیات ظاہری و حیات باطنی کو جس اصطلاح میں بھی مانتے ہیں اسے صحیح سند کے ساتھ ابوحنیفہ رح سے معہ حوالے و اسکین کے ثابت کریں؟

سوال نمبر چار کا جواب بھی نہیں آیا جس میں میں نے مطالبہ کیا تھا کہ احمد رضا نے ظلموا کا ترجمہ لفظ ”ظلم” سے استعمال کے ساتھ کیا جبکہ سعیدی صاحب نے ظلموا کا ترجمہ لفظ ”مسءلہ” کے استعمال کے ساتھ کیا کس کا ترجمہ غلط ہے احمد رضا کا یا سعیدی کا؟

سوال نمبر پانچ کا جواب بھی نہیں آیا جس میں میرا مطالبہ تھا کہ کسی مستند ڈکشنری سے عربی لفظ ” ظلموا” کا ترجمہ ”مسءلہ” دکھاءیں؟

سوال نمبر چھ کا جواب بھی نہیں آیا جس میں میرا مطالبہ تھا کہ

نبی علیہ السلام کا فرمان صحیح سند کے ساتھ معہ حوالہ پیش کریں کہ اس آیت کا حکم بعد از وفات النبی علیہ السلام بھی ایسا ہی ہے جیسا کہ آپکی حیات میں تھا؟

نوٹ : یہ سوال اس وقت ہے جب مقلد اپنے امام کا فہم مذکورہ آیت کے بارے میں نہ دکھا سکے۔

سوال نمبر سات؛ اس آیت کو فہم صحابہ کرام رضی اللہ عنہم سے صحیح سند کے ساتھ معہ حوالہ پیش کریں کہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے بھی اس آیت کو ایسا ہی سمجھا جیسا کہ آج کے بریلوی سمجھتے ہیں؟

اور ایک بات اور کہ جب آپ اس آیت سورہ نساء ۶۴ سے حیات النبی علیہ السلام کا عقیدہ لیتے ہیں تو اس آیت سورہ نساء ۵۹ سے انکارکیسے کرسکتے ہیں کیا ایک کا اقرار اور دوسرے کا انکارصرف اپنے نفس پرستی کے لیے یہ کون سا اصول بنایا ہے کہ قرآن کی آدھی بات کو ماننا اور آدھی کا انکار کیا یہ بھی بریلویت کے مدارس میں تعلیم دی جارہی ہے ۔لہذا جب آپ سورہ نساء ۶۴ سے حیات النبی کا عقیدہ لیتے ہیں تو اب اس کے حوالے سے بھی میرے سوالات کے جوابات دیں اور سورہ نساء ۵۹ کے حوالے سے بھی میرےکیے گءے سوالات کے جوابات دیں۔

 

میرے جن سوالات سے سعیدی صاحب کے نفس پر چوٹ پڑتی تھی اس پر تو تبصرہ کرگءے لیکن میرے سوالات جو تاحال حلقہ بریلویہ کی جانب سے لاجواب ہیں کو چھواتک نہیں باقی جہاں جہاں سعیدی صاحب نے ہیراپھیری کی ہے ان کا جواب درج ہے۔

جواب نمبر۱۔ انور صاحب کا اپنی سات عدد پوسٹس میں میری طرف سے پیش کی جانے والی سورہ نساء کی آیت ۵۹ کے ترجمہ کو رد نہ کرنا باوجود اسکے کے اس ہی کو بنیاد بناکرمیں نے اپنی پانچ سے زاءد پوسٹس میں مختلف سوالات کیے اور پھر انورصاحب نے اپنی پوسٹ نمبر ۹۰ کی سطر ۳ میں لکھا کہ ”جس قرآنی آیت کو آپ ایک خاص وقت تک محیط کرنے کی کوشیش (صحیح لفظ کوشش ہے) آپ منافق و غداراسلام کررہے ہو اس کا بھی منہ طور ( صحیح لفظ توڑ ہے ) جواب آپ کو جلدمل جاءے گا انشاءاللہ”۔ کیا اس کے بعد بھی جہلا کو سمجھانے کے لیے انورصاحب کی تحریر سے ”تسلیم” دکھانا باقی رہ جاتا ہے۔ میرے وہ سوالات جن سے بریلویوں کومرچیں لگیں کہ بعد انورصاحب کی پوسٹس دیکھی جاسکتی ہیں کہ کسی بھی اپنی پوسٹ میں انہوں نے میری بیان کردہ آیت کوغیرمتعلقہ نہیں کہا اور نہ ہی کسی اور مشرک نے تو پھر سعیدی صاحب کی یہ لفظی قلابازیاں بھلا کیا اہمیت رکھتی ہیں۔ سعیدی صاحب و دیگر آل تقلید بریلویہ سے جب میرے سوالات کے جواب نہ بن پاءے تو راہ فرار کے لیے یہ طریقہ وضع کیا کہ نہیں جی نہیں وہ آیت تو زیر بحث ہے ہی نہیں۔ واہ بریلویوں واہ جب جواب نہ بن پڑا تو راہ فرار کا کیا خوب طریقہ نکالا ہے۔

۲۔ اس تھریڈ پر آپ مناظرانہ بحث کررہے ہیں کوءی حدیث کی کتاب نہیں لکھ رہےاس قسم کی لفظی ہیراپھیری سے آپ اپنے آل تقلید بریلویہ میں تو اندھوں میں کانا راجا کے مصداق ہوسکتے ہیں لیکن مواحدین آپکی ان دجل فریبیوں میں نہیں آسکتے الحمدللہ ؛ اور دوسری بات یہ کہ امام بخاری نےصحیح بخاری جوکہ حدیث کی کتاب ہے تالیف کی وہ کوءی مناظرانہ بحث پر مبنی کتاب نہیں جو آپ انہیں الزام دے سکیں لہذا ان کا اشاراتن (اس لفظ کا املا صحیح یہ ہے اشارہ ؛ ہ پر دونکتے دوزبرکےساتھ ہیں جو کہ ٹاءپنگ میں نہیں آرہے لہذا تلفظ کی اداءگی کے لیے اشاراتن لکھا گیا ہے) ادھوری آیت کا لکھدینا معیوب نہیں ہاں آپکا ادھوری آیت لکھنا ضرور معیوب بات ہے کیوں کہ آپ یہاں حدیث کی کتاب تالیف نہیں فرمارہے بلکہ مناظرانہ بحث کررہے ہیں۔

۳۔ سعیدی صاحب آپکی حالت بھی بڑی دیدنی کہ جو کھاوں چوٹ کدھر کی تو بچاوں چوٹ کدھر کی جب آپکی احمد رضا کے ترجمہ سے میں نے صرف اللہ تعالی کی توفیق سے گرفت کی تو آپکے پاس اس لاچارگی کے اور کوءی طریقہ راہ فرار کا نہیں رہا۔ دراصل آپ بات ہی ادھوری اس لیے کرتے ہیں کہ بھاگنے کی راہ کھلی رہے۔لیکن آپ اپنے معتقدین سے تو جان چھڑاسکتے ہیں کہ وہ بیچارے آنکھیں بندکرکے آپ کے پیچھے چلے جارہے ہیں لیکن ہم ہیں مواحدین جو آپکی جان نہیں چھوڑ سکتے اس وقت تک جب تک چور کو اس کا مقام نہ بتادیں۔

آپ میں نسیان واقعی ہی کچھ زیادہ ہے یا پھرآپکے مدارس میں کذب بیانی کی قلابازیاں کھانے کی خوب خوب مشق کراءی جاتے ہے۔

اپنی پوسٹ نمبر۱۱۰ ملاحظہ کریں اور بتاءیں کہ ”اے مومنو اگر تمہیں کوءی مسءلہ پیش آءے تو نبی کے دربار میں حاضر ہوجاو”۔

یہ آپ نے ترجمہ نہیں کیا تو اور کیا کیا ہے۔اب جب آپ پھنس چکے ہیں توفورا تکرار شروع کردی کہ یہ ترجمہ نہیں میں نے ترجمہ نہیں کیا ارے اگر یہ ترجمہ نہیں تو پھر آپ نے اپنی پوسٹ ۱۱۰ کی بنیاد کس پر رکھی ہے۔ آپکی مثال اس چور کی ہے جسے چوری کرتے رنگے ہاتھوں پکڑلیاجاءے اور جب اسے چور کہہ کر پکارا جاءے تو وہ جھٹ کہہ اٹھے کہ میں نے کب یہ اقرار کیا ہے کہ میں چور ہوں۔جس طرح اس چور کے انکار میں اقرار چھپا بیٹھا ہے اسی طرح آپکےانکار میں بھی اقرار ہے۔

۴۔ میں نے تفہیم سے ترجمہ نزاع نقل کیا تھا اور کنزالایمان سے ترجمہ جھگڑا نقل کیا تھا جو کہ میری پچھلی پوسٹس میں دیکھا جاسکتا ہے۔

اگرآپ کا اشارہ انورصاحب کی پیش کردہ مبہم آیت کے حوالے سے ہے تو اس کے لیے میرا جواب نمبر۱ مطالعہ کریں۔

۵۔ آپ نے ترجمہ کرتے ہوءے بالکل دانستہ لوگوں کو گمراہ کرنے کے لیے غلطی کی جسے آپ قبول کریں یا نہ کریں لیکن یہ ایک اٹل حقیقت ہےکیونکہ آپ کا انداز تحریر آپکا عقیدہ شرک اس پردلیل صریح ہے لہذا اسی پس منظر میں میں نے انفسھم جب آپکی نقل کردہ آیت میں نہیں پایا تو اسے تحریف سے تعبیرکیا لیکن اب آپ یہ اقرار کررہے ہیں کہ آپ سے سہوہوا تو حسن ظن رکھتے ہوءے صرف اسے مانے لیتاہوں۔

۶۔آپ قرآن کی جس آیت کو جس طرح دل میں آءے تشریح کریں خواہ وہ فہم ابوحنیفہ رح سے ثابت ہی نہ ہوخواہ وہ فہم صحابہ سے ثابت ہی نہ ہو بھلا آپ کے عقیدہ پر کیا اثر پڑے گا۔

تو پھر آپکا آیت سے انفسھم نکال دینے سے آپ پر بھلا کیا اثر پڑے گا۔کیوں کہ آپکا تو اوڑھنا بچھونا ہی شرک سے شروع ہو کر شرک پر ختم ہوتا ہے۔

۷۔ کہیں کی اینٹ کہیں کا روڑا بھان متی نے کنبا جوڑا؛

آدھی بات کرنا اور آدھی چھپالینا یہ عادت تو آپ لوگوں کی جاءے گی نہیں ارے جناب یہ تو میرے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا وہ معجزہ ہے جو اللہ تعالی نے آپ کو دیا؛پھر نبی علیہ السلام نے مسجد اقصاء میں امامت کراءی وہاں بھی دیگر نبیوں کی طرح موسی علیہ السلام موجود ہیں اور پھر آسمان میں بھی موسی علیہ السلام سے ملاقات ہوتی ہے۔

اب اگر آپ اس سے حیات النبی کا عقیدہ لیتے ہیں تو جواب دیں کہ عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کو یہ حدیث سمجھ میں نہیں آءی تھی نعوذباللہ جس سےآج چودہ سوسال بعدایک مقلد استدلال کررہا ہے۔ اب اٹھاءیں صحیح بخاری جلد سوءم ۔ کتاب الاستءذان پارہ ۲۵ ”عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی علیہ السلام نے مجھ کو تشہد اس طرح سکھلایا کہ میرا ہاتھ آپکے دونوں ہاتھوں میں تھا جیسے قرآن کی کوءی سورت سکھلاتے التحیات للہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ السلام علیک ایہاالنبی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ تشہد ہم اس وقت پڑھاکرتے تھے۔جب آپ ہم لوگوں میں تشریف رکھتے تھے آپ کی وفات کے بعد ہم السلام علیک ایہاالنبی کے بدل السلام علی النبی کہنے لگے”۔

اگرنبی علیہ السلام موسی علیہ السلام کے واقعہ کے حوالے سے حیات النبی کا عقیدہ دے کر جاتے تو عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کسی صورت یہ نہ کہتے کہ یہ تشہد ہم اس وقت پڑھاکرتے تھے۔جب آپ ہم لوگوں میں تشریف رکھتے تھے آپ کی وفات کے بعد ہم السلام علیک ایہاالنبی کے بدل السلام علی النبی کہنے لگے پس اس سے ثابت ہوا کہ اہل سنت و الجماعت اہل حدیث کا عقیدہ وہی ہے جو صحابہ کا تھا اور صحابہ کا عقیدہ بعد از وفات حیات النبی کا عقیدہ نہ تھا جیسا کہ حوالے سے ثابت ہوگیا ہے۔سعیدی صاحب اسے کہتے ہیں فہم صحابہ ہم نے تو اپنا عقیدہ صحابہ کے فہم سے ثابت کردیاالحمدللہ اور صحابہ کون جنہیں میرے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان اقدس سے رضی اللہ عنہم و رضوعنہ کا خطاب ملا۔آپ تو جس امام کے مقلد ہیں اس کا فہم حیات النبی کا صحیح سند سے نہیں دکھاسکے اب تک صحیح سند کے ساتھ حدیث کیا دکھاءیں گے۔ آپ کے دامن عقیدہ میں ہے ہی کیا سواءے ضعیف احادیث ؛فرضی واقعات ؛ حکایات وغیرہ کے۔

نوٹ : آپ نے لکھا ”۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یا بطور استقبال حالت قیام میں میرے آقا صلی اللہ علیہ وسلم پر صلوہ (درود) پڑھ رہے تھے”۔

یہ ایک مقلد کا قیاس ہے یا

حدیث کا ٹکڑا ہے اگر حدیث کا ٹکڑا ہے تو حوالہ دیں اور اگر آپکا قیاس ہے تو اس کی کوءی اہمیت نہیں۔

 

۸۔ میرا سوال اپنی جگہ اب بھی موجود ہے آپ نے لکھا کہ ”امام ابوحنیفہ کا تو فرمان ہے کہ اخذبکتاب اللہ فان لم اجد فبسنتہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم”۔

اس کی سند بیان کریں؟

 

۹۔ یہ دعوی احمقانہ نہیں بلکہ آپکی سمجھ احمقانہ ہے آپکا انداز تحریفانہ ہے آپکا بنی اسراءیل کی طرح ادھوری بات کرکے لوگوں کو گمراہ کرنے کا طریقہ واردات پرانا ہے

میری پوری تحریردرج ذیل ہے

”کیوں کہ حیات النبی کے مسءلہ پر نبی علیہ السلام کا فرمان صحیح سند کے ساتھ آءے تو کہاں سے آءے ابوحنیفہ رح کا موقف صحیح سند سے آءے تو کہاں سے آءے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا فہم صحیح سند سے آءے تو کہاں سے آءے کیونکہ یہ عقیدہ تو بہت بعد کی پیداوار ہے”؛

جبکہ آپ نے جومیری تحریر میں قطع برید کرکے بددیانتی کا ثبوت دیا ہے اسے بھی قارءین ملاحظہ فرماءیں۔جناب نے میری تحریرکوجملوں کے بیچ سے نکال کر اس طرح نقل کیا

” صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کا فہم صحیح سند سے آءے تو کہاں سے آءے؟

جناب نے اس کے بعد لکھا گیا میرا وہ جملہ جو کہ میری بات کو مکمل کرتا ہے کو حذف کردیا وہ یہ ہے ”کیونکہ یہ عقیدہ تو بہت بعد کی پیداوار ہے”۔

آپ سے یہی توقع تھی کہ جب قرآن کو آپ نے نہ چھوڑا ترجمہ میں تحریف کرنے میں تو میری تحریر بھلا قرآن کے سامنے کیااہمیت رکھتی ہے۔

۱۰۔ آپ مقلد ہیں جسکی وجہ سے صحیح حدیث (بااعتبار سند)آپ کے حلق سے نیچے نہیں اترتی یا پھر اسے جواز بناکر ضعیف ؛ من گھڑت ؛ موضوع احادیث کو پیش کرکے اپنے مشرکانہ عقیدہ کو سہارہ دیتے ہیں حالآنکہ مقلد کو رجوع الی الحدیث کی اجازت اسکی فقہ حنفی دیتی نہیں تو پھر آپ سے آپکے امام کا قول صحیح سند کے ساتھ کا مطالبہ کیا جاءے گا جب میں نہ یہ کہا ہی نہیں کہ میرا یہ مطالبہ حدیث کی رو سے ہے تو آپکا اس کی آڑ لیکر فرار ہونا اور کسی بھی ایک اس فتوی کی سند جسے آپ ابوحنیفہ کا فتوی کہتے ہیں پیش نہ کرسکنا آپکی شکست خوردہ ذہنی کیفیت کی عکاسی کررہاہے۔ مت بھاگیں میدان سے اور لاءیں ابو حنیفہ رح کا فہم صحیح سند کے ساتھ اس آیت کے حوالے سے جسے بنیاد بناکرآج بریلویت کی عمارت کو سہارہ دیاجارہاہے۔اور حیات النبی کا خود ساختہ پودا ضعیف احادیث ؛ من گھڑت حدیثوں ؛ حکایتوں اور فاسد تاویلوں کے پانی سے سینچا جارہاہے۔ سورہ نساء آیت نمبر ۶۴ کا فہم ابوحنیفہ سے صحیح سند کے ساتھ پیش کریں کہ انہوں نے اس آیت کو اسی طرح سمجھا جیسا کہ بریلوی سمجھتے ہیں؟

اور کتنی عاجزی و بے بسی ٹپک رہی ہے آپکی تحریر میں ؛ کیا آپکے علم میں نہیں کہ میرے محمد رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان اقدس سے نکلے ہوءے وہ لفظ کہ ” جب کوءی فاسق تمہارے پاس خبر لاءے تو اس کی تحقیق کرلیاکرو”۔

کتنے ہی ایسےمساءل ہیں جن پر مہر لگاءی گءی قال ابوحنیفہ عند ابوحنیفہ کی ان سب کی سند آپ پیش کرسکتے ہیں۔ کیا آپ بتانا پسند کریں گے کہ کون کون سے اجتہادی مساءل ہیں کہ جن کی سندیں آپ کو مل چکی ہیں۔

ذرا ہمیں بھی تو علم ہو؟

حدیث کی ہر کتاب میں عربی متن میں صحابی کی روایت میں صلی اللہ علیہ وسلم ملتا ہے تو کیا یہ صحابہ نے اپنی طرف سے استعمال کیا یا اگر نہیں تو کیا وہ نبی علیہ السلام کی تعلیم وادب نہیں جانتے تھے نعوذباللہ۔

۱۱۔ جملوں کے ہیرپھیر ؛ لفظوں کی قلابازیوں کے تو آپ ماہر ہیں لیکن اپنے بریلوی شاگردوں کےسامنےہمارے سامنے نہیں بات تو آیت کی منسوخی کی یہاں ہے ہی نہیں بلکہ فہم کی بات ہے کہ اسے صحابہ نے کیسے سمجھا ابوحنیفہ نے کیسے سمجھا کیوں کہ آپ ابو حنیفہ کے مقلد ہیں اور انکی تقلید آپ پر لازم ہے۔لہذا آپکا فہم کوءی اہمیت نہیں رکھتا۔ابوحنیفہ کا فہم یہاں صحیح سند کے ساتھ نقل کریں؟

۱۲۔ آپکی بددیانتی ؛ خیانت؛ تحریف ترجمہ وغیرہ وغیرہ سب ہمارے سامنے ہے ان سب کو مدنظررکھتے ہوءے صرف آپکے حوالوں پربھلا کیسے اعتبارکیاجاسکتا ہے۔لہذا تمام کے اسکین یہاں لگاءے جاءیں۔ اورصرف ایک تفسیر ابن کثیرکا اسکین جو چشتی پادری صاحب نے لگایا ہے اس اسکین میں ہی اس کا پول کھل رہا ہے جو شاید آپکے اندھے مقلد کو نظر نہ آیا جیسے البدایہ والنہایہ سے میں نے اسی کے موقف کا رد دکھایا تھا الحمدللہ ؛ جس پر وہ تاحال خاموش ہے۔

ابونصربن الصباغ نے اپنی جس کتاب میں اس واقعہ کا ذکر کیا ہے کیا وہ حدیث کی کتاب ہے۔ جواب یقینا نہ میں ہوگا تو پھر وہ کتاب ہے کیا وہ تو قصوں کی کتاب ہے نہ کہ حدیث کی کتاب اس سے دلیل لانا آل تقلید بریلویہ کا ہی کام ہے یہ حکایت ہے جو عتبی کے حوالے سے مشہور ہے اور اس حکایت کی اسی طرح دین میں کوءی اہمیت نہیں جس طرح آج کے الیاس قادری کے چھوٹے چھوٹے کتابچوں میں ذکرکردہ حکایتوں کی کوءی اہمیت نہیں ہے۔

۱۳۔اسے استدلال نہیں کہتے مقلد صاحب اسے فہم کہتے ہیں صحابہ کے درمیان جس جس معاملہ پر نزاع ہوا کیا وہ نبی علیہ السلام کی قبراطہر پرجاکرمعاملہ حل کراتے تھے جواب یقینا نہ میں ہوگا تو پھر کس طرح معاملہ حل ہوتا تھا۔ نبی علیہ السلام کی حدیث اس معاملہ پر جب کوءی تیسرےصحابی سنا دیےتو فورا وہ حدیث پر عمل شروع کردیتے اوراپنے نزاع کو اللہ اور اسکے رسول علیہ السلام کی طرف لوٹا دینا کا معنی بعد از وفات النبی یہی ہے کہ نبی علیہ السلام کے فرامین کو من و عن مان لینا آل تقلید بریلویہ و دیوبندیہ کی طرح احادیث میں کٹ ہجتی نہ کرنا اسے کہتے ہیں صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کے فہم سے دین کو سمجھنا جو کہ آپکو آتا نہیں۔

۱۴۔ مقلد بھلا کیا جانے کے تحقیق کس چیزکا نام ہے۔کیا آپ کی فقہ آپکو اجازت دیتی ہے کہ آپ تحقیق کریں تو آپ کو سب سے پہلے تمام وہ مساءل جن کے پیچھے قال ابوحنیفہ عند ابوحنیفہ کی مہر دھڑادھڑ لگا کر مقلدین کو بے وقوف بنایاجارہا ہے کا پتا لگانا چاہیے کہ آیا انکی سند کیا ہے؟

آپکے نظریہ کی پختگی تو ابوطالب کے مثل ہے کہ مرتا مرگیا لیکن میرے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا کہنا نہ مانا۔

باقی رہے آپکے ۳۲ سوالات بقول آپکے ؛ تو وہ میں نے اس لیے اہمیت نہ دیے کہ آپکو سوال کرنے کا بھی ڈھنگ نہیں آتا بس اپنے جیسے لوگوں کو آپ خوش کرنے کے لیے سوال نمبروں کی تعداد بڑھاکر تبصرہ کو سوالات کے نام دے دیتے ہیں۔خیر اس کا بھی پہلے کی طرح حشر کروں گا انشاءاللہ تعالی صرف اور صرف اللہ سبحانہ تعالی کی توفیق سے۔

اگرمیرے یا میرے دیگر مواحدین بھاءیوں کے سوالات جاہلانہ ہیں توآپ لوگ لاجواب کیوں ہو جاتے ہیں ادھر ادھر کی خاک کیوں اڑانے لگ جاتے ہیں لفظوں کی ہیراپھیری کیوں شروع کردیتے ہیں۔کبھی نوید خان جواب دینے کی کوشش کرتا ہے لیکن جب منہ کی کھاتا ہے تو غاءب ہی ہوجاتا ہے۔چشتی پادری آتا ہے تو عربی میں حوالے دیتا ہے جو خود اسکے خلاف چلے جاتے ہیں کیوں کہ اس کو خود بھی سمجھ نہیں آتا کہ جو اسکین لگانے جارہا ہوں وہ میرے اپنے گلے پڑجاءے گا اور ادھورے ادھورے جوابات دینے کی کوشش کرتا ہے اور بلا آخر زچ ہوکر وہ بھی پیچھے بیٹھ کرآپکی لفاظیوں پر خوب خوب تالیاں بجاتا ہے اور مشرکانہ انداز میں دعاءیں دینے کا وطیرہ اختیار کرتا ہے خواہ بات سمجھ آءے یا نہیں۔پھر اچانک سوءے ہوءے شخص کی طرح انور صاحب کا جاگنااور بڑی ہبڑدبڑ میں بے محل سوال کرنا اورجب ان کے سوال کی بنیاد پر انسے سوالات داغے جاتے ہیں تو پھر انکا دم دباکربھاگ جانا اور آپ کے تو کیا ہی کہنے کبھی ترجمے میں غلطی کبھی عربی عبارت مبہم نقل کرنا اور کبھی کبھی قرآن کی آیت نقل کرنے میں نسیان کا ہوجانا تو کبھی لفظوں کی ہیرا پھیری کبھی تحریر کے نقل میں بددیانتی وغیرہ وغیرہ

اور اب ایک نءے شخص آءے ہیں اور وہ بھی چیلنج کے دعوے کے ساتھ ارے بھءی چیلنج کرو اور شوق سے کرو کس نے منع کیا ہے بھلا؛ لیکن کچھ تو اصول بنالوکیا اسی طرح ایک ایک کوہم صرف اللہ تعالی کی توفیق سے بھگاتے رہیں گے

اورآنے والا ہر نیا مشرک اپنے گلے سے شیر کی آواز نکالنے کی نقل کرتا رہے گا۔لیکن یاد رکھوکتا اگر شیر کی نقل کرے تو شیر نہیں ہوجاتا کتا ہی رہتا ہے۔ اور یہ بھی یاد رہے کہ میرے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو کتوں سے بڑی نفرت تھی

خواہ وہ کتا مدینہ کا ہویا پاکستان کا؛ کیوں کہ جہاں کتا ہوتا ہے وہاں تو رحمت کے فرشتے تک نہیں آتے۔

لہذا ایک بار پھر میں موضوع کی طرف آتا ہوں میرے کیے گءے سوالات کے جوابات بغیر کسی لفاظی و ہیرا پھیری کے دیں جو کہ اوپردرج کیے گءے ہیں۔

نءے آنے والے بریلوی ریڈی ایٹنگ علی صاحب و دیگر صاحبان آپ سے بھی وہی تمام سوالات ہیں جوکہ میری پچھلی پوسٹس میں دیکھے جاسکتے ہیں جنکے جوابات آل تقلید بریلویہ دینے سے تاحال قاصر ہیں۔

ریڈی ایٹنگ علی صاحب میں نے آپکی تمام پچھلی پوسٹس نظرانداز کیں یعنی مطالعہ ہی نہ کیا کیونکہ وہ تمام کی تمام اردو خوش خط میں نہیں اور جس طرز پر آپ لکھرہے ہیں وہ میں پڑھتا نہیں۔ کہ اس میں وقت کا بہت زیاں ہے لہذا آپ اردو خوش خط میں اپنے کمنٹس لکھیں تاکہ آپکا " چیلنج" نظروں کے سامنے آسکے۔اور آءیندہ سے آپکی پوسٹس بغور مطالعہ کی جاسکیں اور دیگربریلوی مشرکین کی طرح صرف اللہ سبحانہ تعالی کی مدد سے آپکی طبیعت بھی صاف کی جاسکے۔انشاءاللہ تعالی۔

Link to post
Share on other sites

بسم اللہ الرحمن الرحیم

یا اللہ مدد کی آءیڈی سے آنے والے بھاءی کوالسلام علیکم و رحمتہ اللہ و برکاتہ ؛ اللہ تعالی آپکو جزاءے خیر دے آپ میری غیر موجودگی میں ان مشرکین کو میرے سوالات یاد دلاتے رہے ہمارا کام ہے ان کو شرک اور توحید کا فرق سمجھادینا یہ سمجھیں یا سمجھنے کی کوشش ہی نہ کریں انشاءاللہ تعالی اللہ تعالی کے دربار میں ہماری چھوٹ ہوگی اور جو توحید کو قبول کرے اور شرک کو چھوڑ دے وہ دین میں ہمارا بھاءی ہے اور جو توحید کو قبول نہ کرے اور شرک کی گندی دلدل میں دھنسا رہنا پسندکرے وہ خود اللہ تعالی کے حضور اپنے خلاف حجت قاءم کررہاہے۔ اللہ تعالی ہمیں دین اسلام میں استقامت عطافرماءے۔آمین۔

Link to post
Share on other sites

بسم اللہ الرحمن الرحیم

صرف یااللہ سبحانہ تعالی مدد

انماالمشرکون نجس (سورہ توبہ)

چشتی پادری صاحب اب آپکے کمنٹس صرف اس لیے پڑھتا ہوں کہ ذرا منہ کاذاءقہ کچھ تبدیل ہوجاءے۔ آپکے کمنٹس پڑھتا جاتاہوں اور آپکے ذہنی خلفشار کا اندازہ کرتا جاتا ہوں اور ہنستا جاتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لکھیں اور لکھیں تاکہ آپکا نقاب اتر سکے اور آپ بے نقاب ہوسکیں ان بھولی بھالی بھیڑوں کے سامنے جنکو آپ نے شرک کی دلدل میں پھنسانے کا بیڑا اٹھارکھا ہے۔انشاء اللہ کل قیامت کے دن آپ اپنا بوجھ بھی اٹھاءیں گے اور انکا بھی جو آپکی مشرکانہ باتوں میں آکر بہک جاءیں گے۔ اور ہاں آپ احمد رضا کی زبان کی عکاسی کچھ تھوڑی اچھی کرلیتے ہیں لیکن ریکارڈ تو آپکے مذھب کے بانی کا نہ کوءی توڑ سکا اور نہ ہی توڑسکے گا۔

Link to post
Share on other sites

<FONT size="5">

بسم اللہ الرحمن الرحیم

 

<DIV align="right">یا اللہ مدد کی آءیڈی سے آنے والے بھاءی کوالسلام علیکم و رحمتہ اللہ و برکاتہ ؛ اللہ تعالی آپکو جزاءے خیر دے آپ میری غیر موجودگی میں ان مشرکین کو میرے سوالات یاد دلاتے رہے ہمارا کام ہے ان کو شرک اور توحید کا فرق سمجھادینا یہ سمجھیں یا سمجھنے کی کوشش ہی نہ کریں انشاءاللہ تعالی اللہ تعالی کے دربار میں ہماری چھوٹ ہوگی اور جو توحید کو قبول کرے اور شرک کو چھوڑ دے وہ دین میں ہمارا بھاءی ہے اور جو توحید کو قبول نہ کرے اور شرک کی گندی دلدل میں دھنسا رہنا پسندکرے وہ خود اللہ تعالی کے حضور اپنے خلاف حجت قاءم کررہاہے۔ اللہ تعالی ہمیں دین اسلام میں استقامت عطافرماءے۔آمین۔

 

Abuzaid bhai  (salam)

 

Allah (azw) aap ki koshish ko qbool farmaey..waqii aap ke points bohot solid hein..ye CQ sahab ke pass sirf aik hi jawab hota hay..jab bhi sawal karo to kehte hein ke is ka jawab to diya ja chuka hay ..hairat hay pata nahi hamare sawal ka ye log kisko jawab daykar aatay hein..itne hi sache hi to aap ke aik aik sawal ko quote karke uska jawab daykar jaan churaein ..kion faaltu mein zalil ho rahin hein kab se.....

 

aap likhte rahin..nai logon ko faida ho raha hay....

 

 

 

 

Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.


×
×
  • Create New...