• Announcements

    • Sag-e-Attar

      IslamiMehfil Rules (Please Must Read, Before You Post Anything)   04/09/2017

        فورم کےعمومی قوانین آخری ترمیم: ۱۰ اپریل ۲۰۱۷ ۔۔۔عمومی فورم رول نمبر ۱۵ ایڈ کیا گیا ،جو نیچے آخر میںبولڈ فونٹ میں موجود ہے۔ فورم کی انتظامیہ کی طرف سے تمام ارکان کو خوش آمدید! پوسٹ ارسال کرنے سے پہلے تمام اراکین کو تاکید کی جاتی ہے کہ وہ مندرجہ ذیل قواعد و ضوابط کا مطالعہ کر لیں تا کہ مستقبل میں کسی قسم کا کوئی ابہام پیدا نہ ہو۔ اگر کوئی پوسٹ یا ٹاپکس فورم رولز کے خلاف نظر آئے تو تمام ممبرز سے گزارش ہے کہ رپورٹ کا بٹن استعمال کرکے انتظامیہ کی مدد کریں۔ ۱- اسلامی محفل ایک مکمل اسلامی سنی حنفی بریلوی مسلک سے منسلک فارم ہے جس میں کسی قسم کی غیر اسلامی و غیر اخلاقی پوسٹ کرنے کی اجازت نہیں ہے۔
      کسی قسم کی غلط پوسٹ کسی ممبر کو فارم پر نظر آئے تو رپورٹ بٹن کو استعمال کر کے انتظامیہ کو اطلاع کریں۔ اپنی طرف سے کسی ممبر پر نقطہ چینی کرنے کی اجازت نہیں۔

      ۲- اس فورم یا منتظمین کے متعلق کوئی شکوہ یا شکایت یا اعتراض واضح طور پر کسی بھی سیکشن میں بیان نہیں کرسکتے۔ اور شکوہ شکایت وغیرہ کرنے کیلئے ایڈمن سے براہ راست رابطہ کریں

      ۳- فورم میں دستخط استعمال کرنے کیلئے صرف ایک تصویر اور اس کی ازحد چوڑائی550پکسلز اور اونچائی145پکسلزسے زیادہ نہ ہو۔اور ساتھ میں کچھ لنکس کی اجازت ہے۔ سیگنیچر امیج میں یا لنکس میں کسی بد مذہب سائٹ کا لنک یا قابل اعتراض مواد پوسٹ کرنے کی اجازت نہیں۔

      ۴- کسی جاری گفتگو کے دوران ایسے روابط ارسال کرنے سے پرہیز کریں جن کا گفتگو سے تعلق نہ ہو۔

      ۵- بحث برائے بحث سے بچنے کی حتی الامکان کوشش کریں

      ۶۔ فورمز کی انتظامیہ آپ کو ہدایت کرتی ہے کہ براہ کرم کسی قسم کی ذاتی معلومات جیسے کہ اپنا پتا یا فون نمبر ارسال مت کریں جس سے تمام لوگوں کی اس تک رسائی ممکن ہو سکے۔ان معلومات کا غلط استعمال کیا جا سکتا ہے۔ اس لیے ہر ممکن طور پر ، اگر آپ اپنی معلومات کا تبادلہ کسی دوسرے رکن کے ساتھ کرنا چاہتے ہیں تو ذاتی پیغامات کا استعمال کریں۔ ۷۔ ٹاپک کے لئے مناسب ،موضوع سے متعلق ٹائٹل استعمال کریں۔  need answer,  jawab dejiye, please read it, must reply وغیرہ جیسے غیر موضوع ٹائٹل استعمال نہ کریں. ٹائٹل کی ایک بہتر مثال یہ ہے۔
      "A good example: "Help: I need "This" Book Scan
      "A bad example: "PLZZ HEEEEELP ۸۔ سرکار مدینہ صلی اللہ علیہ وسلم کا مبارک نام جہاں بھی استعمال کریں۔ درود شریف ضرور لکھیں۔ درود شریف والا ایموٹیکن بھی استعمال کرسکتے ہیں۔ (s.a.w) یا (pbuh) وغیرہ لکھنے کی اجازت نہیں۔ ۹۔ سنیوں کے آپسی اختلافات میں فورم کا *رجحان جمہور اور جید علماء کی طرف ہوگا۔ اس لئے ان موضوعات پر طویل بحث ممنوع ہے۔
      مثلاً...پیر کرم شاہ صاحب والا موضوع۔۔۔ اس جیسے موضوعات پر فورم کا رخ جید علماء اور جمہور علماء کی طرف ہوگا۔ دوسرا یعنی ویڈیو کا مسئلہ یا اسپیکر پر نمازوغیرہ کا مسئلہ(فروعی مسائل) ۔
      اس جیسے مسائل کو بنیاد کو بنا کر علماء کو برا بھلا کہنا ہرگز ممنوع ہےاور بلا وجہ بحث بھی ممنوع ہے۔ فروعی مسائل میں فورم کا رجحان بعض اوقات کسی عالم کی طرف یا بعض اوقات غیر جانبدار بھی ہوسکتا ہے۔

      ۱۰۔ غیر اخلاقی پوسٹ کرنے پر وارننگ یا بین کیا جا سکتا ہے۔

      ۱۱۔ کسی بھی عالم چاہے بد مذہبوں کا ہو ان کی بگاڑ کر تصویر شئیر کرنا منع ہے۔

      ۱۲۔ انگلش سیکشن کے علاوہ کسی بھی سیکشن میں انگلش پوسٹ کرنا منع ہے۔

      ۱۳۔ پوسٹ کو متعلقہ سیکشن میں کریں غیر متعلقہ سکیشن میں پوسٹ کرنے پر آپ کی پوسٹ کو موو (move) کر دیا جائے گا۔ ۱۴۔ عورتوں کی تصاویر ویڈیوز وغیرہ شئیر کرنا منع ہے۔ ۱۵۔ یہ فورم آپ کی سائیٹس کی تشہیر، بیک لنکنگ یا گوگل رینکنگ بڑھانے کے لئے نہیں ہے۔ جو بھی اسلامی مواد پوسٹ کریں اللہ اور اس کے حبیب صلی اللہ علیہ وسلم کی رضا کیلئے پوسٹ کریں۔ غیر متعلقہ لنکس ٹاپکس سے حذف کر دیے جائیں گے۔اگر کسی اسلامی سنی ویب سائیٹ کا لنک آپ پوسٹ کرنا چاہتے ہیں تاکہ دیگر ممبرز مستفید ہوں، تو سنی سائیٹس کے متعلقہ سیکشن میں نیا ٹاپک ویب سائیٹ ٹائٹل ہیڈنگ کے ساتھ  پوسٹ کریں۔

        مناظرہ سیکشن کے قوانین

      ۱۔ تمام ممبرز (خصوصاً سُنی ممبرز) مناظرہ سیکشن میں غلط زُبان کا استعمال نہ کریں اور اَدب کے دائرے میں رہ کر اعتراض کریں یا جواب دیں۔ غلط زبان استعمال کرنے پر آپکی پوسٹ میں ترمیم یا پوسٹ کو ڈیلیٹ کیا جاسکتا ہے۔ اور بار بار کرنے پر وارن یا بین بھی کیا جا سکتا ہے۔

      ۲۔ اگر کسی ممبر کے ایک موضوع پر دو مختلف ٹاپکس نظر آئے تو ایک ٹاپک بغیر اطلاع کے لاک یا ڈیلیٹ کیا جا سکتا ہے۔

      ۳۔ جن موضوعات سے متعلق پہلے سے ٹاپکس موجود ہیں، اپنا سوال،اعتراض یا جواب اُسی ٹاپک میں پوسٹ کریں۔ اگر الگ سے ٹاپک بنا کر پوسٹ کیا تو آپکے ٹاپک کو بند، ضائع یا دوسرے ٹاپک کے ساتھ یکجا کیا جاسکتا ہے۔

      ۴۔ مناظرہ سیکشن بحث برائے بحث کیلئے نہیں ہے۔ اگر کوئی پوسٹ بحث برائے بحث یا موضوع سے ہٹ کر محسوس ہوئی تو بغیر اطلاع کئے ڈیلیٹ کر دی جائے گی۔ بار بار ایسا کرنے پر وارن کیا جا سکتا ہے۔اور بین بھی کیا جاسکتا ہے۔

      ۵۔ ایسی سائٹ جن کا تعلق بد مذہبوں سے ہو یا ان سائٹ پر بد مذہبوں کا کوئی مواد موجود ہو ان کی کسی بھی قسم کی تشہیر کسی پوسٹ میں ان کا لنک وغیرہ شئیر کرنا پوسٹ کرنا سخت منع ہے ۔خلاف ورزی پر پوسٹ ڈیلیٹ یا ایڈیٹ کی جاسکتی ہے۔

      ۶۔ بدمذہبوں کی ویڈیوز شئیر کرنا منع ہے اگر کسی اعتراض کا جواب درکار ہو تو اس ویڈیو کا سکرین شاٹ لے کر بد مذہبوں کی سائٹ کا لنک ریمو کر کے امیج کی صورت میں پوسٹ کریں۔

      کسی سنی عالم کی تضحیک سخت منع ہے۔

      ۷۔ اگر کو ئی اعترض بھی ہو جس میں سنی عالم کے خلاف غلط زبان استعمال کی گئی ہو تو اس میں سے غلط زبان کو ریمو کر کے اعتراض پوسٹ کیا جائے۔

      ۸۔ صرف وہی سائٹ شئیر کی جائیں جو سنیوں کی ہوں صلح کلی مکتب فکر کی سائٹ بھی شئیر کرنا منع ہے۔

      ۹۔ اسلامی محفل کے کسی بھی ٹیم ممبر یا سینئر ممبر سے بدتمیزی ناقابل برداشت ہوگی اور بین بھی کیا جاسکتا ہے۔ ٹیم ممبرز بھی حدود کے دائرے میں رہ کر جواب دینے کے مجاز ہیں۔

      ۱۰۔ انتظامیہ کا فیصلہ حتمی ہے۔ اگر آپ کو کسی نقطے پر اعتراض ہے تو مناظرہ سیکشن میں پوسٹنگ کرکے اپنا اور ہمارا وقت ضائع نہ کریں۔ کسی بھی ممبر کو رولز کے خلاف کوئی پوسٹ نظر آئے تو فوراً رپورٹ کے بٹن سے ہمیں آگاہ کریں۔
         

Search the Community

Showing results for tags 'fitna wahabi deobandi'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • Urdu Forums
    • Urdu Literature
    • Faizan-e-Islam
    • Munazra & Radd-e-Badmazhab
    • Questions & Requests
    • General Discussion
    • Media
    • Islami Sisters
  • English & Arabic Forums
    • English Forums
    • المنتدی الاسلامی باللغۃ العربیہ
  • Arabic Forums
  • IslamiMehfil Team & Support
    • Islami Mehfil Specials

Calendars

  • Community Calendar

Found 1 result

  1. Hazrat aik wahabi nay dawat islami per aietraz keeya hay. is ka jawab inayat fermadien. سفید مرغ کی فضیلت ● سوال: چند دنوں سے ایک روایت بہت زیادہ گردش کررہی ہے کہ آپ علیہ السلام نے فرمایا کہ گھر میں سفید مرغ پالو کیونکہ جس گھر میں سفید مرغ ہوتا ہے اس گھر اور اس کے اردگرد کے گھروں کے قریب شیطان اور جادوگر نہیں آسکتا. اس روایت کو آج کل لوگ بہت پھیلا رہے ہیں اور خصوصاً عامل حضرات اس کو عام کررہے ہیں. اس روایت کی تحقیق مطلوب ہے. ▪ الجواب باسمه تعالی واضح رہے کہ مرغ کے متعلق ذخیرہ حدیث میں بہت ساری روایات موجود ہیں لیکن ان میں سے اکثر روایات سند کے لحاظ سے درست نہیں ہیں. ■ مرغ کے متعلق وارد روایات اور ان کا حکم: ١. پہلی روایت: سوال میں مذکور روایت احادیث کی مختلف کتابوں میں منقول ہے. □ عن أنس بن مالك قال‏:‏ قال رسول الله صلى الله عليه وسلم‏:‏ ‏"‏اتخذوا الديك الأبيض، فإن داراً فيها ديك أبيض لا يقربها شيطان ولا ساحر، ولا الدويرات حولها‏"‏‏.‏ (رواه الطبراني في الأوسط) ● روایت کا حکم: اس کی سند میں محمد بن محصن العكاشي ہے جس کو محدثین نے جھوٹا قرار دیا ہے. وفيه محمد بن محصن العكاشي وهو كذاب‏.‏ ٢. دوسری روایت: اس روایت میں ہے کہ سفید مرغ کو آپ علیہ السلام نے اپنا دوست قرار دیا اور اللہ کے دشمنوں کا دشمن قرار دیا. - حضرت انس رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ جب سے میں نے یہ بات سنی ہے سفید مرغ میرے گھر میں رہا ہے. □ حدثنا أحمد بن خالد بن مسرح الحراني، وأحمد بن علي الأبار قالا: ثنا معلل بن نفيل الحراني، ثنا محمد بن محصن، عن إبراهيم بن أبي عبلة، عن أنس بن مالك، قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: "اتخذوا الديك الأبيض فإنه صديقي وعدو عدو الله، وإن دارا فيه ديك أبيض لا يقربها شيطان ولا ساحر ولا الدويرات حولها". • قال أنس: ما فارق عندي ديك أبيض منذ سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقوله. (مسند الشاميين للطبراني). اس روایت کی سند میں وہی راوی العكاشي ہے جس کو جھوٹا قرار دیا گیا ہے. ٣. تیسری روایت: مرغ کو گالی مت دو اسلئے کہ یہ میرا دوست ہے اور میں اس کا دوست ہوں اور اس کے دشمن کا دشمن ہوں. خدا کی قسم! اگر لوگوں کو مرغ کی قیمت کا پتہ چل جائے تو وہ اس کے بال اور گوشت کو سونا چاندی کے بدلے خریدنے کی کوشش کرینگے اور یہ اپنی آواز کے بقدر جنات کو بھگاتا ہے. □ لا تسُبُّوا الديكَ فإنه صديقي وأنا صديقُه وعدوُّه عدوِّي والذي بعثني بالحقِّ لو يعلمُ بنو آدمَ ما في صوتِه لاشتروا ريشَه ولحمَه بالذهبِ والفضةِ وإنه ليطردُ مدى صوتِه من الجنِّ. - الراوي: عبدالله بن عمر. - المحدث: ابن حبان. - المصدر: المجروحين. - الصفحة أو الرقم: 1/535. - خلاصة حكم المحدث: ينكره من أمعن في صناعة الحديث وعلم مسلك الأخبار وانتقاد الرجال. ¤ اس روایت کو امام ابن حبان نے من گھڑت قرار دیا ہے. ٤. چوتھی روایت: مرغ کو برا بھلا نہ کہو کیونکہ وہ میرا دوست ہے اور میں اس کا دوست ہوں. □ لا تسبُّوا الدِّيكَ فإنَّهُ صديقي وأنا صديقُه. - الراوي: عبدالله بن عمر. - المحدث: ابن القيسراني. - المصدر: تذكرة الحفاظ. - الصفحة أو الرقم: 383. - خلاصة حكم المحدث: [فيه] عبدالله بن صالح، كاتب الليث: متروك الحديث، كذاب. ¤ اس کی سند میں عبداللہ بن صالح کاتب الليث ہے جس کو محدثین نے جھوٹا قرار دیا ہے. ٥. پانچویں روایت: سفید مرغ میرا دوست ہے اور اللہ کے دشمن کا دشمن ہے، اپنے مالک کے گھر کی حفاظت کرتا ہے اور ارد گرد کے سات گھروں کی بھی حفاظت کرتا ہے، اور آپ علیہ السلام کے گھر میں سفید مرغ رات کو رہتا تھا. □ الدِّيكُ الأبيضُ صديقي وعدوُّ عدوِّ اللهِ يحرسُ دارَ صاحبِه، وسبعَ أدؤُرٍ، كان رسولُ اللهِ صلَّى اللهُ عليه وسلَّم يُبيتُه معهث في البيتِ. - الراوي: خالد بن معدان. - المحدث: ابن الجوزي. - المصدر: موضوعات ابن الجوزي. - الصفحة أو الرقم: 3/136. - خلاصة حكم المحدث: ليس بصحيح. - التخريج: أخرجه ابن الجوزي في "الموضوعات" (3/5). ¤ علامہ ابن جوزی نے اس روایت کو موضوعات میں ذکر کرکے فرمایا کہ یہ درست نہیں ہے. ٦. چھٹی روایت: سفید مرغ میرا اور میرے محبوب جبريل کا دوست ہے، اس گھر کی حفاظت کرتا ہے اور چاروں طرف کے سولہ گھروں کی حفاظت کرتا ہے: چار دائیں، چار بائیں، چار سامنے، چار پیچھے. □ الدِّيكُ الأفرَقُ الأبيضُ حبيبي وحبيبُ حبيبي جبريلَ يحرُسُ بيتَه، وستَّةَ عشرَ بيتًا من جيرتِه: أربعةً عن اليمينِ، وأربعةً عن الشِّمالِ، وأربعةً من قُدَّامٍ، وأربعةً من خلف. - الراوي: أنس بن مالك. - المحدث: ابن الجوزي. - المصدر: موضوعات ابن الجوزي. - الصفحة أو الرقم: 3/138. - خلاصة حكم المحدث: موضوع. - التخريج : أخرجه العقيلي في "الضعفاء الكبير" (1/127)، وأبوالشيخ في "العظمة" (5/1758). ¤ اس روایت کو امام ابن جوزی، امام عقیلی اور امام سیوطی نے من گھڑت قرار دیا ہے، اس میں ایک راوی احمد بن محمد بن عبداللہ البزی المقری ہے جو انتہائی کمزور راوی ہے. ٧. ساتویں روایت: سفید مرغ میرا دوست ہے اور میرے دوست کا دوست ہے اور میرے دشمن کا دشمن ہے. □ الديك الأبيض صديقي، وصديق صديقي، وعدو عدوي. (رواه الحارث بن أبي أسامة في "مسنده" ص:213 من زوائده): حدثنا عبدالرحيم ابن واقد: حدثنا عمرو بن جميع. ¤ یہ روایت درست نہیں کیونکہ اس میں ایک راوی عمرو بن جمیع ہے جس کو ابن معین اور ابن عدی رحمهما اللہ نے من گھڑت روایات بنانے والا کہا ہے. قلت: وهذا موضوع أيضا. ١. آفته عمرو بن جميع، فقد كذبه ابن معين. ◇ وقال ابن عدي: کان يتهم بالوضع. ٢. وعبدالرحيم بن واقد؛ مجهول. ٣. وأبان عن أنس؛ هو ابن أبي عياش؛ متروك. ■ مرغ کے بارے میں صحیح روایات: ١- پہلی روایت: آپ علیہ السلام نے فرمایا کہ جب تم مرغ کی آواز (بانگ) سنو تو اللہ تعالٰی سے اس کا فضل مانگو کیونکہ یہ فرشتوں کو دیکھتا ہے، اور جب گدھے کی آواز سنو تو اللہ سے پناہ مانگو کیونکہ وہ شیطان کو دیکھتا ہے. ○ ثبت عن النبي صلى الله عليه وسلم أنه قال: "إذا سمعتم صياح الديكة فاسألوا الله من فضله، فإنه يرى ملكاً، وإذا سمعتم نهيق الحمار فتعوذوا بالله من الشيطان فإنه يرى شيطاناً". ٢- دوسری روایت: مرغ کو برا بھلا مت کہو کیونکہ یہ نماز کیلئے جگاتا ہے. ○ لا تسُبُّوا الدِّيكَ؛ فإنَّه يُوقِظُ للصَّلاةِ. - الراوي: زيد بن خالد الجهني. - المحدث: أبوداود. - المصدر: سنن أبي داود. - الصفحة أو الرقم: 5101. والنسائي في السنن الكبرى (10781) مختصراً باختلاف يسير، وأحمد (21679) مطولاً واللفظ له. ٣- تیسری روایت: ایک مرغ نے آپ علیہ السلام کے پاس آواز دی تو ایک شخص نے اس کو برا کہا تو آپ علیہ السلام نے مرغ کو گالی دینے سے منع فرمایا. □ أنَّ ديكًا صرخَ عندَ رسولِ اللهِ صلَّى اللهُ علَيهِ وسلَّمَ فسبَّهُ رجلٌ، فنَهَى عن سَبِّ الدِّيكِ. - الراوي: عبدالله بن مسعود. - المحدث: البزار. - المصدر: البحر الزخار. - الصفحة أو الرقم: 5/168. ٤- چوتھی روایت: اللہ رب العزت نے مجھے اجازت دی کہ میں تمہارے سامنے ایک مرغ کا تذکرہ کروں جس کے قدم زمین پر اور اس کی گردن عرش کے نیچے ہے اور وہ کہتا ہے: اے ہمارے رب! آپ کی عظیم ذات پاک ہے تو اللہ رب العزت کی طرف سے جواب آتا ہے کہ یہ بات جھوٹی قسمیں کھانے والے نہیں جانتے. □ إنَّ اللهَ جلَّ ذِكرُه أذِن لي أن أُحدِّثَ عن ديكٍ قد فرَقت رجلاه الأرضَ وعنقُه مثنيٌّ تحت العرشِ وهو يقولُ: سبحانَك ما أعظمَك ربَّنا فيرُدُّ عليه ما علِم ذلك من حلف بي كاذبًا. - الراوي: أبوهريرة. - المحدث: المنذري. - المصدر: الترغيب والترهيب. - الصفحة أو الرقم: 3/64. - خلاصة حکم المحدث: إسناده صحيح. ▪ خلاصہ کلام آج کل جن روایات کا چرچا ہے اور خصوصاً عاملین حضرات جس طرح کی روایات مرغ کے بارے میں پھیلا رہے ہیں یہ سب غلط اور اکثر من گھڑت روایات ہیں، مرغ کا جادو جنات سے کوئی تعلق نہیں، لہذا اس طرح کے واہیات اقوال اور افعال سے ہر مسلمان کو بچنا چاہیئے. 《واللہ اعلم بالصواب》 ٢٤ فروری ٢٠١٨