Jump to content
IslamiMehfil

فضائل و مناقب حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ


Recommended Posts

1402397974_2021-06-2113_44_59.png.b08a650a8a3ded9234ccc1c9cf78b811.png

11211196_2021-06-2113_44_40.png.f7fbb23366e95c92f93639eb19c93697.png

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو الفیض سید محمد مرتضٰی بن محمد الحسینی الزبیدی رحمة الله علیہ  متوفٰی۱۲۰۵ھ

حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ رسول الله ﷺ کے کاتب اور سسرالی رشتہ دار ( یعنی سالے ) ہیں اور اہل ایمان کے ماموں ہیں ۔ پس ان سب کے ساتھ حسن ظن عمدہ ہے رضی الله عنہم اجمعین اور ان پر جرح و طعن کا کوئی راستہ نہیں ۔ خواہ وہ ایک دوسرے کے بارے کلام کریں ان کو ایسا حق حاصل ہے ۔مگر ہمارے لئے ان کے مشاجرات میں غور کرنے اور ان میں پڑنے کی گنجائش نہیں ۔ کیونکہ وہ اہل علم و اجتہاد تھے وہ دور رسالت کے قریب تر زمانے کے تھے ان سے اجتہاد پر مبنی جو کچھ صادر ہوا اس میں ان کیلئے اجر ہے خواہ انہوں نے خطا کی یا صحیح فیصلے پر پہنچے 

حوالہ درج ذیل ہے 
 اتحاف السادة المتقين بشرح احياء علوم الدين ، لامام السید محمد بن محمد الحسینی الزبیدی الشهير بمرتضٰى ، كتاب أسرار الصلاة و مهماتها ، القسم الثالث : ما يتكرر بتكرر السنين ، و هي أربع : صلاة العيدين و التراويح و صلاة رجب و شعبان ، جلد 3 ص 659 ، مطبوعة دار الكتب العلمية بيروت 

Link to post
Share on other sites
  • Replies 101
  • Created
  • Last Reply

Top Posters In This Topic

  • محمد حسن عطاری

    102

Top Posters In This Topic

Popular Posts

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام اہلسنت امام احمد رضا خان فاضل بریلوی رحمتہ اللہ متوفی 1340ھ جو حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ پر طعن کرے وہ جہنمی کتوں میں سے ایک کتا ہ

سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ نےبحری جہاز بنانے کے لئے  49ہجری  میں کارخانے قائم فرمائے اور ساحل پر ہی تمام کاریگروں کی رہائش وغیرہ کا انتظام کردیا تاکہ  بحری جہاز بنانے کے اہم  کام میں  خَلل واقع  ن

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام زین الدین عمر بن مظفر بن محمد ابن الوردی الشافعی رحمة الله علیہ متوفٰی٧٤٩ھ سرکار رسالت مآب ﷺ کے کاتبین حضرت ابو بکر صدیق ، حضرت عمر ف

Posted Images

501041994_IzalatUlKhafaUrdu4ByHazratShahWaliullahRA_0000.jpg.9b836500ed1ab79a63c43b05d5bd952b.jpg

1632349988_IzalatUlKhafaUrdu4ByHazratShahWaliullahRA_0535.jpg.2f56c176d050be004a25441b279dfa1f.jpg

 

فرمان مصطفی ﷺ 

امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کبھی مغلوب نہیں ہوں گے

ازالۃ الخفا عن خلافۃ الخلفاء جلد چہارم صفحہ 516

قدیمی کتب خانہ کراچی

Link to post
Share on other sites

636969198_2021-06-2211_52_35.png.372ea09dea782c6467fd4a41894f5391.png

1703790244_2021-06-2211_53_14.png.0e48b7981cfd8571a981af8e72710df1.png

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو الفرج جمال الدين عبد الرحمن بن على بن الجوزى البغدادى رحمة الله عليہ  متوفٰی۵۹۷ھ

جو شخص کسی ایک صحابی کی توہین کرتا ہے یا اس کے کسی عمل کی بناء پر اس سے کینہ رکھتا ہے یا اس کی برائی کرتا ہے تو وہ بدعتی ہے بدعت سے وہ اس وقت بچ پائے گا جب وہ سب کے لیے دعائے رحمت کرے اور اپنے دل کو ان کے بارے میں صاف رکھے ۔ 

مناقب الإمام أحمد ، لابن الجوزي ، الباب العشرون ، تحت " سياق جمل من اعتقاده ، ص 217 ، مطبوعة هجر

 

986720337_2021-06-2211_53_41.png.d319caafb433fccd68f817ca6032d5b1.png

451041861_2021-06-2211_54_01.png.d3b5f5ad335a3f12959346a5d8a4381d.png

 

امام ابو بکر المروزی رحمة الله علیہ نے بیان کیا ہم عسکر میں تھے اسی بادشاہ کا ایک ایلچی آیا ۔ تو کسی نے امام ابو عبد الله احمد بن حنبل رحمة الله علیہ سے پوچھا : اے ابا عبد الله! آپ کا نزاع کے بارے کیا ارشاد ہے جو حضرت علی المرتضٰی اور حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہما کے درمیان ہوا ؟ تو انہوں نے فرمایا : میں ان کے بارے سوائے اچھائی کے کچھ نہیں کہتا ۔ الله تعالی ان سب صحابہ کرام رضی الله عنہم پر رحم فرمائے اور حضرت امیر معاويہ ، حضرت عمرو بن عاص ، حضرت ابو موسی اشعری ، اور حضرت مغیرہ رضی الله عنہم پر بھی یہ سب کے سب وہ لوگ ہیں جن کے اوصاف الله تعالی نے اپنی کتاب میں بیان فرمائے فرمایا : سجدوں کے اثر سے ان کے چہروں پر نشانی ہے ۔

 

938935001_2021-06-2211_54_24.png.a500028ad0050fd028b9e0fac55ab2df.png

 

امام صاحب کے صاحبزادے عبد الله رحمة الله علیہ فرماتے ہیں یہ روایت ہمیں ابو القاسم اسحاق بن ابراہیم بن آزر الفقیہ نے بیان کی ۔ فرمایا : مجھے میرے والد نے بتایا : کہ میں حضرت احمد بن حنبل رحمة الله علیہ کے ہاں حاضر ہوا تو کسی شخص نے ان سے حضرت علی المرتضٰی و حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہما کے درمیان نزاع کے بارے سوال کیا ۔ تو آپ نے منہ پھیر لیا تو کسی دوسرے شخص نے عرض کیا : اے ابا عبد الله! یہ سوال کرنے والا بنی ہاشم کا آدمی ہے تو اس کی طرف رخ کر کے فرمایا ۔ پڑھ ' تلک امة قد خلت الآیہ ۔

( ص 220 تا 221 ، ھجر )

 

976779680_2021-06-2211_54_45.png.74e38a737ecb94100ccf56cf142c7ba2.png

2136815220_2021-06-2211_55_10.png.cf6be9ac8c74054995c7ce1bef6e0606.png

امام نے فرمایا : اہل سنت و جماعت مومن کی صفت ہے ) نبی اکرم ﷺ کے تمام چھوٹے بڑے اصحاب کے لیے دعائے رحمت کرنا ، ان کے فضائل بیان کرنا ، اور ان کے باہم مشاجرات سے زبان کو روکنا ۔

مناقب الإمام أحمد ، لابن الجوزي ، الباب العشرون ، تحت " سياق جمل من اعتقاده ، ص 223 ، مطبوعة هجر 

 

Link to post
Share on other sites
Posted (edited)

21301364_Muqadmatafseer-e-naeemi_0000.jpg.b536955a1cff7f62279f742891805067.jpg

1814101313_Muqadmatafseer-e-naeemi_0024.jpg.070a0372ef44491678bc9b2b43ef92e0.jpg

 

حضور اکرم ﷺ امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کو قلم ہاتھ میں . لینا دوات کا موقعہ پر رکھنا . ب کو سیدنا کرنا سین کو متفرق کر کے لکھنا . م کو ٹیڑھا نہ کرنا وغیرہ سکھاتے تھے

مقدمہ تفسیر نعیمی صفحہ 23 مطبوعہ مرکز العلوم اسلامیہ کراچی

 

Edited by محمد حسن عطاری
Link to post
Share on other sites

1350257940_HalateZindhadiHakeemulUmmatMuftiAhmedY_0001.jpg.75803d7f160b88153d44a9c6f4c13921.jpg

2013866141_HalateZindhadiHakeemulUmmatMuftiAhmedY_0123.jpg.a6d629906184595950354694fef9eb3e.jpg

 

مفسّر قرآن حکیم الامت مفتی احمد یار خان نعیمی رحمۃ اللہ علیہ نے سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے دفاع میں کتاب لکھی تو خواب میں سرکار دوعالم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلّم کی زیارت نصیب ہوئی ، آپ فرمارہے تھے : تم نے میرے صحابی کی عزت بچانے کی کوشش کی ہے ، اللہ تمھاری عزت بچائے گا ۔

حالات زندگی حکیم الامت ، رسالہ حیات سالک ، من کی دنیا ، ص127 ، نعیمی کتب خانہ گجرات۔ 

Link to post
Share on other sites

1925425843_2021-06-2316_15_33.png.cffd7ead76008216c454ef8f6d0c8081.png

1060153434_2021-06-2316_15_54.png.64a44011cda427f493763656e02045e0.png

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو بكر عبد الله بن ابى داود سليمان بن الأشعث السجستانی رحمة الله علیہ  متوفٰی٣١٦ه‍

 

رسول الله ﷺ . حضرت امیر معاويہ رضی الله عنہ رسول الله ﷺ سے روایت میں متہم نہیں ہیں ۔

حوالہ درج ذیل ہے 
سنن ابی داود ، لامام سلیمان بن اشعث بن اسحاق بن بشیر السجستانی ، کتاب اللباس ، تحت " باب في جلود و النمور و السباع ، ص 514 ، رقم الحديث : 4129 ، مطبوعة دار الحضارة للنشر و التوزيع ، طبع ثانى ١٤٣٦ه‍/٢٠۱۵ء 

 

871679740_2021-06-2316_21_25.png.502eb13b0a7f943739bddf04b9c7d945.png

1666354726_2021-06-2316_19_41.png.e824f4cc731929b557f677d41b14e396.png

 

ام المؤمنین حضرت عائشہ صديقہ رضی الله عنہا ہیں اور ہمارے خال امیر معاویہ رضی الله عنہ کو عزت دی اور کرم نوازی فرمائی

 

شرح منظومة حائیة في عقيدة أهل السنة و الجماعة ، لابن فوزان ، ص 124 تا 127 ، مطبوعة دار العاصمة للنشر و التوزيع ، طبع اول ١٤٢٨ه‍/٢٠٠٧ء 

Link to post
Share on other sites

taba05_0000.thumb.jpg.1a38edd697d1e41eac6864fa94ee7eac.jpg

1948075130_2021-06-2408_14_42.png.a46c987689df41f84dd17bd0e2a91866.png

148992830_2021-06-2408_15_04.png.a49f502e2f53f65c7f39ce362071c701.png

جب خلیفہ هارون رشید رحمة الله علیہ کے سامنے زندیقوں کے سردار شاکر کو سزائے موت دینے کے لیے لایا گیا تو خلیفہ هارون رشید رحمة الله علیہ نے اس سے پوچھا : کہ تم اپنے شاگردوں کو سب سے پہلے رافضی عقائد اور انکار تقدیر کی تعلیم کیوں دیتے ہو؟ اس نے جواب دیا : کہ ہم سب سے پہلے رفض ( یعنی صحابہ کرام کی تکفیر اور ان سے بدگمانی ) کی تعلیم اس لئے دیتے ہیں کہ ناقلین مذہب کو مطعون کر دیا جائے جب ناقلین مذہب ( یعنی صحابہ کرام رضی الله عنہم ) نا قابل اعتماد بن جائیں گے تو دین خود بخود باطل ہو جائے گا اور ہم انکار تقدیر اس لیے سکھاتے ہیں کہ جب یہ ثابت ہو جائے گا کہ بندوں کے بعض افعال الله تعالی کی تقدیر سے خارج ہیں تو اس سے کل افعال کے خارج ہونے کا جواز پیدا ہو سکتا ہے ۔

حوالہ درج ذیل ہے 
 تاریخ مدینة السلام ، لامام ابى بكر الخطيب البغدادي ، تحت " ذكر من اسمه احمد و اسم أبيه علي ، جلد 5 ص 504 تا 505 ، رقم : 2366 ، مطبوعة دار الغرب الاسلامي ، طبع اول ١٤٢٢ه‍/٢٠٠١ء معرفة الصحابة لابن منده وغيره

Link to post
Share on other sites

1923100972_2021-06-2412_06_17.png.974c5bc099780f0a68ede61dbeeaf3ab.png

688634929_2021-06-2412_06_58.png.39ddc8d12d509845b82cc01b7ca4ae13.png

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از ابو حیان علی بن محمد بن العباس التوحیدی المعروف ابن حیان التوحیدی  متوفٰی٤١٤ه‍

حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ عمدہ کلام  فرمانے والے ، جواب دینے کی حیران کن صلاحیت کے مالک ، بڑے حلم اور برداشت والے مخالف کے مقابل صبر کے پیکر ، غصہ پر قابو پانے کے عادی ، زندہ دل ، توضیح و بیان کے خوب ماہر ، دنیا ( کی فتنہ سامانیوں ) سے بخوبی آگاہ ، اس سے باحسن نبردآزما ہونے والے اس کی زمام کار ہاتھ میں لینے والے ، اس کی لگام کھینچنے والے اور اس کی کوہان پر سوار ( یعنی دنیاوی معاملات پر پوری گرفت رکھنے والے تھے ) ۔

حوالہ درج ذیل ہے 
 البصائر و النظائر ، علي بن محمد أبي الحيان التوحيدي الشافعي ، جلد 1 ص 171 ، مطبعة لجنة التاليف و الترجمة و النشر ، طبع اول 

Link to post
Share on other sites

fatawa_fayz_ar_rasul_vol1_0000.jpg.9a66b700f513a228f2113cb09456ce4b.jpg

fatawa_fayz_ar_rasul_vol1_0110.jpg.71a07d178bce0ecaf5dd431d3616deb3.jpg

جو حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کی شان میں گستاخی کرے یا آپ کی خلافت کو حق نہ مانے وہ سرکار امام حسن رضی اللہ عنہ اور سرکار امام حسین رضی اللہ عنہ کا کھلا ہوا دشمن اور باغی قرار پائے گا

فتاوی فیض الرسول جلد 1 صفحہ 79 از مفتی جلال الدین امجدی صاحب

Link to post
Share on other sites

84193300_ShaneSahaba_0000.jpg.ffeaf7837e1d994bb91b41fc1cd8cc9a.jpg

260490597_ShaneSahaba_0032.jpg.922d2d8b2755a667fce7e91dbc8b8c44.jpg

 

امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کو برا کہنے والے کے پیچھے نماز شدید تحریمہ مکروہ ہے انہیں امام بنانا حرام اور جتنی پڑھی ہوں سب کا پھیرنا واجب ہے

شان صحابہ رضوان اللہ اجمعین صفحہ 32  از سید محمود رضوی زیدہ مجدوہ 

Link to post
Share on other sites

1959683773_2021-06-2509_43_19.jpg.0443cdfb478dc7af9a6e35b3e5fea3e3.jpg

1778391845__0031.jpg.aa9967e607327f10a8d3e250b4d1df10.jpg

1362245374__0032.jpg.6f08d0208c206fe96c4facb1d34c1b7a.jpg

411030178__0033.jpg.25f6387e04647377f762aaedb0080e6a.jpg

1729336889__0034.jpg.28c3a9a506e938b06163ce6b7582c5f3.jpg

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از شارح بخاری مفتی شریف الحق امجدی رحمتہ اللہ علیہ

فتاوی شارح بخاری جلد 2 صفحہ 30 تا 33 گھوسی ہند

Link to post
Share on other sites

812218502_2021-06-2512_07_22.png.cde0d2995f59fab9ae8267566d6e06a1.png

1904509563_2021-06-2512_07_43.png.a056b1a3ed7ae198a64f0e9ab794af1c.png

456503469_2021-06-2512_08_01.png.eae0a6a5e68b137c92be7c6b967253e3.png

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو محمد طيب بن عبد الله بن احمد بن علی بامخرمة الحضرمی الشافعی رحمة الله علیہ  متوفٰی٩٤٧ه‍

حضرت معاويہ بن ابی سفیان صخر بن حرب بن امیہ بن عبد شمس بن عبد مناف بن قصی قرشی اموی ابو عبد الرحمن آپ رضی الله عنہ کے بھائی اور دونوں کے باپ فتح مکہ کے دن مشرف باسلام ہوئے ، اور کہا گیا ہے کہ حضرت امیر معاويہ رضی الله عنہ حدیبیہ کے دن مشرف باسلام ہوئے اور اپنے باپ سے اپنا اسلام لانا چھپائے رکھا ۔ اور جنگ حنین میں رسول الله ﷺ کی معیت میں لڑے ۔ اور رسول الله ﷺ نے ھوازن کے مال غنیمت سے انہیں ایک سو اونٹ اور چالیس اوقیہ چاندی عطا فرمائی تھی ۔ آپ اور آپ کے باپ مؤلفة القلوب میں سے تھے پھر اسلام میں حسن و کمال پیدا ہوگیا ۔ حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ ایک کاتبِ وحیِ رسول ﷺ تھے ۔ حضرت ابوبکر صدیق رضی الله عنہ نے جب اسلامی افواج شام کی طرف بھیجیں تو حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ اپنے بھائی حضرت یزید بن ابی سفیان رضی الله عنہ کے ساتھ سوئے شام چلے ۔ پھر جب حضرت یزید رضی الله عنہ کا وصال ہوا تو حضرت ابو بکر صدیق رضی الله عنہ نے انہیں شام کی عملداری سونپی وہ اس وقت دمشق میں تھے حضرت عمر فاروق رضی الله عنہ نےبھی انہیں اس منصب پر قائم رکھا پھر حضرت عثمان غنی رضی الله عنہ نے بھی انہیں برقرار رکھا اور شام کا باقی علاقہ بھی ساتھ شامل کر دیا پھر حضرت علی المرتضٰی رضی الله عنہ کے ساتھ جو نزاعی معاملات ہوئے وہ اس وقت شام کے مستقل حکمران تھے ۔ اس کے بعد امام حسن بن علی رضی الله عنہما نے چالیس ہجری میں خلافت کا معاملہ انہیں سونپ دیا تو امت ان کی خلافت پر قائم رہی ۔ چنانچہ انہوں نے  شام پر بیس سال بطور گورنر اور بیس سال بطور خلیفہ حکومت کی حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ رجب ساٹھ ہجری بمقام دمشق فوت ہوئے ۔ ایک قول ہے سنہ انسٹھ ہجری بیاسی سال کی عمر میں ۔ انہوں نے وصیت فرمائی کہ رسول الله ﷺ نے انہیں جو قمیص عطا فرمائی اس کا انہیں کفن دیا جائے اور  اسے جسد کے ساتھ خوب لگا دیا جائے ۔ ان کے پاس حضور اکرم ﷺ کے مبارک ناخنوں کے تراشے تھے انہوں نے وصیت کی کہ ان تراشوں کو خوب پیس کر ان کی آنکھوں اور مونہہ میں ڈال دیا جائے ۔ نیز فرمایا : میرے ساتھ ایسا کر کے مجھے ارحم الراحمین کے ذمہ کرم پر چھوڑ دیجئے گا ۔ پھر جب موت کا نزول ہوا تو فرمایا : کاش میں ذی طوی کے مقام پر ایک قریش کا ایک فرد ہوتا  اور اس معاملہ کی ذمہ داری نہ لیتا ۔ اس وقت ان کا بیٹا  موجود نہ تھا وہ حوران میں تھا تو ایک قاصداس کیجانب بھیجا گیا مگر وہ اپنے باپ کو نہ پا سکا . حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ عرب کے ایک زیرک رہنما اور انتہائی حلیم شخص تھے . آپ کے بارے میں حضرت عمر فاروق رضی الله عنہ نے فرمایا : یہ عرب کے کسری ہیں ۔ فرمایا : میں نے جب سے سرکار دو عالم ﷺ کی زبان اقدس سے سنا کہ آپ نے فرمایا : معاویہ جب تم مالک حکومت بنو تو لطف و احسان سے کام لینا تو خلافت کا خیال دل میں رہا ۔ اور روایت میں ہے کہ رسول الله ﷺ نے فرمایا : اے الله! معاويہ کو ہادی مہدی بنا ۔

حوالہ درج ذیل ہے 
 قلادة النحر في وفيات أعيان الدهر ، لامام ابى محمد الطيب بن عبد الله بن احمد بن علي بامخرمة الهجراني الحضرمي الشافعي ، طبقات المئة الاولى ، جلد 1 ص 379 ، مطبوعة دار المنهاج للنشر و التوزيع ، طبع اول ١٤٢٨ه‍/٢٠٠٨ء 

Link to post
Share on other sites
Posted (edited)

1044428509_2021-06-2515_28_51.png.548655368b9d49bbd7ba2171d27dd9f9.png

390932708_2021-06-2515_28_26.png.5b6009a61a0a514d3013b641fcd7799f.png

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از  داتا گنج بخش رضی اللہ عنہ متوفی 465ھ

 

امام حسین رضی اللہ عنہ کی بارگاہ میں ایک مفلس و غریب آدمی مدد کیلئے حاضر ہوا آپ نے اسے اپنے پاس بٹھا لیا اور فرمایا بیٹھ جاؤ ، ہمارا وظیفہ راستے میں ہے ، کچھ دیر بعد حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کی طرف سے ایک آدمی آپ کی بارگاہ میں حاضر ہوا اور پانچ تھیلیاں دیناروں کی پیش کیں جس میں ایک ایک ہزار دینار تھے اور ساتھ حضرت معاویہ رضی اللہ عنہ کی طرف سے معذرت بھی کی ، آپ رضی اللہ عنہ نے وہ تھیلیاں اسی طرح پاس بیٹھے سائل کو دے دیں۔

کشف المحجوب مترجم ، صفحہ نمبر 185 مکتبہ شمس و قمر بھاٹی چوک لاہور

Edited by محمد حسن عطاری
Link to post
Share on other sites

1437152726_2021-06-2615_54_25.png.03169b2baf41141142747acdf41a77b2.png

185067055_2021-06-2615_54_46.png.1171df2693b79963d1555e3bfae11d6e.png

1993594330_2021-06-2615_55_05.png.c6402f784840506b8a39603797b205d4.png

522249244_2021-06-2615_55_22.png.96033dba6d8147208a3eb7152deaccef.png

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام صارم الدین ابراھیم بن محمد بن ایدمر العلائی المعروف ابن دقماق رحمة الله علیہ متوفٰى٨٠٩ه‍

معاویہ بن ابی سفیان رضی الله عنہما : آپ ابو عبد الرحمن معاویہ بن ابی سفیان صخر بن حرب بن امیہ بن عبد الشمس الاموی القرشی ہیں ۔ نبی اکرم ﷺ کے صحابی ہونے کا شرف حاصل کیا نبی اکرم ﷺ نے آپ کی ہمشیرہ ام حبیبہ ام المؤمنین سے رشتہ زوجیت قائم فرمایا ۔ حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ کاتب وحی تھے ۔ سریرآرائے خلافت ہوئے اور جب سنہ 41 ھجری میں امام حسن رضی الله عنہ نے امر خلافت آپ کو سونپ دیا تو آپ پر امت کا اتفاق و اجماع ہو گیا آپ پہلے حکمراں تھے جو دو وسیع سرزمینوں  کے تخت پر بیٹھے ۔ حضرت امیر معاويہ رضی الله عنہ کے فرما : میں نے جب سے سرکار دو عالم ﷺ کی زبان اقدس سے سنا کہ آپ نے فرمایا : معاویہ جب تم مالک حکومت بنو تو لطف و احسان سے کام لینا تو خلافت کا خیال دل میں رہا ۔ 22 رجب سنہ 60 ھجری دمشق میں وصال ہوا ۔ مشرق میں حدود بخاریٰ سے لیکر مغرب میں حد قیروان تک آپ کے زیر حکم رہے آپ نے بحری بیڑا تیار کیا اور قبرس فتح کیا اور وہاں جامع مسجد قائم کی ۔ آپ گورے رنگ کے دراز قد تھے آپ ہنستے تو اوپر کے ہونٹ دوہرے ہوتے مہندی اور کتم کا ملا خضاب کرتے تھے ۔ آپ کی مہر کا نقش تھا  " لکل عمل ثواب " ایک اور قول ہے نقش خاتم تھا " لا قوة الا بالله ، آپ کا کاتب ( سیکریٹری ) عبیداللہ بن اوس الغنانی تھا ۔ قاضی فضالہ بن عبید الانصاری تھا جب کہ پولیس آفیسر یزید الضبی تھا ۔ سیرت معاویہ رضی الله عنہ : حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ بہت زیادہ حلم والے بڑی ھیبت کے مالک ، خوش شکل صاحب شوکت و حشمت تھے لباسِ فاخرہ زیب تن کرتے نشان زدہ گھوڑوں پر سوار ہوتے ۔ حلیم طبع کرم نواز رعیت کی نظر میں پسندیدہ و محبوب ، بڑی شان والے ۔ آپ فرماتے : اگر میرے اور لوگوں کے درمیان ایک بال کے برابر بھی رشتہ ہو میں قطع نہیں کرتا ۔ پوچھا گیا یہ کیسے؟ فرمایا : جب لوگ اس کو کھینچتے اور سخت کرتے تو میں ڈھیلا کر دیتا اور جب وہ ڈھیلا کرتے تو میں اپنی جانب کس لیتا ۔

حوالہ درج ذیل ہے 
الجوهر الثمين في سير الملوك و السلاطين ، لابن دقماق ، جلد 1 ص 63 تا 65 ، دولة بنى أمية ، تحت " معاوية بن أبي سفيان رضي الله عنه ، مطبوعة عالم الكتب ، طبع اول ١٤٠۵ھ/۱۹۸۵ء 

 

Link to post
Share on other sites

149148482_2021-06-2710_55_29.png.352c5bd9a182615a3e795555e0833e93.png

62587699_2021-06-2710_56_01.png.ee625fc14ca6f4345a5fe67ba527ac97.png

2010464676_2021-06-2710_56_33.png.f586d1fd4dc701ad739078e3d392b143.png

 

وتعریضات در باب معاویہ رضی اللہ عنہ انویں فقیر واقع نشدہ اگر در  .............نسخ معتبرہ البتہ یافتہ نخواہد شد

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ از شاہ عبدالعزیز دہلوی رحمتہ اللہ علیہ متوفی 1243ھ

حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ کے متعلق فقیر کی جانب سے کوئی سست باتیں نہیں ہوئیں اگر تحفہ عشریہ میں ملتی ہیں تو کسی نے مکروفریب سے فتنہ انگیزی کے لیے کام کیا ہوگا کیونکہ زمانہ قدیم سے رافضیوں کا یہ ہی طریقہ کار ہے جیسا کہ بندہ نے بھی سنا ہے کہ الحاق شروع ہوچکا ہے اللہ ہی بہترین محافظ ہے یہ اعتراضیہ جملے معتبر نسخوں میں نہیں پائے جاتے

حوالہ درج ذیل ہے

مکتوبات شاہ عبدالعزیز دہلوی رحمتہ اللہ علیہ فارسی صفحہ 265 تا 266 پاک اکیڈمی کراچی

Link to post
Share on other sites

1375555485_2021-06-2808_16_58.png.b351285fc79adbe9933320c99071de4f.png

1307267465_2021-06-2808_17_22.png.50b1ee96f452524f4bb4d088aee9dac7.png

1195002729_2021-06-2808_17_51.png.f70ebb6b1b30ebf52fdeb04dfc8d5ab5.png

862732936_2021-06-2808_18_12.png.c68a424c257fc73fc3d3df70bc915f61.png

917805842_2021-06-2808_18_39.png.f6a8ec79f5071ad6f5475f8e19e49b09.png

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو سعید عبد الرحمن بن محمد المعروف متولی نیشاپوری الشافعی رحمة الله علیہ متوفٰی٤٧٨ه‍

صحابہ کرام رضی الله عنہم کے درمیان جو اختلافات ہوئے ان پر کلام کرنے سے ہم اپنی زبانوں کو روکتے ہیں کیونکہ الله تعالیٰ نے بروز قیامت ان کے دلوں سے کدورت دور کرنے کی ضمانت دی ہے ۔ ارشاد خداوندی ہے : ہم ان کے سینوں سے کدورتیں دور فرما دیں گے وہ بھائی بھائی بن کر آمنے سامنے تختوں پر براجمان ہوں گے ۔ مبتدعین ( اہل بدعت ) کی طرف سے ائمہ صحابہ رضی الله عنہم پر مطاعن بہت بڑھ گئے ہیں اور ہر مسلمان پر واجب ہے کہ وہ عقیدہ رکھیں کہ اصحاب رسول ﷺ سب لوگوں سے بہتر اور افضل ہیں ۔ قرآن حکیم نے ان کی عدالت و فضیلت بیان فرمائی ہے الله تعالی کا ارشاد پاک ہے : اور مہاجرین اور انصار میں سے ( نیکی میں ) سبقت کرنے والے اور سب سے پہلے ایمان لانے والے اور جن مسلمانوں نے نیکی میں ان کی اتباع کی ، الله ان سے راضی ہوگیا اور وہ الله سے راضی ہوگئے ۔ اور دیگر بہت سی آیات ۔ نبی اکرم ﷺ نے بھی ان کی فضیلت و عدالت کی گواہی دی ہے ۔ حضور انور ﷺ نے فرمایا : سب لوگوں سے افضل میرے زمانے کے اہل ایمان ہیں پھر وہ ہیں جو ان کے متصل زمانے کے ہیں ۔ اور فرمایا : میرے صحابہ کو گالیاں نہ دو اس ذات کی قسم! جس کے قبضہ قدرت میں میری جان ہے اگر تم میں سے کوئی ایک احد پہاڑ کے برابر سونا خرچ کرے تو ان میں سے ایک مد اور اس کے نصف کو نہیں پہنچ سکتا ۔ پس ہم پر واجب ہے کہ ہم ان کیلئے دعائے رحمت کریں ۔ اور ان کی فضیلت کا عقیدہ رکھیں اور ان کی مساوی ( یعنی خطاؤں ) کی کرید میں نہ پڑیں بلکہ ان کے محاسن ( یعنی خوبیوں کا ذکر کر کے ان کی پیروی اور اقتداء کریں کیونکہ الله تعالی نے ہمیں اس کی طرف راغب فرمایا اور فرمایا : " و التابعین لھم باحسان " اور احسان کے ساتھ ان مہاجرین و انصار کی پیروی کرنے والے ، اور ہم ان کے زمانے میں ہونے والے واقعات پر خاموشی اختیار کرتے ہیں ان معاملات کو الله تعالی کے سپرد کرتے ہیں جیسا کہ امام زہری رحمہ الله سے مروی ہے کہ جب ان سے اس بارے میں پوچھا گیا ، تو فرمایا : یہ ایسے خون ہیں جن سے الله تعالی نے ہمارے ہاتھوں کو محفوظ رکھا اس لیے ہم اپنی زبانوں کو ان پر تنقید سے آلودہ نہیں کرتے ۔

حوالہ درج ذیل ہے 
 الغنية فى اصول الدين ، لامام أبى سعيد عبد الرحمن النيسابوري الشافعى ، ص 188 تا 191 ، مطبوعة مؤسسة الكتب الثقافية بيروت ، طبع اول ١٤٠٦ه‍/١٩٨٧ء 

Link to post
Share on other sites
Posted (edited)

244136744_2021-06-2808_51_56.png.a19d1d0b128a36668e3a0ac8aa2da1fc.png

512533551_2021-06-2808_52_27.png.55771990506bbc42327e21d9be50fd6d.png

2062924579_2021-06-2808_52_54.png.4dd9633d02d2875deb7d65ba3eafd31c.png

 

عظمت و شان سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ از علامہ کمال الدین الدمیری رحمتہ اللہ علیہ متوفی 808ھ

 

حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ بیس سال تک شام کے گورنر رہے یہ مدت خلافت فاروقی و خلافت عثمانی میں گزری حضرت سیدنا امام حسن مجتبی رضی اللہ عنہ نے خلافت آپ کے سپرد کر دی اور  تمام لوگوں کا اس پر اجماع ہوا 

آپ رضی اللہ عنہ کے چہرے سے ملاحت رعب اور جاء و جلال ٹپکتا تھا اچھے قسم کا لباس زیب تن فرماتے نشان لگے ہوئے ممتاز گھوڑے پر سوار ہوتے جودوسخا کے خوگر رعایا کے حق میں ملنسار اور عزت و عظمت کی نگاہ سے دیکھے جاتے تھے

حوالہ درج ذیل ہے

حیات الحیوان جلد 1 صفحہ 221  222، ادارہ اسلامیات انارکلی لاہور

Edited by محمد حسن عطاری
Link to post
Share on other sites

tkar01_0000.jpg.95d30ba154a6599447ac049108a9bacd.jpg

677426497_2021-06-2816_21_43.png.c2f53fa8b57f150694caa4a6a1de8c83.png

1753836916_2021-06-2816_22_12.png.5a101e0afa430d561841d053543d17f3.png

 

عظمت و شان سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ از الحافظ جمال الدین ابی الحجاج یوسف المزی رحمتہ اللہ علیہ متوفی 742ھ

امام نسائی رحمتہ اللہ علیہ کا قول

اسلام کی مثال گھر کی طرح ہے جس کا دروازہ ہے صحابہ اکرام اسلام کے دروازے ہیں جو کوئی صحابہ کو ایذا  پہنچاتا ہے اس کا ارادہ اسلام کو ہدف بنانے کا ہے جیسے گھر کا دروازہ کھٹکتا ہے تو وہ گھر میں داخل ہونے کا ارادہ رکھتا ہے اسی طرح جو امیر معاویہ رضی اللہ عنہ پر اعتراض کرتا ہے وہ صحابہ اکرام پر اعتراض کا ارادہ رکھتا ہے

حوالہ درج ذیل ہے

تھذیب اکمال فی اسماء الرجال جلد 1 

الناشر: مؤسسة الرسالة

 سنة النشر ھ1403 - 1983ء

Link to post
Share on other sites

1856053809_2021-06-3008_50_22.png.9ed6ebcba5d91be77900af728b1a31cf.png

380224676_2021-06-3008_49_39.png.9220e2fbbfb9d9595d9c6c2a7c7d867e.png

701334264_2021-06-3008_50_01.png.c71bece78ba299e739c33d3cc5a27f9a.png

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام ابو الحجاج یوسف بن موسی الکلبی المعروف الضریر الاندلسى المالكى رحمة الله علیہ متوفٰی۵۲۰ھ

صاحب رضا علی المرتضٰی کرم الله وجہہ الکریم اور نبی مرتضٰی ﷺ کے اصحاب کے درمیان جو جنگیں ہوئیں ان کی خوبصورت مفصل اور محقق تاویل ہے ۔ اسے اصول ، طرق ، اخبار اور تاویل سے اعتناء رکھنے والا شخص جانتا ہے کہ ان اصحاب میں سے ہر ایک مجتہد فاضل تھا اور جاہل جو کچھ ان کے بارے گمان کرتا ہے وہ اس سے منزہ ہیں ۔ پس عوام الناس ان کے معاملے میں غور و خوض نہ کریں کیونکہ وہ اصل حقائق نہیں جانتے ۔ صحابہ کرام تمام لوگوں سے زیادہ حسن ظن کے مستحق ہیں اور اس کے مستحق ہیں کہ ان کا معاملہ زیادہ ہدایت سنن پر حمل کریں کیونکہ اصحاب رسول الله ﷺ عادل ہیں تمام آسمانی کتب میں پسندیدہ ہیں اور نبی اکرم ﷺ سے مروی احادیث میں بھی اور جو خوبصورت کلام ان سے مروی ہے ۔

حوالہ درج ذیل ہے 
 التنبيه و الإرشاد فى علم الاعتقاد ، لامام ابى الحجاج يوسف بن موسى الضرير ، تحت " باب في الإمساك عما شجر بين الصحابة ، ص 243 تا 244 ، مطبوعة دار ابى رقراق للنشر والتوزيع ، طبع اول ١٤٣۵ھ/۲۰۱٤ء 

___

 

Link to post
Share on other sites

mtk19_0000.thumb.jpg.0fcba129a905c15f1ce0011e1e1117c2.jpg

mtk19_0306.thumb.jpg.cbbec59c8d9ee85f94e3d265e291c93e.jpg

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ از ابوالقاسم سلیمان ابن احمد ابن الطبرانی المعروف طبرانی متوفی 360ھ

 

حضرت سیدنا عوف بن مالک اشجی رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں اریحا کے ایک گرجا میں قیلولہ کر رہا تھا جو اب مسجد میں تبدیل ہو چکا ہے میں اچانک گھبرا کر اٹھ بیٹھا میں نے دیکھا وہاں ایک شیر موجود تھا جو میری طرف بڑھ رہا تھا میں نے ہتھیار اٹھانے کا ارادہ کیا تو شیر نے کہا رک جائیں میں تو آپ کو ایک پیغام دینے آیا ہوں میں نے پوچھا تجھے کس نے بھیجا ہے شیر نے کہا  اللہ تعالی نے مجھے آپ کے پاس بھیجا ہے کہ آپ کو خبر دوں کہ حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنی جنتی ہیں  میں نے پوچھا کون معاویہ ؟ شیر نے کہا معاویہ بن ابی سفیان رضی اللہ عنہ

حوالہ درج ذیل ہے 

معجم الکبیر جلد 19 صفحہ 307 راقم 686

Link to post
Share on other sites

551882124_AlShariyah_1312.jpg.515a2e78bfa7499f67b31f418aa1ea50.jpg

1284143549_AlShariyah_1313.jpg.87441d4e55b65f681408f0c5b813ab04.jpg

664574433_AlShariyah_1878.jpg.29903f99e633a5514a94af27d7f388f3.jpg

 

 

عظمت و شان سیدنا امیر معاویہ رضی اللہ عنہ از امام محمد بن حسین آجری رحمۃ اللہ علیہ متوفی 290ھ

حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہما فرماتے ہیں نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلّم نے فرمایا تمہارے سامنے ایک جنّتی شخص آئے گا ۔ تو حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ آئے ۔ پھر اگلے دن بھی نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلّم نے اسی طرح فرمایا تو حضرت امیر معاویہ رضی اللہ عنہ آتے رہے ۔ ایک صاحب نے عرض کی یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلّم کیا یہ وہ جنّتی شخص ہے تو نبی کریم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلّم نے فرمایا ہاں یہ ہے ۔

حوالہ درج ذیل ہے

الشریعہ للآجری مترجم اردو جلد 3 صفحہ 566،چشتی

  • Like 1
Link to post
Share on other sites

1574638978_2021-07-0111_07_37.png.4e2f8cb33080365304b56aeb4b4e0f3f.png

1660829373_2021-07-0111_08_09.png.baf4df4ea18d9b31c920cde5d4a7a4a0.png

852012851_2021-07-0111_08_33.png.fd30965ba8087cb58db0d32f6d393140.png

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنه از امام القاضى شمس الدين محمد بن محمد بن محمد بن حسن المعروف ابن امیر بن الحاج الحنفی رحمة الله علیہ  متوفٰی۸۷۹ھ

پھر حضرت عثمان ذی النورین رضی الله عنہ کے بعد حضرت علی المرتضٰی رضی الله عنہ امام حق تھے حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ اور ان کی جماعت والے امر خلافت میں تاویل سے کام لینے والے تھے صحابہ کرام رضی الله عنہم میں سے بعض ایسے بھی تھے جو مسئلہ پیچیدہ ہونے کے باعث فریقین سے الگ ہو کر پیچھے بیٹھ رہے اور ہر ایک نے اس پر عمل کیا جس فیصلے پر ان کا اجتہاد لے گیا ۔ جب کہ تمام اصحاب رسول ﷺ اہل عدالت تھے وہ اس دین کو اٹھا کر اہل جہاں تک لے جانے والے تھے انہوں نے اپنی تلواروں سے اس دین کو غالب کیا اور اپنی زبانوں سے ( تبلیغ کر کے ) اسے پھیلایا ۔ اگر ہم ان اصحابِ رسول ﷺ کی تفضیل میں آیات قرآنی پڑھیں اور احادیث بیان کریں تو کلام بڑھ جائے گا ۔ پس یہ کلمات حق ہیں جو ان کے خلاف عقیدہ رکھے گا وہ لغزش اور بدعت میں مبتلا ہے پس اہل دین کو یہ کتاب دل میں بصورت گرہ رکھ لینی چاہئے اس کے ساتھ صحابہ کرام رضی الله عنہم کے مابین ہونے والے اختلافات سے زبان روک کر رکھنی چاہئے یہ ایسے خون ہیں جن سے الله تعالی نے ہمارے ہاتھوں کو پاک اور محفوظ رکھا لہذا ہم اپنی زبانوں کو ان ( کی تنقید و تنقیص ) سے آلودہ نہ کریں حاصل کلام یہ ہے کہ وہ خیر امت ہیں وہ سب بعد کے لوگوں سے افضل ہیں خواہ بعد کے لوگ علم و عمل میں بڑھ جائیں ۔

حوالہ درج ذیل ہے 
التقریر و التحبیر ، لامام شمس الدين ابن امير بن الحاج الحنفي ، الباب الثالث السنة ، تحت " فصل في شرائط الراوى ، جلد 2 ص 336 ، مطبوعة دار الكتب العلمية بيروت ، طبع اول ١٤١٩ه‍/١٩٩٩ء 

 

Link to post
Share on other sites

32889656_SeeratAmeereMillat_0001.jpg.25637b9e555aeb3b9fed4b4374c85060.jpg

1948426267_SeeratAmeereMillat_0228.jpg.ce19e0ca571e399148ccc61b1e4dbf1a.jpg

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله عنہ از  بانی پاکستان پیر سید جماعت علی شاہ صاحب محدث علی پوری رحمة الله علیہ

میر پور ہی کا واقعہ ہے ۔ آپ ( سید جماعت علی شاہ صاحب ) وہاں تشریف لائے ہوئے تھے کہ ایک ملنگ نے مسجد میں آکر صحابۂ کرام کے خلاف نعرے لگانے شروع کردیے ۔ آپ نے اس کو منع کیا ۔ مگر وہ باز نہ آیا ۔ 

آپ نے اس کو پیٹنا شروع کیا ۔ تو اور لوگ بھی اس پر پل پڑے ۔ اور اتنا مارا کہ وہ بے ہوش ہوگیا ۔ اس کے بہی خواہ اسے اٹھا کر لے گئے اور تھانہ میں جاکر رپٹ لکھوائی ۔ تھانیدار نے دریافت کیا کہ " یہ مسجد میں گیا تھا یا شاہ صاحب نے یہاں آکر اس کو مارا ہے ۔"

سب نے شہادت دی کہ یہ خود مسجد میں گیا تھا . تھانیدار نے کہا تو پھر میں کیا کرسکتا ہوں . اس نے مسجد میں جاکر شرارت کی تو مار کھائی . چنانچہ معاملہ وہیں ختم ہوگیا ۔ 

حوالہ درج ذیل ہے 
 سیرت امیر ملت ، سید اختر حسین شاہ ، تحت عنوان سب صحابہ پر سخت عتاب ، ص 228 ، طبع سوم جمادی الآخر ۱۴۱۰ھ ، مطبوعه علی پور سیداں ضلع سیالکوٹ 

 

1-a7b2e9b35a.thumb.jpg.b88eee78d2f4334156c5c6d6374df3c1.jpg

204-7e065d579d.thumb.jpg.869b43dcaedde2ba081a34e3cefe7b78.jpg

205-235f1ef8e6.thumb.jpg.dc75f167356c9296d1d83d7662676f68.jpg

 

صحابہ کرام میں حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله تعالی عنہ کا معاملہ ایسا ہے جس میں آج کل کے نام نہاد مورخ و محقق بہت چہ میگوئیاں کرتے ہیں ۔ شیخ مجدد رضی الله تعالی عنہ نے اسی لئے بار بار آپ کی امامت و عدالت پر زور دیا ہے ۔ ( یعنی نواسۂ رسول سیدنا امام حسن رضی الله عنہ سے صلح کر لینے کے بعد آپ کی امامت و عدالت شک سے بالاتر ہوگئی )

حضور قبلہ عالم علیہ الرحمه فرمایا کرتے تھے کہ اس مسئلے میں زیادہ " قیل و قال " میں نہیں پڑنا چاہیے اور نہ ہی زیادہ تر بال کی کھال اتارنے کی کوشش کرنی چاہیے البتہ وہی عقیدہ رکھنا چاہیے جو بزرگان دین ( جیسے حضرت شیخ مجدد ) کا ہے ۔ برکت کے لئے مکتوبات حضرت مجدد سے چند سطور بھی پیش کی جاتی ہیں ۔ 

" در احادیث نبوی باسناد ثقات آمدہ کہ حضرت پیغمبر علیہ الصلوة و السلام در حق معاویه دعا کردہ اند " اللھم علمه الکتاب و الحساب وقه العذاب " و جائے دیگر دعا فرمودہ اند " اللھم اجعله ه‍اديا مه‍ديا " و دعائے آنحضرت ﷺ مقبول

( مکتوب ، ۲۵۱ ، دفتر ۱ )

ترجمه : احادیث نبویہ علی صاحبہا الصلوة و السلام میں معتبر راویوں کی سند سے روایت ہو چکا ہے کہ آنحضرت ﷺ نے حضرت معاویہ رضی الله عنہ کے حق میں یوں دعا فرمائی  " اے الله اسے کتاب و حساب کا علم عطا فرما اور اسے عذاب سے بچا ، اور دوسرے مقام پر یوں دعا فرمائی " اے الله اسے ہادی اور ہدایت یافتہ بنا ۔ اور حضور صلی الله علیہ والہ وسلم کی دعا ضرور مقبول ہے ۔ 

حوالہ درج ذیل ہے
انوارِ لاثانی ، محمد حسین آسی ، ص 145 تا 146 ، مطبوعه دربار شاہِ لاثانی علی پور سیّداں شریف ضلع سیالکوٹ ، پاکستان 

Link to post
Share on other sites

1928921907_DushmananeAmeereMuaviaKailmiMuhasbah1_0000.jpg.2bcb9af7335c5acf2241e54e9db091b2.jpg

1751247867_DushmananeAmeereMuaviaKailmiMuhasbah1_0379.jpg.fabd43bf67efa853a679efa481264f04.jpg

2081077192_DushmananeAmeereMuaviaKailmiMuhasbah1_0380.jpg.21bfabde6a2ace47daa564e7ff5f3059.jpg

 

عظمت و شان حضرت سیدنا امیر معاویہ رضی الله عنہ از سید محمد باقر علی شاہ بخاری رحمة الله علیہ

ایک دن بندہ مصنف ( مولانا محمد علی نقشبندی رحمة الله علیہ مصنف تحفہ ، عقائد ، فقہ جعفریہ ) حضرت کیلیانوالہ شریف میں حاضر تھا ۔ رات گئے تک صرف چند علماء کرام حضرت قبلہ صاحب کے پاس حاضر تھے ۔ سیدنا امیر معاویہ رضی الله عنہ کے بارے میں گفتگو کے دوران ایک عالم صاحب کہنے لگے کہ سادات میں سے عوام تو کیا بعض پیران عظام بھی حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ کے خلاف ہیں ۔ 

اس پر قبلہ حضرت صاحب نے فرمایا ۔ آپ لوگ شان امیر معاویہ کتب سے بین کرتے ہیں ۔ اور اس پر دلائل قائم کرتے ہیں ۔ لیکن میں اپنی بیٹی اور خود پر وارد ہوئی بات بتلاتا ہوں ۔ وہ یہ ہے کہ ایک دن دس بجے ایک آدمی سے میں نے دوران گفتگو کہا امیر معاویہ رضی الله عنہ نے جو حضرت علی کرم الله وجہہ سے مقابلہ کیا ۔ اس میں انہوں نے بڑی زیادتی کی ۔

اتنا کہا ۔ اور اس کے ساتھ ہی میرے دل میں خیال آیا کہ میں نے غلط الفاظ کہے ہیں ۔ اور معاً اس کے ساتھ میرا روحانی فیض بند ہوگیا ۔ سارا دن پریشانی کی حالت میں گزرا ۔ جب رات پڑی اور میں سوگیا ۔ خواب میں پرانی بھیٹک شریف دیکھی ۔

قبلہ والدی ماجدی حضرت خواجہ نور الحسن شاہ صاحب خلیفہ مجاز حضرت شیر ربانی قبلہ میاں شیر محمد شرقپوری رحمة الله علیہ نے تمام زندگی اسی بیٹھک شریف میں روحانی سلسلہ جاری رکھا ۔ اور یہیں وصال فرمایا ۔ 

اچانک خواب میں ہی کسی نے بیٹھک شریف کا دروازہ کھٹکھٹایا ۔ دروازہ کو دھکا دے کر کھولا تو اچانک حضور نبی کریم صلی الله علیہ والہ وسلم اندر تشریف لاٸے ۔ آپ ﷺ کے پیچھے حضرت علی رضی الله عنہ اور ان کے پیچھے حضرت امیر معاویہ رضی الله عنہ تھے ۔ 

تینوں حضرات اس طرح کھڑے تھے کہ حضور صلی الله علیہ وسلم کی دائیں طرف حضرت علی اور امیر معاویہ رضی الله تعالی عنمہا تھے ۔ حضور ﷺ اور امیر معاویہ خاموش کھڑے تھے حضرت علی کرم الله وجہہ ناراضگی میں مجھے مخاطب ہوکر ارشاد فرمایا : جھگڑا میرا اور امیر معاویہ کا تھا ۔ اس میں تمہیں دخل دینے کا کیا حق حاصل ہے ؟ 

آپ نے یہی جملہ تین مرتبہ فرمایا ۔ میں نے معافی مانگی لیکن کوٸی جواب نہ ملا ۔ پھر تینوں حضرات تشریف لے گٸے ۔ اس واقعہ کے چھ ماہ بعد تک نہ تو حضرت قبلہ میاں صاحب شرقپوری رحمة الله علیہ کی اور نہ ہی قبلہ والدی و مرشدی سرکار حضرت کیلیانوالہ شریف کی زیارت نصیب ہوئی ۔ 

اور ہر قسم کا روحانی فیض بند رہا ۔یہاں تک کہ حضور ﷺ کی زیارت نصیب ہوٸی اور فیض کا سلسلہ جاری ہوا ۔ 

حوالہ جات درج ذیل ہیں 
دُشمنانِ امیر معاویہ رضی الله عنہ کا علمی محاسبہ ، علامه محمد علی نقشبندی ، جلد 1 ص 380 تا 381 ، مطبوعه مکتبه نوریہ حسینیہ جامعہ رسولیہ شیرازیہ بلال گنج ، لاھور ، طبع دوم ۲۰۱۱ء 

 

Link to post
Share on other sites
Guest
This topic is now closed to further replies.
  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.


×
×
  • Create New...