Jump to content
اسلامی محفل

Raza Asqalani

Members
  • Content Count

    356
  • Joined

  • Last visited

  • Days Won

    51

Everything posted by Raza Asqalani

  1. Jis rewait ko Imam Asqalani ny hassan likha tha us rewait ko zubair zai ny zaeef qarar dy dia hai lehza is rewait se Mehmood Bin Ishaq ki touseeq sabit krna mardood hai.. Note: Imam Asqalani ny apni Hassan kehny wali rewait ko agy ja kr nishan dhai kr di thi k us main qatada mudalis hai jo عن se rewait kr raha hai lehza wo rewait khud Imam Asqalani k nazdeek zaeef hai
  2. Imam Asqalani ny Juzz-e-Rafa Yadain ki jis hadis ko Hassan kaha us main kuch illatain mojod hain 1-Imam Asqalani ny is rewait ko shawahid k toor per paish kia hai.. 2-Imam Asqalani ny is hadis ko "Hassan" to kaha hai likin shawhid main likhny waja se ye sabit hota hai k Imam Asqalani k nazdeek ye hadis "Hassan-Leghairehi" hai jo k zaeef asnaad ki taqwiyat se banti hai.. 3-Imam Asqalani khud us hadis k nechy likh dia hai is reawit main qatada hai jo k Mudalis hai aur is rewait main عن se rewait kr raha hai lehza ye rewait khud Imam Asqalani k nazdeek zaeef hai. 4-Mehmood Bin Ishaq per Imam Asqalani ny jarah is liye ni k q k us k mutabay aur kafi rawi mojod thy lehza bina mutabay k Mehmood Bin Ishaq k rewait qabool ni muhadiseen k nazdeek..
  3. Juzz-e-Rafa Yadain ki tamam Asaad Mehmood Bin Ishaq per ja kr aik ho jati hain jo k is book ka markazi rawi hai aur is book ko rewait krny main aklea hai Imam Bukhari se... Mehmood Bin Ishaq ki touseeq Jamhor Muhadiseen se sabit ni lehza kisi Muhadis ka ye keh dena k ye falan muhadis ki kitab hai is se ye sabit ni hota k ye book us munsanif tak sahih sanad k sath sabit hai lehza Sahih sand paish ki jaye is book ki Imam Bukhari tak... Imam Ibne Hajar Asqalani ny is book ki 2 asnaad likhi hain 2no main hi Mehmood Bin Ishaq Rawi mojod hai jis ki koi touseeq jamhor se sabit ni aur is ka mutabay bi mojod ni hai is sanad main lehza is book ko bina sahih sanad k manana Jamhor Muhadiseen k nzadeek jaiz ni
  4. Khud Zubair Zai ny likha hai musanif tak sahih sanad ka hona zarori hai phir Imam Bukhari tak sahih sand sabit q ni krty Juzz-e-Rafa Yadain ki sand ko???
  5. Ye Sari copy Irshad Asari ki kitab ki hai is liye main ny is ka pehly se radd post main likh dia tha... is ka jawab kitni bar dia jaye tm ko wahabi is ka jawab khud post main mojod hai zara ghor se bi per lia kro na اعتراض 1 : زبیر زئی نور العینین ص 165 پر پہلا اعتراض نقل کرتا ہے۔ "مروی ہے کہ سفیان ثوری نے اس اثر کا انکار کیا ہے۔" (جزءرفع الیدین للبخاری:11) اس اعتراض کا رد: زبیر زئی نے یہاں بڑی چالاکی اور منافقت سے اس اعتراض کی سند چھپا لی اگر سند ظاہر کر دیتا تو اس کا اعتراض عام لوگوں کے لیے گمراہی کا باعث نہ بنتا لہذا ہم اس اعتراض کی سند نقل کر کے زبیر زئی کو جھوٹا ثابت کرتے ہیں۔ محمود بن اسحق (مجہول راوی) امام بخاری سے یہ بات نقل کرتا ہے۔ وَقَالَ عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ مَهْدِيٍّ: ذَكَرْتُ لِلثَّوْرِيِّ حَدِيثَ النَّهْشَلِيِّ، عَنْ عَاصِمِ بْنِ كُلَيْبِ، فَأَنْكَرَهُ (جزءرفع الیدین للبخاری:11) ترجمہ: اور عبدالرحمن بن مہدی نے کہا: میں نے امام (سفیان) ثوری کے سامنے النہشلی عن عاصم بن کلیب کی حدیث بیان کی تو انہوں نے انکار کیا۔ اس جرح میں امام بخاری کا سماع عبدالرحمن بن مہدی سے ثابت نہیں کیونکہ امام بخاری کی پیدائش 194 ہجری میں ہوئی اور عبدالرحمن بن مہدی کی وفات 198 ہجری کو ہوئی ۔لہذا امام بخاری نے چار سال کی عمر میں پتہ نہیں یہ جرح کیسے سن لی جب کہ اس عمر میں ان کو حدیث کے علم کی خبر تک نہیں۔لہذا جرح منقطع اور ضعیف مردود ہے اعتراض 1 : زبیر زئی نور العینین ص 165 پر پہلا اعتراض نقل کرتا ہے۔ "مروی ہے کہ سفیان ثوری نے اس اثر کا انکار کیا ہے۔" (جزءرفع الیدین للبخاری:11) اس اعتراض کا رد: زبیر زئی نے یہاں بڑی چالاکی اور منافقت سے اس اعتراض کی سند چھپا لی اگر سند ظاہر کر دیتا تو اس کا اعتراض عام لوگوں کے لیے گمراہی کا باعث نہ بنتا لہذا ہم اس اعتراض کی سند نقل کر کے زبیر زئی کو جھوٹا ثابت کرتے ہیں۔ محمود بن اسحق (مجہول راوی) امام بخاری سے یہ بات نقل کرتا ہے۔ وَقَالَ عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ مَهْدِيٍّ: ذَكَرْتُ لِلثَّوْرِيِّ حَدِيثَ النَّهْشَلِيِّ، عَنْ عَاصِمِ بْنِ كُلَيْبِ، فَأَنْكَرَهُ (جزءرفع الیدین للبخاری:11) ترجمہ: اور عبدالرحمن بن مہدی نے کہا: میں نے امام (سفیان) ثوری کے سامنے النہشلی عن عاصم بن کلیب کی حدیث بیان کی تو انہوں نے انکار کیا۔ اس جرح میں امام بخاری کا سماع عبدالرحمن بن مہدی سے ثابت نہیں کیونکہ امام بخاری کی پیدائش 194 ہجری میں ہوئی اور عبدالرحمن بن مہدی کی وفات 198 ہجری کو ہوئی ۔لہذا امام بخاری نے چار سال کی عمر میں پتہ نہیں یہ جرح کیسے سن لی جب کہ اس عمر میں ان کو حدیث کے علم کی خبر تک نہیں۔لہذا جرح منقطع اور ضعیف مردود ہے
×
×
  • Create New...