Jump to content
اسلامی محفل
Sign in to follow this  
M Afzal Razvi

Taqwat-Ul-Imaan Mein Wahabi Ghair-Muqalideen Ki Tehreef..

Recommended Posts

wahabiyon ne apny imam ki kufriya ibarat chupany k liye ibarat hi badal di..

asal ismail dehalvi ki ibarat..


''Main bhi aik din mar kar miiti mein milny wala hon''
post-16996-0-88729100-1471025483_thumb.png

is ibarat ko badal kar likh diya..

''Aik na aik din main fout ho kar agoush lehad mein ja soan ga ''

post-16996-0-70204000-1471025530_thumb.png
post-16996-0-73742400-1471025533_thumb.png
post-16996-0-07384000-1471025611_thumb.png

Note : Nechy khud hi apny imam ismail ka rad kart howy hashiye mein Abu Dawood ki hadees likh di..

Ambiya Alaihee salam k ijsaam ko mitti nahi kha sakti..

 

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

G afzal bhai mere pass bhi dono edition books mauzud hai purani wali bhi aur new wali bhai... Laanat ho wahabiyo par khud to badalte nahi Ibarat badal dete hai Allah ki panah eyse makkaro se....

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Masha ALLAH .....

 

bahoot hi umada post ..

 

Ab ye chamar se bhi jyada zalil wahabde apane chamar se bhi jyada zalil mulle ismail dehlvi jo ke mar ke mitti me mil chula he par hi ilazam laga diya ...

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

اس عبارت میں حضرت شاہ صاحب رحمۃ اللہ علیہ نے جو کچھ بیان کیا ہے وہ حدیث شریف کی تشریح و تفصیل ہے اور ان معنی خیز الفاظ کا حدیث کے ساتھ گہرا تعلق ہے اس میں غیر اللہ کو سجدہ نہ کرنے کی علت بیان کی گئی ہے کہ جو مرکر مٹی میں دفن ہونے والا ہے اس کو سجدہ روا نہیں سجدہ صرف اسی کو ہوسکتا ہے جو ہمیشہ زندہ رہے اور اس پرکسی وقت بھی موت طاری نہ ہو اور نہ وہ مرکر مٹی میں دفن ہونے والا ہو۔

افسوس کہ ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ یہاں مخالفین نے اپنی جہالت کی وجہ سے ’’مٹی میں ملنے والا ہوں ‘‘ کے جملے سے یہ سمجھ لیا کہ

معاذ اللہ حضرت شاہ صاحب کا عقیدہ ہے کہ انبیاء اپنی قبروں میں سلامت نہیں رہتے حالانکہ یہ ان کی جہالت ہے ۔اردو زبان میں یہ لفظ یا جملہ دفن ہونے کیلئے بولا جاتا ہے ۔

چنانچہ جامع اللغات ،ج۲،ص۵۶۵ میں ملنا کے معنی دفن ہونا اور منیر اللغات ص ۹۰ میں ہے خاک میں ملنا یعنی دفن ہونا، ہیں۔نور اللغات میں ہے کہ مٹی میں ملنا یعنی دفن ہونا اور پھر اس معنی کے صحیح ہونے پر شعر سے استدلال کرتے ہیں

میں تو خاک کا پتلا یوں ہی تھا قضاء نے اور مٹی میں ملادیا (شاد)

(نور اللغات ،ج۴،ص۱۱۸۹)

یہاں ’’مٹی میں ملادیا‘‘ کے معنی ’’مٹی میں دفن ہونا ‘‘ ہیں۔اسی طرح اردو کی مبسوط ترین لغت ’’اردو لغت تاریخی اصول پر‘‘ میں ’’مٹی میں مل جانا‘‘ کے معنی ’’مٹی میں دفن ہوجانا ‘‘ کے کئے گئے ہیں اور پھر عبارت نقل کی گئی کہ :

جب پانی رخصت ہوجاتا ہے تو باقی صرف مٹی رہ جاتی ہے جسے قبرستان میں چھوڑ آتے ہیں کہ مٹی مٹی کے ساتھ مل جائے۔

(قصے تیرے افسانے ہیں ،ص۳۱۱)

یہاں مٹی کے ساتھ مل جائے ’’مٹی میں دفن ہوجانا‘‘ کے معنی میں لیا گیا ہے ۔

اسی طرح ’’مٹی میں ملنا‘‘ کو محاورہ کہہ کر اس کے معنی ’’ میت کومٹی دینا ‘‘ کے لکھے ہیں ،میت کی تجہیز و تکفین ہونا لکھے ہیں۔۔آگے اس معنی کے مناسبت سے شعر لکھتے ہیں کہ:

دنیا میں اعتبار ہے کیا حال و جاہ کا مٹی گدا کے ہاتھ سے ملی ہے شاہ کو

(دیوان سیر ،ج۲،ص۳۴۲)

یہاں ’’مٹی ملی ہے‘‘ میت کو مٹی دئے جانے کے معنی میں ہے ۔۔اسی طرح ایک معنی دفن کرنے کے لکھے ہیں اور اس معنی کی مناسبت سے شعر لکھتے ہیں کہ:

نسیم اعداء سے شکوہ کیا ہمیں یاروں نے مٹی میں ملادیا

(نسیم دہلوی ،ص ۸۷)

(اردو لغت تاریخی اصول پر ،ج۱۷،ص۲۰۷)

الحمد للہ ہم نے اردو لغات سے یہ ثابت کردیا ہے کہ ’’مٹی میں ملنا‘‘ کے معنی ’’دفن ہونے کے ہیں اوراردو زبان میں اس محاورے کا استعمال ’’نثر ‘‘ اور ’’اشعار‘‘ دونوں میں ملتا ہے اور اردو لغت کے بلغاء نے اس کو استعمال کیا ہے ۔۔لہٰذ ا اس عبارت پر اعتراض کرنا محض جہالت اور تعصب ہے۔

بریلویوں کا عقیدہ کہ نبی کے جسم کو کیڑے کھاجاتے ہیں (معاذ اللہ)

بریلوی حضرات دوسروں پر اعتراض کرنے سے پہلے ذرا اپنے گھر کی خبر بھی لے لیں ۔چنانچہ بریلوی مولوی ابو الحسنات قادری حضرت ایوب علیہ السلام کا واقعہ لکھتے ہوئے کہتا ہے کہ :

حدیث میں ہے کہ ’’چار ہزار کیڑے‘‘ آپ کے جسد مبارک میں پیدا ہوگئے اور وہ ’’اعضاء مبارک کو کھاتے‘‘۔(اوراق غم، ص۷۳)۔

یہ بات تو درست ہے کہ حضرت ایوب علیہ السلام پر اللہ کی طرف سے ایک آزمائش آئی تھی مگر یہ بات بریلوی حضرات کے ذمہ ہے کہ وہ کسی صحیح مرفوع حدیث سے ثابت کریں کہ حضرت ایوب علیہ السلام کے بدن مبارک کو ’’چار ہزار کیڑے ‘‘ کھاتے تھے۔حیرت ہے کہ حدیث میں تو ہے کہ ان اللہ حرم علی الارض ان تاکل اجساد الانبیاء کہ اللہ نے زمین پر حرام کردیا ہے کہ وہ انبیاء علیھم السلام کے جسموں کو کھائے مگر بریلویوں کا عقیدہ ہے کہ اس اللہ نے کیڑوں کیلئے یہ بات حلال کردی تھی معاذ اللہ۔۔تقویۃ الایمان پر اعتراض کرنے والوں کو کیا اپنے گھر کی یہ گستاخی نظر نہیں آتی۔۔؟؟

Share this post


Link to post
Share on other sites

بھگوڑے دیوبندی جی

اگر آپ لوگوں کے نزدیک یہ عبارت ایسی ہی تھی تو تحریف کرنا چہ معنی دارد؟؟؟

اوراق غم کی کئی عبارات سے حضرت صاحب کا رجوع ثابت ہے تو پھر ایسی عبارات باربار پیش کرنا دیوبندی حماقت ہی ہے

Share this post


Link to post
Share on other sites

Kufr say ham sharmatay nahin, gustakhi kay ham chaman walay
Kufrun ko dictionariyoon mein okay bana denh ham Deoband walay

 

Edited by MuhammedAli

Share this post


Link to post
Share on other sites

Tarana e Deoband:

Fail qaum e Loot Nanotavi karay, hem ham Qasim Ul gand walay

Ham ko ghalazat say piyar heh, hen ham Deoband walay,

Nah ham ko sharm o haya heh, ham jhoot o nanga walay

Ham bachoon ki salwar utaren, hen ham Deoband walay,

Gustakhi hamari shaan heh, kaam hamaray oot patang walay,
Aqeeda hamara ka gadday ki uzuu jesa, hen ham Deoband walay

Daway hamaray uchi ur'ran jesi, patang walay,
Hamaray dalail par kia kahoon, hen ham Deoband walay.

 

Hussam O Pir Sahib par ham jhoot banden, kartoot dang karnay walay
Keecha taani,  chori zori, takfir banahen, hen ham deoband walay.

Bazoo hamaray larki jesay, patli kamr, nazuk ang walay
Azmaya heh ham nay khaaq inko, hen ham Deoband walay.

Uqabir kay rang mein hen rangay hen ham gali galoch gand walay
Daj'jal mein Daj'jaal ham say peechay, hen ham Deoband walay.

Bhai kay sar par peshab karay, Ismail Dehalvi, gandi tarang walay.
Gustakh ham Nabiyoon waliyoon kay, tab banay hen ham Deoband walay.

Ala Hadhrat kay Sher par ihtiraz karay, lanat muj pay, hen gandi umang walay.
Abdul Qadir ki aakhir say risalat shurun huwi, na-samj hen ham Deoband walay.

 

Mirza Ghulam Qadir Beg Musalman, jhoot ham pehlahen Darbangi walay
Jhoot hamari Hinduwun ki si bhajan, keun nah issay ham gahen Deoband walay.

Hamara uqabir Thanvi heh, Qasim Nanotavi kay ham-palang walay.
Nanotavi hath pheray, Thanvi sharma-hay, ham hen Deobandi walay.

Musalmanun say mansub karen apnoon kay kartutun ko, joh thay gandi sang walay
Deobandiyat ki taleem ka namoona hoon mein, gand hen ham Deoband walay.

Tawaifoon kay Pir hamaray uqabir, champa bhai'n kay nang ko dekhnay walay.
Sari tawaifoon ko jantay thay, esay thay Pir hamaray Deoband walay.

 

Kufr say ham sharmatay nahin, gustakhi kay ham chaman walay
Kufrun ko dictionariyoon mein okay bana denh ham Deoband walay

-----------------------------------------------------------------------------------------------


Hamaray peshwa mar gahay, mar mittay matti mein milnay walay
Qabr mein jism salamat tab, gar hotay Sunni ham Deoband walay.

wala taqulu ra'ina wa qulun zurna samaj na pahay la-parwa fikr o danish walay
Phir uqabir kesay kafir na hoon, woh thay qarn e kufr aur hen ham Deoband walay.

Haram heh zuban jis mein ho shayba e towheen, kartoot yeh Yahood kay pasand walay.
Misdaq azaab e aleem hen, kon hamen jahannum say nikalay, ham hen Deoband walay.


Ayat e ra'ina say khaq meeli hamari tawilen phir bi jazba buland walay
Tang man, sang dill, bey fikr o khauf e khuda, kafir,  ham Deoband walay.


Towheen taqwiyat mein nahin phir tehreef keun kartay karnay walay
kufr ki parda poshi heh, Kufr kay parda posh hen ham Deoband walay
.

Agosh e lehad mein ja sohay Allah kay Nabi, kehtay hen seedhi rah walay
Yeh thee aur heh sirat e mustaqeem, Kufr ki rah par hen ham Deoband walay.

Haq likh kar kufr ko, un-zurna ka seedha rah dekhaya, Mushtaq nazir th'ani walay.
Haq mantay nahin, ziddi, hat-dharm, beqoof, apnay hi dushman ham Deoband walay.

Muhammed Ali Razavi.

Edited by MuhammedAli

Share this post


Link to post
Share on other sites

بھگوڑے دیوبندی جی

اگر آپ لوگوں کے نزدیک یہ عبارت ایسی ہی تھی تو تحریف کرنا چہ معنی دارد؟؟؟

اوراق غم کی کئی عبارات سے حضرت صاحب کا رجوع ثابت ہے تو پھر ایسی عبارات باربار پیش کرنا دیوبندی حماقت ہی ہے

Bhagorhy razakhani g

Doosri kitab ghair muqalideen ny chaapi ha to phr tehreef ka ilzam Ahlesunnat waljamat Deoband pr kiu lga rhy ho?

Share this post


Link to post
Share on other sites

Kufr say ham sharmatay nahin, gustakhi kay ham chaman walay

Kufrun ko dictionariyoon mein okay bana denh ham Deoband walay

 

 

Kharji rizvi ye bta k tera imam to Shah saheb rh ki takfeer na kr ska r tu kharji takfeer krta ha ab ya to Ahmad Raza kafir ha ya tu kharji kafir ha faisla ghr mn krlo

Share this post


Link to post
Share on other sites

مجھے تو تمہاری ذہنی کیفیت دیکھ کر ہنسی آتی ہے کہ آپ جیسا بد دماغ بھی دیوبندیوں کا مناظر بنا ہوا ہے۔اتنے ٹاپکس میں بھاگنے کے بعد اب الٹا ہمیں بھگوڑا کہہ رہا ہے۔

جناب جی دونوں کتابیں وہابیوں نے ہی شائع کی ہیں تو دیوبندیوں کا میدان میں آکر وہابیوں کا دفاع کرنا ثابت کرتا ہے کہ دونوں ایک گروہ ہیں ۔۔جسکا اقرار خود اشرفعلی نے بھی کیا ہے

Share this post


Link to post
Share on other sites

Kharji rizvi ye bta k tera imam to Shah saheb rh ki takfeer na kr ska r tu kharji takfeer krta ha ab ya to Ahmad Raza kafir ha ya tu kharji kafir ha faisla ghr mn krlo

اسمٰعیل دہلوی پر امام احمد رضا رحمتہ اللہ کے موقف "کف لسان" پر جہلا کے مغالطات پر ردّ

کے مقبول بندے امام احمد رضا خاں علیہ الرحمۃ الرضوان نے ابو الوہابیہ مولوی اسماعیل دہلوی کی مختلف عبارات پر لزومِ کفر کا فتویٰ دیا مگر مولوی اسماعیل دہلوی کو کافر نہ کہا اور اس کی وجہ یہ بتائی کہ ....”لزوم والتزام میں فرق ہے، اقوال کا کلمہ کفر ہونا اور بات اور قائل کو کافر مان لینا اور بات، ہم احتیاط برتیں گے، سکوت کریں گے جب تک ضعیف سا ضعیف احتمال ملے گا ،حکم کفر جاری کرتے ڈریں گے“.... (تمہید ایمان، ص50)

یہ بات دیوبندی اور غیر مقلدین کو سمجھ نہ آئی اور وہ تحریر وتقریر میں امام احمد رضا رحمۃ ا کے خلاف اس احتیاط کو الزام سمجھ کر پیش کرتے رہے ، بار ہا جواب پاکر بھی پروپیگنڈا سے باز نہ آئے،

لزوم والتزام کی تعریف

”لزومِ کفر “کے معنی ہیں کسی بات پر کفر کا لازم آنا، اور ” التزامِ کفر “کے معنی ہیں کسی شخص کا کفر کو اپنے اوپر لازم کرلینا، اس کی وضاحت یوں سمجھئے کہ کسی مسلمان کی زبان سے کوئی ایسی بات نکل جاتی ہے جو ازروئے شرع کفر ہے ، تو یہ لزومِ کفر ہے، اب اس مسلمان کو بتایا جائے کہ تیری اس بات پر لزومِ کفر آتا ہے اور وہ شخص توبہ کرنے کی بجائے اپنی بات پر اَڑ جائے تو یہ التزامِ کفر ہوگا اور اب اُس شخص کو کافر ماننا پڑے گا۔ ہاں اگر وہ اَڑ جانے اور ضد کرنے کی بجائے توبہ کرلے تو وہ مسلمان ہوگا کیونکہ التزامِ کفر ثابت نہ ہوا ، حالتِ اکراہ، حالتِ سُکر، غلبہ حال ، نیند اور جنون بھی التزامِ کفر کے منافی ہیں ، یعنی ان حالتوں میں بھی لزومِ کفر والی بات منہ سے نکل جائے تو التزامِ کفر ثابت نہیں ہوتا ، اس لئے صاحبِ کلام کافر نہیں ہوتا۔

اس بات کی مثالوں سے وضاحت

۱۔ مشکوٰۃ شریف میں باب الاستغفار والتوبہ میں بحوالہ مسلم شریف حضرت انس رضی ا عنہ سے مروی ہے کہ نبی پاک صلی ا علیہ وسلم نے فرمایا کہ بندہ جب توبہ کرتا ہے تو ا تعالیٰ اس توبہ سے بہت زیادہ خوش ہوتا ہے، اُس شخص سے بھی زیادہ خوش ہوتا جس کا اونٹ جنگل میں اس سے بھاگ گیا اور اُس پر اُس کا کھانے پینے کا سامان بھی تھا، وہ شخص اپنے اونٹ سے مایوس ہوگیا، ایک درخت کے سائے میں آکر سستانے کے لئے لیٹا اور بے شک وہ اونٹ سے مایوس تھا کہ اچانک اُس کا اونٹ سازوسامان سمیت اُس کے سامنے تھا، پھر اُس شخص نے اُونٹ کی مہار پکڑلی اور قال من شدۃ الفرح اللھم انت عبدی وانا ربک یعنی کہا اُس نے خوشی کے غلبہ سے مغلوب الحال ہوکر کہ ”اے ا تو بندہ ہے میرا اور میں خدا ہوں تیرا“، اخطاءمن شدۃ الفرح یعنی اُس نے خطا کی بہ سبب غلبہ حال خوشی کے ۔

ملاحظہ کیجئے اس حدیث شریف میں یہ الفاظ (اے ا تو بندہ ہے میرا اور میں خدا ہوں تیرا) کفر ہیں اور اس کلام پر کفر لازم آتا ہے، مگر صاحبِ کلام اپنے غلبہ حال کے سبب اس لزومِ کفر سے بے خبر اور لاعلم ہے، اس لئے اُس کا التزامِ کفر ثابت نہ ہوا، لہذا وہ صرف خطاکار ٹھہرا۔

2۔ بعض مشرکین نے حضرت عمار بن یاسر رضی ا عنہ کو پکڑا اور جناب رسالت مآب صلی ا علیہ وسلم کوسبّ اور اپنے بتوں کی تعریف کے الفاظ جبراً کہلوائے، حضرت عمار نے سارا واقعہ نبی پاک صلی ا علیہ کی خدمت اقدس میں عرض کیا، حضور صلی ا علیہ وسلم نے پوچھا تمہارا دل کس حال میں تھا؟ عرض کی ایمان کے ساتھ کامل طور پر مطمئن، تو آپ صلی ا علیہ وسلم نے انہیں تسلّی دی، سورۃ النحل کی آیت نمبر 106 کی ایک شان نزول یہ بھی ہے، آیت ملاحظہ ہو من کفر با من بعد ایمانہ الا من اکرہ وقلبہ مطمئن بالایمان .... الخ ، یعنی جو ایمان لا کر ا کے ساتھ کفر کرے سوا اُس کے جو مجبور کیا جائے اور اس کا دل ایمان پر جما ہوا ہو ، ہاں وہ جو دل کھول کر کافر ہو ان پر ا کا غضب ہے اور ان کو بڑا عذاب ہے۔

ملاحظہ کیا آپ نے ! مشرکوں نے جو کلمات کہلوائے ہوں گے وہ یقیناًلزومِ کفر کے کلمات تھے، مگر حالتِ اکراہ کے سبب صحابی کا التزامِ کفر ثابت نہیں ہوتا، اور اس بات کی تصدیق ا جل جلالہ اور اس کے حبیب صلی ا علیہ وسلم نے فرما کر صحابی کو مطمئن کردیا۔

3-۔مثنوی مولانا روم میں درج ہے کہ موسیٰ علیہ السلام نے ایک چرواہے کو دیکھا جو محبت الٰہی کے غلبہ¿ حال میں کہہ رہا تھا کہ خدا تو کہاں ہے میں تیرا خادم بننا چاہتا ہوں، میں تیری جوتیاں سینا چاہتا ہوں، تیرے سر میں کنگھا کرنا چاہتا ہوں، میں چاہتا ہوں کہ تیرے کپڑے سی دوں، تیری جوئیں ماروں، تیرے لئے دودھ لاں، تو بیمار ہو تو تیمارداری کروں، تیرے ہاتھ چوموں اور پاں دباں ، تیری خواب گاہ صاف کروں، گھی اور شربت، پنیر اور پراٹھے تجھے دوں، میرا کام یہ چیزیں لانا ہو اور تیرا کام یہ چیزیں کھانا ہو، الغرض وہ ایسی باتیں کررہا تھا کہ موسیٰ علیہ السلام نے اُسے ٹوکا اور پوچھا کس کو کہہ رہے ہو؟ بولا اپنے خدا کو :

گفت موسیٰ ہائے خیرہ سرشدی

خود مسلماں ناشدہ کافر شدی

(موسیٰ علیہ السلام نے فرمایا ہائے تو دیوانہ ہوگیا، تو مسلمان نہ رہا کافر ہوگیا)

وہ شخص حضرت موسیٰ علیہ السلام کا فرمان سننے کے بعد سخت پریشان ہوا ، اپنے کپڑے پھاڑ ڈالے اور روتا ہوا جنگل کو نکل گیا، موسیٰ علیہ السلام کی طرف وحی آئی اور آپ کو اس مغلوب الحال پر حکم لگانے سے روکا گیا، واضح ہوچکا ہے کہ اُس شخص کے کلمات پر لزومِ کفر آتا تھا مگر صاحبِ کلام کو اُس کے غلبہ حال اور لا علمی نے التزام کفر سے بچالیا۔

ایک د یوبندی عالم کی گواہی

مولانا حمد ا الداجوی پشاوری فاضل سہارنپور لکھتے ہیں:

فنقول انہ فرق بین لزوم الکفر والتزامہ فان التزام الکفر واما لزوم الکفر فلیس بکفر.... قال فی المواقف من یلزمہ الکفر فلا یعلم بہ فلیس بکافر ۔

”اور ہم کہتے ہیں کہ بے شک فرق ہے لزومِ کفر اور التزامِ کفر میں، پس بے شک التزامِ کفر تو کفر ہے، مگر لزومِ کفر کفر نہیں ہے، مواقف میں ہے کہ جس پر کفر لازم آئے اور وہ بے خبر ہو تو کافر نہیں ہے“ ۔

وذکر المفسر الالوسی .... فلو قال شخصاومن برسالۃ ولا ادری البشرام جنی ولا ادری امن العرب او من العجم فلا شک فی کفرہ لتکذیبہ القرآن.... فلو کان غیبا لا یعرف ذلک وجب تعلیمہ ایاہ فان جحد بعد ذلک حکمناہ بکفرہ۔ انتھیٰ

فانظر الی العلماءالمحققین المحتاطین فی امرالتکفیر وکذا یعلم من الحدیث المعروف الذی فیہ( اللھم انت عبدی وانا ربک) فھذہ کلمۃ کفر لا التزام فیہ۔

(البصائر لمنکر التوسل باھل المقابر، صفحہ 18،19، مطبوعہ استنبول، ترکی)

”اور مفسر آلوسی رحمۃ ا علیہ نے ذکر کیا کہ اگر کوئی شخص کہتا ہے کہ میں آپ صلی ا علیہ وسلم کو رسول مانتا ہوں مگر نہیں جانتا کہ کہ آپ بشر ہیں یاجن؟ عربی ہیں یا عجمی؟ تو اُس کے کفر میں شک نہیں ، قرآن جھٹلانے کے باعث اور اگر وہ غبی یہ بات نہیں جانتا تو اُس کو بتانا لازم ہے، پھر بھی اگر وہ ضد کرے اور اڑا رہے تو ہم اس کے کفر کا حکم جاری کریں گے، بات ختم، پس امر تکفیر میں تو محقق ومحتاط علماءکا رویّہ دیکھ، اور یہی پتہ چلتا ہے اُس مشہور حدیث سے جس میں ”اے ا تو بندہ ہے میرا اور میں خدا ہوں تیرا“ ، تو یہ کلام کفر ہے مگر التزامِ کفر یہاں ثابت نہیں“۔

احتمال کی قسمیں اور لزوم والتزامِ کفر 

احتمال کی تین قسمیں ممکن ہیں جو کہ درج ذیل ہیں:

نمبر 1 احتمال فی الکلام

یعنی کلام میں کوئی جائز توجیہ وتاویل ہوسکتی ہو، یہ احتمال لزومِ کفر کی نفی کرتا ہے ، یاد رہے کہ صریح بات میں تاویل نہیں سنی جاتی ورنہ کوئی بات بھی کفر نہ رہے۔

نمبر2۔ احتمال فی التکلّم

یعنی اس بات میں شُبہ آجائے کہ قائل نے وہ کفری کلمہ بولا یا نہیں ، یہ احتمال جب آئے گا تو قائل کا التزامِ کفر ثابت نہ ہوسکے گا۔

نمبر 3۔ احتمال فی المتکلم

یعنی خود قائل کے متعلق شُبہ ہو کہ اُس نے بے خیالی وبے خبری میں یا حالتِ سُکر یا غلبہ حال میں یہ کلام کہا اور اس کی قباحت پر آگاہ نہ کیا گیا یا کوئی ضعیف قول اُس کی توبہ کا مل جائے تو بھی قائل کاالتزامِ کفر ثابت نہ ہوگا۔

احتمال کی قسمیں اور مولوی اسماعیل دہلوی

نمبر1۔ احتمال فی الکلام

مولوی اسماعیل دہلوی کے کلمات پر لزومِ کفر آتا ہے، اُن میں تاویل کی گنجائش نہیں ملتی، وہ صریح کفر ہیں۔

نمبر2۔ احتمال فی التکلّم

بعض دیوبندی حضرات کا موقف یہ ہے کہ مولوی اسماعیل دہلوی نے تقویۃ الایمان نامی کتاب نہیں لکھی، چنانچہ مولوی حسین احمد مدنی نے مکتوبات میں اور صاحب تفسیر الاقوام نے اپنی تفسیر میں یہی موقف اختیار کیا ہے، اُن سے مولوی حق نواز جھنگوی نے مناظرہ جھنگ میں یہی موقف نقل کیا اور اسی موقف کو اختیار کیا، مولوی احمد رضا بجنوری اپنی کتاب”انوار الباری“ جلد11، صفحہ 107 پر مولوی حسین احمد مدنی کا موقف بیان کرتے ہیں اور اسی کی تائید کرتے ہیں۔

مولانا حکیم عبدالشکور مرزا پوری کے حوالے سے حضرت محقق زید ابوالحسن فاروقی مجددی دہلوی علیہ الرحمہ، متوفی 1414ھ/ 1993ء(خانقاہ حضرت مرزا مظہر جان جاناں،دہلی)اپنی کتاب”مولانا اسماعیل اور تقویۃ الایمان“ میں لکھا ہے کہ صراط مستقیم، تنویر العین اور ایضاح الحق الصریح ، آپ کی تالیفات میں سے نہیں ہیں اور تقویۃ الایمان بھی محرف اور غیر معتبر ہے۔

(مولانا اسماعیل اور تقویۃ الایمان ،مطبوعہ شاہ ابوالخیر اکاڈمی دھلی1984ئ، ص47)

مولوی سرفراز صفدردیوبندی(گوجرانوالہ، پاکستان)نے اپنی کتاب”عباراتِ اکابر“میں صراط مستقیم کی متنازعہ فیہ مشہور عبارت کو مولوی اسماعیل دہلوی کی ذاتی عبارت ماننے میں شبہات پیدا کرنے کی کوشش کی ہے اور اسی طرح بعض غیر مقلد بھی کررہے ہیں، اگرچہ دلائل و شواہد کی روشنی میں یہ ایک ضعیف ترین قول ہے جو اکثر کے خلاف ہے اور بالکل شاذ قول ہے، تاہم اس سے التزامِ کفر میں تو احتمال آگیا، لہذا یہاں امام احمد رضا کے موقف کی تائید ان حضرات کی زبان سے ہی ہوگئی ہے۔

نمبر3۔ احتمال فی المتکلم

مولوی اسماعیل دہلوی کے بارے میں یہ احتمال دو طرح سے ممکن ہے، اولاً احتمال ہے کہ اُسے اپنے کلمات کے کفریہ ہونے کا علم ہی نہ ہوا ہو، اور اپنے خلاف لگائے گئے فتوائے کفر کا اُسے علم ہی نہ ہوا ہو، ”تحقیق الفتویٰ“ اس کے سامنے پیش ہونا مجھے معلوم نہ ہوسکا، مناظرہ دھلی میں مسائل زیرِ بحث لائے گئے تھے، اُس کی کفریہ عبارات پر بحث نہیں ہوئی تھی، لہذا یہ احتمال عقلاً ممکن ہے، اور التزامِ کفر میں احتمال ہے۔

ثانیاً” افکار وسیاسیات علماءدیوبند“ صفحہ 38پر مولانا محمد شریف نوری نے کتاب ”ہدایت الصالحین بر حاشیہ توقیر الحق“ مصنفہ نواب قطب الدین دہلوی، صفحہ 87 کے حوالہ سے لکھا ہے کہ مناظرہ پشاور میں مولوی اسماعیل دہلوی کو ایسی عبرت ناک ناکامی کا سامنا کرنا پڑا کہ توبہ کے سوا کوئی چارہ کار نظر نہ آیا تو مجبوراً اپنے عقائد سے توبہ کا اعلان کردیا، چنانچہ مولوی رشید احمد گنگوہی کے زمانے میں اُن سے ایک سوال ہوا جس میں ذکر ہے کہ” ایک بات مشہور ہے کہ مولوی اسماعیل صاحب شہید نے اپنے انتقال کے وقت بہت سے آدمیوں کے روبرو بعض مسائل تقویۃ الایمان سے توبہ کی ہے“، مولوی گنگوہی صاحب نے جواب دیا کہ ”توبہ کرنا اُن کا بعض مسائل سے محض افتراءاہل بدعت کا ہے“۔ (فتاویٰ رشیدیہ، صفحہ 84، 85)

ظاہر بات ہے کہ اہل بدعت کا لفظ یہ حضرات اہل سنت کے لئے استعمال کرتے ہیں ، تو اہل سنت میں یہ قول کہیں نہ کہیں مل جاتا تھا کہ اسماعیل دہلوی نے اپنے غلط مسائل سے توبہ کی تھی(یعنی توبہ کرنے کی بات مشہور تھی)، یہاں اگرچہ کفریہ عبارات سے توبہ کی صراحت تو نہیں ہے مگر احتمال تو ہے اور وہی اُس کے التزامِ کفر میں احتمال ہے۔

بعض چند شبہات کا ازالہ

نمبر1۔ مولانا فضل حق خیر آبادی اور سترہ دیگر علماءنے 1240ھ/ 1825ءمیں تقویۃ الایمان کی ایک عبارت پر فتویٰ لگاتے ہوئے لکھا کہ ”اس بیہودہ کلام کا قائل ازروئے شریعت کافر اور بے دین ہے اور ہرگز مسلمان نہیں ہے.... جو اس کے کفرمیں شک وتردد لائے.... کافر بے دین اور نا مسلمان ولعین ہے“۔ یہ فتویٰ مولانا احمد رضا خاں کے خلاف ہے کیونکہ اس میں لزوم والتزام کی تاویلات کا دروازہ بند کردیا گیا ہے۔

جواباً عرض ہے کہ یہ فتویٰ مولانا احمد رضا خاں کے بالکل خلاف نہیں ہے ، بلکہ امام احمد رضا خاں کا بھی یہی فتویٰ ہے ، معترض کو یہ علم نہیں ہے کہ جس کا التزام کفر ثابت نہ ہو وہ حقیقتاً قائل قرار نہیں دیا جاتا اگرچہ بظاہر قائل وہی ہو، اس کی مثالیں ہم پیش کرچکے ہیں، اور التزامِ کفر سے بچنے کا دروازہ توبہ ہے جسے موت بند کرتی ہے، مفتی کا فتویٰ بند نہیں کرتا۔

نمبر2۔ 1240ھ میں مناظرہ دہلی میں اسماعیل دہلوی نے کفریہ عبارات سے توبہ نہیں کی۔

جناب اس مناظرہ میں کفریہ عبارات کو زیر بحث ہی کب لایا گیا تھا، وہاں تو چند دیگر اختلافی مسائل کو زیر بحث لایا گیا تھا۔ ???

نمبر 3۔ 1246ھ/ 1831ئ میں مرتے وقت تک اسماعیل دہلوی نے گستاخانہ عبارات سے توبہ نہیں کی، ورنہ بعد کے علماءاہل سنت مثلاً مولانا قاضی فضل احمد لدھیانوی وغیرہ اسماعیل دہلوی کی تکفیرنہ کرتے۔

جواباً عرض ہے کہ ”تحقیق الفتویٰ“ کے چھ سال بعد تک مولوی اسماعیل دہلوی زندہ رہا، کیا ہمارے مہربانوں کو مولوی اسماعیل دہلوی کی اس عرصے کی وہ ڈائری مل گئی ہے جو کراماً کاتبین نے لکھی تھی اور اُس میں توبہ مذکور نہیں ہے، کیونکہ نفی کے مدعی کو علم محیط درکار ہے، اور واقعاتِ نادرہ میں اثباتِ واقعہ کا قول نفی پر مقدم ہوتا ہے، ممکن ہے کہ مذکورہ علماءتک یہ قول نہ پہنچا ہو، یہاں یہ احتمال بھی ہے کہ توبہ کا قول تو ان تک بھی پہنچا ہو مگر شرعی فقہی پیمانے پر پورا نہ اُترنے کی وجہ سے انہوں نے اس قول کو تسلیم نہ کیا ہو، اور توبہ کا شبہ صرف احتیاط کی ترغیب دیتا ہے اور امام احمد رضا کسی کو احتیاط پر مجبور نہیں کرسکتے۔

نمبر4۔ اسماعیل دہلوی کے کفر کو یزید کے کفر سے تشبیہ دینا غلط ہے کیونکہ یزید کے ساتھ مناظرے نہیں ہوئے۔

جواباً عرض ہے کہ تشبیہ کا من کل الوجوہ ہونا لازمی نہیں، جس طرح یزید کو بعض مسلمان، بعض کافر کہتے ہیں، بعض توقف کرتے ہیں، یہی حال اسماعیل دہلوی کا ہے، من بعض الوجوہ تشبیہ یہاں ثابت ہے، اس سے انکار کرنا تاریخ سے آنکھیں چرانا ہے۔

نمبر5۔ لزوم والتزامِ کفر اور اسماعیل دہلوی کے سوال پر اہل سنت کا مناظر نہایت بے چارگی اور بے بسی محسوس کرتا ہے۔

جواباً عرض ہے کہ اہل سنت کا مناظر یہاں قطعاً بے چارگی اور بے بسی محسوس نہیں کرتا، وہ تو اس سوال کا منتظر بیٹھا ہوتا ہے ، جونہی سوال آتا ہے وہ پوری وضاحت کے ساتھ معترض کا منہ بند کردیتا ہے ، راقم نے مناظرہ بریلی، مناظرہ ادری، مناظرہ جھنگ اور مناظرہ بنگال وغیرہ کی روئیداد پڑھی ہیں، کئی مناظروں کی کیسٹس بھی سنی ہیں، ہمیں تو اس مسئلے میں دیوبندی مناظر ہر جگہ دبکا ہوا نظر آیاہے، ان بے چاروں کو تو اس مسئلہ میں بات بھی کرنی نہیں آتی، اور انہیں لزوم والتزامِ کفر کا فرق بھی معلوم نہیں ہوتا، چنانچہ مناظرہ¿ جھنگ میں دیوبندی مناظر حق نواز جھنگوی نے مولانا محمد اشرف سیالوی سے پوچھا تھا کہ”باقی رہی ایک بات یہ کہ آپ نے فرمایا ہے کہ مولانا احمد رضا خاں صاحب نے لزوم والتزام کی وجہ سے کافر نہیں کہا، آپ بتائیں کہ لزوم کے لفظ کون سے ہوتے ہیں اور التزام کے کون سے ہوتے ہیں؟“

(مناظرہ جھنگ، مطبوعہ مکتبہ فریدیہ، ساہیوال، ص107)

جو بے چارے اتنا بھی نہیں جانتے کہ لزوم والتزام میں لفظ ایک ہی ہوتے ہیں یا لفظوں میں فرق ہوتا ہے، اُن مناظرین کا میدانِ مناظرہ میں ہونے والا حشر کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں، یہی وجہ ہے کہ دیوبندی مناظرین اپنے اکابر کی گستاخانہ عبارات پر مناظرہ سے ہر جگہ کنی کتراتے ہیں، یقین نہ آئے تو چیلنج دے کر دیکھ لیجئے۔

نمبر6۔ مفتی خلیل خاں بجنوری(دیوبندی) نے اپنی کتاب”انکشافِ حق“ میں لزوم والتزام اور احتمال کے انہی لفظوں سے فائدہ اُٹھاتے ہوئے دیگر اکابرِ دیوبند کی کفریہ عبارات کی بنا پر انہیں کافر کہنے سے احتیاط اور کفِ لسان کا قول کیا ہے۔

جواباً عرض ہے کہ مفتی مذکور کی کتاب”انکشافِ حق“ میں نے پڑھی ہے، جن اکابر ِ یوبند کو وہ بچانا چاہتا ہے ، نہ اُن کی عبارات میں اسلامی احتمال دکھا کر انہیں لزوم کفر سے بچا سکا ہے اور نہ ہی اُن افراد کے التزامِ کفر کی نفی پر کوئی دلیل یا احتمال دکھا سکا ہے، کتاب کو قواعد یا نظائر سے ضخیم بنانے کی کوشش کی گئی ہے، مگر ہر جگہ قیاس مع الفارق سے کام لیا گیا ہے، فی الحال اتنا اجمال کافی ہے۔

نمبر7۔ جب اسماعیل دہلوی کو مولانا احمد رضا خاں نے مسلمان کہا ہے تو اُس کی عبارات دیوبندیوں اور اہل حدیثوں کے خلاف کیوں پیش کرتے ہو؟

جواباً عرض ہے کہ اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خاں علیہ الرحمہ کا موقف، توقف کرنا ہے وہ نہ اُسے مسلمان کہتے ہیں اور نہ ہی احتیاطاً اسے کافر کہتے ہیں، البتہ اس کی گستاخانہ عبارات کو دیوبندی وہابی اور غیر مقلد وہابی درست اور حق مانتے ہیں، اس لئے اُس کی کفریہ عبارات کو درست اور اسلامی مان کر یہ التزامِ کفر کے مرتکب قرار پاتے ہیں، چنانچہ دیوبندیوں کے شیخ الکل مولوی رشید احمد گنگوہی لکھتے ہیں:” کتاب تقویۃ الایمان نہایت عمدہ کتاب ہے اور ردّ شرک وبدعت میں لاجواب ہے، استدلال اس کے بالکل کتاب اور احادیث سے ہیں، اُس کا رکھنا اور پڑھنا اور عمل کرنا عین اسلام ہے“۔ (فتاویٰ رشیدیہ، صفحہ 78) ، ”بندہ کے نزدیک سب مسائل اس کے صحیح ہیں “، (فتاویٰ رشیدیہ، ص85) 

لہذا مولوی رشید احمد گنگوہی اور ان کے پیرو کار تو تقویۃ الایمان کے کفریات کا التزام کرچکے ہیں، رہ گئے غیر مقلد وہابی تو وہ تو تقویۃ الایمان اور اس کے مصنف پر فدا ہیں، یقین نہ آئے تو مولوی ثناءا امرتسری کے یہ الفاظ ملاحظہ فرمالیجئے ” تقویۃ الایمان اور اس کا مصنف عالی شان اسماعیل وما ادرک ما اسماعیل، آج کل بعض اخباروں میں مجاہدفی ا شہید فی سبیل امولانا اسماعیل رضی ا عنہ کی تقویۃ الایمان پر ذکر اذکار ہورہا ہے.... مختصر یہ کہ شہید مرحوم نے جو کچھ لکھا ہے قرآن حدیث اور اقوال صوفیاءکے بالکل مطابق ہے“ ۔

(فتاویٰ ثنائیہ، ج1،ص101 )

اندریں حالات مولوی اسماعیل دہلوی کا التزام کفر محتمل وظنی بھی ہوجائے تو بھی مذکورہ دیوبندی اور غیر مقلد حضرات کو تقویۃ الایمانی کفریات کا التزامِ کفر قطعی غیر محتمل اور صریح قرار پاتاہے۔ ( اور یہ الزامی جواب ہے )

وما علینا الا البلاغ المبین والحمد رب العالمین

Share this post


Link to post
Share on other sites

Tarana e Deoband:

Fail qaum e Loot Nanotavi karay, hem ham Qasim Ul gand walay

Ham ko ghalazat say piyar heh, hen ham Deoband walay,

Nah ham ko sharm o haya heh, ham jhoot o nanga walay

Ham bachoon ki salwar utaren, hen ham Deoband walay,

Gustakhi hamari shaan heh, kaam hamaray oot patang walay,
Aqeeda hamara ka gadday ki uzuu jesa, hen ham Deoband walay

Daway hamaray uchi ur'ran jesi, patang walay,
Hamaray dalail par kia kahoon, hen ham Deoband walay.

 

Hussam O Pir Sahib par ham jhoot banden, kartoot dang karnay walay
Keecha taani,  chori zori, takfir banahen, hen ham deoband walay.

Bazoo hamaray larki jesay, patli kamr, nazuk ang walay
Azmaya heh ham nay khaaq inko, hen ham Deoband walay.

Uqabir kay rang mein hen rangay hen ham gali galoch gand walay
Daj'jal mein Daj'jaal ham say peechay, hen ham Deoband walay.

Bhai kay sar par peshab karay, Ismail Dehalvi, gandi tarang walay.
Gustakh ham Nabiyoon waliyoon kay, tab banay hen ham Deoband walay.

Ala Hadhrat kay Sher par ihtiraz karay, lanat muj pay, hen gandi umang walay.
Abdul Qadir ki aakhir say risalat shurun huwi, na-samj hen ham Deoband walay.

 

Mirza Ghulam Qadir Beg Musalman, jhoot ham pehlahen Darbangi walay
Jhoot hamari Hinduwun ki si bhajan, keun nah issay ham gahen Deoband walay.

Hamara uqabir Thanvi heh, Qasim Nanotavi kay ham-palang walay.
Nanotavi hath pheray, Thanvi sharma-hay, ham hen Deobandi walay.

Musalmanun say mansub karen apnoon kay kartutun ko, joh thay gandi sang walay
Deobandiyat ki taleem ka namoona hoon mein, gand hen ham Deoband walay.

Tawaifoon kay Pir hamaray uqabir, champa bhai'n kay nang ko dekhnay walay.
Sari tawaifoon ko jantay thay, esay thay Pir hamaray Deoband walay.

 

Kufr say ham sharmatay nahin, gustakhi kay ham chaman walay
Kufrun ko dictionariyoon mein okay bana denh ham Deoband walay


Hamaray peshwa mar gahay, mar mittay matti mein milnay walay
Qabr mein jism salamat tab, gar hotay Sunni ham Deoband walay.

wala taqulu ra'ina wa qulun zurna samaj na pahay la-parwa fikr o danish walay
Phir uqabir kesay kafir na hoon, woh thay qarn e kufr aur hen ham Deoband walay.

Haram heh zuban jis mein ho shayba e towheen, kartoot yeh Yahood kay pasand walay.
Misdaq azaab e aleem hen, kon hamen jahannum say nikalay, ham hen Deoband walay.


Ayat e ra'ina say khaq meeli hamari tawilen phir bi jazba buland walay
Tang man, sang dill, bey fikr o khauf e khuda, kafir,  ham Deoband walay.


Towheen taqwiyat mein nahin phir tehreef keun kartay karnay walay
kufr ki parda poshi heh, Kufr kay parda posh hen ham Deoband walay
.

Agosh e lehad mein ja sohay Allah kay Nabi, kehtay hen seedhi rah walay
Yeh thee aur heh sirat e mustaqeem, Kufr ki rah par hen ham Deoband walay.

Haq likh kar kufr ko, un-zurna ka seedha rah dekhaya, Mushtaq nazir th'ani walay.
Haq mantay nahin, ziddi, hat-dharm, beqoof, apnay hi dushman ham Deoband walay.


-----------------------------------------------------------------------------------------------

Khariji karen takfir e aksiriat (majority), parh Taqwiyat kay bab awal walay.
Tha Khariji Shah Ismail Dehalvi, hen Khariji takfeeri ham Deoband walay.

Luzum o iltizam e kufr kay hen yeh chakkar, chakra gahay chakranay walay
Yazeed jesa likha, Musalman na Kafir, na samaj pahay ham Deoband walay

Takfir nah ki, mohtat thay woh, Imam Ahmad Raza Khan Bareilly Walay,
Dehalvi ki toba mashoor, acha zan Bareily ka, is ba-ghayr ham Deoband walay.

Hussam e haq thi saif e haramayn, ihtiyat samja gahay Raza Bareily Walay.
Hotay Dehalvi jesay, takfiri machine gun, Kafir hotay ham sab Deoband walay.

Dehalvi ki Kufriat ka bataya, nah hukm kufr lagaya, bewaqoof bey-aqal walay.
Kufr ko kufr kehna takfir e sahib e kufr nahin shumul kufr ham Deoband walay


Joh Kufrun ka muhafiz ho, juraim us kay sahib e kufr walay
Baghayr jaiz waja kay hen kafir, muhafiz e kufr ham deoband walay.

Edited by MuhammedAli

Share this post


Link to post
Share on other sites

Tarana e Deoband:

Fail qaum e Loot Nanotavi karay, hem ham Qasim Ul gand walay

Ham ko ghalazat say piyar heh, hen ham Deoband walay,

Nah ham ko sharm o haya heh, ham jhoot o nanga walay

Ham bachoon ki salwar utaren, hen ham Deoband walay,

Gustakhi hamari shaan heh, kaam hamaray oot patang walay,
Aqeeda hamara ka gadday ki uzuu jesa, hen ham Deoband walay

Daway hamaray uchi ur'ran jesi, patang walay,
Hamaray dalail par kia kahoon, hen ham Deoband walay.

 

Hussam O Pir Sahib par ham jhoot banden, kartoot dang karnay walay
Keecha taani,  chori zori, takfir banahen, hen ham deoband walay.

Bazoo hamaray larki jesay, patli kamr, nazuk ang walay
Azmaya heh ham nay khaaq inko, hen ham Deoband walay.

Uqabir kay rang mein hen rangay hen ham gali galoch gand walay
Daj'jal mein Daj'jaal ham say peechay, hen ham Deoband walay.

Bhai kay sar par peshab karay, Ismail Dehalvi, gandi tarang walay.
Gustakh ham Nabiyoon waliyoon kay, tab banay hen ham Deoband walay.

Ala Hadhrat kay Sher par ihtiraz karay, lanat muj pay, hen gandi umang walay.
Abdul Qadir ki aakhir say risalat shurun huwi, na-samj hen ham Deoband walay.

 

Mirza Ghulam Qadir Beg Musalman, jhoot ham pehlahen Darbangi walay
Jhoot hamari Hinduwun ki si bhajan, keun nah issay ham gahen Deoband walay.

Hamara uqabir Thanvi heh, Qasim Nanotavi kay ham-palang walay.
Nanotavi hath pheray, Thanvi sharma-hay, ham hen Deobandi walay.

Musalmanun say mansub karen apnoon kay kartutun ko, joh thay gandi sang walay
Deobandiyat ki taleem ka namoona hoon mein, gand hen ham Deoband walay.

Tawaifoon kay Pir hamaray uqabir, champa bhai'n kay nang ko dekhnay walay.
Sari tawaifoon ko jantay thay, esay thay Pir hamaray Deoband walay.

 

Kufr say ham sharmatay nahin, gustakhi kay ham chaman walay
Kufrun ko dictionariyoon mein okay bana denh ham Deoband walay


Hamaray peshwa mar gahay, mar mittay matti mein milnay walay
Qabr mein jism salamat tab, gar hotay Sunni ham Deoband walay.

wala taqulu ra'ina wa qulun zurna samaj na pahay la-parwa fikr o danish walay
Phir uqabir kesay kafir na hoon, woh thay qarn e kufr aur hen ham Deoband walay.

Haram heh zuban jis mein ho shayba e towheen, kartoot yeh Yahood kay pasand walay.
Misdaq azaab e aleem hen, kon hamen jahannum say nikalay, ham hen Deoband walay.


Ayat e ra'ina say khaq meeli hamari tawilen phir bi jazba buland walay
Tang man, sang dill, bey fikr o khauf e khuda, kafir,  ham Deoband walay.


Towheen taqwiyat mein nahin phir tehreef keun kartay karnay walay
kufr ki parda poshi heh, Kufr kay parda posh hen ham Deoband walay
.

Agosh e lehad mein ja sohay Allah kay Nabi, kehtay hen seedhi rah walay
Yeh thee aur heh sirat e mustaqeem, Kufr ki rah par hen ham Deoband walay.

Haq likh kar kufr ko, un-zurna ka seedha rah dekhaya, Mushtaq nazir th'ani walay.
Haq mantay nahin, ziddi, hat-dharm, beqoof, apnay hi dushman ham Deoband walay.


Khariji karen takfir e aksiriat (majority), parh Taqwiyat kay bab awal walay.
Tha Khariji Shah Ismail Dehalvi, hen Khariji takfeeri ham Deoband walay.

Luzum o iltizam e kufr kay hen yeh chakkar, chakra gahay chakranay walay
Yazeed jesa likha, Musalman na Kafir, na samaj pahay ham Deoband walay

Takfir nah ki, mohtat thay woh, Imam Ahmad Raza Khan Bareilly Walay,
Dehalvi ki toba mashoor, acha zan Bareily ka, is ba-ghayr ham Deoband walay.

Hussam e haq thi saif e haramayn, ihtiyat samja gahay Raza Bareily Walay.
Hotay Dehalvi jesay, takfiri machine gun, Kafir hotay ham sab Deoband walay.

Dehalvi ki Kufriat ka bataya, nah hukm kufr lagaya, bewaqoof bey-aqal walay.
Kufr ko kufr kehna takfir e sahib e kufr nahin shumul kufr ham Deoband walay.


Joh Kufrun ka muhafiz ho, juraim us kay sahib e kufr walay.
Baghayr jaiz waja kay hen kafir, muhafiz e kufr ham deoband walay.


-----------------------------------------------------------------------------------------------

 

Sharm o haya sabi ki ek, kitab cha'hen chapen, ghayr muqalideen chappay walay.
Tum pay kohi ilzam nahin, kaha tha pehlay, Kufr ki rah par hen ham Deoband walay.

Kia kabi gustakhan e ambiyah o awliyah bi thay, Ahle Sunnat, Wal Jammat walay.
Esoon kay sar mar thay, aur sar mar hen, Ahle Sunnat, nah kay ham Deoband walay.

Kertay kia Farooq e Azam suntay ham say ilfaz agar Taqwiyat walay.
Kia Tawilen kartay ya Jihad kartay, phir hotay kia ham Deoband walay.


Taweel e towheen nah kartay thay, Siddeeq, Farooq e Azam, Khalid ke namoonay walay.

In'neeh kay naqsh e qadam per hen Imam e Ahle Sunnat, nah kay ham Deoband walay.

Munafiq ko ayat say piyar, baqawl; sabat huwa kamil nahin kali kamli walay 
Bad-aqidgi ki tawil nah ki Siddiq nay, Taweelen kartay ham Deoband walay.

Siddeeq nay us ka sar mara, keun kay thay us kay nazriat bad-aqeedgi walay.
Itni si baat pay huwa khoon halal, is say shadeed gustakh ham Deoband walay.


Muhammed Ali Razavi

Edited by MuhammedAli

Share this post


Link to post
Share on other sites

Tarana e Deoband:

Fail qaum e Loot Nanotavi karay, hem ham Qasim Ul gand walay

Ham ko ghalazat say piyar heh, hen ham Deoband walay,

Nah ham ko sharm o haya heh, ham jhoot o nanga walay

Ham bachoon ki salwar utaren, hen ham Deoband walay,

Gustakhi hamari shaan heh, kaam hamaray oot patang walay,
Aqeeda hamara ka gadday ki uzuu jesa, hen ham Deoband walay

Daway hamaray uchi ur'ran jesi, patang walay,
Hamaray dalail par kia kahoon, hen ham Deoband walay.

 

Hussam O Pir Sahib par ham jhoot banden, kartoot dang karnay walay
Keecha taani,  chori zori, takfir banahen, hen ham deoband walay.

Bazoo hamaray larki jesay, patli kamr, nazuk ang walay
Azmaya heh ham nay khaaq inko, hen ham Deoband walay.

Uqabir kay rang mein hen rangay hen ham gali galoch gand walay
Daj'jal mein Daj'jaal ham say peechay, hen ham Deoband walay.

Bhai kay sar par peshab karay, Ismail Dehalvi, gandi tarang walay.
Gustakh ham Nabiyoon waliyoon kay, tab banay hen ham Deoband walay.

Ala Hadhrat kay Sher par ihtiraz karay, lanat muj pay, hen gandi umang walay.
Abdul Qadir ki aakhir say risalat shurun huwi, na-samj hen ham Deoband walay.

 

Mirza Ghulam Qadir Beg Musalman, jhoot ham pehlahen Darbangi walay
Jhoot hamari Hinduwun ki si bhajan, keun nah issay ham gahen Deoband walay.

Hamara uqabir Thanvi heh, Qasim Nanotavi kay ham-palang walay.
Nanotavi hath pheray, Thanvi sharma-hay, ham hen Deobandi walay.

Musalmanun say mansub karen apnoon kay kartutun ko, joh thay gandi sang walay
Deobandiyat ki taleem ka namoona hoon mein, gand hen ham Deoband walay.

Tawaifoon kay Pir hamaray uqabir, champa bhai'n kay nang ko dekhnay walay.
Sari tawaifoon ko jantay thay, esay thay Pir hamaray Deoband walay.

 

Kufr say ham sharmatay nahin, gustakhi kay ham chaman walay
Kufrun ko dictionariyoon mein okay bana denh ham Deoband walay


Hamaray peshwa mar gahay, mar mittay matti mein milnay walay
Qabr mein jism salamat tab, gar hotay Sunni ham Deoband walay.

wala taqulu ra'ina wa qulun zurna samaj na pahay la-parwa fikr o danish walay
Phir uqabir kesay kafir na hoon, woh thay qarn e kufr aur hen ham Deoband walay.

Haram heh zuban jis mein ho shayba e towheen, kartoot yeh Yahood kay pasand walay.
Misdaq azaab e aleem hen, kon hamen jahannum say nikalay, ham hen Deoband walay.


Ayat e ra'ina say khaq meeli hamari tawilen phir bi jazba buland walay
Tang man, sang dill, bey fikr o khauf e khuda, kafir,  ham Deoband walay.


Towheen taqwiyat mein nahin phir tehreef keun kartay karnay walay
kufr ki parda poshi heh, Kufr kay parda posh hen ham Deoband walay
.

Agosh e lehad mein ja sohay Allah kay Nabi, kehtay hen seedhi rah walay
Yeh thee aur heh sirat e mustaqeem, Kufr ki rah par hen ham Deoband walay.

Haq likh kar kufr ko, un-zurna ka seedha rah dekhaya, Mushtaq nazir th'ani walay.
Haq mantay nahin, ziddi, hat-dharm, beqoof, apnay hi dushman ham Deoband walay.


Khariji karen takfir e aksiriat (majority), parh Taqwiyat kay bab awal walay.
Tha Khariji Shah Ismail Dehalvi, hen Khariji takfeeri ham Deoband walay.

Luzum o iltizam e kufr kay hen yeh chakkar, chakra gahay chakranay walay
Yazeed jesa likha, Musalman na Kafir, na samaj pahay ham Deoband walay

Takfir nah ki, mohtat thay woh, Imam Ahmad Raza Khan Bareilly Walay,
Dehalvi ki toba mashoor, acha zan Bareily ka, is ba-ghayr ham Deoband walay.

Hussam e haq thi saif e haramayn, ihtiyat samja gahay Raza Bareily Walay.
Hotay Dehalvi jesay, takfiri machine gun, Kafir hotay ham sab Deoband walay.

Dehalvi ki Kufriat ka bataya, nah hukm kufr lagaya, bewaqoof bey-aqal walay.
Kufr ko kufr kehna takfir e sahib e kufr nahin shumul kufr ham Deoband walay.


Joh Kufrun ka muhafiz ho, juraim us kay sahib e kufr walay.
Baghayr jaiz waja kay hen kafir, muhafiz e kufr ham deoband walay.

 

Sharm o haya sabi ki ek, kitab cha'hen chapen, ghayr muqalideen chappay walay.
Tum pay kohi ilzam nahin, kaha tha pehlay, Kufr ki rah par hen ham Deoband walay.

Kia kabi gustakhan e ambiyah o awliyah bi thay, Ahle Sunnat, Wal Jammat walay.
Esoon kay sar mar thay, aur sar mar hen, Ahle Sunnat, nah kay ham Deoband walay.

Kertay kia Farooq e Azam suntay ham say ilfaz agar Taqwiyat walay.
Kia Tawilen kartay ya Jihad kartay, phir hotay kia ham Deoband walay.


Taweel e towheen nah kartay thay, Siddeeq, Farooq e Azam, Khalid ke namoonay walay.

In'neeh kay naqsh e qadam per hen Imam e Ahle Sunnat, nah kay ham Deoband walay.

Munafiq ko ayat say piyar, baqawl; sabat huwa kamil nahin kali kamli walay 
Bad-aqidgi ki tawil nah ki Siddiq nay, Taweelen kartay ham Deoband walay.

Siddeeq nay us ka sar mara, keun kay thay us kay nazriat bad-aqeedgi walay.
Itni si baat pay huwa khoon halal, is say shadeed gustakh ham Deoband walay.

-----------------------------------------------------------------------------------------------

Towheen ki sau tawilen nah keen, kia nah thay Sahabah ilm walay.
Woh Ilm kay samundar, najasati ilm kay qatray ham Deoband walaly.

Wa lillah-il izzatu, wa li rasoolihi, samjay aur iman lahay, iman lanay walay.
Sahabah samjay izzat kay taqazay, nah samjay izzat ham Deoband walay.

Sahabah ahle Sunnat aur Jammat, nazriat un kay Bareilly kay dajtar walay,
Kesay banay ham ahle sunnat, dushman unkay aur inkay ham Deoband walay.

Muhammed Ali Razavi

Share this post


Link to post
Share on other sites

Qasim Nanotavi nay martay waqt Tahzir Un Naas kay Kufr honay par, iqrar kis ilfaaz mein keeya thah, aur kis waja par us nay kaha thah kay woh musalman nahin hoga, aur Ala Hazrat kay pahoon choomnay ka Qasim Nanotavi nay kin ilfaz mein zikr keeya thah? Mujjay pura yaqeen heh Deobandiat ki taraf say is ka jawab nahin aahay ga. aur agar aya bi toh meray sawaloon ka jawab nahin hoga.

Edited by MuhammedAli

Share this post


Link to post
Share on other sites

Tarana e Deoband:

Fail qaum e Loot Nanotavi karay, hem ham Qasim Ul gand walay

Ham ko ghalazat say piyar heh, hen ham Deoband walay,

Nah ham ko sharm o haya heh, ham jhoot o nanga walay

Ham bachoon ki salwar utaren, hen ham Deoband walay,

Gustakhi hamari shaan heh, kaam hamaray oot patang walay,
Aqeeda hamara ka gadday ki uzuu jesa, hen ham Deoband walay

Daway hamaray uchi ur'ran jesi, patang walay,
Hamaray dalail par kia kahoon, hen ham Deoband walay.

 

Hussam O Pir Sahib par ham jhoot banden, kartoot dang karnay walay
Keecha taani,  chori zori, takfir banahen, hen ham deoband walay.

Bazoo hamaray larki jesay, patli kamr, nazuk ang walay
Azmaya heh ham nay khaaq inko, hen ham Deoband walay.

Uqabir kay rang mein hen rangay hen ham gali galoch gand walay
Daj'jal mein Daj'jaal ham say peechay, hen ham Deoband walay.

Bhai kay sar par peshab karay, Ismail Dehalvi, gandi tarang walay.
Gustakh ham Nabiyoon waliyoon kay, tab banay hen ham Deoband walay.

Ala Hadhrat kay Sher par ihtiraz karay, lanat muj pay, hen gandi umang walay.
Abdul Qadir ki aakhir say risalat shurun huwi, na-samj hen ham Deoband walay.

 

Mirza Ghulam Qadir Beg Musalman, jhoot ham pehlahen Darbangi walay
Jhoot hamari Hinduwun ki si bhajan, keun nah issay ham gahen Deoband walay.

Hamara uqabir Thanvi heh, Qasim Nanotavi kay ham-palang walay.
Nanotavi hath pheray, Thanvi sharma-hay, ham hen Deobandi walay.

Musalmanun say mansub karen apnoon kay kartutun ko, joh thay gandi sang walay
Deobandiyat ki taleem ka namoona hoon mein, gand hen ham Deoband walay.

Tawaifoon kay Pir hamaray uqabir, champa bhai'n kay nang ko dekhnay walay.
Sari tawaifoon ko jantay thay, esay thay Pir hamaray Deoband walay.

 

Kufr say ham sharmatay nahin, gustakhi kay ham chaman walay
Kufrun ko dictionariyoon mein okay bana denh ham Deoband walay


Hamaray peshwa mar gahay, mar mittay matti mein milnay walay
Qabr mein jism salamat tab, gar hotay Sunni ham Deoband walay.

wala taqulu ra'ina wa qulun zurna samaj na pahay la-parwa fikr o danish walay
Phir uqabir kesay kafir na hoon, woh thay qarn e kufr aur hen ham Deoband walay.

Haram heh zuban jis mein ho shayba e towheen, kartoot yeh Yahood kay pasand walay.
Misdaq azaab e aleem hen, kon hamen jahannum say nikalay, ham hen Deoband walay.


Ayat e ra'ina say khaq meeli hamari tawilen phir bi jazba buland walay
Tang man, sang dill, bey fikr o khauf e khuda, kafir,  ham Deoband walay.


Towheen taqwiyat mein nahin phir tehreef keun kartay karnay walay
kufr ki parda poshi heh, Kufr kay parda posh hen ham Deoband walay
.

Agosh e lehad mein ja sohay Allah kay Nabi, kehtay hen seedhi rah walay
Yeh thee aur heh sirat e mustaqeem, Kufr ki rah par hen ham Deoband walay.

Haq likh kar kufr ko, un-zurna ka seedha rah dekhaya, Mushtaq nazir th'ani walay.
Haq mantay nahin, ziddi, hat-dharm, beqoof, apnay hi dushman ham Deoband walay.


Khariji karen takfir e aksiriat (majority), parh Taqwiyat kay bab awal walay.
Tha Khariji Shah Ismail Dehalvi, hen Khariji takfeeri ham Deoband walay.

Luzum o iltizam e kufr kay hen yeh chakkar, chakra gahay chakranay walay
Yazeed jesa likha, Musalman na Kafir, na samaj pahay ham Deoband walay

Takfir nah ki, mohtat thay woh, Imam Ahmad Raza Khan Bareilly Walay,
Dehalvi ki toba mashoor, acha zan Bareily ka, is ba-ghayr ham Deoband walay.

Hussam e haq thi saif e haramayn, ihtiyat samja gahay Raza Bareily Walay.
Hotay Dehalvi jesay, takfiri machine gun, Kafir hotay ham sab Deoband walay.

Dehalvi ki Kufriat ka bataya, nah hukm kufr lagaya, bewaqoof bey-aqal walay.
Kufr ko kufr kehna takfir e sahib e kufr nahin shumul kufr ham Deoband walay.


Joh Kufrun ka muhafiz ho, juraim us kay sahib e kufr walay.
Baghayr jaiz waja kay hen kafir, muhafiz e kufr ham deoband walay.

 

Sharm o haya sabi ki ek, kitab cha'hen chapen, ghayr muqalideen chappay walay.
Tum pay kohi ilzam nahin, kaha tha pehlay, Kufr ki rah par hen ham Deoband walay.

Kia kabi gustakhan e ambiyah o awliyah bi thay, Ahle Sunnat, Wal Jammat walay.
Esoon kay sar mar thay, aur sar mar hen, Ahle Sunnat, nah kay ham Deoband walay.

Kertay kia Farooq e Azam suntay ham say ilfaz agar Taqwiyat walay.
Kia Tawilen kartay ya Jihad kartay, phir hotay kia ham Deoband walay.


Taweel e towheen nah kartay thay, Siddeeq, Farooq e Azam, Khalid ke namoonay walay.

In'neeh kay naqsh e qadam per hen Imam e Ahle Sunnat, nah kay ham Deoband walay.

Munafiq ko ayat say piyar, baqawl; sabat huwa kamil nahin kali kamli walay 
Bad-aqidgi ki tawil nah ki Siddiq nay, Taweelen kartay ham Deoband walay.

Siddeeq nay us ka sar mara, keun kay thay us kay nazriat bad-aqeedgi walay.
Itni si baat pay huwa khoon halal, is say shadeed gustakh ham Deoband walay.

Towheen ki sau tawilen nah keen, kia nah thay Sahabah ilm walay.
Woh Ilm kay samundar, najasati ilm kay qatray ham Deoband walaly.

Wa lillah-il izzatu, wa li rasoolihi, samjay aur iman lahay, iman lanay walay.
Sahabah samjay izzat kay taqazay, nah samjay izzat ham Deoband walay.

Sahabah ahle Sunnat aur Jammat, nazriat un kay Bareilly kay dajtar walay,
Kesay banay ham ahle sunnat, dushman unkay aur inkay ham Deoband walay.


-----------------------------------------------------------------------------------------------

Nabi kay ilm ko, pagaloon janwaroon say tashbih deh kar, towheen karnay walay
Nabi ke baz ulum ghaybya ke munkir e khasusiat, ba'nay tab ham Deoband walay

Na esa na itna na is qadr ka chakr, chakr mein hen, is chakr mein hen sab anay walay.
Jis dil mein tazeem aur hubb e Rasool, samja wohi sab, bey-samaj ham Deoband walay.

Ilm zahir ki khasusiat par bi Sunni iman lahay, bata gahay Ahmad Raza ki rah walay.
Ilm e ghayb toh hi Nabi ki khasusiyat heh, nah samaj pahay issay ham Deoband walay.

Heh eman walo, mat ra'ina kaho, chor gay Sahabah, joh thay Eman walay.
Bila-taweel ra'ina chora, ra'ina o taweel, nah chor pahay, ham deoband walay.

kaha nah, esa makhrooh khiyal bi na aya, eh Rabb, ra'ina say roknay walay.
Keun ke woh thay ashab e RasoolAllah, bahanay baaz ham Deoband walay.

Share this post


Link to post
Share on other sites

....

Hairat K hy k wahabi Ko jab Aik Baat ka jawab mil jata hy, toh Bajaye Isk haq qabool kary, 

Us baat Ko bhool k naya aitraaz shuru kar dyta hy..

Aur Sab se bari baat..

Abhi tak wahabi ne Tehreef karny walon k khilaaf kuch nahi bola hy k Kiya Tehreef karny waly 

ye yahood-o-nisara k tareeqy pe nahi chal rahy..??

Aur Agar Taqwat-Ul-Imaan mein Kuch Ghalt nahi tha toh Tehreef Kun ki gyi..??

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
Sign in to follow this  

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

×
×
  • Create New...