Jump to content
اسلامی محفل
Sign in to follow this  
M Afzal Razvi

حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے ترک رفع الیدین کی صحیح حدیث اور غیر مقلد زبیر زئی کے اعتراضات کا رد بلیغ

Recommended Posts

رہا مجہول الحال یا مستور قرار دینا تو یہ صرف اس صورت میں ہوتا ہے جب راوی کی توثیق سرے سے موجود ہی نہ ہو (یا ناقابل اعتماد ہو) جیسا کہ امام حافظ ابن حجر رح فرماتے ہیں کہ

أَوْ إنْ روى عنهُ اثنانِ فصاعِداً، ولم يُوَثَّقْ1 فهو مَجْهولُ الحالِ، وهُو المَسْتورُ.
وقد قَبِلَ رِوَايَتَهُ جَمَاعَةٌ بغيرِ قيدٍ، وردَّها الجمهورُ.

اگر اس سے دو یا دو سے زائد نے روایت کی ہو اور اسکی توثیق نہ ہو تو وہ مجہول الحال ہے اور مستور ہے اسے بغیر کسی قید کے ایک جماعت نے قبول کیا ہے اور جمہور نے رد کر دیا ہےـ( نزہتہ النظر فی توضیح نخبتہ الفکر ص ۱۲۶ )،( قطرات العطر شرح اردو نخبتہ الفکر ص ۲۳۶ )

 

 

Beta Salfi tmhri hi baton main tmhra radd mojod hai mainy tmhri us ibarat ko ki red colour se nishan dhai kr di hai..

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

شیرازی دیوبندی نے اپنے سلطان المحدثین ملا علی قاری سے نقل کیا ہے کہ

اور مستور کی روایت کو ایک جماعت نے بغیر زمانہ کی قید کے قبول کیا ہے اور انہیں میں سے ابو حنیفہ رح بھی ہیں ـسخاوی نے اسکو ذکر کیا ہے اور اس قول کو امام اعظم رح کی اتباع کرتے ہوئے ابن حبانن نے اختیار کیا ہےـ( قافلہ حق ج ۳ شمارہ ۲ ص ۳۵ )

 

 

Wahabi tmhra ye jhot hai k Imam Abu Hanifa ny zamany ki qaid ni lagai majhool rawi k rewait per

Wahabi perh Imam Asqalani ki book k hashia se aur un ki sharh se qoroon-e-salasa ki qaid mojod hai wrna qoron-e-salasa k bad k majhool rawi ki rewait bina touseeq k qabool ni aur mehmood bin ishaq qoron-e-salasa ka rawi ni hai..

lo perh jahalat apny jhot k

post-18262-0-86951900-1482036797_thumb.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

(ب) مجہول الحال: راوی مقبول ہے، خواہ عدل الظاہر حنفی الباطن ہو یا دونوں کی رو سے مجہول ہو 
(ح) مجہول الاسم: بھی مقبول ہے بشرطیکہ قرون ثالثہ سے تعلق رکھتا ہو اس تفصیل سے یہ بھی ظاہر ہے کہ امام صاحب کے نزدیق بھی مجہول مطلقاً مقبول نہیں کم از کم قرون ثالثہ سے تعلق کی قید ضرور ملحوظ ہے جیسا کہ تشریح کی گئی ہےـ( علوم الحدیث ص 

 

 

Ab ye bat tmhra khud radd kr rahi hai q k mehmood bin ishaq qoron-e-salasa ka rawi ni hai lehza is usool se istadala krna tmhra mardood hai adeel wahabi

Edited by Raza Asqalani

Share this post


Link to post
Share on other sites

رہا مجہول الحال یا مستور قرار دینا تو یہ صرف اس صورت میں ہوتا ہے جب راوی کی توثیق سرے سے موجود ہی نہ ہو (یا ناقابل اعتماد ہو

 

 

ye bat bi tmhra khud ka radd hai q k Mehmood Bin Ishaq ki touseeq siry se mojod hi ni hai jamhor muhadiseen se..Ager hai to paish kro???

Share this post


Link to post
Share on other sites

ول حدیث کا مشہور مسئلہ ہے کہ جس راوی سے دو یا دو سے زیادہ ثقہ راوی حدیث بیان کریں تو وہ مجہول العین نہیں ہوتا اور اگر ایسے راوی کی توثیق موجود نہ ہو تو مجہول الحال ہوتا ہے جند حوالے درج ذیل ہیں

امام خطیب بغدادی رح فرماتے ہیں کہ

وَأَقَلُّ مَا تَرْتَفِعُ بِهِ الْجَهَالَةُ أَنْ يَرْوِيَ عَنِ الرَّجُلِ اثْنَانِ فَصَاعِدًا مِنَ الْمَشْهُورِينَ بِالْعِلْمِ كَذَلِكَ

اور آدمی کی جہالت (مجہول العین ہونا) کم از کم اس سے ختم ہو جاتی ہے کہ اس سے علم کے ساتھ مشہور دو یا زیادہ ثقہ راوی روایت بیان کریں،اسی طرح ہےـ( الکفایہ فی علم الروایہ ص ۸۸ و لفظ لہ شرح ملا علی قاری نزہتہ النظر شرح نخبتہ الفکر ص 

 

Khateeb-e Baghdadi ki puri bat perh lety to itni jahalat na likhty...likin tmhra qasoor ni hai tm ny to muhadis forum ki andhi taqleed kr k copy paste kr dia hai..

 

lo khud tmhry wahabi irshad asari ki kitab se saboot jo un ny khateeb-e-baghdadi se naqal ki hai k 2 ya 2 se ziada rawion ki rewait se majhool rawi ki adalat sabit ni hoti ....lo tmhra is ibarat main khud tmhra radd hai..

pehly asal kitab perh kro phir behs kia kro adeel wahabi salfi

post-18262-0-29576700-1482037677_thumb.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

ان سب نے جزء رفع الیدین یا جزء القراءة کے حوالے بطور جزم و بطور حجت نقل کئے ہیں اور بعض نے تو رفع الیدین سے مزکور ایک روایت کو صحیح سند قرار دیا ہے

 

 

beta ye batain apny pass rakho khud apny whabi mulla zubair zai ka usool perho k musanif-e-kitab tak sahih sanad ka hona zarori hai..

ab tm tamam wahabion per qarz hai k in 2 books ki Imam Bukhari tak sahih sanad paish kro

post-18262-0-84871600-1482037962_thumb.png

Edited by Raza Asqalani

Share this post


Link to post
Share on other sites

ان سب نے جزء رفع الیدین یا جزء القراءة کے حوالے بطور جزم و بطور حجت نقل کئے ہیں اور بعض نے تو رفع الیدین سے مزکور ایک روایت کو صحیح سند قرار دیا ہے

 

 

Kisi k sahih sanad kehny se sahih sand ni ho jati jab tak tamam rawi siqa na hon ye bat khud tmhry wahabi mulla irshad asari ny likhi hai...Mehmood bin ishaq ki touseeq to jamhor se sabit ni phir sahih sand kaisy ho gi wahabi??

 

lo perho apny wahabi mulla ko

ان سب نے جزء رفع الیدین یا جزء القراءة کے حوالے بطور جزم و بطور حجت نقل کئے ہیں اور بعض نے تو رفع الیدین سے مزکور ایک روایت کو صحیح سند قرار دیا ہے

post-18262-0-96737000-1482038179_thumb.png

Edited by Raza Asqalani

Share this post


Link to post
Share on other sites

جنانچہ محمد بن علی نیموی حنفی نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

رواه البخاري في جزء رفع اليدين واسناده صحيح

امام بخاری رح نے اسکو اپنی کتاب جزء رفع الیدین میں روایت کیا ہے اور اس کی سند صحیح ہےـ( آثار السنن ص ۱۶۹ )

 

Hhahahahah wahabi is rewait ki sand ko khud tmhry wahabi mulla Zubair Zai ny zaeef qarar dia phir is se ye sabit howa tm sirf munafiqat krty ho aur kuch ni bas hawaly dety ho likin tehqiq ni krty ho

post-18262-0-81868500-1482038488_thumb.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

ye aur wahabi khud Zubair zai k ustad se is ka saboot k ye rewait zaeeef hai

جنانچہ محمد بن علی نیموی حنفی نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

رواه البخاري في جزء رفع اليدين واسناده صحيح

امام بخاری رح نے اسکو اپنی کتاب جزء رفع الیدین میں روایت کیا ہے اور اس کی سند صحیح ہےـ( آثار السنن ص ۱۶۹ )

 

Hhahahahah wahabi is rewait ki sand ko khud tmhry wahabi mulla Zubair Zai k ustad Rashidi ny zaeef qarar dia phir is se ye sabit howa tm sirf munafiqat krty ho aur kuch ni bas hawaly dety ho likin tehqiq ni krty ho

post-18262-0-68763400-1482038553_thumb.png

Edited by Raza Asqalani

Share this post


Link to post
Share on other sites

مولانا صوفی عبدالرحمٰن خان سواتی دیوبندی نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے روایت کیا ہے لکھتے ہیں کہ

قنوت وتر میں رفع الیدین کے سلسلہ میں امام بخاری رح اپنے رسالہ جزء رفع الیدین میں حضرت عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے سند صحیح کے ساتھ نقل کرتے ہیںـ ( نماز مسنون کلاں ص ۶۴۶ )

فیض احمد ملتانی دیوبندی نے جزء القرآءة کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

امام بخاری رح نے جزء القراءة ص ۱۱ پر فرمایاـ( مدلل نماز ص ۱۱۸ )

مولانا جمیل احمد نزیری دیوبندی نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

یہی بات امام بخاری رح نے بھی اپنے رسالہ جزء رفع الیدین میں ص ۲۴ پر بھی لکھی ہےـ( رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا طریقہ نماز ص ۲۲۷ )

مولانا سرفراز خان صفدر دیوبندی نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

قنوت کے وقت رفع الیدین کا ثبوت امام بخاری رح کی کتاب جزء رفع الیدین کے ص ۲۸ میں ہےـ( خزائن السنن ج ۱ ص ۴۱۶ )

علی محمد حقانی دیوبندی نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہےـ( نبوی نماز (سندھی) ج ۱ ص ۲۹۲ )

ابو یوسف محمد ولی درویش نے جزء مزکور کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہےـ( پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم (پشتو) ص ۴۱۴ )

عبدالشکور قاسمی دیوبندی نے بھی جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

اس کو امام بخاری رح نے روایت کیا ہے اپنی کتاب جزء رفع الیدین میں اور اسکی سند صحیح ہےـ( کتاب الصلاة ص ۱۱۳ )

 

 

Ye hawaly apny pass rakho q k wahabi mulla khud deobandion ko manty hai aur un ko Rehamtullah Alehi bi likhty hain lehza in apny peeti bhaion ki book k hawaly apny pass rakho

 

Khud Irshad asari apny wahabi mulla ki kitab perho wo deobandi ko Rehmatullah alehy likha howa hai jo hmry nazdeek murtud hain

post-18262-0-43751200-1482039023_thumb.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

امام ابن ملقن رح نے جزء رفع الیدین سے بطور جزم ایک روایت نقل کی ہے لکھتے ہیں کہ

وروي البخاري ايضاً في كتاب رفع اليدين باسناد صحيح

امام بخاری رح نے اس کو اپنی کتاب رفع الیدین میں بھی صحیح سند کے ساتھ روایت کیا ہےـ (البدر المنیر ج ۳ ص ۴۷۸

 

Allama Ibne Malqan ny majhool rawi ki wohi tareef naqal ki hai is waqat Mehmood Bin Ishaq ki hai lehza Ibne Malqan ki tasahih khud un k asool k khilaf hai lehza ye tasahih main tasahul hai lehza ye qabool ni

 

lo perho Allama Ibne Malqan ki majhool ki tareef

post-18262-0-12964100-1482039467_thumb.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

حافظ امام ابن حجر عسقلانی رح نے محمود بن اسحاق کی بیان کردہ ایک روایت کو حسن قرار دیا ہےـ (موافقتہ الخبر الخبر ج ۱ ص ۴۱۷)

تنبیہ: راوی کی منفرد روایت کو حسن یا صحیح کہنا اس راوی کی توثیق ہوتی ہےـ (نصبہ الرایہ ج ۱ ص ۱۹۰،ج ۳ ص ۲۶۴)

 

 

Imam Asqalani ny agy khud tasereh kr di hai k is rewait main qatada hai wo mudalis hai wo عن se rewait kr raha hai lehza ye rewait khud Imam Asqalani ki nazar main zaeef hai..

 

Baqi is rewait main mehmood akela ni aur siqa rawion ny us ki mutaby kr rakhi hai lehza is se us ki touseeq sabit krna mardood hai

 

lo dekho Imam Asqalani ka scane

post-18262-0-31126900-1482039903_thumb.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

مام نووی رح نے جزء رفع الیدین سے ایک روایت بطور جزم نقل کی ہے لکھتے ہیں کہ

وروي البخاري في كتاب رفع اليدين باسناده الصحيح

امام بخاری رح نے اپنی کتاب رفع الیدین میں نافع سے صحیح سند کے ساتھ روایت کیا ہے ـ( المجموع ج ۱ ص ۴۰۵)

معلوم ہوا کہ امام نووی رح امام بخاری رح کی جزء رفع الیدین کو صحیح و ثابت شدہ کتاب سمجھتے تھے

امام ابن ملقن رح نے جزء رفع الیدین سے بطور جزم ایک روایت نقل کی ہے لکھتے ہیں کہ

 

 

Allama Nawavi ka jawab khud un ki usool-e-hadis ki kitab main mojod hai likin wahabi tm ko wo ibarat nazar q ni ai k majhool rawi ki rewait Fiqa Shafi main zaeef hoti hain aur Imam Navavi khud shafi hain..

 

lo dekho Imam Navavi ki kitab se un ki tashih ka radd

post-18262-0-36533400-1482040170_thumb.jpg

Edited by Raza Asqalani

Share this post


Link to post
Share on other sites

حافظ امام ابن حجر عسقلانی رح نے محمود بن اسحاق کی بیان کردہ ایک روایت کو حسن قرار دیا ہےـ (موافقتہ الخبر الخبر ج ۱ ص ۴۱۷)

تنبیہ: راوی کی منفرد روایت کو حسن یا صحیح کہنا اس راوی کی توثیق ہوتی ہےـ (نصبہ الرایہ ج ۱ ص ۱۹۰،ج ۳ ص ۲۶۴)

 

 

Imam Asqalani ny agy khud tasereh kr di hai k is rewait main qatada hai wo mudalis hai wo عن se rewait kr raha hai lehza ye rewait khud Imam Asqalani ki nazar main zaeef hai..

 

Baqi is rewait main mehmood akela ni aur siqa rawion ny us ki mutaby kr rakhi hai lehza is se us ki touseeq sabit krna mardood hai

 

khud tmhri wahabi mulla zubair zai ny bi isi rewait ko zaeef qarar dy dia hai lehza mehmood bin ishaq ki touseeq lena mardood hai

post-18262-0-04263600-1482040313_thumb.png

Edited by Raza Asqalani

Share this post


Link to post
Share on other sites

امام زیلعی حنفی رح نے جزء رفع الیدین سے بطور جزم ایک روایت نقل کی ہے لکھتے ہیں کہ

وذكر البخاري الأول معلقاً في كتابه المفرد في رفع اليدين

اور امام بخاری رح نے پہلے معلقاً اپنی کتاب رفع الیدین میں مفرد ذکر کیا ہے ـ( نصب الرایہ ج ۱ ص ۳۹۰،۳۹۳،۳۹۵ )

امام بیہقی رح نے محمود بن اسحاق کی روایت کردہ کتاب جزء القراة کو بطور جزم امام بخاری رح نے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ


البخاري في كتاب القرأءة خلف الإمام

امام بخاری رح نے اپنی کتاب جزء القراءة میں فرمایاـ( قراءة خلف الامام ص ۲۳ )

امام مزی رح نے جزء القراة کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

روي له البخاري في كتاب القراءة خلف الإمام

امام بخاری رح نے اپنی کتاب جزء القراءة میں روایت کیا ہےـ ( تہزیب الکمال ج ۱۴ ص ۶۷ )

امام عینی حنفی رح نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

وقال البخاري في كتابه رفع اليدين في الصلاة

امام بخاری رح نے اپنی کتاب رفع الیدین فی الصلاة میں فرمایاـ( عمدتہ القاری ج ۵ ص ۲۷۲ )
( شرح سنن ابی داود ج ۳ ص ۳۵۰ )
( معانی الاخبار ج ۳ ص ۴۷۶ )

امام بدرالدین بہادر بن عبداللہ الزرکشی رح نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح نے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

البخاري روي في كتابه المفرد في رفع اليدين

کہ امام بخاری رح نے اپنی کتاب رفع الیدین میں مفرد روایت کیا ہےـ ( البحر المحیط فی اصول الفقہ ج ۶ ص ۱۵۶ )

امام محمد الزرقانی رح نے جزء القراءة کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

البخاري في جزء القراة

امام بخاری رح نے اپنی کتاب جزء القراءة میں فرمایاـ( شرح الزرقانی علی الموطا ج ۱ ص ۱۵۸ )

امام سیوطی رح نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

قال البخاري في كتاب رفع اليدين في الصلاة

امام بخاری رح نے ااپنی کتاب رفع الیدین فی الصلاة میں فرمایاـ ( فض الوعاء فی احادیث رفع الیدین فی الدعاء ص ۵ )

امام ذہبی رح نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

رواهُ (خَ) فِي كتابِ " رفعِ الْيَدَيْنِ " نَا محمدُ بنُ مقَاتل عَنهُ

اسے (خ) یعنی (امام بخاری رح) نے اپنی کتاب رفع الیدین میں محمد بن مقاتل کی سند سے روایت کیا ہےـ( تنقیح التحقیق ج ۱ ص ۱۷۰ )

نوٹ: یہاں خ سے مراد امام بخاری رح ہیں

امام علاءالدین مغلطائی حنفی رح نے جزء القراءة کو نطور جزم نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

قال البخاري في كتاب قراءة خلف الإمام

امام بخاری رح نے اپنی کتاب قراءة خلف الامام میں فرمایاـ( شرح سنن ابن ماجہ ص ۱۴۱۴ )

 

 

In Tmam Hawlon main tasahih mojod ni hai lehza bina sahih sand k kisi muhadis ka ye kehna ye falan muhadis ki kiab hai to is se ye sabit ni hota k waqi ye us muhadis tak sahih sand se kitab sabit hai...

 

Is liye tmhry wahabi mulla Zubair Zai  ki kitab se in tamam hawalon ka jawab mojod hai..wo khud likhta hai k musanif tak sahih sand ka hona zarori hai...

Jab ye bat tm wahabi mullaon ny tasleem kr rakhi hai phir tmhra in hawalon se dalil pakarna mardood hai..

post-18262-0-09873900-1482041529_thumb.png

Edited by Raza Asqalani

Share this post


Link to post
Share on other sites

امام زیلعی حنفی رح نے جزء رفع الیدین سے بطور جزم ایک روایت نقل کی ہے لکھتے ہیں کہ

وذكر البخاري الأول معلقاً في كتابه المفرد في رفع اليدين

اور امام بخاری رح نے پہلے معلقاً اپنی کتاب رفع الیدین میں مفرد ذکر کیا ہے ـ( نصب الرایہ ج ۱ ص ۳۹۰،۳۹۳،۳۹۵ )

امام بیہقی رح نے محمود بن اسحاق کی روایت کردہ کتاب جزء القراة کو بطور جزم امام بخاری رح نے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ


البخاري في كتاب القرأءة خلف الإمام

امام بخاری رح نے اپنی کتاب جزء القراءة میں فرمایاـ( قراءة خلف الامام ص ۲۳ )

امام مزی رح نے جزء القراة کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

روي له البخاري في كتاب القراءة خلف الإمام

امام بخاری رح نے اپنی کتاب جزء القراءة میں روایت کیا ہےـ ( تہزیب الکمال ج ۱۴ ص ۶۷ )

امام عینی حنفی رح نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

وقال البخاري في كتابه رفع اليدين في الصلاة

امام بخاری رح نے اپنی کتاب رفع الیدین فی الصلاة میں فرمایاـ( عمدتہ القاری ج ۵ ص ۲۷۲ )
( شرح سنن ابی داود ج ۳ ص ۳۵۰ )
( معانی الاخبار ج ۳ ص ۴۷۶ )

امام بدرالدین بہادر بن عبداللہ الزرکشی رح نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح نے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

البخاري روي في كتابه المفرد في رفع اليدين

کہ امام بخاری رح نے اپنی کتاب رفع الیدین میں مفرد روایت کیا ہےـ ( البحر المحیط فی اصول الفقہ ج ۶ ص ۱۵۶ )

امام محمد الزرقانی رح نے جزء القراءة کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

البخاري في جزء القراة

امام بخاری رح نے اپنی کتاب جزء القراءة میں فرمایاـ( شرح الزرقانی علی الموطا ج ۱ ص ۱۵۸ )

امام سیوطی رح نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

قال البخاري في كتاب رفع اليدين في الصلاة

امام بخاری رح نے ااپنی کتاب رفع الیدین فی الصلاة میں فرمایاـ ( فض الوعاء فی احادیث رفع الیدین فی الدعاء ص ۵ )

امام ذہبی رح نے جزء رفع الیدین کو بطور جزم امام بخاری رح سے نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

رواهُ (خَ) فِي كتابِ " رفعِ الْيَدَيْنِ " نَا محمدُ بنُ مقَاتل عَنهُ

اسے (خ) یعنی (امام بخاری رح) نے اپنی کتاب رفع الیدین میں محمد بن مقاتل کی سند سے روایت کیا ہےـ( تنقیح التحقیق ج ۱ ص ۱۷۰ )

نوٹ: یہاں خ سے مراد امام بخاری رح ہیں

امام علاءالدین مغلطائی حنفی رح نے جزء القراءة کو نطور جزم نقل کیا ہے لکھتے ہیں کہ

قال البخاري في كتاب قراءة خلف الإمام

امام بخاری رح نے اپنی کتاب قراءة خلف الامام میں فرمایاـ( شرح سنن ابن ماجہ ص ۱۴۱۴ )

 

Mri Tehqiq se ye bat sabit hoti hai k ye Imam Bukhari ki apni zati kitab ni hai un se sirf ahdis naqal ki gi hai..

 

in 2 books main Imam Bukhari k ilawa Mehmood bin ishaq aur us k shagird mulahi ny aur rawion se rewait kr k ahdisain likhi hain.. jo is bat ka saboot hai k ye Imam Bukhari ki apni zati kitab ni hai..

 

Hawaly saboot par main aik 2 scane pages deta hon jis main Imam Bukhari k ilawa aur rawion se ahdis naqal ki gi hain

ye hai wo scane pagepost-18262-0-21416600-1482041982_thumb.png

 

post-18262-0-55825400-1482042022_thumb.png

post-18262-0-55131400-1482042064_thumb.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

Aur Wahabi kisi Muhadis ki tashih se wo rawi siqa ni ho jata is bat ka khud tmhry wahabi mulla Sanabili yazidi ny bi iqrar kia hai 

lo perh us ki book ko

post-18262-0-34977700-1482042739_thumb.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

Akhiri main main tm ho Khud tmhry wahabi mullah sanabili yazidi ki kitab se aik saboot deta hon us ny bi likha hai k wahabion k nazdeek rawi ka siqa hona jamhor ki touseeq krny se sabit ho ga..

 

Ab tm wahabion per wajib ho gia hai Mehmood Bin Ishaq ko jamhor se siqa sabit kr dekhao??

Qayamat to a sakti hai likin tm wahabi qayamat tak us ki touseeq sabit ni kr sakty jamhor se

 

Lo perho apny wahabi mulla ki kitab ko

 

post-18262-0-17917100-1482043229_thumb.png

Share this post


Link to post
Share on other sites

جب کتب ہر زمانہ میں مشہور ومعروف رہی ہوں تو انکی سند پر بحث کرنے کی ضروت ہی نہیں ہے , بالخصوص جب مصنف کی اپنی زندگی میں ہی کتاب معروف ہو جائے اور پھر مفقود ہوئے بغیر مسلسل متداول رہے ۔

 

اور محمود بن اسحاق کی ضمنی توثیق ثابت ہے

 

 

مثلا

 

 

 

امام ابن القطان رحمه الله (المتوفى628)نے کہا:

وَفِي تَصْحِيح التِّرْمِذِيّ إِيَّاه توثيقها وتوثيق سعد بن إِسْحَاق، وَلَا يضر الثِّقَة أَن لَا يروي عَنهُ إِلَّا وَاحِد، وَالله أعلم. [بيان الوهم والإيهام في كتاب الأحكام 5/ 395].

 

امام ذهبي رحمه الله (المتوفى748)نے کہا:

الثقة: من وثَّقَه كثيرٌ ولم يُضعَّف.ودُونَه: من لم يُوثق ولا ضُعِّف. فإن حُرِّج حديثُ هذا في ((الصحيحين))، فهو مُوَثَّق بذلك، وإن صَحَّح له مثلُ الترمذيِّ وابنِ خزيمة فجيِّدُ أيضاً، وإن صَحَّحَ له كالدارقطنيِّ والحاكم، فأقلُّ أحوالهِ: حُسْنُ حديثه. [الموقظة في علم مصطلح الحديث للذهبي: ص: 17].

 

امام زيلعي رحمه الله (المتوفى762)نے کہا:

فَكَذَلِكَ لَا يُوجِبُ جَهَالَةَ الْحَالِ بِانْفِرَادِ رَاوٍ وَاحِدٍ عَنْهُ بَعْدَ وُجُودِ مَا يَقْتَضِي تَعْدِيلَهُ، وَهُوَ تَصْحِيحُ التِّرْمِذِيِّ، [نصب الراية 1/ 149].

 

امام ابن الملقن رحمه الله (المتوفى804)نے کہا:

وَقَالَ غَيره: فِيهِ جَهَالَة، مَا رَوَى عَنهُ سُوَى ابْن خُنَيْس. وَجزم بِهَذَا الذَّهَبِيّ فِي «الْمُغنِي» فَقَالَ: لَا يعرف لَكِن صحّح الْحَاكِم حَدِيثه - كَمَا ترَى - وَكَذَا ابْن حبَان، وَهُوَ مُؤذن بمعرفته وثقته.[البدر المنير لابن الملقن: 4/ 269].

 

حافظ ابن حجر رحمه الله (المتوفى852)نے کہا:

قلت صحح ابن خزيمة حديثه ومقتضاه أن يكون عنده من الثقات [تعجيل المنفعة ص: 248].

 

عصرحاضر میں علامہ البانی رحمہ اللہ نے کہا:

أن ضبة هذا قد وثقه ابن حبان، وقال الحافظ ابن خلفون الأندلسي: "ثقة مشهور"، وكذلك وثقه كل من صحّح حديثه؛ إما بإخراجه إياه في "الصحيح" كمسلم وأبي عوانة؛ أو بالنص على صحته كالترمذي. [سلسلة الأحاديث الصحيحة وشيء من فقهها وفوائدها 7/ 16].

Share this post


Link to post
Share on other sites

مام مزی رحمہ اللہ نے جزء القراءۃ کو بطور جزم امام بخاری سے نقل کیا ہے (تہذیب الکمال ج ۳ ص ۱۷۲)

۶۔ زیلعی حنفی نے جزء رفع الیدین سے روایات بطور جزم نقل کی ہیں (نصب الرایۃ ۳۹۰,۳۹۳,۳۹۵)

۷۔عینی حنفی نے جزء رفع الیدین کو امام بخاری سے بطور جزم نقل کیا ہے (عمدۃ القاری ج ۵ ص ۲۷۲ تحت حدیث ۷۳۵)

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
Sign in to follow this  

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

×
×
  • Create New...