Sign in to follow this  
Followers 0
خاکسار

ان لوگوں کے رد میں جنہوں نے صالحین سے توسل و استغاثہ کو کفر کہا اور ان کے دلائل کے بطلان میں

12 posts in this topic

اللہ کے مقبول بندے (اولیاء اللہ) باذن الٰہی مشکل کشا حاجت روادافع بلاہیں
    اللہ کے پیارے اللہ کے حکم سے بندو ں کی حاجتیں پوری کرتے ہیں مشکلیں حل کرتے ہیں قرآن کریم اس کا اعلان فرمارہاہے ۔ دور ونزدیک ہر جگہ سے مافوق الاسباب مشکل کشائی اور مدد کرتے ہیں۔

(1) اِذْہَبُوۡا بِقَمِیۡصِیۡ ہٰذَا فَاَلْقُوۡہُ عَلٰی وَجْہِ اَبِیۡ یَاۡتِ بَصِیۡرًا ۚ

میرا یہ کر تہ لے جاؤ اسے میرے باپ کے منہ پر ڈال دو ان کی آنکھیں کھل جائیں گی۔(پ13،یوسف:93)

(2) فَلَمَّاۤ اَنۡ جَآءَ الْبَشِیۡرُ اَلْقٰىہُ عَلٰی وَجْہِہٖ فَارْتَدَّ بَصِیۡرًا ۚ

پھر جب خوشی سنا نے والا آیا تو وہ قمیص یعقوب کے منہ پر ڈال دی ۔ اسی وقت ان کی آنکھیں لوٹ آئیں ۔(پ13،یوسف:96)
یعقوب علیہ السلام نابینا ہوگئے تھے ان کی اس مصیبت کو یوسف علیہ السلام نے اپنی قمیص کے ذریعہ دور فرمایا اور ان کی مشکل کشائی کی قمیص سے شفا دینا مافوق الاسباب مدد ہے

 

(3) وَلَقَدْ ہَمَّتْ بِہٖ ۚ وَہَمَّ بِہَا لَوْلَاۤ اَنۡ رَّاٰبُرْہَانَ رَبِّہٖ ؕ

اوربے شک زلیخا نے قصد کرلیا یوسف کا اور یوسف علیہ السلام بھی ارادہ کرلیتے اگر اپنے رب کی دلیل نہ دیکھتے ۔(پ12،یوسف:24)
    یوسف علیہ السلام کو زلیخا نے سات کو ٹھڑیوں میں بند کر کے اپنی طرف مائل کرنا چاہا تو آپ نے سامنے یعقوب علیہ السلام کو دیکھا کہ آپ اشارے سے منع فرمارہے ہیں جس سے آپ کے دل میں ادھر میلان نہ پیدا ہو ا۔ یہ رب تعالیٰ کی بر ہان تھی جس کا ذکر اس آیت میں ہے تو یعقوب علیہ السلام نے کنعان سے بیٹھے ہوئے مصر کی بندکوٹھڑی میں یوسف علیہ السلام کی یہ مدد کی کہ انہیں بڑی آفت اور ارادہ گناہ سے بچالیا۔ یہ ہے اللہ والوں کی مشکل کشائی اور مافوق الاسباب امداد ۔

(1) وَاُبْرِیُٔ الۡاَکْمَہَ وَالۡاَبْرَصَ وَاُحۡیِ الْمَوْتٰی بِاِذْنِ اللہِ ۚ

عیسی علیہ السلام نے کہا کہ میں اللہ کے حکم سے شفادیتاہوں مادرزاداندھوں اور کوڑھیوں کو اور مردو ں کو زندہ کرتا ہوں ۔(پ3،ال عمرٰن:49)
    اندھا،کوڑھی ہونا بلاہے جسے عیسی علیہ السلام اللہ کے حکم سے دفع کردیتے ہیں لہٰذا اللہ کے پیارے دافع البلا ہوتے ہیں یعنی مافوق الاسباب مشکل کشائی فرماتے ہیں۔

(2) فَقُلْنَا اضْرِبۡ بِّعَصَاکَ الْحَجَرَ ؕ فَانۡفَجَرَتْ مِنْہُ اثْنَتَا عَشْرَۃَ عَیۡنًا ؕ

ہم نے موسی علیہ السلام سے کہا کہ اپنی لاٹھی سے پتھر کو ماروپس فوراً اس پتھر سے بارہ چشمے جاری ہوگئے ۔(پ1،البقرۃ:60)
    بنی اسرئیل تیہ کے میدان میں پیا س کی آفت میں پھنسے تو رب تعالیٰ نے براہ راست انہیں پانی نہ دیا بلکہ موسیٰ علیہ السلام سے فرمایا کہ آپ ان کے لئے دافع البلا بن جائیں تاکہ انہیں پانی ملے معلوم ہوا کہ اللہ کے بندے بحکم الٰہی پیاس کی بلا دور کرتے ہیں مافوق الاسباب ۔

 

(3) قَالَ اِنَّمَاۤ اَنَا رَسُوۡلُ رَبِّکِ ٭ۖ لِاَہَبَ لَکِ غُلٰمًا زَکِیًّا

جبریل نے مریم سے کہا کہ میں تمہارے رب کا قاصد ہوں آیا ہوں تا کہ تمہیں ستھرا بیٹا دوں ۔(پ16،مریم:19)
    معلوم ہوا کہ حضر ت جبریل علیہ السلام اللہ عزوجل کے حکم سے بیٹا بخشتے ہیں یعنی بندوں کی حاجتیں پوری کرتے ہیں۔

(1)  وَلَوْ اَنَّہُمْ اِذۡ ظَّلَمُوۡۤا اَنۡفُسَہُمْ جَآءُوۡکَ فَاسْتَغْفَرُوا اللہَ وَاسْتَغْفَرَ لَہُمُ الرَّسُوۡلُ لَوَجَدُوا اللہَ تَوَّابًا رَّحِیۡمًا ﴿۶۴﴾

اے محبوب اگر یہ مجرم لوگ اپنی جانوں پر ظلم کر کے آپ کے پاس آجاویں اور خدا سے مغفرت مانگیں اور آپ بھی ان کی سفارش کریں تو اللہ کوتوبہ قبول کرنے والا مہربان پائیں ۔(پ5،النساء:64)
    ا س آیت نے بتا یاکہ جو گناہو ں کی بیماری میں پھنس جاوے وہ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم کے شفاخانہ میں پہنچے وہاں شفا ملے گی آپ دافع البلاء ہیں اور مافوق الاسباب گناہ بخشوادیتے ہیں۔

(2) اُرْکُضْ بِرِجْلِکَ ۚ ہٰذَا مُغْتَسَلٌۢ بَارِدٌ وَّ شَرَابٌ ﴿۴۲﴾

اے ایوب زمین پر اپنا پاؤں مارو یہ ہے ٹھنڈا چشمہ نہانے اور پینے کو ۔(پ23،ص:42)
                                   ایوب علیہ السلام کی بیماری اس طر ح دور فرمائی گئی کہ ان سے فرمایا گیا ۔ اپنا پاؤں زمین پر رگڑو ۔ رگڑنے سے پانی کا چشمہ پیدا ہوا ۔ فرمایا اسے پی لو ۔ اور غسل فرمالو۔ پینے سے اندرونی تکلیف دور ہوئی اور غسل سے بیرونی بیماری کو شفا ہوئی معلوم ہوا کہ پیغمبر وں کے پاؤں کا دھوون اللہ کے حکم سے شفا ہے ۔ آج آب زمزم اس لئے شفا ہے کہ حضرت اسماعیل علیہ السلام کی ایڑی سے پیدا ہوا ۔ مدینہ پاک کی مٹی کو خاک شفا کہتے ہیں کیونکہ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم کے پاؤں مبارک سے مس ہوگئی معلوم ہوا کہ بزرگ دافع بلا ہیں او ریہ بر کتیں مافو ق الاسباب ہیں۔

 

(1) فَقَبَضْتُ قَبْضَۃً مِّنْ اَثَرِ الرَّسُوۡلِ فَنَبَذْتُہَا وَکَذٰلِکَ سَوَّلَتْ لِیۡ نَفْسِیۡ ﴿۹۶﴾

پس میں نے فر شتے کے اثرسے ایک مٹھی مٹی لے لی پس یہ مٹی اس بچھڑے میں ڈالدی میرے دل نے یہی چاہا ۔(پ16،طہ:96)
    سامری نے حضرت جبریل علیہ السلام کی گھوڑی کے ٹاپ کے نیچے کی خاک اٹھالی اور سونے کے بچھڑے کے منہ میں ڈالی جس سے اس میں زندگی پیدا ہوگئی اور وہ آواز کرنے لگا یہ ہی اس آیت میں مذ کورہے معلوم ہو اکہ بزرگو ں کے تبرکات بے جان دھات میں جان ڈال سکتے ہیں باذن اللہ !

(1) اَنۡ یَّاۡتِیَکُمُ التَّابُوۡتُ فِیۡہِ سَکِیۡنَۃٌ مِّنۡ رَّبِّکُمْ وَبَقِیَّۃٌ مِّمَّا تَرَکَ اٰلُ مُوۡسٰی وَاٰلُ ہٰرُوۡنَ تَحْمِلُہُ الْمَلٰٓئِکَۃُ

نشانی یہ ہے کہ تمہارے پاس صندوق آوے گا جس میں تمہارے رب کی طر ف سے دل کاچین ہے او رکچھ بچی ہوئی چیز یں ہیں معزز موسی او رمعزز ہارون کے ترکہ کی اٹھائے لائیں گے اسے فر شتے ۔(پ2،البقرۃ:248)
    بنی اسرائیل کو ایک صندو ق رب تعالیٰ کی طرف سے عطا ہوا تھا جس میں حضرت موسی علیہ السلام کی پگڑی ، حضرت ہارون علیہ السلام کی نعلین شریف وغیرہ تھے اور انہیں حکم تھا کہ جنگ میں اسے اپنے سامنے رکھیں فتح ہوگی۔ اس آیت میں یہی واقعہ مذکور ہے جس سے معلوم ہوا کہ بزرگو ں کے تبر کات ان کی وفات کے بعد دافع البلاء ہیں خیال رہے مٹی سے جان پڑنا تبر کات سے فتح ہونا مافوق الاسباب مدد ہے ۔

(1) وَمَا کَانَ اللہُ لِیُعَذِّبَہُمْ وَاَنۡتَ فِیۡہِمْ ؕ

اور اللہ تعالیٰ انہیں عذاب نہیں دے گا حالانکہ آپ ان میں ہیں ۔(پ9،الانفال:33)

(2) لَوْ تَزَیَّلُوۡا لَعَذَّبْنَا الَّذِیۡنَ کَفَرُوۡا مِنْہُمْ

اگر مسلمان مکہ سے نکل جاتے تو ہم کافروں پر عذاب بھیجتے ۔(پ26،الفتح:25)

(3) فَاَخْرَجْنَا مَنۡ کَانَ فِیۡہَا مِنَ الْمُؤْمِنِیۡنَ ﴿ۚ۳۵﴾

پس نکال دیا ہم نے قوم لوط کی بستی سے ان مومنوں کو جو وہا ں تھے ۔(پ27،الذٰریت:35)
    ان آیات میں فرمایا کہ دنیا پر عذاب نہ آنے کی وجہ حضور صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم کا تشریف فرما ہونا ہے نیز مکہ والوں پر فتح مکہ سے پہلے اس لئے عذاب نہ آیا کہ وہا ں کچھ غریب مسلمان تھے قوم لوط پر عذاب جب آیا تو مومنین کو وہاں سے پہلے ہی نکال دیا معلوم ہو اکہ انبیاء کرام علیہم السلام او رمومنین کے طفیل سے عذاب الٰہی نہیں آتا۔ یہ حضرات دافع البلاء ہیں بلکہ آج بھی ہمارے اس قدر گناہوں کے باوجود جو عذاب نہیں آتا یہ سب اس سبز گنبد کی بر کت سے ہے ۔ اعلیٰ حضرت نے کیا خوب فرمایا ؎

تمہیں حاکم برایا تمہیں قاسم عطایا        تمہیں دافع بلایا تمہیں شافع خطایا
             کوئی تم سا کون آیا

    اعتراض: قرآن شریف سے ثابت ہے کہ بہت دفعہ پیغمبر وں نے کسی کو دعا یا بد دعا دی ۔ مگر قبول نہ ہوئی پھر وہ مشکل کشا،دافع البلا کیسے ہوئے؟

 

    جواب: یہ حضرات اللہ کے حکم سے دافع البلاء اورمشکل کشاہیں جہاں اذن الٰہی نہ ہو وہا ں بلاد فع نہ ہوگی۔ ہر چیز کا یہی حال ہے کہ خدا کے حکم سے نفع یا نقصان دیتی ہے غرضیکہ انبیاء علیہم السلام واولیا ء اللہ مافوق الاسباب مدد کرتے ہیں مشکلیں آسان ، مصیبت دور فرما تے ہیں ۔
 

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

bay iz NILLAH   ain toheed and

 

Min doon iLLAH   shirk                ya choti see baat samajh aa ja ay to bahut saari  baatain assaan ho ja ain.

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

(ja)

(ja)

(ja)

(ja)

(ja)  :)

:)  :)  :)  :)

(ma)

(ma)

(ma)

 

 

 

جزاک اللہ۔ اپنی دعاؤں میں یاد رکھیۓ گا

Share this post


Link to post
Share on other sites

Najam bhai, jo ayat aap ni pesh ki hain woh us waqt ke zinda logon ke bare me hai. Koi aisi ayat bhi batain jis se ye sabit ho ke murda aap ki madad ke liay qabar se bahir aa gaya ho?

 

Quran mein beshumar ayatein aise hain jis mein Allah tala ne kaha ke "Yeh jo Qabar mein hai tumhari awaz nahi sun sakta". 

 

Agar aap kisi mazar par apni hajat le kar jate hain tu woh yaqeenan poori ho sakti hai kyun ke shaiten aap logon ko gumrah karne ke liay aap ke madad karega. Jitna shirk karo ge dunya mein utna maal mile ga.

Edited by moloch

Share this post


Link to post
Share on other sites

Najam bhai, jo ayat aap ni pesh ki hain woh us waqt ke zinda logon ke bare me hai. Koi aisi ayat bhi batain jis se ye sabit ho ke murda aap ki madad ke liay qabar se bahir aa gaya ho?

 

Quran mein beshumar ayatein aise hain jis mein Allah tala ne kaha ke "Yeh jo Qabar mein hai tumhari awaz nahi sun sakta". 

 

Agar aap kisi mazar par apni hajat le kar jate hain tu woh yaqeenan poori ho sakti hai kyun ke shaiten aap logon ko gumrah karne ke liay aap ke madad karega. Jitna shirk karo ge dunya mein utna maal mile ga

 

Aqal ke andhay Quran ki Aayatain /Ahkaam Qayamat tak aane waale Muslamano ke liye hain , sirf us waqt ke zinda logon ke liye nhi hain. Beshak Qabar waale sunte hain : For example : Jab Musalman  Qabaristan jata hai to Qabar walon ko salam karta hai aur ye sunnat bhi hai , Ahadees se sabit hai . agar murda qabar mein na sunta hota to salam karne ka kya maqsad ? aray jahil Qabar mein Murda sunta hai tabhi to us ko salam kiya jata hai .

Share this post


Link to post
Share on other sites

Najam bhai, jo ayat aap ni pesh ki hain woh us waqt ke zinda logon ke bare me hai. Koi aisi ayat bhi batain jis se ye sabit ho ke murda aap ki madad ke liay qabar se bahir aa gaya ho?

 

Quran mein beshumar ayatein aise hain jis mein Allah tala ne kaha ke "Yeh jo Qabar mein hai tumhari awaz nahi sun sakta". 

 

Agar aap kisi mazar par apni hajat le kar jate hain tu woh yaqeenan poori ho sakti hai kyun ke shaiten aap logon ko gumrah karne ke liay aap ke madad karega. Jitna shirk karo ge dunya mein utna maal mile ga.

Awal wali zinda ho ya murda madad karta heh, misqun nabiyeen par nabiyoon say wada leeya gaya kay jab Nabi Muhammad sallallahu alayhi was'sallam dunya par ba hasiyat e Nabi mabhoos huway toh tum madad karo gay, sab Nabiyoon nay wada keeya madad ka. Halan kay Allah kay Nabi aakhiri Nabi thay aur Nabi un say pehlay fawt ho chukay thay. Abh unoon nay wada kay mutabiq madad kee, kesay kahan kistera yeh Allah aur madad karnay walay Nabi janeh, hameh ilm nahin. Yeh Quran meh heh. Dosra Nabi Musa alayhis salam nay chalees say 5 namazen karwa deenh, Qabr meh namaz par rahay thay, magar Jannat meh be thay ya nahin?

 

Quran meh woh ayaat jin kay qabr waloon ka nah suna likha heh, woh zinda ko murda likha gaya heh, yehni yeh mushrik islam qabool nah karen gay keun kay in kay leyeh marna/qabar meh jana ba hasiyat e kafir likha gaya heh. Agar ayat ka matlab yeh hota kay murday nahin suntay toh jahil beesiyoon Ahadith esay hen jin meh likha heh kay murday suntay hen. Allah kay Nabi aur Allah kay farman meh yeh tazad kesay peda huwa? Sirf tumari jahalat kee bina par. Keun kay Nabi e kareem tableegh keeya kartay thay aur mushrikeen islam qabool nahin kartay thay is leyeh Allah nay RasoolAllah ko khabr dee kay yeh [ba hasiyat e Kafir] qabr meh hen yeh nahin suneh gay [islam kee tableegh ko]. Yehni in mushrikoon nay qabr meh ba hasiyat e Kafir Mushrik jana heh aur yeh musalman nahin hoon gay.

 

Aakhiri baat ham mazar par hajat nahin leh kar jatay, ham apni hajatoon ko ba wasila e Wali Allah kay darbar pesh kartay hen. Keun kay Allah kay Wali Allah ka pasandeeda logh hen is leyeh un kay mazarat par logh ja kar Allah say dua kartay hen aur dua kartay hen ya Allah teray is naik banday kay tofail, waseelay say, hamari hajaat poori farma. Kia jab tum Allah say dua kartay ho toh kia tummeh Shaytaan aa kar deta heh? Tummeh kia pata kay jab tum apni Wahabi masjid meh bethay dua mangtay ho toh shaytaan tumari dua ko sun kar tummeh deta heh. Mazarat par jinnat ka hona kis hadees o ayaat say sabat heh? Dosri baat jab Allah sab kuch deta heh toh phir Shaytaan ka dena Allah ka dena ho sakta heh ya nahin. Sahabah nay jab pathar maray toh Quran meh aya kay tum nahin pathar nahin maray balkay Allah nay pathar maray, amal bazahir insaan ka heh magar haqiqat meh Allah ka. Abh agar jinn ya shaytan deh toh bazahir wohi denay wala hoga magar haqiqat meh Allah heh. Bazahir aur heh aur haqiqat aur heh, abh tum ko paani ka glass tumari maan deh, toh tawheed kia heh kay pani ka glass Allah nay deeya sirf bazahir denay wali tumari maan thee. Tawheed seekho jaa kar, Allah say mango gay toh woh be waseelay say millay ga, aur shahid Allah tummeh waseela e Jinn say ata karay. Allah tumaray haath meh khud toh nahin dalay ga. Allah achoon aur buroon kay waseeleh say deta heh, jis ko chahay jistera deh, agar kissi ko jinn kay, ya insaan kay waseeleh say deh toh Allah kee marzi. Wesay mujjay yeh bataho tummeh kia maloom heh kay mazarat par Jinn aur shaytaan hotay hen? Kia tumaray pass wahi ya Jibraeel ahay thay? Jistera tum keh rahay ho, istera toh meh be keh sakta hoon kay har Wahhabi aur Deobandi masjid meh khabees tareen shaytan jama hotay hen, aur joh kuch tum mangtay ho khabees shaytaan joh peshab meh dobki laga kay joh tum mangtay ho woh tummeh ata karta heh. Agar tum gar meh beth kar Allah say aulaad mango toh shaytaan tumari biwi ko hamla kar deta heh, ya tumari behan ko hamla kar deta heh aur phir hamla karnay kay baad kissi mard say us ki ham bistari karwa deta heh aur shaytaan kay haml par parda par jata heh. Jistera tum nay mazarat par shaytaanoon ka hona Istera toh meh be gar gar kay likh sakta hoon, baghair saboot kay, jis kee misaal meh nay deeh heh. Baat dalahil aur Quran o Hadith say karo wesay mangarat bateh hammeh nah sunaho warna meh tummeh woh sunahoon ga joh tumari bardasht say bahir hoga.

Share this post


Link to post
Share on other sites

Posted (edited) · Report post

 

 

yeh aap log aurton ki tarah itna Sharmaatay ya DARTAY kyun ho keh Madhab k baaray mein batatay nahi ho? ya chor ki daadhi mein tinka wali baat hai?

Edited by Ghulam.e.Ahmed

Share this post


Link to post
Share on other sites

اسلام علیکم ورحمۃ اللہ


گزارش یہ ہے کہ انگلش یا رومن انگلش میں گفتگو کی بجاے اردو میں گفتگو کیا کیجیے تا کہ سب کو سمجھ آ سکے ۔


یا جن حضرات کو اردو لکھنا نہیں آتی تو پھر وہ انگلش سکیشن ہی میں اپنے مضمون پوسٹ کیا کریں


محمد علی بھائی آپ سے خصوصی التجاء ہے کہ براے کرم اردو میں مضمون لکھا کریں تاکہ ہم جیسے کو بھی سمجھ آ سکے ۔


جزاک اللہ خیرا

Share this post


Link to post
Share on other sites
 

محمد علی بھائی آپ سے خصوصی التجاء ہے کہ براے کرم اردو میں مضمون لکھا کریں تاکہ ہم جیسے کو بھی سمجھ آ سکے ۔

جزاک اللہ خیرا

 

 

 

Salam alayqum,

 

I cannot write urdu.

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0