Jump to content
اسلامی محفل
Sign in to follow this  
Rizwan Q

Molana Ilyas Qadri Ka Aj Sehri Kay Bad Bayan 01-08-2013

Recommended Posts

aj sehri kay bad  time taqreban 4:30 kay bad Molana ilyas qadri ne esa byan kia kay family kay sath beth kar dekha nahi ja sakta tha jitna mene suna wo arz keye deta hoon

 

 

 

baat parday kay topic per ho rahi thi

 

ajkal ki nojawan larkia seenay ko ubharnay kay leye foam walay breazer pehenti hain jinka sene ka ubhaar kam hota hai wo foam walay brezer pehenti hai...jab kay esa brezer pehnna haram hai haan apne shohor kay samnay brezer pehn sakti hai...ajkal kay nojawan bhi nahatay waqt esi chaddi pehente hain jis se unkay goal goal shape nazar atay hain....................esi taran ki bateen jari thin kay mene channel change kardia kion kay family kay saray afrad mojod thay

 

brezer bolnay se pehle molana sath bethe muftion se pochtay hain kay wo jo khwateen senay kay ubhaar per pehnti hain usko kia kehte hain? tu sath bethe muftion ne sharma kar koi jawab nahi dia jis kay bad molana sochnay lagay phir boly haan usko brezer kehte hain

 

 

kia ye zaib deta hai molana is qasam ka bayan dain??

Edited by Rizwan Q

Share this post


Link to post
Share on other sites

وہابی عجیب عجیب قسم کے اعتراض لے کر آجاتے ہیں۔ دوسرے تقریبا ہر چینل پر ویسے ہی بریزر پہنے، جدید کپڑوں میں ملبوس نیم عریاں عورتیں فیملی کے ساتھ بیٹھ کر دیکھتے ہیں تو شرم نہیں آتی اور جب اللہ کے بندے ایسے ناجائز کاموں سے عوام کو منع کریں تو ان کو شرم آتی ہے،چینل بدل دیتے ہیں اور اُلٹا اعتراض لے کر آجاتے ہیں۔


 


اسلام بے حیائی اور غلط کاموں سے ہمیں منع کرتا ہے تو  جو غلط کام سرعام چینلوں پر ہو رہا ہے اُس کام کی ممانعت بھی اوپن چینل پر ہونی چاہئے۔


 


بیشک اللہ اس سے حیا نہیں فرماتا کہ مثال سمجھانے کو کیسی ہی چیز کا ذکر فرمائے مچھر ہو یا اس سے بڑھ کر


۔ البقرۃ ۲۶


Edited by Kilk-e-Raza
  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

دین اسلام میں درجنوں مسایل ایسے ملتے ہیں جو کہ مردوں کے ہیں لیکن ان کو عورتوں نے بیان فرمایا ،اور اسی طرح عورتوں کے بے شمار مسایل مرد مسلمان علماء نے بیان فرماے ہیں ۔


مثلاَ علماء دیوبند کی مشہور مولوی و حکیم اشرفعلی تھانوی ہی کی کتاب بہشتی زیور کو اٹھا کر دیکھ لیجیے یہ کتاب عورتوں کو جہیز میں دی جاتی ہے لیکن اس میں مردوں کے مخصوص مسایل پر درجنوں صفحات ملتے ہیں ،اسی طرح فقہ کی کتابوں کا مطالعہ کیا جاے توہزاروں مسایل اسی نوعیت کے ملیں گے کہ ان میں مردوں نے عورتوں کے مسایل بیان فرماے ہیں ۔۔۔۔۔۔شرعی مسایل بیان کرنے میں شرم نہیں ،شرم تو مسایل نہ سیکھنے والوں کو کرنی چاہے ۔۔۔


قرآن پاک و احادیث میں زنا، قوم لوط کے افعال ، شہوت و حوس پرستی کے بارے میں ذکر ملتا ہے تو کیا ان کو بیان کرنا شرم و حیاء کے خلاف ہو گا؟؟احتلام ،حیض ، نفاس ،زنا ،لواطت ، عورت کے دورد پلانے کے مسایل پر مشتمل اگر کوءی بیان ہو تو کیا وہاں بھی ایسا ہی اعتراض کیا جاے گا؟

  • Like 5

Share this post


Link to post
Share on other sites

1234.jpg

 

لہذا شرعی مسایل بیان کرنے اور ان کو سیکھنے میں شرم و حیاء نہیں کرنی چاہے

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

اِس دیو کے بندے کی باتوں کا جواب دینا ضروری نہیں۔ اِس نے پہلے بھی کچھ تھریڈز میں جواب نہیں دیا اور فرار اختیار کیا ہے۔ اور بے شرمی کی انتہا کو بھی پار کرنے کی کوشش کررہا ہے کہ اُن کے جواب دینے کی بجائے بے تُکے الزامات اہلِ سنّت پر لگا رہا ہے ( اس طرح صرف دل کی بھڑاس نکال رہا ہے اور اپنے بڑے کو یعنی شیطان لعین کو خوش کرنے کی کوشش کررہا ہے تاکہ جہنّم میں اعلیٰ مقام حاصل کرسکے )

 

 

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

Aena inko Dikhaya tu bura maan gaye...

Sharai Masail is taran khul kar public kay samnay bayan keye jatay hain kia??...kuch tu khayal karoo yaar...ap 1 channel per bethe hoo jisko jawan borhay bachay mard ortain..Family kay sath beth kar dekhte hain..kia in masail ko sekhnay  kay leye Family ka bachoon ka koi paas nahi hai???

 

kia ap apne bachoon or behen bahion kay darmiyan beth kar  is taran kay masail ko sekh lain gay ???  ap hi ka bacha is bayan ko sun kar ap se sawal kar day kay ye Brezer kia hota hai tu ap osko bhi sharai masail samjhana shuru kar do gay?? kuch tu Lihaaz karo, 

 

Madani channel 1 public channel hai jise har chota, bara, mard, orat, bachay sab dekhtay hain..agar jinsi kay masail isi taran khul kar bayan keye jatay hain tu Pehle apne channel kay oper Only 18+ Allowed ki patti chalwa dia kareen...this is serious issue..

Edited by Rizwan Q

Share this post


Link to post
Share on other sites

Rizwan q iterza bare iteraz adait ha deogandioun ki ayena to tum ko dekaya ha baki raha ase masil to ja kar Fiqh ki books daikna jo deogandioun madris main b phari jati han aur larkioun ka madris main b sahmil han jin ko mard hazart phrate han ........ya b serioun issued ha ka deobandi hazrat behshti zawar ka front title pa liken sirf baliegoun ka leye q theik ha na......... its also very serious issue

Share this post


Link to post
Share on other sites

جناب والا ہم نے جو سکین پیش کی تھی اس کا جواب کہاں ہے؟کیا وہ لوگ شرم و حیاء والے نہیں تھے اور تم جیسے دیوبندی زیادہ شرم و حیاء کو جانتے ہیں؟ماں بیٹے سے حالت حیض و جماع کا مسلہ پوچھ رہی ہے تو ماں بیٹے کو شرم و حیاء کا معلوم نہ تھا؟لاحول ولاقوۃ الاباللہ ۔۔

 

 

اور مزید یہ بھی بتا دیں کہ اگر ماں ،باپ،بیٹا ،بیٹی ، پوری فیملی روزانہ ٹی وی پر تلاوت قرآن و ترجمہ سنیں اور اس تلاوت و ترجمہ کے درران اگر ایسے مسایل کا ذکر ہو مثلا زنا،لواطت،بد کاری ،بے حیای ،حیض وغیرہ کے تو وہاں بھی آپ کی عقل کے مطابق بے حیاہی کا حکم عاید ہو گا؟؟

 

 

 

پھر آپ لوگوں کی عجیب عقل ہے کہ دوسروں کی عورتیں اگر ایسے  آپ کے علماء سے حیض و نفاس یا ایسے ہی دیگر مخصوص مسایل سنیں تو اس وقت آپ کو شرم و حیاء کا خیال نہیں آتا ،غیر مردوں سے ایک غیر عورت مسایل پوچھے تو شرم کا خیال نہیں آتا لیکن اگر خود آپ کا اپنا کوہی بیٹھا ہو تو شرم محسوس کرتے ہیں ۔۔۔

 

اگر شرعی مسایل بیان کرنے میں اور ایسے مسایل سننے میں شرم و حیاء ہے تو پھر تو سب کے لیے حکم یکساں عاید کیجیے اور یہ فتویٰ لگا دیں کہ غیر عورتیں  بھی ایسے مسایل نہیں سن سکتیں کیونکہ شرم کا معاملہ ہے  اور اگر ایسا حکم نہیں کیونکہ جب سکین والے حوالے میں ماں بیٹے سے مسیلہ پوچھتے ہوے شرم محسوس نہیں کرتی تو پھر تم کون سے کھیت کی مولی ہو۔۔؟؟؟؟ؕ

 

 

اور اگر یہ بات بھی آپ کی عقل میں نہیں بیٹھ رہی تو پھر آپ صرف ایک آیت یا حدیث پیش کر دیں کہ  جہاں ماں ،باپ ،بہٹی ،بیٹا موجود ہوں وہاں اس قسم کے شرعی مسایل بیان کرنا منع ہے کیونکہ یہاں شرم لازمی ہے۔۔۔۔۔۔

 

 

دیوبندیوں کو اس وقت شرم محسوس نہیں ہوءی جب بھری محفل میں عورت کی شرم گاہ گندم کے دانے کی طرح بیان کی جا رہی تھی۔۔۔[تذکرۃ الرشیدہ]جب تھانوی کے ماموں مجمع عام میں بھڑوا ہے رہے بھڑوا ۔۔۔اور ایک شخص پیچھے سے انگلی کرے اور دوسرا آگے سے پکڑے کی باتیں کر رہے تھے۔۔۔[الافضات الیومیہ]۔رانڈیوں کے سامنے بیٹھا کر یہ کہا جا رہا تھا کہ فلاں رنڈی کیوں نہیں آتی؟؟؟[تذکرہ الرشدیہ]قاسم نانوتوی و گنگوہی صاحب ایک چارپای پر عاشق صادق بنے کی مثال قایم کر رہے تھے [ارواح ثلاثہ]۔۔۔اور اشرفعلی تھانوی بہشتی زیور میں عورتوں کے مسایل بیان کرتے ہویے مردوں کے آلہ تناسل کو موٹا و بڑا کرنے کے فارمولے بیان کر رہے تھے اور آج بھی دیوبندی اپنی بیٹیوں کو جہیز میں یہ کتاب دیتے شرم محسوس نہیں کرتے ۔۔۔۔

تو جناب والا خواہ مخواہ ہر بات کو تنقید کا نشانہ مت بنایا کریں ۔۔۔اور اگر بنایں تو اپنے گریبان میں جھانک لیا کریں ۔۔۔۔۔

Edited by Burhan25
  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

masla ye hai kay tum logo se jab koi sawal kia jata hai tu tum log Diogandion ki chorian chakarian batana shuru ho jatay hoo...jahiloon dosroon ki gandagi batanay se apni gandagi kabhi saaf nahi hoti..dio gandi kia karta Asharaf Ali thanvi kia karta hai unkay kalay kartoot deobandion ki amma g se pocho jakar...

 

mene pehle bhi kaha tha kay MAdani channel 1 public channel hai wahan is qisam ki bateen karna brezer brezer ki awazain lagana gol gol shape ki bateen karna agar sahi hai tu kal se apne bachoon ki bhi iski taleem do kia khayal hai..kal se ap log apne ma behen bachoo ko batana shuru kardo kay foam walay brezer jis se tum logo ka seeney ka ubhaar phool jae ese brezer nahi pehna karoo...or apni sisters ko batao kay foam walay brezer sirf apne shohor kay samnay pehnne or apne bachoo kay chaddi me jo gol gol shape bante hain unkay baray me batao or brezar kay fawaid or nuqsaan kay bray me bhi batao shabash

 

daily apne ghar me is qisam ki discussion kia karoo or pocha karoo kay jo senay kay ubhar per pehente hain osko kia kehtay hain phir tumari family mese hi koi khara hokar batae kay osay brezer kehte hain tu tumhen bht acha lagay ga.phir tum apni family ko brezer kay jaiz na jaiz ki taleem do ..chalo kal se shuru kardo ye kaam 

 

jahan jahiliat khatam hoti hai wahan se Brelviat deobandiat janam leti hai

Edited by Rizwan Q

Share this post


Link to post
Share on other sites

چلو جناب دیوبندیوں کو چھوڑ دیتے ہیں اب صرف ان باتوں ہی کا جواب عنایت فرما دیں ۔۔۔۔۔


آپ صرف ایک آیت یا حدیث پیش کر دیں کہ گھر والوں کے سامنے یعنی جہاں ماں ،باپ ،بہٹی ،بیٹا موجود ہوں وہاں اس قسم کے شرعی مسایل بیان کرنا منع ہے کیونکہ یہاں شرم لازمی ہے۔۔۔۔۔۔


 


 


 


جناب والا ہم نے جو سکین پیش کی تھی اس کا جواب کہاں ہے؟کیا وہ لوگ شرم و حیاء والے نہیں تھے اور تم جیسے دیوبندی زیادہ شرم و حیاء کو جانتے ہیں؟ماں بیٹے سے حالت حیض و جماع کا مسلہ پوچھ رہی ہے تو ماں بیٹے کو شرم و حیاء کا معلوم نہ تھا؟لاحول ولاقوۃ الاباللہ ۔۔


 


 


اور مزید یہ بھی بتا دیں کہ اگر ماں ،باپ،بیٹا ،بیٹی ، پوری فیملی روزانہ ٹی وی پر تلاوت قرآن و ترجمہ سنیں اور اس تلاوت و ترجمہ کے درران اگر ایسے مسایل کا ذکر ہو مثلا زنا،لواطت،بد کاری ،بے حیای ،حیض وغیرہ کے تو وہاں بھی آپ کی عقل کے مطابق بے حیاہی کا حکم عاید ہو گا؟؟

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

masla ye hai kay tum logo se jab koi sawal kia jata hai tu tum log Diogandion ki chorian chakarian batana shuru ho jatay hoo...jahiloon dosroon ki gandagi batanay se apni gandagi kabhi saaf nahi hoti..dio gandi kia karta Asharaf Ali thanvi kia karta hai unkay kalay kartoot deobandion ki amma g se pocho jakar...

 

 

میں نے رضوان صاحب کا یہ کمنٹ پڑھا تو حیران رہ گیا وہ اس طرح کے موصوف اپنے آپ کو حنفی کہتا ہے اور اہل سنت و جماعت کے مخالف بھی ہیں تو جس سے سمجھ یہی آتا تھا کہ یہ دیوبندی ہے لیکن آج ان صاحب نے دیوبندیوں کے خلاف بھراس نکال کر اپنا دیوبندی ملت سے الگ ہونا واضح کر دیا ہے۔

اب سوال یہ ہے کہ سنی یہ ہے نہیں اور دیوبندی مذہب سے براءت کا اظہار کرتا ہے تو یہ کون سا نیا مسلک فرقہ وجود میں آگیا جو حنفی ہونے کا دعوی بھی کرتا ہے جبکہ نہ اہل سنت و جماعت میں شامل ہے اور نہ دیوبندی مذہب میں ۔۔۔۔۔۔۔۔

امید ہے کہ جناب اس پر روشنی ڈالیں گے۔۔۔

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

چلو جناب دیوبندیوں کو چھوڑ دیتے ہیں اب صرف ان باتوں ہی کا جواب عنایت فرما دیں ۔۔۔۔۔

آپ صرف ایک آیت یا حدیث پیش کر دیں کہ گھر والوں کے سامنے یعنی جہاں ماں ،باپ ،بہٹی ،بیٹا موجود ہوں وہاں اس قسم کے شرعی مسایل بیان کرنا منع ہے کیونکہ یہاں شرم لازمی ہے۔۔۔۔۔۔

 

 

 

جناب والا ہم نے جو سکین پیش کی تھی اس کا جواب کہاں ہے؟کیا وہ لوگ شرم و حیاء والے نہیں تھے اور تم جیسے دیوبندی زیادہ شرم و حیاء کو جانتے ہیں؟ماں بیٹے سے حالت حیض و جماع کا مسلہ پوچھ رہی ہے تو ماں بیٹے کو شرم و حیاء کا معلوم نہ تھا؟لاحول ولاقوۃ الاباللہ ۔۔

 

 

اور مزید یہ بھی بتا دیں کہ اگر ماں ،باپ،بیٹا ،بیٹی ، پوری فیملی روزانہ ٹی وی پر تلاوت قرآن و ترجمہ سنیں اور اس تلاوت و ترجمہ کے درران اگر ایسے مسایل کا ذکر ہو مثلا زنا،لواطت،بد کاری ،بے حیای ،حیض وغیرہ کے تو وہاں بھی آپ کی عقل کے مطابق بے حیاہی کا حکم عاید ہو گا؟؟

 

kia ap apni sister ko ye baat keh saktay hain kay foam wala brezer nahi pehna chahiye ye jaiz nahi hai kion kay is se breast ka size bara nazar ata hai..jab shadi hojae phir apne husband kay leye pehenna theek hai.....

 

jawab do...yes  or NO...agar ap ka jwab yes hai tu me Haar maan leta hn ..ap jeet gaye

 

ap me apni family kay leye kitni sharam-o-haya hai iska andaza abhi hojaega

Edited by Rizwan Q

Share this post


Link to post
Share on other sites

سورۃ البقرۃ کی آیت ۲۲۳ کی تفسیر گھر میں

 

بیان کرو گے یا چینل بند کردو گے؟

 

نِسَاؤُكُمْ حَرْثٌ لَكُمْ فَأْتُوا حَرْثَكُمْ أَنَّى شِئْتُمْ  223

 

سورۃ الاعراف کی آیت ۱۸۹ 

 

کی تفسیر گھر میں

 

بیان کرو گے یا چینل بند کردو گے؟

 

 

فَلَمَّا تَغَشَّاهَا حَمَلَتْ حَمْلًا خَفِيفًا فَمَرَّتْ بِهِ  ۔189)

Edited by Saeedi
  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

یہ رضوان وہابی لگتا ہے صرف رمضان میں ہی اسلامی چینل دیکھتا ہے۔ جبھی شیطان نے اس سے کہا ایسے اعتراضات کرو۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

سورۃ البقرۃ کی آیت ۲۲۳ کی تفسیر گھر میں

 

بیان کرو گے یا چینل بند کردو گے؟

 

نِسَاؤُكُمْ حَرْثٌ لَكُمْ فَأْتُوا حَرْثَكُمْ أَنَّى شِئْتُمْ  223

 

سورۃ الاعراف کی آیت ۱۸۹ 

 

کی تفسیر گھر میں

 

بیان کرو گے یا چینل بند کردو گے؟

 

 

فَلَمَّا تَغَشَّاهَا حَمَلَتْ حَمْلًا خَفِيفًا فَمَرَّتْ بِهِ  ۔189)

 

bilkul bayan karooga Channel band nahi karooga ....mil gaya jawab?

 

ab ap meri baat ka jawab do

 

kia ap apni sister ko ye baat keh saktay hain kay wo jo seenay kay ubhar per pehente hain osay kia kehte hain? Brezier.brezer 2 taran kay hotay hain 1 normal 1 foam wala.. foam wala brezer nahi pehna chahiye ye jaiz nahi hai kion kay is se breast ka size bara nazar ata hai..jab shadi hojae phir apne husband kay leye pehenna theek hai.....

Edited by Rizwan Q

Share this post


Link to post
Share on other sites

قطع نظر اس چیز کے  کہ ایسا بیان ایک ٹی وی چینل پر ہونا چاہئے یا نہیں  عرض ہے کہ جناب رضوان صاحب سارا مسئلہ اس لئے کھڑا ہوا ہے کہ یا تو  آپ کے گھر کی خواتین ایسی باتیں آپ کی موجودگی میں سنتی رہیں۔اور آپ نے انہیں منع نہیں کیا۔چاہئےتو یہ تھا کہ آپ خودوہاں سے چلے جاتے یا آپ کے گھر کی خواتین چلی جاتیں ۔۔


لیکن بات یہ ہوئی کہ آپ لوگ مزے سے سب باتیں سنتے رہے جب بات سن لی تو بعد میں غیرت جاگی کے یہ کیا ہوگیا۔ایسی باتیں ہمیں ایک دوسرے کی موجودگی میں نہیں سننی چاہئیے تھیں۔وغیرہ وغیرہ 


اور اگر آپ کے ہاں یہ معاملہ نہیں ہوا اورآپ کو دوسروں کے گھروں کا خیال ہے تو جب تک آپ ایک ایسے گھر کا نہیں بتا دیتے جس میں یہ سب باتیں سب فیملی ممبرز سنی ہوں تب تک آپ کو اعتراض نہیں کرنا چاہئے۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

ان سوالوں کے جوابات بھی عنایت فرما دیں۔۔۔۔۔۔۔۔


آپ صرف ایک آیت یا حدیث پیش کر دیں کہ گھر والوں کے سامنے یعنی جہاں ماں ،باپ ،بہٹی ،بیٹا موجود ہوں وہاں اس قسم کے شرعی مسایل بیان کرنا منع ہے کیونکہ یہاں شرم لازمی ہے۔۔۔۔۔۔


 


 


 


جناب والا ہم نے جو سکین پیش کی تھی اس کا جواب کہاں ہے؟کیا وہ لوگ شرم و حیاء والے نہیں تھے اور تم جیسے دیوبندی زیادہ شرم و حیاء کو جانتے ہیں؟ماں بیٹے سے حالت حیض و جماع کا مسلہ پوچھ رہی ہے تو ماں بیٹے کو شرم و حیاء کا معلوم نہ تھا؟لاحول ولاقوۃ الاباللہ ۔۔


 


 


اور مزید یہ بھی بتا دیں کہ اگر ماں ،باپ،بیٹا ،بیٹی ، پوری فیملی روزانہ ٹی وی پر تلاوت قرآن و ترجمہ سنیں اور اس تلاوت و ترجمہ کے درران اگر ایسے مسایل کا ذکر ہو مثلا زنا،لواطت،بد کاری ،بے حیای ،حیض وغیرہ کے تو وہاں بھی آپ کی عقل کے مطابق بے حیاہی کا حکم عاید ہو گا؟؟

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

ان سوالوں کے جوابات بھی عنایت فرما دیں۔۔۔۔۔۔۔۔

آپ صرف ایک آیت یا حدیث پیش کر دیں کہ گھر والوں کے سامنے یعنی جہاں ماں ،باپ ،بہٹی ،بیٹا موجود ہوں وہاں اس قسم کے شرعی مسایل بیان کرنا منع ہے کیونکہ یہاں شرم لازمی ہے۔۔۔۔۔۔

 

 

 

جناب والا ہم نے جو سکین پیش کی تھی اس کا جواب کہاں ہے؟کیا وہ لوگ شرم و حیاء والے نہیں تھے اور تم جیسے دیوبندی زیادہ شرم و حیاء کو جانتے ہیں؟ماں بیٹے سے حالت حیض و جماع کا مسلہ پوچھ رہی ہے تو ماں بیٹے کو شرم و حیاء کا معلوم نہ تھا؟لاحول ولاقوۃ الاباللہ ۔۔

 

 

اور مزید یہ بھی بتا دیں کہ اگر ماں ،باپ،بیٹا ،بیٹی ، پوری فیملی روزانہ ٹی وی پر تلاوت قرآن و ترجمہ سنیں اور اس تلاوت و ترجمہ کے درران اگر ایسے مسایل کا ذکر ہو مثلا زنا،لواطت،بد کاری ،بے حیای ،حیض وغیرہ کے تو وہاں بھی آپ کی عقل کے مطابق بے حیاہی کا حکم عاید ہو گا؟؟

 

janab me apki sari batoon se agree karta hoon ap theek keh rahe hain

 

ab ap meri baat ka jawab dain kia me theek keh raha hoon kia ap mere is baat se agreed kartay hain?

 

kia ap apni sister ko ye baat keh saktay hain kay wo jo seenay kay ubhar per pehente hain osay kia kehte hain? Brezier.brezer 2 taran kay hotay hain 1 normal 1 foam wala.. foam wala brezer nahi pehna chahiye ye jaiz nahi hai kion kay is se breast ka size bara nazar ata hai..jab shadi hojae phir apne husband kay leye pehenna theek hai.....

Share this post


Link to post
Share on other sites

(bis)

جناب رضوان کیو صاحب

کیا مولانا الیاس قادری صاحب نے اپنی سسٹر کے سامنے یہ مسئلہ بیان کیا ؟خواہ مخواہ غیر مسلموں کی طرح اسلامی مسائل پر کیوں اعتراض کرتے ہو؟اہل سنت کی دشمنی میں غیر مسلموں کو خوش کرتے ہو، شرم کرو، احادیث میں ہے کہ حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا نے صحابہ کو عورتوں کے کئی مسائل بیان کئے، آپ نے کبھی اعتراض کیا ہو تو بتائیں ؟

یہ آپ کو پتا ہے کہ مدنی چینل سے عوام کو کتنا فائدہ ہورہا ہے ، دیوبندیوں کے پاس اب جلنے کے سوا کچھ نہیں ، اور آپ کو یہ بھی پتا ہے کہ اس فورم نے دیوبندیوں کا کیا حشر کیا ہے ، بے شمار دیوبندی اس فورم پر بحثیں پڑھ کر اہل سنت ہوئے ہیں۔

آپ دیوبندیوں کی کفریہ عبارات پر بحث شروع کریں ، اس طرف سے دیوبندی معلوم نہیں کیوں جی چراتے ہیں؟دیوبندیوں کی کتاب بہشتی زیور میں عورتوں کو جن سیکسی مسائل سے آگاہ کیا گیاہے ، کیا آپ کو شرم نہیں آتی کہ ایسے مسائل والی کتاب بہنوں کو جہیز میں دیتے ہو اور لوگوں کو پڑھنے کی ترغیب دیتے ہو، شرم کرو۔  ،

Edited by Toheedi Bhai
  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
Sign in to follow this  

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.

×
×
  • Create New...