Sign in to follow this  
Followers 0
Hanfi-Barelvi

Zaeef K Baray Mein Ak Wahabi Ki Tasalii

10 posts in this topic

yeh Wahabi gair muqalid ki tehqeeq hai , hamary ulma is hadees k baray mein kiya kehtein hain .. PLz tasli sy jawab dein ulma sy request,

 

 


كيا عيد كى رات قيام كرنے ميں وارد حديث صحيح ہے ؟

الحمد للہ:

يہ حديث ابن ماجہ ميں ابو امامہ رضى اللہ تعالى عنہ سے مروى ہے كہ نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے فرمايا:

" جس نے عيد الفطر اور عيد الاضحى كى دونوں راتوں كو اجروثواب كى نيت سے اللہ تعالى كے ليے قيام كيا اس كا اس دن دل مردہ نہيں ہو گا جس دن دل مرجائيں گے"

سنن ابن ماجہ حديث نمبر ( 1782 ).

يہ حديث ضعيف ہے، نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم كى طرف منسوب كرنا صحيح نہيں.

الاذكار ميں امام نووى رحمہ اللہ تعالى كہتے ہيں:

" يہ حديث ضعيف ہے، اسے ہم نے ابو امامہ رضى اللہ تعالى عنہ كے طريق سے مرفوع اور موقوف روايت كيا ہے، اور يہ دونوں طريق ضعيف ہيں. انتھى

اور حافظ عراقى رحمہ اللہ تعالى نے" تخريج احياء علوم الدين " ميں اس كى سند كو ضعيف كہا ہے.

اور حافظ ابن حجر رحمہ اللہ تعالى كہتے ہيں:

" يہ حديث غريب اور مضطرب الاسناد ہے.

ديكھيں: الفتوحات الربانيۃ ( 4 / 235 ).

اور علامہ البانى رحمہ اللہ تعالى نے اسے ضعيف ابن ماجہ ميں ذكر كرنے كے بعد اسے موضوع كہا ہے.

اور السلسلۃ الاحاديث الضعيفۃ حديث نمبر ( 521 ) ميں ذكر كرنے كے بعد ضعيف جدا كہا ہے.

يہ حديث طبرانى نے عبادہ بن صامت رضى اللہ تعالى عنہ سے روايت كى ہے كہ رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے فرمايا:

" جس نے عيد الفطر اور عيد الاضحى كى رات شب بيدارى كى اس كا دل اس دن مردہ نہيں ہو گا جس دن دل مر جائيں گے "

يہ روايت ميں ضعيف ہے.

ھيثمى نے " مجمع الزوائد " ميں كہا ہے كہ:

اسے طبرانى نے " الاوسط" اور " كبير" ميں روايت كيا ہے، اس كى سند ميں عمر بن ہارون بلخى ہے، جس پر ضعف غالب ہے، اور ابن مہدى نے اس كى تعريف كى ہے، ليكن اكثر نے اسے ضعيف قرار ديا ہے. واللہ اعلم.

اور علامہ البانى رحمہ اللہ تعالى نے " السلسلۃ الاحاديث الضعيفۃ " حديث نمبر ( 520 ) ميں ذكر كرنے كے بعد اسے موضوع كہا ہے.

اور امام نووى " المجموع " ميں كہتے ہيں:

ہمارے اصحاب كا كہنا ہے: عيدين كى رات نفل و نوافل اور دوسرى عبادات كر كے شب بيدارى كرنا مستحب ہے، ہمارے اصحاب نے امامہ رضى اللہ تعالى عنہ كى حديث سےاستدلال كيا ہے كہ نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے فرمايا:

" جس نے عيدين كى رات شب بيدارى كى اس كا دل مردہ نہيں ہوگا، جس دن دل مر جائيں گے"

اور شافعى اور ابن ماجہ كى روايت ميں ہے:

" جس نے عيدين كى رات اللہ تعالى كے ليے اجروثواب كى نيت ركھتے ہوئے قيام كيا، اس كا دل مردہ نہيں ہو گا جب دل مر جائيں گے"

اسے انہوں نے ابو درداء رضى اللہ تعالى عنہ سے موقوفا روايت كيا ہے،اور ابو امامہ رضى اللہ تعالى عنہ سے بھى يہ موقوف اور مرفوع بيان كى گئى ہے جيسا كہ گزر چكا ہے، اور ان سب طرق كى اسانيد ضعيف ہيں. انتہى

اور شيخ الاسلام ابن تيميمہ رحمہ اللہ تعالى كہتے ہيں:

جن احاديث ميں عيدين كى رات كا ذكر ہے وہ نبى عليہ السلام كے ذمہ من گھڑت اور كذب ہيں. انتہى

اس كا يہ معنى نہيں كہ اس رات قيام مستحب نہيں، بلكہ ہر رات قيام اور نفل نوافل ادا كرنا مشروع ہيں، اسى ليے علماء كرام كا اتفاق ہے كہ عيد كى رات قيام كرنا مستحب ہے، جيسا كہ اسے " الموسوعۃ الفقھيۃ " ( 2 / 235 ) ميں منقول ہے، مقصود صرف يہ ہے كہ اس قيام كى فضيلت ميں وارد شدہ احاديث ضعيف ہيں.

 

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

Courtesy by Khalil Rana bhai

 

بقول اما  م الوہابیہ مولوی شاہ اسماعیل دہلوی ضعیف اور موضوع حدیث فضائل میں کام دیتی ہے، احکام میں نہیں، وہابی بتائیں کہ کیا مولوی اسماعیل دہلوی نے درست کہا ہے؟

 

post-307-0-05422200-1434204499.jpg

post-307-0-16107600-1434204510.jpg

 

 

page-nid15.gif

page-nid16.gif

page-nid17.gif

page-nid18.gif

page-nid19.gif

page-nid20.gif

page-nid21.gif

page-nid22.gif

1 person likes this

Share this post


Link to post
Share on other sites

us wahabi ne khud hi to likha hai ke
 اسى ليے علماء كرام كا اتفاق ہے كہ عيد كى رات قيام كرنا مستحب ہے

 

ab problem kya hai??? zaeef ho ya sahi... kisi ne farz to nahi kaha... hamare ulama bhi mustahib hi kehte hai

Share this post


Link to post
Share on other sites

Masla yeh hai k gair muqalid bad mazhab kehta hai k yeh hadees shakht zaeef hai or ak rawait mozu hai , jis waja sy is hadees ko beyan nae krna chaiye ...?? 

Share this post


Link to post
Share on other sites

us wahabi ne akhir me likh to dia ke mustahib hai... to kya apni baat nahi maan raha???
aur iske elawa is me likha hai

اور امام نووى " المجموع " ميں كہتے ہيں:

ہمارے اصحاب كا كہنا ہے: عيدين كى رات نفل و نوافل اور دوسرى عبادات كر كے شب بيدارى كرنا مستحب ہے

 

imam nowi bhi isko mustahib jante hai... aur kisi ne bhi isko sakht zaeef nahi likha.... siwaye Albani ke

Share this post


Link to post
Share on other sites
اور شيخ الاسلام ابن تيميمہ رحمہ اللہ تعالى كہتے ہيں:

جن احاديث ميں عيدين كى رات كا ذكر ہے وہ نبى عليہ السلام كے ذمہ من گھڑت اور كذب ہيں

 

Ibn Tamiyah من گھڑت اور كذب Or Kizb Mante Hain

Or Albani Zaeef

 

Wahabi Aaj Tak Zaeef Or Mauzu Se Waqif Nahi Ho Sake

Share this post


Link to post
Share on other sites

Posted (edited) · Report post

Ab wo keh raha hai k yeh hadees sakht zaeef hai , kiyu k 

 is ki aik sand mozu hay or dosri main tadlees hay, lihaza tadlees sakht zouf ki hi aik qism hay...

الوليد عن ثور بن يزيد عن خالد بن معدان عن أبي أمامة مرفوعا . قال في " الزوائد " : " إسناده ضعيف لتدليس بقية " . و قال العراقي في " تخريج الإحياء " ( 1 / 328 ) : " إسناده ضعيف " . قلت : بقية سيء التدليس ، فإنه يروي عن الكذابين عن الثقات ثم يسقطهم من بينه و بين الثقات و يدلس عنهم ! فلا يبعد أن يكون شيخه الذي أسقطه في هذا الحديث من أولئك الكذابين ، فقد قال ابن القيم في هديه صلى الله عليه وسلم ليلة النحر من المناسك ( 1 / 212 ) : " ثم نام حتى أصبح ، و لم يحي تلك الليلة ، و لا صح عنه في إحياء ليلتي العيدين شيء "
 

 iman ibn e qayyam al jouzi farmatay hain...
فقد قال ابن القيم في هديه صلى الله عليه وسلم ليلة النحر من المناسك ( 1 / 212 ) : " ثم نام حتى أصبح ، و لم يحي تلك الليلة ، و لا صح عنه في إحياء ليلتي العيدين شيء "

yani k in amin say kuch b eidien ki rat ko jagnay k mutalik shai nhy hay....

 

  روایت  ابن ما جہ  میں  بھی  ہے وہ  بھی  بقیہ  بن  ولید  نامی  راوی  کی وجہ  سے سخت  ضعیف  ہے کیو ں کہ  یہ مد لس  ہے محد ثین  نے اس کی تد  لیس  سے اجتنا ب  کر نے  کی تلقین  کی ہے

Edited by Hanfi-Barelvi

Share this post


Link to post
Share on other sites

yar use ye to batao

 

مشروع ہيں، اسى ليے علماء كرام كا اتفاق ہے كہ عيد كى رات قيام كرنا مستحب ہے، جيسا كہ اسے " الموسوعۃ الفقھيۃ " ( 2 / 235 ) ميں منقول ہے، مقصود صرف يہ ہے كہ اس قيام كى فضيلت ميں وارد شدہ احاديث ضعيف ہيں.

 

sakht zaeef ho ya sirf zaeef... uske mufti ne raat qayam karne ko mustahab kaha hai.... hum bhi to yehi kehte hai

Share this post


Link to post
Share on other sites

Asal mein , mein ny is hadees ko share kiya tha , tu us ny kaha tha k is hadees ko share nae krna chaiye kiyu k yeh hadees shakt zaeef hai , is hadees ko beyan nae krna chaiye .

Eid ki raat ko qayam krny ki koi khas fazilat nae hai , kiyu k yeh sb ahadees shakt zaeef hain , or jaisay aam dino mein qayam krna mustahab hai waisay hi eid ki raat ko b qayam krna mustahib hai .

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!


Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.


Sign In Now
Sign in to follow this  
Followers 0

  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.