Jump to content
IslamiMehfil

عقیدہ توُسّل حق ھے۔


Recommended Posts

 

 

 

:lol:mulhid g kiya deobandi honay ja rahay ho? har thread per deobandion ki posts copy paste kar rahe ho? kab tak irada hai gutter change karne ka?

 

aur dosri baat jo deobandi mulvioun kay reference tum hamein dikhatay ho maine pehle bhi bola tha ke wo humaray liye parkah ki hasiyat bhi nahi rakhte.

 

ahl-e-yazeed ki naam nihad tehqeeq kiya khatam ho gai jo deogandi molvioun ki taqleed shuru kar di tum ne? pehle to bara dawa tha ke har ahl-e-yazeed muhaqiq hota hai. ab kiya hua tumhara batil dawa...?!?!?!

Link to post
Share on other sites
  • Replies 229
  • Created
  • Last Reply

Top Posters In This Topic

Top Posters In This Topic

Popular Posts

Anwar sahib aap sahaba karam ko momin taswar kertay hain k nahi?Aap   jub is dunya say tashreef lay gay to jub Sahaba karam ko masla paish aata tha to woh ijtahaad nahi kertay thay?......Un ko is aya

Posted Images

Shahid sahib shaid aap nay mairi posts ko sahi tareeka say padha nahi!Main nay apni post #24 main kisi deobandi ka nahi balkah Allah k quran say hwaalay dia hain....Agar aap ko Quran samajh main nahi aata to is main humaara koi qasoor nahi!

 

 

 

Link to post
Share on other sites

Aur shahid sahib aap jo ataai aur zaati ikhtiaraat ki baat ker rahay hain to yeh jaan lo k Mushrkeen-e-Makkah b apnay mabodoon k mutalaq yeh aqeedah nahi rakhtay thay k yeh un ko zaati ikhtiaraat hain balkah woh b ataai per hi yaqeen rakhatay thay!

 

 

Jis ki wazahat main nay Allah k Quran say apni post#24 main ker di hai!

 

 

Link to post
Share on other sites

Surah Al Maidah {5} Verse 35: "O ye who believe! Do your duty to Allah, seek the means of approach unto Him, and strive with might and main in his cause: that ye may prosper."

 

Allah states in the Quran, seek Waseelah, i.e. means, ways, to approach to Allah, gain nearness to Allah, there are many Waseelah in Shariah indicated in Quran and Sunnah, and one form of Waseelah which Allah instructs the beleivers to seek is of Prophets {SAW}:

 

Surah Nisa {4} Verse 64: "We sent not an apostle, but to be obeyed, in accordance with the will of Allah. If they had only, when they were unjust to themselves, come unto thee and asked Allah's FORGIVENESS, and the Messenger had asked FORGIVENESS for them, they would have found Allah indeed Oft-returning, Most Merciful."

 

Allah subhana wa tallah states that we have sent the Prophet, the Messenger to be obeyed by his fallowers as well as the Mushrikeen in accordance to what Allah wills, and when the sinners, munafiqeen were unjust to them selves, i.e. wronged, sinned, and had earned Allahs wrath, they should have come to Prophet {SAW} and asked Allahs forgiveness, note Allah says come in the presence of the Prophet and then seek Allahs forgiveness Allah doesnt say stay at home, but says come in the presence of Prophet and then seek forgiveness from Allah, and when the messenger had asked forigveness for the sinners then they would have found Allah forgiving mercifull, indicating that Allah preffers the Waseelah, Allah wishes that sinners those who have wronged themselves should make dua in the presence of Prophet this it self is form of Waseelah because nearness to Prophet, those who desire to be in presence of Prophet {SAW} Allah is pleased with them ... and dua in his presence is more worthy of acceptance, and secondly ask the Prophet to seek forgiveness on the behalf of sinner. This proves the Waseelah of Prophet Muhammed {SAW} while he was on this world, and is proof that his Waseelah can be made, and the sinners in this world can belong to any era as long as they are siners they can make his Waseelah.

 

Surah Al Baqarah {2} Verse 89: "And when there comes to them a Book from Allah, confirming what is with them,- although from of old they had prayed for VICTORY against those without Faith,- when there comes to them that which they (should) have recognized, they refuse to believe in it, but the curse of Allah is on those without Faith."

 

Jews use to make dua to Allah prior to the birth of Prophet {SAW} to Allah by using Prophet {SAW} as Waseelah, they asked O Allah grant us victory with the Waseelah {through} the Prophet Muhammed {SAW}:

 

Tafsir Ibn Kathir: "(although aforetime they had invoked Allah (for coming of Muhammad ) in order to gain victory over those who disbelieved) meaning, before this Messenger came to them, they used to ask Allah to aid them by his arrival, against their polytheistic enemies in war. They used to say to the polytheists, "A Prophet shall be sent just before the end of this world and we, along with him, shall exterminate you, just as the nations of `Ad and Iram were exterminated.'' Also, Muhammad bin Ishaq narrated that Ibn `Abbas said, "The Jews used to invoke Allah (for the coming of Muhammad ) in order to gain victory over the Aws and Khazraj, before the Prophet was sent. When Allah sent him to the Arabs, they rejected him and denied what they used to say about him. Hence, Mu`adh bin Jabal and Bishr bin Al-Bara' bin Ma`rur, from Bani Salamah, said to them, `O Jews! Fear Allah and embrace Islam. You used to invoke Allah for the coming of Muhammad when we were still disbelievers and you used to tell us that he would come and describe him to us,' Salam bin Mushkim from Bani An-Nadir replied, `He did not bring anything that we recognize. He is not the Prophet we told you about.' Allah then revealed this Ayah about their statement,"

 

* Tafsir Al Jalalayn: "When there came to them a Book from God, confirming what was with them, in the Torah, that is the Qur’ān — and they formerly, before it came, prayed for victory, for assistance, over the disbelievers, saying: ‘God, give us assistance against them through the Prophet that shall be sent at the end of time’; but when there came to them what they recognised, as the truth, that is, the mission of the Prophet, they disbelieved in it, out of envy and for fear of losing leadership (the response to the first lammā particle is indicated by the response to the second one); and the curse of God is on the disbelievers."

 

* Tafsir Ibn Abbas: "(And when there cometh unto them a Scripture from Allah, confirming that in their possession) which accords with that which is in their possession (though before that) before Muhammad (pbuh) (they were asking for a signal triumph) through Muhammad and the Qur'an (over those who disbelieved) of their enemies: the tribes of Asad, Ghatafan, Muzaynah, and Juhaynah (and when there cometh unto them that which they knew) of his traits and description in their Book (they disbelieved therein) they denied it was him. (The curse of Allah) His wrath and torment (is on disbelievers) the Jews."

 

Yahoodi RasoolAllah kee Milaad say pehlay hee Allah say dua keeya kertay thay kay Ya Allah ham ko Nabi Muhammed {SAW} kay waseeleh say Mushrikeen e Arab per fatah ata farma, Allah farmata heh kay unoon nay pehchaan ker be bughz meh inqaar ker deeya.

 

Note keren Allah tallah nay un kee joh Waseeleh say dua mangi gaee thee, un kay is amal ko Shirk, Kuffr, ilhad, kuch nahin farmatay, agar Shirk hota Allah kee nazr meh toh Allah farmata kay Shirk keeya kertay thay. Note keren kay Hadith ka asool heh, agar RasoolAllah kay samnay ya sun'nay meh kohi amal esa aya ho joh ghair sharaee thah toh RasolAllah us ko zeroor roktay ya islah farmatay, aur agar un kay samnay kuch amal huwa ho aur unoon nay sakoot farmaya ho toh phir yeh matlab hoga kay yeh amal ilfaaz weghera darust thay ghair islami nahin thay. Allah tallah kee zaat ko ziyada haq punchta heh kay woh achay buray kee tameez logoon ko batahen apni kitab meh Allah kee khamoshi daleel heh kay RasoolAllah ka Waseelah bana'na jaiz aur hukam e illahi heh.

 

Han dua Allah tallah say mangni chayeh, magar Allah kay muqaribeen, ibadat, Isma o Sifaat e bari talah, aur Saliheen, Ambiyah ka Waseelah jaiz heh, yehni yoon dua farmana: "Ya Allah apnay piyaray Nabi kay waseeleh say meray gunnahoon ko maaf farma." Agar is tera dua mangi jahay to jaiz heh.

 

Wama Alayna Ilal Balaghul Mubeen.

 

Muhammed Ali Razavi

Edited by RadiatingAli
Link to post
Share on other sites
Aur shahid sahib aap jo ataai aur zaati ikhtiaraat ki baat ker rahay hain to yeh jaan lo k Mushrkeen-e-Makkah b apnay mabodoon k mutalaq yeh aqeedah nahi rakhtay thay k yeh un ko zaati ikhtiaraat hain balkah woh b ataai per hi yaqeen rakhatay thay!

Jis ki wazahat main nay Allah k Quran say apni post#24 main ker di hai!

 

Jee nahin, Mushrikeen ka aqeedah thah kay, Ulluhiyat, Khuda'hi, Rubuwiyat, atahi thee. Yehni un kay IDOLS ko Allah tallah nay Rubuwiyat, Ulluhi'yat, ata kee heh, aur Ulluhiyat, Rubuwiyat atahi nahin ho sakti, Illah hota hee woh heh joh Awal e makhlooq ho, jis ko Ulluhiyat atah ho woh awal Makhlooq nahin ho sakta kia irada heh ... Rubuwiyat aur Ulluhiyat atahi nahin ho sakti, aur unoon nay apnay IDOLS ko Atahi rubuwiyat maani thee is leyeh woh Mushrik thay.

 

Zaati aur Atahi kee takhsees ayn Tawheed heh joh Zaati Atahi kee takhsees ka munkir woh pakka Kaffir, Mushrik Murtad, aur wajib ul qatal heh, keyun kay Allah dekhta heh Zaati tor per, us ko kissi nay Sami o Baseer nahin banaya, Allah deta heh apni Zaati qudrat say us ko kissi aur nah ata nahin keeya ... Allah kee har Sift o Afaal Zaati heh, aur is ka munkir hona, Shirk e Akhbar, aur munkir Mushrik, yehni Kaffir hota heh, musalman hona imppossiable heh. Aur Atahi ka aqeedah Makhlooq ka heh Makhlooq kee Zaat o Sifaat sab kuch Allah kee Atah hen, meri aankh Allah kee Atah, aur sift e Baseer Allah kee Atah, qaan Allah kee atah aur sift e Sami Allah kee atah, jaan Allah kee atah, jism Allah kee atah, yehni Makhlooq kee har sift Allah kee atah heh is ka Munkir, Kaffir heh aur Mushrik heh. Keyun kay joh kohi Makhlooq kay leyeh yeh aqeedah nahin rakhta kay Makhlooq kee har sift o zaat Atah kee atah heh us nay us ko Khaliq bana deeya, keyun kay makhlooq kee sifat o zaat Atah e bari tallah heh aur bari tallah kee her sift zaati aur zaat qadeem heh, Allah kee atah ka munkir makhlooq ko khuda bana deta heh keyun kay Allah be'niyaz heh, aur makhlooq ko Allah say be'niyaz kernay wala Mushrik yehni Kaffir heh. Hamara Khana peena sona rona, dona jagna, chalna phirna, dorna, sab kuch Allah kee atah say heh aur Atahi yehni Atah e illahi ka munkir makhlooq ko be'niyaz banata heh aur darja e illahi per faiz ker deta heh, alhasil Mushrik ho jata heh.

 

Tawheed seekh, copy & paste mar mar kay pagal ho rahay ho, Ilm aur Islam copy paste say samaj nahin ata, balkay pernay aur samjnay say ata heh, Allah tallah tum per reham keray aur tummeh Islam per maut deh, ameen.

 

Muhammed Ali Razavi

Link to post
Share on other sites

 Ali sahib behtar hota keh aap apnay alahazrat ki kitaaboon k ilawa koi HAdees ki kitab bi padh laitay!Aur Quran b samjh ker padhatay.....Mushrkeen Makkah ka talbiah b sun lo jis main woh iqraar kertay thay k Allah k siwa koi shareek nahi.......Haan Jis ko Allah to apna shreek bana lay ....Aur woh kisi cheez k maalik nahi hain LAikin allah jis ka to unahian maalik bana day!

 

Aur Quran main b jaga jaga is ka zikar hai jis main mushrkeen makkah ka iqraar milta hai k yeh zameen aasmaan aur jo kuch b is main hai sub Allah ka hai!Aur jub hum musibat main hotay hain to Allah hi hum ko nijaat daita hai!

 

Muislim Sharif    Kitab-ul-Haj!

 

 

 

 

 

post-3847-12548903985902.jpg

Link to post
Share on other sites
aur post # 25 kay baray mein kiya khayal hai mulhid sb. aap ka? us mein kiya aap aalo chanay baichnay ki koshish kar rahay hain ... ?!?!?!

 

Shahid sahib aap ki is baat say saabit ho gaya keh Muqalid andhaa hota hai.......Main nay aap k imaam sahib ka aqeedah bayan kia hai......Aur aaj kal k HAnfi hazrat ka b aqeedah bayan kia hai....Zara ghour say padh to laitay!

 

 

Link to post
Share on other sites

 

bismillah.gif

saw.gif

Janab Mouwahid Sb.aap bar bar kyon aisi batain post kar rahay hain jin ka jawab pehlay he is forum main mojood hay???Jaisa keh Sag e Attar Bhai nay aap ko link b dia tha....Laikan aap hatt dharmi par qaym hain.Khair aap nay phir woh he kaam kia keh khud say bat na ban pari tu deogandion ke abartain yahan paste kae deen.

 

Khair thora sabar karain aaj Insha Allah fursat miltay he aap ka mun band kia jay ga...

 

 

Link to post
Share on other sites

Qadri sahib main to aap ko munsaf samjhata tha laikin aap b apnay maslak ko ooncha kernay ki koshish main hain......Mairay bhai Maslak ki bajaya Deen ko ooncha kernay ki koshish kerain...

 

WOh jawab main nay is lia idhar dia kionkeh aap k ali sahib nay is ka mutalaba kia tha!

 

 

Link to post
Share on other sites

 Ali sahib behtar hota keh aap apnay alahazrat ki kitaaboon k ilawa koi HAdees ki kitab bi padh laitay!Aur Quran b samjh ker padhatay.....Mushrkeen Makkah ka talbiah b sun lo jis main woh iqraar kertay thay k Allah k siwa koi shareek nahi.......Haan Jis ko Allah to apna shreek bana lay ....Aur woh kisi cheez k maalik nahi hain LAikin allah jis ka to unahian maalik bana day!

Aur Quran main b jaga jaga is ka zikar hai jis main mushrkeen makkah ka iqraar milta hai k yeh zameen aasmaan aur jo kuch b is main hai sub Allah ka hai!Aur jub hum musibat main hotay hain to Allah hi hum ko nijaat daita hai!

Muislim Sharif    Kitab-ul-Haj!

 

Joh tum nay Hadith Abdullah Ibn Abbas kee pesh kee heh us say Sabat hota heh kay woh Allah kay saath shareek, partner mantay thay, RasoolAllah nay farmaya kay agar tum sirf La Shareeka Allah tak rehtay toh behtr thah, magar Mushrik kehtay: "Allah ka kohi Shareek nahin siwahay ek kay jissay Allah shareek bana leh..." toh woh Shareek e illahi mantay thay aur Allah ko us ka Malik mantay thay yehni Allah nay us shareek ko peda keeya, magar yeh be aqeedah thah kay Ulluhiyat un shuraka ko atah huwi heh is leyeh woh Allah ka shareek heh.

 

Yeh Hadith Abdullah Ibn Abbas wali taqriban meray biyaan kerda mafoom kee daleel heh joh meh nay pichli post meh likha thah ...

 

Hadith ko agay ghor say pero woh sirf La ShareekAllah taq hee nah pertay thay balkay agay ek aur hissa bee pertay thay woh apni hadith meh pero, woh Allah kay shareek mantay thay, yeh un ka aqeedah heh.

Edited by RadiatingAli
Link to post
Share on other sites

Inshallah, baqi meh Quran say in Tafseelan article likh ker sabat keroon ga kay Mushrikeen Allah ko toh mantay thay magar unoon nay apnay IDOLS ko, alat, uzat,manat ko Allah ka Shareek banaya thah.

 

* Surah al-Saffat, verse 35: “And when it was said to them, `La ilaha illa Allah’ they would become arrogant”

 

Jab Mushrikeen ko Allah kee Ahadiyat, Wahdaniyat kee taraf bulaya gaya toh unoon nay inqaar ker deeya.

 

* Surah Al Maidah {5} Verse 73: ”They do blaspheme who say: Allah is one of three in a Trinity: for there is no god except One Allah. If they desist not from their word (of blasphemy), verily a grievous penalty will befall the blasphemers among them.”

 

* Surah Al An'am {6} Verse 19: "Say: "What thing is most weighty in evidence?" Say: "(Allah) is witness between me and you; This Qur'an hath been revealed to me by inspiration, that I may warn you and all whom it reaches. Can ye possibly bear witness that besides Allah there is another Allah." Say: "Nay! I cannot bear witness!" Say: "But in truth He is the ONE ALLAH, and I truly am innocent of (your blasphemy of) joining others with Him."

 

* Surah At-Tawbah {9} Verse 31: ”They take their priests and their anchorites to be their lords in derogation of Allah, and (they take as their Lord) Christ the son of Mary; yet they were commanded to worship but One Allah. there is no god but He. Praise and glory to Him: (Far is He) from having the partners they associate (with Him).”

 

* Surah Yusuf {12} Verse 39: "O my two companions of the prison! (I ask you): ”Are many lords differing among themselves better, or the One Allah, Supreme and Irresistible?”

 

* Surah An Nahl {16} Verse 51: "Allah has said: "Take not (for worship) two gods: for He is just One Allah. then fear Me (and Me alone)."

 

* Surah Fussilat {41} Verse 6: “Say thou: "I am but a man like you: It is revealed to me by Inspiration, that your Allah is one Allah. so stand true to Him, and ask for His Forgiveness." And woe to those who join gods with Allah,-”

 

* Surah al-Baqarah (2) 22: Who has made the earth your couch, and the heavens your canopy; and sent down rain from the heavens; and brought forth therewith Fruits for your sustenance; then set not up rivals unto Allah when ye know (the truth).

 

Surah Ibrahim {14} Verse 30: "And they set up (idols) as equal to Allah, to mislead (men) from the Path! Say: "Enjoy (your brief power)! But verily ye are making straightway for Hell!"

 

* Surah al-An’am; 100: “And they made partners besides Allah, jinns even though He created them; and they invented sons and daughters for Him! Exalted and Glorifed is He above what they say”.

 

Surah 7 Verse 190: "But when He giveth them a goodly child, they ascribe to others a share in the gift they have received: but Allah is exalted high above the partners they ascribe to Him."

 

* Surah 21 Verse 22: "If there were, in the heavens and the earth, other gods besides Allah, there would have been confusion in both! but glory to Allah, the Lord of the Throne: (High is He) above what they attribute to Him!"

 

* Surah 6 Verse 100: "Yet they make the Jinns equals with Allah, though Allah did create the Jinns; and they falsely, having no knowledge, attribute to Him sons and daughters. Praise and glory be to Him! (for He is) above what they attribute to Him."

 

* Surah 9 Verse 31: "They take their priests and their ANCHORITES to be their lords in derogation of Allah, and (they take as their Lord) Christ the son of Mary; yet they were commanded to worship but One Allah. there is no god but He. Praise and glory to Him: (Far is He) from having the partners they associate (with Him)."

 

Yeh sab ayaat saboot hen kay Mushrikeen nay Allah ko bee mana magar Allah kay saath, auroon ko be us ka Shareek banaya, Allah kee lanat ho jhoota Kaffir per joh apnay aap ko musalman kehta heh aur munkir e Quran heh.

 

Kia tum in ayaat kay munkir ho, agar Allah ko sirf Allah ko manay walay Mushrik ho saktay hen toh phir sari Wahabiat Mushrik Kaffir Atheism heh, tum aur tumara Hindu, aur Mushrikeen e Makkah aur Abu Jahl Abi Lhab aur Firawn kay aqeedeh meh be kohi farq nahin, jistera woh Mushrik thay tum be Mushrik hee ho phir.

 

Mushrikeen Allah ko mantay thay magar unoon nay Allah kay saath shareek bana leeyh thay, kohi Allah kay leyeh betay manta kohi betiyan manta, kohi jinoon ko khuda manta , kohi farishtoon ko khuda bana deta ... aur woh Allah kay shareek bana detay thay aur Hadith Ibn Abbas saboot heh kay woh sirf Allah ko hee nahin mantay thay balkay Shareek e illahi kay be qahil thay, aur Quran kee ayaat be is ka saboot hen kay unoon nay Allah kay saath auroon ko jora leeya, shareek bana leeya.

 

Itna clear saboot ho ker be kohi inqaar keray toh esay shakhs kay kuffr meh, kaffir honay meh, murtad honay meh shak kernay wala be bilqul tumari tera Kaffir, MURTAD, AUR WAJIb ul qatal heh.

 

Muhammed Ali Razavi

Link to post
Share on other sites

(bis)

 

LAGTA HAY AAP LOG QURAN KO TARJEEH NAHI DETE SIRF APNE AKABIR KA DIFA KARNE MEIN LAGE REHTE HO CHHAY JAYSAY BHI HO, KUFAAR KE BARE MEIN QURAN MEIN SAAF LIKHA HAY KE WO (MIN DOON ALLAH ) ALLAH KE SIWA SIRF ALLAH KI NAZDEEKI AUR ALLAH KAY YAHA SIFARISH KA ZARYA SAMJHTE THAY , AUR HAR CHEEZ KA MAALIK AUR MUKHTAAR ALLAH HI KO SAMJHTE THAY, WO PATHAR KE BOOT KO KION PUKAARTE THAY, UNKA SAME WOHI AQEEDA THA JO AAP LOGONKA APNE FAUT SHUDA BUZURGU KE SATH HAY, AUR ZAHIR HAY JAB KISI KO ALLAH KE YAHAN SIFAARSHI BANINGAY TO USKO KHUSH BHI KARNA PAREGA, IS LIYE WO GHAIR ALLAH KE SAAMNE CHARHAWAY CHARHAATAY THAY, JAYSAY AAP LOG SHEIKH ABDUL QADIR JILANI KO ALLAH KE YAHA SIFAARSHI SAMJHTE HO AUR UNKO KHUSH KARNE KE LIYE UNKE NAAM KI GIYAARVEEN KARTE HO GHARZ HAR KISI NA KISI BUZURG KE NAAM KA AAP LOG BHI KUCH NA KUCH KARTE REHTAY HO TAKAY WO KHUSH HOON AUR HAMARI SIFARISH KAREIN ALLAH KE SAMNE AUR HAMARI FARYAAD SUNEIN, BILKUL EXACT YAHI TAREEKA KUFAAR KA THA AAP DEKH LO QURAN O HADEES ,,,,

 

 وَيَعْبُدُونَ مِن دُونِ ٱللَّهِ مَا لاَ يَضُرُّهُمْ وَلاَ يَنفَعُهُمْ وَيَقُولُونَ هَـٰؤُلاۤءِ شُفَعَاؤُنَا عِندَ ٱللَّهِ قُلْ أَتُنَبِّئُونَ ٱللَّهَ بِمَا لاَ يَعْلَمُ فِي ٱلسَّمَٰوَٰتِ وَلاَ فِي ٱلأَرْضِ سُبْحَانَهُ وَتَعَالَىٰ عَمَّا يُشْرِكُونَ }

 

 

{ هَـؤُلاء شُفَعَـٰؤُنَا عِندَ ٱللَّهِ } فاعلم أن من الناس من قال إن أولئك الكفار توهموا أن عبادة الأصنام أشد في تعظيم الله من عبادة الله سبحانه وتعالى. فقالوا ليست لنا أهلية أن نشتغل بعبادة الله تعالى بل نحن نشتغل بعبادة هذه الأصنام، وأنها تكون شفعاء لنا عند الله تعالى. ثم اختلفوا في أنهم كيف قالوا في الأصنام إنها شفعاؤنا عند الله؟ وذكروا فيه أقوالاً كثيرة: فأحدها: أنهم اعتقدوا أن المتولي لكل أقليم من أقاليم العالم، روح معين من أرواح عالم الأفلاك، فعينوا لذلك الروح صنماً معيناً واشتغلوا بعبادة ذلك الصنم، ومقصودهم عبادة ذلك الروح، ثم اعتقدوا أن ذلك الروح يكون عبداً للإله الأعظم ومشتغلاً بعبوديته. وثانيها: أنهم كانوا يعبدون الكواكب وزعموا أن الكواكب هي التي لها أهلية عبودية الله تعالى، ثم لما رأوا أن الكواكب تطلع وتغرب وضعوا لها أصناماً معينة واشتغلوا بعبادتها، ومقصودهم توجيه العبادة إلى الكواكب. وثالثها: أنهم وضعوا طلسمات معينة على تلك الأصنام والأوثان، ثم تقربوا إليها كما يفعله أصحاب الطلسمات. ورابعها: أنهم وضعوا هذه الأصنام والأوثان على صور أنبيائهم وأكابرهم، وزعموا أنهم متى اشتغلوا بعبادة هذه التماثيل، فإن أولئك الأكابر تكون شفعاء لهم عند الله تعالى، ونظيره في هذا الزمان اشتغال كثير من الخلق بتعظيم قبور الأكابر، على اعتقاد أنهم إذا عظموا قبورهم فإنهم يكونون شفعاء لهم عند الله

 تفسير مفاتيح الغيب ، التفسير الكبير/ الرازي (ت 606 هـ) مصنف و مدقق

AAP KE HAR DIL AZIZ MUFASSIR IMAM RAAZI FARMA RAHAY HEIN KE IN  KUFAAR KA AQEEDA THA KE IN BUTOON KI ROOHEIN (SPIRIT) JO ALLAH KI IBATDAT KARTI HEIN AUR ALLAH KI MUQARRIB HEIN AGAR HUM INKE BUTOONKO KO KHUSH KARINGAY TO WO ROOHEIN ALLAH KE YAHA HAMARI SIFARISH KARINGI, AUR YE SAMJHTE THAY KE YE SITAARAY AUR SAYYARE ALLAH KE GHULAM HEIN, AUR ALLA HKE YAHA NHAMARI SIFARSIH KARINGAY, 

AUR SAB SE EHEM BAAT YE LIKHI HAY KE YE BOOT UN LOGON NE ANBIYA AUR APNE AKABIREEN KI TASVEER BANAI HAY, INKI AKSARYAT QUBOOR E ANBIYA AUR QUBOOR E BUZGAAN KI TAZEEM KARTE THAY AUE YE SAMJHTE THAY KE  AGAR HUM IN QUBOOR KI TAZEEM KARINGAY TO YE HAMARI SHFARISH KARINGAY ALLAH KE NAZDEEK..

KITNI CLEAR BAAT HAY AUR ROZ E ROSHAN KI TARAH KHULI HOI HAY KE KUFAAR KE AQAID AUR AAJ KE BRALVI KE AQAID MEIN KOI FARQ NAHI HAY..YE LOG ZABARDASTI AIK HI BAAT KI RATT LAGA RAHAY HEIN KE KUFAAR TO IBADAT KARTE THAY MABOOD SAMJH KAR JABKE INHE KE HAR DIL AZIZ MUFASSIR NE UNKE MASLAK KA PURA POL KHOL DIYA HAY..

SAEEDI SAHAB ZARA GHOR SE IS TAFSEER KO PARHIYE AUR APNE MASLAK SE USKA MOAAZNA KEEJYE...

.

 

Link to post
Share on other sites

(bis)

(saw)

 

(bis)

 

(saw)

 

(salam) 2 all sunnis

 

(azw)(ja)Chishti Qadri Bhai Aap nay bohat achay aur saaf tareeqa say baat to bayan kar diya. laikin najdi ki aqal per sada say pathar paray hain aur ALLAH (azw) jane kab tak rahein ge. Ahl-e-Ilm kay liye to Mohtaram Saeedi Sahib ki post hi kafi thi. laikn bad aqeeda aur bad aqal najdioun ko ab agar aap ki post kay baad bhi kuch samajh mein na ae to kasoor sara phir najdi ki kaffir khopri ka hi hai. :lol:

 

ALLAH (azw) aap kay ilm-o-amal mein barkatein ata farmae ... Aameen

 

fi-aman:

  • Like 1
Link to post
Share on other sites

بسم اللہ الرحمن الرحیم

صرف یااللہ سبحانہ تعالی مدد

انماالمشرکون نجس (سورہ توبہ)

پوسٹ نمبر ۱۵و۱۶ کا جواب

 

نوید خان اور چشتی صاحب تو میرے سوالات کے جوابات دینے سے راہ فرار اختیار کرگءے اور گءے سیدھے ہانپتے کانپتے ہوءے اس ویب ساءٹ کے ذمہ داران کے پاس اور گڑگڑاتے ہوءے مودبانہ عرض کی ہوگی یقینا کہ جناب ابوزید کے سوالات کے جوابات دینے سے ہم قاصر ہیں کیونکہ ہم نے بہت حیلہ بہانے بناءے قصیدہ نعمان کی آڑ میں کیے لیکن ان سب کا پوسٹ مارٹم ابوزید کرچکا ہے اور یہ ثابت بھی ہوگیا کہ جس کو ہم آج تک قصیدہ نعمان سمجھ کر لوگوں کو دلاءل دیتے دیتے نہ تھکتے تھے وہ تو ابو حنیفہ کے بہت بعد اور ۸۲۳ سال سے کچھ قبل لکھا گیا ہےاور اسے منسوب کرکے ابوحنیفہ رح کی طرف لوگوں کو دھوکہ دیا کرتے تھے لیکن اب اس پر اڑے رھنا بھی ضروری ہے لہذا دو کام کیے جاءیں ایک یہ کہ کثیر تعداد میں لکھی جانے والی منہ توڑ ابوزید کی پوسٹس ڈلیٹ کردی جاءیں اور ساتھ ہی کچھ اور دیگر لوگوں کی پوسٹ ڈلیٹ کردی جاءیں تاکہ جواز رہ سکے کہ صرف ابوزید کی پوسٹس ڈلیٹ نہیں کی گءی۔ اور دوسرا کام یہ کیاجاءے کہ کسی تیسرے بریلوی سے کہا جاءے کہ وہ جوابات دینے کی کوشش کرے۔ لہذا تیسرے بریلوی صاحب نے میرے سوالات کے جوابات دینے کی کوشش کی اور ساتھ ہی لفظوں کے استعمال سے جان چھڑانے کی کوشش کی لہذا اب ان کے جوابات پر میرے اعتراضات اور اس پر کچھ سوالات حاضر ہیں صرف اللہ کی توفیق سے۔

 

سب سے پہلی غلطی تو تیسرے جواب دینے والے بریلوی صاحب نے یہ کی کہ ایک شعر وہ بھی جو کہ انہوں نے اپنی پوسٹ میں سب سے اوپر لکھا ”حق سے کرتا ہوں دعا پڑھ کے محمد پہ درود” اس میں میرے پیارے نبی امام الانبیاء اشرف الانبیاء افضل الانبیاء شافع محشر رحمت اللعالمین خاتم المرسلین امام اعظم محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کا نام جب اپنی پوسٹ میں پہلی بار لیا تو صرف محمد لکھا اور پیارے نبی علیہ السلام پر درود بھیجنے کی پہلی ہی بار میں توفیق بھی نہ ہوسکی۔اور یہ تیسرا شخص نبی علیہ السلام کی حدیث کے مصداق ہلاک ہوگیا۔ انشاءاللہ تعالی

( اس حوالے سے کوءی شیخی خوراایک قدم آگے بڑھکرمجھے شاہ اسمعیل شہید کی تحریر پیش کرنے کی کوشش نہ کرے کہ آپکی بات مجھ سے ہورہی ہے نہ کہ شاہ صاحب سے اس طرح بحث کا رخ دوسری طرف چلاجاءے گا۔)

 

بے شک اللہ تعالی نے قرآن میں وسیلہ تلاش کرنے کا حکم دیا ہے اور اس کی تشریح بھی لینی ہوگی تو میرے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے لینی ہوگی کوءی شخص اگر اپنی من مانی تشریح کرے گا تو وہ اللہ کی قسم کسی صورت دین کا حصہ نہیں بن سکتی وہ شخص خود بھی گمراہ ہو گا اور دوسروں کو بھی گمراہ کرے گا کیونکہ اللہ کا قرآن تھیوری ہے اور حیات رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پریکٹیکل اسی لیےعقیدہ لینا ہوگا توقرآن سے اور اس کو سمجھنا ہوگا تو میرے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان سے اور نماز لینی ہوگی تو اللہ کے قرآن سے اور اس کو سمجھنا ہوگا تو میرے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان سےاور وسیلہ لینا ہوگا تو قرآن سے اور اسے سمجھنا ہوگا تومیرے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان سے اور اسی طرح تمام دیگر احکام بھی اسی طرح لینے ہوں گے۔ اللہ سبحانہ تعالی نے قرآن میں فرمایا کہ میں نے آج کے دن تمھارے لیے تمھارا دین مکمل کردیا نبی علیہ السلام نے فرمایا کہ میں تمہیں ایسے دین پر چھوڑے جارہا ہوں جسکی راتیں بھی دن کی طرح روشن ہیں۔لہذایہ کیسے ممکن ہے کہ ہمارا دین مکمل ہوگیا اس کی راتیں بھی دن کی طرح روشن ہیں اور پھر بھی ضرورت پڑے تو صحیح کے مقابل ضعیف حدیث کی؛ کیونکہ قبولیت ضعیف حدیث میں بھی نفس پرستی کا عنصر شامل ہے اسی لیے تو صحیح کے مقابل ضعیف کی تکرار ہے۔

 

تمام بریلویوں کو دعوت ہے اللہ کے قرآن کی طرف اور پیارے نبی علیہ السلام کے فرامین کی طرف کیونکہ میرے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے فرامین تو قیمتی ہیں یاقوت و مرجان سے بھی زیادہ بلکہ انمول ہیں ؛ صاف و شفاف ہیں آب زم زم سے زیادہ ؛ میٹھے ہیں شہد سے زیادہ؛سفید ہیں دودھ سے زیادہ ؛ روشن ہیں سورج سے زیادہ تو بھلا بتاو کہ میرے معصوم عن الخطاء محمدرسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان اقدس سے نکلنے والےپاک فرامین جن کے متعلق قرآن میں اللہ تعالی نے فرمایا کہ ”وما ینطق عن الھوی ان ھو الا وحی یوحی” سورہ نجم ۳؛۴ ضعیف بھی ہوں گے۔یقینا جواب نہ میں ہوگا تو پھر صحیح کو چھوڑکر ضعیف کی تکراروتشہیر کیوں؟ لہذا صحیح حدیث کے مطابق ہی اپنے عقیدے اور عمل کی بنیاد رکھوکیوں ضعیف ضعیف کی قبولیت کی گردان کرتے ہو۔

 

بریلوی صاحب نے بخاری سے سیدنا عمر رضی اللہ تعالی عنہ کا وہ عمل جو کہ مشروع وسیلہ کی قسم ہے اللہ سے بارش طلب کرنے کے لیے نبی علیہ السلام کے زندہ چچا کو وسیلہ بنانا تو پیش کر دیا لیکن اس سے جو اہم نکتہ نکلتا ہے اس پر مقلد ہونے کی وجہ سے نظر نہ گءی وہ اہم نکتہ یہ نکلتا ہے کہ تھوڑے فاصلے پر نبی کریم رحمت عالم صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر اطہر موجود ہے لیکن عمر رضی اللہ تعالی عنہ نبی کریم رحمت عالم صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر اطہرپر جاکرنبی علیہ السلام کو وسیلہ نہیں بناتے اور پیارے نبی علیہ السلام کے زندہ چچا کو وسیلہ بناتے ہیں۔جس سے یہ بات واضح ہوگءی کہ عمر رضی اللہ تعالی عنہ کا عمل مشروع وسیلہ ہے جبکہ بریلویوں کےعمل کا انحصارمشروع وسیلہ کی آڑ لیکرممنوع وسیلہ پر ہے۔

اس حدیث سے جواہم پواءنٹس نکلتے ہیں وہ درج ذیل ہیں۔

۱) دوران خطبہ جمعہ ایک شخص آیا اور بارش نہ ہونے کی وجہ سے نبی علیہ السلام کوحالات بتاءے اور بارش کےلیے دعا کی درخواست کی جس پر پیارے نبی علیہ السلام نے اپنے دونوں ہاتھ مبارک اٹھاءے اور دعا کی اور اللہ تعالی نے بارش خوب برساءی اسی عمل کودیکھتے ہوءے عمر رضی اللہ تعالی نے اللہ تعالی سے بارش طلب کرنے کا یہ طریقہ نبی علیہ السلام سے سیکھا اور پیارے نبی علیہ السلام کےزندہ چچاکے وسیلے سے اللہ تعالی سے بارش طلب کی۔

۲) نبی کریم علیہ السلام کی قبر اطہر تھوڑے فاصلے پر موجود ہونے کے باوجود عمر رضی اللہ تعالی عنہ کا نبی علیہ السلام کو وسیلہ نہ بنانا کیا اس بات کی طرف اشارہ نہیں کرتا کہ بعد از وفات النبی صلی اللہ علیہ وسلم نبی علیہ السلام کے وسیلہ سے دعا کرنا کو عمر رضی اللہ تعالی عنہ جاءز نہیں سمجھتے تھے۔

۳) اور دیگر صحابہ کرام رضی اللہ عنہم میں سے کسی صحابی کا یہ احتجاج نہ کرنا کہ اے عمر رضی اللہ تعالی عنہ نبی علیہ السلام اپنی قبراطہر میں زندہ ہیں ”جیسا کہ بریلویوں کا عقیدہ ہے” اور آپ انکے چچا کو وسیلہ بنارہے ہیں اس بات پر دلالت کرتا ہے کہ صحابہ کرام بعد از وفات النبی کے وسیلے کے قاءل نہ تھے۔

۴) اگر آل تقلید بریلویہ سے پوچھا جاءے کہ بتاو کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم افضل ہیں یا نبی علیہ السلام کے چچا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے افضل ہیں تو یقینا جواب ہوگا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ہی افضل ہیں کہ جواب بھی یہ ہی ہونا چاہیے تو پھر جواب دو کہ عمر رضی اللہ تعالی عنہ نے افضل ہستی کو چھوڑ کر عباس رضی اللہ تعالی عنہ کو وسیلہ کیوں بنایا؟

۵) اگر آل تقلید بریلویہ سے پوچھا جاءے کہ بتاو کہ تمھارے نزدیک پھر نوٹ فرمالیں کہ تمھارے نزدیک افضل عمل دو عملوں میں سے کون سا ہے عمر رضی اللہ تعالی عنہ کا نبی علیہ السلام کے زندہ چچا کو وسیلہ بنانا یا بعد از وفات النبی نبی علیہ السلام کو وسیلہ بنانا تو یقینا بریلویوں کا جواب یہ ہی ہوگا کہ افضل عمل تو یہ ہی ہے کہ بعد از وفات النبی نبی علیہ السلام کو وسیلہ بنانا تو پھر سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ایک افضل عمل کو چھوڑکر عمر رضی اللہ تعالی عنہ نے ایک غیر افضل عمل کو کیوں اپنایا؟

 

بلال بن حارث رضی اللہ تعالی کا نبی علیہ السلام کو وسیلہ بنانا بعد از وفات النبی علیہ السلام ؛ کے حوالے سے اس پوری روایت پر تفصیلی جرح محدثین کی مالک الداری ؛ اعمش اور سیف التمیمی پر مواحد بھاءی نے پیش کردی تھی جسے ڈلیٹ کردیا گیا ہے اسے میں دوبارہ قارءین کی افادیت کے لیے پوسٹ کررہاہوں۔انشاءاللہ

اس ضعیف روایت کی پوری امارت کو سیف التمیمی کے بیان پر کھڑا کیا گیا ہے کہ جس میں سیف نے کہا کہ خواب دیکھنے والے بلال بن حارث ہیں۔جبکہ سیف کی اپنی حیثیت محدثین کے نزدیک سخت ضعیف ہے۔

 

اسی طرح نابینا صحابی رضی اللہ تعالی عنہ کا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آنا اور آپکی زندگی میں آپکی ذات کو اللہ کی بارگاہ میں وسیلہ بنانا یہ بھی مشروع وسیلہ تھا کیونکہ نبی علیہ السلام نے اس طرح کرنے سے منع نہیں فرمایا۔

 

اللہ تعالی فرماتا ہے کہ یہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم مومنین پر ان کی جانوں سے زیادہ حق رکھتے ہیں۔ سورہ احزاب اوراسی سورہ احزاب میں اللہ تعالی نے پیارے نبی علیہ السلام پر درود بھیجنے کا حکم دیا ہے اور درود کیا ہے اللہ تعالی سے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے لیے دعا ہے اور دعا کرتے ہوءے سب سے پہلے اللہ کا حق ہے کہ اللہ کی حمد و ثناء بیان کی جاءے جیسا کہ پیارے نبی علیہ السلام اپنی دعا میں کرتے تھے پھر نبی علیہ السلام کا ہم پر حق ہے کہ ہم اپنی دعاوں میں نبی علیہ السلام پر درود بھیجیں اب اگر آپ اسے وسیلہ کا نام دیتے ہیں تب بھی آپ کا مطلب اس حدیث سے نہیں نکلتا کیونکہ یہ تو نبی علیہ السلام کے فرمان عالی شان سے ثابت ہے دعا سے قبل نبی علیہ السلام پر درود بھیجنا اور درود کیا ہے دعا ہے کس سے اللہ تعالی سے نہ کہ درود میں یہ کہناہے کہ اے اللہ نبی علیہ السلام کے وسیلہ سے میری فلاں فلاں حاجت پوری کردے اور اللہ کی قسم کھا کر کہتا ہوں میرے محمد رسول صلی اللہ علیہ وسلم اگر یہ فرماجاتے کہ میری وفات کے بعد میری ذات کا وسیلہ اللہ تعالی کے دربار میں پیش کرکےاپنی دعاءیں مانگنا توپوری دنیا مانگتی یا نہ مانگتی لیکن ابوزید ضرور مانگتالیکن آج جب میں اپنے نبی علیہ السلام کا ایسا کوءی حکم نہیں پاتا تو کیوں ایسی بات پر عمل کروں جس کا حکم میرے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے نہیں دیا۔

لیکن درود کو جواز بناکر صاحب قبر کا وسیلہ یہ نبی علیہ السلام سے ثابت نہیں اور آپ اسکا اقرار بھی یہ کہہ کر کرچکے ہیں کہ میری نظر سے ایسی قولی حدیث نہیں گزری۔

 

بریلوی صاحب اندھیرے میں تیر چلانے سے کام نہیں چلے گا بلکہ اگر قرآن میں انبیاء کرام علیہم السلام کی دعاوں کو قبول کرنے کے اسباب اور آداب دعا کی تفصیل نہیں جیسا کہ آپ نے ذکر کیا تو کیا اللہ تعالی نے ادھوری بات بیان کی کیسے حکم آپ لوگ اللہ کے قرآن پر لوگ لگاتے ہیں حالآنکہ انبیاء کی مکمل دعاءیں اور انکی قبولیت کا ذکر اللہ تعالی نے قرآن میں کءی مقامات پر کیا اور جسے میں اپنی سابقہ پوسٹ میں کنزالا یمان کے حوالے سے دکھابھی چکا ہوں پھر آپ کا یہ مقلدانہ قیاس کہ انبیاء کرام علیہم السلام کی دعاوں کو قبول کرنے کے اسباب اور آداب دعا کی تفصیل قرآن میں نہیں کوءی اہمیت نہیں رکھتا حتی کہ حلقہ مقلدین میں بھی اسکی کوءی اہمیت نہیں۔ اور قرآن سے تو الحمدللہ میں آپکو دکھا ہی چکا آپ ایمان لاءیں یا نہیں اللہ تعالی آپ سے پوچھنے والا ہے۔ چلیں اگر آپ کو اب بھی قرآن سمجھ نہیں آتا تو جناب نبی علیہ السلام کے فرمان سے ہی جواب لے آءیں ہو سکتا ہے کہ اللہ کی توفیق سے آپ کے دل میں میرے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے فرمان کی محبت پیدا ہو جاءے اور پھر قرآن بھی سمجھ آجاءے لہذا آپ کسی ایک نبی آدم سے لیکر عیسی علیہم السلام تک صحیح حدیث کے حوالے سے بتاءیں کہ انہوں نے اسم محمد صلی اللہ علیہ وسلم ودرود پاک کے وسیلہ سے اللہ تعالی سے دعا کی ہو؟

آدم علیہ السلام کی توبہ کا قصہ جو کہ آپ نے بیان کیا ہے اسے بیان کرنے سے پہلے بریلوی صاحب اسکی سند بھی ملاحظہ کرلی ہوتی یا پھر اپنے باطل عقیدہ کی تشہیر کے لیے سب کچھ جاءز ہے۔ ایک طرف قرآن میںآدم علیہ السلام کا واقعہ اور توبہ کے کلمات کا آدم کو اللہ کی طرف سے القاء کیا جانا اور پھر ان کلمات کی اداءگی پر توبہ کا قبول کرلینا مفصل بیان ہوءی ہے اور دوسری طرف آپ ضعیف روایت پیش کررہے ہیں کہ آدم علیہ السلام نے عرش کے پاءے پر محمد صلی اللہ علیہ وسلم لکھا ہوا دیکھا اور اس کے وسیلہ سے دعا کی جبکہ دونوں میں تضاد ہے اصول کرخی کو کام میں لاتے ہوءے کیوں تطبیق کی راہ نکالنے سے قاصر ہیں اور کیوں قرآن کو قبول نہیں کر لیتے اور ضعیف روایت کو کیوں رد نہیں کردیتے۔

واہ جناب کیا لوگ ہیں آپ لوگ بھی قرآن کی آیتیں تو حلق سے نیچےاتر نہیں رہیں اور بنی اسراءیل کا عمل بریلویوں کے لیے حجت ہو کر ہضم بھی ہوگیا۔ ہمارے لیے نبی علیہ السلام کا قول و عمل حجت ہے اور بنی اسراءیل کے عمل سے حجت آل تقلید بریلویہ کو مبارک ہو۔ سبحان اللہ

 

بریلوی صاحب نے میرے سوالات کے جوابات دینے کی کوشش کی ہے اس میں بہت غلط بیانیاں لفظوں کی ہیراپھیری سے کام لیا ہے جنکا تعاقب نمبر واردرج ذیل ہے۔

۱۔بریلوی صاحب نے لکھا کہ ہم سنیوں کا مسءلہ توسل احادیث پر مبنی ہےاور امام اعظم کا قول ہے کہ ”جب حدیث صحیح ہو گءی تو وہی میرا مذھب ہے” نیز آپ (ابوحنیفہ) ضعیف کو بھی قیاس اور راءے پر فوقیت دیتے ہیں۔

پس احادیث توسل صحیح ہوں یا ضعیف امام اعظم کا مذھب بھی وہی ہیں۔

 

جواب از طرف ابوزید: میرا پہلا مطالبہ وہی ہے جسے نویدخان سے لیکر چشتی اور چشتی سے لیکر تیسرے بریلوی اور تیسرے بریلوی سے لیکر احمد رضا تک کوءی نہ پورا کرسکا اور نہ ہی پورا کرسکے گا انشاءاللہ تعالی۔ یہ قول کہ ”جب حدیث صحیح ہوگءی تو وہی میرا مذھب ہے” صحیح سند سے ابوحنیفہ سے ثابت کیا جاءےیا ابوحنیفہ رح اپنی کس کتاب میں اس اصول کا ذکر فرماتے ہیں اسکا حوالہ معہ اسکین بھی دیا جاءے انشاءاللہ اس کا جواب قیامت تک نہ آسکے گا۔

لہذا جب تک آل تقلید بریلویہ میرے اس سوال کا جواب لانے کے لیے سرگرداں ہوتے ہیں تب تک ان کے اس بیان کردہ اصول کا پوسٹ مارٹم کرتا ہوں صرف اللہ تعالی کی توفیق سے الحمدللہ ۔

آل تقلید بریلویہ کے جواب لانے سے قبل فرض کیے لیتے ہیں کہ یہ ابوحنیفہ رح کا قول ہے یاد رہے کہ میں نے لکھا ہے کہ فرض کیے لیتے ہیں۔ اور حیرت انگیز بات یہ ہے کہ اس قول کی گرفت میں یہ لوگ خود ہی آجاتے ہیں الحمدللہ ۔

اس غیر مستند قول سے چند نکات نکلتے ہیں جو بریلویہ کے شرکیہ عقیدے کے لیے توحید کی دودھاری تلوار ہے۔

نمبر ایک۰ ابوحنیفہ رح کے نزدیک صحیح حدیث ہی حجت تھی۔

نمبر دو۰ ابوحنیفہ رح کے نزدیک ضعیف حدیث صحیح حدیث کے مقابل نہیں اسی لیے تو ابوحنیفہ رح نے کہا کہ جب حدیث صحیح ہوگءی وہ ہی میرا مذھب ہے۔

نمبر تین۰ ابوحنیفہ رح نے یہ نہیں کہا کہ حدیث صحیح ہو یا ضعیف وہی میرا مذھب ہے۔جیسا کہ بریلوی صاحب نے اپنے لفظوں سے اسکے اظہار کی کوشش ان الفاظ میں کی ہے کہ پس احادیث توسل صحیح ہوں یا ضعیف امام اعظم کا مذھب بھی وہی ہیں۔

نمبرچار۰ کیونکہ اسماءالرجال کا فن اس وقت مدونہ شکل میں نہ تھا اس لیے قیاس اور راءے پر ضعیف کو فوقیت دی۔

نمبرپانچ۰ اور یہ جملہ کہ جب حدیث صحیح ہو گءی تو وہی میرا مذھب ہے اس بات پر دلیل ہے کہ جو حدیث مجھ تک پہنچی ہے اسے میں نے راءے اور قیاس پر فوقیت دیتے ہوءے اور عدم علم صحیح حدیث کی وجہ سے ضعیف ہونے کے باوجود قبول کرلیا اب اگربعد کی تحقیق سے یہ صحیح ہوگءی تو میرا مذھب صحیح حدیث کی قبولیت کا ہے اور اگر یہ تحقیق کے بعد بھی ضعیف ہی رہتی ہے تو اسے پھر بھی میں نے قیاس اور راءے پر فوقیت دی ہے نہ کہ صحیح حدیث پر فوقیت دی ہے۔

نمبرچھ۰ کیونکہ ابوحنیفہ رح کے دور میں فن اسماءالرجال آج کی طرح مدونہ شکل میں نہ تھا لہذا اس وقت ضعیف حدیث کو قیاس اور راءے پر فوقیت دیتے ہوءے قبول کیا لیکن آج کے اسماءالرجال سے وہ حدیث ضعیف ہی ثابت ہوتی ہے تو ابوحنیفہ رح کی تو اللہ کے ہاں چھوٹ ہے لیکن مقلد کی پکڑ کیونکہ ابوحنیفہ کو اسکے مقابل صحیح حدیث نہ مل سکی اسی لیے تو انہوں نے فرمایا کہ جب حدیث صحیح ہو گءی تو وہی میرا مذھب ہے لیکن جب آج کے مقلد کو علم ہوگیا کہ یہ حدیث صحیح نہیں تو پھر بھی اسکو حجت ماننا ابوحنیفہ کی مخالفت نہیں تو اور کیا ہے۔

نمبر سات۰ اگر بنظرعمیق دیکھاجاءے تو ابوحنیفہ کے نزدیک ضعیف حدیث حجت ہی نہیں کیونکہ ابوحنیفہ قیاس اور راءے کے مقابلے میں صحیح حدیث کو فوقیت دیتے تھے یہاں تو سرے سے ضعیف کا مقابلہ تو صحیح سے ہے ہی نہیں کیونکہ اس وقت فن اسماءالرجال مدونہ شکل میں موجود نہ تھا لیکن آج یہ فن مکمل مدونہ شکل میں موجود ہے لہذا اگر آج بھی مقلد اس اصول کو مانے تو صحیح حدیث کو ہی ماننا ہوگا کیونکہ اسماءالرجال کے ماہرین نے دودھ کا دودھ پانی کا پانی کردیا ہے اور روایت ضعیف یا صحیح آج سب کے سامنے ہے اب اگر کوءی صحیح حدیث کے مقابل ضعیف کو ماننے کا دعوی کرتا ہے تو وہ ابوحنیفہ رح کے قول ( جب حدیث صحیح ہوگءی وہی میرا مذھب ہے) کو اپنے نفس کی خواہش پرقربان کرتا ہے یہ کہہ کر ” پس احادیث توسل صحیح ہوں یا ضعیف ہوں امام اعظم کامذھب بھی وہی ہیں”۔

لہذا جب ابوحنیفہ رحمہ اللہ کے قول کو سمجھنے میں بریلوی مقلد نے ٹھوکر کھاءی تو بریلویت کی بنیاد ہی منہدم ہوگءی ابوحنیفہ کے اسی قول سے جسے بنیاد بناکردیگر میرے سوالات کے جوابات دینے کی کوشش کی۔ میرا سوال پھر اپنی جگہ کھڑاہے دیگرسوالات کی طرح۔

 

نمبر۲جواب از طرف ابوزید: آپکا عقیدہ توسل ضعیف احادیث پر مشتمل ہونے کی وجہ سے ابوحنیفہ کے بھی خلاف ہوا کیونکہ ابوحنیفہ کا قول ہے جب حدیث صحیح ہوگءی تووہی میرا مذھب ہے جبکہ (حدیث استسقاء بلال بن حارث رضی اللہ تعالی عنہ ) مالک الداری۔اعمش اور سیف التمیمی کیوجہ سے سخت ضعیف ہے کیونکہ سیف التمیمی کا قول ہے کہ خواب دیکھنے والے شخص بلال بن حارث ہیں جبکہ محدثین کے نزدیک سیف التمیمی کی کوءی حیثیت نہیں سیف سخت ضعیف ہے لہذا پس ثابت ہوا کہ یہ عمل صحابی کا استسقاء کے لیے تھا ہی نہیں۔ اورایک اور اہم بات یہ کہ اگر ابوحنیفہ کے اصول کو ہی یہاں مدنظر رکھا جاءے تو ابوحنیفہ قیاس اور راءے کے مقابل ضعیف کو فوقیت دیتے تھے لیکن صحیح کےمقابلے میں تو ابو حنیفہ ضعیف کو خاطر میں بھی نہ لاتے تھے لہذا جب دیگر صحیح احادیث سے استسقاء کے طریقے موجود ہیں تو آل تقلید بریلویہ کا ضعیف سے حجت پکڑنا ابوحنیفہ کی بھی نافرمانی کے زمرے میں آگیا الحمدللہ۔

 

نمبر۳جواب از طرف ابوزید: جب ابوحنیفہ کا مذہب ہی صحیح حدیث کو قبول کرنا ہوا اور بریلویوں کا ضعیف تو پھر عقیدہ توسل بھی مختلف ہوگیا۔لہذا میرا تیسرا سوال پھر اپنی جگہ گھڑا آپکو منہ چڑارہاہے۔

 

نمبر۴جواب از طرف ابوزید: جواب نمبر ۲ کا مطالعہ کریں۔

 

نمبر ۵جواب از طرف ابوزید: فقہی مساءل تو اسلام میں ثانوی حیثیت رکھتے ہیں پہلی حیثیت تو عقیدہ کی ہے میرے سوال میں بات نہ علم کلام کی ہے نہ تصوف کی بلکہ نسبت کرنے کی ہے کہ صفات باری تعالی میں عقیدہ رکھنے کی نسبت احناف ابوحنیفہ کی بجاءے اشعری و ماتریدی کیطرف کیوں کرتے ہیں؟

 

نمبر۶جواب ازطرف ابوزید: اگر عقاءد امام ابوحنیفہ غلط نہیں تو پھر نسبت کرنے میں شرم کیوں محسوس کرتے ہیں چار قدم آگے پڑھاءیں اور کہدیں کہ احمد رضا بے عقیدے میں ابوحنیفہ کی جگہ اشعری و ماتریدی کی طرف نسبت کی غلط کیا۔ دوسرا قدم بڑھاءیں اور کہہ دیں کہ احمدیارنعیمی نے عقاءد میں نسبت اشعری وماتریدی کی طرف کی غلط کی اور تیسرا قدم بڑھاءیں اور کہہ دیں کہ امجد علی نے عقاءد میں نسبت اشعری و ماتریدی کی طرف کی غلط کیا اور پھر چوتھا اور آخری قدم بڑھاتے ہوءے سینہ ٹھونک کر کہیں کہ میں آج سے عقیدے میں نسبت اشعری و ماتریدی کے بجاءے ابوحنیفہ کی طرف کرتاہوں۔

 

نمبر۷جواب ازطرف ابوزید: ۵ اور ۶ کا مطالعہ کریں۔

 

نمبر۸جواب ازطرف ابوزید: نبی علیہ السلام نے صحابہ کرام کو نماز استسقاء کی تعلیم دی۔ صحیح حدیث سے ثابت ہے نماز استسقاء کے علاوہ استسقاء کے لیے دعا بھی نبی علیہ السلام سے ثابت ہے جیسے ایک شخص آیا خطبہ جمعہ کے دوران اور دعا کی درخواست کی اور نبی علیہ السلام نے دعا کراءی اور اللہ تعالی نے خوب بارش برساءی۔بخاری نماز جنازہ کے علاوہ میت کے لیے دعا بھی بنی علیہ السلام سے ثابت ہے جیسے آپ نے فرمایا اپنے مردوں کو تحفے بھیجا کرو کہ وہ انتظار میں رہتے ہیں صحابہ رضی اللہ عنہم نے حیرت سے پوچھا مردوں کو تحفے کیسے ؛ فرمایا ان کے حق میں دعاء خیر تحفے ہیں یہ بھی نبی علیہ السلام سے ثابت ہوا لہذا جاءز ہے۔ لیکن آپکو تو ثابت کرنا یہ ہے کہ میرے نبی علیہ السلام نے فرمایاہو کہ میری وفات کے بعد بھی میری قبر کے پاس آکر یا دور سے میرے وسیلے سے اللہ تعالی سے دعاءیں کیا کرو؟

 

نمبر۹جواب ازطرف ابوزید: جب قولی حدیث آپکی نظر سےنہیں گزری تو پھر صحیح روایات پر اپنے عقیدہ توسل کی بنیاد کیوں نہیں رکھتے ضعیف روایات پربنیاد اور وہ بھی عقیدہ کی حیرت ہے۔ مذکورہ ضعیف روایت میں ہے کہ ایک شخص نبی علیہ السلام کی قبر پر آیا اور سیف التمیمی نے کہا کہ وہ شخص بلال بن حارث تھے لیکن سیف کی اپنی حالت یہ ہے کہ محدثین کے نزدیک سخت ضعیف ہے۔ لہذا پس ثابت ہوا کہ قبر پر آنے والا شخص صحابی تھا ہی نہیں لہذا اس سے حجت پکڑنا بھی غلط ہوا۔ کسی ایسے شخص کا عمل کیسے حجت ہو سکتا ہے جبکہ وہ صحابی رسول صلی اللہ علیہ وسلم ہی نہیں۔

 

نمبر ۱۰جواب ازطرف ابوزید: تقلید کے اثبات میں دلاءل یا صرف ایک بھی دلیل قرآن و حدیث یا خود ابوحنیفہ کے قول سے نہیں دی گءی لہذا جواب غیر متعلق ہے۔

 

نمبر۱۱جواب ازطرف ابوزید: سوال تاحال قاءم ہے جواب غیر متعلق ہونے کیوجہ سے۔

 

نمبر۱۲؛۱۳؛۱۴جواب ازطرف ابوزید: بالفرض کو بالیقین میں بدلیں اور لاءیں ڈھونڈ کر قصیدہ نعمان جوکہ ابوحنیفہ رح کی تصنیف ہو بریلویوں کا اس خودساختہ قصیدے کو چھاپنا اس بات کی قطعی دلیل نہیں ہوسکتا کہ یہ ابوحنیفہ کی تصنیف ہے۔

 

کیا بریلوی صاحب آپ یہ بتانا پسند کریں گے کہ یہودیوں سے بھی روایت لینے کا حکم نبی علیہ السلام نے کس بارے میں دیا۔ عقیدے میں احکام میں مساءل میں یا پھر واقعات میں؟

 

آپکے اعلیحضرت کی زبان کتنی حسین تھی اسکے لیے فتاوی رضویہ کی ایک پڑیا ہی کافی ہے جسمیں اس نے اللہ تعالی کو نعوذباللہ گالیاں دی ہیں۔ اب ذلیل فرقہ ذلیل مولوی اور ذلیل لوگ کون ہیں معلوم ہوگیاہوگا۔

 

صاحب کتاب نے یہ بات بیان نہیں کی کہ ذمی کا ذمہ ایک بارکے سب سے نہیں ٹوٹتا بلکہ سب سے باز نہ آنےسےٹوٹتا ہے اور آج ایک مقلد اسکو اپنے مطلب کے معنی پہناکرلوگوں کو دھوکہ دینے کی مذموم کوشش کرتا ہے تو اس کی اس حمایتی تاویل کی فقہ حنفی میں کوءی اہمیت ہی نہیں کیونکہ فقہ حنفی میں آپ کا کوءی مقام ہی نہیں سواءے ایک نامعلوم مقلدکے۔

 

کءی بار اس بات کی وضاحت میں اپنی پوسٹس میں کرچکا ہوں کہ ہم اپنےعلماء کو معصوم عن الخطاء نہیں سمجھتے بلکہ نبی علیہ السلام بشمول دیگر تمام انبیاء کومعصوم عن الخطاء سمجھتے ہیں۔ اور یہی ہمارا عقیدہ ہے الحمدللہ اور جو خطاء ہمارے کسی عالم سے ہوءی ہے اگر اس نے دانستہ کی ہے تو اللہ تعالی جانتا ہے اور اگر نادانستہ کی ہے تب بھی اللہ تعالی ہی جانتا ہے۔ اللہ تعالی کے دربار میں وہ خود جواب دہ ہیں انکے کیے کا ہم جواب دہ نہیں ہیں ہاں اگر ہم انکی خطاء کو صحیح کہیں اور طرح طرح کی باطل و فاسد تاویلات کریں تو اللہ تعالی کے دربار میں ہماری بھی پکڑہوگی جسطرح بریلوی کرتے ہیں جسکا عملی مظاھرہ اگرکسی صاحب کو دیکھنا ہو تو شاھد بھاءی کے بناءے ہوءے تھریڈ جی ہاں ہم بدعتی ہیں اور فقہ حنفی کے دو شیطانی اصول اور مسءلہ رضاعت اور ملفوظات احمد رضا میں تحریر موسی سہاگ کے حوالے سے بنے تھریڈ پردیکھا جاسکتا ہے۔

ہاں تو بریلوی صاحب اب ذرا ہمت کریں اور آءیں میدان میں ہماری طرح اور کہہ دیں کہ ہم بھی یہی عقیدہ رکھتے ہیں۔ اور جو کسی جھوٹے مجذوب کو اللہ کی بیوی کہے وہ غلط ہے۔ اصول کرخی غلط ہیں قرآن و حدیث ہی صحیح ہیں۔ابوحنیفہ بھی غلطی کرسکتے تھے۔ احمد یار نعیمی نے نہ صرف اپنے بلکہ پورے فرقہ بریلویہ کے بدعتی ہونے کا اعتراف کیا ہے۔ مت کریں اس میں طرح طرح کی تاویلات اور کہہ دیں کہ یہ ہمارے عالم کی غلطی تھی۔ لیکن آپ ایسا کیوں کہنے لگے۔

 

بریلوی صاحب آپ نے لکھا کہ ابن العزحنفی غیر مقلد ہو گیا تھا تھوڑی دیر کے لیے آپکے بیان کو صحیح سمجھ لیتے ہیں۔لیکن اسطرح تو بہت سے پردے اس راز سے اٹھتے ہیں جنکو برداشت کرنے اور قبول کرنے کی ہمت آپ میں نہیں۔

”ابن العزحنفی غیرمقلد ہوگیا تھا”۔ابن العز حنفی غالبا ۷۰۰ ہجری کا ہے۔

جبکہ مقلدین کا کہنا ہے کہ غیر مقلد اہل حدیث انگریزوں کے دور میں پیدا ہوءے۔

اب اگر آپکے پہلے بیان کو صحیح سمجھا جاءے تو دوسرا بیان آپکے اوردیگرتمام حاملین دعوی کےکذاب ہونے پر دلیل فراہم کرتا ہے۔اور ساتھ ہی ساتھ آپکے اس جملے سے کہ غیر مقلد ”ہوگیاتھا” یہ بھی پتا چلتا ہے کہ غیر مقلدین ابن العز ۷۰۰ ہجری سے پہلے بھی موجود تھے۔ جبھی تو آپ نے لکھا کہ غیر مقلد ”ہوگیاتھا” ورنہ آپ یہ لکھتے کہ یہ پہلا غیر مقلد تھا۔ اور ہو سکتا ہے کہ آپ نے استدلال اس سے کیا ہو کہ ابوحنیفہ کسی کے مقلد نہ تھے لہذا آپ کے نزدیک ہو سکتا ہے کہ ابوحنیفہ پہلے غیر مقلد ہوں۔

مقلدین یہ لکھتے ہیں کہ چوتھی صدی ہجری میں تقلید پر اجماع ہوگیا تھا۔اور احادیث کی کتابیں چوتھی صدی ہجری سے قبل کی ہیں یعنی تقلید پر اجماع سے بھی بہت پہلے لکھی گءی ہیں۔لہذا پس ثابت ہوا کہ تمام راوی ہی غیر مقلد تھے لہذا اب آپ شرح عقیدہ طحاویہ کی طرح احادیث کی کتب کا بھی انکار کردیں ۔ آل تقلید بریلویہ سے کچھ بعید بھی نہیں۔

 

ابن العز حنفی نے ابوحنیفہ کا عقیدہ اپنی طرف سے بیان نہیں کیا بلکہ ابوحنیفہ کی کتاب فقہ اکبر کے حوالے کے ساتھ بیان کیا ہے۔

 

عقیدہ الطحاویہ کو صحیح کہنے کی وجہ جاننے سے قبل ہمارا منہج سمجھنا ضروری ہے کہ جس کسی کی بات جہاں تک قرآن و حدیث کے موافق ہو اسے قبول کرلیا جاءے ورنہ احتجاج کے ساتھ رد کردیاجاءےمثلا

بریلوی قادیانی دیوبندی شیعہ اور منکرین حدیث ؛ عقیدہ و عمل میں جو کچھ بیان کرتے ہیں اسے ہم قرآن و حدیث کی کسوٹی پر پرکھتے ہیں جو قرآن و حدیث کے مطابق ہوتا ہے اسے ہم صحیح کہتے ہیں اور جوقرآن و حدیث کے خلاف ہوتا ہے اسے غلط کہتے ہیں۔ اسے تھوک کر چاٹنا نہیں کہتے بلکہ یہ صراط مستقیم پر ہونے کی دلیل ہے کہ کسی کی بات کو اس وقت تک حق ہی کہنا کہ جب تک اور جہاں تک وہ حق ہے اور جس وقت کسی کا عقیدہ و عمل قرآن و حدیث سے ہٹ گیا وہ وہیں باطل و مردود ہوگیا تو اسے باطل و مردود ہی کہتے ہیں تف ہے ایسی علمیت پر جو اس فرق کو نہ جانتاہو۔

 

الحمدللہ میں نے وہ تمام جوابات جو کہ تیسرے بریلوی صاحب نے دینے کی کوشش کی تھی کا پوسٹ مارٹم کردیاہے اور انکے جوابات کو اور انکی بناءی ہوءی بنیاد کو غلط ثابت کر دیا ہے۔الحمدللہ والشکرللہ

لہذا میرے سوالات اپنی جگہ ہی موجود ہیں اگر کوءی چیمپیءن بریلوی جوابات دینا چاہے تواسکا بھی پوسٹ مرٹم کردیجاءے گا انشاءاللہ تعالی۔

 

لہذا ایک بار پھر اپنے سوالات دھراتا ہوں۔

 

۱) کیا جوعقیدہ توسل بریلویوں کاہے کیا وہ ابوحنیفہ کابھی تھا ؟

۲) اگر ایک جیسا عقیدہ توسل ہے ابو حنیفہ اور بریلویوں کا تو حوالے درکار ہیں صحیح سند کے ساتھ ؟

۳) اگر بریلویوں اور ابو حنیفہ کا عقیدہ توسل مختلف ہے تو صحیح عقیدہ کس کا ہے بریلویوں کا یا کہ ابوحنیفہ کا؟

۴) جب آپکا دعوی ہے کہ امام صاحب کی دلیل قرآن و حدیث ہے تو ابوحنیفہ نے قرآن و حدیث سے سارے مسءلوں کا حل نکال لیا تو پھر عقیدہ توسل انسے ثابت کرنے میں کیا عار ہے۔) لیکن اگر وہ مسءلے جن پر آج بریلوی عمل پیر ہیں ہی نہ نکال سکے تو پھر دعوی ہی غلط ہوایا نہیں؟

۵) جیسا کہ میں نے الحمدللہ یہ ثابت کیا ہے کہ آپ حنفی بریلوی عقاءد میں اشعری و ماتریدی ہیں تو ابوحنیفہ کی طرف عقاءد میں نسبت نہ کرنے کی وجہ کیا ہے کیا ابوحنیفہ عقاءد میں غلط تھے؟

۶) اگر عقاءد میں ابو حنیفہ غلط تھے تو آپ فروع میں کیونکر ایسے شخص کے مقلد ہیں جس کے عقاءد ہی آپ کے نزدیک صحیح نہیں ہیں؟

۷) اگر ان کا عقیدہ صحیح تھا تو پھر آپ لوگ عقیدے میں اپنی نسبت اشعری و ماتریدی کی بجاءے ابوحنیفہ کی طرف کیوں نہیں کرتے؟

۸) نبی علیہ السلام نے نماز استسقاء کا طریقہ صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کو کیا تعلیم فرمایا ؟

۹) اور کیا نبی علیہ السلام نے کبھی یہ فرمایا کہ میری وفات کے بعد میری قبر پر آکر میرے توسل سے اللہ تعالی سے بارش کی دعا کرنا صحیح حدیث سے ثابت کریں؟

۱۰) تقلید کے حوالے سے جو آپنے نویدخان نے احمد یارنعیمی کے الٹی کیے ہوءے جملے چاٹے ہیں کہ ” تقلید کرنا باعث رحمت ہے” اس حوالے سے میں نے پوچھاتھا کہ

یہ قرآن کا حکم ہے

نبی علیہ السلام کا فرمان ہے

ابو حنیفہ کا قول ہے

یا پھر ایک مقلد نوید خان کا مجتہدانہ فتوی

جس پر آپ نےجوابا قرآن کی آیت ”پوچھ لو ان سے جو جانتے ہیں اگر تم نہیں جانتے” پیش کی

اس آیت سے آپکو کیسے پتا چلا کہ یہ تقلید کے بارے میں ہےکیونکہ آپ پوسٹ نمبر ۲۵ جسے ڈلیٹ کردیا گیا ہے میں یہ اقرار کر چکے ہیں کہ ”مفتی صاحب اور میری بات میں بالکل فرق نہیں مفتی صاحب کی بات کا یہ مطلب ہے کہ براہ راست ہمارے دلاءل قرآن و حدیث نہیں کیونکہ ہر شخص مجتہد ماہر شریعت نہیں لہذا ہم امام اعظم کی تقلید کرتے ہوءے ان دلاءل کو مانتے ہیں” ۔ لہذا جوآیت تقلید کے اثبات میں آپ نے پیش کی ہے اسے اپنے مقررکردہ فارمولے کے تحت ابوحنیفہ سے صحیح سند کے ساتھ دکھاو کہ انہوں نے اس آیت کا مطلب تقلید سے کیا ہو اور یہ بھی بتانا مت بھولیں کہ ابوحنیفہ نے اس آیت سے استدلال کرتے ہوءے اپنی تقلید کو لازم قرار دیاہولوگوں کے لیے؟

۱۱)ایک بار پھر میں اپنا سوال دھراتا ہوں کہ تقلید کے حوالے سے جو آپنے احمد یارنعیمی کے الٹی کیے ہوءے جملے چاٹے ہیں کہ ” تقلید کرنا باعث رحمت ہے” اس حوالے سے جواب دیں کہ

یہ قرآن کا حکم ہے

نبی علیہ السلام کا فرمان ہے

ابو حنیفہ کا قول ہے

یا پھر ایک مقلد نوید خان کا مجتہدانہ فتوی

۱۲) " شہرہ آفاق نعتیہ منظوم کلام قصیدہ نعمان " ابوحنیفہ کا لکھا ہوا ہے اسے ثابت کریں؟ کیونکہ اسے ثابت کرنےکےلیے ابھی تک چشتی کی طرف سے جتنے بھی دلاءل آءے تھے انکا پوسٹ مارٹم صرف اللہ کی توفیق سے میں نے کردیاہے الحمدللہ ؟

۱۳)اس قصیدہ نعمان کا سرورق یہاں اسکین کریں۔

۱۴) قصیدہ نعمان کے سرورق کے فورا بعد کے کم از کم دس صفحات اسکین کریں

 

Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You can post now and register later. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Loading...
  • Recently Browsing   0 members

    No registered users viewing this page.


×
×
  • Create New...